1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔
القول السدید
آخری سرگرمی:
‏ستمبر 14، 2014
شمولیت:
‏اگست 30، 2012
پیغامات:
348
تمغے کے پوائنٹ:
91
موصول مثبت ریٹنگ:
199
موصول نیوٹرل ریٹنگ:
996
موصول منفی ریٹنگ:
7

ریٹنگ شامل کریں

وصول شدہ: دی گئی:
شکریہ 950 360
پسند 100 1
ناپسند 6 2
متفق 41 23
غیرمتفق 46 48
زبردست 49 34
معلوماتی 6 0
علمی 2 0
مفید 1 0
غیرمتعلق 1 0
تکرار 0 0

اس صفحے کو مشتہر کریں

القول السدید

رکن

آخری مرتبہ القول السدید کو دیکھا گیا:
‏ستمبر 14، 2014
    1. محمد ارسلان
    2. محمد ارسلان
      محمد ارسلان
      السلام علیکم
      ان تھریڈ کا مطالعہ کریں۔
      ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

      [*]کافر کون ہیں؟
      [*]کفار کی اسلام دشمنی
      [*]کفار کی دنیاوی شان و شوکت قرآن کی روشنی میں
      [*]مسلمانوں سے کفار کی دشمنی کا سبب
      [*]کفار سے دوستی کی ممانعت
      [*]کفار سے دوستی کی سزا
      [*]کفار سے دوستی کی دنیا میں سزا
      [*]مسلمانوں اورکفار کی دوستی ناممکن ہے
      [*]بے ضرر کفار سے حسن سلوک کا حکم
      [*]بے دین،بدعتی،مشرک اور کافر سے محبت اور دوستی کا عبرتناک انجام
      [*]کفار و مشرکین سے براءت کا حکم
      ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    3. القول السدید
      القول السدید
      شکیل افریدی کا انٹرویو پر سوالیہ نشان

      بدھ, 12 ستمبر 2012 14:08 بی بی سی اردو مشاہدات: 18


      امریکی چینل فاکس نیوز کے مطابق القاعدہ کے سابق سربراہ اسامہ بن لادن کی تلاش میں مدد دینے والے پاکستانی ڈاکٹر شکیل آفریدی کا کہنا ہے کہ پاکستانی خفیہ ادارے آئی ایس آئی کے حکام امریکہ کو اپنا ’بدترین دشمن‘ مانتے ہیں۔ ڈاکٹر آفریدی کو اسامہ بن لادن کی ہلاکت کے بیس دن بعد گزشتہ برس بائیس مئی کو پشاور کے علاقے حیات آباد سے حراست میں لیا گیا تھا۔ انہیں بعدازاں ایک شدت پسند تنظیم کی حمایت اور مالی امداد کے جرم میں تینتیس برس قید کی سزا سنائی گئی اور اب وہ پشاور کی جیل میں قید ہیں۔
      نجی امریکی ٹی وی چینل فاکس نیوز کے مطابق حراست میں لیے جانے کے بعد پہلی مرتبہ جیل سے دیے گئے ایک مبینہ انٹرویو میں ڈاکٹر آفریدی نے یہ بھی بتایا کہ وہ نہیں جانتے تھے کہ امریکی آپریشن کا ہدف کون ہے فاکس نیوز کی ویب سائٹ پر شائع ہونے والے اس انٹرویو میں شکیل آفریدی نے کہا کہ انہیں یہ ضرور معلوم تھا کہ ایبٹ آباد کے اس مکان میں چند دہشت گرد مقیم ہیں تاہم ان کی شناخت سے وہ ناواقف تھے۔ انہوں نے کہا کہ ’مجھے جو کام دیا گیا تھا اس کے علاوہ کسی مخصوص ہدف کا علم نہیں تھا۔ مجھے دھچکا لگا اور یقین نہیں آیا کہ میں اس(اسامہ) کی ہلاکت سے جڑا ہوا تھا‘۔ ڈاکٹر آفریدی کا کہنا تھا کہ انہیں نہیں لگا تھا کہ انہیں اسامہ کی ہلاکت کے بعد پاکستان چھوڑنے کی ضرورت ہے لیکن پھر انہیں آئی ایس آئی نے اغوا کر لیا۔’فاکس نیوز نے یہ دعویٰ کیا ہے کہ شکیل آفریدی نے انٹرویو میں بتایا کہ سی آئی اے نے انہیں افغانستان چلے جانے کو کہا تھا۔ تاہم وہ سرحدی علاقوں کی صورتحال کی وجہ سے خدشات کا شکار تھے اور ان کے خیال میں چونکہ وہ بن لادن کی ہلاکت میں ملوث نہیں تھے اس لیے انہیں ملک چھوڑنے کی ضرورت نہیں تھی۔ فاکس نیوز کے مطابق شکیل آفریدی نے بات چیت کے دوران اسلام آباد کے علاقے آبپارہ میں واقع آئی ایس آئی کے حراستی مرکز میں ہونے والے مبینہ تشدد کا بھی ذکر کیا جہاں انہیں ابتدائی تفتیش کے لیے رکھا گیا تھا۔ امریکی نیوز چینل کے مطابق تفتیش کے دوران ان کے جسم پر سگریٹ بجھائے گئے، انہیں بجلی کے جھٹکے دیے گئے اور انہیں پرانے بوسیدہ کپڑے پہنا کر زمین پر پڑی پلیٹ سے ’کتے‘ کی طرح کھانے پر مجبور کیا گیا۔mڈاکٹر آفریدی نے کہا کہ تفتیش کے دوران آئی ایس آئی کے اہلکار انہیں کہتے رہے کہ’امریکی ہمارے بدترین دشمن ہیں، بھارتیوں سے بھی برے دشمن‘۔ فاکس نیوم کے مطابق پشاور سنٹرل جیل سے بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ آئی ایس آئی بلاشبہ حقانی نیٹ ورک کی مالی امداد کرتی ہے۔ امریکہ کافی عرصے سے پاکستان پر دباؤ ڈال رہا ہے کہ اس کے قبائلی علاقوں خاص کر شمالی وزیرستان میں حقانی نیٹ ورک کے خلاف آپریشن کیا جائے۔ ڈاکٹر آفریدی نے الزام عائد کیا کہ پاکستانی خفیہ ادارہ اکثر امریکہ کو حراست میں لیے گئے بہت سے اہم مسلح شدت پسندوں سے تفتیش نہیں کرنے دیتا اور اکثر ان شدت پسندوں کو افغانستان میں نیٹو افواج پر حملے کرنے کے لیے رہا بھی کر دیتا ہے۔ ماضی میں پاکستان ان الزامات کی کئی بار تردید کر چکا ہے۔ فاکس نیوز کے مطابق ڈاکٹر آفریدی کا کہنا تھا کہ پاکستان کی شدت پسندی کے خلاف جنگ ایک ڈھونگ اور امریکہ سے پیسے نکلوانے کا ایک طریقہ ہے۔ اس انٹرویو میں انہوں نے انکشاف کیا ہے کہ آئی ایس آئی بہت سے مسلح شدت پسندوں کو امریکی تفتیشی افسران سے جھوٹ بولنے اور غلط معلومات فراہم کرنے کی ہدایات دیتا ہے۔ تجزیہ کار شوکت قادر نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ عین ممکن ہے کہ سکیورٹی اداروں میں ایسے لوگ ہوں جو اس موقف کے حامی ہوں لیکن اس کا مطلب یہ نہیں کہ اکثریت ایسا ہی سوچتی ہے۔ امریکی نیوز چینل کے مطابق ڈاکٹر آفریدی نے مزید بتایا کہ آبپارہ جیل میں کئی مغربی سیاہ فام باشندے بھی قید ہیں جو کہ اسلام قبول کرنے کے بعد افغانستان میں جہاد کے مقاصد سے آئے تھے اور ایسے افراد کو خاص طور پر تشدد کا نشانہ بنایا جاتا ہے جبکہ عرب قیدیوں کے ساتھ بہتر سلوک کیا جاتا ہے۔ امریکی نیوز چینل فاکس نیوز کے مطابق ڈاکٹر آفریدی نے جیل کے اندر سے یہ انٹرویو موبائل فون پر دیا ہے۔ پشاور جیل کے حکام نے بی بی سی کو بتایا ہے کہ وہ انٹرویو کی اطلاعات پر حیران ہیں تاہم ان کا کہنا تھا کہ اس امکان کو رد نہیں کیا جا سکتا کہ ڈاکٹر شکیل کو ان کے قید خانے میں موبائل فون پہنچایا گیا ہو۔ شکیل آفریدی کی جانب سے لگائے گئے الزامات پر پاکستانی حکام کی جانب سے تاحال کوئی سرکاری موقف سامنے نہیں آیا ہے۔
      شکیل افریدی کا یہ انٹرویو ان لوگوں کے لیے جو پاکستان گورنمنٹ کو کافر کہتے ہیں اور مغرب کے اسلام دشمنی میں سب سے
      بڑا اتحادی کہنے والے ہیں ان کے لیے بہت سے سوالیہ نشان چھوڑ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا کوئی ہے جو اس پر اٹھنے والے سوالات کا جواب دے سکے یا اپنی تصحیح کر سکے؟؟؟؟
    4. القول السدید
      القول السدید
      السلام علیکم
      اللہ سے دعا ہے کہ اللہ جب تک زندہ رکھے تو اطاعت اور عزت،غیرت والی زندگی کے ساتھ زندہ رکھے۔۔۔۔۔۔۔۔اور جب موت دے تو اپنے رستے میں کفار کے ساتھ لڑتے ہوئے شہادت کی موت دے اور وہ بھی غزوہ ہند [/COLOR]کے شہداء میں شامل کرے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آمین
  • لوڈ کرتے ہوئے...
  • لوڈ کرتے ہوئے...
  • دستخط

    (((اللھم اغفرلی وارحمنی)))​
    "اے اللہ مجھے معاف فرمادے اور میرے اوپر رحم فرما"​