1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

اصول الشاسی میں وارد ایک موضوع روایت (1)

'تحقیق حدیث' میں موضوعات آغاز کردہ از ابوالبیان رفعت, ‏جون 08، 2015۔

  1. ‏جون 08، 2015 #1
    ابوالبیان رفعت

    ابوالبیان رفعت رکن
    شمولیت:
    ‏جون 25، 2014
    پیغامات:
    45
    موصول شکریہ جات:
    10
    تمغے کے پوائنٹ:
    38

    اصول الشاسی میں ایک قاعدہ بیان کیا گیا ہے کہ خبر واحد اس وقت قابل عمل ہوگی جبکہ وہ قرآن اور سنت مشہورہ کے خلاف نہ ہو اور اس کی دلیل کے طور پر یہ منگھڑت روایت بیان کی ہے کہ رسول اللہ نےفرمایا میرے بعد تمہارے پاس بکثرت احادیث آئیں گی جب تمہارے سامنے مجھ سے کوئی حدیث بیان کی جائے تو اس کو کتاب اللہ پر پیش کرو جو موافق ہو اس کو قبول کرو اور جو مخالف ہو اس کو رد کردو ( اصول الشاسی ص:116)
    یہ حدیث قطعا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے ثابت نہیں
    علامہ البانی رحمہ اللہ نے اس رویت کو باطل قرا ر دیا ہے اسی طرح امام شوکانی امام صغانی ،امام عجلونی، امام ابن الجوزی اور امام یحیٰ بن معین رحمہم اللہ نے اسے موضوع کہا ہے
    امام خطابی فرماتے ہیں اس حدیث کو زنادقہ نے گھڑا ہے اور اس باطل روایت کو رد کرنے کے لئے صرف یہی حدیث کا فی ہے اوتیت الکتاب و مثلہ معہ (مجھے کتاب اور اس کے ساتھ کتاب جیسی چیز (سنت) بھی دی گئی ہے
    امام شوکانی فرماتے ہیں کہ : اس حدیث کا معنی خود اس حدیث کو باطل قرار دیتا ہے ، کیونکہ اس میں ہے کہ حدیث کو قرآن پر پیش کرنے کے بعد قبول کرو جب ہم نے اس حدیث کو قرآن پر پیش کیا تو یہ حدیث اس آیت کے خلاف نکلی (وَمَا آتَاكُمُ الرَّسُولُ فَخُذُوهُ وَمَا نَهَاكُمْ عَنْهُ فَانْتَهُوا )’’اللہ کے رسول تم کو جو (حکم ) دیں اسے لے لو اور جس چیز سے روکیں اس سے رک جاؤ ‘‘ اس آیت میں مطلقا ً یہ حکم ہے کہ جو اللہ کے رسول تمہیں جو حکم دیں اسے قبول کرو یہ نہیں لکحا ہے کہ قرآن پر پیش کرو لہذا یہ حدیث خود ہی باطل ہو گئی۔
    اسی طرح یہ باطل روایت اللہ کے اس فرمان کے بھی خلاف ہے (وَمَا يَنْطِقُ عَنِ الْهَوَى (3) إِنْ هُوَ إِلَّا وَحْيٌ يُوحَى )’’وہ اپنی نفسانی خوہش سے کوئی بات نہیں کہتے وہ تو صرف وحی ہے جو اتاری جاتی ہے ‘‘
    حافظ ابن کثیر رحمہ اللہ مذکورہ آیت کریمہ کی تفسیر کرتے ہوئے رقمطراز ہیں ’’آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا علم کامل ، آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا عمل مطابق علم ،آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا راستہ سیدھا ،آپ صلی اللہ علیہ وسلم عظیم الشان شریعت کے شارع ، اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم اعتدال والی راہ پر قائم ہیں۔ آپ کا کوئی قول، کوئى فرمان اپنے نفس کی خواہش اور ذاتی غرض سے نہیں ہوتا بلکہ جس چیز کی تبلیغ کا آپ کو حکم الہی ہوتاہے آپ اسے ہی زبان سے نکالتے ہیں جو وہاں سے کہا جائے وہی آپ کی زبان سے ادا ہوتا ہے ، کمی بیشی ، زیادتی نقصان سے آپ کا کلام پاک ہوتا ہے(تفسیر ابن کثیر محقق جدیدمحقق ایڈیشن نعمانی کتب خانہ لاہور )
    عبد اللہ بن عمرو بن العاص رضی اللہ عنہ سے روایت ہے وہ بیان کرتے ہیں کہ میں جو کچھ سنتا تھا اسے حفظ کرنے کے لئے لکھ لیا کرتا تھا تو بعض قریشیوں نے مجھے اس سے منع کیا اور کہاکہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ایک انسان ہیں کبھی کبھی غصے اور غضب میں کچھ فرمادیا کرتے ہیں ‘ چنانچہ میں لکھنے سے رک گیا پھر میں نے اس کا ذکر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے کیا تو اپ نے فرمایا لکھ لیا کرو قسم اس ذات کی جس کے ہاتھ میں میری جان ہے میری زبان سے سوائے حق کے اور کوئی کلمہ نہیں نکلتا (سلسلۃ الاحادیث الصحیحۃ :۱۵۳۲)
    خلاصہء کلام یہ کہ کوئى بھی صحیح حدیث قرآن کے خلاف نہیں ہوتی ۔ اگر کوئی صحیح حدیث ظاہری مفہوم کےاعتبار سے قران کے خلاف معلوم ہوتی ہے تو اس کی دو ہی صورتیں ہوں گی
    ۱۔ یاتو حدیث کا ظاہری معنی مراد نہیں ہوگا
    ۲۔ یا قرآن کا مطلب کچھ اور ہوگا
    (دوام حدیث ج ۱ ص:۲۴۷)
    جاری ان شاء اللہ
     
  2. ‏جون 09، 2015 #2
    کفایت اللہ

    کفایت اللہ عام رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 14، 2011
    پیغامات:
    4,769
    موصول شکریہ جات:
    9,771
    تمغے کے پوائنٹ:
    722

    ابوالبیان بھائی آپ کا موضوع یہاں منتقل کردیا گیا ہے ۔
     
  3. ‏جون 09، 2015 #3
    ابوالبیان رفعت

    ابوالبیان رفعت رکن
    شمولیت:
    ‏جون 25، 2014
    پیغامات:
    45
    موصول شکریہ جات:
    10
    تمغے کے پوائنٹ:
    38

    جزاک اللہ شیخ محترم کفایت اللہ السنابلی حفظہ اللہ
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں