1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔۔
  2. محدث ٹیم منہج سلف پر لکھی گئی کتبِ فتاویٰ کو یونیکوڈائز کروانے کا خیال رکھتی ہے، اور الحمدللہ اس پر کام شروع بھی کرایا جا چکا ہے۔ اور پھر ان تمام کتب فتاویٰ کو محدث فتویٰ سائٹ پہ اپلوڈ بھی کردیا جائے گا۔ اس صدقہ جاریہ میں محدث ٹیم کے ساتھ تعاون کیجیے! ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔ ۔

تین مساجد کے علاوہ ثواب کی نیت سے سفر کرنا :

'عمرہ اور حج' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد عامر یونس, ‏ستمبر 05، 2015۔

  1. ‏ستمبر 05، 2015 #1
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,668
    موصول شکریہ جات:
    6,462
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,055

    تین مساجد کے علاوہ ثواب کی نیت سے سفر کرنا :


    11951297_1646804258895754_5313746408041132417_n.png
     
  2. ‏ستمبر 05، 2015 #2
    جوش

    جوش مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏جون 17، 2014
    پیغامات:
    617
    موصول شکریہ جات:
    307
    تمغے کے پوائنٹ:
    116

    تبرک حاصل کرنا ۔اور۔ ثواب حاصل کرنا دونوں میں بڑا فرق ہے اسلئے مذکورہ حدیث میں ۔۔ثواب حاصل کرنے کی نیت سے۔۔ ترجمہ کرنا صحیح ہے لیکن۔۔ تبرک کیلئے ۔ ترجمہ کرنا صحیح نہیں ۔ حدیث میں ثواب کا ذکر ہے نہ کہ تبرک کا کہ حرم مکی میں ایک نماز کا ثواب دیگر مساجد میں ایک لاکھ نمازکا ثواب ہے۔فافھم جیدا ۔وجزاک اللہ خیر الجزاء
     
  3. ‏ستمبر 06، 2015 #3
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    4,593
    موصول شکریہ جات:
    2,001
    تمغے کے پوائنٹ:
    650

    فتاویٰ جات: تحقیق حدیث
    فتویٰ نمبر : 12595
    [​IMG]
    تین مساجد کی طرف رخت سفر نہ باندھنے والی حدیث کی تحقیق

    السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
    حضرت ابوہریرہ ؓ کے متعلق کتب احادیث میں آیا ہے کہ انہوں نے کوطورپر سفر کیا تھا ان کا سفر اس حدیث کے خلاف نہیں ہے جس میں رسول اللہﷺ نے فرمایا کہ ‘‘تین مساجد کے علاوہ کسی دوسری مسجد کی طرف رخت سفر نہ باندھا جائے۔’’ نیز کچھ لوگ زیارت طور سے زیارت مزارات کا سفرثابت کرتے ہیں؟

    الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال
    وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!
    حدیث میں بیا ن ہے کہ مسجد حرام، مسجد نبوی اور بیت المقدس کے علاوہ تقرب الی اللہ اور حصول ثواب کی نیت سے کسی دوسری جگہ سفر کرکے جانا جائز نہیں ہے۔ (صحیح بخاری ،فضل الصلوٰۃ:۱۱۸۹)

    جب ان تین مسجدوں کے علاوہ کسی اور مسجد کی طرف سفر کرنا جائز نہیں ،تو مزارات اور صالحین کے آثار کی زیارت کےلئے سفر کیونکہ جائز ہوسکتا ہے؟ ائمہ اربعہ اور دیگر فقہا کے نزدیک تو مسجد قبا کی زیارت کے لئے دور دراز سے سفر کرکے جانا بھی جائزنہیں ہے۔ہاں مدینہ منورہ سے مسجد قبا کی طرف ارادہ کرکے جانا اور وہاں نماز پڑھنا مستحب ہے،جیسا کہ حدیث میں بیان ہے کہ ‘‘رسول اللہﷺ ہر ہفتہ کے دن پیدل یا سوا رہوکر مسجد قبا تشریف لے جاتے اور وہاں نماز ادا کرتے تھے۔’’ (صحیح بخاری،فضل الصلوٰۃ :۱۱۹۳)

    رسول اللہﷺ کی اس سنت پر عمل کرنےکے لئے حضرت عبدا للہ بن عمرؓ بھی مسجد قبا جایا کرتے تھے۔(صحیح بخاری ،فضل الصلوۃ:۱۱۹۴)

    مذکورہ حدیث سے یہ نہ سمجھا جائے کہ سفر کےمتعلق امتناعی حکم صرف مساجد سے متعلق ہے ،مزار یا بزرگوں کے آثار اس کے حکم کے تحت نہیں آتے،کیونکہ نزول شریعت کے چشم دید گواہ حضرات صحابہ کرامؓ نے اس امتناعی حکم کو مساجد اور غیر مساجد کےلئے عام رکھا ہے، جیسا کہ درج ذیل احادیث سے واضح ہوتا ہے۔

    ٭حضرت ابو بصرہ غفاریؓ بیان کرتے ہیں کہ حضرت ابو ہریرہ ؓ جب کوہ طور سے واپس آئے تو وہ ان سےملے اور انہوں نے دریافت کیا کہ آپ کہاں سے آئے ہیں؟حضرت ابوہریرہ ؓ نے بتایا کہ کوہ طور پر گیا تھا وہاں نماز پڑھ کر واپس آیا ہوں،حضرت ابو بصرہؓ نے کہا اگر مجھے آپ کے وہاں جانے کا پہلے علم ہوجاتا تو آپ وہاں نہ جاتے ،کیونکہ میں نے رسول اللہﷺ سے یہ فرماتے ہوئے سنا ہے کہ تین مساجد کے علاوہ کسی دوسری مسجد کی طرف رخت سفر نہیں باندھنا چاہیے وہ یہ ہیں مسجد حرام،مسجد نبوی اورمسجد اقصیٰ (مسند امام احمد،ص:۷ج۶)

    سوال میں حضرت ابو ہریرہؓ کے متعلق کوہ طور پر جانے کا تذکرہ نامکمل ہے، اس حدیث کی روشنی میں اسے دیکھا جائے،یہ حدیث سننے کے بعد حضرت ابوہریرہؓ اسے بیان کیا کرتے تھے،جیسا کہ بخاری کے حوالہ سے پہلے ذکر ہوچکا ہے۔

    ٭شہر بن حوشب کہتے ہیں کہ ہم چند لوگ کوہ طور پر جانے کا ارادہ کئے ہوئے تھے، اس دوران ہماری حضرت ابوسعید ؓ سے ملاقات ہوئی اور ہم نے آ پ نے اپنے ارادہ کا اظہار کیاتو آ پ نے ہمارے سامنے رسول اللہﷺ کی ایک حدیث بایں الفاظ بیان فرمائی:‘‘ تین مساجد کے علاوہ کسی طرف(تقرب الہٰی کی نیت سے)سواری کو استعمال نہیں کرنا چاہیے ، ان میں سے ایک مسجدحرام ،دوسری مسجد مدینہ اور تیسری مسجد اقصیٰ ہے’’ (مسند امام احمد،ص۹۳،ج ۳)

    ٭حضرت قزعہ ؒ کہتے ہیں کہ میں نے حضرت عبداللہ سے فرمایاکہ میں جبل طور پر جانا چاہتا ہوں،آپ نے رسول اللہﷺ کے فرمان کا ذکر کیا کہ مسجد حرام،مسجد نبوی اور مسجد اقصیٰ کے علاوہ کسی جگہ کا (تقرب الہٰی کی نیت)سے قصداًسفر کرنا منع ہے،لہٰذا تم جبل طور پر جانے کا ارادہ ترک کردو۔(مجمع الزوائد ،ص:۴،ج ۴)

    ان احادیث سے معلوم ہوا کہ تین مساجد کے علاوہ کسی اور جگہ عبادت یا زیارت کی نیت سے جانا منع ہے،لہٰذ ا اس حکم امتناعی کو صرف مسجد سے خاص کرنا صحیح نہیں ،کیونکہ مذکورہ صحابہ کرام ؓ سے اس حدیث سے استدلال کرتے ہوئے کوہ طور پر قصداً عبادت یا زیارت کی نیت سے سفر کرنا منع ہے اور جبل طور پر مسجد نہیں بلکہ ایک مقدس مقام ہے جس پر کھڑے ہوکر حضرت موسیٰ ؑ نے رب کائنات سے گفتگو کی تھی،اس بنا پر حضرت ابوہریرہ ؓ کے کوہ طور کے سفر سےزیارت مزارات کا استدلال محل نظر ہے۔

    ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب
    فتاویٰ اصحاب الحدیث
    ج2ص495

    محدث فتویٰ
     
    • پسند پسند x 1
    • علمی علمی x 1
    • مفید مفید x 1
    • لسٹ
  4. ‏فروری 10، 2017 #4
    عمر اثری

    عمر اثری سینئر رکن
    جگہ:
    نئی دھلی، انڈیا
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 29، 2015
    پیغامات:
    3,729
    موصول شکریہ جات:
    981
    تمغے کے پوائنٹ:
    323

    CTD101201791753.jpg
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں