1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

اقیمو االصلوٰۃ و اٰتو االزکوٰۃ

'نماز' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد نعیم یونس, ‏ستمبر 14، 2013۔

  1. ‏ستمبر 14، 2013 #1
    محمد نعیم یونس

    محمد نعیم یونس خاص رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 27، 2013
    پیغامات:
    26,402
    موصول شکریہ جات:
    6,600
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,207

    اقیمو االصلوٰۃ و اٰتو االزکوٰۃ


    مؤلف : نثار احمد خاں السلفی(بامھنواڑہ ضلع سیونی، ایم پی)
    امام و خطیب مسجد اہل حدیث،مومن پورہ، ناگپور​
    فہرست
    افتتاحیہ.
    پانچ نمازیں قرآن میں....
    پانچ نمازیں حدیث سے....
    آیات قرض حسنہ....
    زکوٰۃ نہ دینے والوں کی سزا.
    نماز کی اہمیت.....
    قرض حسنہ کی مثال..
    بخل کی مذمت.....
    زکوٰۃ نہ دینے والے کافر ہیں...
    بنی اسرائیل کو بھی نماز اور زکوٰۃ کا حکم دیا گیا تھا..
    زکوٰۃ نہ دینا علامت قیامت میں سے ہے...
    پرہیزگاروں کی صفات...
    یقیمون الصلوٰۃ وممّارزقنھم ینفقون..
    الصلوٰۃ(نماز).
    نماز میں سستی کرنے والے منافق ہیں...
    بے نمازی کافروں کے دوست ہیں...
    نماز کا چھوڑنا شیطان کو خوش کرنا ہے...
    نماز تقویٰ کی پہچان ہے...
    نماز آخرت پرایمان کی علامت ہے...
    نماز مسلمان کی پہچان ہے...
    نماز قرآن کریم پرایمان کی علامت ہے...
    اقامت نماز کعبۃ اللہ سے محبت کی علامت ہے...
    نماز کی بشارت عظمیٰ.....
    نماز برائیوں کو مٹانے والی ہے...
    دعائے ابراہیمی میں اقامت نمازکا ذکر..
    نمازچھوڑنے والے ناخلف ہیں...
    نماز روح کی تسکین سے....

    سب چیزیں اپنی نماز سے واقف ہیں...
    نصائح لقمان میں اقامت نماز کا ذکر..
    اقامت نماز میدان محشر میں محافظ ہے...
    نماز اللہ کی خوشنودی کا ذریعہ ہے...
    نمازی جنتی ہیں...
    بے نماز مغرور ہوتا ہے...
    بے نمازی ابوجہل کا بیٹا ہے...
    نمازسے غافل رہنے والوں کے لئے خرابی ہے...
    الانفاق(خرچ).
    قرابت داروں کا حق...

    امثال لانفاق..
    بخل..
    بخل قارون..
    باغ والوں کے بخل کا انجام..
    آئینۂ نماز و زکوٰۃ.
    آئینۂ نماز۔۱.

    آئینۂ زکوٰۃ.
    آئینۂ نماز۔۲.
    سجدۂ تلاوت...
    طریقۂ سجدہ اور اس کے اقسام..
    مسجدوں و دیگر سجدوں کا مختصر بیان..
    مسجدوں سے روکنے والاسب سے بڑا ظالم ہے :.
    مسجدوں کے آداب:.
    مساجد تعلق باللہ کا ذریعہ ہیں :.
    مسجدوں کی شہادت ہماری نافرمانیوں کا صلہ ہیں :.
    قبروں میں مسجدیں بنانا شرک ہے :.
    مساجد توحید باری تعالیٰ کے مرکز ہیں :.
    اللہ تعالیٰ کے عبادت گزار بندوں کیلئے مسجدوں کا صاف رکھنا ہے :.
     
    Last edited: ‏دسمبر 25، 2014
    • زبردست زبردست x 2
    • علمی علمی x 2
    • شکریہ شکریہ x 1
    • لسٹ
  2. ‏ستمبر 14، 2013 #2
    محمد نعیم یونس

    محمد نعیم یونس خاص رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 27، 2013
    پیغامات:
    26,402
    موصول شکریہ جات:
    6,600
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,207

    بسم اللہ الرحمن الرحیم
    افتتاحیہ​
    الحمد للہ رب العلمین الصلوۃ والسلام علی خاتم النبین و المرسلین رحمۃ للعلمین محمدوعلی الہ واصحابہ اجمعین امابعدہ!
    اللہ تعالیٰ کے رحم و کرم سے زیرِ نظر کتاب ''اقیموالصلوٰۃ و اٰتو الزکوٰۃ'' میری دوسری تصنیف ہے مطالعہ قرآن کریم کے دوران ہی مذکورہ نام سے کتاب مرتب کرنے کا خیال تھا چونکہ نماز اور زکوٰۃ کی ہم آہنگی قرآن کریم میں بار بار دہرائی گئی ہے ، اللہ تعالیٰ کی بندگی کے لیے نماز توحید باری تعالیٰ کے بعد ایک مومن مسلمان کے لیے روح کی حیثیت رکھتی ہے اس لئے اللہ تعالیٰ نے با ضابطہ پانچوں نمازوں کا قرآن کریم میں ذکر فرمایا اور اسی کے ساتھ ساتھ زکوٰۃ، انفاق، قرض حسنہ کی ترغیب اور بخل کی مذّمت بھی بیان فرمائی ہے
    صلوٰۃ کے لغوی معنی رحمت کا نازل ہونا، دعا کرنا، نماز و عبادت کرنا ہے اور کسی کے لئے اللہ سے رحمت کی دعا کرنا جیسے اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے :
    وَمِنَ الْأَعْرَ‌ابِ مَن يُؤْمِنُ بِاللَّـهِ وَالْيَوْمِ الْآخِرِ‌ وَيَتَّخِذُ مَا يُنفِقُ قُرُ‌بَاتٍ عِندَ اللَّـهِ وَصَلَوَاتِ الرَّ‌سُولِ ۚ ﴿٩٩التوبہ
    ''اور بعض دیہاتی ایسے بھی ہیں جو اللہ پر اور آخرت کے دن پر ایمان رکھتے ہیں اور جو کچھ خرچ کرتے ہیں اسی سے اللہ کا قرب چاہتے ہیں اور اس کی دعاؤں کا ذریعہ جانتے ہیں ''
    یہاں صلوٰۃ کی جمع صلوٰت ہے جو دعا کے لیے استعمال ہوا ہے مدینہ کے اطراف کے دیہاتی آپ کے پاس آتے تھے اور اللہ کی رضا کے لیے خرچ کرتے تھے جنہیں رسول اللہ ﷺ کی دعا کی سعادت نصیب ہوتی تھی چونکہ نماز بھی اللہ کے لیے ہے جس میں قیام و رکوع و سجود و ذکر اذکار ہیں جو اللہ کے لیے خاص ہیں اس لیے اس کو صلوٰۃ نماز کہتے ہیں
    اور ہم رحمۃ اللعلمین محمد رسول للہ ﷺ کے لیے اللہ تعالیٰ سے رحمت کی دعا کرتے ہیں کہ اللھم صل علیٰ محمد اے اللہ تو رحمتیں بھیج محمدﷺ پر اور آپ کی اٰل پر !(درود و سلام جیسے صل اللہ علیہ و سلم وغیرہم)
    ایک اور جگہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا:
    إِنَّ اللَّـهَ وَمَلَائِكَتَهُ يُصَلُّونَ عَلَى النَّبِيِّ ۚ يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا صَلُّوا عَلَيْهِ وَسَلِّمُوا تَسْلِيمًا ﴿٥٦الاحزاب
    ''بے شک اللہ اور اس کے فرشتے نبیﷺ پر درود بھیجتے ہیں تو اے مومنوں تم بھی اس پر درود (رحمتیں ) و سلام (سلامتی کی دعا) بھیجا کرو''
    اس لیے صلوٰۃ کے معنی رحمت کی دعا کرنا بھی ہے ایسی بہت سی مثالیں قرآن کریم میں ہیں اور زکوٰۃ کے لغوی معنی پاک کرنا، نیک کرنا، طہارت و پاکیزگی حاصل کرنا، نشو و نما پانا جیسے اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے :
    خُذْ مِنْ أَمْوَالِهِمْ صَدَقَةً تُطَهِّرُ‌هُمْ وَتُزَكِّيهِم بِهَا وَصَلِّ عَلَيْهِمْ ۖ إِنَّ صَلَاتَكَ سَكَنٌ لَّهُمْ ۗ وَاللَّـهُ سَمِيعٌ عَلِيمٌ ﴿١٠٣التوبہ
    ''آپ ان کے مالوں سے صدقات (و زکوٰۃ) قبول کیا کریں اور اس کے ذریعہ ان کو پاک وصاف کر دیں اور ان کے لیے دعا کریں کیوں کہ آپ کی دعا ان کے لیے سکون کا باعث ہے اور اللہ سننے والا جاننے والا ہے ''
    ایسی بہت سی مثالیں قرآن کریم میں موجود ہیں چونکہ صدقات و زکوٰۃ کی ادائیگی سے مال پاک ہوتا ہے جو خیر و برکت کا باعث ہے اس لئے صاحب نصاب کے لیے ادائیگی زکوٰۃ فرض ہے تاکہ مال پاک ہو جائے (آخری صفحات میں نصاب بیان کیا گیا ہے )اسی طرح پانچ وقتوں کی نمازوں کا اللہ تعالیٰ نے اس طرح ذکر فرمایا
     
    Last edited: ‏دسمبر 24، 2014
    • زبردست زبردست x 2
    • شکریہ شکریہ x 1
    • علمی علمی x 1
    • لسٹ
  3. ‏ستمبر 14، 2013 #3
    محمد نعیم یونس

    محمد نعیم یونس خاص رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 27، 2013
    پیغامات:
    26,402
    موصول شکریہ جات:
    6,600
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,207

    پانچ نمازیں قرآن میں
    أَقِمِ الصَّلَاةَ لِدُلُوكِ الشَّمْسِ إِلَىٰ غَسَقِ اللَّيْلِ وَقُرْ‌آنَ الْفَجْرِ‌ ۖ إِنَّ قُرْ‌آنَ الْفَجْرِ‌ كَانَ مَشْهُودًا ﴿٧٨الاسرا
    ترجمہ :نماز کو قائم کریں آفتاب کے ڈھلنے سے لے کر رات کی تاریکی تک اور فجر کا قرآن پڑھنا بھی یقیناً فجر کے وقت کا قرآن پڑھنا حاضر کیا گیا ہے
    توضیح : اللہ تعالیٰ نے اس آیت میں پانچوں اوقات کی نمازیں قائم کرنے کا حکم دیا ہے آفتاب کے ڈھلنے یعنی زوال کے بعد نماز ظہر اور نماز عصر پڑھنا اور رات کی تاریکی تک شروع میں نماز مغرب اور تاریکی تک نماز عشاء پڑھنا اور پھر نماز فجر کا حکم کے ساتھ اس کی اہمیت بیان فرمایا:فجر کی نماز میں طویل قرآن اور فجر کی نماز کے بعد قرآن کریم کی تلاوت چونکہ اس وقت میں فرشتوں کی حاضری ہوتی ہے جب اللہ کے بندے قرآن کریم کی تلاوت کرتے ہیں تو فرشتے اللہ کے کلام کو غور سے سنتے ہیں مبارک ہیں وہ لوگ جنہیں یہ سعادت نصیب ہو جائے
    فَاصْبِرْ‌ عَلَىٰ مَا يَقُولُونَ وَسَبِّحْ بِحَمْدِ رَ‌بِّكَ قَبْلَ طُلُوعِ الشَّمْسِ وَقَبْلَ غُرُ‌وبِهَا ۖ وَمِنْ آنَاءِ اللَّيْلِ فَسَبِّحْ وَأَطْرَ‌افَ النَّهَارِ‌ لَعَلَّكَ تَرْ‌ضَىٰ ﴿١٣٠طہ
    ترجمہ :پس ان کی باتوں پر صبر کر اور اپنے پروردگار کی تسبیح اور تعریف بیان کرتا رہ، سورج نکلنے سے پہلے اور اس کے ڈوبنے سے پہلے ، رات کے مختلف وقتوں میں بھی اور دن کے حصوں میں بھی تسبیح کرتا رہ، بہت ممکن ہے کہ تو راضی ہو جائے
    توضیح :مشرکین مکہ آپ ﷺ کو طعنے دیتے تھے ، کوئی دیوانہ کہتا تو کوئی مذمم، کوئی ساحر جادوگر وغیرہ اللہ تعالیٰ نے ان کی خبیث حرکتوں کے لئے آپﷺ کو صبر کرنے کی تلقین فرمائی اور پانچوں نمازوں میں اس کی تسبیح و تعریف کا حکم دیا جس سے روح کو تسکین ملتا ہے اس آیت میں تسبیح (پاکی بیان کرنا) پنجوقتہ نماز ہے سورج نکلنے سے پہلے فجر کی نماز ہے اور سورج ڈوبنے سے پہلے عصر کی نماز ہے رات کے مختلف وقتوں میں مغرب اور عشاء کی نماز ہے اور دن کے حصہ میں ظہر کی نماز ہے گویا پانچوں نمازوں کے اوقات کا تعین ہے اور پھر ان نمازوں میں پوری اللہ کی پاکیزگی حمد و ثناء ہے کتنا بڑا اللہ تعالیٰ کا انعام و اکرام ہے اس امت پر اسی نمازوں سے آپ ﷺ کا نفس بھی راضی ہو جائے گا اور جس کا اللہ نے وعدہ کیا ہے
    فَأَمَّا الَّذِينَ آمَنُوا وَعَمِلُوا الصَّالِحَاتِ فَهُمْ فِي رَ‌وْضَةٍ يُحْبَرُ‌ونَ ﴿١٥﴾ وَأَمَّا الَّذِينَ كَفَرُ‌وا وَكَذَّبُوا بِآيَاتِنَا وَلِقَاءِ الْآخِرَ‌ةِ فَأُولَـٰئِكَ فِي الْعَذَابِ مُحْضَرُ‌ونَ ﴿١٦الروم
    ترجمہ :جو ایمان لا کر نیک اعمال کرتے رہے وہ تو جنت میں خوش و خرم کر دئیے جائیں گے اور جنھوں نے کفر کیا تھا اور ہماری آیتوں کو اور آخرت کی ملاقات کو جھوٹا ٹھہرایا تھا وہ عذاب میں پکڑ کر حاضر رکھے جائیں گے پس اللہ تعالیٰ کی تسبیح پڑھا کرو جب کہ تم شام کرو اور جب صبح کرو تمام تعریفوں کے لائق آسمان و زمین میں صرف وہی ہے تیسرے پہر کو اور ظہر کے وقت بھی (اس کی پاکیزگی بیان کرو)
    توضیح : اللہ تعالیٰ نے یہاں مومنین و کافرین کے فرق کو واضح فرمایا کہ مومن نیک اعمال کرتے ہیں اور کافرین ہٹ دھرم بے ایمان ہوتے ہوئے ہیں مومنین پنجوقتہ نمازی ہوتے ہیں اور کافرین بے نمازی اسی لئے اللہ تعالیٰ نے یہاں پانچوں نماز کا ذکر فرمایا تسبیح بیان کرنا یعنی پانچوں اوقات میں نمازوں کی پابندی کرنا تمسون (شام کرو) میں مغرب و عشا کی نمازیں ہیں اور تصبحون (صبح کرو) میں فجر کی نماز ہے اور عشیا سہ پہر میں عصر کی نماز اور تظھرون ظہر کی نماز ہے گویا پنجوقتہ نمازی اصل میں مومن ہیں جنھیں رب العلمین جنت الفردوس میں مقام عطا کرے گا۔
     
    Last edited: ‏دسمبر 24، 2014
    • پسند پسند x 1
    • علمی علمی x 1
    • لسٹ
  4. ‏ستمبر 14، 2013 #4
    محمد نعیم یونس

    محمد نعیم یونس خاص رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 27، 2013
    پیغامات:
    26,402
    موصول شکریہ جات:
    6,600
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,207

    پانچ نمازیں حدیث سے

    معراج میں رحمۃ اللعلمین رسول اللہ ﷺ کو ملا تحفہ
    جب آپ ﷺ اللہ تعالیٰ کے مہمان ہوئے تو اللہ تعالیٰ نے آپ ﷺ پر پچاس وقت کی نماز فرض کی رسول اللہ ﷺ وہاں سے واپس ہوئے تو آپ کی حضرت موسیٰ علیہ السلام سے ملاقات ہوئی موسیٰ علیہ السلام نے پوچھا ''آپ کو کیا حکم ملا؟'' رسول اللہ ﷺ نے فرمایا ''مجھ پر ایک دن میں پچاس نمازیں فرض کی گئی ہیں ''موسیٰ علیہ السلام نے فرمایا ''میں لوگوں کو آپ سے زیادہ جانتا ہوں اللہ کی قسم میں نے بنی اسرائیل کا خوب تجربہ کیا ہے اور بے شک آپ کی امت ہر روز پچاس نمازیں پڑھنے کی طاقت نہیں رکھتی آپ واپس جائیں اور اللہ تعالیٰ سے تخفیف کی درخواست کریں ''تو رسول اللہ ﷺ واپس تشریف لے گئے اوپر پہنچ کر رسول اللہ ﷺ نے تخفیف کی درخواست کی اللہ نے دس کم کر کے چالیس کر دیں پھر رسول اللہ ﷺ واپس ہوئے تو آپ ﷺ پھر موسیٰ علیہ کے پاس سے گزرے پھر حضرت موسیٰ علیہ السلام سے اسی طرح گفتگو ہوئی تو آپ پھر اوپر تشریف لے گئے اللہ سے تخفیف کی درخواست کی تو اللہ تعالیٰ نے دس کم کر کے تیس کر دیں رسول اللہ ﷺ واپس ہوئے پھر موسیٰ علیہ السلام سے ملاقات ہوئی پھر اسی طرح گفتگو ہوئیں رسول اللہ ﷺ پھر اوپر گئے اللہ سے تخفیف کی درخواست کی تو اللہ تعالیٰ نے کم کر کے بیس کر دیں وہاں سے رسول اللہ ﷺ پھر واپس ہوئے پھر حضرت موسیٰ علیہ السلام سے ملاقات ہوئی پھر اسی طرح باتیں ہوئیں ، رسول اللہ ﷺ واپس تشریف لے گئے اللہ تعالیٰ سے تخفیف کی درخواست کی تو اللہ عزوجل نے دس اور کم کر کے دس نمازیں مقرر کر دیں رسول اللہ ﷺ وہاں سے واپس ہوئے تو موسیٰ علیہ السلام سے پھر ملاقات ہوئی اور پھر وہی باتیں ہوئیں رسول اللہ ﷺ پھر اوپر تشریف لے گئے اور اللہ سے تخفیف کی درخواست کی اللہ تعالیٰ نے پانچ اور کم کر کے پانچ نمازیں مقرر کر دیں واپسی میں پھر حضرت موسیٰ علیہ السلام سے ملاقات ہوئی انھوں نے پوچھا کیا حکم ملا؟ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا مجھے ہر روز پانچ نمازیں پڑھنے کا حکم دیا گیا ہے موسیٰ علیہ السلام نے کہا آپ ﷺ کی امت ہر روز پانچ نمازیں پڑھنے کی بھی طاقت نہیں رکھتی میں نے آپ ﷺ سے پہلے لوگوں کو خوب تجربہ کیا ہے اور بنی اسرائیل کی خوب جانچ کی ہے آپ اپنے رب کے پاس جائیے اور اپنی امت کے لیے تخفیف کی درخواست کیجئے رسول اللہ ﷺ نے فرمایا کئی مرتبہ درخواست کر چکا ہوں اب تو مجھے شرم آتی ہے بس اب تومیں راضی ہوں اور (پانچ نمازوں کو ) تسلیم کرتا ہوں ۔
    جب رسول اللہ ﷺ واپس ہوئے تو اللہ تبارک و تعالیٰ عزوجل نے آپؐ کو پکارا اور کہا ''میں نے اپنا فریضہ جاری کر دیا اور اپنے بندوں پر تخفیف بھی کر دی میں ایک نیکی کا بدلہ دس دونگا اسی طرح پانچ نمازیں پچاس کے برابر ہوں گی میری بات بدلہ نہیں کرتی(صحیح بخاری باب المعراج)
    اللہ تعالیٰ کے انعام و اکرام و احسان پر ذرا انسان غور کرے کہ اللہ نے ان پانچ نمازوں کے ثواب کو پچاس نمازوں کے برابر فرما دیا انسان ایسے انعامات کو ضائع کرے تو اس سے بڑھ کر بدنصیبی اور کیا ہو گی۔
     
    • پسند پسند x 1
    • علمی علمی x 1
    • لسٹ
  5. ‏ستمبر 14، 2013 #5
    محمد نعیم یونس

    محمد نعیم یونس خاص رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 27، 2013
    پیغامات:
    26,402
    موصول شکریہ جات:
    6,600
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,207

    آیات قرض حسنہ
    اسی طرح قرض حسنہ کے تعلق سے اللہ رب العلمین نے کئی مقام پر ایمان والوں کو حکم دیا ہے کہ وہ اس کے راستے میں خرچ کریں اللہ کا ارشاد ہے :
    مَّن ذَا الَّذِي يُقْرِ‌ضُ اللَّـهَ قَرْ‌ضًا حَسَنًا فَيُضَاعِفَهُ لَهُ أَضْعَافًا كَثِيرَ‌ةً ۚ وَاللَّـهُ يَقْبِضُ وَيَبْسُطُ وَإِلَيْهِ تُرْ‌جَعُونَ ﴿٢٤٥البقرہ
    ترجمہ :ایسا بھی کوئی ہے جو اللہ تعالیٰ کو اچھا قرض دے پس اللہ تعالیٰ اسے بہت بڑھا چڑھا کر عطا فرمائے ، اللہ ہی تنگی اور کشادگی کرتا ہے اور تم سب اسی کی طرف لوٹائے جاؤ گے ۔
    توضیح : اللہ کی راہ میں اور جہاد میں مال خرچ کرنا ہے یعنی جان کی طرح مالی قربانی میں بھی تامل مت کرو رزق کی کشادگی اور کمی بھی اللہ کے اختیار میں ہے اور وہ دونوں طریقوں سے تمہاری آزمائش کرتا ہے کبھی رزق میں کمی کر کے اور کبھی اس میں فراوانی کر کے پھر اللہ کی راہ میں خرچ کرنے سے تو کمی بھی نہیں ہوتی اللہ تعالیٰ اس میں کئی کئی گناہ اضافہ فرماتا ہے ، حساب کے دن میں تو یقیناً اس میں اضافہ حیران کن ہو گا جہاں انسان کو ایک ایک نیکی کی ضرورت ہو گی۔
    مَّن ذَا الَّذِي يُقْرِ‌ضُ اللَّـهَ قَرْ‌ضًا حَسَنًا فَيُضَاعِفَهُ لَهُ وَلَهُ أَجْرٌ‌ كَرِ‌يمٌ ﴿١١الحدید
    ترجمہ :کون ہے جو اللہ تعالیٰ کو اچھی طرح قرض دے پھر اللہ تعالیٰ اسے اس کے لیے بڑھاتا چلا جائے اور اس کے لیے پسندیدہ عزت والا ثواب ہے ۔
    توضیح :خوش نصیب ہیں وہ لوگ جو اللہ تعالیٰ کے دیئے ہوئے فضل کو امانت سمجھتے ہوئے ضرورت مندوں کو دیں اور بشارت الٰہی کے مستحق ہوں ۔
    إِنَّ الْمُصَّدِّقِينَ وَالْمُصَّدِّقَاتِ وَأَقْرَ‌ضُوا اللَّـهَ قَرْ‌ضًا حَسَنًا يُضَاعَفُ لَهُمْ وَلَهُمْ أَجْرٌ‌ كَرِ‌يمٌ ﴿١٨الحدید
    ترجمہ :بے شک صدقہ دینے والے مرد اور صدقہ دینے والی عورتیں اور جو اللہ کو خلوص کے ساتھ قرض دے رہے ہیں ان کے لیے یہ بڑھایا جائے گا اور ان کے لیے پسندیدہ اجر و ثواب ہے ۔
    توضیح : اللہ تعالیٰ نے ان مردوں اور عورتوں کی تعریف فرمائی ہے جو اخلاص کے ساتھ اللہ کے راستہ میں خرچ کرتے ہیں اس اللہ کو قرض حسنہ دے رہے ہیں جس نے اتنی عظیم کائنات کی ساری چیزوں کو احسن اندازے میں پیدا فرمایا اور ہر ایک کی وہ ضرورتیں پوری فرما رہا ہے وہی آخرت میں اس کے بدل وہ اجر دے گا جس کا ہم تصور بھی نہیں کر سکتے۔
    إِن تُقْرِ‌ضُوا اللَّـهَ قَرْ‌ضًا حَسَنًا يُضَاعِفْهُ لَكُمْ وَيَغْفِرْ‌ لَكُمْ ۚ وَاللَّـهُ شَكُورٌ‌ حَلِيمٌ ﴿١٧التغابن
    ترجمہ :اگر تم اللہ کو اچھا قرض دو گے (یعنی اس کی راہ میں خرچ کرو گے ) تو وہ اسے تمہارے لیے بڑھاتا جائے گا اور تمہارے گناہ بھی معاف فرما دے گا اللہ بڑا قدردان بڑا بردبار ہے ۔
    توضیح : اللہ تعالیٰ نے اس آیت میں ایک خاص انعام کا اشارہ فرمایا ہے کہ انسان خطاکار ہے اس سے خطائیں سر زد ہوتی ہیں اللہ تعالیٰ اس قرض حسنہ کی وجہ سے در گزر کا معاملہ فرمائے گا کہ میرے بندے نے میری رضا و خوشنودی کے لیے میری راہ میں خرچ کیا تھا آج ہم اسے اس کا اجر دیں گے ۔
    وَأَقْرِ‌ضُوا اللَّـهَ قَرْ‌ضًا حَسَنًا ۚ وَمَا تُقَدِّمُوا لِأَنفُسِكُم مِّنْ خَيْرٍ‌ تَجِدُوهُ عِندَ اللَّـهِ هُوَ خَيْرً‌ا وَأَعْظَمَ أَجْرً‌ا ۚ وَاسْتَغْفِرُ‌وا اللَّـهَ ۖ إِنَّ اللَّـهَ غَفُورٌ‌ رَّ‌حِيمٌ ﴿٢٠المزمل
    ترجمہ :اور اللہ تعالیٰ کو اچھا قرض دو اور جو نیکی تم اپنے لیے آگے بھیجو گے اسے اللہ تعالیٰ کے ہاں بہتر سے بہتر اور ثواب میں بہت زیادہ پاؤ گے اللہ تعالیٰ سے معافی مانگتے رہو یقیناً اللہ تعالیٰ بخشنے والا مہربان ہے ۔
    توضیح : فی سبیل اللہ خرچ کرنے والوں پر اللہ تعالیٰ کی رحمت نازل ہوتی ہے چونکہ اس کی صفت ہی غفورالرحیم ہے یہاں ہم سب کچھ چھوڑ جائیں گے مگر جو کچھ ہم نے خرچ کیا اللہ کی راہ میں اللہ کے یہاں اضافے کے ساتھ ہمیں نصیب ہو گا۔
    جب یہ آیت نازل ہوئیں تو حضرت ابولدحداح رضی اللہ عنہ نے عرض کی کہ یا رسول اللہ میرے ماں باپ آپﷺ پر قربان ہو اللہ تعالیٰ ہم نے قرض مانگتے ہیں حالانکہ وہ ذات قرض سے بے نیاز ہے آپ نے فرمایا ہاں اللہ ہی قرض مانگتے ہیں تاکہ اس کے بدلے میں وہ تمہیں جنت میں داخل کر دے انھوں نے عرض کی تومیں اپنے پروردگار کو قرض دیتا ہوں کیا وہ مجھے اور میری بچی دحداحہ کو جنت میں داخل کرے گا؟آپ نے فرمایا ہاں تو انھوں نے کہا لائیے اپنا دست مبارک بڑھائیے تو آپﷺ نے اپنا ہاتھ آگے بڑھا دیا تو اسے پکڑ کر کہنے لگے دو باغ میری ملکیت میں ہے ایک مدینے کے زیریں علاقہ میں ہے اور دوسرا بالائی حصہ میں ہے ان دو باغوں کے علاوہ اللہ کی قسم اور کوئی چیز میرے پاس نہیں میں یہ دونوں باغ اللہ کو قرض دیتا ہوں ، تو آپ ﷺ نے فرمایا ان میں سے ایک اللہ کی راہ میں دے دو اور دوسرا اپنی اور اپنے اہل و عیال کی گزر اوقات کے لئے رکھ لو اس پر ابو الداحدح رضی اللہ عنہ نے کہا پھر اے اللہ کے رسول ان میں سے جو بہتر ہے وہ اللہ کی راہ میں دیتا بہوں آپ گواہ رہیں اس باغ میں چھ سو کھجور کے درخت ہیں رسول اللہ ﷺ نے فرمایا اس انفاق کے بدلے میں اللہ تعالیٰ آپ کو جنت میں داخل کرے گا تو آپ رضی اللہ عنہ یہ کہہ کر چل دیئے اور باغ میں پہنچے جہاں ام لداحداح اپنے بچوں کے ہمراہ کھجوروں کے درختوں میں پھر رہی تھیں انھیں دیکھ کر آپ نے یہ کہا:میں یہ باغ اللہ کو بطور قرض خوش دلی سے دے دیا ہے یہ سنتے ہی آپ کی بیوی نے اپنے شوہر کی تحسین فرماتے ہوئے بچوں کو لے کر باغ سے نکل گئی اور بچوں کے دامن و جیب میں جو کھجوریں تھیں اور جو ان کے منہ میں تھی سب نکلوا کر وہیں ڈھیر کر دی۔
    انہیں آیات کے پیش نظر نبی اکرم ﷺ نے اصحاب کرام رضی اللہ عنہم کو فی سبیل اللہ خرچ کرنے کی ترغیب دلائی تو حضرت ابو عقیل انصاری رضی اللہ عنہ ایک عجیب و غریب مثال قائم فرمائی خود اپنی زبانی وہ بیان کرتے ہیں کہ آپﷺ کا حکم پاتے ہی میں تڑپ اٹھا اور اس وقت میرے پاس کچھ نہ تھا کہ خرچ کروں آخر کام کی تلاش میں نکل پڑا تو اللہ تعالیٰ نے میری تمنا پوری فرما دیا دی مجھے ایک جگہ مزدوری مل گئی ایک یہودی کا کھیت سیراب کرنے کا کام دو صاع کھجور کے بدلے تومیں نے ساری رات اپنی پیٹھ پر پانی لاد کر سنچائی کرتا رہا صبح تک پورا کام کیا، صبح ہوئی تو اس یہودی نے دو صاع کھجوریں مزدوری میں دیں تو ایک صاع نکال کر اپنے گھر والوں کے لئے لے گیا اور دوسرا صاع اللہ تعالیٰ کی رضا و خوشنودی کے لئے دربار رسالت مآب ﷺ کی خدمت بابرکت میں حاضر کر دیا (الطبرانی)صحابہ رسولﷺ کے اس نیک عمل سے اللہ تعالیٰ نے خوش ہو کر سورۂ التوبہ، آیت نمبر ۷۹ نازل فرمائی سبحان اللہ۔
    اسی طرح احادیث نبوی ﷺ میں بھی نماز اور زکوٰۃ کو یوں بیان کیا گیا ہے :
    عن عمربن الخطاب رضی اللہ عنہ قال بینما نحن عند رسول اللہ ﷺ ذات یوم اذاطلع علینا رجل الحدیث رواہ مسلم
    ''حضرت عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ ایک دن ہم رسول اللہ ﷺ کی خدمت میں حاضر تھے کہ اچانک ایک شخص ہمارے سامنے آیا جس کے کپڑے نہایت سفید اور بال بہت ہی سیاہ تھے ، نہ اس پر سفر کا کوئی اثر نمایاں تھا اور نہ ہم میں سے کوئی اسے پہچانتا تھا یہاں تک کہ نبی ﷺ کے پاس بیٹھ گیا اور اس نے اپنے گھٹنے آپ ﷺ کے گھٹنوں سے ملا دئیے اور اپنے ہاتھ آپ ﷺ کی رانوں پر رکھ دئیے اور کہا:اے محمد! مجھے اسلام کے بارے میں بتائیے رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: اسلام یہ ہے کہ تم یہ شہادت دوکہ اللہ کے سوا کوئی الٰہ نہیں اور محمد اللہ کے رسول ہیں اور نماز قائم کرو اور زکوٰۃ دو اور رمضان کے روزے رکھو اور اللہ کے گھرکا حج کرو، اگر اس کے راستے کی استطاعت رکھتے ہو
    اس نے کہا:آپ نے سچ کہا۔
    حضرت عمر رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ ہمیں اس پر تعجب ہوا کہ وہ آپ سے سوال بھی کرتا ہے اور اس کی تصدیق بھی کرتا ہے
    پھر اس نے کہا:مجھے ایمان کے بارے میں بتائیے ۔
    آپﷺ نے فرمایا:ایمان یہ ہے کہ تم اللہ اور اس کے فرشتوں ، اس کی کتابوں ، اس کے رسولوں اور یوم آخر اور تقدیر کے خیرو شر پر ایمان لاؤ۔
    اس نے کہا:آپ نے سچ کہا۔
    پھر کہا:مجھے احسان کے بارے میں بتائیے ۔
    آپﷺ نے فرمایا:احسان یہ ہے کہ تم اللہ کی عبادت اس طرح کرو گویا تم اسے دیکھ رہے ہو کیونکہ اگر تم اسے نہیں دیکھتے ہو تو وہ تو تمہیں دیکھ رہا ہے ۔
    اس نے پھر کہا:مجھے اس گھڑی قیامت کے بارے میں بتائیے ۔
    آپ نے فرمایا:جس سے پوچھا جا رہا ہے وہ اسے پوچھنے والے سے زیادہ نہیں جانتا۔
    اس نے کہا:اچھا، مجھے اس کی نشانیوں سے آگاہ کیجئے ۔
    آپ نے فرمایا:نشانی یہ ہے کہ لونڈی اپنی مالکہ کو جنے گی اور تم ننگے پاؤں اور ننگے جسم والے کنگالوں اور بکریاں چرانے والوں کو دیکھو گے کہ وہ عمارتوں میں ایک دوسرے سے بڑھ چڑھ کر رہنا چاہتے ہیں ۔
    حضرت عمر رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ پھر وہ چلا گیا اور میں کچھ دیر ٹھہرا رہا پھر آپ ﷺ نے مجھ سے فرمایا:اے عمر!کیا تمہیں معلوم ہے کہ یہ پوچھنے والا کو ن تھا؟
    میں نے کہا:اللہ اور اس کے رسول زیادہ جانتے ہیں ۔
    آپﷺ نے فرمایا:وہ جبرئیل علیہ السلام تھے ، تمہارے پاس آئے تھے کہ تمہیں تمہارے دین کی تعلیم سکھا دیں ۔

    توضیح : اللہ تعالیٰ نے اسلامی تعلیمات کے اہم ستون کو بتانے کے لیے حضرت جبرئیل علیہ السلام کو بھیجا جو انسانی شکل میں تشریف لائے تھے اس اہم ستونوں میں نماز اور زکوٰۃ بھی ہے جواس کا منکر ہو گا یا تساہل برتے گا وہ کافر ہو گا۔
    عن انس بن مالک رضی اللہ عنہ قال نھینا ان نسال رسول اللہ ﷺ عن شی فکان یعحبنا ان یجیٔ الرجل(الحدیث متفق علیہ)
    ''حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے وہ فرماتے ہیں کہ ہم کو ممانعت کر دی گئی تھی کہ رسول اللہ ﷺ سے کچھ پوچھیں تو ہمیں اس بات سے خوشی ہوتی تھی کہ کوئی سمجھ دار بدوی آئے اور آپﷺ سے کچھ پوچھے اور ہم سنیں چنانچہ اہل بادیہ میں سے ایک شخص آیا اس نے کہا:اے محمد!آپ کا قاصد ہمارے پاس آیا اور ہم سے بیان کیا کہ آپ کا کہنا ہے کہ اللہ نے آپ کو رسول بنا کر بھیجا ہے آپﷺ نے فرمایا:اس نے سچ کہا پھر اس شخص نے کہا:آسمان کو کس نے پیدا کیا؟آپﷺ نے فرمایا:اللہ نے اس نے کہا: زمین کو کس نے پیدا کیا آپﷺ نے فرمایا: اللہ نے پھر اس نے کہا:یہ پہاڑ کس نے کھڑے کئے ہیں اور ان میں جو کچھ بنایا ہے وہ کس نے بنایا ہے ؟ آپ نے فرمایا:اللہ نے اس نے کہا:پس قسم ہے اس ذات کی جس نے آسمان اور زمین کو پیدا کیا اور یہ پہاڑ کھڑے کئے ، کیا اللہ نے آپﷺ کو بھیجا ہے ؟ آپ نے فرمایا: ہاں اس نے کہا:آپﷺ کے قاصد نے بیان کیا کہ ہمارے دن اور رات میں ہم پر پانچ نمازیں فرض ہیں آپﷺ نے فرمایا: اس نے سچ کہا اس نے کہا:قسم ہے اس کی جس نے آپﷺ کو رسول بنا کر بھیجا ہے کیا اللہ نے آپﷺ کو اس کا حکم دیا ہے ؟فرمایا:ہاں اس نے کیا:اور آپﷺ کے قاصد نے بیان کیا کہ ہم پر ہمارے مالوں میں زکوٰۃ بھی فرض ہے فرمایا: اس نے سچ کہا اس نے کہا:قسم ہے اس ذات کی جس نے آپﷺ کو رسول بنا کر بھیجا ہے کیا اللہ نے آپ کو اس کا حکم دیا ہے ؟ فرمایا: ہاں اس نے کہا:آپ کے قاصد نے بیان کیا تھا کہ سال میں رمضان کے روزے بھی ہم پر فرض ہے فرمایا:اس نے سچ کہا اس نے کہا:قسم ہے اس ذات کی جس نے آپﷺ کو رسول بنا کر بھیجا ہے کیا اللہ نے آپ کو اس کا حکم دیا ہے فرمایا: ہاں اس نے کہا:آپ کے قاصد نے یہ بھی بیان کیا کہ ہم میں سے اس پربتی اللہ کا حج فرض ہے جو اس تک پہنچنے کی استطاعت رکھتا ہو فرمایا:اس نے سچ کہا (راوی) بیان کرتے ہیں کہ پھر وہ شخص یہ کہتا ہوا واپس ہوا کہ اس ذات کی قسم جس نے آپ کو حق کے ساتھ مبعوث کیا ہے ، میں ان میں اپنی طرف سے نہ کچھ بڑھاؤں گا اور نہ ان میں کوئی کمی کروں گا اس پر نبی ﷺ نے فرمایا اگر یہ سچا ہے تو ضرور جنت میں داخل ہو گا'' (بخاری ومسلم)
    اسلام میں نماز اور زکوٰۃ کی اہمیت کا اندازہ بخوبی لگایا جا سکتا ہے جس کے بغیر ایمان ادھورا ہے ۔
     
    Last edited: ‏دسمبر 24، 2014
    • پسند پسند x 1
    • علمی علمی x 1
    • لسٹ
  6. ‏ستمبر 14، 2013 #6
    محمد نعیم یونس

    محمد نعیم یونس خاص رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 27، 2013
    پیغامات:
    26,402
    موصول شکریہ جات:
    6,600
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,207

    زکوٰۃ نہ دینے والوں کی سزا
    وعن الی ھریرۃ رضی اللہ عنہ قال:قال رسول اللہ ﷺ:من اتآہ اللہ مالا فلم یود زکوتہ مثل لہ مالہ یوم القیمۃ شجاعا اقرع لہ زبیبتان یطوقہ یوم القیمۃ ثم یاخذ بلھز متیہ (یعنی شدقیہ) ثم یقول: انامالک اناکنزک ثم قرء ولا یحسبن الذین یبخلون الایۃ بخاری
    ''حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا:جس شخص کو اللہ نے مال دیا پھر اس نے اس کی زکوٰۃ نہیں ادا کی تو اس کا مال قیامت کے دن نہایت زہریلے گنجے سانپ کی شکل اختیار کر لے گا جس کے سرپر دو سیاہ نقطے ہوں گے اور وہ اس کے گلے کا طوق بن جائے گا پھر وہ سانپ اس کے دونوں جبڑے کو پکڑے گا اور کہے گا میں تیرا مال ہوں ، میں تیرا خزانہ ہوں ''
    عن ابی ھریرۃ رضی اللہ عنہ قال رسول اللہ ﷺ قال اللہ تعالیٰ انفق یا ابن ادم انفق علیک(رواہ البخاری)
    ترجمہ :حضرت ابوہریرۃ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے ارشاد فرمایا کہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا:اے ابن آدم تو خرچ کر میں تجھ پر خرچ کروں گا۔
    توضیح :
    جو ضرورت مندوں پر خرچ کرے گا تو اللہ تعالیٰ اس پر خرچ کرے گا اور اس کی غیب سے مدد کرے گا اللہ تعالیٰ کے راستہ میں خرچ کرنے سے مال میں کمی نہیں ہوتی بلکہ اللہ خیرو برکت کے دروازے کھولتا ہے اور اسے ہر مصیبت و پریشانی سے بچاتا ہے مگر لعین شیطان ہے کہ محتاجی کی بات ڈالتا ہے کہ تم خرچ کرو گے تو محتاج ہو جاؤ گے تو بخیل شخص شیطان کی بات مان لیتا ہے ادھر اللہ تعالیٰ نے بخشش و برکت کا وعدہ فرمایا ہے کہ جو شخص اس کی راہ میں خرچ کرے گا اسے دونوں جہاں میں بہتر بدلہ دیا جائے گا۔
     
  7. ‏ستمبر 14، 2013 #7
    محمد نعیم یونس

    محمد نعیم یونس خاص رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 27، 2013
    پیغامات:
    26,402
    موصول شکریہ جات:
    6,600
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,207

    نماز کی اہمیت
    وعن ابی ھریرۃ ان رسول اللہ ﷺقال:والذی نفسی بیدہ لقد ھممت ان آمر بحطب فیحطب ثم امربالصلوٰۃ فیوذن بھاثم آمر رجلا فیوم الناس ثم اخالف الی رجال فاحرق علیھم بیوتھم بخاری ومسلم
    ''حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا:قسم ہے اس ذات کی جس کے قبضہ میں میری جان ہے ،میں نے ارادہ کیا کہ حکم دوں کہ لکڑیاں جمع کی جائیں ، پھر نماز کا حکم دوں اور اس کے لئے اذان دی جائے پھر ایک شخص کو لوگوں کا امام مقرر کروں پھر لوگوں کی طرف جاؤں (جو نماز میں حاضر نہیں ہوتے ) اور ان کے گھروں کو آگ لگا دوں ''۔
    وعن ابی الدرذآء قال:قال رسول اللہ ﷺ :مامن ثلثلۃ فی قریۃ ولابدولاتقام فیھم الصلوٰۃ الاقد استحوذعلیھم الشیطان فعلیک بالجماعۃ فانمایاکل الذئب القاصیۃ ابوداؤد
    ''ابودرداء رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺ نے فرمایا: کسی بستی یا بادیہ میں تین آدمی ہوں اور وہاں نماز یا جماعت کا اہتمام نہ ہوتا تو ان پر شیطان قابو پا لیتا ہے تو تم جماعت کی پابندی کو اپنے اوپر لازم کر لو کیونکہ بھیڑیا اسی بھیڑ کو کھاتا ہے جو گلے سے دور رہتی ہے ۔
     
  8. ‏ستمبر 14، 2013 #8
    محمد نعیم یونس

    محمد نعیم یونس خاص رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 27، 2013
    پیغامات:
    26,402
    موصول شکریہ جات:
    6,600
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,207

    قرض حسنہ کی مثال
    وعن ابن مسعود رضی اللہ عنہ قال:قال رسول اللہ ﷺ:ایکم مال وارثہ احب الیہ من مالہ؟ قالوا: یا رسول اللہ!مامنا احدالامالہ احب الیہ قال:فان مالہ ماقدم ومال وارثہ ما اخر بخاری مسلم
    ''ابن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: تم میں کس کو اپنے مال سے بڑھ کر اپنے وارث کا مال زیادہ عزیز ہے ؟(صحابہ رضی اللہ عنہم نے ) عرض کیا: اے اللہ کے رسولﷺ! ہم میں تو ہر ایک کا اپنا ہی مال سب سے زیادہ عزیز ہے آپ نے فرمایا: اس کا مال تو وہی ہے جواس نے آگے بھیجا اور وہ اس کے وارث کا مال ہے جواس نے پیچھے چھوڑا''
     
  9. ‏ستمبر 14، 2013 #9
    محمد نعیم یونس

    محمد نعیم یونس خاص رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 27، 2013
    پیغامات:
    26,402
    موصول شکریہ جات:
    6,600
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,207

    بخل کی مذمت
    وعن ابی ھریرۃ رضی اللہ عنہ قال رسول اللہ ﷺ:مثل البخیل والمتصدق:کمثل رجلین علیھما جنتان من حدیدقد اضطرت اید یھما الی ثد یھماوتر قیھما فجعل المتصدق کلما تصدق لصدقۃ انبسطت عنہ وجعل البخیل کلما ھم بصد قۃ قلصت واخدت کل حلقۃ بمکا نھا مسلم بخاری
    ''حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا:بخیل اور صدقہ دینے والوں کی مثال ان دو آدمیوں کی سی ہے جنھوں نے لوہے کی زرہیں پہن رکھی ہوں ، ان دونوں کے ہاتھ سینے اور حلق تک جکڑے ہوئے ہیں ، صدقہ دینے والا جب بھی صدقہ دیتا ہے تو وہ زرہ کشادہ ہو جاتی ہے اور بخیل جب صدقہ دینے کا خیال کرتا ہے تو وہ زرہ مزید تنگ ہو جاتی ہے اور زرہ کا ہر حلقہ اپنی جگہ پر بیٹھ جاتا ہے
     
  10. ‏ستمبر 14، 2013 #10
    محمد نعیم یونس

    محمد نعیم یونس خاص رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 27، 2013
    پیغامات:
    26,402
    موصول شکریہ جات:
    6,600
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,207

    زکوٰۃ نہ دینے والے کافر ہیں
    رحمۃ اللعلمین نبی اکرم ﷺ کے وصال کے بعد کچھ لوگوں نے زکوٰۃ دینا بند کر دیا تھا وہ لوگ نمازیں تو پڑھتے تھے مگر زکوٰۃ نہیں دیتے تھے تو خلیفہ اول حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ نے ان لوگوں کے خلاف فوجی کاروائی شروع فرما دی(یعنی جہاد) حضرت عمر بن الخطاب رضی اللہ عنہ نے آپﷺ سے فرمایا کہ آپ ان لوگوں سے کیسے جنگ کریں گے جبکہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا ہے کہ مجھے حکم دیا گیا ہے کہ میں لوگوں سے اس وقت تک جنگ کروں جب تک وہ لا الہٰ الا اللہ نہ پڑھ لیں پھر جس نے یہ پڑھ لیا تواس نے اپنا جان و مال کو مجھ سے بچا لیا حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ نے فرمایا کہ اللہ کی قسم میں ضرور ان سے لڑوں گا جو نماز اور زکوٰۃ میں تفریق کرے گا (یعنی جو نماز تو پڑھے گا مگر زکوٰۃ نہیں دے گا)۔
    اللہ کی قسم اگر ایک بھیڑ کا بچہ جسے وہ رسول اللہ ﷺ کو زکوٰۃ دیا کرتے تھے مجھے نہ دیں گے تومیں ضرور ان سے اس بچہ کو روک لینے پرجنگ کروں گا۔
    حضرت عمر بن الخطاب رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ اللہ کی قسم اللہ نے ابو بکر رضی اللہ عنہ کے سینے کو کھول دیا تھا بعد میں سمجھ گیا کہ یہ حق ہے (یعنی زکوٰۃ نہ دینے والوں کے ساتھ جنگ)۔
    (بخاری شریف کتاب الزکوٰۃ)
    جس وقت حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ نے حضرت انس رضی اللہ عنہ کو بحرین زکوٰۃ وصول کرنے کے لئے عامل بنا کر روانہ فرمایا ایک تحریر کتاب الزکوٰۃ کی لکھ کر عنایت فرمائے جس کا مضمون اس طرح تھا:
    بسم اللہ الرحمن الرحیم​
    یہ زکوٰۃ کے فرائض ہیں جو رسول اللہ ﷺ نے مسلمانوں پر فرض کئے ہیں اور یہ وہ فرائض ہیں جن کا حکم اللہ تعالیٰ نے اپنے رسول ﷺ کو دیا تھا لہٰذا مسلمانوں میں سے جس شخص سے بھی اس تحریر کے مطابق زکوٰۃ مانگی جائے وہ زکوٰۃ دے دیں اور جس سے اس سے زیادہ مانگی جائے وہ زیادہ نہ دیں (پھر پورا نصاب تحریر فرمایا جو آخری صفحات میں تحریر کیا گیا ہے ).
    اسی طرح خلیفہ ثانی حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ نے بھی اپنے گورنروں کو خصوصی طور سے زکوٰۃ کے ساتھ نمازوں کی اقامت کا حکم صادر فرمایا تھا آپ نے گورنروں کو خط لکھا کہ:
    ''میرے نزدیک تمہارے تمام کاموں میں سب سے بڑھ کر اہمیت نماز کی اہمیت ہے تو جس نے بھی اس کی حفاظت کی اور اس کی برابر نگہبانی کرتا رہا تو اس نے پورے دین کی حفاظت کی اور جس نے اس نماز کو ضائع کر دیاتو وہ دوسری ساری چیزوں کو اور زیادہ ضائع کرنے والا ہو گا''.
     

اس صفحے کو مشتہر کریں