1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

امیرالمومینن یزید رحمہ اللہ

'سیرت سلف الصالحین رحمہم اللہ' میں موضوعات آغاز کردہ از ابن قدامہ, ‏فروری 28، 2015۔

موضوع کا سٹیٹس:
مزید جوابات پوسٹ نہیں کیے جا سکتے ہیں۔
  1. ‏مارچ 02، 2015 #21
    محمد علی جواد

    محمد علی جواد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 18، 2012
    پیغامات:
    1,986
    موصول شکریہ جات:
    1,495
    تمغے کے پوائنٹ:
    304

    السلام و علیکم و رحمت الله -

    تاریخی تجزیہ کا یہ مسلمہ اصول ہے کہ جو شخص کسی دوسرے شخص کے معاملے میں متعصب ہو، اس کی اس شخص کے بارے میں بات کو قبول نہ کیا جائے۔ یزید بن معاویہ رح پر جو بدکاری ، شراب نوشی ، اور ظام و کفر و الحاد کے جو الزامات لگاے گئے ہیں ان روایات کی یا تو سند ہی نہیں ملتی یا پھر اگر ملتی ہے تو اس میں ہشام کلبی، محمّد بن عمر الواقدی اور ابو مخنف لوط بن یحییٰ نظر آتے ہیں۔ یہ تینوں موصوف نہ صرف کذاب مشہور ہیں بلکہ غالی شیعہ تھے - بعد کے معتدل مورخ جیسے ابن جریر طبری رح ، ابن اثیر رح وغیرہ نے زیادہ تر انہی تینوں سے روایات کو اخذ کیا ہے لیکن ان روایات کے صحیح ہونے پر کوئی دلیل قائم نہیں کی-

    دوسری بات یہ کہ اگر یزید بن معاویہ رح یہ افعال کھلے عام انجام دیتے تھے تو صحابہ کرام بشمول سعد بن ابی وقاص، ابن عمر اور ابن عباس رضی اللہ عنہم کبھی اس کی بیعت نہ کرتے۔ اور اگر وہ شراب نوشی یا بدکاری چھپ کر کرتے تھے ۔ تو ایسی صور ت میں سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ ان راویوں کو کیسے علم ہوا کہ وہ چھپ کر یہ کام کرتے تھے ؟ کیا یہ راوی خود بھی اس کے شریک مجلس رہے تھے یا یزید بن معاویہ رح نے خود آ کر ان کے سامنے اپنی بدکاریوں کا اعتراف کیا تھا؟ یہی وہ جواب ہے جو حضرت علی کے تیسرے بیٹے اور حسین رضی اللہ عنہما کے چھوٹے بھائی محمد بن علی رحمہ اللہ، جو کہ اپنی والدہ کی نسبت سے ابن حنفیہ کے نام سے مشہور ہیں، نے ان معترضین کو دیا تھا -

    (جو اس مراسلے میں تفصیل سے کفایت الله صاحب نے بیان کیا ہے)

    http://forum.mohaddis.com/threads/ب...ے-یزید-بن-معاویہ-کی-مدح-وثناء-بسندصحیح۔.9346/

    یزید بن معاویہ رح کی خلافت کے حق میں مشہور صحابی رسول حضرت عبداللہ بن عمر رضی الله عنہ کا بیان :

    یزید بن معاویہ رح کی خلافت کے حق ہونے کے بارے میں یہ روایت بھی ملاحظه کرلیں :

    نافع بیان کرتے ہیں کہ جب اہل مدینہ (کے بعض لوگوں نے) یزید بن معاویہ کے خلاف بغاوت کی تو ابن عمر رضی اللہ عنہما نے اپنے ساتھیوں اور اولاد کو جمع کر کے فرمایا: “میں نے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے سنا ہے کہ ‘قیامت کے دن ہر معاہدہ توڑنے والے کے لیے ایک جھنڈا نصب کیا جائے گا۔’ ہم لوگ اللہ اور رسول کے نام پر اس شخص (یزید) کی بیعت کر چکے ہیں۔میں نہیں جانتا کہ اللہ اور رسول کے نام پر کی گئی بیعت کو توڑنے اور بغاوت کرنے سے بڑھ کر کوئی معاہدے کی خلاف ورزی ہو سکتی ہے۔ ہر ایسا شخص جو اس بیعت سے الگ ہو جائے اور اس معاملے (بغاوت) کا تابع ہو جائے، تو اس کے اور میرے درمیان علیحدگی ہے۔ ( بخاری، کتاب الفتن، حدیث 6694) -
     
  2. ‏مارچ 02، 2015 #22
    محمد علی جواد

    محمد علی جواد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 18، 2012
    پیغامات:
    1,986
    موصول شکریہ جات:
    1,495
    تمغے کے پوائنٹ:
    304

    متفق
     
  3. ‏مارچ 02، 2015 #23
    محمد علی جواد

    محمد علی جواد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 18، 2012
    پیغامات:
    1,986
    موصول شکریہ جات:
    1,495
    تمغے کے پوائنٹ:
    304

    متفق
     
  4. ‏مارچ 02، 2015 #24
    ابو حمزہ

    ابو حمزہ رکن
    شمولیت:
    ‏دسمبر 10، 2013
    پیغامات:
    382
    موصول شکریہ جات:
    139
    تمغے کے پوائنٹ:
    91

    دیکھیں جہان تک راشدہ خلافت کی بات تو ان کے والد کو بھی اہل سنت اس میں سے نکال لیتے ہیں، چہ جائے یزید خلیفہ راشد ۔
    رہی بات اس کے کردار کی تو بھائی اس میں کوئی شک نہیں کہ اس سے تاریخی ظلم ہوا ہے ۔ اس کی وجہ بھی یہ ہے کہ یزید اپنے پیشرو خلفاء سا نہیں تھا اور اس کے پیشرو خلفاء صحابہ تھے اور چار خلیفہ راشد تھے ۔ اگر وہ تھوڑی سی غلطی کردیتا تو اس وقت کے لوگ اس کو بڑی جانتے تھے کیوں کہ وہ لوگ صحابہ کے انداز حکومت کے عادی تھے اور یزید کا انداز حکومت صحابہ جیسا نہیں تھا۔
     
  5. ‏مارچ 02، 2015 #25
    محمد علی جواد

    محمد علی جواد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 18، 2012
    پیغامات:
    1,986
    موصول شکریہ جات:
    1,495
    تمغے کے پوائنٹ:
    304

    حجاج بن یوسف رح کو بھی تاریخ کی جھوٹی روایات کے ذریے بدنام کیا گیا ہے - کہ وہ فاسق و فاجر اور ظالم حکمران تھا وغیرہ - جب کہ حقیقت کچھ اور ہے -

    حجاج بن یوسف رح کی شخصیت کے بارے میں ایک کتاب ہے-جو حقائق پر مبنی ہے- اگرموقع ملا تو لنک یہاں فراہم کروں گا -
     
  6. ‏مارچ 07، 2015 #26
    سلفی طالب علم

    سلفی طالب علم رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 04، 2015
    پیغامات:
    139
    موصول شکریہ جات:
    42
    تمغے کے پوائنٹ:
    56

    @اسحاق سلفی ، حافظ زبیر علی زئی (رح) سے کسی نے سوال کیا کے یزید کی شخصیت کے بارے میں کیا کہنا ہے؟ تو انہوں نے اس سائل کو ایک کتاب دکہائی جو علامہ ابن جوزی (رح) کی
    لکھی ہوئی ہے، اسکا لنک دیتا ہوں-(یہ اسکی تصویر ہے)
    1.png
    اسکا لنک یہ ہے۔
    http://ahlesunnatpak.com/?p=157
    اس لنک پر کتاب نمبر 9 ہے۔
    ویسے جس شخص کی یہ سائٹ ہے م"حمد علی مرزا" اسکے بارے میں بھی آپ اہل علم کی رائے جاننا چاہتا ہوں۔ یہ حضرت معاویہ (رضہ اللہ عنہ) کے بارے میں برا بھلا کہتا ہے۔

    جزاک اللہ خیر۔
     
  7. ‏مارچ 07، 2015 #27
    ابن قدامہ

    ابن قدامہ مشہور رکن
    جگہ:
    درب التبانة
    شمولیت:
    ‏جنوری 25، 2014
    پیغامات:
    1,772
    موصول شکریہ جات:
    421
    تمغے کے پوائنٹ:
    198

    بھائی اگر آپ لنک نہیں دے سکتے تو عبداللہ بن زبیر رضی اللہ عنہ کے قتال کے بارے میں اور امام مجاہد اور دیگر علماء نے جو ان پر کفر کا فتوی لگایا اس بار میں معلومات دے دیں
     
  8. ‏مارچ 09، 2015 #28
    ابو حمزہ

    ابو حمزہ رکن
    شمولیت:
    ‏دسمبر 10، 2013
    پیغامات:
    382
    موصول شکریہ جات:
    139
    تمغے کے پوائنٹ:
    91

    السلام علیکم و رحمۃ اللہ

    علامہ ابن الجوزی رحمہ اللہ اور شیخ عبدالمغیث دونوں ہی حنبلی تھے اور ان دونوں کا وسیع حلقہ درس تھا ان کے ساتھ ساتھ عبدالوہاب بن شیخ عبدالقادر جیلانی بھی تھے یہ بھی حنبلی تھے ابن جوزی رحمہ اللہ اور شیخ عبدالمغیث ایک دوسرے کا رد لکھتے رہتے تھے یہی وجہ ہے کہ ابن جوزی رحمہ اللہ نے شیخ عبدالمغیث نے جب یزید کے متعلق کتاب لکھی تو اس کا رد لکھا جو اوپر دیا ہوا ہے ۔۔ اسی کتاب میں علامہ ابن جوزی رحمہ اللہ شیخ عبدالمغیث کے متعلق لکھتے ہیں

    " ہمارے موصوف ایسے ہیں کہ انہیں نہ تو منقولات کا پتہ ہے اور نہ ہی معقولات کی سمجھ بوجھ –حدیث کی روایت اور عبارت تو پڑھ لیتے ہیں ،لیکن صحیح اورضعیف کی پہچان سے تہی دامن ہیں ،مقطوع روایت کو موصول سے جدا نہیں کرپاتے ،صحابی اور تابعی کے درمیان امتیاز نہیں کرسکتے ، ناسخ و منسوخ کی تمیز کی اہلیت نہیں اور نہ ہی دو مختلف حدیثوں میں تطبیق و توفیق سے نا آشنا ہیں،ایک طرف یہ نا اہلیت اور دوسری طرف عامیانہ تعصب کاچشمہ بھی اپنے دیدہ بصیرت پر چڑہا رکھا ہے جس کی وجہ سے ان کا طرز یہ ہے جب بھی اپنی من پسند اور اپنے نظرئے کے مطابق حدیث دیکھتے ہیں تو اسے قبول کر لیتے ہیں اور اسے اپنا راءبنا لیتے ہیں چاہے فہم و ادراک والے علماء اسکے خلاف ہی کیوں نہ ہوں"

    امام ابن الجوزی کاعلمی و احادیث کی روایت مین جومقام ہے وہ بیان نہیں کیا جا سکتا وہ بلند پائے کےمحدث ہیں ان کی شیخ عبدالمغیث پر یہ تنقید ہوسکتا ہے بجا ہو لیکن حیرت ہے جب خود امام ابن الجوزی نے شیخ عبدالمغیث کی رد میں جو یہ کتاب لکھی ہے اس میں تقریبن مردود روایات کاسہارہ لیا ہےمثال کے طور پر وہ کہتے ہیں
    وذكر محمد بن سعد في الطبقات أن معاوية قال للحسين ولعبد الله بن عمر وعبد الرحمن بن أبي بكر وعبد الله بن الزبير: إني أتكلم بكلام فلا تردوا عليَّ شيئاً فأقتلكم، فخطبَ الناس وأظهر أنهم بايعوا ليزيد، فسكتَ القوم، ولم يقرّوا، ولم ينكروا خوفاً منه
    یعنی محمدبن سعد نے طبقات میں ذکرکیا کہ معاویہ رضی اللہ عنہ نےامام حسین رضہ ، عبداللہ بن عمر، عبدالرحمن بن ابی بکر اورعبداللہ بن زبیر رضوان اللہ علہکم اجمعین سے کہا: میں ایک بات کہنے جارہاہوں تم لوگ میری کچھ بھی تردید نہ کرنا ورنہ میں تمہیں قتل کردوں گا۔ پھرمعاویہ رضی اللہ عنہ نے خطاب کیا اور کہا کہ ان سب لوگوں نے یزید کی بیعت کرلی ہے ۔ یہ سن کر یہ لوگ خاموش رہے ان لوگوں نے نہ تو اقرار کیا اور نہ ہی خوف کی وجہ سے انکار کیا [الرد على المتعصب العنيد المانع من ذم يزيد لابن الجوزي ص: 45]۔
    اس روایت کے ضیعف ہونے میں کیا شک
    اس کے علاوہ آپ جیل میں بھی رہے ۔آپ کے عبدالوہاب اور شیخ عبدالمغیث کے درمیان ہمیشہ مقابلہ بازی رہتی تھی لیکن آپ ان دونوں سے بڑے عالم تھے۔۔
     
  9. ‏مارچ 11، 2015 #29
    محمد علی جواد

    محمد علی جواد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 18، 2012
    پیغامات:
    1,986
    موصول شکریہ جات:
    1,495
    تمغے کے پوائنٹ:
    304

    جی ضرور - پہلی فرصت میں کوشش کر کے لنک فراہم کردوں گا -
     
  10. ‏مئی 25، 2016 #30
    abdullah786

    abdullah786 رکن
    شمولیت:
    ‏نومبر 24، 2015
    پیغامات:
    428
    موصول شکریہ جات:
    24
    تمغے کے پوائنٹ:
    46

    امت مسلمہ کے بلاتفاق فاسق اور فاجر کی شان میں قصیدے نہیں پڑھے جاتے ہیں۔
     
لوڈ کرتے ہوئے...
متعلقہ مضامین
  1. محمد علی جواد
    جوابات:
    2
    مناظر:
    238
  2. مظفر اختر
    جوابات:
    1
    مناظر:
    271
  3. عدیل سلفی
    جوابات:
    1
    مناظر:
    323
  4. محمد طلحہ اہل حدیث
    جوابات:
    6
    مناظر:
    596
  5. محمد طلحہ سلفی
    جوابات:
    1
    مناظر:
    682
موضوع کا سٹیٹس:
مزید جوابات پوسٹ نہیں کیے جا سکتے ہیں۔

اس صفحے کو مشتہر کریں