1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

تکفیر و تضلیلِ ابن عربی اور شبہات ِ حنیف قریشی

'بریلوی' میں موضوعات آغاز کردہ از طالب نور, ‏دسمبر 30، 2011۔

  1. ‏دسمبر 30، 2011 #1
    طالب نور

    طالب نور رکن مجلس شوریٰ
    جگہ:
    سیالکوٹ، پاکستان۔
    شمولیت:
    ‏اپریل 04، 2011
    پیغامات:
    361
    موصول شکریہ جات:
    2,303
    تمغے کے پوائنٹ:
    220

    بسم اللہ الرحمٰن الرحیم
    تکفیرو تضلیلِ ابن عربی اور شبہات ِحنیف قریشی

    حافظ زبیر علی زئی حفظہ اللہ نے وحدت الوجود سے متعلق پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں وحدت الوجود کے بانی مشہور صوفی ابن عربی المعروف ’’شیخ اکبر‘‘ پربھی کلام کیا تھا اور اس کے کفریہ عقائد و نظریات اور علمائے کرام کا اس کی شدید تضلیل و تکفیر کرنے پر ثبوت پیش کئے تھے۔ نیزجن علماء نے ابن عربی کی تعریف کر رکھی ہے یا اسے القابات سے نواز رکھا ہے ان کے بارے میں لکھا تھا کہ
    اپنے ایک اور مضمون میں شیخ زبیر علی زئی حفظہ اللہ نے لکھا:

    اس واضح اصولی مئوقف کے پیش کئے جانے کے باوجودبریلوی فرقہ کے مناظر مفتی حنیف قریشی نے اپنے ’’شیخ اکبر‘‘ ابن عربی کے بارے میں بعض پچھلے اہل حدیث علماء کے تعریفی و دعائیہ کلمات اور القابات پیش کر کے لکھا:
     
  2. ‏دسمبر 30، 2011 #2
    طالب نور

    طالب نور رکن مجلس شوریٰ
    جگہ:
    سیالکوٹ، پاکستان۔
    شمولیت:
    ‏اپریل 04، 2011
    پیغامات:
    361
    موصول شکریہ جات:
    2,303
    تمغے کے پوائنٹ:
    220

    رضاخانی مناظر کے ان شبہات کا جواب شیخ محترم حافظ زبیر علی زئی حفظہ اللہ کے اصولی مئوقف میں ہی موجود ہے جو انہوں نے ابن عربی کی تعریف کرنے ولے علماء کے بارے میں پیش کر رکھا ہے۔
    مگر چونکہ بریلوی مناظر شاید یہ اصولی بات سمجھنے کی استطاعت نہیں رکھتے اس لئے ذیل میں خود بریلوی فرقہ کی جانب سے گمراہ، بدمذہب و کافرقرار دیے گئے حضرات کے لئے تعریفی و دعائیہ کلمات و القابات بریلویوں کی ہی مستند کتب سے پیش خدمت ہیں تاکہ ابن عربی کی وکالت کرتے ہوئے بہتر دماغی توازن کے ساتھ دوسروں پر الزام قائم کر سکیں۔
    ۱) شیخ الاسلام امام ابن تیمیہ رحمہ اللہ اور ان کے شاگرد رشید امام ابن قیم رحمہ اللہ کے متعلق بریلوی ’’اعلیٰ حضرت‘‘ احمد رضا خان بریلوی نے بد مذہب اور گمراہ کا فتویٰ جاری کر رکھاہے۔(دیکھئے فتاویٰ رضویہ ج۱۷ص۵۴۳)
    اسی طرح خود بریلوی مناظر حنیف قریشی نے امام ابن تیمیہ کی طرف کئی ایک گمراہیاں اور کفریات منسوب کرنے کے بعد بطور دلیل و حجت ایک عبارت پیش کی جس میں موجودہے کہ’’اس مجلس قضاء نے متفقہ فیصلہ دیا کہ ابن تیمیہ کافر ہے۔‘‘ (روئیداد مناظرہ، گستاخ کون؟ص۴۹۵)
    ملا علی قاری کو ’’مشہور محدث ....رحمۃ اللہ علیہ‘‘ قرار دیتے ہوئے حنیف قریشی بریلوی نے ان کی کتاب کے حوالے سے بھی لکھا: ’’ابن تیمیہ اور ابن قیم ، اللہ عزوجل کے لئے جہت اور جسم ثابت کرنے والے ہیں۔‘‘ (روئیداد مناظرہ، گستاخ کون؟ص۵۰۵)
    ۱۔ مگر بریلویوں کے نزدیک گمراہ ابن قیم اور بد مذہب و کافر ابن تیمیہ اور ان سے منسوب تمام گمراہیوں و کفریات کے باوجود ملا علی قاری حنفی نے ابن تیمیہ و ابن قیم کے بارے میں لکھا:

    ۲۔ اپنے علامہ شامی کے حوالے سے بھی حنیف قریشی نے امام ابن تیمیہ پر نبی ﷺکی بے ادبی و توہین سمیت شدید جرح نقل کر رکھی ہے۔ (دیکھئے روئیداد مناظرہ... ص۵۱۰)
    اسی حنفی فقیہ ابن عابدین شامی نے امام ابن تیمیہ کو ’’شیخ الاسلام‘‘ قرار دے رکھا ہے۔(دیکھئے ردالمختارعلی الدر المختار ج۳ص۳۰۵طبع مکتبہ رشیدیہ، کوئٹہ)
    ابن عابدین شامی کے بارے میں بریلوی ’’اعلیٰ حضرت ‘‘نے کہا:
    ’’خاتم المحققین علامہ ابن عابدین شامی‘‘ (فتاویٰ رضویہ ج۱۷ص۱۱۱)
    ’’فاضل سید محمد امین ابن عابدین شامی رحمہ اللہ...‘‘ (فتاویٰ رضویہ ج۱۰ص۳۹۱)
    اپنے ’’خاتم المحققین‘‘ کی امام ابن تیمیہ کو ’’شیخ الاسلام‘‘ قرار دیتی کتاب ’رد المختار‘ کے بارے میں احمد رضا خان بریلوی نے لکھا: ’’علامہ سید موصوف جن کی کتاب ممدوح آج تمام عالم میں مذہب حنفی کے اعلیٰ درجہ معتمد سے ہے۔‘‘ (فتاویٰ رضویہ ج۱۴ص۱۴۵)
    ۳۔ حنیف قریشی نے علامہ سیوطی سے بھی امام ابن تیمیہ کی تضلیل کی حکایت کا قول بطور دلیل پیش کیا۔ (دیکھئے روئیداد مناظرہ ص۵۰۹)
    مگرعلامہ سیوطی نے ا مام ابن تیمیہ کی زبردست تعریف و توصیف کرتے ہوئے کہا:

    امام ابن تیمیہ کی زبردست تعریف کرنے والے علامہ سیوطی کے بارے میں احمد رضا بریلوی نے لکھا: ’’خاتم حفاظ الحدیث امام جلیل جلال الملۃ والدین سیوطی قدس سرہ العزیز‘‘ (فتاویٰ رضویہ ج۵ص۴۹۳)
    ۴۔ بریلویوں کے مشہور پیر مہر علی شاہ گولڑوی کو بھی امام ابن تیمیہ و امام ابن قیم کے بارے میں کہنا پڑا:

    نیز بریلوی پیر نصیر الدین نصیر گولڑوی نے لکھا: ’’امام ابن تیمیہ کے ساتھ اختلاف کے باوجود بھی میرے جد اعلیٰ حضرت گولڑوی علیہ الرحمۃ نے اُن کے لئے دعائیہ الفاظ غفر اللہ لہ اور اُن کے نام کے ساتھ شیخ کا لفظ تحریر فرمایا۔‘‘ (لطمۃ الغیب علی ازالۃ الریب ص۲۸۴)
    ۵۔ بریلویوں کے شیر ربانی میاں شیر محمد شرقپوری کے خلیفہ صاحبزادہ محمد عمر بیربلوی نے لکھا:
    ’’امام السنۃ ابن تیمیہؒ اور ابن قیمؒ ...‘‘ (توحید ص۱۶۴)
    ۶۔ بریلویوں کے ’’محسن اہلسنت‘‘ عبدالحکیم شرف قادری نے لکھا:
     
  3. ‏دسمبر 30، 2011 #3
    طالب نور

    طالب نور رکن مجلس شوریٰ
    جگہ:
    سیالکوٹ، پاکستان۔
    شمولیت:
    ‏اپریل 04، 2011
    پیغامات:
    361
    موصول شکریہ جات:
    2,303
    تمغے کے پوائنٹ:
    220

    ٢) احمد رضا خان بریلوی نے شاہ اسماعیل دہلوی کے متعلق لکھا:

    ایک دوسری جگہ شاہ اسماعیل دہلوی کے متعلق بریلوی’’ اعلیٰ حضرت‘‘ نے تصریح کی:
    اسی طرح بریلویوں کے زبردست ممدوح مولوی فضل حق خیرآبادی نے تقویۃ الایمان کی ایک عبارت کومسئلہ امکان نظیر سے متعلق پیش کر کے ’’تخفیف شان‘‘ قرار دیا۔
    (دیکھئے تحقیق الفتویٰ فی ابطال الطغوٰی، ترجمہ بنام’ شفاعت مصطفی‘ از عبدالحکیم شرف قادری ص۱۸۶)
    نیز ’’کذبِ الٰہی کومستلزم‘‘ قرار دیا۔ (دیکھئے ایضاً ص۱۵۶)
    پھربریلوی ممدوح مولوی فضل حق خیرآبادی نے تقویۃ الایمان کی عبارات کو گستاخانہ قرار دیتے ہوئے فتویٰ دیا:
    بریلویوں کے ’’ماہر رضویات‘‘ پروفیسر مسعود احمد نے تسلیم کر رکھا ہے کہ مولوی فضل حق خیرآبادی نے اپنی اس کتاب میں مسئلہ شفاعت، امکان ِکذب اور امتناع نظیر کے مسائل پر مدلل بحث فرمائی اور پھر تقویۃ الایمان کی بعض گستاخانہ عبارات پر مندرجہ بالا فتویٰ دیا۔ (دیکھئے علامہ فضل حق خیرآبادی از پروفیسر مسعود احمدص۹)
    حنیف قریشی بریلوی کے معاون مناظرامتیاز حسین کاظمی نے بھی تقویۃ الایمان کی مسئلہ امکان نظیر سے متعلق پیش کی جانے والی متنازعہ عبارت کو گستاخی بنا کرپیش کرتے ہوئے’’بد تر از بول‘‘ قرار دے رکھا ہے۔ (دیکھئے روئیداد مناظرہ ...ص۱۸۵)
    ۱۔ شاہ اسماعیل دہلوی ، تقویۃ الایمان و مسئلہ امکان نظیر کے متعلق بریلویوں کے ان مستندو معتمد شدید تکفیری و تضلیلی فتویٰ جات کے بعد عرض ہے کہ انہیں بریلویوں کے پیر مہر علی شاہ گولڑوی نے لکھا:
    اسماعیل دہلوی و فضل حق خیرآبادی، دونوں گروہوں کے لئے اللہ سے جزا کی امید رکھنے والے اور دونوں کو ماجور و مثاب ماننے والے بریلوی پیر مہر علی شاہ گولڑوی کے بارے میں حنیف قریشی نے لکھا: ’’حضرت قبلہ پیر سید مہر علی شاہ صاحب گو لڑوی رحمۃ اللہ علیہ‘‘ (روئیداد مناظرہ، گستاخ کون؟ص۴۸۶)
    ۲۔ شاہ اسماعیل دہلوی کے بارے میں بریلوی ماہر رضویات پروفیسر مسعود احمدنے لکھا:
    تنبیہ: پروفیسر مسعود احمد نے سید احمد بریلوی کے بارے میں بھی ’’مولانا سید احمد ؒ ‘‘ لکھ رکھا ہے ۔ (دیکھئے فتاویٰ مظہریہ ص۳۵۰، ۳۵۲)
    بریلوی محقق عبدالحکیم شرف قادری نے اپنے اس ’’ماہر رضویات‘‘ کو یوں خراج تحسین پیش کر رکھا ہے:
    بریلویوں کے علامہ سبحان رضا خان قادری (سجادہ نشین خانقاہ رضویہ، بریلی بھارت) نے لکھا:
    ۳۔ بریلویوں کے ترجمانِ حقیقت صاحبزادہ محمد عمر بیربلوی نے شاہ ولی اللہ دہلوی کی مجددیت کا تذکرہ کرتے ہوئے سید احمد بریلوی اور شاہ اسمٰعیل دہلوی کے متعلق لکھا:
    صاحبزادہ محمدعمر بیربلوی، بریلویوں کے آفتاب ولایت میاں شیر محمد شرقپوری کے خلیفہ تھے۔ تفصیل کے لیے دیکھئے تذکرہ حضرت شیر ربانی شرقپوری اور انکے خلفاء (ص۴۳۴تا ۴۸۶) نیزعبدالحکیم شرف قادری کے شاگرد محمد یٰسین نقشبندی نے اپنے آستانہ شرقپور سے توثیق شدہ اس کتاب میں لکھا:
    عبدالحکیم شرف قادری بریلوی نے ان کے بارے میں لکھا:
     
  4. ‏دسمبر 30، 2011 #4
    طالب نور

    طالب نور رکن مجلس شوریٰ
    جگہ:
    سیالکوٹ، پاکستان۔
    شمولیت:
    ‏اپریل 04، 2011
    پیغامات:
    361
    موصول شکریہ جات:
    2,303
    تمغے کے پوائنٹ:
    220

    ٣) رشید احمد گنگوہی ان دیوبندی اکابرین میں سے ایک ہیں جو بریلوی ’’اعلیٰ حضرت‘‘ احمد رضا خان کے نزدیک ایسے کافر مرتد ہیں کہ جو ان کے کافر ہونے میں شک کرے وہ بھی کافرقرار پاتا ہے۔ (دیکھئے فتاویٰ رضویہ ج۲۹ص۲۴۲)
    ۱۔ مگر بریلویوں کے ماہر رضویات اور اس موضوع پر سند کا درجہ رکھنے والے پروفیسر مسعود احمدنے لکھا:
     
  5. ‏دسمبر 30، 2011 #5
    طالب نور

    طالب نور رکن مجلس شوریٰ
    جگہ:
    سیالکوٹ، پاکستان۔
    شمولیت:
    ‏اپریل 04، 2011
    پیغامات:
    361
    موصول شکریہ جات:
    2,303
    تمغے کے پوائنٹ:
    220

    ٤) اکابرین دیوبند میں سے قاسم نانوتوی بھی ان حضرات میں شامل ہیں جنہیں بریلوی ’’اعلیٰ حضرت‘‘ کی جانب سے کافر ہونے بلکہ’’جو ان کوکافر نہ جانے ان کے کفر میں شک کرے وہ بھی بلا شبہہ کافر‘‘ کا سرٹیفیکیٹ جاری کیا گیا ہے۔ (دیکھئے فتاویٰ رضویہ ج۱۴ص۵۸۹)
    ۱۔ بریلویوں کے فخر اہل سنت نور بخش توکلی نے اپنے مخدومنا توکل شاہ (انبالوی) کا خواب نقل کرتے ہوئے لکھا:
    بریلوی شیخ الحدیث و التفسیر فیض احمد اویسی نے شیخ عبدالقادر جیلانی سے منسوب کرتے ہوئے تسلیم کر رکھا ہے کہ’’ہر ولی کے قدم نبی کے قدم پر ہوتے ہیں‘‘ (تحقیق الاکابر فی قدم الشیخ عبدالقادرص۲۱)
    قاسم نانوتوی کو ولی ثابت کرنے والا ذکر لکھنے والے نور بخش توکلی کوعبدالحکیم شرف قادری نے بریلوی اکابرین میں ذکر کرتے ہوئے کہا: ’’فخر اہل سنت حضرت مولانا علامہ محمد نور بخش توکلی قدس سرہ‘‘ (تذکرہ اکابر اہل سنت ص۵۵۹)
    ۲۔ اسی طرح عبدالحکیم شرف قادری نے فقیر محمد جہلمی کو اپنے اکابرین میں شمار کرتے ہوئے لکھا: ’’فاضل جلیل مولانا فقیر محمد جہلمی رحمہ اللہ تعالےٰ (مئولف حدائق الحنفیہ)‘‘ (تذکرہ اکابر اہلسنت ص۳۹۱)
    بریلویوں کے اس تسلیم شدہ فاضل جلیل فقیر محمد جہلمی نے قاسم نانوتوی کی بھرپور تعریف کرتے ہوئے کہا :
    ۳۔ بریلویوں کے فدائے ’’اعلیٰ حضرت ‘‘پروفیسر مسعود احمد نے لکھا:
     
  6. ‏دسمبر 30، 2011 #6
    طالب نور

    طالب نور رکن مجلس شوریٰ
    جگہ:
    سیالکوٹ، پاکستان۔
    شمولیت:
    ‏اپریل 04، 2011
    پیغامات:
    361
    موصول شکریہ جات:
    2,303
    تمغے کے پوائنٹ:
    220

    ٥) دیوبندیوں کے حکیم الامت اشرف علی تھانوی بھی ان میں سے ایک ہیں جو بریلوی ’’اعلیٰ حضرت‘‘ احمد رضا خان کے نزدیک ایسے کافر مرتد ہیں کہ جو ان کے کافر ہونے میں شک کرے وہ بھی کافرہے۔ (دیکھئے فتاویٰ رضویہ ج۲۹ص۲۴۲)
    ۱۔ بریلویوں کے استاذ العلماء مفتی فیض احمدگولڑوی نے لکھا:

    بریلوی استاذ العلماء مفتی فیض احمدگولڑوی نے ’’بلند پایہ علماء‘‘ کے ضمن میں بھی اشرف علی تھانوی دیوبندی اور انور شاہ کشمیری دیوبندی کو پیش کر رکھا ہے۔ (دیکھئے مہر منیرص۲۵۰)
    بریلویوں کے غزالی زماں احمد سعید کاظمی نے مفتی فیض احمد گولڑوی کواپنے جامعہ انوار العلوم ملتان کی اعزازی سند عطا کر رکھی ہے۔ (دیکھئے مہر منیرتعارف مئولف)
    بریلویوں کے ضیغم اہلسنت و رئیس التحریر حسن علی رضوی نے لکھا: ’’استاذ العلماء و مولانا فیض احمدآستانہ عالیہ گولڑہ شریف‘‘ (ماہنامہ رضائے مصطفی،جولائی ۲۰۱۰ء ص۱۰)
    بریلوی مناظر مفتی حنیف قریشی نے لکھ رکھا ہے: ’’حضرت قبلہ سید غلام محی الدین قبلہ بابو جی گولڑوی رحمۃ اللہ علیہ‘‘ (روئیداد مناظرہ، گستاخ کون؟ص۴۸۶)
    دیوبندی اکابرین کی مدح وتعریف کرتی یہ کتاب ’مہر منیر‘ فیض احمد گولڑوی نے حنیف قریشی کے انہیں ’بابوجی‘ کے ’’حسب ارشاد‘‘ تالیف کر رکھی ہے۔ ( دیکھئے مہر منیرتعارف مئولف)
    نیز اس کتاب کے متعلق غلام محی الدین گولڑوی المعروف بابو جی نے فیض احمد گولڑوی سے کہا: ’’مولوی صاحب آپ نے اس کتاب پر بڑی محنت کی ہے ۔ اللہ تعالےٰ قبول فرمائے۔‘‘ (تصفیہ مابین سنی و شیعہ ص الف)
    ۲۔ رضا خانی ’’مسعود ملت‘‘ پروفیسر مسعود احمد نے لکھا:
     
  7. ‏دسمبر 30، 2011 #7
    طالب نور

    طالب نور رکن مجلس شوریٰ
    جگہ:
    سیالکوٹ، پاکستان۔
    شمولیت:
    ‏اپریل 04، 2011
    پیغامات:
    361
    موصول شکریہ جات:
    2,303
    تمغے کے پوائنٹ:
    220

    ٦) دیگر دیوبندی علماء و اکابرین کے حوالے سے بھی عرض ہے کہ کوکب نورانی اوکاڑوی سمیت کئی بریلوی علماء کے پیرو مرشد اسماعیل شاہ بخاری المعروف بریلویوں کے ’’حضرت کرمانوالہ‘‘ جن کو عبدالحکیم شرف قادری نے اپنے اکابرین میں بھی شمار کر رکھا ہے (دیکھئے تذکرہ اکابر اہلسنت ص ۴۲۹) کے حالات و واقعات پران سے چالیس سال فیض حاصل کرنے والے مرید خاص مولوی محمد اکرام نے کتاب ’معدن کرم‘ لکھ رکھی ہے۔
    ۱۔ اس کتاب میں مولوی محمد اکرام نے لکھا:
    مندرجہ بالا حوالے میں ’’میاں صاحب‘‘ سے مراد بریلویوں کے شیر ربانی میاں شیر محمد شرقپوری ہیں۔
    ۲۔ اپنے ’’حضرت کرمانوالہ‘‘ کی تعلیم کا ذکر کرتے ہوئے مولوی محمد اکرام نے لکھا:
    ۳۔ بریلوی پیر اسماعیل شاہ بخاری کے مرید خاص مولوی محمد اکرام نے دیوبندی تبلیغی جماعت کے’’شیخ الحدیث‘‘ محمد زکریا سہارنپوری کے متعلق بھی لکھا: ’’مولانا الحافظ المحدث محمد زکریا صاحب شیخ الحدیث مدرسہ مظاہر العلوم سہارنپور‘‘ (معدن کرم ص۲۱۵)[/QUOTE]
    اس کتاب ’معدن کرم‘ کو بریلویوں کے ’’حضرت کرمانوالہ‘‘ کے پوتے اوربریلوی پیر صمصام علی شاہ بخاری کی تائید بھی حاصل ہے کہ مسودے کا بغور مطالعہ فرما کر اصلاح کر رکھی ہے۔ (دیکھئے معدن کرم مقدمہ،قبل ص۱)
    تنبیہ: یہ حوالہ جات ’معدن کرم‘ کے پرانے ایڈیشن (مطبوعہ ۱۴ذی الحجہ۱۴۱۹ھ) سے دیے گئے ہیں۔ نئے ایڈیشن میں بریلوی فنکاروں نے ان حوالہ جات کو زبردست تحریف کا شاہکار بنا دیا ہے۔
    ۴۔ بریلوی ’’ماہر رضویات‘‘ پروفیسر مسعود احمد نے لکھا:
    اپنے والد مظہر اللہ دہلوی اور مفتی کفایت اللہ دیوبندی کے باہمی واقعہ کو بیان کر کے کہا:
    مشہور دیوبندی مفتی کفایت اللہ دہلوی کے بارے میں مزید لکھا:
    ۵۔ بریلوی مسعود ملت پروفیسر مسعود احمد نے کہا:
     
  8. ‏دسمبر 30، 2011 #8
    طالب نور

    طالب نور رکن مجلس شوریٰ
    جگہ:
    سیالکوٹ، پاکستان۔
    شمولیت:
    ‏اپریل 04، 2011
    پیغامات:
    361
    موصول شکریہ جات:
    2,303
    تمغے کے پوائنٹ:
    220

    ٧) بریلوی ’’اعلیٰ حضرت‘‘ احمد رضا خان قادری نے سید نذیر حسین دہلوی رحمہ اللہ کو انہیں رجال میں شامل کر رکھا ہے جو ایسے کافر ہیں کہ جو انہیں کافر نہ مانے وہ بھی کافر۔ (دیکھئے فتاویٰ رضویہ ج۱۴ص۵۸۹)
    ۱۔ پروفیسر مسعود احمد نے اپنے ’’اعلیٰ حضرت‘‘ پردادا محمد مسعود شاہ کے حالات بیان کرتے لکھا:
    مزید لکھا:
    نیز پروفیسر مسعود احمد نے بطور تائید ’’مولانا سید نذیر حسین محدث دہلوی‘‘ کے عنوان کے تحت ان کے حالاتِ زندگی مولانا محمدابراہیم سیالکوٹی کی کتاب ’تاریخ اہل حدیث‘ سے مجملاً بیان کر رکھے ہیں۔ (دیکھئے تذکرہ ٔمظہر مسعود ص۱۹۔۲۰)
     
  9. ‏دسمبر 30، 2011 #9
    طالب نور

    طالب نور رکن مجلس شوریٰ
    جگہ:
    سیالکوٹ، پاکستان۔
    شمولیت:
    ‏اپریل 04، 2011
    پیغامات:
    361
    موصول شکریہ جات:
    2,303
    تمغے کے پوائنٹ:
    220

    ٨) کئی بریلوی مناظرو معاون چالاکی سے اہل حدیث کے واضح اصول و منہج کے خلاف کتب کی عبارات بھی ان پر بطور الزام پیش کرتے ہیں۔ اہل حدیث کی جانب سے ان کتب کو منسوخ یا مردود ماننے کے باوجود یہ بریلوی مناظر و معاون ان کتب کی مکمل عبارات سے نا واقف یا احتمال نکال کر ان کتب کی تعریف کرنے والے علماء کو پیش کر کے اہل حدیث کے خلاف تلبیسات میں مشغول ہیں۔
    ان حضرات سے عرض ہے کہ ان کے ’’اعلیٰ حضرت‘‘ بریلوی نے جس طرح تقویۃ الایمان، صراط مستقیم، رسالہ یکروزی وغیرہ اور سید نذیر حسین دہلوی و نواب صدیق حسن خان بھوپالی کی بھی جتنی تصنیفیں ہیں تمام پرصریح ضلالتوں، گمراہیوں اور کلمات کفریہ پر مشتمل ہونے کا فتویٰ دیاہے۔(دیکھئے فتاویٰ رضویہ ج۱۱ص۴۰۴) اسی طرح غوث علی شاہ پانی پتی کے تذکرہ پر لکھی کتاب ’تذکرۃ غوثیہ‘ کو بھی ضلالتوں، گمراہیوں بلکہ صریح کفر کی باتوں پر مشتمل قرار دے رکھا ہے۔(دیکھئے فتاویٰ رضویہ ج۱۵ص۲۷۹)
    مگریہی ضلالتوں، گمراہیوں بلکہ صریح کفریہ باتوں سے بھری کتاب ’تذکرہ غوثیہ‘ بریلویوں کے پیر و شیر ربانی میاں شیرمحمد شرقپوری کی پسند فرمودہ کتب میں شامل ہے۔ (دیکھئے تذکرہ حضرت شیر ربانی شرقپوری اور انکے خلفاء ص۲۳)
    نیز’ تذکرہ غوثیہ‘ کے بزرگِ تذکرہ و ملفوظات غوث علی شاہ پانی پتی کے متعلق بریلویوں کے شیر ربانی شیر محمد شرقپوری نے کہا:’’حضرت غوث علی شاہ رحمۃ اللہ تعالیٰ اپنے وقت کے بہت بڑے ولی کامل تھے بلکہ ولی گر تھے۔‘‘ (ایضاًص۲۸۷)
    کتاب ’تذکرہ حضرت شیر ربانی شرقپوری اور انکے خلفائ‘پربریلویوں کے آستانہ شرقپور کے سجادہ نشین صاحبزادہ محمد ابوبکر شرقپوری کی تقریظ موجود ہے۔ (دیکھئے ص۳۱)
    کتاب میں موجود ہربریلوی بزرگ کا تذکرہ متعلقہ سجادہ نشین سے تائید و تصدیق شدہ ہے۔ (دیکھئے ص۲۴)
    نیز کتاب کا مصنف محمد یٰسین قصوری نقشبندی مشہور بریلوی علماء مفتی عبدالقیوم ہزاروی اور عبدالحکیم شرف قادری کا شاگرد ہے۔ (دیکھئے ص۳۶)
    قریشی و کاظمی سے عرض ہے کہ ابھی تو ایسے کتنے ہی حوالہ جات باقی ہیں۔ فی الحال انہیں پیش کردہ حوالہ جات کو ایک دفعہ پھر پڑھیں اور بتائیں کہ کیا ملا علی قاری، ابن عابدین شامی، علامہ سیوطی، مہر علی شاہ گولڑوی، غلام محی الدین گولڑوی، فیض احمد گولڑوی، شیر محمد شرقپوری، صاحبزادہ عمر بیربلوی، اسماعیل شاہ بخاری، نور الحسن شاہ بخاری، صمصام علی شاہ بخاری، نور بخش توکلی، فقیر محمد جہلمی، پروفیسر مسعود احمد، عبدالحکیم شرف قادری وغیرہم پر رضاخانی مفتیوں کی جانب سے مبارک ’’تکفیر‘‘ منصہ شہود پر آ چکی ہے؟
     
