1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

اسلام میں حدیث کی اہمیت و حیثیت :

'حدیث وعلومہ' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد عامر یونس, ‏دسمبر 02، 2013۔

  1. ‏دسمبر 02، 2013 #1
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,967
    موصول شکریہ جات:
    6,506
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    اسلام میں حدیث کی اہمیت و حیثیت :


    418480a5a080d0d887e5abd3dcf773d2_M (1).jpg
     
    Last edited: ‏جنوری 26، 2016
    • پسند پسند x 2
    • شکریہ شکریہ x 1
    • لسٹ
  2. ‏دسمبر 02، 2013 #2
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,967
    موصول شکریہ جات:
    6,506
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    اسلام میں حدیث کی اہمیت !!!

    تصحیح و اضافہ: حافظ حماد چاؤلہ

    الحمدُ للہ والصلوٰۃ والسلام علیٰ رسول اللہ وعلیٰ آلہ وصحبہ وازواجہ و من والاہ وبعد!

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔۔۔وبعد!

    اﷲ تعالیٰ کے نزدیک دین کیا ہے ؟

    اﷲ تعالیٰ فرماتا ہے :
    کیا اسلام کے علاوہ کسی اور دین پر عمل جائز ہے؟

    اﷲ تعالیٰ کا حکم ہے:
    یہ بھی فرمایا :
    اﷲ تعالیٰ نے رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم کو رسالت کے ساتھ مخصوص فرماکر آپ پر اپنی کتابِ ھدایت نازل فرمائی اورآپ ﷺ کواس کی مکمل تشریح ووضاحت کرنےکا حکم دیا :
    آیت کریمہ کے اس حکم میں دو باتیں شامل ہیں :

    (1) الفاظ اور ان کی ترتیب کا بیان یعنی قرآن مجید کا مکمل متن امت تک اس طرح پہنچا دینا جس طرح اﷲ تعالیٰ نے نازل فرمایا۔

    (2) الفاظ، جملہ یا مکمل آیت کا مفہوم و معانی بیان کرنا تاکہ امتِ مسلمہ قرآن حکیم پر عمل کرسکے۔

    قرآن مجید کی جو شرح رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمائی اسکی کیا حیثیت ہے؟

    دینی امو رمیں رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم کے فرامین اﷲ کے حکم کے مطابق ہوتے ہیں:

    اسی لئے فرمایا :
    یہی وجہ ہے کہ دینی امور مین فیصلہ کن حیثیت فقط اﷲ تعالیٰ اور اس کےرسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم ہی کو حاصل ہے، فرمانِ باری تعالیٰ ہے:
    معلوم ہوا کہ اسلام اﷲ تعالیٰ اور اس کے رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم کی پیروی کانام ہے ۔
     
  3. ‏دسمبر 02، 2013 #3
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,967
    موصول شکریہ جات:
    6,506
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    انبیاء علیہم السلام پر کتبِ سماوی کے علاوہ بھی وحی کا نزول ہوتاہے۔

    یقینا انبیاء علیہم السلام کو کتبِ سماوی کے علاوہ بھی وحی آتی ہے اور اس وحی پر عمل بھی اتنا ہی ضروری ہے جتنا اﷲ کے کلام پر۔ (جس کی کچھ وضاحت شروع میں بھی کی گئی ہے)

    کتاب اﷲکےعلاوہ وحی کی اقسام میں سےایک قسم انبیاءعلیہم السلام کےخواب ہیں ۔

    ابراہیم علیہ السلام کا خواب ملاحظہ فرمائیں :

    اس آیت میں خواب میں بیٹے کو ذبح کئے جانے والے عمل کو اﷲ کا حکم کہاگیا ہے ۔

    کیارسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم پر بھی خواب میں وحی نازل ہوئی؟

    رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم نے بھی ایک دفعہ خواب میں دیکھا کہ آپ بیت اﷲ میں داخل ہوکر طواف کر رہے ہیں چونکہ یہ خواب بھی وحی کی قسم سے تھا لہٰذا صحابہ کرام رضی اﷲ عنہم بہت خوش ہوئے ۔1400 صحابہ رضی اﷲ عنہم آپ صلی اللہ علیہ وسلم کیساتھ عمرہ کی نیت سے مکہ روانہ ہوئے لیکن کفار مکہ نے حدیبیہ کے مقام پر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو روک دیا اور وہاں صلح حدیبیہ ہوئی جس کی رو سے یہ طے پایا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم اس سال کی بجائے اگلے سال بیت اﷲ کا طواف کرینگے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے خواب کے بارے میں صحابہ کرام رضی اﷲ عنہم میں خلجان پیدا ہواتو سیدنا عمر رضی اﷲ عنہ نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا کہ کیا آپ نے ہمیں خبر نہیں دی تھی ۔ کہ ہم مکہ میں داخل ہونگے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہاں میں نے تمہیں بتایا تھا مگر میں نے یہ نہیں کہا تھا کہ ایسا اسی سفر میں ہوگا واپسی پر اﷲ تعالیٰ نے یہ آیات نازل فرمائیں :
    معلوم ہوا کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم کو بھی خواب میں وحی ہوئی ۔

    قرآن حکیم کے علاوہ وحی کے ذریعے بھی احکامات نازل ہوئے!

    بلاشبہ قرآن مجید کے علاوہ بھی احکامات نازل ہوئے مثلاً مسلمانوں کا پہلاقبلہ بیت المقدس تھا جس کی طرف14 سال تک منہ کرکے مسلمان نماز ادا کرتے رہے ، بیت المقدس کو قبلہ مقرر کرنے کا حکم قرآن حکیم میں نہیں ہے لیکن اﷲ تعالیٰ فرماتا ہے:


    معلوم ہوا کہ بیت المقدس کو قبلہ مقرر کرنے کا حکم اﷲ نے بذریعہ وحی خفی دیا قرآن حکیم کے علاوہ دوسری وحی کو وحی خفی (سنت) بھی کہتے ہیں ۔

    کیا حدیثِ رسولﷺ کے بغیر قرآن حکیم کو سمجھا جاسکتا ہے ؟

    سنت کے بغیر قرآن حکیم کو سمجھنا ممکن نہیں ہے اﷲ تعالیٰ نے ایمان لانے کے بعد سب سے زیادہ تاکید ''اقامت الصلوۃ'' کی فرمائی مگر سنت کے بغیر اس حکم پر عمل بھی ممکن نہیں چند آیات ملاحظہ فرمائیں :


    وسطی نماز سے کیا مراد ہے جب تک نمازوں کی کل تعداد معلوم نہ ہو وسطی نماز کیسے معلوم ہوسکتی ہے نمازوں کی تعداد کا ذکر قرآن حکیم میں نہیں معلوم ہوا کہ وحی خفی کے ذریعے سے مسلمانوں کو اطلاع دی ہوئی تھی اسی طرح فرمایا :

    وَاِذَا ضَرَبْتُمْ فِي الْاَرْضِ فَلَيْسَ عَلَيْكُمْ جُنَاحٌ اَنْ تَقْصُرُوْا مِنَ الصَّلٰوةِ ڰ (النساء :101)

    ''جب تم سفر کو جاؤ تو تم پر کچھ گناہ نہیں کہ نماز کو کم کرکے پڑھو''۔

    اس آیت میں یہ نہیں بتایا گیا کہ نماز کو سفر میں کتنا کم کیا جائے پھر نماز کے کم کرنےکا تصور اسی صورت ممکن ہےجب یہ معلوم ہوسکےکہ پوری نمازکتنی ہے یہ بھی فرمایا :

    فَاِنْ خِفْتُمْ فَرِجَالًا اَوْ رُكْبَانًا ۚ فَاِذَآ اَمِنْتُمْ فَاذْكُرُوا اللّٰهَ كَمَا عَلَّمَكُمْ مَّا لَمْ تَكُوْنُوْا تَعْلَمُوْنَ ٢٣٩؁ (البقرۃ:239)

    ''اگر تم کو خوف ہو تو نماز پیدل یا سواری پر پڑھ لو لیکن جب امن ہوجائے تو اسی طریقہ سے اﷲ کا ذکر کرو جس طرح اس نے تمہیں سکھایا اور جس کو تم پہلے نہیں جانتے تھے''۔

    اس آیت میں واضح ہےکہ نمازپڑھنےکاکوئی خاص طریقہ مقررہےجوبحالت جنگ معاف ہےاس طریقہ تعلیم کواﷲنےاپنی طرف منسوب کیا،نمازکاطریقہ اوراسکےاوقات وغیرہ قرآن مجیدمیں کہیں مذکورنہیں پھراﷲنےکیسےسکھایا،معلوم ہواکہ قرآن مجیدکےعلاوہ بھی وحی آئی ہے یہ آیت بھی قابل غور ہے:

    معلوم ہوا کہ جمعہ کی نماز کا اہتمام باقی دنوں کے علاوہ خاص درجہ رکھتا ہے اس نماز کا وقت کونسا ہے؟؟؟
    ـــ بلانے کا طریقہ کیا ہے؟؟
    ـــ اس کی رکعات کتنی ہیں؟؟؟
    ـــ قرآن مجید اس سلسلہ میں خاموش ہے اور کوئی شخص آیات قرآنی کے ذریعے نماز کی تفصیل نہیں جان سکتا جب تک وہ حدیث کی طرف رجوع نہ کرے ۔
     
  4. ‏دسمبر 02، 2013 #4
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,967
    موصول شکریہ جات:
    6,506
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    کیا صحابہ کرام رضی اﷲ عنہم بھی قرآن مجید کا مفہوم حدیث کے بغیر سمجھنے میں غلطی کھا سکتے ہیں ؟

    یقینا صحابہ کرام رضی اﷲ عنہم بھی قرآن مجید کا مفہوم سمجھنے کے لئے حدیث رسول کے محتاج ہیں ۔ دیکھئے کہ قرآن مجید کی یہ آیت نازل ہوئی :
    مذکورہ بالا آیت کریمہ سے بعض صحابہ کرام رضوان اﷲ علیہم اجمعین نے چھوٹے بڑے تمام گناہوں کو ظلم سمجھا اس لئے یہ آیت ان لوگوں پر گراں گزری لہٰذا عرض کیا، اے اﷲ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم ہم میں ایسا کون ہے کہ جس نے ایمان کے ساتھ کوئی گناہ نہ کیا ہو تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اس ظلم سے مراد عام گناہ نہیں بلکہ یہاں ظلم سے مراد شرک ہے کیاتم نے قرآن حکیم میں لقمان کا یہ قول نہیں پڑھا:

     
  5. ‏دسمبر 02، 2013 #5
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,967
    موصول شکریہ جات:
    6,506
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    کیا سنت قرآن مجید کی آیت میں موجود کسی شرط کو ختم کرسکتی ہے؟

    جی ہاں اور اس کی مثال سفر کی نمازِ قصر ہے اﷲ تعالیٰ فرماتا ہے :

    آیتِ بالا میں نماز قصر ایسے سفر کے ساتھ مشروط ہے جس میں خوف بھی ہو اس لئے بعض صحابہ رضی اﷲ عنہم نے رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم سے سوال کیا کہ اب تو امن کازمانہ ہے اور ہم پھر بھی قصر کرتے ہیں تو رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اس بات میں کوئی حرج نہیں کہ ہم حالتِ امن کے سفر میں قصر کریں یہ تمہارے لئے اﷲ تعالیٰ کی رعایت ہے پس اس رعایت کو قبول کرو۔ (مسلم ) ۔
     
  6. ‏دسمبر 02، 2013 #6
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,967
    موصول شکریہ جات:
    6,506
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    کیاحدیث قرآن مجید کی کسی آیت کے مطلق حکم کو مقید کرسکتی ہے؟

    جی ہاں اور اس کی مثال قرآن حکیم کی یہ آیت ہے:

    اس آیت میں چوری کا مطلقاً ذکر ہے جبکہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ''چور کا ہاتھ چوتھائی دینار یا اس سے زیادہ کی چوری پر کاٹا جائے''۔ (بخاری و مسلم )
     
  7. ‏دسمبر 02، 2013 #7
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,967
    موصول شکریہ جات:
    6,506
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    کیا حدیث قرآن حکیم کے حکم سے کسی چیز کو مستثنیٰ کرسکتی ہے؟

    جی ہاں اور اس کی مثال اﷲ تعالیٰ کا یہ حکم ہے :
    معلوم ہوا کہ حدیث نے مچھلی اور ٹڈی کو مردار اور کلیجی اور تلی کو خون سے مستثنیٰ قرار دیا ہے۔

    ایک اور مثال پر غور فرمائیں ۔اﷲ تعالیٰ فرماتا ہے :
    اگر حدیث سے رہنمائی نہ لی جائے تو اس آیت سے مردوں کے لئےریشم اور سونے جیسی حرام چیزوں کو حلال سمجھ لیاجاتا۔
     
  8. ‏دسمبر 02، 2013 #8
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,967
    موصول شکریہ جات:
    6,506
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    کیاکوئی حدیثِ صحیح قرآن مجید کے خلاف ہوسکتی ہے؟

    امام بخاری رحمۃ اﷲ ، مسلم رحمۃ اﷲ اور دیگر ائمہ حدیث نے اصولِ حدیث کی رو سے جن احادیث مبارکہ کو روایۃً صحیح کہا ہے یقینا وہ قرآن و سنت کےعین مطابق ہیں صحیح بخاری ومسلم میں صرف صحیح احادیث درج کی گئی ہیں ۔ اسلئے ان میں کوئی ایسی روایت نہیں جو قرآن کریم کے خلاف ہو۔

    جن لوگوں کو:

    (1) سیدنا عیسی ابن مریم علیہ السلام کا دوبارہ دنیامیں تشریف لاناـ

    (2) رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم پر ذاتی حیثیت سے جادو کے چند اثرات ہوجاناـ

    (3) دجال کے خروج وغیرہ سےمتعلق۔

    (4) عذاب قبر سے متعلق ۔

    احادیث اور ان سے متعلقہ باتیں قرآن حکیم کے خلاف نظر آتی ہیں تو یہ دراصل ان کی کم علمی اور جہالت ہے۔ مذکورہ امور سے متعلقہ روایات وہ ہیں جنہیں تحقیق کے بعد محدثین نے صحیح کہا ہے ،جو قرآن حکیم کے خلاف نہیں بلکہ ان منکرین کے خود ساختہ مفہوم کےمخالف ہیں۔

    مندرجہ ذیل آیت پرغور کیجئے :
    سوچئے کیا کتے اور دیگر درندوں کوا اور دیگر نوچنے ، چیر پھاڑ کرنے والے پرندوں کو حرام قرار دینے والی احادیثِ مبارکہ اس آیت کے خلاف ہیں؟؟

    اگرچہ ظاہر ایسا ہی محسوس ہوتا ہے مگر حقیقتاً قرآن و حدیث میں کوئی تضاد نہیں،ظاہری نظر آنے والے اختلاف کی صورت میں دونوں کے مابین جمع وتطبیق کرنا لازم ہے۔ یاد رکھیئے جو دین صحابہ رضی اﷲ عنہم کے ذریعے امت کو تواتر کیساتھ ملا ، وہی صراط مستقیم ہے جو لوگ اپنی خواہشات اور اھواء کے ساتھ قرآن حکیم کی تفسیر بیان کرتے ہیں ان کے ہاں حدیث وسنت کا حیثیت یہ ہے کہ جو ان کی خواہشِ نفس کے موافق ہو اس کی پیروی کیجائے اور جو ان کی اھواء کے خلاف ہو اسے ترک کیاجائے۔

    ایک حدیثِ صحیح میں ایسے ہی لوگوں کا ذکر ہے جس کا مفہوم درج ذیل ہے :
    معلوم ہوا کہ شریعت اسلامیہ سے مراد قرآن و حدیث دونوں ہیں، جس نے ان میں سے صرف ایک کو اختیار کیا اوردوسرے کو ترک کیا اس نے کسی ایک کو بھی اختیار نہیں کیا کیونکہ دونوں ایک دوسرے سے تمسک کا حکم دیتی ہیں ۔

    فرمانِ باری تعالیٰ ہے:۔

     
  9. ‏دسمبر 02، 2013 #9
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,967
    موصول شکریہ جات:
    6,506
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اجمعین کے منہج وطریقہ کی کیا حیثیت ہے؟

    رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم نے براہِ راست صحابہ کرام کو اسلام کی تعلیم دی یعنی صحابہ کرام رضی اﷲ عنہم آپ کے ''براہ است'' تربیت یافتہ تھےلہٰذا صحابہ معیاری مسلمان تھے ۔صحابہ کرام رضی اﷲ عنہم سے ''اقوال و افعال رسول'' تابعین نے اخذ کئے اور محدثین نے ان کو جمع کیا یہ تمام ادوار اسلام کے عروج کے ادوار ہیں جنہیں رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم نے بہترین زمانے قرار دیئے، سلف صالحین اور صحابہ کرام رضی اﷲ عنہم کے طریق اور منہج سے وہی شخص انکار کرتا ہے جو قرآن مجید کی من مانی تفسیر کرنا چاہتا ہے۔ اﷲ تعالیٰ فرماتا ہے :

    مومنین کے رستے سے مراد اسلام کی وہ تعبیر و تفسیر ہے جس پر قرونِ اولی کے مسلمان جمع تھے۔یعنی وہ منہج جس میں مردوں سے استغاثہ، قبر پر چلہ کشی اور فیض حاصل کرنے کی ، اور امر رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے سامنے کسی کی بھی رائے کی کوئی حیثیت یا شریعت کے مقابلے میں دنیا کے کسی قانون کے مطابق فیصلہ کرنے کی گنجائش نہ تھی۔
     
  10. ‏دسمبر 02، 2013 #10
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,967
    موصول شکریہ جات:
    6,506
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    کیا صحابہ رضی اﷲ عنہم حدیث و سنت رسولﷺ کو بھی وحی یعنی اﷲ کی بات سمجھتے تھے؟

    جی ہاں صحابہ رضی اﷲ عنہم حدیث ِ رسول صلی اللہ علیہ وسلم کو اﷲ کی بات سمجھتے تھے اسکی بہت سی مثالیں موجود ہیں صرف ایک ملاحظہ فرمائیں :
    یہ بھی واضح ہو کہ مسلمانوں پر لازم ہے کہ وہ قرآن و حدیث میں تفریق نہ کریں اور یاد رکھیں کہ ان دونوں پر ایمان و عمل فرض ہے اور شریعت ِاسلامیہ کی بنیاد ان دونوں پر قائم ہے۔

    رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں