1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

امر:

'اصول حدیث' میں موضوعات آغاز کردہ از ناصر رانا, ‏اکتوبر 02، 2011۔

  1. ‏اکتوبر 02، 2011 #1
    ناصر رانا

    ناصر رانا رکن مکتبہ محدث
    جگہ:
    Cape Town, Western Cape, South Africa
    شمولیت:
    ‏مئی 09، 2011
    پیغامات:
    1,171
    موصول شکریہ جات:
    5,448
    تمغے کے پوائنٹ:
    306

    امر:​

    امر کا لفظ دو معنوں کےلیے استعمال ہوتا ہے:

    فعل کو طلب کرنے کےلیے، جیسے اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے: ﴿ وَأْمُرْ أَهْلَكَ بِالصَّلاةِ ﴾ [طه:132] اور اپنے گھر والوں کو نماز کاحکم دیجئے۔

    اس امر کی جمع ’اوامر‘ آتی ہے۔

    کام ، حالت اور معاملہ کےلیے ، جیسے اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے: ﴿ وَشَاوِرْهُمْ فِي الأَمْرِ ﴾ [آل عمران:159] اور معاملات میں ان سے مشورہ لیجئے۔

    اس امر کی جمع ’امور‘ آتی ہے۔

    یہاں (اصول فقہ میں) امرپہلے معنی میں ہے کیونکہ اس میں طلب کا معنی پایا جاتا ہے۔

    اصطلاحی تعریف:
    تحکم کے انداز میں فعل کو اس قول کے ذریعے طلب کرنا جو اس (طلب کرنے) پر دلالت کرے۔

    اکثر اصولیوں نے آمر(حکم دینے والے) میں علو اور استعلاء کی شرط نہیں لگائی اس کےلیے انہوں نے عمرو بن العاصtکی بات سے استشہاد کیا ہے جو انہوں نے معاویہtسے کہی تھی:

    أمرتك أمرًا جازمًا فعصيتني وكان من التوفيق قتل ابن هاشم


    ’میں نے آپ کو بہت پختہ حکم (مشورہ)دیا تھا لیکن آپ نے میری بات نہ مانی حالانکہ ہاشم کے بیٹے کا قتل توفیق میں سے تھا۔‘

    اصل میں ابن ہاشم نے معاویہ tپر خروج کیا تھا ، انہوں نے اسے پکڑلیا لیکن پھر معاف کردیا تو اس نے دوسری مرتبہ خروج کردیا۔

    یہ بات معلوم ہے کہ یہاں پر عمروبن العاص کو معاویہ پر کوئی علو اور استعلاء حاصل نہ تھا۔

    اسی طرح اللہ سبحانہ وتعالیٰ کا وہ فرمان بھی ہے جو فرعون کی اس بات کی حکایت کرتے ہوئے جو اس نے اپنی قوم سے کہی تھی: ﴿ فَمَاذَا تَأْمُرُونَ ﴾ [الأعراف:110] تم مجھے کس بات کا حکم(مشورہ) دیتے ہو؟

    ممکن ہے کہ اس بات کا یہ جواب دیا جائے کہ جب معاویہ رضی اللہ عنہ نے عمرو بن العاص رضی اللہ عنہ کو اپنی رائے ظاہر کرنے کا اختیار دیا تو یہی ان کےلیے اعلاء بن گیا۔

    امر کےلیے استعمال ہونے والے صیغے:​


    امر کے کچھ صیغے ہیں جو اگر کسی قرینہ صارفہ سے خالی ہوں تو طلب فعل پر دلالت کرتے ہیں ، یہ صیغے چار ہیں:

    فعل امر: جیسے:﴿ أَقِمِ الصَّلاةَ ﴾ [الإسراء:78] نماز قائم کرو۔

    ﴿ اسْتَغْفِرُوا رَبَّكُم ﴾ [نوح:10] اپنے رب سے بخشش طلب کرو۔

    ﴿ يا أَيهَا النَّبِي جَاهِدِ الكُفَّارَ وَالمُنَافِقِينَ ﴾ [التوبة:73] اے نبیﷺ! کفار اور منافقین سے جہاد کیجئے۔

    مضارع مجزوم بلام امر: جیسے اللہ سبحانہ وتعالیٰ کا فرمان ہے: ﴿ ثُمَّ لْيقْضُوا تَفَثَهُمْ وَلْيوفُوا نُذُورَهُمْ وَلْيطَّوَّفُوا بِالْبَيتِ الْعَتِيقِ ﴾ [الحج:29] پھر وه اپنا میل کچیل دور کریں اور اپنی نذریں پوری کریں اور اللہ کے قدیم گھر کا طواف کریں۔

    اسم فعل بمعنی امر: جیسے اللہ رب العالمین کا یہ فرمان ہے: ﴿ يا أََيهَا الَّذِينَ آمَنُوا عَلَيكُمْ أََنفُسَكُمْ ﴾ [المائدة:105] اے ایمان والو! تم اپنی فکر کرو۔

    فعل امر کا نائب مصدر: جیسے اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے: ﴿ فَضَرْبَ الرِّقَابِ ﴾ [محمد:4] تو ان کی گردنیں مارو۔

    امر کے صیغوں کا فائدہ دینے والے چند مزید صیغ:

    امر کے اصلی صیغوں کا بیان پیچھے گزرچکا ہے ۔ کچھ اور بھی ایسے صیغے ہیں جو کسی چیز کے حکم اور اس کے پیدا کرنے کی طلب پر دلالت کرتے ہیں۔ وہ صیغ یہ ہیں:

    ۱۔ امرکے لفظ کے ساتھ وضاحت ہو، جیسے: «آمركم، وأمرتكم، أنتم مأمورون» میں تمہیں حکم دیتا ہوں، میں نے تمہیں حکم دیا تھا، تمہیں حکم دیا گیا تھا وغیرہ۔

    ۲۔ کسی کام کے واجب ہونے کی صراحت کا ہونا۔

    ۳۔ فرض یا لکھے جانے کی وضاحت کا ہونا۔

    ۴۔ حق علی العباد و علی المؤمنین (بندوں اور مؤمنوں پر کام کرنا واجب ہے)کے الفاظ کا ہونا۔

    ۵۔ اسی طرح جن کاموں کے چھوڑنے پر مذمت بیان کی گئی ہو اور سزا کا مستحق ٹھہرایا گیا ہو یا پھر اعمال کے برباد ہونے کی خبر سنائی گئی ہو۔

    چند مزید الفاظ بھی ہیں۔

    مذکورہ بالا بیان جمہور کی رائے ہے اور انہوں نے ان الفاظ کے امر ہونے پر اہل لغت کے اجماع سے استدلال کیا ہے۔ لہٰذاجب مالک اپنے غلام سے کہتا ہے کہ : ” «أعطني كذا» “ مجھے فلاں چیز دو

    تو اس مالک کو آمر (حکم دینے والا) اور غلام کو مطیع (حکم کی پیروی کرنے والا) سمجھا جاتا ہے اگر وہ یہ کام کرے تو۔ اور اگر نہ کرے تو اسے نافرمان گردانا جاتا ہے۔

    اشاعرہ اور ان کی پیروکاروں کا مذہب یہ ہے کہ امر کا کوئی لفظی صیغہ ہے ہی نہیں کیونکہ ان کے نزدیک کلام لفظ کی بجائے اس معنی کو کہتے ہیں جو قائم بالنفس (دل میں موجود) ہو اور الفاظ کو تو صرف اس لیے بنایاگیا ہے تاکہ وہ دل میں موجود معنی کی تعبیر کرسکیں اور اس پر دلالت کرسکیں۔لیکن یہ رائے کتاب وسنت کی خلاف ہونے کی وجہ سے باطل ومردود ہے۔

    قرآنی دلیل:
    ایک تو اللہ تعالیٰ کا یہ فرمان ہے جو اللہ رب العزت نے زکریا u سے خطاب کرتے ہوئے فرمایا: ﴿ آيتُكَ أَلاَّ تُكَلِّمَ النَّاسَ ثَلاثَ لَيالٍ سَوِيا ﴾ [مريم:10] تمہارے لیے یہ نشانی مقرر کی گئی ہے کہ تم مسلسل تین راتوں تک لوگوں سے کلام نہیں کرسکو گے۔

    تو یہاں زکریاuکے دل میں موجود معنی اور اس اشارے پر جسے قوم نے سمجھ لیا تھا، کلام کا لفظ نہیں بولا گیا۔

    رہی سنت سے دلیل تو وہ نبی کریمﷺ کا یہ فرمان ہے کہ : اللہ سبحانہ وتعالیٰ نے میری امت کے ان گناہوں کو معاف کردیا جو ان کے دلوں میں موجود ہیں ، جب تک وہ ان کے ساتھ کلام نہ کریں یا عمل نہ کریں۔

    تو یہاں پر نبی کریم ﷺ نے دل میں موجود معنی اور کلام کے درمیان فرق کیا ہے اور بتایا ہے کہ اللہ رب العالمین نے پہلے کو تو معاف کیا ہے ، دوسرے کو نہیں۔

    ترجمہ کتاب تسہیل الوصول از محمد رفیق طاہر
     
  2. ‏اکتوبر 02، 2011 #2
    محمد ارسلان

    محمد ارسلان خاص رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 09، 2011
    پیغامات:
    17,865
    موصول شکریہ جات:
    40,798
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,155

    جزاک اللہ خیرا
     
  3. ‏اکتوبر 02، 2011 #3
    ندیم محمدی

    ندیم محمدی مشہور رکن
    جگہ:
    Wah, Pakistan, Pakistan
    شمولیت:
    ‏جولائی 29، 2011
    پیغامات:
    347
    موصول شکریہ جات:
    1,274
    تمغے کے پوائنٹ:
    140

    فعل امر کی قواعد کے لحاظ سے تین اقسام ہوتی ہیں۔
    فعل امر معروف میں حکم سادہ ہوتا ہے۔ (کر)
    فعل امر اثقل
    فعل امر ثقیل
    موخر الذکر دونوں اقسام م زیادہ تاکید ہوتی ہے۔یعنی ضرور کرو
    اِن دونوں میں پھر فعل امر اثقل میں زیادہ تاکید ہوتی ہے۔
    فعل امر ثقیل کی تین اقسام ہیں ، جو لام کلمےکی حرکت،زَبَر(واحد مذکر)،زِیر(واحد مئونث)اور پیش(جمع مذکر ) سے پہچانی جاتیں ہیں۔
    فعل امر اثقل و ثقیل کے لام کلمے کی حرکت پر غور کیجیے۔
    واحد مذکر کے لیے زَبر لَن
    واحد مونث کے لیے زِیر لِن
    جمع مذکر کے لیے پیش لُن
    نوٹ:۔امر یعنی حکم صرف مخاطب کو دیا جاتا ہے۔
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں