1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

ام المومنین سیدہ خدیجہ رضی اللہ عنہا کی نماز جنازہ

'تاریخ عرب' میں موضوعات آغاز کردہ از danish ghaffar, ‏اکتوبر 28، 2018۔

  1. ‏اکتوبر 28، 2018 #1
    danish ghaffar

    danish ghaffar رکن
    شمولیت:
    ‏مئی 30، 2017
    پیغامات:
    91
    موصول شکریہ جات:
    15
    تمغے کے پوائنٹ:
    45

    السلام علیکم

    محترم شیوخ

    حضرت خدیجہ رض کا جنازہ نبی ص نے پڑھایا تھا یا نہیں ؟؟؟
     
  2. ‏اکتوبر 29، 2018 #2
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    6,186
    موصول شکریہ جات:
    2,366
    تمغے کے پوائنٹ:
    777

    وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ
    جس وقت ام المومنین سیدہ خدیجہ رضی اللہ عنہا فوت ہوئیں ،اس وقت اسلام میں نمازہ جنازہ شریعت کا حصہ نہ تھی ،
    علامہ البلاذریؒ نے "انساب الاشراف " میں لکھا ہے کہ :
    " وَنَزَلَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي قَبْرِهَا. وَلَمْ يَكُنْ سُنَّتِ الصَّلاةُ عَلَى الْجَنَائِزِ يَوْمَئِذٍ "
    یعنی سیدہ خدیجہ رضی اللہ عنہا کے دفن کے وقت خود نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم ان کی قبر میں اترے، اور اس وقت تک جنازہ کی نماز شریعت اسلامیہ میں مقرر نہ ہوئی تھی "
    دیکھئے انساب الاشراف جلد دوم ،صفحہ 34
    https://archive.org/stream/FP32796/02_32797#page/n33/mode/2up
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    اور حافظ ابن حجرؒ "الاصابۃ " میں فرماتے ہیں :
    توفيت سنة عشر من البعثة بعد خروج بني هاشم من الشعب، ودفنت بالحجون، ونزل النبي اللَّه صلّى اللَّه عليه وسلّم في حفرتها، ولم تكن شرعت الصلاة على الجنائز.
    یعنی سیدہ خدیجہ رضی اللہ عنہا نبوت کے دسویں سال ،بنی ہاشم کے شعب ابی طالب سے نکلنے کے بعد فوت ہوئیں ،
    خود نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم ان کی قبر میں اترے ،اور اس وقت تک جنازہ کی نماز مشروع نہ تھی "
    اور سیرت انسائیکلوپیڈیا اردو جلد 3 صفحہ 429 میں بھی یہی بتایا گیاہے :
    https://archive.org/stream/SeeratEncyclopediaJilad/Seerat-Encyclopedia-Jilad-3#page/n429/mode/2up
     
    Last edited: ‏اکتوبر 29، 2018
    • علمی علمی x 3
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
  3. ‏نومبر 04، 2018 #3
    danish ghaffar

    danish ghaffar رکن
    شمولیت:
    ‏مئی 30، 2017
    پیغامات:
    91
    موصول شکریہ جات:
    15
    تمغے کے پوائنٹ:
    45

    جزاک اللّه خیراً کثیرا محترم
     
لوڈ کرتے ہوئے...
متعلقہ مضامین
  1. علی عمران
    جوابات:
    2
    مناظر:
    187
  2. محمد عامر یونس
    جوابات:
    1
    مناظر:
    636
  3. عامر عدنان
    جوابات:
    5
    مناظر:
    391
  4. The Choice
    جوابات:
    0
    مناظر:
    383
  5. ابوالوفا محمد حماد اثری
    جوابات:
    0
    مناظر:
    868

اس صفحے کو مشتہر کریں