1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

السعی المشکور فیمن وثقہ الجمہور - انگلش مع تحقیق

'ثقہ رواۃ' میں موضوعات آغاز کردہ از رضا میاں, ‏مارچ 31، 2013۔

  1. ‏مارچ 31، 2013 #1
    رضا میاں

    رضا میاں سینئر رکن
    جگہ:
    Virginia, USA
    شمولیت:
    ‏مارچ 11، 2011
    پیغامات:
    1,557
    موصول شکریہ جات:
    3,508
    تمغے کے پوائنٹ:
    384

    اسلام علیکم
    As-Sa'ee al-Mashkoor Feeman Waththaqahu al-Jumhoor
    (السعي المشكور فيمن وثقه الجمهور)

    Authored by: Shaykh Zubayr Alee Za'ee
    Translation and Research by: Raza Hassan


    ہر راوی پر کلک کرنے پر اس کے بارے میں مکمل تحقیق کھل جائے گی۔
     
  2. ‏مارچ 31، 2013 #2
    سیف الاسلام

    سیف الاسلام مبتدی
    شمولیت:
    ‏مارچ 11، 2013
    پیغامات:
    35
    موصول شکریہ جات:
    123
    تمغے کے پوائنٹ:
    0

    بہت اچھا جزاکم اللہ شکریہ ۔
    لیکن یہ اصول قابل نظر ہے اہل علم اس طرف توجہ دیں ۔
    بعض ساتھیوں سے سنا ہے کہ جمہور کی توثیق یا تضعیف مطلق نہیں بلکہ دیگر دلائل وغیرہ دیکھے جائیں گے تب لیں گے ۔صرف جمہوریت قابل قبول نہیں ۔خواہ یہ کسی میدان بھی ہو۔
     
  3. ‏مارچ 31، 2013 #3
    سیف الاسلام

    سیف الاسلام مبتدی
    شمولیت:
    ‏مارچ 11، 2013
    پیغامات:
    35
    موصول شکریہ جات:
    123
    تمغے کے پوائنٹ:
    0

    بہت اچھا جزاکم اللہ شکریہ ۔
    لیکن یہ اصول قابل نظر ہے اہل علم اس طرف توجہ دیں ۔
    بعض ساتھیوں سے سنا ہے کہ جمہور کی توثیق یا تضعیف مطلق قبول نہیں بلکہ دیگر دلائل وغیرہ دیکھے جائیں گے تب لیں گے ۔صرف جمہوریت قابل قبول نہیں ۔خواہ یہ کسی میدان بھی ہو۔
     
  4. ‏مارچ 31، 2013 #4
    رضا میاں

    رضا میاں سینئر رکن
    جگہ:
    Virginia, USA
    شمولیت:
    ‏مارچ 11، 2011
    پیغامات:
    1,557
    موصول شکریہ جات:
    3,508
    تمغے کے پوائنٹ:
    384

    مطلق جمھور کی پیروی کبھی کبھی میرے دل میں بھی تھوڑا کھٹکتی ہے۔ لیکن اس مضمون کے تمام راوی دوسرے اصول کے مطابق بھی ثقہ ہیں کیونکہ ان میں سے زیادہ تر راویوں پر جروح غیر مفسر اور بلا بیان السبب ہیں۔ بلکہ عبداللہ بن محمد بن عقیل کے بارے میں شیخ زبیر کی تحقیق سے میں نے اختلاف کیا ہے کیونکہ اس پر کچھ جروح اس کے حسن الحدیث ہونے کے منافی نہیں مثلا امام سفیان کی جرح وغیرہ۔ اس لیے اس کے بارے میں میں نے شیخ البانی کی تحقیق کو ترجیح دی ہے، واللہ اعلم!
     
  5. ‏اپریل 01، 2013 #5
    سیف الاسلام

    سیف الاسلام مبتدی
    شمولیت:
    ‏مارچ 11، 2013
    پیغامات:
    35
    موصول شکریہ جات:
    123
    تمغے کے پوائنٹ:
    0

    جی محترم آپ کی بات سے اتفاق ہے میری معلومات کی حدتک بات اس طرح ہے کہ جرح وتعدیل کے محدثین کے طبقات ہیں ،ان طبقات کا خیال رکھتے ہوئے راوی پر حکم لگایاجاتا ہے یہ کون سا مسئلہ ہے کہ راوی کو ضعیف کہنے والوں کی تعداد شمار کرو مثلا وہ ٩ ہیں اور ثقہ کہنے والوں کی تعداد ٨ ہے تو ثابت ہوا کہ ٨ کے مقابلے میں ٩ جمہور ہیں اس لئے جمھور کی بات صحیح ہے چنانچہ یہ راوی ضعیف ہے !!!!!!!!!!!!
    ووٹنگ اور جرح وتعدیل میں کیا فرق رہا ؟؟
    حالانکہ ایک طرف امام علی بن مدینی ،امام بخاری ،امام ابن ابی حاتم ،امام ابو زرعہ اور امام دار قطنی ہوں تودوسری طرف ابن حبان ۔ترمذی وغیرہ تو کیا تعداد شمار کرکے حکم لگائیں گے یا محدثین کے طبقات متشددین ،معتدلین اور متساہلین کی درجہ بندی کومدنظر رکھیں گے ۔ہر صاحب یہی کہے گا کہ طبقات کا خیال رکھیں گے ،نہ کہ ووٹنگ کی طرح جمہور کا ۔
    بعض متاخرین نے واقعۃ ثقہ رایوں پر یہ لفظ بول دیا ہے کہ وثقہ الجمہور کیونکہ حسن اتفاق سے اس کو جمہور نے ثقہ بھی کہا ہوتا ہے ۔تو اس سے اصول ہی بنا لینا کہ وہ راوی ثقہ ہے جس کو جمہور نے ثقہ کہا ہو !!!!!بہر حال محل نظر ہے ۔واللہ اعلم۔
    جزاکم اللہ شکریہ ۔
    اگر مجھے تسامح واقع ہوا ہو تو ضرور میری رہنمائی کیا جائے ۔
     
  6. ‏اپریل 01، 2013 #6
    کفایت اللہ

    کفایت اللہ عام رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 14، 2011
    پیغامات:
    4,818
    موصول شکریہ جات:
    9,777
    تمغے کے پوائنٹ:
    722

    نہ تو مطلق جمہورکی پیروی درست ہے اورنہ ہی مطلق جمہور کے فیصلے کو نظر انداز کیا جاسکتاہے۔
    ہم نے آپ سے پہلے بھی کہا تھا:
    اب بھی کہتے ہیں کہ اس بابت راجح موقف یہی معلوم ہوتا کہ قرائن دیکھیں جائیں ، قرائن سے جمہور کا فیصلہ درست معلوم ہو تو وہی لیں گے اور اگرقرائن سے جمہور کا فیصلہ غیر درست معلوم ہو تو اسے ترک کردیں گے ، امام ذہبی ،حافظ ابن حجر ، علامہ احمد شاکر ،علامہ معلمی اور علامہ البانی رحمہم اللہ کی تحریروں کے مطالعہ سے ان کا یہی موقف معلوم ہوتاہے، یعنی نہ تو مطلق جمہور کی توثیق قبول کی جائے اور نہ ہی مطلق اسے رد کیا جائے ، یہی موقف اقرب الی الصواب ہے۔
    واضح رہے کہ قرائن میں مفسر وغیرمفسر ، متشدد وغیرمتشدد ، متقدم ومتاخر ناقد وناقل ، خاص وعام ، اوراس جیسی دیگرچیزوں پر بحث ہوگی ،جیساکہ اب تک اہل فن بحث کرتے آئے ہیں۔
    اوراگرقرائن ناپید ہوں اور تطبیق وغیر ہ کی صورت نظر نہ آئے تو جمہور ناقدین ہی کے فیصلہ کو ہرحال میں ترجیح جائے گی ۔واللہ اعلم۔
     
  7. ‏اپریل 01، 2013 #7
    رضا میاں

    رضا میاں سینئر رکن
    جگہ:
    Virginia, USA
    شمولیت:
    ‏مارچ 11، 2011
    پیغامات:
    1,557
    موصول شکریہ جات:
    3,508
    تمغے کے پوائنٹ:
    384

    شیخ ایسا تو آپ کہتے ہیں نا لیکن شیخ زبیر علی زئی کی تحریریوں سے ایسا نہیں لگتا۔ واللہ اعلم!
     
  8. ‏اپریل 01، 2013 #8
    کفایت اللہ

    کفایت اللہ عام رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 14، 2011
    پیغامات:
    4,818
    موصول شکریہ جات:
    9,777
    تمغے کے پوائنٹ:
    722

    شیخ زبیرعلی زئی حفظہ اللہ تو الحمدللہ باحیات ہیں اس لئے ان کا موقف جاننے کے لئے براہ راست انہیں سے استفسار کرلیا جائے توبہترہے۔
     
  9. ‏اپریل 01، 2013 #9
    رضا میاں

    رضا میاں سینئر رکن
    جگہ:
    Virginia, USA
    شمولیت:
    ‏مارچ 11، 2011
    پیغامات:
    1,557
    موصول شکریہ جات:
    3,508
    تمغے کے پوائنٹ:
    384

    پوچھیں گے کسی دن، ان شاء اللہ!
    فون پر بات کرنے میں مجھے دقت ہوتی ہے، اگر شیخ محدث فورم پر ہوتے تو کتنا اچھا ہوتا! مسکراہٹ
     

اس صفحے کو مشتہر کریں