  10. ‏دسمبر 30، 2011 #10
    طالب نور

    طالب نور رکن مجلس شوریٰ
    جگہ:
    سیالکوٹ، پاکستان۔
    شمولیت:
    ‏اپریل 04، 2011
    پیغامات:
    361
    موصول شکریہ جات:
    2,303
    تمغے کے پوائنٹ:
    220

    ٩) ابن عربی سمیت کوئی بھی شخصیت ہو اس پر کفر و ضلالت کا فتویٰ اس کی کفریہ عبارات و نظریات کی بنا پر لگتا ہے جس سے لا علمی یا مختلف احتمالات کی بنیاد پر اختلاف کرنے والے موجود ہیں۔ جو اگرچہ غلط بھی ہوں جب تک لاعلمی دور نہ کر دی جائے اور ان احتمالات کا غلط وباطل ہونا ثابت کر کے حجت تمام نہ ہوجائے ان اختلاف کرنے والوں پر کوئی فتویٰ نہیں دیا جا سکتا، لہٰذا دوسروں سے بے سروپا مطالبات کی بجائے اپنے گھر کی خبر لیں۔
    ؂
    کہ یہ گھر جو جل رہا ہے کہیں تیر ا گھر نہ ہو​
    محمد یونس باڑی مظہری نے لکھا:
    کتاب ’سیرت انوارِمظہریہ‘پربریلویوں کے متفقہ ’’ماہر رضویات و مسعود ملت‘‘ پروفیسر مسعود احمد کی تقریظ و مصنف کی تائید و تعریف موجود ہے۔ (دیکھئے سیرت انوارِ مظہریہ ص۲۸ ،۳۴)
    پروفیسر مسعود احمد نے خود بھی اس بات کی جانب اشارہ کر رکھا ہے۔ ( دیکھئے فتاویٰ مظہریہ ص۴۹۹)
    مسلکی تفاوت اور تعصب کیا ہوتا ہے؟ دوسروں کو الزام دینے سے پہلے حنیف قریشی کومندرجہ بالا رضا خانی رویہ سے عبرت حاصل کرتے ہوئے اچھی طرح سمجھ لینا چاہئے، ورنہ اسی طرح خوامخواہ ان کی ’بے عزتی‘ مزید خراب ہوتی رہے گی۔
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں