1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

آثار صالحین سے تبرک کی شرعی حیثیت

'معاصر بدعی اور شرکیہ عقائد' میں موضوعات آغاز کردہ از عبداللہ شاکر, ‏مارچ 11، 2016۔

  1. ‏مارچ 25، 2016 #71
    عبداللہ شاکر

    عبداللہ شاکر رکن
    شمولیت:
    ‏دسمبر 01، 2013
    پیغامات:
    63
    موصول شکریہ جات:
    32
    تمغے کے پوائنٹ:
    43

    @قادری رانا صاحب قبروں سے تبرک کے لیئے انہیں چھونا اور بوسہ دینا یہ سارے کام پہلے دیکھ لینے چاہئے کہ فقہ حنفی "شریف" میں اس کا کیا حکم ہے اور اس کے علاوہ کیا آپ کے رضاخانی مذہب میں بھی اس کی اجازت ہے یا نہیں؟
    احناف کی معتبر ترین کتاب فتاویٰ ہندیہ یعنی عالمگیری میں لکھا ہے:
    ولا یمسح القبر ولا يقبله فان ذلك من عادة النصاري
    یعنی اور (زیارت کرنے والا) قبر کو ہاتھ نہ لگائے اور نہ ہی اسے بوسہ دے کہ یہ نصرانیوں کی عادت ہے۔(فتاویٰ عالمگیری ج5 ص 430، دارلکتب العلمیہ)
    طاھر القادری صاحب جن کی کتاب سے آپ نے یہ چیزیں نقل کی ہیں وہ قبروں اور آستانوں کی چوکھٹون کو چومنے پر ادھر ادھر سے شوافع کے اقوال لا رہے ہیں جبکہ اپنے گھر میں اس کا کیا حکم ہے وہ نہیں بتاتے۔ فتاویٰ عالمگیری کے اس فتویٰ سے طاھر القادری سمیت وہ سب رضاخانی نصارنی ثابت ہو گئے ہیں جو قبروں کے ساتھ یہ معاملات کرتے ہیں۔
    سکین ملاحظہ ہو!
    [​IMG]
    [​IMG]
     
  2. ‏اپریل 05، 2016 #72
    محمد طارق عبداللہ

    محمد طارق عبداللہ سینئر رکن
    جگہ:
    ممبئی - مہاراشٹرا
    شمولیت:
    ‏ستمبر 21، 2015
    پیغامات:
    2,387
    موصول شکریہ جات:
    715
    تمغے کے پوائنٹ:
    224

    قارئین کرام
    آج رانا صاحب سے "عشق رسول ۔۔۔" تہریڈ میں گفتگو ہوئی ، انهوں نے بتایا کہ جواب دے دیا ہے ۔ اشارہ تو اسی تہریڈ کا تہا لیکن انکا جواب خضر حیات صاحب سے جاری بحث میں انہوں نے دیا ۔ پہلے دیکہیں کہ انہوں نے کہا کیا :

    " ﺣﻀﺮﺕ ﻣﯿﺮﺍ ﮐﺎﻡ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ-ﺟﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﮐﮧ ﺿﻌﯿﻒ ﺭﻭﺍﯾﺎﺕ ﺳﮯ ﻋﻘﯿﺪﮦ ﺛﺎﺑﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ ﺗﻮ ﺑﮯ ﺷﮏ ﻗﻄﻌﯽ ﻋﻘﯿﺪﮦ ﺛﺎﺑﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ ۔۔۔۔ الخ "

    اس تہریڈ میں بهی بات عقیدہ پر ہی ہو رہی ہے اور رکی ہوئی تہی ۔ اسی جاری تہریڈ میں انکا یہ بیان بحیثیت انکے اعتراف کے کاپی پیسٹ کیا ہے ۔
    اگر انہیں ناگوار نا گذرے اور اگر انہیں اعتراض ہے یا قول میں تبدیلی کرنا چاہیں تو یہ انکا حق ہے ۔
    والسلام
     
  3. ‏اپریل 05، 2016 #73
    محمد طارق عبداللہ

    محمد طارق عبداللہ سینئر رکن
    جگہ:
    ممبئی - مہاراشٹرا
    شمولیت:
    ‏ستمبر 21، 2015
    پیغامات:
    2,387
    موصول شکریہ جات:
    715
    تمغے کے پوائنٹ:
    224

     
  4. ‏اپریل 06، 2016 #74
    قادری رانا

    قادری رانا رکن
    شمولیت:
    ‏جون 20، 2014
    پیغامات:
    669
    موصول شکریہ جات:
    54
    تمغے کے پوائنٹ:
    93

    حضرت صاحب قارئین اس تھریڈ کو پڑھ کر خود ہی فیصلہ کر لیں۔لیکن آپ کو چاہیے تھا کہ پوری عبارت نقل کرتے
    ضعیف روایات سے جواز کو آپ کے گھر والوں نے تسلیم کیا ہے۔مگر اب تک کسی نے بھی توسل کے شرک ہونے پر ایک دلیل بھی پیش نہیں کی۔میں منتظر ہوں۔آپ ہمت کریں اور پیش کریں دلائل
     
  5. ‏اپریل 06، 2016 #75
    محمد طارق عبداللہ

    محمد طارق عبداللہ سینئر رکن
    جگہ:
    ممبئی - مہاراشٹرا
    شمولیت:
    ‏ستمبر 21، 2015
    پیغامات:
    2,387
    موصول شکریہ جات:
    715
    تمغے کے پوائنٹ:
    224

    رانا صاحب
    صاف بات کریں
    ضعیف حدیث سے عقیدہ ثابت ہوتا ہے ؟
    ہاں یا نا
    یا تو یہ ثابت کر دیں کہ آپ کا قول نہیں ہے ۔
    ساری باتیں اس جواب کے بعد
     
  6. ‏اپریل 07، 2016 #76
    قادری رانا

    قادری رانا رکن
    شمولیت:
    ‏جون 20، 2014
    پیغامات:
    669
    موصول شکریہ جات:
    54
    تمغے کے پوائنٹ:
    93

    جناب عقیدے کی دو قسمیں ہیں قطعی اور ظنی۔قطعی کا منکر کافر اس کے واسطے دلیل قطعی۔جبکہ ظنی عقیدے کے منکر پر تو بعض اوقات گمراہی کا فتوی بھی نہیں لگتا۔
    اگلی بات میں جناب ضعیف روایات سے استحاب وجواز ثابت ہوتا ہے۔لہذا توسل ثابت ہے۔اور اس کے علاوہ اثر مالک دار ہے۔اور بالفرض یہ سب ضعیف بھی ہوں تو یہ ایک دوسرے کو تقویت دیتے ہیں جس سے توسل کا جواز ثابت ہوتا ہے باقی اب تک آپ کی طرف سے اس کو شرک کہنے پت کوئی فتوی نہیں
    لا تقربو الصلوۃ والی بات مت فرمائیں۔آگے لکھا تھا کہ ظنی ثابت ہوتا ہے۔
     
  7. ‏اپریل 27، 2016 #77
    عبدالرحمن بھٹی

    عبدالرحمن بھٹی مشہور رکن
    جگہ:
    فی الارض
    شمولیت:
    ‏ستمبر 13، 2015
    پیغامات:
    2,435
    موصول شکریہ جات:
    287
    تمغے کے پوائنٹ:
    165

    تبرک کو @ابن قدامہ نے حرام کہا ۔
    تبرک کو حرام قرار دینے کے لئے نص چاہئے اس کا مطالبہ ہے۔
     
  8. ‏مئی 24، 2016 #78
    اشماریہ

    اشماریہ سینئر رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏دسمبر 15، 2013
    پیغامات:
    2,684
    موصول شکریہ جات:
    740
    تمغے کے پوائنٹ:
    290

    محترم قادری رانا بھائی! کیا اس بات کی کوئی صراحت مل سکتی ہے؟
    اس تھریڈ کی بحث سے قطع نظر یہ عرض کر رہا ہوں کیوں کہ میں کافی عرصہ سے اسے ایک موضوع کے لیے تلاش کر رہا ہوں۔
    جزاک اللہ خیرا۔
     
  9. ‏مئی 26، 2016 #79
    قادری رانا

    قادری رانا رکن
    شمولیت:
    ‏جون 20، 2014
    پیغامات:
    669
    موصول شکریہ جات:
    54
    تمغے کے پوائنٹ:
    93

    نبراس میں ہے اور اس کے علاوہ اس پر ایک دیوبندی عالم نے بحث کی ہے اظہار الحق نامی کتاب میں
     
  10. ‏مئی 26، 2016 #80
    اشماریہ

    اشماریہ سینئر رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏دسمبر 15، 2013
    پیغامات:
    2,684
    موصول شکریہ جات:
    740
    تمغے کے پوائنٹ:
    290

    دیوبندی عالم کی بحث کو چھوڑ دیجیے اور نبراس کا مکمل حوالہ دے دیجیے۔ نبراس سرچ ایبل نہیں ہے میرے خیال میں۔
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں