1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

بدعت كی تعريف،اسباب،مظاہر اور نقصانات

'بدعی عقائد' میں موضوعات آغاز کردہ از قاری مصطفی راسخ, ‏اپریل 25، 2012۔

  1. ‏اپریل 25، 2012 #1
    قاری مصطفی راسخ

    قاری مصطفی راسخ علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    lahore
    شمولیت:
    ‏مارچ 07، 2012
    پیغامات:
    664
    موصول شکریہ جات:
    725
    تمغے کے پوائنٹ:
    301

    بدعت كی تعريف،اسباب،مظاہر اور نقصانات

    تعریف :
    لغوی طور پر بدعت کا معنیٰ ہے!کسی چیز کا ایسے طریقے سے ایجاد کرنا جس کی پہلے کوئی مثال نہ ہو۔جبکہ اصطلاحاً بدعت کہتے ہیں!شریعت میں کوئی نئی چیز گھڑ لینا جس کی قرآن و سنت میں کوئی دلیل نہ ہو۔
    یاد رکھیں!دنیوی معاملات میں نئی نئی ایجادات جائز ہیں کیونکہ معاملات میں اصل اباحت ہے۔جیسے بس‘ ریل گاڑی اور جہاز کا سفر‘کمپیوٹر کا استعمال‘ گھڑی پہننا وغیرہ وغیرہ۔جبکہ دین میں نئی ایجاد ات حرام ہیں‘کیونکہ دینی عبادات میں اصل توقیف ہے۔نبی ﷺ کا ارشاد گرامی ہے
    (من احدث فی امرنا ھذا ما لیس منہ فھو ردّ)
    ’’جس کسی نے ہمارے دین میں نئی چیز کی ایجاد کی جو دین سے نہیں ہے‘ تو وہ مردود ہے۔[متفق علیہ]
    بدعات کے اسباب
    ۱۔دینی احکام سے لا علمی
    ۲۔اپنی خواہشات کی پیروی
    ۳۔مخصوص لوگوں کی رائے کیلئے تعصب برتنا
    ۴۔کفار سے مشابہت اختیار کرنا
    اللہ تعالیٰ نے دین اسلام کامل واکمل نازل کیا ہے۔جیسا کہ اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں:
    ((اَلْیَوْمَ أَکْمَلْتُ لَکُمْ دِیْنَکُمْ وَأَتْمَمْتُ عَلَیْکُمْ نِعْمَتِیْ وَرَضِیْتُ لَکُمُ الْاِسْلٰمَ دِیْناً)) [المائدۃ:۳]
    ’’آج میں نے تمہارے لئے دین کو کامل کر دیااور تم پر اپنا انعام بھرپور کر دیا اور تمہارے لئے اسلام کے دین ہونے پر رضا مند ہو گیا ۔‘‘
    دوسری جگہ فرمایا:
    ((أَمْ لَھُمْ شُرَکَآئُ شَرَعُوْا لَھُمْ مِنَ الدِّیْنِ مَا لَمْ یَأْذَنْ بِہٖ اللّٰہُ وَلَوْ لَا کَلِمَۃُ الْفَصْلِ لَقُضِیَ بَیْنَھُمْ وَاِنَّ الظّٰلِمِیْنَ لَھُمْ عَذَابٌ أَلِیْمٌ))[الشوری:۲۱]
    ’’کیا ان لوگوں نے ایسے (اللہ کے)شریک (مقرر کر رکھے)ہیں جنہوں نے ایسے (احکام )دین مقرر کر دئیے ہیں جو اللہ کے فرمائے ہوئے نہیں ہیں۔اگر فیصلے کے دن کا وعدہ نہ ہوتا تو (ابھی ہی)ان میں فیصلہ کر دیا جاتا ۔یقینا ان ظالموں کے لئے ہی درد ناک عذاب ہے۔‘‘
    اور نبی ﷺ نے فرمایا۔خبردار!تم دین میں نئی ایجادات سے باز آجاؤ،بیشک ہر نئی چیز بدعت ہے اور ہر بدعت گمراہی ہے اور ہر گمراہی جہنم میں لے جانے والی ہے۔[ابوداؤد،ترمذی]
    نبی ﷺ ان کلمات کو اپنے ہر خطبہ کے اندر پڑھا کرتے تھے۔جب دین کامل واکمل ہے اور اس میں کسی قسم کا نقص نہیں تو نئی چیز لانے کی گنجایش ہی باقی نہیں رہتی۔
    اگرچہ بعض لوگوں نے بدعت کی دو قسمیں کر ڈالی ہیں ،،بدعت حسنہ اور بدعت سیئہ،،تو یہ ان کی غلط فہمی ہے کیونکہ بدعت بدعت ہی ہے ،شریعت میں بدعت حسنہ کا کوئی تصورنہیں۔باقی رہی ان کی دلیل حضرت عمر ؓکی حدیث!جس میں انہوں نے تراویح کی نماز با جماعت ادا کرانے کے بعد کہا تھا’’نعمت البدعۃ ھٰذہ‘‘تو درحقیقت حضرت عمر ؓ کا یہ عمل کوئی نیا نہیں تھابلکہ پہلے سے شریعت میں اس کی دلیل موجود تھی۔کہ نبی ﷺنے تین دن تراویح کی جماعت کروائی۔بعد میں اس خدشہ کے پیش نظر چھوڑ دیا کہ کہیں فرض ہی نہ ہو جائے۔لہذا عمر فاروق ؓ کا یہ عمل بدعت شرعی نہ ہوا بلکہ بدعت لغوی ہوا۔پس جس چیز کی اصل شریعت میں موجود ہے جس کی جانب رجوع کیا جا سکتا ہے،تو جب اسے بدعت کہا جاتا ہے تو اس سے مراد بدعت لغوی ہوتی ہے نہ کہ شرعی !شرعی بدعت وہ ہے جس کی اصل شریعت میں موجود نہ ہو،جس کی طرف رجوع کیا جا سکے اور یہی حرام ہے۔چنانچہ قرآن مجید کو ایک کتاب میں جمع کرنا بدعت لغوی ہے کیونکہ نبی ﷺ کے زمانہ میں قرآن کو مختلف جگہوں پر لکھا جاتا تھا۔لہذا جس طرح قرآن کی کتابت کی اصل شریعت میں موجود تھی اسی طرح باجماعت نماز تراویح کی اصل بھی شریعت میں موجود تھی۔
    بدعتی آدمی کی بخشش نہ ہو گی ۔جیسا کہ اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں:
    ((عَامِلَۃٌ نَّاصِبَۃٌ٭تَصْلیٰ نَاراً حَامِیَۃً))[الغاشیۃ:۳،۴]
    ’’دنیا میں عمل کرکرکے تھکے ہوئے دہکتی ہوئی آگ میں داخل ہوں گے۔‘‘کیونکہ ان کے اعمال سنت کے مطابق نہ ہوں گے بلکہ بد عت وخرافات پر مبنی ہوں گے۔
    حضرت انس بن مالک سے مروی ہے کہ تین آدمی ازواج مطہرات کے پاس گئے اور رسول اللہ ﷺ کی عبادت کے بارے میں پوچھا۔جب ان کو بتایا گیا تو گویا انہوں نے اس کو کم سمجھا۔ان میں سے ایک نے کہا کہ میں ہمیشہ رات کو عبادت کروں گا ‘دوسرے نے کہا کہ میں ہمیشہ دن کو روزہ رکھوں گا‘تیسرے نے کہا کہ میں کبھی شادی نہیں کروں گا۔جب بنی ﷺ کو اس بات کا علم ہوا تو آپ نے سختی سے منع کر دیا اور فرمایا
    (فمن رغب عن سنتی فلیس منی)[بخاری ‘مسلم]
    ’’خبردار! جس نے میری سنت سے انکار کیا وہ ہم میں سے نہیں ہے ۔‘‘
    حالانکہ انہوں نے نیکی کا ہی اظہار کیا تھا لیکن وہ نیکی سنت کے مطابق نہ ہونے کی وجہ سے نبی ﷺ نے منع کر دیا۔
    حضرت عبد اللہ بن مسعودسے مروی ہے کہ ایک دفعہ نبی ﷺ نے ایک لکیر کھینچی پھر اس کے ارد گردکئی لکیریں کھینچیں اور فرمایا!ان تمام متفرق راستوں پر شیطان بیٹھا ہوا ہے جو اپنی طرف دعوت دیتا ہے۔جبکہ میرا راستہ سیدھا راستہ ہے اس کے بعد یہ آیٔت تلاوت فرمائی
    (( وان ھذا صراطی مستقیماً فاتّبعوہ ولا تتبعوا السبل فتفرق بکم عن سبیلہ ذٰلکم وصٰکم بہ لعلّکم تتقون))[الانعام:۱۵۳]
    ’’اور یہ دین میرا راستہ ہے جو کہ سیدھا ہے ۔سو اس راہ پر چلو دوسری راہوں پر مت چلوکہ وہ راہیں تم کو اللہ سے دورکر دیں گی۔اس کا تم کو اللہ نے تاکیدی حکم دیا ہے تا کہ تم پرہیز گار بن جاؤ۔‘‘
    یاد رکھیں !اگر کوئی بھی عمل سنت نبوی ؐ کے موافق ہے تو چھوٹے سے چھوٹا عمل بھی مقبول ہے۔اور اگر بدعت ہے تو بڑے سے بڑے عمل کی بھی کوئی حیثیت نہیں۔
    عصر حاضر کی بدعتوں کے چند مظاہر
    اس پر فتن دور میں ساری دنیا بدعات وخرافات کے جال میں پھنسی ہوئی ہے۔جو زمانے اور علاقے کے اعتبار سے مختلف ہیں۔جن کا شمار ممکن نہیں۔ان میں سے چند منتشربدعات ذیل میں درج کی جاتی ہیں۔
    ۱۔ اذان سے پہلے یا بعد میں مخصوص صلوٰۃ (درود)پڑھنا۔
    ۲۔عید میلادالنبیؐ کا انعقاد کرنا۔اور استقبال کے لئے کھڑا ہو جانا۔
    ۳۔اونچی آواز سے مخصوص الفاظ کے ساتھ نماز کی نیت کرنا۔یاروزہ رکھنے کے لئے ’’نویت الصوم من شھر رمضان‘‘جیسے الفاظ ادا کرنا ۔
    ۴۔قل ‘ ساتہ ‘ تیجہ ‘دسواں‘ اکیسواں ‘چالیسواں ‘گیارہویں جیسی رسمیں کرنا۔
    ۵۔وضوء کرتے وقت گردن کا مسح کرنا۔
    ۶۔نماز فجر سے پہلے اٹھ کر سپیکروں میں اللہ ہو کی گردانیں پڑھنا۔
    ۷۔ہر جمعرات کو غلو پر مبنی شرکیہ نعتیں پڑھنا۔
    ۸۔مختلف مقامات‘مزارات‘نشانات‘آستانہ جات اور زندہ یا مردہ آدمیوں سے تبرک حاصل کرنا۔
    ۹۔اجرت پر قرآن خوانی کروانا اس نیت سے کہ یہ میت کیلئے نفع بخش ہے۔
    ۱۰۔شب معراج(۲۷رجب)یا شب برائت (۱۵شعبان)کی مناسبت سے محفلیں منعقد کرنا۔
    ۱۱۔ماہ رجب میں رجبی عمرہ کرنا ‘رجبی کونڈے بنانا یاخاص عبادتیں کرنا جن کی کوئی فضیلت نبی ﷺ سے ثابت نہیں
    ۱۲۔عشرہ محرم میں امام حسین کی نذرو نیاز دینا‘ماتم کرنا یا سبیلیں لگانا۔
    ۱۳۔نبی ﷺ کا نام سن کر ’’ﷺ ‘‘ کہنے کی بجائے انگوٹھے چوم کر آنکھوں کو لگانا۔
    ۱۴۔محرم کے مہینے میں نکاح وشادی سے پر ہیز کرنااور اس کو منحوس جاننا۔
    ۱۵۔من گھڑت اور موضوع درود کا مخصوص انداز سے ورد کرنا۔
    ۱۶۔نماز کے بعد اجتماعی دعا مانگنا یا مخصوص انداز سے ’’لا الہ الا اللہ‘‘ کا ورد کرنا۔
    ۱۷۔قبروں پر قرآن خوانی کرانا یا اذان کہنا یا مردہ دفن کرنے کے بعد چالیس قدم پر دعا مانگنا۔
    ۱۸۔بچے کی ولادت پر دروازے پر درختوں کے پتے باندھناوغیرہ وغیرہ۔
    بدعت كےنقصانات
    دین میں نئی نئی چیزیں گھڑ لینے سے درج ذیل مفاسد سامنے آتے ہیں۔
    ۱۔بدعت انسان کے تمام اعمال کو ضائع کر دیتی ہے اگرچہ زیادہ ہی کیوں نہ ہوں ۔
    ۲۔بدعت دین کے ناقص ہونے پر دلالت کرتی ہے جبکہ دین کامل واکمل ہے۔
    ۳۔بدعتی آدمی شیطان کا مدد گار اور رحمان کا دشمن ہے۔کیونکہ بدعت پر عمل کرناشیطان کی اطاعت اور رحمان کی بغاوت ہے۔
    ۴۔ بدعت اللہ تعالیٰ کو بہت سے گناہوں سے زیادہ مبغوض ہے۔
    ۵۔بدعتی آدمی سے توبہ کی امید نہیں کی جا سکتی بخلاف دوسرے گناہ گاروں کے ۔کیونکہ بدعتی اپنی بدعت کو نیکی سمجھ کر کررہا ہوتا ہے۔
    ۶۔تمام قسم کی بدعات گمراہی ہیں اور کوئی بدعت ‘بدعت حسنہ نہیں ۔اور ہر گمراہی جہنم میں لے جانے والی ہے۔
    ۷۔عقیدہ میں بدعات سب سے بدتر ہیں کیونکہ یہ شرک تک انسان کو پہنچا دیتی ہیں۔
    ۸۔ بدعت کا گناہ ہمیشہ قائم رہتا ہے جب تک اس بدعت کا دنیا سے خاتمہ نہ کر دیا جائے۔
    ۹۔بدعتی آدمی میں شیطان جلدی داخل ہو جاتا ہے۔کیونکہ بدعتی توہم پرست ہوتا ہے۔
    ۱۰۔بدعت حق وباطل کو خلط ملط کر دیتی ہے اور ان کے درمیان تمیز کا خاتمہ کر دیتی ہے۔
    ۱۱۔بدعتی آدمی گویا کہ اپنے آ پ کو شارع کے مد مقابل لے آتا ہے اور اپنے پاس سے دین بناتا ہے۔
    ۱۲۔بدعتی گویا کہ(نعوذ باللہ) رسول اللہ ﷺ پر خیانت کا الزام لگاتا ہے کہ انہوں نے مکمل دین نہیں پہنچایا اسی لئے تو اپنے پاس سے نئی چیزیں گھڑتا ہے۔ ۱۳ ۔بدعتی آدمی نبی ﷺ کی اتباع چھوڑ کر اپنے نفس اور خواہشات کی پیروی کرتا ہے۔
    ۱۴۔بدعتی آدمی کے دل سے ایمان کی مٹھاس اٹھا لی جاتی ہے۔
    ۱۵۔ قیامت والے دن بدعتی آدمی کونبی ﷺ سے حوض کوثر کا پانی نصیب نہ ہو گا کیونکہ فرشتے بدعتیوں اور نبی ﷺ کے درمیان دیوار کھڑی کر دیں گے۔
    الله ہم سب كو بدعات سے بچائے اور سنتوں سے محبت كرنے كی توفيق عطا فرمائے۔آمین
     
    • شکریہ شکریہ x 8
    • پسند پسند x 3
    • علمی علمی x 2
    • متفق متفق x 1
    • لسٹ
  2. ‏اپریل 25، 2012 #2
    محمد ارسلان

    محمد ارسلان خاص رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 09، 2011
    پیغامات:
    17,865
    موصول شکریہ جات:
    40,798
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,155

    جزاک اللہ خیرا
     
  3. ‏جولائی 02، 2012 #3
    طارق راحیل

    طارق راحیل مشہور رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏جولائی 01، 2011
    پیغامات:
    380
    موصول شکریہ جات:
    692
    تمغے کے پوائنٹ:
    125

    جزاک اللہ خیرا ....................
     
  4. ‏دسمبر 20، 2013 #4
    عبدالرحیم رحمانی

    عبدالرحیم رحمانی سینئر رکن
    جگہ:
    کرلا، ممبئی
    شمولیت:
    ‏جنوری 22، 2012
    پیغامات:
    1,073
    موصول شکریہ جات:
    1,045
    تمغے کے پوائنٹ:
    234

    جزاک اللہ خیر
     
  5. ‏جنوری 05، 2014 #5
    Muhammad NajeebUllah

    Muhammad NajeebUllah مبتدی
    جگہ:
    گرین ٹاؤن لاہور
    شمولیت:
    ‏دسمبر 29، 2013
    پیغامات:
    11
    موصول شکریہ جات:
    12
    تمغے کے پوائنٹ:
    9

    السلام علیکم!
    قاری صاحب اللہ آپ کو جزائے خیر عطا کرے.
    میرے پاس ایک پمفلٹ آیا ہے اور مجھے ترتیب وار ان کے جوابات دینے ہیں برائے مہربانی رہنمائی فرمائیں
    میلاد شریفکا ثبوت احادیث نبوی صلی اللہ علیہ وسلم سے
    محمد علی حسن لکھتا ہے
    میلاد شریف کا ثبوت دینے سے پہلے، میرا ان لوگوں سے سوال ہے کہ کیا صحابہ کرام نے کعبہ شریف کو سالانہ غسل دیا؟ کیا مسجد پر مینار بنائے، کیا مساجد میں امام کے لیے مہراب بنائے؟ کیا غلاف کعبہ چڑھانے کی سالانہ تقریب منعقد ہوئی
    یہ سب کچھ صحابہ کے زمانے میں نہیں ہوتا تھا، مگر اب ہوتا ہے، مگر جائز ہے کیوں کہ شریعت کے خلاف نہیں ہے. تو یہ ثابت ہوا کہ اسلام میں ہر وہ عمل دو شریعت کے دائرے میں ہو، خواہ وہ صحابہ کرام کی حیات مبارکہ سے ثابت ہو یا نہ ہو جائز ہے
    پھر آگے لکھتا ہے
    کچھ لوگ کہتے ہیں کیونکہ آج کل کے دور میں ہمارے معاشرے میں میلاد شریف کے نام پر لوگ کئی غلط حرکات اور غیر شرعی کام کرتے ہیں اس لیے میلاد شریف کو مت منائیں. ان لوگوں سے پوچھیں آج کل کے دور میں ہمارے معاشرے میں بہت سے لوگوں نے نکاح اور شادی کے نام پر بے شمار غلط رسمیں اور غیر شرعی کاموں کو شامل کر لیا ہے تو کیا ہم نکاح کرنا چھوڑ دیں. ہم کو نکاح کرنا نہیں چھوڑنا چاہیے بلکہ نکاح کے نام پر شامل غیر شرعی حرکات کو چھوڑنا چاہیے. اسی طرح میلاد شریف کو منانا نہیں چھوڑنا چاہیے بلکہ میلاد شریف کے نام پر ہونے والے غیر شرعی کاموں کو چھوڑنا چاہیے.
    جلدی سے ان باتوں کا جواب ارسال کر دیں پھر اور سوالات ہیں
     
  6. ‏اپریل 20، 2014 #6
    عبیداللہ

    عبیداللہ رکن
    جگہ:
    حیدرآباد
    شمولیت:
    ‏جولائی 08، 2012
    پیغامات:
    117
    موصول شکریہ جات:
    236
    تمغے کے پوائنٹ:
    80

    جزاکم اللہ خیرا
     
  7. ‏جون 14، 2014 #7
    محمد نعیم یونس

    محمد نعیم یونس خاص رکن
    شمولیت:
    ‏اپریل 27، 2013
    پیغامات:
    26,340
    موصول شکریہ جات:
    6,589
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,157



    جزاک اللہ خیرا یا شیخ!
    آمین!
     
    • شکریہ شکریہ x 1
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
  8. ‏جون 15، 2014 #8
    علی بہرام

    علی بہرام مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏ستمبر 18، 2013
    پیغامات:
    1,216
    موصول شکریہ جات:
    161
    تمغے کے پوائنٹ:
    105

    عیدین کی نماز میں خطبہ نماز سے پہلے دینا بدعت ہے کے نہیں ؟
     
  9. ‏جون 15، 2014 #9
    علی بہرام

    علی بہرام مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏ستمبر 18، 2013
    پیغامات:
    1,216
    موصول شکریہ جات:
    161
    تمغے کے پوائنٹ:
    105

    !شرعی بدعت وہ ہے جس کی اصل شریعت میں موجود نہ ہو
    یہ بدعت ہے
    ۱۔ اذان سے پہلے یا بعد میں مخصوص صلوٰۃ (درود)پڑھنا۔
    دورد سلام کی شریعت میں اصل موجود ہے شاید آپ کو نظر نہیں آئی ہوگی
    بے شک اللہ اور اس کے ملائکہ صلوٰۃ بھیجتے ہیں اس غیب بتانے والے نبی پر اے ایمان والو تم بھی ان پر خوب صلوٰۃ و سلام بھیجو ۔ سورہ احزاب
    ہوسکتا ہے آپ نے اس سے صرف نظر اس لئے فرمایا ہو کہ درود سلام بھیجنے کا حکم اللہ تعالیٰ نے صرف ایمان والوں کو دیا اس لئے آپ یہ سمجھے ہوں کہ یہ حکم تو صرف ایمان والوں کے لئے ہمارے لئے نہیں
     
  10. ‏جون 16، 2014 #10
    محمد نعیم یونس

    محمد نعیم یونس خاص رکن
    شمولیت:
    ‏اپریل 27، 2013
    پیغامات:
    26,340
    موصول شکریہ جات:
    6,589
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,157


    السلام علیکم ورحمۃ اللہ
    شیخ صاحب!
    یہ تو بدعت کے ساتھ ساتھ شرک بھی ہے۔
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں