1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

بچوں کی نفسیاتی الجھنیں

'بچوں کی تربیت' میں موضوعات آغاز کردہ از مشکٰوۃ, ‏مئی 24، 2014۔

  1. ‏مئی 24، 2014 #1
    مشکٰوۃ

    مشکٰوۃ سینئر رکن
    جگہ:
    اللہ کی رحمتوں کے زیر سائے ان شاء اللہ
    شمولیت:
    ‏ستمبر 23، 2013
    پیغامات:
    1,466
    موصول شکریہ جات:
    926
    تمغے کے پوائنٹ:
    237

    بسم اللہ الرحمٰن ا لرحیم
    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
    دنیا کے مشکل ترین کاموں میں اولا د کی تربیت سب سے زیادہ مشکل اور صبر آزما کام ہے ،لیکن جو اس آزمائش سے سنبھل کر گزر گیاوہ کامیاب ہے ۔۔۔۔اولاد کی تربیت والدین کا فرض ہے لیکن ماں کو خاص طور پر اس کا مکلف ٹھرایا جاتا ہے ۔اس کی ایک وجہ ماں کا بچوں کے ساتھ لگاؤ اور زیادہ وقت گزارنا ہے ۔اس طرح ماں بچے کی اول درس گاہ بن جاتی ہے ۔
    ماں کا رویہ ،سوچ،اندازِ فکر، اس کی عادات ، اخلاق وکردار بھی بچے کی نفسیات پر بہت اثر انداز ہوتے ہیں ۔۔بچہ جس انداز سے ماں کو گفتگو کرتا دیکھتا ہے وہی لب و لہجہ اپنانے کی کوشش کرتا ہے۔اگر والدہ اچھے انداز ورویے کو اپنائے گی تو بچہ بھی شائستگی سیکھےگا وگرنہ دوسری صورت میں وہ نہ صرف دوسروں بلکہ ماں کے لئے بھی پریشانی کا باعث بنے گا۔
    افسوس ناک صورت حال تو یہ ہے آج کے دور میں والدین کے پاس اولاد کے لئے وقت نہیں اور جن کے پاس وقت ہے وہ بھی بسا اوقات بچوں سے ایسا رویہ برتتے ہیں جس سے بچے اپنے آپ کو والدین پر بوجھ سمجھنے لگتے ہیں ۔۔
    اس تھریڈ میں بات کرتے ہیں کچھ ایسے ہی رویوں کی جنہیں ہم روز مرہ دیکھتے تو ہیں لیکن اہمیت نہیں دیتے لیکن وہ رویے رفتہ، رفتہ بچے کی شخصیت کو مسخ کر رہے ہوتے ہیں ۔
    آپ کے پا س بھی کچھ تجربات و واقعات ہیں تو ضرور شئیر کیجئے تاکہ دوسرے بھی اس سے استفادہ حاصل کریں ۔​
    آپ کی ذرا سی بات سے کسی کو بھی راہ نمائی مل سکتی ہے ۔​
    ان شاء اللہ​
    بچوں کے روئیے نظر انداز نہ کریں
    ۱:۔بچوں کے رویئے سمجھنے کی کوشش کریں ۔۔ہر بچے کا الگ انداز ہے ۔
    کوئی بول کر توجہ پانے کا احساس دلاتا ہے کوئی خاموشی کی صورت میں ،کوئی چیختا ،چلاتا ہے تو کوئی غلط کاموں کی طرف متوجہ ہوتاہے لیکن سب کامقصد یہی ہوتاہے کہ والدین ہماری طرف دیکھیں اور ہمیں تو جہ دیں ۔۔۔
    ایک وقت تھا کہ جب ماں بچوں کے بتائے بغیر ان کی درد ،بھوک ،پیاس محسوس کر لیتی تھی تو اب کیوں نہیں جب وہ زباں سے بول کر اور اپنے رویے سے اظہار بھی کر رہے ہوتے ہیں۔۔۔
    ہر بچے کو ایک ہی ڈنڈے سے ہانکنے کی کوشش نہ کریں،اپنے بچے کی نفسیات سمجھیں۔
    ماں بہترین ماہرِ نفسیات ہے
     
    • پسند پسند x 7
    • زبردست زبردست x 3
    • لسٹ
  2. ‏مئی 25، 2014 #2
    مشکٰوۃ

    مشکٰوۃ سینئر رکن
    جگہ:
    اللہ کی رحمتوں کے زیر سائے ان شاء اللہ
    شمولیت:
    ‏ستمبر 23، 2013
    پیغامات:
    1,466
    موصول شکریہ جات:
    926
    تمغے کے پوائنٹ:
    237

    نیٹ نہیں آپ کا بچہ اہم ہے
    میڈیا کےاستعمال کے بڑھتے ہوئے رجحان نے والدین کو بچوں سے بہت دور کر دیا ہے۔۔سکائپ پر بات نہ کرنے دینے کی صورت میں بچے کو کھڑکی سے باہر پھینک دینے جیسے واقعات مغرب میں سنے تھے لیکن اب "یورپ کی مشینیں " مشرقی محبت و آداب بھلانے پر تلی ہوئی ہیں ۔ بچہ توجہ چاہ رہا ہے لیکن۔۔۔۔۔!
    "ارے !بچے کو پکڑو یہ مجھے کمپیوٹر استعمال کرنے نہیں دے رہا۔"
    ایک زور دار طمانچہ اور"میں اتنی اہم خبر پڑھ رہی ہوں اور اسے اپنی پڑی ہوئی ہے۔"
    بچے کو فیڈر دیتے ہوئے ٹی وی دیکھا جا رہا ہے اور نپل منہ کی بجائے ناک میں ٹھونسنے کی کوشش ہے ۔
    کچھ کھلاتے ہوئے میسج آ گیا اور ماں موبائل کی طرف متوجہ ہو کر دنیا و مافیہا سے بے خبر ہو گئی،بچہ شدتِ بھوک سے چیخا تو "کیا ہے؟ ایک تو دو منٹ صبر نہیں ہوتا، ایک میسج ہی پڑھنے لگی تھی۔لے کھا !۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔"
    ہم سمجھتے ہیں کہ بچے کو شیرخواری اور ابتدائی عمر میں کچھ سمجھ نہیں ہوتی لیکن اس کے سیکھنے اور رویہ سمجھنے کی عمر یہی ہوتی ہے ،چار پانچ سال میں تو وہ دیکھے، سنے رویوں کا اظہار شروع کر دیتا ہے ۔۔
    آج مائیں بچوں کو چھوڑ کر انٹرنیٹ پر گھومیں اور جب بچہ انہیں مشینوں میں گم ہو گا ،جو اس نے اس نے اپنے والدین کو کرتے دیکھا وہی کچھ کرے گا پھر پچھتاوے کے سوا کچھ نہ بچے گا۔ بڑھاپے کی عمر مشینوں کے سہارے نہیں گزرے گی۔
    ہے دل کے لئے موت مشینوں کی حکومت

    احساس مروت کو کچل دیتے ہیں آلات !! ​
     
    • زبردست زبردست x 5
    • پسند پسند x 3
    • لسٹ
  3. ‏مئی 25، 2014 #3
    انس

    انس منتظم اعلیٰ رکن انتظامیہ
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏مارچ 03، 2011
    پیغامات:
    4,177
    موصول شکریہ جات:
    15,224
    تمغے کے پوائنٹ:
    800

    بہت عمدہ! جزاکِ اللہ خیرا!

    اللہ تعالیٰ ہماری اصلاح فرمائیں!
     
  4. ‏مئی 25، 2014 #4
    مشکٰوۃ

    مشکٰوۃ سینئر رکن
    جگہ:
    اللہ کی رحمتوں کے زیر سائے ان شاء اللہ
    شمولیت:
    ‏ستمبر 23، 2013
    پیغامات:
    1,466
    موصول شکریہ جات:
    926
    تمغے کے پوائنٹ:
    237

    وایاک!
     
  5. ‏جون 02، 2014 #5
    مشکٰوۃ

    مشکٰوۃ سینئر رکن
    جگہ:
    اللہ کی رحمتوں کے زیر سائے ان شاء اللہ
    شمولیت:
    ‏ستمبر 23، 2013
    پیغامات:
    1,466
    موصول شکریہ جات:
    926
    تمغے کے پوائنٹ:
    237

    احتیاط کیجئے
    بچوں سے ایسی بات نہ کہیں ہ وہ پلٹ کر جواب دے،چاہے آپ کتنے ہی غصے میں کیوں نہ ہوں ۔۔غصے کو قابو کیجئےخاموشی سے بعد میں بچوں کو بات سمجھائی جا سکتی ہے ۔۔چیخنے ،چلانے اور غصے میں کی جانے والی گفتگو آ پ اپنے لئےبھی نقصان دہ ہے اور بچے کے لئےبھی۔۔
    ’’تم تو مر ہی جاؤ۔۔۔۔‘‘۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔’’ہاں اللہ کر کے تو مر ہی جاؤں ۔۔۔‘‘۔۔۔۔۔۔۔۔’’آپ مر جائیں میں کیوں مروں؟؟‘‘
    ’’تم تو مر ہی جاتی تو اچھا تھا۔۔۔‘‘۔۔۔’’تو اب مار دیں ۔۔۔‘‘۔۔۔۔۔۔۔’’اب پلی پلائی اولاد کو مارنے کو جی نہیں چاہتا۔‘‘
    ’’ایسی اولاد سے تو بہتر تھا ،میری اولاد ہی نہ ہوتی۔۔۔‘‘
    ’’میری اولاد نہ ہوتی تو میں بھی آج کسی قابل ہوتی ۔انہوں نے زندگی اجیرن کی ہوئی ہے۔۔‘‘
    ’’اس اولاد سے کبھی سکون نہیں پایا‘‘
    ایسی گفتگو بچے کے ذہن میں والدین کے خلاف نفرت پیدا کر دیتی ہے ۔۔۔چاہے یہ الفاظ غصے میں ہی ادا کئے جائیں ۔
    ایک بار غور کیجئے! بددعا دینے والی ماں کا بچہ واقعی میں مر جائے تو کیا اسے خوشی ہو گی کہ جان چھوٹی۔۔۔۔؟؟ نہیں ،ہر گز نہیں جو ماں ،بچے کی ذرا سی تکلیف، چوٹ برداشت نہیں کر سکتی ،وہ اتنا بڑا صدمہ کہاں برداشت کر ےگی ۔
    غصے میں دی جانے والی بددعا اور وہ الفاظ مراد نہ بھی ہو اوردعا قبول ہو جائے ۔۔۔۔قبول نہ بھی ہو آپ کا وہ مقصدبھی نہیں جو آپ کہہ رہے ہیں تو بچوں کے دل میں نفرتیں پیدا کرنے کا مقصد؟؟؟
    کامیاب لوگوں کی زندگی میں جہاں اللہ تعالٰی کی رحمت شامل ِحال ہو تی ہے وہیں والدین کی دعائیں بھی ہوتی ہیں ۔۔
    شیخ عبد الرحمٰن السدیس کے متعلق مشہور ہے انہوں نے بتایا کہ ایک دفعہ میری والدہ کو مجھ پر غصہ آیا ،انہوں نے مجھے غصے کی حالت میں کہا’’جا ! اللہ تجھے کعبے کا امام بنائے۔‘‘
    اس میں کوئی شک نہیں کہ بچے تنگ کرتے ہیں لیکن تنگ بھی اسی خاطر کرتے ہیں جب ان کی تربیت اسی انداز سے کی جائے ۔۔۔جوچڑچڑا پن بچے نے والدین میں دیکھا اسی کا اظہار ہے ،اگر ایسا نہ بھی ہو تو بچوں کو آسانی سے سمجھایا جا سکتا ہے ،جب والدین خود انہیں سمجھنے پر راضی ہوں ۔۔بچوں کو ایسے ہی تو نرم پودےسے تشبیہ نہیں دی جاتی۔۔
    خدانخواستہ آپ کی اولاد نہ ہوتی؟؟؟؟
    اولاد کی قدر ان سے پوچھیئے جو اس نعمت کے لئے ترستے ہیں ۔۔۔
    آپ کی اولاد نہ ہوتی تو کیا زندگی میں بہت سکون ہوتا۔۔۔؟؟بے اولاد افرد سے پوچھیے جو دنیا کی سب دولت لٹا کر صرف ایک بیٹی یا بیٹے کی تمنا کرتے ہیں ۔
    اللہ تعالٰی نے ایک نعمت عطا کی ہے اس کی قدر کیجئے نا کہ ناشکری
     
    • پسند پسند x 5
    • زبردست زبردست x 5
    • لسٹ
  6. ‏جون 03، 2014 #6
    نسرین فاطمہ

    نسرین فاطمہ سینئر رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    حیدرآباد سندھ
    شمولیت:
    ‏فروری 21، 2012
    پیغامات:
    1,279
    موصول شکریہ جات:
    3,218
    تمغے کے پوائنٹ:
    396

    جزاک اللہ خیرا سسٹر
     
  7. ‏جون 03، 2014 #7
    مشکٰوۃ

    مشکٰوۃ سینئر رکن
    جگہ:
    اللہ کی رحمتوں کے زیر سائے ان شاء اللہ
    شمولیت:
    ‏ستمبر 23، 2013
    پیغامات:
    1,466
    موصول شکریہ جات:
    926
    تمغے کے پوائنٹ:
    237

    وایاک
     
  8. ‏جولائی 05، 2014 #8
    priya_gul

    priya_gul مبتدی
    شمولیت:
    ‏مئی 30، 2014
    پیغامات:
    3
    موصول شکریہ جات:
    3
    تمغے کے پوائنٹ:
    10

    جزاک اللہ
     
  9. ‏جولائی 05، 2014 #9
    یوسف ثانی

    یوسف ثانی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    پاکستان
    شمولیت:
    ‏ستمبر 26، 2011
    پیغامات:
    2,760
    موصول شکریہ جات:
    5,267
    تمغے کے پوائنٹ:
    562

    جزاک اللہ خیرا
     
  10. ‏جولائی 05، 2014 #10
    خضر حیات

    خضر حیات علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    طابہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 14، 2011
    پیغامات:
    8,755
    موصول شکریہ جات:
    8,330
    تمغے کے پوائنٹ:
    964

    ماشاءاللہ ، بہت اچھا موضوع ہے ۔
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں