1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

حدیث ( من کنت مولاہ فعلی مولاہ ) کا درجہ اورمعنی

'موضوع ومنکر روایات' میں موضوعات آغاز کردہ از حرب بن شداد, ‏اگست 31، 2012۔

  1. ‏اگست 31، 2012 #1
    حرب بن شداد

    حرب بن شداد سینئر رکن
    جگہ:
    اُم القرٰی
    شمولیت:
    ‏مئی 13، 2012
    پیغامات:
    2,149
    موصول شکریہ جات:
    6,249
    تمغے کے پوائنٹ:
    437

    حدیث ( من کنت مولاہ فعلی مولاہ ) کا درجہ اورمعنی
    یہ حدیث ترمذي حدیث نمبر ( 3713 ) ابن ماجہ حدیث نمبر ( 121 ) نے روایت کی ہے اوراس کے صحیح ہونے میں اختلاف ہے ، زیلعی رحمہ اللہ تعالی نے ھدایہ کی تخریج ( 1 / 189 ) میں کہا ہے کہ :

    کتنی ہی ایسی روایات ہیں جن کے راویوں کی کثرت اورمتعدد طرق سے بیان کی جاتیں ہیں ، حالانکہ وہ حدیث ضعیف ہوتی ہے ۔ جیسا کہ حدیث ( جس کا میں ولی ہوں علی ( رضی اللہ تعالی عنہ ) بھی اس کے ولی ہیں ) بھی ہے ۔

    شیخ الاسلام ابن تیمیہ رحمہ اللہ تعالی فرماتے ہیں :

    یہ قول ( جس کا میں ولی ہوں علی ( رضي اللہ تعالی عنہ ) بھی اس کے ولی ہیں ) یہ صحیح کتابوں میں تونہیں لیکن علماء نے اسے بیان کیا اوراس کی تصحیح میں اختلاف کیا ہے ۔

    امام بخاری اور ابراھیم حربی محدثین کے ایک گروہ سے یہ منقول ہے کہ انہوں نے اس قول میں طعن کیا ہے ۔۔۔ لیکن اس کے بعد والا قول ( اللھم وال من والاہ وعاد من عاداہ ) آخرتک ، تویہ بلاشبہ کذب افتراء ہے ۔

    دیکھیں منھاج السنۃ ( 7 / 319 ) ۔

    امام ذھبی رحمہ اللہ تعالی اس حدیث کے بارہ میں کہتے ہیں :

    حديث ( من کنت مولاہ ) کے کئ طریق جید ہیں ، اورعلامہ البانی رحمہ اللہ تعالی نے السلسلۃ الصحیحۃ حدیث نمبر ( 1750 ) میں اس کی تصحیح کرنے کے بعد اس حدیث کو ضعیف کہنے والوں کا مناقشہ کیا ہے ۔

    اوراگر یہ جملہ ( من کنت مولاہ فعلی مولاہ ) صحیح بھی مان لیا جاۓ اور اس کے صحیح ہونے سے کسی بھی حال میں یہ حدیث میں ان کلمات کی زیادتی کی دلیل نہیں بن سکتی جس کا غالیوں نے حدیث میں اضافہ کیا ہے تاکہ وہ علی رضی اللہ تعالی عنہ کوباقی سب صحابہ سے افضل قرار دے سکیں ، یاپھرباقی صحابہ پرطعن کرسکیں کہ انہوں نے ان کا حق سلب کیا تھا ۔

    شیخ الاسلام نے ان زيادات اوران کے ضعیف ہونےکا ذکر منھاج السنۃ میں دس مقامات پر کیا ہے ۔

    اس حديث کے معنی میں بھی اختلاف کیا گیا ہے ، توجوبھی معنی ہو وہ احاديث صحیحہ میں جویہ ثابت اورمعروف ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد امت میں افضل ترین شخصیت ابوبکررضي اللہ تعالی عنہ ہیں اور خلافت کے بھی وہی زيادہ حق دارتھے ان کے بعد عمربن الخطاب اورپھرعثمان بن عفان اوران کےبعد علی بن ابی طالب رضی اللہ تعالی عنھم سے تعارض نہیں رکھتا ، اس لیے کہ کسی ایک صحابی کی کسی چیزمیں معین فضیلت اس پردلالت نہی کرتی کہ وہ سب صحابہ سے افضل ہیں ، اورنہ ہی ابوبکر رضی اللہ تعالی عنہ کا صحابہ کرام میں سب سے افضل ہونا اس کے منافی ہے جیسا کہ عقائد کے باب میں یہ مقرر شدہ بات ہے ۔

    اس حدیث کے جومعانی ذکرکیے گۓ ہیں ان میں کچھ کا ذکر کیا جاتا ہے :

    ان کے معنی میں یہ کہا گيا ہے کہ :

    یہاں پرمولا ولی جوکہ عدو کی ضدہے کے معنی میں ہے تومعنی یہ ہوگا ، جس سے میں محبت کرتا ہوں علی رضی اللہ تعالی عنہ بھی اس سے محبت کرتے ہیں ، اور یہ بھی معنی کیا گيا ہے کہ : جومجھ سے محبت کرتا ہے علی رضی اللہ تعالی عنہ اس سے محبت کرتے ہيں ،یہ معنی قاری نے بعض علماء سےذکرکیا ہے ۔

    اورامام جزری رحمہ اللہ تعالی نے نھایہ میں کہا ہے کہ :

    حدیث میں مولی کا ذکر کئ ایک بار ہوا ہے ، یہ ایک ایسا اسم ہے جو بہت سے معانی پرواقع ہوتا ہے ، اس کے معانی میں : الرب ، المالک ، السید ، المنعم ( نتمتیں کرنے والا ) ، المعتق آزاد کرنےوالا ) ، الناصر ( مددکرنے والا) ، المحب ( محبت کرنےوالا ) ، التابع ( پیروی کرنے والا) ، الجار( پڑوسی ) ، ابن العم ( چچا کا بیٹا ) ، حلیف ، العقید( فوجی افسر ) ، الصھر ( داماد) العبد ( غلام ) ، العتق ( آزاد کیا گیا ) ، المنعم علیہ ( جس پرنعمتیں کی جائيں ) ۔

    ان معانی میں سے اکثرتوحدیث میں وارد ہیں جن کا اضافت کے اعتبارسے معنی کیا جاتا ہے ، توجس نے بھی کوئ کام کیا یا وہ کام اس کے سپرد ہوا تو اس کا مولا اورولی ہے ، اورحدیث مذکورہ کوان مذکورہ اسماء میں سے اکثر پر محمول کیا جا سکتا ہے ۔

    امام شافی رحمہ اللہ تعالی کہتے ہیں کہ اس سے اسلام کی ولاء مراد ہے جیسا کہ اللہ تعالی کے اس فرمان میں ہے :

    { یہ اس لیے کہ اللہ تعالی مومنوں کا مولی ومددگار ہے اور کافروں کا کوئ بھی مولی ومددگارنہیں } ۔

    اورطیبی رحمہ اللہ تعالی کہتے ہیں :

    حدیث میں مذکور ولایہ کواس امامت پرمحمول کرنا صحیح نہیں جو مسلمانوں کے امورمیں تصرف ہے کیونکہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی حیات مبارکہ میں مستقل طورپرتصرف کرنے والے تونبی صلی اللہ علیہ وسلم ہی ہیں ان کے علاوہ کوئ اورنہیں تواس لیے اسے محبت اورولاء اسلام اوراس جیے معانی پرمحمول کرنا ضروری ہے ۔

    دیکھیں تحفۃ الاحوذی لشرح الترمذي حديث نمبر ( 3713 ) اس کی عبارت میں کچھ تصرف کر کے پیش کیا گیا ہے ۔

    واللہ تعالی اعلم .

    وسلام۔۔۔‌
     
    • شکریہ شکریہ x 9
    • ناپسند ناپسند x 1
    • لسٹ
  2. ‏جنوری 03، 2013 #2
    بہرام

    بہرام مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏اگست 09، 2011
    پیغامات:
    1,173
    موصول شکریہ جات:
    434
    تمغے کے پوائنٹ:
    132

    بلاعنوان
    رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا كنتُ مولاه فعليٌّ مولاه اللهمَّ والِ مَن والاه وعادِ مَن عاداه
    رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا "جس کا میں مولا اس کے علی مولا اے اللہ! جو اسے دوست رکھے اُسے تو دوست رکھ (اور) جو اس سے عداوت رکھے اُس سے تو عداوت رکھ۔‘‘
    یہ حدیث کئی طروق سے روایت کی گئی ہے اور حد تواتر کو پہنچ گئی ہے
    چند صحیح احادیث آپ کی خدمت میں پیش کرنے کی سعادت حاصل کرتا ہوں
    قال فمَن كنتُ مولاه فعليٌّ مولاه اللهمَّ والِ مَن والاه وعادِ مَن عاداه
    الراوي: علي بن أبي طالب و اثنا عشر بدريا المحدث: الهيثمي - المصدر: مجمع الزوائد - الصفحة أو الرقم: 9/108
    خلاصة حكم المحدث: رجاله وثقوا

    علي بن أبي بكر بن سليمان، نور الدين الهيثمي الشافعي اس حدیث کے بارے میں فرماتے ہیں کہ اس حدیث کے رجال ثقہ ہیں
    كنتُ مولاه ُفعليٌّ مولاهُ اللهمَّ والِ من والاُه وعادِ مَن عادَاهُ
    الراوي: عبدالرحمن بن أبي ليلى المحدث: أحمد شاكر - المصدر: مسند أحمد - الصفحة أو الرقم: 2/199
    خلاصة حكم المحدث: إسناده صحيح

    أحمد بن محمد شاكر بن أحمد، أبو الأشبال اس حدیث کی اسناد کو صحیح بتاتے ہیں
    من كنتُ مولاهُ فعليٌّ مولاه
    الراوي: بريدة بن الحصيب الأسلمي المحدث: الألباني - المصدر: السلسلة الصحيحة - الصفحة أو الرقم: 4/336
    خلاصة حكم المحدث: إسناده صحيح على شرط الشيخين أو مسلم
    

    البانی اس حدیث کی اسناد کو شیخین کی شرط پر صحیح کہتے ہیں
    من كنت مولاه ، فعلي مولاه ، اللهم وال من والاه ، وعاد من عاداه
    الراوي: زيد بن أرقم و سعد بن أبي وقاص و بريدة بن الحصيب و علي بن أبي طالب و أبو أيوب الأنصاري و البراء بن عازب و ابن عباس و أنس بن مالك و أبو سعيد الخدري و أبو هريرة المحدث: الألباني - المصدر: السلسلة الصحيحة - الصفحة أو الرقم: 1750
    خلاصة حكم المحدث: صحيح

    البانی اس حدیث کو جو کئی صحابہ سے روایت کی گئی صحیح بتاتے ہیں
    من كنت مولاه فعلي مولاه وسمعته يقول أنت مني بمنزلة هارون من موسى إلا أنه لا نبي بعدي وسمعته يقول لأعطين الراية اليوم رجلا يحب الله ورسوله
    الراوي: سعد بن أبي وقاص المحدث: الألباني - المصدر: صحيح ابن ماجه - الصفحة أو الرقم: 98
    خلاصة حكم المحدث: صحيح

    البانی نے اسے صحيح ابن ماجه بیان کیا اور کہا یہ حدیث صحیح ہے
    من كنتُ مولاهُ فعليٌّ مولاهُ
    الراوي: عبدالله بن عباس المحدث: الألباني - المصدر: السلسلة الصحيحة - الصفحة أو الرقم: 4/336
    خلاصة حكم المحدث: إسناده صحيح على شرط الشيخين

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    من كنتُ مولاهُ فعليٌّ مولاهُ .
    الراوي: أبو سريحة أو زيد بن أرقم المحدث: الألباني - المصدر: صحيح الترمذي - الصفحة أو الرقم: 3713
    خلاصة حكم المحدث: صحيح

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    من كنت مولاه ، فعلي مولاه
    الراوي: البراء بن عازب و بريدة الأسلمي و زيد بن أرقم المحدث: الألباني - المصدر: صحيح الجامع - الصفحة أو الرقم: 6523
    خلاصة حكم المحدث: صحيح

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    من كنتُ مولاه ؛ فعليٌّ مولاه .
    الراوي: زيد بن أرقم المحدث: الألباني - المصدر: تخريج مشكاة المصابيح - الصفحة أو الرقم: 6037
    خلاصة حكم المحدث: إسناده صحيح

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    من كنتُ مولاهُ فعليٌّ مولاهُ
    الراوي: أبو سريحة أو زيد بن أرقم المحدث: الألباني - المصدر: السلسلة الصحيحة - الصفحة أو الرقم: 4/331
    خلاصة حكم المحدث: إسناده صحيح على شرط الشيخين

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    علي بن أبي طالب مولى من كنت مولاه
    الراوي: عبدالله بن عباس المحدث: الألباني - المصدر: صحيح الجامع - الصفحة أو الرقم: 4089
    خلاصة حكم المحدث: صحيح

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    منْ كنتُ مولاه فعليٌّ مولاه قال : فزاد الناسُ بعدُ والِ مَنْ والاه وعادِ مَنْ عاداه
    الراوي: علي بن أبي طالب المحدث: أحمد شاكر - المصدر: مسند أحمد - الصفحة أو الرقم: 2/328
    خلاصة حكم المحدث: إسناده صحيح

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    وقال مَن كنتُ مولاهُ فإنَّ مولاهُ عليٌّ
    الراوي: عمرو بن ميمون المحدث: أحمد شاكر - المصدر: مسند أحمد - الصفحة أو الرقم: 5/25
    خلاصة حكم المحدث: إسناده صحيح

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    من كنت مولاه فعلي مولاه
    الراوي: خمسة أو ستة من الصحابة المحدث: الهيثمي - المصدر: مجمع الزوائد - الصفحة أو الرقم: 9/108
    خلاصة حكم المحدث: رجاله رجال الصحيح‏‏

    http://www.dorar.net/enc/hadith?skeys=%D9%85%D9%8E%D9%86%20%D9%83%D9%86%D8%AA%D9%8F%20%D9%85%D9%88%D9%84%D8%A7%D9%87%20%D9%81%D8%B9%D9%84%D9%90%D9%8A%D9%8C%D9%91%20%D9%85%D9%88%D9%84%D8%A7%D9%87&s[]=13380&xclude
    ذاتی مشاہدہ
    بغض آل محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی انتہا ناصبیت اور ناصبیت کی انتہا انکار حدیث ​
     
  3. ‏جنوری 03، 2013 #3
    اعتصام

    اعتصام مشہور رکن
    جگہ:
    sukkur sindh
    شمولیت:
    ‏فروری 09، 2012
    پیغامات:
    483
    موصول شکریہ جات:
    678
    تمغے کے پوائنٹ:
    130

    چھوٹے بھائی ہوگئی جیب گرم۔۔۔! ابتسمامہ

    جزاک اللہ خیرا بہرام بھائو
     
  4. ‏جنوری 03، 2013 #4
    حرب بن شداد

    حرب بن شداد سینئر رکن
    جگہ:
    اُم القرٰی
    شمولیت:
    ‏مئی 13، 2012
    پیغامات:
    2,149
    موصول شکریہ جات:
    6,249
    تمغے کے پوائنٹ:
    437

    من الحديث أعني قوله (من كنت مولاه فعلي مولاه) صحيح بطرقه، وله سبب، أما بقية الحديث فمن الكذب لضعف إسناده ولنكارة متنه
    أما ضعف إسناده فقد قال العلامة شعيب الأرنؤوط عنه: هذا إسناد ضعيف لجهالة الوليد بن عقبة ، وسماك بن عبيد (زوائد عبد الله على مسند الإمام أحمد بتحقيق العلامة شعيب الأرنؤوط)، وراجع إن شئت تحقيقها للعلامة الألباني في (السلسلة الضعيفة والموضوعة:ج10ص678ر4961)
     
  5. ‏جنوری 04، 2013 #5
    بہرام

    بہرام مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏اگست 09، 2011
    پیغامات:
    1,173
    موصول شکریہ جات:
    434
    تمغے کے پوائنٹ:
    132

    بعث رسولُ اللهِ صلَّى اللهُ عليهِ وسلَّمَ جيشًا واستعمل عليهم عليَّ بنِ أبي طالبٍ فمضى في السَّرِيَّةِ فأصاب جاريةً فأنكروا عليه وتعاقدوا أربعةٌ من أصحابِ رسولِ اللهِ صلَّى اللهُ عليهِ وسلمَ فقالوا إنْ لقِيَنا رسولُ اللهِ صلَّى اللهُ عليهِ وسلَّمَ أخبرْناه بما صنع عليٌّ وكان المسلمون إذا رجعوا من سفرٍ بدؤُوا برسولِ اللهِ صلَّى اللهُ عليهِ وسلَّمَ فسلَّمُوا عليه ثم انصرفوا إلى رِحالِهم فلما قدِمَتِ السَّرِيَّةُ سلَّموا على النبيِّ صلَّى اللهُ عليهِ وسلَّمَ فقام أحدُ الأربعةِ فقال يا رسولَ اللهِ ألم ترَ إلى عليِّ بنِ أبي طالبٍ صنع كذا وكذا فأعْرضَ عنه رسولُ اللهِ صلَّى اللهُ عليهِ وسلَّمَ ثم قام الثَّاني فقال مثلَ مقالتِه فأعرضَ عنه ثم قام إليه الثالثُ فقال مثل مقالتِه فأعرضَ عنه ثم قام الرابعُ فقال مثلَ ما قالوا فأقبل إليه رسولُ اللهِ صلَّى اللهُ عليهِ وسلَّمَ والغضبُ يعرفُ في وجهه فقال ما تريدون من عليٍّ إنَّ عليًّا مني وأنا منه وهو وليُّ كلِّ مؤمنٍ بعدي
    الراوي: عمران بن الحصين المحدث: الألباني - المصدر: السلسلة الصحيحة - الصفحة أو الرقم: 5/261
    خلاصة حكم المحدث: [صحيح على شرط مسلم]
     
  6. ‏جنوری 04، 2013 #6
    بہرام

    بہرام مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏اگست 09، 2011
    پیغامات:
    1,173
    موصول شکریہ جات:
    434
    تمغے کے پوائنٹ:
    132

    أنه مرَّ على مجلسٍ وهم يتناولون من عليٍّ فوقف عليهم فقال إنه قد كان في نفسي على عليٍّ شيءٌ وكان خالدُ بنُ الوليدِ كذلك فبعثَني رسولُ اللهِ صلَّى اللهُ عليهِ وسلَّمَ في سرِيَّةٍ عليها عليٌّ وأصبْنا سبيًا قال فأخذ عليٌّ جاريةً من الخُمسِ لنفسِه فقال خالدُ بنُ الوليدِ دونَك قال فلما قدِمْنا على النبيِّ صلَّى اللهُ عليهِ وسلَّمَ جعلتُ أُحدِّثُه بما كان ثمَّ قلتُ إنَّ عليًّا أخذ جاريةً من الخُمُسِ قال وكنتُ رجلًا مِكبابًا قال فرفعتُ رأسي فإذا وجهُ رسولِ اللهِ صلَّى اللهُ عليهِ وسلَّمَ تغيَّر فقال من كنتُ مولاهُ فعليٌّ مولاه
    الراوي: بريدة بن الحصيب الأسلمي المحدث: الألباني - المصدر: السلسلة الصحيحة - الصفحة أو الرقم: 4/336
    خلاصة حكم المحدث: إسناده صحيح على شرط الشيخين أو مسلم
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    من كنت مولاه ، فعلي مولاه ، اللهم وال من والاه ، وعاد من عاداه
    الراوي: زيد بن أرقم و سعد بن أبي وقاص و بريدة بن الحصيب و علي بن أبي طالب و أبو أيوب الأنصاري و البراء بن عازب و ابن عباس و أنس بن مالك و أبو سعيد الخدري و أبو هريرة المحدث: الألباني - المصدر: السلسلة الصحيحة - الصفحة أو الرقم: 1750
    خلاصة حكم المحدث: صحيح

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    جاء رهطٌ إلى عليٍّ بالرَّحْبةِ ، فقالوا : السلامُ عليكَ يا مولانا ، قال : كيف أكون مولاكم ، وأنتم قومٌ عُرْبٌ ؟ قالوا : سمِعْنا رسولَ اللهِ صلَّى اللهُ عليهِ وسلَّمَ يومَ غديرِ خُمَّ يقول : من كنتُ مولاهُ فعليٌّ مولاه قال رباحٌ : فلما مضَوا تبعتُهم فسألتُ : مَن هؤلاءِ ؟ قالوا : نفرٌ من الأنصارِ فيهم أبو أيوبٍ الأنصاريُّ
    الراوي: نفر من الأنصار و أبو أيوب الأنصاري المحدث: الألباني - المصدر: السلسلة الصحيحة - الصفحة أو الرقم: 4/340
    خلاصة حكم المحدث: إسناده جيد رجاله ثقات

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    نشد علي الناس في الرحبة من سمع رسول الله صلى الله عليه وسلم يقول يوم غدير خم إلا قام فقام من قبل سعيد ستة ومن قبل زيد ستة فشهدوا أنهم سمعوا رسول الله صلى الله عليه وسلم يقول لعلي رضي الله عنه يوم غدير خم أليس الله أولى بالمؤمنين قالوا بلى قال اللهم من كنت مولاه فعلي مولاه . .
    الراوي: علي بن أبي طالب و اثنا عشر رجلا المحدث: الألباني - المصدر: السلسلة الصحيحة - الصفحة أو الرقم: 4/338
    خلاصة حكم المحدث: إسناده حسن

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    خرجتُ مع عليٍّ رضيَ اللهُ عنهُ إلى اليمنِ فرأيتُ منه جَفوةً ، فقدِمتُ على النبيِّ صلَّى اللهُ عليهِ وسلَّمَ ، فذكرتُ عليًّا ، فتنقَّصتُه ، فجعل رسولُ اللهِ صلَّى اللهُ عليهِ وسلَّمَ يتغيَّرُ وجهُه ، فقال : يا بُريدةُ ! ألستُ أولى بالمؤمنين من أنفسِهم ؟ قلتُ : بلى يا رسولَ اللهِ ، قال : من كنتُ مولاهُ فعليٌّ مولاهُ
    الراوي: عبدالله بن عباس المحدث: الألباني - المصدر: السلسلة الصحيحة - الصفحة أو الرقم: 4/336
    خلاصة حكم المحدث: إسناده صحيح على شرط الشيخين
    

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    جمع عليٌّ رضيَ اللهُ عنهُ النَّاسَ يومَ الرَّحبةِ ثم قال لهم : أنشُدُ اللهَ كلَّ امرئٍ مسلم سمع رسولَ اللهِ صلَّى اللهُ عليهِ وسلَّمَ يقول يومَ غديرِ خُمَّ ما سمع لما قام ، فقام ثلاثون من الناسِ ، أتعلمون أني أَوْلى بالمؤمنين من أنفسِهم ؟ قالوا : نعم يا رسولَ اللهِ ، قال : من كنتُ مولاهُ ، فهذا مولاه ، اللهمَّ والِ مَن والاهُ ، وعادِ مَن عاداهُ . قال : فخرجتُ وكأنَّ في نفسي شيئًا ، فلقِيتُ زيدَ بنَ أرقمِ ، فقلتُ له : إني سمعتُ عليًّا يقول كذا وكذا ، قال : فما تُنكرُ ، قد سمعتُ رسولَ اللهِ صلَّى اللهُ عليهِ وسلَّمَ يقولُ ذلك له
    الراوي: علي بن أبي طالب و زيد بن أرقم و ثلاثون من الناس المحدث: الألباني - المصدر: السلسلة الصحيحة - الصفحة أو الرقم: 4/331
    خلاصة حكم المحدث: إسناده صحيح على شرط البخاري

    کہاں یہ دعویٰ کہ خبر واحد حجت ہے اور کہاں متواتر صحیح احادیث کا انکار، کیا صرف اس وجہ سے کہ یہ احادیث مولا علی علیہ السلام کی شان بیان کررہی ہیں ؟؟؟؟
     
  7. ‏جنوری 04، 2013 #7
    حرب بن شداد

    حرب بن شداد سینئر رکن
    جگہ:
    اُم القرٰی
    شمولیت:
    ‏مئی 13، 2012
    پیغامات:
    2,149
    موصول شکریہ جات:
    6,249
    تمغے کے پوائنٹ:
    437

    ابتسامۃ
     
  8. ‏جنوری 04، 2013 #8
    اعتصام

    اعتصام مشہور رکن
    جگہ:
    sukkur sindh
    شمولیت:
    ‏فروری 09، 2012
    پیغامات:
    483
    موصول شکریہ جات:
    678
    تمغے کے پوائنٹ:
    130

    دعا ایک مستقل امر ہے تو لازم نہیں کہ مولا کی معنی بھی دوست ہو۔۔۔
    ورنہ
    ورنہ
    اسکا کیا کرینگے آپ؟ وهو وليُّ كلِّ مؤمنٍ بعدي

    فأقبل إليه رسولُ اللهِ صلَّى اللهُ عليهِ وسلَّمَ والغضبُ يعرفُ في وجهه فقال ما تريدون من عليٍّ إنَّ عليًّا مني وأنا منه وهو وليُّ كلِّ مؤمنٍ بعدي
    الراوي: عمران بن الحصين المحدث: الألباني - المصدر: السلسلة الصحيحة - الصفحة أو الرقم: 5/261
    خلاصة حكم المحدث: [صحيح على شرط مسلم]

     
  9. ‏جنوری 04، 2013 #9
    بہرام

    بہرام مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏اگست 09، 2011
    پیغامات:
    1,173
    موصول شکریہ جات:
    434
    تمغے کے پوائنٹ:
    132

    أتعلمون أني أَوْلى بالمؤمنين من أنفسِهم ؟ قالوا : نعم يا رسولَ اللهِ ، قال : من كنتُ مولاهُ ، فهذا مولاه
    یہاں مولا کے معنی دوست کے نہیں بلکہ آقا کے ہیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے من كنتُ مولاهُ ، فهذا مولاه فرمانے سے پہلے تمام صحابہ سے پوچھا کہ أتعلمون أني أَوْلى بالمؤمنين من أنفسِهم ؟ ( کیا میں تمام مومنین کا ان کی جان سے ذیادہ مالک نہیں ہوں ) اس پر صحابہ نے عرض کیا قالوا : نعم يا رسولَ اللهِ( کیوں نہیں یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم )پھر اس کے بعد آپ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ارشاد فرمایا کہ جس کا میں مولا یعنی آقا اس کے یہ مولا یعنی آقا
    اللہ اعلم و رسولہ اعلم
    والسلام
     
  10. ‏جنوری 04، 2013 #10
    بہرام

    بہرام مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏اگست 09، 2011
    پیغامات:
    1,173
    موصول شکریہ جات:
    434
    تمغے کے پوائنٹ:
    132

    آپ نے غور نہیں کیا کہ آپ نے اس حدیث صحیح کو کس سیکشن میں پوسٹ کیا ہے جب کے اس حدیث کے بارے میں سنی محدیثین کہتے ہیں کہ اس کی اسناد بخاری اور مسلم کی شرط پر صحیح ہیں
    اس حدیث کو منکر و موضوع کے سیکشن میں بیان کرنے کی وجہ میں بیان نہیں کروں گا کہ پھر آپ یہ کہو گے کہ میں آپ کو علی علیہ السلام سے بغض رکھنے والا اور ناصبی اور جانے کیا کچھ کہتا رہتا ہوں
    ابتسامہ
     
لوڈ کرتے ہوئے...
متعلقہ مضامین
  1. ابوطلحہ بابر
    جوابات:
    0
    مناظر:
    5
  2. عامر عدنان
    جوابات:
    0
    مناظر:
    350
  3. علی عمران
    جوابات:
    1
    مناظر:
    254
  4. محمد عبد الرحمن الكاشفي
    جوابات:
    1
    مناظر:
    421
  5. محمد عامر یونس
    جوابات:
    1
    مناظر:
    665

اس صفحے کو مشتہر کریں