1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

تمام طبقات کو اطاعت رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی دعوت

'حنفی' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد ارسلان, ‏اکتوبر 15، 2011۔

  1. ‏اکتوبر 15، 2011 #1
    محمد ارسلان

    محمد ارسلان خاص رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 09، 2011
    پیغامات:
    17,865
    موصول شکریہ جات:
    40,798
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,155

    بسم اللہ الرحمن الرحیم​
    السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
    تمام طبقات کو اطاعت رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی دعوت

    میں جب کالج میں زیر تعلیم تھا تو ایک بار ایک صاحب جو کہ اسی کالج میں ٹیچر تھے اور امام ابوحنیفہ صاحب کی تقلید بھی کرتے تھے اور غالبا بریلویت سے ان کا تعلق تھا انہوں نے کلاس میں امام ابوحنیفہ صاحب کے بارے میں ایک واقعہ سنایا کہ:
    ایک بار امام صاحب نے ایک ٹانگ پر کھڑے ہو کر چالیس (دن یا رات ،یا مہینے یا سال)قرآن مجید کی تلاوت کی تو غیب سے آواز آئی کہ میں نے تجھے بخش دیا اب جو تیری پیروی کرے گا میں اس کو بھی بخش دوں گا۔(لا حول ولا قوة الا باللہ،ومن اظلم ممن افتری علی اللہ کذبا)۔
    غالبا وہ صاحب اس واقعے سے امام ابوحنیفہ کی تقلید کا جواز ثابت کر رہے تھے اور ان کے انداز تکلم سے لگتا تھا کہ وہ اسی وجہ سے امام صاحب کی تقلید کرتے ہیں۔یہ بات اپنی جگہ ٹھیک ہے کہ انسان کو جس چیز میں فائدہ نظر آتا ہے وہ اسی کی طرف جاتا ہے لیکن کیا آپ نے سوچا یہ واقعہ جس کے سچ ہونے کے چانس نہ ہونے کے برابر اور جھوٹ ہونے کے چانسس سو فیصد ہیں ۔اللہ اعلم
    محمد رسول اللہ ﷺ کی اطاعت کے فائدے

    اللہ اور رسول اللہ ﷺ کی اطاعت کرنے والوں کے اجر و ثواب میں کوئی کمی نہیں ہو گی
    قَالَتِ ٱلْأَعْرَابُ ءَامَنَّا ۖ قُل لَّمْ تُؤْمِنُوا۟ وَلَٰكِن قُولُوٓا۟ أَسْلَمْنَا وَلَمَّا يَدْخُلِ ٱلْإِيمَٰنُ فِى قُلُوبِكُمْ ۖ وَإِن تُطِيعُوا۟ ٱللَّهَ وَرَسُولَهُۥ لَا يَلِتْكُم مِّنْ أَعْمَٰلِكُمْ شَيْـًٔا ۚ إِنَّ ٱللَّهَ غَفُورٌۭ رَّحِيمٌ ﴿14﴾
    اللہ اور رسول اللہ ﷺ کی اطاعت کرنے والے انبیاء،صدیقین،شہداء اور صالحین کے ساتھ ہوں گے
    وَمَن يُطِعِ ٱللَّهَ وَٱلرَّسُولَ فَأُو۟لَٰٓئِكَ مَعَ ٱلَّذِينَ أَنْعَمَ ٱللَّهُ عَلَيْهِم مِّنَ ٱلنَّبِيِّۦنَ وَٱلصِّدِّيقِينَ وَٱلشُّهَدَآءِ وَٱلصَّٰلِحِينَ ۚ وَحَسُنَ أُو۟لَٰٓئِكَ رَفِيقًۭا ﴿69﴾
    رسول اللہ ﷺ کی اطاعت کامیابی کی ضمانت ہے
    وَمَن يُطِعِ ٱللَّهَ وَرَسُولَهُۥ وَيَخْشَ ٱللَّهَ وَيَتَّقْهِ فَأُو۟لَٰٓئِكَ هُمُ ٱلْفَآئِزُونَ﴿52﴾
    إِنَّمَا كَانَ قَوْلَ ٱلْمُؤْمِنِينَ إِذَا دُعُوٓا۟ إِلَى ٱللَّهِ وَرَسُولِهِۦ لِيَحْكُمَ بَيْنَهُمْ أَن يَقُولُوا۟ سَمِعْنَا وَأَطَعْنَا ۚ وَأُو۟لَٰٓئِكَ هُمُ ٱلْمُفْلِحُونَ ﴿51﴾
    يُصْلِحْ لَكُمْ أَعْمَٰلَكُمْ وَيَغْفِرْ لَكُمْ ذُنُوبَكُمْ ۗ وَمَن يُطِعِ ٱللَّهَ وَرَسُولَهُۥ فَقَدْ فَازَ فَوْزًا عَظِيمًا ﴿71﴾
    تِلْكَ حُدُودُ ٱللَّهِ ۚ وَمَن يُطِعِ ٱللَّهَ وَرَسُولَهُۥ يُدْخِلْهُ جَنَّٰتٍۢ تَجْرِى مِن تَحْتِهَا ٱلْأَنْهَٰرُ خَٰلِدِينَ فِيهَا ۚ وَذَٰلِكَ ٱلْفَوْزُ ٱلْعَظِيمُ ﴿13﴾
    دین اسلام میں رسول اللہ ﷺ کی اطاعت فرض ہے
    يَٰٓأَيُّهَا ٱلَّذِينَ ءَامَنُوٓا۟ أَطِيعُوا۟ ٱللَّهَ وَرَسُولَهُۥ وَلَا تَوَلَّوْا۟ عَنْهُ وَأَنتُمْ تَسْمَعُونَ ﴿20﴾
    قُلْ أَطِيعُوا۟ ٱللَّهَ وَأَطِيعُوا۟ ٱلرَّسُولَ ۖ فَإِن تَوَلَّوْا۟ فَإِنَّمَا عَلَيْهِ مَا حُمِّلَ وَعَلَيْكُم مَّا حُمِّلْتُمْ ۖ وَإِن تُطِيعُوهُ تَهْتَدُوا۟ ۚ وَمَا عَلَى ٱلرَّسُولِ إِلَّا ٱلْبَلَٰغُ ٱلْمُبِينُ﴿56﴾
    مَّن يُطِعِ ٱلرَّسُولَ فَقَدْ أَطَاعَ ٱللَّهَ ۖ وَمَن تَوَلَّىٰ فَمَآ أَرْسَلْنَٰكَ عَلَيْهِمْ حَفِيظًۭا ﴿80﴾
    وَمَآ أَرْسَلْنَا مِن رَّسُولٍ إِلَّا لِيُطَاعَ بِإِذْنِ ٱللَّهِ ۚ وَلَوْ أَنَّهُمْ إِذ ظَّلَمُوٓا۟ أَنفُسَهُمْ جَآءُوكَ فَٱسْتَغْفَرُوا۟ ٱللَّهَ وَٱسْتَغْفَرَ لَهُمُ ٱلرَّسُولُ لَوَجَدُوا۟ ٱللَّهَ تَوَّابًۭا رَّحِيمًۭا﴿64﴾
    وَأَطِيعُوا۟ ٱللَّهَ وَٱلرَّسُولَ لَعَلَّكُمْ تُرْحَمُونَ ﴿132﴾
    يَٰٓأَيُّهَا ٱلَّذِينَ ءَامَنُوٓا۟ أَطِيعُوا۟ ٱللَّهَ وَأَطِيعُوا۟ ٱلرَّسُولَ وَأُو۟لِى ٱلْأَمْرِ مِنكُمْ ۖ فَإِن تَنَٰزَعْتُمْ فِى شَىْءٍۢ فَرُدُّوهُ إِلَى ٱللَّهِ وَٱلرَّسُولِ إِن كُنتُمْ تُؤْمِنُونَ بِٱللَّهِ وَٱلْيَوْمِ ٱلْءَاخِرِ ۚ ذَٰلِكَ خَيْرٌۭ وَأَحْسَنُ تَأْوِيلًا﴿59﴾
    وضاحت:اللہ تعالٰی کی طرف لوٹانے کا مطلب قرآن پاک کی طرف رجوع کرنا ہے اور رسول کی طرف لوٹانے کا مطلب آپ ﷺ کی حیات طیبہ میں آپ ﷺ کی ذات مقدس تھی ،لیکن آپ ﷺ کی وفات کے بعد اس سے مراد آپ کی سنت مطہرہ اور احادیث مبارکہ ہیں۔(یہ وضاحت محمد اقبال کیلانی صاحب نے اپنی کتاب "اتباع سنت کے مسائل" صفحہ54 پر کی ہے)

    فَلَا وَرَبِّكَ لَا يُؤْمِنُونَ حَتَّىٰ يُحَكِّمُوكَ فِيمَا شَجَرَ بَيْنَهُمْ ثُمَّ لَا يَجِدُوا۟ فِىٓ أَنفُسِهِمْ حَرَجًۭا مِّمَّا قَضَيْتَ وَيُسَلِّمُوا۟ تَسْلِيمًۭا ﴿65﴾
    يَٰٓأَيُّهَا ٱلَّذِينَ ءَامَنُوٓا۟ أَطِيعُوا۟ ٱللَّهَ وَأَطِيعُوا۟ ٱلرَّسُولَ وَلَا تُبْطِلُوٓا۟ أَعْمَٰلَكُمْ ﴿33﴾
    مَّآ أَفَآءَ ٱللَّهُ عَلَىٰ رَسُولِهِۦ مِنْ أَهْلِ ٱلْقُرَىٰ فَلِلَّهِ وَلِلرَّسُولِ وَلِذِى ٱلْقُرْبَىٰ وَٱلْيَتَٰمَىٰ وَٱلْمَسَٰكِينِ وَٱبْنِ ٱلسَّبِيلِ كَىْ لَا يَكُونَ دُولَةًۢ بَيْنَ ٱلْأَغْنِيَآءِ مِنكُمْ ۚ وَمَآ ءَاتَىٰكُمُ ٱلرَّسُولُ فَخُذُوهُ وَمَا نَهَىٰكُمْ عَنْهُ فَٱنتَهُوا۟ ۚ وَٱتَّقُوا۟ ٱللَّهَ ۖ إِنَّ ٱللَّهَ شَدِيدُ ٱلْعِقَابِ ﴿7﴾
    ایک انسان کے بتائی ہوئی بات پر اتنا یقین لیکن ہمارے پیدا کرنے والے رب نے ہمیں واضح طور پر یہ تعلیم دی ہے کہ رسول اللہ ﷺ کی پیروی کرنے والا شخص ہی بخشا جائے گا۔رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی پیروی ہی ذریعہ نجات ہے ۔اللہ کی محبت حاصل کرنے کا ذریعہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی اطاعت ہے۔ تو کیوں ہم اللہ کی بات پر دھیان نہیں دیتے کیوں ہم غور و فکر نہیں کرتے ہمیں لوگوں کی من گھڑت باتوں پر تو اتنا یقین ہے لیکن اپنے پیدا کرنے والے رب کی باتوں پر ہم کیوں ایمان نہیں لاتے ۔
    اب دیکھئے کہ امام ابو حنیفہ کی جو بات قرآن و حدیث سے ٹکرائے اس کو آپ بلا جھجھک رد کر سکتے ہیں بلکہ خود امام ابو حنیفہ نے یہ کہا ہے (دیکھیں" عقل جید")
    لیکن اللہ تعالیٰ اور رسول اللہ ﷺ کی نافرمانی کا کیا انجام ہے وہ ملاحظہ فرمائیں۔

    اللہ اور رسول اللہ ﷺ کی اطاعت نہ کرنے کا نتیجہ باہمی انتشار اور لڑائی جھگڑے ہیں
    وَأَطِيعُوا۟ ٱللَّهَ وَرَسُولَهُۥ وَلَا تَنَٰزَعُوا۟ فَتَفْشَلُوا۟ وَتَذْهَبَ رِيحُكُمْ ۖ وَٱصْبِرُوٓا۟ ۚ إِنَّ ٱللَّهَ مَعَ ٱلصَّٰبِرِينَ ﴿46﴾
    اللہ اور رسول اللہ ﷺ کی نافرمانی صریح گمراہی ہے
    وَمَا كَانَ لِمُؤْمِنٍۢ وَلَا مُؤْمِنَةٍ إِذَا قَضَى ٱللَّهُ وَرَسُولُهُۥ أَمْرًا أَن يَكُونَ لَهُمُ ٱلْخِيَرَةُ مِنْ أَمْرِهِمْ ۗ وَمَن يَعْصِ ٱللَّهَ وَرَسُولَهُۥ فَقَدْ ضَلَّ ضَلَٰلًۭا مُّبِينًۭا ﴿36﴾
    اللہ اور رسول اللہ ﷺ کی نافرمانی کرنے والےکے لیے درد ناک عذاب ہے
    لَّيْسَ عَلَى ٱلْأَعْمَىٰ حَرَجٌۭ وَلَا عَلَى ٱلْأَعْرَجِ حَرَجٌۭ وَلَا عَلَى ٱلْمَرِيضِ حَرَجٌۭ ۗ وَمَن يُطِعِ ٱللَّهَ وَرَسُولَهُۥ يُدْخِلْهُ جَنَّٰتٍۢ تَجْرِى مِن تَحْتِهَا ٱلْأَنْهَٰرُ ۖ وَمَن يَتَوَلَّ يُعَذِّبْهُ عَذَابًا أَلِيمًۭا ﴿17﴾
    اللہ اور رسول اللہ ﷺ کی نافرمانی کرنےکو کسی فتنے میں مبتلا ہونے اور درد ناک عذاب کے آ جانے سے ڈرنا چاہیے
    لَّا تَجْعَلُوا۟ دُعَآءَ ٱلرَّسُولِ بَيْنَكُمْ كَدُعَآءِ بَعْضِكُم بَعْضًۭا ۚ قَدْ يَعْلَمُ ٱللَّهُ ٱلَّذِينَ يَتَسَلَّلُونَ مِنكُمْ لِوَاذًۭا ۚ فَلْيَحْذَرِ ٱلَّذِينَ يُخَالِفُونَ عَنْ أَمْرِهِۦ أَن تُصِيبَهُمْ فِتْنَةٌ أَوْ يُصِيبَهُمْ عَذَابٌ أَلِيمٌ ﴿63﴾
    اللہ تعالیٰ اور رسول اللہ ﷺ کی اطاعت سے منہ پھیر لینے والے مومن نہیں
    وَيَقُولُونَ ءَامَنَّا بِٱللَّهِ وَبِٱلرَّسُولِ وَأَطَعْنَا ثُمَّ يَتَوَلَّىٰ فَرِيقٌۭ مِّنْهُم مِّنۢ بَعْدِ ذَٰلِكَ ۚ وَمَآ أُو۟لَٰٓئِكَ بِٱلْمُؤْمِنِينَ ﴿47﴾ وَإِذَا دُعُوٓا۟ إِلَى ٱللَّهِ وَرَسُولِهِۦ لِيَحْكُمَ بَيْنَهُمْ إِذَا فَرِيقٌۭ مِّنْهُم مُّعْرِضُونَ ﴿48﴾
    آپ نے اللہ اور اللہ کے رسول ﷺ کی نافرمانی کا انجام بھی ملاحظہ فرمایا ۔
    تو پس اپنے رب کے قرآن اور محمد ﷺکے فرمان کو مضبوطی سے تھام لیجئے ۔اللہ کے در کے بھکاری بن جائیے اللہ آپ کو ہر در کی محتاجی سے پاک کر دے گا۔آج ہی اپنے عقیدوں کی اصلاح کیجئے ٹھنڈے دل سے ان باتوں پر غور کیجئے ۔اپنے گناہوں سے توبہ کیجئے بے شک اللہ تعالیٰ بخشنے والا رحم فرمانے والا ہے۔
    وَمَنْ یَّعْمَلْ سُوْئً ا اَوْیَظْلِمْ نَفْسَہ ثُمَّ یَسْتَغْفِرِ اللّٰہَ یَجِدِ اللّٰہَ غَفُوْرًا رَّحِیْمًا (سورہ النساء آیت 110)

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    مصادر و المراجع
    اتباع سنت کے مسائل از محمد اقبال کیلانی
     
    • شکریہ شکریہ x 15
    • زبردست زبردست x 1
    • علمی علمی x 1
    • لسٹ
  2. ‏اکتوبر 15، 2011 #2
    کلیم حیدر

    کلیم حیدر رکن
    جگہ:
    لیہ
    شمولیت:
    ‏فروری 14، 2011
    پیغامات:
    9,403
    موصول شکریہ جات:
    25,973
    تمغے کے پوائنٹ:
    995

    جزاکم اللہ بھائی جان
     
  3. ‏اکتوبر 15، 2011 #3
    محمد ارسلان

    محمد ارسلان خاص رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 09، 2011
    پیغامات:
    17,865
    موصول شکریہ جات:
    40,798
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,155

    جزاک اللہ خیرا
     
  4. ‏اکتوبر 15، 2011 #4
    محمد ارسلان

    محمد ارسلان خاص رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 09، 2011
    پیغامات:
    17,865
    موصول شکریہ جات:
    40,798
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,155

    السلام علیکم
    جس نے بھی عنوان بدلا ہے ،اللہ تعالیٰ اُس کو جزائے خیر عطا فرمائے آمین۔
    یہ عنوان پہلے والے عنوان سے زیادہ اچھا ہے۔
     
  5. ‏مئی 21، 2012 #5
    محمد شاہد

    محمد شاہد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏اگست 18، 2011
    پیغامات:
    2,506
    موصول شکریہ جات:
    6,012
    تمغے کے پوائنٹ:
    447

    جزاک اللہ خیرا
     
  6. ‏مئی 28، 2012 #6
    محمد ارسلان

    محمد ارسلان خاص رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 09، 2011
    پیغامات:
    17,865
    موصول شکریہ جات:
    40,798
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,155

    شکریہ شاہد بھائی
     
  7. ‏اکتوبر 14، 2012 #7
    عبداللہ کشمیری

    عبداللہ کشمیری مشہور رکن
    جگہ:
    سرینگر کشمیر
    شمولیت:
    ‏جولائی 08، 2012
    پیغامات:
    564
    موصول شکریہ جات:
    1,649
    تمغے کے پوائنٹ:
    186

    جزاکم اللہ خیرا برادر محمد ارسلان
    اللہ سبحان وتعالیٰ آپ کے اور ہمارے علم وعمل میں اضافہ فرمائیں!
     
    • شکریہ شکریہ x 3
    • متفق متفق x 1
    • لسٹ
  8. ‏اکتوبر 14، 2012 #8
    محمد ارسلان

    محمد ارسلان خاص رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 09، 2011
    پیغامات:
    17,865
    موصول شکریہ جات:
    40,798
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,155

    آمین ثم آمین
    جزاک اللہ خیرا
     
    • شکریہ شکریہ x 2
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
  9. ‏جون 16، 2014 #9
    محمد نعیم یونس

    محمد نعیم یونس خاص رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 27، 2013
    پیغامات:
    26,402
    موصول شکریہ جات:
    6,600
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,207

    وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!
    جزاک اللہ خیرا
     
  10. ‏دسمبر 04، 2015 #10
    عبدالرحمن بھٹی

    عبدالرحمن بھٹی مشہور رکن
    جگہ:
    فی الارض
    شمولیت:
    ‏ستمبر 13، 2015
    پیغامات:
    2,435
    موصول شکریہ جات:
    287
    تمغے کے پوائنٹ:
    165

    ہاتھی کے دانت کھانے کے اور دکھانے کے اور۔
    ابوحنیفہ رحمۃ اللہ علیہ قرآن، احادیث اور اقوالِ صحابہ سے ماخوذ کر کے کوئی بات کہیں اور اس کو اہلِ السنت والجماعت حنفی پیش کر دے تو کہتے ہو تقلید کر رہا ہے مقلد ہے اور خود اصل کی طرف رجوع نہیں کیا۔
    جناب دوسری کتابیں ضرور پڑھیں مگر اس میں دی گئی عبارات کو اصل مصادر میں ضرور دیکھیں اور اصل مصادر کا ہی حوالہ دیں۔ شکریہ
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں