1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

اولاد کو جنسی تعلیم دینے کا حکم

'معاشرت' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد فیض الابرار, ‏ستمبر 24، 2016۔

?

کیا اولاد کو جنسی تعلیم دینی چاہیے

  1. قبل از بلوغت دینی چاہیے

    75.0%
  2. بعد از بلوغت دینی چاہیے

    33.3%
  3. نہیں دینی چاہیے

    0 ووٹ
    0.0%
ایک سے زائد ووٹ ڈالے جا سکتے ہیں
  1. ‏نومبر 26، 2016 #31
    محمد فیض الابرار

    محمد فیض الابرار سینئر رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏جنوری 25، 2012
    پیغامات:
    2,935
    موصول شکریہ جات:
    1,177
    تمغے کے پوائنٹ:
    371

    اولاد کی جنسی تعلیم دینے کے حوالے سے کچھ اہم نکات
    نمبر 1: آغاز تربیت آداب طہارت سے ہو کیونکہ جنسی تعلیم کا ایک اہم ترین جزو طہارت بھی ہے جس سے چھوٹے تو کجا بڑے بھی ناواقف ہوتے ہیں کہ شریعت ہمیں ناپاکیوں کی مختلف کیفیات میں طہارت کا حصول کس طرح ممکن ہے مثال کے طور پر جس عمر میں بچہ قضا حاجت پوری کرنے میں ماں کا محتاج ہوتا ہے تو ماں طہارت کروایے اسی طرح کھانے سے پہلے ہاتھ دھلوانا وغیرہ اسی طرح آہستہ آہستہ جیسے جیسے عمر بڑھتی جایے گی طہارت کے آداب بھی مکمل ہوتے جاییں گے اور جب بچہ بڑا ہو جایے اور خود نہانا شروع کر دے تو اسے غسل کے مکمل آداب بتایے جاییں کہ پہلے وضو اور پھر اس طرح غسل کیا جایے
    نمبر2: طہارت کے حوالے سے مخصوص اذکار جو ثابت ہوں جیسا کہ وضو سے قبل اور بعد کی دعا وغیرہ
    نمبر3: احکام حجاب کو عملی طور پر اختیار کرنا کیونکہ اس امر میں دین دار گھرانوں میں بھی تساہل برتا جاتا ہے اور بھایی کی بیوی اور کزن وغیرہ سے حجاب نہیں کیا جاتا اور بچہ یہیں سے جنسی بے راہ روی کا شکار ہونا شروع ہوتا ہے کیونکہ کزن سے حجاب نہیں ہے لہذا بہت سی باتیں قبل از وقت اس کے سامنے آ جاتی ہیں جو نقصان دہ ثابت ہوتی ہیں
    نمبر4: میڈیا اور سوشل میڈیا کے استعمال میں احتیاط کیونکہ ہمارا میڈیا اور سوشل میڈیا شتر بے مہار کی طرح ۔۔۔۔۔۔۔
    نمبر5: کوشش کی جایے کہ تعلیم کے لیے ایسا تعلیمی ادارہ منتخب کیا جایے جہاں بوایز اور گرلز سیکشن الگ الگ ہوں یعنی چھوٹی عمر سے احتیاط کی جایے
    نمبر6: ایک بہت بڑا سوال جو والدین کے سامنے کھڑا ہوتا ہے کہ یہ تمام امور تو مقدمات اور حفظ ما تقدم کے طور پر ہیں براہ راست جنسی تعلیم کیسے دی جایے تو عرض ہے بیٹی ماں کے ساتھ اور بیٹا باپ کے ساتھ جیسا کہ میری بہن اخت ولید حفظہا اللہ نے بیان کیا ۔
    ان مقدمات اور حفظ ما تقدم کے طور پر اٹھایے گیے اقدامات کے ذریعے اولاد کے ساتھ ان موضوعات کے حوالے سے ذہنی قربت پیدا ہوتی ہے اور عمر کا خطرناک ترین دور کا آغاز اور پھر مناسب انداز میں جنسی تبدیلیوں کے بارے میں ابتدایی باتیں بیان کر دی جاییں جس میں تدریج سے کام لیا جا سکتا ہے
    نمبر7: جلد شادی کر دی جایے تاکہ فحاشی اور بے راہ روی کا راستہ روکا جا سکے
     
    • پسند پسند x 3
    • شکریہ شکریہ x 1
    • لسٹ
  2. ‏نومبر 26، 2016 #32
    محمد فیض الابرار

    محمد فیض الابرار سینئر رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏جنوری 25، 2012
    پیغامات:
    2,935
    موصول شکریہ جات:
    1,177
    تمغے کے پوائنٹ:
    371

    کراچی کے ایک ادارے مدرسہ اشاعت القرآن والسنۃ نے والدین کے ساتھ ایک تربیتی نشست کا اہتمام کیا ہے جس میں گفتگو کی تیاری کے دوران کچھ نکات سامنے آیے تو لکھ دیے اگر اس میں کویی کمی یا غلطی ہو تو اصلاح کیجیے
     
  3. ‏جنوری 21، 2017 #33
    یوسف ثانی

    یوسف ثانی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    پاکستان
    شمولیت:
    ‏ستمبر 26، 2011
    پیغامات:
    2,703
    موصول شکریہ جات:
    5,242
    تمغے کے پوائنٹ:
    562

    از: شادباش عالم

    ہم سب اس الجھن کا شکار ہیں کہ بچوں اور نوجوانوں کو جنسی تعلیم دینی چاہیے یا نہیں. اس موضوع پر اب الیکٹرانک اور سوشل میڈیا پر بحث و مباحثے ہو رہے ہیں مگر ابھی تک کسی حتمی نتیجے پر نہیں پہنچ سکے. یہ بات طے ہے کہ الیکٹرانک و پرنٹ میڈیا اور سیکولر و لبرل طبقہ ہمارے بچوں کی اس معاملے میں جس قسم کی تربیت کرنا چاہتا ہے یا کر رہا ہے وہ ہر باحیا مسلمان کے لیے ناقابل قبول ہے. مگر یہ بھی ضروری ہے کہ نوعمر یا بلوغت کے قریب پہنچنے والے بچوں اور بچیوں کو اپنے وجود میں ہونے والی تبدیلیوں اور دیگر مسائل سے آگاہ کیا جائے ورنہ حقیقت یہ ہے کہ اگر گھر سے بچوں کو اس چیز کی مناسب تعلیم نہ ملے تو وہ باہر سے لیں گے جو کہ گمراہی اور فتنہ کا باعث بنے گا. چند فی صد لبرل مسلمانوں کو چھوڑ کر ہمارے گھروں کے بزرگوں کی اکثریت آج کی نوجوان نسل میں بڑھتی بے راہ روی سے پریشان ہے. وہ لوگ جو اپنے گھرانوں کے بچوں کے کردار کی بہترین تربیت کے خواہشمند ہیں، انکی خدمت میں کچھ گزارشات ہیں جن سے ان شاءاللہ ان کے بچوں میں پاکیزگی پیدا ہوگی

    بچوں کو زیادہ وقت تنہا مت رہنے دیں

    آج کل بچوں کو ہم الگ کمرہ، کمپیوٹر اور موبائل جیسی سہولیات دے کر ان سے غافل ہو جاتے ہیں…. یہ قطعاً غلط ہے. بچوں پر غیر محسوس طور پر نظر رکھیں اور خاص طور پر انہیں اپنے کمرے کا دروازہ بند کر کے بیٹھنے مت دیں کیونکہ تنہائی شیطانی خیالات کو جنم دیتی ہے. جس سے بچوں میں منفی خیالات جنم لیتے ہیں اور وہ غلط سرگرمیوں کا شکار ہونے لگتے ہیں بچوں کے دوستوں اور بچیوں کی سہیلیوں پہ خاص نظر رکھیں تاکہ آپ کے علم میں ہو کہ آپکا بچہ یا بچی کا میل جول کس قسم کے لوگوں سے ہے. بچوں بچیوں کے دوستوں اور سہیلیوں کو بھی ان کے ساتھ کمرہ بند کرکے مت بیٹھنے دیں. اگر آپ کا بچہ اپنے کمرے میں ہی بیٹھنے پر اصرار کرے تو کسی نہ کسی بہانے سے گاہے بہ گاہے چیک کرتے رہیں.

    بچوں کو فارغ مت رکھیں

    فارغ ذہن شیطان کی دکان ہوتا ہے اور بچوں کا ذہن سلیٹ کی مانند صاف ہوتا ہے بچپن ہی سے وہ عمر کے اس دور میں ہوتے ہیں جب انکا ذہن اچھی یا بری ہر قسم کی چیز کا فوراً اثر قبول کرتا ہے. اس لیے انکی دلچسپی دیکھتے ہوئے انہیں کسی صحت مند مشغلہ میں مصروف رکھیں. ٹی وی وقت گزاری کا بہترین مشغلہ نہیں بلکہ سفلی خیالات جنم دینے کی مشین ہے اور ویڈیو گیمز بچوں کو بے حس اور متشدد بناتی ہیں. ایسے کھیل جن میں جسمانی مشقت زیادہ ہو وہ بچوں کے لیے بہترین ہوتے ہیں تاکہ بچہ کھیل کود میں خوب تھکے اور اچھی، گہری نیند سوئے.

    بچوں کے دوستوں اور مصروفیات پر نظر رکھیں

    یاد رکھیں والدین بننا فل ٹائم جاب ہے. اللہ نے آپکو اولاد کی نعمت سے نواز کر ایک بھاری ذمہ داری بھی عائد کی ہے. بچوں کو رزق کی کمی کے خوف سے پیدائش سے پہلے ہی ختم کردینا ہی قتل کے زمرے میں نہیں آتا بلکہ اولاد کی ناقص تربیت کرکے انکو جہنم کا ایندھن بننے کے لئے بے لگام چھوڑ دینا بھی انکے قتل کے برابر ہے. اپنے بچوں کو نماز کی تاکید کریں اور ہر وقت پاکیزہ اور صاف ستھرا رہنے کی عادت ڈالیں. کیونکہ جسم اور لباس کی پاکیزگی ذہن اور روح پر بھی مثبت اثرات مرتب کرتی ہے.
    بچیوں کو سیدھا اور لڑکوں کو الٹا لیٹنے سے منع کریں. حضرت عمر رضی اللہ اپنے گھر کی بچیوں اور بچوں پر اس بات میں سختی کرتے تھے. ان دو پوسچرز میں لیٹنےسے سفلی خیالات زیادہ آتے ہیں. بچوں کو دائیں کروٹ سے لیٹنے کا عادی بنائیں.
    بلوغت کے نزدیک بچے جب واش روم میں معمول سے زیادہ دیر لگائیں تو کھٹک جائیں اور انہیں نرمی سے سمجھائیں. اگر ان سے اس معاملے میں بار بار شکایت ہو تو تنبیہ کریں. لڑکوں کو انکے والد جبکہ لڑکیوں کو ان کی والدہ سمجھائیں.
    بچوں کو بچپن ہی سے اپنے مخصوص اعضاء کو مت چھیڑنے دیں. یہ عادت آگے چل کر بلوغت کے نزدیک یا بعد میں بچوں میں اخلاقی گراوٹ اور زنا کا باعث بن سکتی ہے
    بچوں کو اجنبیوں سے گھلنے ملنے سے منع کریں. اور اگر وہ کسی رشتہ دار سے بدکتا ہےیا ضرورت سے زیادہ قریب ہے تو غیر محسوس طور پر پیار سے وجہ معلوم کریں. بچوں کو عادی کریں کہ کسی کے پاس تنہائی میں نہ جائیں چاہے رشتہ دار ہو یا اجنبی اور نہ ہی کسی کو اپنے اعضائے مخصوصہ کو چھونے دیں.
    بچوں کا 5 یا 6 سال کی عمر سے بستر اور ممکن ہو تو کمرہ بھی الگ کر دیں تاکہ انکی معصومیت تا دیر قائم رہ سکے .

    بچوں کے کمرے اور چیزوں کو غیر محسوس طور پر چیک کرتے رہیں. آپ کے علم میں ہونا چاہیے کہ آپ کے بچوں کی الماری کس قسم کی چیزوں سے پر ہے . مسلہ یہ ہے کہ آج کے دور پرائویسی نام کا عفریت میڈیا کی مدد سے ہم پر مسلط کر دیا گیا ہے اس سے خود کو اور اپنے بچوں کو بچائیں. کیونکہ نوعمر بچوں کی نگرانی بھی والدین کی ذمہ داری ہے. یاد رکھیں آپ بچوں کے ماں باپ ہیں، بچے آپکے نہیں. آج کے دور میں میڈیا والدین کا مقام بچوں کی نظروں میں کم کرنے کی سرتوڑ کوشش کر رہا ہے. ہمیں اپنے بچوں کو اپنے مشفقانہ عمل سے اپنی خیرخواہی کا احساس دلانا چاہیے اور نوبلوغت کے عرصے میں ان میں رونما ہونے والی جسمانی تبدیلیوں کے متعلق رہنمائی کرتے رہنا چاہیے تاکہ وہ گھر کے باہر سے حاصل ہونے والی غلط قسم کی معلومات پہ عمل کرکے اپنی زندگی خراب نہ کر لیں.
    بچوں کو بستر پر جب جانے دیں جب خوب نیند آ رہی ہو. اور جب وہ اٹھ جائیں تو بستر پر مزید لیٹے مت رہنے دیں

    والدین بچوں کے سامنے ایک دوسرے سے جسمانی بے تکلفی سے پرہیز کریں.ورنہ بچے وقت سے پہلے ان باتوں کے متعلق با شعور ہو جائیں گے جن سے ایک مناسب عمر میں جا کر ہی آگاہی حاصل ہونی چاہئے . نیز والدین بچوں کو ان کی غلطیوں پہ سر زنش کرتے ہوئے بھی با حیا اور مہذب الفاظ کا استعمال کریں ورنہ بچوں میں وقت سے پہلے بے باکی آ جاتی ہے جس کا خمیازہ والدین کو بھی بھگتنا پڑتا ہے.
    13 یا 14 سال کی عمر میں بچوں کو ڈاکٹر آصف جاہ کی کتاب Teenage Tinglings پڑھنے کو دیں. اس کا اردو ترجمہ بھی دستیاب ہے .یاد رکھیں آپ اپنے بچوں کو گائیڈ نہیں کریں گے تو وہ باہر سے سیکھیں گے جس میں زیادہ تر غلط اور من گھڑت ہوگا جس سے ان کے اذہان آلودہ ہوں گے.تیرہ، چودہ سال کے ہوں تو لڑکوں کو انکے والد اور بچیوں کو انکی والدہ سورۃ یوسف اور سورۃ النور کی تفسیر سمجھائیں یا کسی عالم ، عالمہ سے پڑھوائیں. کہ کس طرح حضرت یوسف علیہ السلام نے بے حد خوبصورت اور نوجوان ہوتے ہوئے ایک بے مثال حسن کی مالک عورت کی ترغیب پر بھٹکے نہیں. بدلے میں اللہ کے مقرب بندوں میں شمار ہوئے. اس طرح بچے بچیاں انشاءاللہ اپنی پاکدامنی کو معمولی چیز نہیں سمجھیں گے اور اپنی عفت و پاکدامنی کی خوب حفاظت کریں گے.

    آخر میں گذارش یہ ہے کہ ان کے ذہنوں میں بٹھا دیں کہ اس دنیا میں حرام سے پرہیز کا روزہ رکھیں گے تو انشاءاللہ آخرت میں اللہ کے عرش کے سائے تلے حلال سے افطاری کریں گے. اللہ امت مسلمہ کے تمام بچوں کی عصمت کی حفاظت فرمائے اور ان کو شیطان اور اس کے چیلوں سے اپنی حفظ و امان میں رکھے.آمین
     
  4. ‏جنوری 21، 2017 #34
    یوسف ثانی

    یوسف ثانی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    پاکستان
    شمولیت:
    ‏ستمبر 26، 2011
    پیغامات:
    2,703
    موصول شکریہ جات:
    5,242
    تمغے کے پوائنٹ:
    562

    بچوں کا جنسی استحصال اور والدین کا کردار۔(نیر تاباں)​

    فلموں ڈراموں سے، کسی کتاب سے، کسی سنی سنائی سے بہرحال آج کے والدین پر یہ حقیقت تو اچھی طرح واضح ہے کہ بچوں کے ساتھ جنسی زیادتی کے واقعات اس گھٹن زدہ معاشرے میں عام ہیں۔ سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ اتنا شعور ہی کافی ہے یا آگے بڑھ کر کوئی قدم اٹھانا ہو گا۔ کیا والدین واقعی اپنے بچوں کو اس صورتحال سے نبٹنے کے لئے تیار کر رہے ہیں؟ اور جو والدین بچوں کو بتاتے ہیں، وہ کیا بتا رہے ہیں؟ پرائیویٹ پارٹس کونسے ہیں اور کسی کو اجازت نہیں کہ آپکو ہاتھ لگائے۔ کوئی ایسی کوشش کرے تو مجھے بتا دینا۔ بس؟ کیا اتنا بتا دینا کافی ہے؟ ایک بار کا بتا دینا بہت ہے؟ ہر گز نہیں! بچوں کو مختلف زاویوں سے، مثالیں اور scenarios سامنے رکھ کر سمجھانا ہو گا، انہیں problem solving skills سمجھانے ہونگے۔
    یاد رکھئے کہ دشمن میری اور آپکی طرح کا ایک نارمل دِکھنے والا انسان ہے، ہنستا بولتا ہے، گھلتا ملتا ہے۔ وہ کوئی الگ دنیا کی مخلوق نہیں کہ چہرے سے دیکھ کر ہم پہچان جائیں۔ بلکہ عموماً تو اتنے بہترین عادات و اطوار کا مالک ہو گا کہ آپکو اپنی اولاد کے لئے اس انسان پر بھروسہ کرتے وقت ایک لمحہ کوئی منفی خیال بھی نہ گزرے۔
    بچے کی عمر کے لحاظ سے دشمن مختلف طریقوں سے اس کو گھیرتا ہے اور انہی طریقوں سے ہم نے بچوں (لڑکوں اور لڑکیوں- دونوں کو) کو باخبر کرنا ہے۔
    1- لالچ دینا:
    چونکہ دشمن کا گھر میں ہر وقت کا آنا جانا ہے اور وہ آپکی اولاد کی پسند ناپسند سے اچھی طرح واقف ہے، اسلئے وہ اسکو چھوٹے موٹے تحائف دیتا ہے۔ کبھی ٹافی، کبھی آئس کریم، کبھی اپنے ٹیبلٹ پر اسکو کارٹون اور گیمز کی اجازت دینا۔ اور ساتھ میں اسکو لالچ بھی دیتا ہے کہ میں آپکو وہ والی گڑیا لا کر دوں گا جو آپکو بہت پسند تھی اور ماما نے نہیں دلوائی، یا ہم پارک میں جھولوں پر جائیں گے اگر آپ۔۔۔۔
    2۔ جھوٹ بولنا:
    اگر آپ امی ابو کو بتائیں گے، آپکو ہی ڈانٹ پڑے گی۔ یا یہ کہ کوئی آپکی بات کا یقین نہیں کرے گا۔ یا یہ کہنا کہ all cool kids do that یا ایسے ٹچ کرنے میں کوئی غلط بات نہیں۔
    3- دھمکی دینا:
    اگر آپ نے میری بات نہیں مانی، میں کبھی آپکا دوست نہیں بنوں گا۔۔۔
    4- بلیک میل کرنا:
    میں آنٹی کو بتا دونگا کہ اس دن سکول میں آپ کی فلاں سے لڑائی ہوئی تھی۔ اگر آپ بات نہیں مانو گے تو میں انکل سے کہوں گا یہ ہمارے گھر میں ٹی وی دیکھتا ہے جو آپ نے اپنے گھر میں منع کیا ہوا۔
    5- چیلنج کرنا:
    اگر آپ اتنے سمارٹ ہو تو 55 سیکنڈز میں اپنا انڈرویئر اتار کر دکھائیں۔ مجھے پتہ ہے آپ نہیں کر سکیں گے۔ بچوں کو dare کیا جائے تو وہ فوراً اپنے آپکو پروو کرنے کے لئے کچھ بھی کر گزرنے کو تیار ہو جاتے ہیں۔
    یہ پانچوں طریقے مزید مثالوں سے آپ بچوں کو سمجھائیں۔ ہر مثال پر ان سے پوچھیں اگر ایسا ہو تو آپ کیا کریں گے یا ایسا کبھی ہوا تو نہیں؟ ۔ اب آئیں حکمتِ عملی کی طرف:
    1- سب سے پہلا کام بچے کو یہ کرنا ہے کہ بآوازِ بلند، واضح الفاظ میں "نہیں، میں ایسا نہیں کرونگا" کہے۔ (بچے سے کہلوائیں تا کہ اسکی پریکٹس ہو(
    2- وہاں سے بھاگ کر فوراً محفوظ جگہ پر قابلِ اعتبار لوگوں میں پہنچے۔
    3- پہلی فرصت میں امی ابو کو سب کچھ بتائے۔ سکول میں ہیں تو ٹیچر کو بتائیں، کسی کے گھر میں ہیں تو جو قابلِ اعتبار بندہ ہو اسکو بتائیں، اور موقع ملتے ہی امی ابو کو بتائیں۔
    یہاں یاددہانی کرواتی چلوں کہ بچے آپکو تبھی اپنے دل کی بات بتائیں گے جب آپ ان کو اعتماد دیں گے۔ انکے ساتھ اپنی چھوٹی موٹی باتیں شیئر کیا کریں تا کہ وہ بھی آپکو اپنی باتیں بتانے میں جھجک محسوس نہ کریں۔ ان کو بتائیں کہ امی ابو کے ساتھ کوئی راز نہیں رکھنے ہوتے، ہر بات بتانی ہوتی ہے۔ اپنے بچوں کو بتائیں کہ ہمارے آس پاس ہر طرح کے لوگ ہیں، اچھے بھی اور برے بھی۔ ہمیں اچھا بننا ہے، لیکن کسی کو اپنے ساتھ برا کرنے کی اجازت بالکل نہیں دینی۔ انہیں سکھائیں کہ کوئی برا کرے یا کوئی ایسی بات کرے کہ آپکو لگے گندی بات ہے تو firmly انہیں کہیں کہ "نہیں، میں ایسا نہیں کرونگا" اور فوراً وہاں سے بھاگ جائیں۔
    اب فرض کیجیے کہ کمرے میں اس وقت کوئی اور نہیں، بچہ اسی "سرپرست" کے ساتھ اکیلا ہے۔ بچے کو اپروچ کرے تو اور کچھ ممکن نہ ہو تو بچے کو کہیں کہ پیٹ کے درد کا بہانہ کر کے باتھ روم چلا جائے اور تب تک وہاں رہے جب تک دشمن نا امید ہو کے چلا جائے یا باقی گھر والے کمرے میں آ جائیں۔
    بچوں کے ساتھ رویہ دوستانہ رکھیں تا کہ وہ آپکے ساتھ اپنی ہر بات شیئر کر سکیں۔ یہ بہت ہی ضروری ہے۔ بچوں کے ذہن میں سوال پیدا ہونا فطری ہے۔ اگر آپ انہیں سوال کرنے پر ڈانٹ دیں گے تو انکا تجسس ختم نہیں ہو گا۔ وہ کسی اور سے اس کے بارے میں پوچھیں گے۔ وہ کس سے پوچھیں، اگلا بندہ کیا جواب دے، یہ آپکو معلوم نہیں۔ کچھ والدین شرم کے مارے ان ٹاپکس پر بچوں سے بات نہیں کرتے۔ ہوتے ہوتے والدین اور بچوں کے درمیان جھجک کا ایسا پردہ حائل ہو جاتا ہے جسکو پاٹنا مشکل ہو جاتا ہے۔ اگر آپکو لگتا ہے کہ آپ کے لئے اپنے بچے کے ساتھ یہ باتیں کرنا ممکن نہیں تو لاوارث چھوڑنے کی بجائے کسی خالہ، پھوپھو، کوئی بڑا بہن بھائی، کزن، کوئی ایسا بندہ جو بچے سے نزدیک ہے، اسکو اس طرف لگائیں اور ان سے بچے کے بارے میں ان ٹچ رہیں۔ بہتر بہرحال یہی ہے کہ خود بات کی جائے۔ انہیں آپ سے اتنا اعتماد ملنا چاہئے کہ وہ جھجکے بغیر آپ سے جو دل میں آئے پوچھ لیں۔ جواب سچائی اور حکمت پر مبنی ہونا چاہئے۔
    بچوں کے بدلتے رویوں پر نظر رکھیں۔ انکی کوئی بات، کوئی عمل، کوئی غیر متوقع ری ایکشن، ڈراؤنے خواب، ہنستے کھیلتے بچے کا ایک دم چپ چپ سا ہو جانا، غصہ کرنا، یا کسی سے نفرت یا ناپسندیدگی کا اظہار کرنا جو آپکی نظر میں بہت اچھا انسان ہو؛ ایسی کسی بھی صورت میں غیر محسوس طریقے سے کریدنے کی کوشش کریں۔ بچہ کہیں جانے پر ناپسندیدگی کا اظہار کرے تو اسکو ڈانٹنے کے بجائے کھوج لگانے کی کوشش کریں کہ آخر یہ بچہ صرف اسی گھر میں ان کمفرٹ ایبل کیوں ہے۔ بچے کی رائے کو مقدم رکھیں۔
    عام حالات میں بھی ہمیں معلوم ہے کہ بچوں کو بار بار یاد دہانی کروانی پڑتی ہے۔ ہم مائیں تو آدھا دن یہی بولتی ملتی ہیں "بیٹا، یہ بات میں آپکو اتنی بار پہلے بھی سمجھا چکی ہوں۔ تھوڑی دیر پہلے میں نے فلاں بات سے منع کیا تھا" تو اسی حوالے سے اوپر دیا گیا مکالمہ ایک بار کر لینا کافی نہیں بلکہ ہر کچھ عرصے بعد drill کی جائے۔ یہی وہ واحد طریقہ ہے جس سے ہم اپنے بچوں کو ذہنی طور پر تیار کر سکتے ہیں۔ اور اس سب کے ساتھ بچوں کو دعاؤں کے حصار میں رکھیں۔ اللہ تعالی ان ننھے پھولوں کو اپنی امان مین رکھیں اور کبھی کسی کی میلی نظر بھی نہ پڑے۔
    پچھلی پوسٹ پر جن احباب نے کہا کہ جوائینٹ فیملی سسٹم ہی بنیادی وجہ ہے:
    آپ سے جزوی اتفاق ہے۔ کلی اس لیے نہیں کیونکہ فرض کیجیئے میرے دادا دادی میرے والد کے ساتھ رہتے ہیں۔ جوائینٹ فیملی نہیں ہے لیکن میرے چچا، پھوپھو وغیرہ اپنے والدین سے ملنے ہمارے گھر آئیں گے۔ ساتھ میں بچوں کو بھی لائیں گے۔ دور سے آئے تو شاید کچھ دن رکیں گے بھی۔ ایسے میں کیا کیا جائے؟
    - کچھ احباب کا کہنا تھا کہ بچوں کو ہر وقت اپنی نگرانی میں رکھا جائے:
    کیا یہ عملی طور پر ممکن ہے؟ آپ کو بچوں کو سکول بھی بھیجنا ہے، کوئی فیلڈ ٹرپ ہو گا تو بچے وہاں بھی جائیں گے، رشتہ داروں سے بھی ملنا ہے۔ کبھی آپ کو خود کہیں جانا پڑ سکتا ہے جہاں بچے کو لے کر جانا ممکن نہ ہو۔ 10، 12 سال تک کے بچے victim بن سکتے ہیں۔ 12 سال تک یہ کس طرح ممکن ہے کہ آپ بچے کو ہمہ وقت اپنی نگرانی میں رکھیں؟
    - جو کہتے ہیں کہ اسلام سے دوری وجہ ہے:
    یقیناً ایسا ہے لیکن مدارس بھی اس غلاظت سے پاک نہیں۔ اور یوں بھی اسلام کو ہم راتوں رات ہر جگہ، ہر ایک پر نافذ نہیں کر سکتے۔ کوئی ایسا حل ہونا چاہئے جس پر ابھی فوری عمل درآمد شروع کیا جائے۔
    - جو کہتے ہیں کہ ٹی وی، فون، انٹرنیٹ اصل وجہ ہے:
    جو واقعہ میں نے لکھا تھا وہ اب سے کوئی 155 سال پرانا ہے۔ انباکس میں بھی دو واقعات ایسے پتہ چلے جو اتنے ہی پرانے ہیں۔ اسوقت تو یہ خرافات نہ ہونے کے برابر تھیں۔
    واحد حل یہی ہے کہ بچوں کو مضبوط بنایا جائے، انہیں اعتماد دیا جائے، انہیں problem solving skills سکھائے جائیں۔ بحثیت والدین آپ پر بھاری ذمہ داری ہے۔ آپ کو یہ لگتا ہے کہ ایسی باتیں کر کے آپ ان سے انکا بچپن چھین رہے ہیں تو تصور کی آنکھ سے ان بچوں کو دیکھیں جن کے ساتھ یہ زیادتی ہو چکی ہے۔ انکی ساری زندگی ایک کرب میں گزرتی ہے۔ ایک ناکردہ گناہ کا مجرم بن کر، بنا کسی قصور کے خود کو کوستے ہوئے۔۔۔ بچوں کو اس اذیت میں مت جھونکیں۔ انکو ایک مضبوط، پراعتماد انسان بنائیں۔
     
  5. ‏جنوری 21، 2017 #35
    یوسف ثانی

    یوسف ثانی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    پاکستان
    شمولیت:
    ‏ستمبر 26، 2011
    پیغامات:
    2,703
    موصول شکریہ جات:
    5,242
    تمغے کے پوائنٹ:
    562

    از: (نیر تاباں)

    "ہم لوگ جوائینٹ فیملی میں رہتے تھے، دادی جان، چاچو کی فیملی اور ہم۔ چاچو کی شادی ابو سے کچھ سال پہلے ہوئی تھی۔ ان کا سب سے بڑا بیٹا مجھ سے قریب 15 سال بڑا ہے۔ امی نے ہمیشہ یہی بتایا کہ یہ بڑے بھائی ہیں۔ وہ ہم کزنز میں سب سے بڑا تھا اور ہم سبھی اسے بھیا کہہ کر بلاتے تھے۔ امی اور چچی کی آپس میں اچھی دوستی تھی اسلئے کبھی شاپنگ پر جانا ہوتا، یا خاندان میں کسی کی فوتگی پر جانا ہو، یا کبھی شادی میں صرف بڑوں کا بلاوا ہوتا تو وہ لوگ ساتھ چلے جاتے اور ہم سب کزنز بھیا کے زیرِ نگرانی ہوتے۔ امی جاتے جاتے کہہ جاتیں کہ وہ جلدی لوٹ آئیں گی، اور گھبرانے کی کوئی بات نہیں کیونکہ بھیا گھر پر ہیں۔ میں امی کو کیسے سمجھاتی کہ یہی تو فکر کی بات ہے کہ بھیا گھر پر ہیں۔ سب بچوں کو ٹی وی لگا کر دے دیا جاتا اور اسکے بعد میرے لئے بتانا ممکن نہیں کہ میرے ساتھ کیا ہوتا۔ وہ اٹھارہ بیس سال کے ہونگے اور میں چار پانچ سال کی بچی۔۔۔ اسے روکتی بھی تو کیسے؟! لگ بھگ پانچ سال یہی سلسلہ چلتا رہا۔ مجھے محسوس ہوتا تھا کہ جو میرے ساتھ ہو رہا ہے غلط ہے۔ ڈر سے میں کسی کو بتا بھی نہ پائی۔ اب اس بات کو کئی سال گزر چکے ہیں لیکن میرے دل سے بھیا کی نفرت نہیں جاتی۔ مجھے لگتا ہے کہ میرا بھی قصور تھا کہ میں یہ سب کچھ روک نہ پائی۔ ہر بار جب امی کو جانا ہوتا، میں رو رو کر انہیں کہتی کہ مجھے ساتھ جانا ہے۔ امی ہر بار مجھے کبھی پیار سے اور کبھی ڈانٹ کر چپ کروا دیتیں کہ جب بڑا بھائی گھر پر ہے تو ڈرنے کی کیا بات ہے، آپ اکیلی تھوڑی ہیں؟ میں انہیں کیسے سمجھاتی کہ آپ مجھے اکیلا چھوڑ کر چلی جائیں تو شاید میں محفوظ رہوں۔ بھیڑوں کی حفاظت کے لئے امی نے بھیڑیے کا انتخاب کیا تھا، اور انہیں خود بھی معلوم نہیں تھا۔۔۔۔۔"
    یہ سب بتاتے ہوئے اسکی کیا حالت تھی، میں نہیں جانتی لیکن کمپیوٹر کے اس جانب میرے ہاتھ ٹھنڈے پڑ چکے تھے، میں کانپ رہی تھی، سمجھ نہیں آ رہا تھا کہ کیا سوچوں، کیا کہوں، کیا مشورہ دوں۔۔۔
    بعد میں اسکے بارے میں مزید ریسرچ کی تو معلوم ہوا کہ %70 کے قریب ایسا کرنے والے قریبی خاندان، دوست، نوکر چاکر، ڈرائیور اور وہ لوگ جن پر ہم اعتماد کرتے ہیں۔ اتنا اعتماد کہ اپنی اولاد ان کے حوالے کرتے ہمیں ایک بار خیال بھی نہیں آتا کہ کہیں کچھ ایسا ویسا نہ ہو جائے۔
    جس گفتگو کا ذکر میں نے اوپر کیا، اس وقت یہ فیصلہ کیا کہ جب میرا کوئی بچہ ہو گا تو اسکو میں ضرور بتاؤں گی کہ پرائیویٹ پارٹس کسی کو دیکھنے/چھونے کی اجازت نہیں، اور نہ ہی ہمیں اجازت ہے کسی کے پرائیویٹ پارٹس کو دیکھنا/چھونا۔ اور میں نے ایسا ہی کیا۔ شاید آپ میں سے بھی بہت سوں نے اپنے بچوں کو یہ بنیادی تعلیم دے رکھی ہو گی اور پھر میری طرح بےفکر ہو گئے ہونگے کہ فرض پورا ہوا۔ لیکن کچھ دن پہلے ایک کتاب پڑھی جسکو پڑھ کر احساس ہوا کہ یہ بتا دینا ہی کافی نہیں۔ اگر آپ نے اپنے بچے کو یہ بنیادی تعلیم دے رکھی ہے لیکن اگر کوئی اسے اپروچ کرے اور دھمکی دے کہ اگر تم نے میری بات نہ مانی تو میں تم سے دوستی ختم کر دوں گا، یا لالچ دے کہ اگر تم میری بات مان لو تو میں تمہارا پسندیدہ کھلونہ تمہیں دلواؤں گا، ایسے میں بچہ کیا کرے؟
    اس کتاب کی روشنی میں ایک تفصیلی آرٹیکل لکھنے کا ارادہ ہے۔ موضوع حساس سہی لیکن اس بارے میں والدین کو علم ہونا انتہائی ضروری ہے۔​
     
    • پسند پسند x 1
    • متفق متفق x 1
    • لسٹ
  6. ‏جنوری 21، 2017 #36
    یوسف ثانی

    یوسف ثانی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    پاکستان
    شمولیت:
    ‏ستمبر 26، 2011
    پیغامات:
    2,703
    موصول شکریہ جات:
    5,242
    تمغے کے پوائنٹ:
    562

    cap1.jpg cap2.jpg cap3.jpg cap4.jpg cap5.jpg
     
  7. ‏جنوری 21، 2017 #37
    یوسف ثانی

    یوسف ثانی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    پاکستان
    شمولیت:
    ‏ستمبر 26، 2011
    پیغامات:
    2,703
    موصول شکریہ جات:
    5,242
    تمغے کے پوائنٹ:
    562

    cap6.jpg cap7.jpg cap8.jpg cap9.jpg cap10.jpg
     
  8. ‏جنوری 21، 2017 #38
    یوسف ثانی

    یوسف ثانی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    پاکستان
    شمولیت:
    ‏ستمبر 26، 2011
    پیغامات:
    2,703
    موصول شکریہ جات:
    5,242
    تمغے کے پوائنٹ:
    562

    cap11.jpg cap12.jpg cap14.jpg cap15.jpg
     
  9. ‏جنوری 21، 2017 #39
    یوسف ثانی

    یوسف ثانی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    پاکستان
    شمولیت:
    ‏ستمبر 26، 2011
    پیغامات:
    2,703
    موصول شکریہ جات:
    5,242
    تمغے کے پوائنٹ:
    562

    cap16.jpg cap18.jpg cap19.jpg cap20.jpg
     
  10. ‏جنوری 21، 2017 #40
    محمد فیض الابرار

    محمد فیض الابرار سینئر رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏جنوری 25، 2012
    پیغامات:
    2,935
    موصول شکریہ جات:
    1,177
    تمغے کے پوائنٹ:
    371

    بہت خوب یوسف بھائی زبردست اور یہ نیر تاباں کون صاحب ہیں ان کا تعارف کروائیں پلیز
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں