1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

بارہ مہینوں کے نام کیسے پڑے؟

'سماجی علوم' میں موضوعات آغاز کردہ از ابو عمر, ‏جنوری 31، 2012۔

  1. ‏جنوری 31، 2012 #1
    ابو عمر

    ابو عمر مبتدی
    شمولیت:
    ‏دسمبر 06، 2011
    پیغامات:
    18
    موصول شکریہ جات:
    101
    تمغے کے پوائنٹ:
    0

    بارہ مہینوں کے نام کیسے پڑے؟


    رانا محمد شاہد


    تاریخ کے جھروکوں میں جھانکنے کاموقع دینے والی دلچسپ داستان

    سال کے ۳۶۵ دن ۱۲؍مہینے رکھتے ہیں۔ ان میں کوئی ۳۰، کوئی ۳۱ اور کوئی ۲۸یا ۲۹ دن کا ہوتا ہے۔ ان مہینوں کے نام کس طرح رکھے گئے، یہ داستان دلچسپ پس منظر رکھتی ہے۔





    جنوری

    عیسوی سال کے پہلے مہینے کا نام، رومیوں کے ایک دیوتا جانس (Janus) کے نام پر رکھا گیا۔ جانس دیوتا کے متعلق کہا جاتا ہے کہ اس کی پوجا صرف جنگ کے دنوں میں کی جاتی تھی، امن میں نہیں۔ دیوتا کے دو سر تھے، جن سے وہ بیک وقت آگے پیچھے دیکھ سکتا تھا۔ اس مہینے کا نام جانس یوں رکھا گیاکہ جس طرح دیوتا اپنے دو سروں کی وجہ سے آگے پیچھے دیکھ سکتا ہے، اسی طرح انسان بھی جنوری میں اپنے ماضی و حال کا جائزہ لیتا ہے۔ یہ بھی کہا جاتا ہے کہ جنوری کا لفظ لاطینی زبان کے لفظ جنوا (Janua) سے اخذ کیاگیا جس کا مطلب ہے ’’دروازہ‘‘۔ یوں جنوری کا مطلب ہوا ’’سال کا دروازہ‘‘۔ماہ جنوری ۳۱؍دِنوں پر مشتمل ہے۔

    فروری

    ایک زمانے میں فروری سال کا آخری اور دسمبر دوسرا مہینا سمجھا جاتا تھا۔ حضرت عیسیٰ ؑ کے دور میں فروری سال کا دوسرا مہینا قرار پایا۔ یہ مہینا اس لحاظ سے بھی منفرد ہے کہ سب سے کم یعنی ۲۸؍دن رکھتا ہے جبکہ لیپ (Leap) کے سال میں فروری کے ۲۹؍ دن ہوتے ہیں۔ چنانچہ لیپ کا سال ۳۶ ۶؍دنوں پر مشتمل ہوتا ہے ۔ ہر چوتھا سال لیپ کا سال ہوتا ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ سورج کرۂ ارض کے گرد اپنے مدار کا سفر ۴/۱ ۳۶۵ دنوں میں طے کرتا ہے۔ لیکن ۳ ؍ سال کے دوران اس کا ہر سال ۳۶۵ ؍دنوں کا ہی شمار ہوتا ہے جبکہ چوتھے سال میں ۴/۱ حصے جمع کریں تو یہ ایک دن کے برابر بن جاتا ہے۔ یوں ایک دن زیادہ جمع کرکے یہ ۳۶ ۶ ؍دن کا یعنی لیپ کا سال کہلاتاہے۔ لفظ فروری بھی لاطینی زبان فیبرام (Febru m) سے اخذ کیا گیا جس کا مطلب ہے ’’پاکیزگی کا ذریعہ‘‘۔

    مارچ

    اس مہینے کا نام رومی دیوتا مارس (Mars) کے نام پر رکھا گیا۔ مارس کو اُردُو میں مریخ کہتے ہیں۔ کہتے ہیں کہ یہ دیوتا بڑا خطرناک تھا۔ رومی دیومالا کے مطابق اس کے رتھ میں انتہائی منہ زور گھوڑے جتے ہوئے ، رتھ میں دیوتا نیزہ تھامے کھڑا ہوتا۔ نیزے کی انی کا رُخ آسمان کی طرف تھا۔ دوسرے ہاتھ میں ڈھال ہوتی۔ دیوتا کا چہرہ آسمان کی طرف اٹھا ہوتا۔ اہلِ روم اسے سب سے طاقتور دیوتا سمجھتے تھے۔ ان کے عقیدے کے مطابق بارش، بجلی، بادل اور گرج چمک سب مارس دیوتا کے ہاتھ میں تھا۔ یہ مہینا بھی ۳۱؍دنوں پر مشتمل ہے۔ لفظ مارچ لاطینی زبان کے لفظ مارٹئیس (Martius) سے اخذ کیاگیا۔ اسی لفظ سے سیارہ مریخ کا نام (Mars) بھی بنایا گیا ۔مارچ کے مہینے میں عموماً موسمِ بہار کا آغاز ہوتا ہے۔

    اپریل

    یہ مہی نا ۳۰؍دِنوں پر مشتمل ہے۔ اپریل لاطینی لفظ، اپریلس (Aprilis) سے بنا ہے۔ اس کا مطلب ہے کھولنے والا، آغاز کرنے والا۔ اس مہینے میں چونکہ نئے پودوں اور درختوں کی نشوونما کا آغاز ہوتا ہے، چنانچہ اسے کسی دیوی یا دیوتا نہیں بلکہ بہار کے فرشتے سے منسوب کیا گیا۔

    مئی

    یہ سال کا پ انچوا ں مہی نا ہے دن رکھتاہے۔ اس مہینے میں بھی بہار کے کچھ اثرات باقی ہوتے ہیں۔ لفظ مئی انگریزی زبان میں فرانسیسی لفظ مائی (MAI) سے اخذ کیا گیا ہے۔ یہ لاطینی زبان کے لفظ مائیس (Maius) سے اخذ شدہ ہے۔ یہ بھی کہا جاتا ہے کہ اس مہینے کا نام ایک رومی دیوی میا (Maia) کے نام پررکھا گیا۔ رومیوں کے نزدیک اس وسیع و عریض زمین کو دیوتا نے اپنے کندھوں پر اٹھا رکھا تھا۔ اس دیوتا کی سات بیٹیاں تھیں جن میں میادیوی کو سب سے زیادہ شہرت حاصل ہوئی۔

    جون

    سال کا چھٹا مہین ا اور اس م یں ۳۰ ؍ دن ہوتے ہیں۔ لفظ جون بھی انگریزی زبان میں فرانسیسی زبان کے ایک لفظ، جونئیس (Junius) سے اخذ کیا گیا ہے۔ اس مہینے کا نام بھی ایک دیوی جونو (Juno) کے نام پررکھا گیا۔ البتہ بعض لوگوں کے نزدیک یہ نام روم کے مشہور شخص جونی لیس کے نام پر رکھا گیا۔جونو دیوتائوں کے سردار جیوپیٹر کی بیٹی تھی جبکہ جونی لیس ایک بے رحم اور سفاک انسان تھا۔

    جولائی

    اس مہینے میں ۳۱؍دن ہوتے ہیں۔ جون کی طرح یہ بھی ایک گرم مہینا ہے۔ بلکہ بعض اوقات حبس اور شدید گرمی اسے جون سے بھی گرم بنا دیتی ہے۔ اس مہینے کا نام دیوی دیوتا نہیں بلکہ روم کے ایک مشہور حکمران جولیس سیزر کے نام پر رکھا گیا ۔ ایک زمانے میں یہ پانچواں مہینا تھا۔ جولیئس سیزر قدیم روم کا مشہور شہنشاہ تھا۔ مشہور شاعر و ڈرامہ نگار ولیم شیکسپیئر نے ’’جولیئس سیزر‘‘ پر ایک ڈراما بھی لکھا ۔

    اگست

    سال کا آٹ ھو ینا ۔ اس م ؍دن ہوتے ہیں۔ پہلے یہ چھٹا مہینا تھا کیونکہ تب سال کا آغاز مارچ سے کیا جاتا تھا اور کل دس مہینے ہوتے یعنی مارچ تا دسمبر۔ وہ اس طرح کہ قمری سال اور شمسی سال کے مہینوں میں فرق ہوتا تھا۔ قمری سال کے تو بارہ مہینے ہوتے تھے جبکہ شمسی سال کے ۱۰ ؍ ماہ بنتے تھے۔ اس کمی کو پورا کرنے کے لیے دو مہینوں کا اضافہ کیا گیا… جنوری اور فروری۔ یوں شمسی سال میں بھی ۱۲؍ مہینے ہوگئے۔

    شمسی سال میں اضا فے کے بعد اگست کا نام ایک قدیم رومی شہنشاہ آگسٹس (Augustus) کے نام پر رکھا گیا ۔ (اس مہینے میں پہ لے ۲۹ ؍دن تھے، بعد میں جولیئس سیزر نے ۲؍ دن کا اضافہ کرکے ۳۱؍دنوں کا مہینا کردیا)۔ پہلے رومی شہنشاہ آگسٹس کا نام کچھ اور تھا ۔ جب اس نے لوگوں کی فلاح و بہبود کے لیے بہت زیادہ کام کیے تو رومی لوگ اس کے اتنے گرویدہ ہوگئے کہ اسے آگسٹس کے نام سے پکارا جانے لگا۔ اس نام کا مطلب ہے، دانا، دانشمند۔ چنانچہ اس مہینے کو آگسٹس کے نام پر اگست کہا گیا۔

    ستمبر

    ۳۰؍ دن رکھتا ہے۔ لاطینی زبان کے لفظ سیپٹ (Se pt) سے بنا جس کا مطلب ہے ’’ساتواں۔‘‘ اس لیے ستمبر کا مطلب ہے ’’ساتواں مہینا‘‘۔ مگر پھر کیلنڈر کی نئی ترتیب سامنے آئی تو یہ نویں درجے پر چلا گیا۔

    اکتوبر

    لاطینی میں آٹھ کو اوکٹو (Octo) کہا جاتا ہے۔ اسی سے سال کے آٹھویں مہینے کا نام اکتوبر رکھا گیا۔ اکتوبر کا مطلب ہے ’’آٹھواں مہینا‘‘۔ اس میں ۳۱ دن ہوتے ہیں۔ اب یہ دسواں مہینا ہے۔

    نومبر

    اس می ں ۳۰؍دن ہوتے ہیں۔ لاطینی زبان میں ۹؍ کو نووم (Novum) کہتے ہیں۔ اسی نام سے مہینے کانام نکلا۔ نومبر کا مطلب ہے ’’نواں مہینا‘‘۔ ستمبر کو ساتواں، اکتوبر کو آٹھواں اور نومبر کو نواں مہینا اس وقت کہا گیا جب جنوری اور فروری کے مہینے سال میں شامل نہیں تھے۔ بعد میں ان مہینوں کے نام تو وہی رہے البتہ ستمبر نواں، اکتوبر دسواں اور نومبر گیارھواں مہینا بن گئے۔

    دسمبر

    یہ مہینہ ۳۱؍دن رکھتا ہے۔ لاطینی زبان کی گنتی میں دس کا مطلب ہے دسم (De cem)۔اس لفظ کی مناسبت سے دسویں مہینے کو دسمبر کہا گیا۔ اب یہ سال کا بارھواں مہینا ہے۔ ​
     
  2. ‏فروری 12، 2012 #2
    مفتی عبداللہ

    مفتی عبداللہ مشہور رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏جولائی 21، 2011
    پیغامات:
    520
    موصول شکریہ جات:
    2,176
    تمغے کے پوائنٹ:
    171

    اس لیے تو تو سب مسلمانوں کو چاھیے کہ اسلامی مھینوں کا رواج ڈالدے اسلامی مھینوں کا نام یاد کریں اور عام استعمال میں اس کو لایے
     
  3. ‏فروری 12، 2012 #3
    مفتی عبداللہ

    مفتی عبداللہ مشہور رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏جولائی 21، 2011
    پیغامات:
    520
    موصول شکریہ جات:
    2,176
    تمغے کے پوائنٹ:
    171

    ان مھینوں کا استعمال کریں جو اللہ تعالی نے قرآن مجید میں بیان کیا ھے ان عدۃ الشھور عنداللہ اثنا عشر شھرا فی کتاب اللہ یوم خلق السموات والارض
     
  4. ‏مارچ 15، 2012 #4
    علم کی دُنیا

    علم کی دُنیا مبتدی
    شمولیت:
    ‏مارچ 07، 2012
    پیغامات:
    20
    موصول شکریہ جات:
    75
    تمغے کے پوائنٹ:
    0

    Humein islami months k sath hi chalna chaye
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں