1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

امام ابو حنیفہ

'سیرت سلف الصالحین رحمہم اللہ' میں موضوعات آغاز کردہ از سدرہ منتہا, ‏جنوری 14، 2013۔

  1. ‏جنوری 17، 2013 #31
    جمشید

    جمشید مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏جون 09، 2011
    پیغامات:
    873
    موصول شکریہ جات:
    2,325
    تمغے کے پوائنٹ:
    180

    میراتوخیال ہے کہ جوشخص فقہاء پر کلام کرے تواسے کم ازکم عربی کی شد بد ہونی ہی چاہئے۔اگراتنابھی نہیں ہے اوراس کے باوجود فقہاء پر کلام کی جسارت کی جائے توپھراس کو کس چیز سے تعبیر کیاجائے میرے پاس اس کیلئے الفاظ نہیں ہیں۔

    بہرحال اس عبارت کاوہ مطلب نہیں جوآپ نے سمجھاہے۔
    دیکھئے بیان چل رہاہے اجارہ کا۔
    اب ایک فاحشہ خاتون ہے۔وہ کسی مکان کواجارہ یعنی کرایہ پر لیتی ہے وہ پیشہ کرتی ہے اوراسی پیشہ کے روپئے کوکرایہ کی مد میں دیتی ہے توصاحب مکان کیلئے یہ پیسے لیناجائز ہوگایانہیں۔یہ اصل اختلاف ہے۔
    امام ابوحنیفہ کاکہناہے کہ اگرچہ کسب حرام ہے لیکن صاحب مکان کیلئے کرایہ لیناجائز ہوگاکیونکہ اگرصورت حال ایسی ہوتی کہ کوئی شخص مکان کرایہ پر لیتا لیکن کرایہ طے نہ ہوتاتواس کوقیمت مثل دیاجاتااگرچہ کرایہ طے نہ ہونے کی وجہ سے یہ اجارہ فاسد ہوتا۔وہی صورت حال یہاں بھی ہے کہ ایک خاتون فاحشہ مکان کرایہ پر لیتی ہے اس کاکسب حراب ہے جس کی وجہ سے اجارہ فاسدہوگالیکن اس فاحشہ کے روپے کرایہ کے مد میں لینامالک مکان کیلئے درست ہوگا۔
    اس کی دلیل یہ ہوسکتی ہے کہ مشہور حدیث ہے کہ
    حضرت بریرہ رضی اللہ عنہاکے پاس صدقہ کاکچھ کھانے پینے کاسامان آیا۔حضورپاک بھی ان کے یہاں گئے تودیکھااورفرمائش کی کہ ان کوبھی کھلایاجائے ۔انہوں نے عرض کیاکہ یہ توصدقہ کاہے۔
    اس پر حضور نے فرمایاکہ وہ تمہارے لئے صدقہ ہوگاہمارے لئے توہدیہ ہوگا۔
    اس سے فقہاء نے یہ استنباط کیاکہ ملک بدل جانے سے مال کی حیثیت بھی بدل جاتی ہے۔
    اب وہ فاحشہ خاتون پیشہ کرتی ہیں تویہ ان کیلئے وبال عظیم ہے لیکن وہ اس روپئے کوچونکہ کرایہ کے مد میں اداکرتی ہیں لہذا مکان جوکرایہ لے رہاہے تو اپنے مکان کاکرایہ لے رہاہے اوریہ اس کیلئے درست ہوگاامام ابوحنفیہ کے نزدیک صاحبین کے نزدیک وہ بھی درست نہیں ہوگا۔
    نوٹ:فقہاء بالخصوص فقہاء احناف عمومی قانونی طورپر بات کرتے ہیں کہ جواز کاآخری پہلوکیاہوسکتاہے لیکن تقوی اورایک مسلمان کاشعار کیاہوناچاہئے وہ سبھی کو استفت قلبک یعنی خود اپنے ضمیر سے پوچھ کر عمل کرلیناچاہئے۔والسلام
     
  2. ‏جنوری 17، 2013 #32
    حرب بن شداد

    حرب بن شداد سینئر رکن
    جگہ:
    اُم القرٰی
    شمولیت:
    ‏مئی 13، 2012
    پیغامات:
    2,149
    موصول شکریہ جات:
    6,249
    تمغے کے پوائنٹ:
    437

    مجبوری یہ ہے کہ زندگی کے تمام اثاثوں میں تمام خوبیوں میں تمام حاصل میں سب سے قیمتی سب سے اعلٰی شُے حسُن خیال ہے ۔۔۔ کیونکہ خیال نعمت پروردگارہےزندگی میں حاصل ہونے والا اور زندگی کے بعد بھی رہنے والا سرمایہ۔۔۔ مگررائے سے اتفاق ضروری نہیں۔۔۔ شدُبد سے نابلد ہوسکتا ہےسُدرپُدر کی سمجھ رکھتے ہیں۔۔۔ لہذا ایک بار دوبارہ پڑھ لیں کے بات کیا ہے؟؟؟۔۔۔ اوررائے کیا پیش کی جارہی ہے۔۔۔

    ان ما اخذتہ الزانیہ ان کان بعقد الاجارۃ فحلال عند الامام الاعظم لان اجر المثل طیب وان کان السبب حراما
    یعنی اگر کوئی زانیہ زنا کے بدلے مقرر کردہ اجرت لے تو وہ (اجرت) امام اعظم (نعمان بن ثابت ابوحنیفہ) کے نزدیک حلال ہے(رائے) اس لئے کہ مثل کی مزدوری لینا پاک ہے اگرچہ سبب حرام ہو۔۔۔(چلپی حاشیہ شرع وقایہ صفحہ ٢٩٤، باب الاجارۃ الفاسدۃ الظفر المبین صفحہ ٢١٤)۔۔۔

     
  3. ‏جنوری 17، 2013 #33
    حرب بن شداد

    حرب بن شداد سینئر رکن
    جگہ:
    اُم القرٰی
    شمولیت:
    ‏مئی 13، 2012
    پیغامات:
    2,149
    موصول شکریہ جات:
    6,249
    تمغے کے پوائنٹ:
    437

    حدیث میں ہے زانیہ کی کمائی کو حرام قرار دیا ہے۔۔۔ اور کمائی ظاہر ہے پیسوں یعنی روپے کی صورت میں ہی وصول ہوگی۔۔۔ اب حرام کی کمائی کرائے کی مد میں دینے سے وہ حلال کیسے ہوگی؟؟؟۔۔۔ ایک شخص شراب بناتا ہے۔۔۔ دوسرا شخص وہ شراب اس سے خریدتا ہے کے اس کو گاہوں کو بیچے۔۔۔ تیسرا شخص گاہک وہ اس شراب کو پینے کے لئے اس کی قیمت ادا کرتا ہے۔۔۔ اب شراب حرام ہے لہذا ان تینوں مرحلوں میں اس کی کمائی کس مرحلے پر آکر حلال ہوجائے گی؟؟؟۔۔۔

    امام صاحب نے اپنی ایک رائے دی۔۔۔ لیکن سوچنے والی بات یہ ہے کہ زانیہ اپنی کمائی سے کیا زکات ادا کرسکتی ہے؟؟؟َ۔۔۔ فطرہ ادا کرسکتی ہے؟؟؟۔۔۔ صدقہ یا خیرات کرسکتی ہے؟؟؟۔۔۔ یا کسی مدرسے یا مسجد کی تعمیر میں وہ پیسے دے کر کار خیر کا حصہ بن سکتی ہے۔۔۔ کیا وہ فاحشہ روپے کی مد میں قاری صاحب سے قرآن وحدیث کی تعلیم حاصل کرسکتی ہے؟؟؟۔۔۔ جیسے اُس نے کرائے پر مکان حاصل کیا۔۔۔

    آپ نے مشہور حدیث جو دلیل ہوسکتی ہے!۔۔۔ نہیں بھی ہوسکتی جو پیش کی ہے۔۔۔

    سب سے پہلی بات کیا صدقہ حرام ہے؟؟؟۔۔۔ لیکن زنا حرام ہے۔۔۔ صدقہ کا کچھ سامان کھانے پینے کا حضرت ابوہریرۃ رضی اللہ عنہ کے پاس آیا۔۔۔ نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس نہیں۔۔۔ اب اگر اس پر نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کے صدقہ ہمارے لئے ہدیہ ہے تو نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم صاحب شریعت ہیں۔۔۔ لیکن یہ بات ذہن نشین رہنی چاہئے کے صدقہ حرام نہیں ہے۔۔۔ جیسے زانیہ کی کمائی (اجرت) حرام ہے۔۔۔ فرمان رسول مقبول صلی اللہ علیہ وسلم۔۔۔

    لٰہذا اس حدیث کو دلیل کےطور پر پیش کرنا کسی بھی زاویئے سے صحیح نہیں ہے۔۔۔ لیکن میرا سوال یہ ہے کے کیا امام صاحب نے بھی اس مسئلے پر رائے دینے کے لئے اس حدیث کو پیش کیا تھا یا یہ آپ کی اپنی کوشش ہے؟؟؟۔۔۔

    بات ہی ختم ہوگئی تو اختلاف کہاں رہا۔۔۔

    تبصرہ!۔ عمومی قانون کچھ بھی ہو چاروں فقہاء کا یکسان بھی ہوسکتا ہے اور مختلف بھی۔۔۔ لیکن جو عمل بھی شریعت کی حدود سے ٹکرائے یا تجاوز کرجائے تو وہاں جواز کو ہی ختم کرنا پڑے گا۔۔۔ یعنی ہر قسم کا پہلو ختم۔۔۔

    لیکن چھوٹا سا اعتراض ضمیر کی یہ آواز اگر امام صاحب رائے دینے سے پہلے سُن لیتے تو اس زانیہ پر حد جاری کرواتے۔۔۔ لیکن یہ قطعی نہ سمجھا جائے کے میرا مقصدکسی بھی قسم کی الزام تراشی ہےلیکن کیا امام صاحب نے مسئلے پر رائے ضمیر سے پوچھے بغیردی تھی؟؟؟۔۔۔
    والسلام علیکم۔۔۔
     
  4. ‏جنوری 17، 2013 #34
    ارم

    ارم رکن
    شمولیت:
    ‏جنوری 09، 2013
    پیغامات:
    39
    موصول شکریہ جات:
    173
    تمغے کے پوائنٹ:
    42

    جزاک اللہ
     
  5. ‏جنوری 17، 2013 #35
    ابن خلیل

    ابن خلیل سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 03، 2011
    پیغامات:
    1,383
    موصول شکریہ جات:
    6,746
    تمغے کے پوائنٹ:
    332

    یعنی حرام کام کے لئے مکان کرایہ پر دینا حلال ہے،
    اور اس کی اجرت لینا بھی حلال ہے؟
     
  6. ‏جنوری 17، 2013 #36
    عابدالرحمٰن

    عابدالرحمٰن سینئر رکن
    جگہ:
    BIJNOR U.P. INDIA
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 18، 2012
    پیغامات:
    1,124
    موصول شکریہ جات:
    3,229
    تمغے کے پوائنٹ:
    240

    بغیر سمجھے کسی بات کو غلط رخ دینا مناسب نہیں اور شکوک وشبہات پیدا کرنا یہ اس سے بھی بڑا جرم ہے۔ جس شخصیت پر تبصرہ اور تنقید فرمائی جارہی ہےاسی اہلیت کا علم بھی ضروری ہے ۔ ’’فتدبر‘‘
     
  7. ‏جنوری 17، 2013 #37
    جمشید

    جمشید مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏جون 09، 2011
    پیغامات:
    873
    موصول شکریہ جات:
    2,325
    تمغے کے پوائنٹ:
    180

    انسان کو علمی مسائل میں سنجیدگی برتنی چاہئے۔
    سنجیدگی کا تقاضہ یہ تھاکہ پہلے آپ اس فقہی عبارت سے غلط مطلب تراشنے کااعتراف کرتے اوراس کے بعد بات آگے بڑھاتے۔

     
  8. ‏جنوری 17، 2013 #38
    ابن خلیل

    ابن خلیل سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 03، 2011
    پیغامات:
    1,383
    موصول شکریہ جات:
    6,746
    تمغے کے پوائنٹ:
    332

    الله نے صحیح اور غلط کو پرکھنے کی ہمیں سمجھ دی ہے الحمد لله

    بات واضح ہے محترم
    اور بات کون کہ رہا ہے صرف یہ نہیں دیکھا جاتا بات کیا کہ رہا ہے وہ بھی دیکھا جاتا ہے

    آپ کتنا سمجھیں ہے ذرا وضاحت فرماے
     
  9. ‏جنوری 17، 2013 #39
    گڈمسلم

    گڈمسلم سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 10، 2011
    پیغامات:
    1,407
    موصول شکریہ جات:
    4,907
    تمغے کے پوائنٹ:
    292

    جمشید بھائی آپ کے اس بیان پر
    مالک مکان کےلیے یہ کرایہ لینا کیوں جائز ہوگا۔ اس کی وجہ بھی آپ نے بیان فرمائی کہ
    حرب بن شداد بھائی کی اس پوسٹ کے جواب میں مطلوب وضاحت باتوں پر آپ نے فرمایا
    آپ کے ہی بیان میں یہ بات ہے کہ اس مسئلہ میں امام صاحب اور صاحبین کا اختلاف ہے، کیوں اختلاف ہے؟ اس پر بات نہیں۔ اور آپ بھی صاحبین سے اختلاف کررہے ہیں۔
    اس کےبعد آپ نے فرمایا
    اس عبارت میں آپ نے کہا کہ اللہ تعالیٰ کی راہ میں پاکیزہ مال ہی خرچ کرنا چاہیے۔
    آگے آپ نے فرمایا کہ
    جب ملک بدلنے سے مال کی حیثیت بدل جاتی ہے، تو پھر مالک مکان کےلیے اس شرابی اور زانی سے لیے گئے مال سے صدقہ خیرات وزکوۃ دینا کیسا ہے ؟ کیونکہ ملک تو بدل گئی ہے ناں۔ ذرا اس کی وضاحت بھی پیش فرمادینا۔ جزاک اللہ
     
  10. ‏جنوری 17، 2013 #40
    عابدالرحمٰن

    عابدالرحمٰن سینئر رکن
    جگہ:
    BIJNOR U.P. INDIA
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 18، 2012
    پیغامات:
    1,124
    موصول شکریہ جات:
    3,229
    تمغے کے پوائنٹ:
    240

    السلام علیکم
    حرب بن شداد بھائی
    ارے بھایئ آپ نے باتوں باتوں میں ہمیں پھنسا لیا ہمیں معلوم نہیں تھا آپ’’ گگلی ‘‘کے بجائے’’ دوسرا ‘‘بھی پھینک دیتے ہو ایک ذراسی بات کا کیا بتنگڑ بنا دیا ۔امام ابوحنیفہؒ کا نام کیا آگیا قیامت آگئی یہ تو بالکل ہائی اٹینشن والی بات ہوگئی دیکھو مرغی نکلنے نہ پائے میں تو اسی وجہ سے دور دور ہی کھیلتا ہوں ارے بھائیو امام صاحب نے آپ لوگوں کا کیا بگاڑا کہ اتنی نفرت ہے میرے خیال سے تو ان بیچاروں نےکبھی کسی کی برائی نہیں کی نہ کبھی یہ کہا کہ اس کی بات مت مانو میری بات مانو اس بارے میں تو ان کے با لکل آزاد نظریات ہیں جس کو اچھا لگے عمل کر لے جس کو پسند نہ ہووہ اپنے حساب سےاپنے دینی معاملات کو سلجھا لے حقیقت میں میں ابھی تک اس بات کو نہیں سمجھ پایا کہ اس ضد بازی اور نفرت کی کیا وجہ ہے اتنا بڑا اختلاف کیسے رونما ہوگیا کوئی صاحب میری اس بارے میں صدق دل سے رہنمائی فرمادیں میں آج ایمانداری سے کہہ رہا ہوں کہ میں کبھی بھی مقلد اور غیر مقلد کے چکر میں نہیں پڑا میں تو صرف یہ سمجھتا تھا کہ کچھ نظریات ہیں جس میں کچھ اختلافات ہیں اور وہ ہر جگہ ہوتے ہیں لیکن اتنی بڑی خلیج اس کا مجھے اندازہ نہیں تھا میں سمجھتا ہوں کہ جیسے جیسے سائنس ترقی کرتی جارہی ہے ویسے ویسے یہ خلیج بڑھتی جارہی ہے کیونکہ منٹوں میں بات کہیں کہیں کی پہنچ جاتی ہے ابھی ایک زخم دور ہوتا نہیں کہ دوسرا زخم لگ جاتا ہے ۔ہم نے تو یہ پڑھا اور دیکھا تھا کہ اگر کسی دو عالم میں کوئی علمی غلطی ہوئی تو افہام و تفہیم کے ذریعہ بڑی خوش اسلوبی سے طے ہوجاتی تھی اور فریقین اپنے فیصلوں سے رجوع بھی فرما لیا کرتے تھے اور پھر وہی ایک دسترخوان پر کھانا کھا لیا کرتے تھے لوگ حیران ہوتے تھے یہ کیسے انسان ہیں کہ ابھی گرما گرمی ہورہی تھی اور ابھی ایک ہوگئے ۔ جب مجھے ہی حیرت ہے تو اسلام مخالفین کا کیا حال ہوتا ہوگا ۔اب ایسے حالات میں کوئی علمی بات کرے تو کیسے کرے اب یہ باتیں ’’ علمی تبادلہ ‘‘ (Knowledge Sare ) کے لیے نہیں بلکہ تحفظ نفس(Self Care ) کے لیے ہورہی ہیں ہم نے شروع میں اشارہ کردیا یہ مسئلہ’’ اضطراری کیفیت کا ہے‘‘ بات ختم ۔ ہم صبح سے شام تک کتنی باتوں پر بحالت مجبوری عمل کرتے ہیں جو بظاہر اسلامی تعلیمات کے خلاف ہوتی ہیں وہاں ان مسائل کو خود بخود حل کرلیا جا تا ہے لیکن ضد والی بات یہ ہے کہ امام صاحبؒ نے ایسا کیوں کہا اور بس ،یعنی علم کا حق ان کو نہیں ہمیں ہے ہم ہی اس کے حق دار تھے وہ نہیں تھے۔ ہماری پیدائش سے لیکر اور اب تک ہم پر کتنی اضطررای کیفیات لاحق ہوتی ہیں اگر ان حالات میں اسلام پر عمل کیا جائے تو زندگی دوبھر ہوجائے ۔جب کہ اسلام نےہی ان مخصوص حالات میں حالات کے تحت عمل کرنے کی اجازت دی ہے۔ ہم جتنی بھی دوائیاں استعمال کرتے ہیں ان میں حرام اشیاء کی آمیزش ہوتی ہے کھانسی کے جتنے بھی سیرپ ہیں سب میں الکوحل ہوتا ہے اور معلوم ہے یہ جانوروں کا خون ان کی ہڈیاں کہاں استعمال ہوتی ان کی آنت اوجھڑی کہاں استعمال ہوتی ہیں یہ سب دواؤں میں اور ٹوتھ پیسٹ میں استعمال ہوتی ہیں اور یہ جو’’چائینا بون ‘‘کیا ہے ۔ اور انٹر نیٹ کیا ہے اور یہ یوٹیوب کیا ہے جس کے لنک اس فورم پر دکھائے جاتے ہیں ۔اور ’’ نیٹ سرفنگ ‘‘ کے دوران جو گلیمر کی دنیا دکھائی دیتی ہے یہ کیا ہے کیا ان سب کی اسلام میں اجازت ہے اور ہم جو موبائل یا کمپیوٹر پر قرآن کی تلاوت چلاتے ہیں (میں لفظ سننا استعمال نہیں کررہاہوں) کیا یہ لہو لعب نہیں ہے اور دور کیوں جاتے ہیں سب کی جیبوں میں لیڈروں کی تصاویر ہوتی ہیں (نوٹوں پر) کیا وہ جائز ہے۔ زیادہ باریکیوں میں نہ جائیں یاد رہے جتنی باریکی میں جایا جائےگا اتنا ہی سخت اللہ تعالیٰ کے یہاں حساب بھی دینا ہوگا۔ایک واقعہ شاید امام حنبلؒ کا ہے یا کسی اور کا ہے بہر حال ہے، بیان کرتا ہوں ’’ ان کے انتقال کے بعد ان کا ایک شاگرد خواب میں دیکھتا ہے کہ شیخ پریشان حال پسینہ صاف کرتے ہوئے آرہے ہیں ،شاگرد نے پوچھا حضرت کیا معاملہ ہے فرمایا مت پوچھو بڑی مشکل میں جان بچی ہے ،اللہ تعالیٰ نے مجھ سے سوال کرلیا تھا کہ ہمارے واسطے کیا لائے ہوتو میں نے کہا’’ توحید لایا ہوں‘‘اس پر اللہ تعالیٰ نے کہا اچھا ’’توحید ‘‘لائے ہو اور اس دن کیا ہوا جب تمہارے پیٹ میں درد ہوا تھا اور تم نے کہا تھا کہ فلاں چیز کھانے سے درد ہوا تھا تو کیا کسی چیز میں یہ طاقت ہے کہ ہماری مرضی کے بغیر کام کرے ۔شیخ فرماتے ہیں بس میری حالت خراب ہوگئی خیر اللہ تعالیٰ نے اپنے فضل سے معاف فرمایا ‘‘ اب اس خواب پر بھی سوال ہوں گے کہ اس کی سند کیا ہے( اللہ میری توبہ) یہ خواب کس درجہ کا ہےجس درجہ کا بھی ہو لیکن اتنا تو طے ہے ہر چیز اللہ کے حکم سے حرکت کرتی ہے اب غور فرمالیں صبح سے شام تک ہم غیر اللہ کی طرف کتنی نسبتیں کرتے ہیں کیا وہاں بھی امام ابو حنیفہؒ کو مورد الزام ٹھہرائیں گے ۔اب دل کو تسلی نہیں ہے تو پھر آتے ہیں بحث مباحثہ کی طرف بہتر تو یہی ہے کہ بات یہیں ختم کرلی جائے اور وقت کوکسی دوسرے مفید کام لگایا جائے فقط واللہ اعلم بالصواب
     
لوڈ کرتے ہوئے...
متعلقہ مضامین
  1. اسحاق سلفی
    جوابات:
    8
    مناظر:
    132
  2. Israr Hussain Niyargar
    جوابات:
    6
    مناظر:
    594
  3. عامر عدنان
    جوابات:
    0
    مناظر:
    348
  4. عامر عدنان
    جوابات:
    5
    مناظر:
    972
  5. ابو زہران شاہ
    جوابات:
    1
    مناظر:
    937

اس صفحے کو مشتہر کریں