1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

تین سانس میں پانی پینا اور جدید تحقیقات

'شرح وفوائد' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد ڈیفینڈر, ‏جنوری 29، 2015۔

  1. ‏جنوری 29، 2015 #1
    محمد ڈیفینڈر

    محمد ڈیفینڈر رکن
    شمولیت:
    ‏مئی 23، 2012
    پیغامات:
    83
    موصول شکریہ جات:
    79
    تمغے کے پوائنٹ:
    63

    تین سانس میں پانی پینا اور جدید تحقیقات

    نبی کریم ﷺ نے کوئی ایسی خیر کی بات نہیں چھوڑی جو انسانیت کے لیے ضروی ہو اور نہ ہی کوئی ایسی بات آپ نے چھپائی ہو جس میں انسانیت کا دین اور دنیا کا نقصان ہو چاہے وہ ہلکا نقصان ہو یا پھر نقصان کے اعتبار سے شدید ہو۔ نبی کریمﷺ صرف انسانوں کے لیے نہیں بلکہ آپ تمام مخلوقات کے لیے رحمت بنا کر بھیجے گئے ہیں آپ کے فرمان میں سوائے خیر کے کچھ نہیں۔ یعنی جتنی خیر کی باتیں انسانوں کے لیے ضروری تھیں وہ سب کچھ آپ نے اپنے امتیوں کو بتا دیں، چاہے وہ بھلائی کی بات دینا سے تعلق رکھتی ہو یا آخرت سے۔ نبی کریمﷺ کی احادیث کی طرف جب نظر اٹھا کر دیکھا جاتا ہے تو یہ بات واضح ہو جاتی ہے کہ آپﷺ نے زندگی گزارنے کے تمام مسائل پر انسانوں کی رہبری اور رہنمائی فرمائی ہے تاکہ یہ ابن آدم نہ دنیا میں کسی مصیبت کا شکار ہو اور نہ ہی آخرت میں الغرض ہر وہ ضروری ہدایات جس کا تعلق بنی نوع کی فلاح اور بہبود سے ہے آپﷺ نے عملی طور پر بھی اور اپنے فرمان کے ذریعے بنی نوع کو آگاہی فراہم کر دی۔ پچھلی اقساط میں ہم نے کئی ایک ان احادیث کا تذکرہ کیا ہے جس کی تحقیق آج ثابت ہوئی ہیں۔ مثلاً کھانے کے بعد انگلیاں چاٹنا، کتے کے جھوٹے برتن کو دھونا، ختنہ کرنا، نظر بد کا لگ جانا وغیرہ وغیرہ۔ آج کی قسط میں ان شاء اللہ ہم اس حدیث پر تبصرہ کریں گے جس کا تعلق پینے سے ہے سیدنا انس بن مالک فرماتے ہیں:
    ‘‘کان النبی ﷺ لیتنفس فی الاناء ثلاثا، ویقول ھذا أھناء، وأمراء وأبرأء’’ (صحیح مسلم، رقم الحدیث:۲۰۲۸، مسند احمد،ج۱۹، رقم:۱۴۱۸۶)
    ‘‘نبی کریمﷺ (کسی چیز کے) پینے کے دوران تین مرتبہ سانس لیتے اور فرماتے تھے کہ اس میں آدمی زیادہ سیراب ہوتا ہے، تکلیف نہیں ہوتی اور یہ زیادہ خوشگوار بھی ہے’’۔
    نبی کریمﷺ نے خور د و نوش کے مسائل پر بھی انسانیت کو بہترین تعلیمات سے مالا مال فرمایا ہے۔ مندرجہ بالا حدیث شریف میں آپﷺ نے پانی کو سانس لے کر پینے کی تلقین فرمائی ہے۔ اس کی کئی ایک وجوہات ہیں جن میں سے ایک یہ کہ جب ہم پانی پیتے ہیں تو سانس کی نالی از خود بند ہو جاتی ہے اور جب ہوا اندر پاس نہیں ہوتی تو خون صاف نہیں ہو سکتا۔ یہی وجہ ہے کہ پانی کو تین سانس میں پیا جائے تاکہ سانس زیادہ دیر تک نہ رکے۔
    ایک ہی سانس میں پانی پینے کے نقصانات:
    اس فعل سے معدہ اور آنتیں کمزور ہو سکتی ہیں۔ آپ کا ہاضمہ بھی بگڑ سکتا ہے۔ تحمیر زیادہ ہوگی اور ریاحی تکالیف میں بھی اضافہ ہوگا۔
    اگر زیادہ مقدار میں پانی اس وقت پیا جائے جب معدہ خالی ہو تو یہ تیزی سے خون میں جذب ہو جاتا ہے اور اس طرح خون کا حجم بڑھ جائے گا ۔ اس وجہ سے جب تک زائد پانی کا اخراج نہ ہو جائے تب تک خون کا دباؤ بڑھا ہوا رہتا ہے۔
    معدے میں زیادہ مقدار میں پانی موجود ہونے سے اندرون شکم دباؤ بڑھ کر آنتوں اور دیگر اعضاء کو تکلیف میں مبتلا کرتی ہے۔
    پانی تین سانس میں پینے سے صحت برقرار رہتی ہے:
    حکیم نور محمد صاحب فرماتے ہیں:
    میں مطب میں آنے والے مریضوں کو اس مسنون طریقے سے پانی پینے کی ہدایت کرتا ہوں۔ اگر ہم پانی مسنون طریقے سے تین گھونٹ میں پیا کریں تو کوئی بیماری ہمیں پریشان نہیں کر سکتی۔ جب ہم پانی پیتے ہیں تو اس کی ٹھنڈک غذائی نالی کو تسکین دیتی ہے۔
    لہٰذا پانی سنت کے مطابق تین سانسوں میں پیا جائے اس میں دین اور دنیا دونوں کے فائدے ہیں۔

    (محمد حسین میمن )
    [FONT=lucida grande, tahoma, verdana, arial, sans-serif]https://www.facebook.com/IslamicMes...0867/611243689009501/?type=1&relevant_count=1[/FONT]​
     

    منسلک کردہ فائلیں:

  2. ‏جنوری 29، 2015 #2
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,980
    موصول شکریہ جات:
    6,509
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    بھائی آپ پوسٹ کرنے سے پہلے لفٹ سائڈ کا آئی کیون پر کلک کرے پھر اس کے اندر اپنی پوسٹ کاپی کریں اور پھر نیچے یہ لکھا ہوا آئے گا اس پر کلک کریں اور فائل کو اپلوڈ کرنے کے بعد پوری تصویر پر کلک کریں

    میں نے کل ہی اس پوسٹ کو شیئر کیا ہے

    http://forum.mohaddis.com/threads/تین-سانس-میں-پانی-پینا-اور-جدید-تحقیقات.27235/



    رچ ٹیکسٹ ایڈیٹر استعمال کریں
     
  3. ‏جنوری 29، 2015 #3
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,980
    موصول شکریہ جات:
    6,509
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    تین سانس میں پانی پینا اور جدید تحقیقات !!!


    [​IMG]
    (محمد حسین میمن )

    نبی کریم ﷺ نے کوئی ایسی خیر کی بات نہیں چھوڑی جو انسانیت کے لیے ضروی ہو اور نہ ہی کوئی ایسی بات آپ نے چھپائی ہو جس میں انسانیت کا دین اور دنیا کا نقصان ہو چاہے وہ ہلکا نقصان ہو یا پھر نقصان کے اعتبار سے شدید ہو۔ نبی کریمﷺ صرف انسانوں کے لیے نہیں بلکہ آپ تمام مخلوقات کے لیے رحمت بنا کر بھیجے گئے ہیں آپ کے فرمان میں سوائے خیر کے کچھ نہیں۔ یعنی جتنی خیر کی باتیں انسانوں کے لیے ضروری تھیں وہ سب کچھ آپ نے اپنے امتیوں کو بتا دیں، چاہے وہ بھلائی کی بات دینا سے تعلق رکھتی ہو یا آخرت سے۔ نبی کریمﷺ کی احادیث کی طرف جب نظر اٹھا کر دیکھا جاتا ہے تو یہ بات واضح ہو جاتی ہے کہ آپﷺ نے زندگی گزارنے کے تمام مسائل پر انسانوں کی رہبری اور رہنمائی فرمائی ہے تاکہ یہ ابن آدم نہ دنیا میں کسی مصیبت کا شکار ہو اور نہ ہی آخرت میں الغرض ہر وہ ضروری ہدایات جس کا تعلق بنی نوع کی فلاح اور بہبود سے ہے

    آپ ﷺ نے عملی طور پر بھی اور اپنے فرمان کے ذریعے بنی نوع کو آگاہی فراہم کر دی۔ پچھلی اقساط میں ہم نے کئی ایک ان احادیث کا تذکرہ کیا ہے جس کی تحقیق آج ثابت ہوئی ہیں۔ مثلاً کھانے کے بعد انگلیاں چاٹنا، کتے کے جھوٹے برتن کو دھونا، ختنہ کرنا، نظر بد کا لگ جانا وغیرہ وغیرہ۔ آج کی قسط میں ان شاء اللہ ہم اس حدیث پر تبصرہ کریں گے جس کا تعلق پینے سے ہے -


    سیدنا انس بن مالک رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں:

    ‘‘کان النبی ﷺ لیتنفس فی الاناء ثلاثا، ویقول ھذا أھناء، وأمراء وأبرأء’’


    (صحیح مسلم، رقم الحدیث:۲۰۲۸، مسند احمد،ج۱۹، رقم:۱۴۱۸۶)

    ‘‘نبی کریمﷺ (کسی چیز کے) پینے کے دوران تین مرتبہ سانس لیتے اور فرماتے تھے کہ اس میں آدمی زیادہ سیراب ہوتا ہے، تکلیف نہیں ہوتی اور یہ زیادہ خوشگوار بھی ہے’’۔

    نبی کریم ﷺ نے خور دو نوش کے مسائل پر بھی انسانیت کو بہترین تعلیمات سے مالا مال فرمایا ہے۔ مندرجہ بالا حدیث شریف میں آپ ﷺ نے پانی کو سانس لے کر پینے کی تلقین فرمائی ہے۔ اس کی کئی ایک وجوہات ہیں جن میں سے ایک یہ کہ جب ہم پانی پیتے ہیں تو سانس کی نالی از خود بند ہو جاتی ہے اور جب ہوا اندر پاس نہیں ہوتی تو خون صاف نہیں ہو سکتا۔ یہی وجہ ہے کہ پانی کو تین سانس میں پیا جائے تاکہ سانس زیادہ دیر تک نہ رکے۔


    ایک ہی سانس میں پانی پینے کے نقصانات:

    اس فعل سے معدہ اور آنتیں کمزور ہو سکتی ہیں۔ آپ کا ہاضمہ بھی بگڑ سکتا ہے۔ تحمیر زیادہ ہوگی اور ریاحی تکالیف میں بھی اضافہ ہوگا۔

    اگر زیادہ مقدار میں پانی اس وقت پیا جائے جب معدہ خالی ہو تو یہ تیزی سے خون میں جذب ہو جاتا ہے اور اس طرح خون کا حجم بڑھ جائے گا ۔ اس وجہ سے جب تک زائد پانی کا اخراج نہ ہو جائے تب تک خون کا دباؤ بڑھا ہوا رہتا ہے۔

    معدے میں زیادہ مقدار میں پانی موجود ہونے سے اندرون شکم دباؤ بڑھ کر آنتوں اور دیگر اعضاء کو تکلیف میں مبتلا کرتی ہے۔


    پانی تین سانس میں پینے سے صحت برقرار رہتی ہے:

    حکیم نور محمد صاحب فرماتے ہیں:

    میں مطب میں آنے والے مریضوں کو اس مسنون طریقے سے پانی پینے کی ہدایت کرتا ہوں۔ اگر ہم پانی مسنون طریقے سے تین گھونٹ میں پیا کریں تو کوئی بیماری ہمیں پریشان نہیں کر سکتی۔ جب ہم پانی پیتے ہیں تو اس کی ٹھنڈک غذائی نالی کو تسکین دیتی ہے۔


    لہٰذا پانی سنت کے مطابق تین سانسوں میں پیا جائے اس میں دین اور دنیا دونوں کے فائدے ہیں۔
     
  4. ‏جنوری 29، 2015 #4
    عبدالرحیم رحمانی

    عبدالرحیم رحمانی سینئر رکن
    جگہ:
    کرلا، ممبئی
    شمولیت:
    ‏جنوری 22، 2012
    پیغامات:
    1,089
    موصول شکریہ جات:
    1,048
    تمغے کے پوائنٹ:
    234

    جزاکم اللہ خیرا
     
  5. ‏جنوری 29، 2015 #5
    محمد ڈیفینڈر

    محمد ڈیفینڈر رکن
    شمولیت:
    ‏مئی 23، 2012
    پیغامات:
    83
    موصول شکریہ جات:
    79
    تمغے کے پوائنٹ:
    63

  6. ‏جنوری 29، 2015 #6
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,980
    موصول شکریہ جات:
    6,509
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    بھائی میں کوئی شیخ نہیں بلکہ دین کا عدنہ سا طالب علم ہو محمد حیسن میمن بھائی کو میرا سلام کہنا کہ گلشن معمار والے محمد عامر یونس نے آپ کو سلام کہا ہے -
     
  7. ‏جنوری 29، 2015 #7
    محمد ڈیفینڈر

    محمد ڈیفینڈر رکن
    شمولیت:
    ‏مئی 23، 2012
    پیغامات:
    83
    موصول شکریہ جات:
    79
    تمغے کے پوائنٹ:
    63

    جی ضرور کیوں نہیں۔

    اچھا بھائی یہ بتائیں کہ جیسے یہ آپنے اپنے ہر کمنٹ کے ساتھ قرآن کی آیت سورہ نساء کا تر جمعہ لگایا ہوا ہے۔یہ کیسے لگائی؟
     
  8. ‏جنوری 29، 2015 #8
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,980
    موصول شکریہ جات:
    6,509
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069


    جہاں پر آپ کا نام لکھا ہوا ہے اس میں دستخط پر کلک کرے اور جو بھی لکھنا ہے لکھیں

    http://forum.mohaddis.com/account/signature
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں