1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

حقیقی کامیابی اللہ کی فرمانبرداری میں ہے..... خطبہ جمعہ حرم مدنی

'خطبات حرمین' میں موضوعات آغاز کردہ از عمران اسلم, ‏جنوری 04، 2013۔

  1. ‏جنوری 04، 2013 #1
    عمران اسلم

    عمران اسلم مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 02، 2011
    پیغامات:
    318
    موصول شکریہ جات:
    1,604
    تمغے کے پوائنٹ:
    150

    حقیقی کامیابی اللہ کی فرمانبرداری میں ہے......2 محرم 1434ھ

    خطبہ جمعہ حرم مدنی
    خطیب: عبدالرحمٰن الحذیفی​

    پہلا خطبہ
    الحمد لله العزيز الغفار، خلق الخلقَ ودبَّرهم بقُدرته وعلمه ورحمته هو الواحد القهَّار، أحمد ربي وأشكره، وأتوب إليه وأستغفره، وأشهد أن لا إله إلا الله وحده لا شريك له، له المُلك الملِكُ الجبار، يُقلِّبُ الليل والنهار، إن في ذلك لعبرةً لأولي الأبصار، وأشهد أن نبيَّنا وسيدَنا محمدًا عبده ورسوله المُصطفى المُختار، اللهم صلِّ وسلِّم وبارِك على عبدك ورسولِك محمدٍ، وعلى آله وصحبه الأبرار.
    أما بعد
    لوگو! اللہ کا تقویٰ اور اطاعت اختیار کرو کہ تقویٰ ہی عذاب و عقاب سے انسان کے لیے ڈھال اور جنتوں سے ہمکنار کرنے والا اعلی کمال ہے۔ خبردار! خود کو ان میں شامل نہ کربیٹھنا جو رب سے ملاقات کو فراموش کر بیٹھے، نتیجتاً نہ دین کے رہے نہ دنیا کے، ہاتھ میں دنیا بھی نہ رہی اور نصیبے سے جنت بھی گئی۔
    اللہ کے بندو! خوب جان رکھو! نہ تو اللہ کی اطاعت کر کے کوئی بدبخت رہ سکتا ہے اور نہ اس کی معصیت کر کے کوئی سعادت مند بن سکتا ہے۔ اللہ تعالیٰ نے فرمایا:
    وَمَنْ يُطِعِ اللَّهَ وَرَسُولَهُ وَيَخْشَ اللَّهَ وَيَتَّقْهِ فَأُولَئِكَ هُمُ الْفَائِزُونَ [النور: 52]
    مزید فرمایا:
    وَمَنْ يَعْصِ اللَّهَ وَرَسُولَهُ فَإِنَّ لَهُ نَارَ جَهَنَّمَ خَالِدِينَ فِيهَا أَبَدًا [الجن: 23]
    لوگو! بڑے مقدس اور مبارک ناموں والا تمہارا رب نہایت رحیم بھی ہے اور قدرت و حکمت والا علیم بھی ہے۔ اس نےتمھیں سماعت و بصارت دی اور دل و اعضا دئیے تاکہ تم ان کے ذریعے سے عبادت کرتے ہوئے اس کا شکر ادا کرو۔ اللہ تعالیٰ نے فرمایا:
    وَاللَّهُ أَخْرَجَكُمْ مِنْ بُطُونِ أُمَّهَاتِكُمْ لَا تَعْلَمُونَ شَيْئًا وَجَعَلَ لَكُمُ السَّمْعَ وَالْأَبْصَارَ وَالْأَفْئِدَةَ لَعَلَّكُمْ تَشْكُرُونَ [النحل: 78]
    یہ اس پاک ذات کی شفقت و رحمت ہی ہے کہ اس نے صاحبان ہوش و خرد کے لیے کائنات میں جا بہ جا نشانیاں رکھ چھوڑی ہیں اور پھر ان مخلوقات کو بغیر کسی نمونے کے انوکھی بناوٹ پر پیدا فرمایا تاکہ مخلوق پہچان جائے کہ اس کا کوئی رب بھی ہے اور وہ اس کےاحکام پر عمل پیرا ہو کر اور ممنوعات سے باز رہ کر اس کا قرب حاصل کرلیں۔ فرمایا:
    هُوَ الَّذِي جَعَلَ الشَّمْسَ ضِيَاءً وَالْقَمَرَ نُورًا وَقَدَّرَهُ مَنَازِلَ لِتَعْلَمُوا عَدَدَ السِّنِينَ وَالْحِسَابَ مَا خَلَقَ اللَّهُ ذَلِكَ إِلَّا بِالْحَقِّ يُفَصِّلُ الْآيَاتِ لِقَوْمٍ يَعْلَمُونَ (5) إِنَّ فِي اخْتِلَافِ اللَّيْلِ وَالنَّهَارِ وَمَا خَلَقَ اللَّهُ فِي السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ لَآيَاتٍ لِقَوْمٍ يَتَّقُونَ [يونس: 5، 6]
    ایک مقام پر فرمایا:
    وَآيَةٌ لَهُمُ اللَّيْلُ نَسْلَخُ مِنْهُ النَّهَارَ فَإِذَا هُمْ مُظْلِمُونَ (37) وَالشَّمْسُ تَجْرِي لِمُسْتَقَرٍّ لَهَا ذَلِكَ تَقْدِيرُ الْعَزِيزِ الْعَلِيمِ [يس: 37، 38]
    مزید فرمایا:
    وَهُوَ الَّذِي جَعَلَ اللَّيْلَ وَالنَّهَارَ خِلْفَةً لِمَنْ أَرَادَ أَنْ يَذَّكَّرَ أَوْ أَرَادَ شُكُورًا [الفرقان: 62]
    مفسرین بیان کرتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ نے دن اور رات کو ایک دوسرے کے تعاقب میں اس لیے لگا دیا تاکہ بندوں کے لیے عبادت کے اوقات مقرر ہو جائیں اور جس کے رات کے اعمال رہ جائیں وہ دن میں اور جس کے دن کے اعمال رہ جائیں وہ رات کو پورا کر سکے۔ سو جان رکھیے کہ دن اور رات بھی اللہ کی نشانیوں میں سے دو عظیم الشان نشانیاں ہیں، جو آسمان و زمین کی تخلیق کے روز اول ہی سے ایک دوسرے کے تعاقب میں جاری و ساری ہیں اور اللہ تعالیٰ نے ان دونوں میں مخلوقات کے اتنے فائدے رکھ دئیے ہیں کہ جن کا شمار بھی اللہ کی ذات کے سوا کوئی نہیں کر سکتا۔ پھر ان میں عبرت و نصیحت کے کثیر پہلوؤں کا احاطہ و شمار بھی ناممکنات میں سے ہے۔
    دن اور رات کی گنتی جب ایک مخصوص مدت تک پہنچ جاتی ہے تو ان سے مہینہ مکمل ہو جاتا ہے اور جب مہینے مہینوں سے ملتے جاتے ہیں تو سال تشکیل پا جاتا ہے اور جب سالوں پر سال ہوتے چلے جاتے ہیں تو اس سے دنیا میں لوگوں، نسلوں اور قوموں کی زندگیاں تکمیل پاتی ہیں۔
    پھر روز محشر سب لوگ رب کے حضور جمع ہوں گے اور وہ انھیں ان کے اعمال کی عادلانہ جزا دے گا۔ خیر کہ بدلہ خیر اور شر کا بدلہ شر ہو گا اور رب کسی پر ظلم نہیں کرتا۔ اور اگر نیکی کی ہوگی تو اس کو دو چند کر دے گا اور اپنے ہاں سےاجر عظیم بخشے گا۔[النساء :40]
    یہی وہ شب و روز ہیں جو گزشتہ اقوام کے ساتھی تھے، سو یہ ان کے اعمال بد اور اعمال صالحہ کے گواہ ہو گئے۔ سو منکروں کے لیے بدترین اور ماننے والوں کے لیے عمدہ ترین ٹھکانہ ہو گا۔ کوئی ہے جو اس سے نصیحت اور عبرت حاصل کرے ؟ اے غفلت شعار انسان! تو کب اپنے آپ پر رحم کرےگا؟ اے سرکشی میں مبتلا! کیا تو رب کے حضور توبہ نہ کرے گا۔ اے فریب خوردہ انسان! تو رب کے حلم سے فائدہ اٹھا کر گناہوں سے نجات کیوں حاصل نہیں کر لیتا۔ بھلا تجھے عزت و جلال والے رب سے حیا نہیں آتی؟ وہ رب کےجس نے تجھے ظاہری و باطنی نعمتوں سے تول کے رکھ دیا ہے اور تو ہے کہ گناہوں کے ذریعے سے اس کے غضب کو للکار رہا ہے۔ کیا عبرت اثر آیات اور اشک آور نصیحت سےتیرا دل نہیں پگھلتا؟ کیا تو موت سے پہلے اپنا محاسبہ نہ کرے گا؟ کیا تجھے معلوم نہیں کہ گناہوں کی لذت تو یوں ختم ہو جاتی ہے گویا کبھی تھی ہی نہیں، مگر اس کے اثرات اور وبال ہمیشہ باقی رہتے ہیں۔
    کیا تو نےصبح و شام کو قافلہ در قافلہ رب کی طرف جاتے نہیں دیکھا؟ اور کیا تو بھول گیا کہ کل تیری حقیقت لوگوں کے کندھوں پر پڑا محض اک بوجھ ہو گا؟ اور کیا تیرا خیال ہے اللہ ظالموں کے اعمال سے بے خبر ہے؟ اے مسلمان! کیا تجھے خیر و بھلائی سے جھولیاں بھرنے کی کوئی چاہت نہیں، اس سے پہلے کہ نیک اعمال اور تیرے درمیان رکاوٹ کھڑی کر دی جائے؟ یاد رکھ! سال کے جانے اور نئے سال کے آنے میں رب سے خشیت رکھنے والوں، برے حساب سے ڈرنے والوں اور صاحبان ایمان و ارباب بصیرت کے لیے بڑی عبرتیں اور نشانیاں ہیں۔
    گزرے سال اور گزشتہ ادوار ہمیں وہ سب واقعات اور اعمال یاد دلاتے ہیں جو پہلی قومیں کرتی رہیں۔ وہ اعمال کے جن کے حق میں یا ان کے خلاف زمانے کی بھرپور گواہی ہو گئے۔مثلاً انبیا و رسل اور ان کے متبعین نے ان ادوار کے حوالے سے اقوال و افعال اور نیک اعمال کے بہترین نمونے چھوڑے۔ نصرت دی، عبادت الٰہی لوگوں کی ہدایت اور اللہ کی طرف ان تھک دعوت کے نمونے۔ لوگوں کے ساتھ شفقت و رحمت اور مصائب پر صبر کے نمونے، چنانچہ وہ دنیا و آخرت کی بھلائیاں اکٹھی کرنے میں کامیاب رہے اور ہر قسم کے شر سے نجات پا گئے۔ اللہ تعالیٰ نے فرمایا:
    لَكِنِ الرَّسُولُ وَالَّذِينَ آمَنُوا مَعَهُ جَاهَدُوا بِأَمْوَالِهِمْ وَأَنْفُسِهِمْ وَأُولَئِكَ لَهُمُ الْخَيْرَاتُ وَأُولَئِكَ هُمُ الْمُفْلِحُونَ (88) أَعَدَّ اللَّهُ لَهُمْ جَنَّاتٍ تَجْرِي مِنْ تَحْتِهَا الْأَنْهَارُ خَالِدِينَ فِيهَا ذَلِكَ الْفَوْزُ الْعَظِيمُ [التوبة: 88، 89].
    اس کے بالمقابل انبیا اور پروان انبیا کے دشمنوں نے ادوار گزشتہ میں کفر و معصیت اور اللہ و سول سے محاذ آرائی کی تاریخ چھوڑی، نتیجتاً وہ ناکام و نامراد ہوئے اور اپنی خواہشات کے معاملے میں تشنہ تعمیل رہے۔ انھوں نے دنیا سے جو پایا وہ بھی ناقابل ذکر اور قلیل محض تھا اور آخرت سے تو کلیتاً محرومی ہی ان کے نصیبے میں آئی۔ اللہ تعالیٰ نے فرمایا:
    ثُمَّ أَنْشَأْنَا مِنْ بَعْدِهِمْ قُرُونًا آخَرِينَ (42) مَا تَسْبِقُ مِنْ أُمَّةٍ أَجَلَهَا وَمَا يَسْتَأْخِرُونَ (43) ثُمَّ أَرْسَلْنَا رُسُلَنَا تَتْرَى كُلَّ مَا جَاءَ أُمَّةً رَسُولُهَا كَذَّبُوهُ فَأَتْبَعْنَا بَعْضَهُمْ بَعْضًا وَجَعَلْنَاهُمْ أَحَادِيثَ فَبُعْدًا لِقَوْمٍ لَا يُؤْمِنُونَ [المؤمنون: 42- 44]
    مزید فرمایا:
    إِنَّ الَّذِينَ كَذَّبُوا بِآيَاتِنَا وَاسْتَكْبَرُوا عَنْهَا لَا تُفَتَّحُ لَهُمْ أَبْوَابُ السَّمَاءِ وَلَا يَدْخُلُونَ الْجَنَّةَ حَتَّى يَلِجَ الْجَمَلُ فِي سَمِّ الْخِيَاطِ وَكَذَلِكَ نَجْزِي الْمُجْرِمِينَ (40) لَهُمْ مِنْ جَهَنَّمَ مِهَادٌ وَمِنْ فَوْقِهِمْ غَوَاشٍ وَكَذَلِكَ نَجْزِي الظَّالِمِينَ [الأعراف: 40، 41]
    مسلمانو! ادوار گزشتہ کےعظیم الشان اور جلیل القدر معاملات میں سے ایک نہایت درخشندہ واقعہ ہجرت رسول بھی ہے جس کا ہر سال ہم تذکرہ کرتے ہیں، وہ ہجرت جو بحکم الٰہی مکہ سے مدینہ کی طرف کی گئی۔ وہ کہ جسے اللہ تعالیٰ نے اپنے نبی کے لیے نصرت و تائید کا استعارہ بنا دیا، فرمایا:
    إِلَّا تَنْصُرُوهُ فَقَدْ نَصَرَهُ اللَّهُ إِذْ أَخْرَجَهُ الَّذِينَ كَفَرُوا ثَانِيَ اثْنَيْنِ إِذْ هُمَا فِي الْغَارِ إِذْ يَقُولُ لِصَاحِبِهِ لَا تَحْزَنْ إِنَّ اللَّهَ مَعَنَا [التوبة: 40]
    اللہ تعالیٰ نے ہجرت کے ذریعے قیامت تک کے لیےاسلام کی نصرت و فتح کا دروازہ کھول دیا۔ بجا کہ عہد حاضر کے مسلمان ہجرت کی وہ فضیلت گزشتہ نہیں پا سکتے تاہم اللہ نے اپنے فضل و کرم سے ان کے لیے ایک دوسری ہجرت کا در کھول دیا ہے۔ ان کی ہجرت کے بھی بڑے اجرو ثواب ہیں۔ سو رب کریم نے اس عہد اور عہد آئندہ کے سبھی مسلمانوں کے لیے سہوت مہیا فرما دی کہ ان کے دل شرک کی گھاٹیوں سے توحید کی وادیوں کی طرف ہجرت کر لیں۔ وہ معصیت سےاطاعت کی طرف، عبادت کی راہ میں درپیش حائل رکاوٹ سے بھرپور عبادت کی طرف، بدعت کی خرافات سے سنت کی روشنیوں کی طرف اور اپنی مذموم اور متصادم شریعت خواہشات سے اللہ و رسول کی چاہت کی طرف ہجرت کر لیں۔ صحیح مسلم میں ہے کہ رسول اللہﷺ نے فرمایا: ہرج یعنی فتنوں کے دور میں عبادت کرنا میری طرف ہجرت کے مانند ہے۔ اور فرمایا: سچا مسلمان تو وہ ہے جس کی زبان اور اعضا سے دوسرے مسلمان محفوظ رہیں اور سچا مہاجر وہ ہے جس نے رب کے حرام کردہ امور کو چھوڑ دیا۔
    یاد رکھیے! قرآنی آیات اور نشانیاں، دلوں کو ہدایت، بصیرتوں کو جلا، انسانوں کو اصلاح ہمتوں کو رفعت، زندگی کو نظم و ضبط اور ایمان کو غذا فراہم کرتی ہیں اور مختصراً وہ انسان کو راہ راست پر استقامت بخشتی ہیں۔ جب انسان قرآنی نشانیوں کو کائناتی علامتوں کے تناظر میں رکھ کر عبرت و بصیرت کے فائدے اٹھاتا ہے تو وہ فضائل کے درجہ کو چھو لیتا ہے اور رذائل سے پاک صاف ہو جاتاہے۔ اللہ تعالیٰ نے فرمایا:
    إِنَّ هَذَا الْقُرْآنَ يَهْدِي لِلَّتِي هِيَ أَقْوَمُ [الإسراء: 9]
    لیکن بہت غور سے سمجھنے کی بات یہ ہے کہ تفہیم و تدبرِ قرآن تبھی مفید ہوتا ہے جب اسے صحابہ، تابعین اور تبع تابعین جیسے اسلاف کے اسلوب پر سمجھا جائے۔ ذہن نشیں رہے کہ قرآن مجید لوگوں کے لیے اللہ تعالیٰ کی آخری اور حتمی حجت ہے۔ ارشاد باری تعالیٰ ہے:
    تِلْكَ آيَاتُ اللَّهِ نَتْلُوهَا عَلَيْكَ بِالْحَقِّ فَبِأَيِّ حَدِيثٍ بَعْدَ اللَّهِ وَآيَاتِهِ يُؤْمِنُونَ [الجاثية: 6]
    بارك الله لي ولكم في القرآن العظيم، ونفعني وإياكم بما فيه من الآيات والذكر الحكيم، ونفعنا بهدي سيد المُرسَلين وقوله القويم، أقول قولي هذا وأستغفرُ الله العظيم لي ولكم ولسائر المسلمين من كل ذنبٍ، فاستغفروه، إنه هو الغفور الرحيم.
    أما بعد
    اللہ کے بندو! اللہ سے ڈرو اور اسی کے مطیع ہو جاؤ۔ اللہ کے بندو! اپنی اخروی زندگی کے لیے کچھ کر لو کہ وہی حقیقی زندگی ہے۔ اللہ تعالیٰ نے فرمایا:
    وَجَاءَ رَبُّكَ وَالْمَلَكُ صَفًّا صَفًّا (22) وَجِيءَ يَوْمَئِذٍ بِجَهَنَّمَ يَوْمَئِذٍ يَتَذَكَّرُ الْإِنْسَانُ وَأَنَّى لَهُ الذِّكْرَى (23) يَقُولُ يَا لَيْتَنِي قَدَّمْتُ لِحَيَاتِي (24) فَيَوْمَئِذٍ لَا يُعَذِّبُ عَذَابَهُ أَحَدٌ (25) وَلَا يُوثِقُ وَثَاقَهُ أَحَدٌ (26) يَا أَيَّتُهَا النَّفْسُ الْمُطْمَئِنَّةُ (27) ارْجِعِي إِلَى رَبِّكِ رَاضِيَةً مَرْضِيَّةً (28) فَادْخُلِي فِي عِبَادِي (29) وَادْخُلِي جَنَّتِي [الفجر: 22- 30]
    حجۃ الوداع کے موقع پر کی گئی رسول اللہﷺ کی نصیحت کو حرزِ جان بنا لو کہ جس میں رسول اللہﷺ نے فرمایا کہ لوگو! اللہ کا تقویٰ اختیار کرو۔ امام احمد کی روایت میں یہ اضافہ ہے کہ اللہ کی عبادت کرو، پانچ نمازیں ادا کرو، رمضان کے روزے رکھو اور اپنے اموال کی زکوٰۃ ادا کرو۔
    بقی بن مخلد کی مسند میں یہ الفاظ مذکور ہیں:
    «وحجُّوا بيتَكم، وأطيعوا ذا أمرِكم، تدخُلوا جنَّةَ ربكم»
    حضرت عبداللہ بن عباس سےمروی ایک روایت کے الفاظ ہیں:
    «اغتنِم خمسًا قبل خمسٍ: شبابَك قبل هرمك، وغِناك قبل فقرك، وصحَّتك قبل سُقمك، وفراغَك قبل شُغلك، وحياتَك قبل موتِك»
    اللہ کے بندو! بے شک اللہ تعالیٰ نے تمھیں ایسے کام کا حکم دیا ہے جس کی ابتدااس نے خود کی ہے، چنانچہ فرمایا:
    إِنَّ اللَّهَ وَمَلَائِكَتَهُ يُصَلُّونَ عَلَى النَّبِيِّ يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا صَلُّوا عَلَيْهِ وَسَلِّمُوا تَسْلِيمًا [الأحزاب: 56]
    نبی کریمﷺ نے فرمایا:
    «من صلَّى عليَّ صلاةً واحدةً صلَّى الله عليه بها عشرًا»
    فصلُّوا وسلِّموا على سيدِ الأولين والآخرين وإمام المُرسلين، اللهم صلِّ على محمدٍ وعلى آل محمد، كما صلَّيتَ على إبراهيم وعلى آل إبراهيم، إنك حميدٌ مجيد، اللهم بارِك على محمدٍ وعلى آل محمد، كما باركتَ على إبراهيم وعلى آل إبراهيم، إنك حميدٌ مجيد، وسلِّم تسليمًا كثيرًا.
    اللهم صلِّ على محمدٍ وعلى أزواجه وذريَّته صلاةً وسلامًا كثيرًا، اللهم وارضَ عن الصحابة أجمعين، اللهم وارضَ عن الخلفاء الراشدين، الأئمة المهديين: أبي بكرٍ، وعمر، وعثمان، وعليٍّ، وعن سائر الصحابة أجمعين، وعن التابعين ومن تبِعهم بإحسانٍ إلى يوم الدين، اللهم وارضَ عنَّا معهم بمنِّك وكرمِك ورحمتك يا أرحم الراحمين.
    اللهم أعِزَّ الإسلام والمسلمين، اللهم أعِزَّ الإسلام والمسلمين، وأذِلَّ الشرك والمُشركين يا رب العالمين، اللهم دمِّر أعداءَك أعداء الدين، اللهم دمِّر أعداءَك أعداء الدين يا رب العالمين، إنك على كل شيء قدير.
    اللهم انصُر دينَك وكتابَك وسُنَّة نبيّك يا رب العالمين.
    اللهم يسِّر أمورَنا، اللهم يسِّر أمورَنا، واشرَح صُدورَنا، وأعِذنا من شُرور أنفسنا، ومن سيئات أعمالنا، وأعِذنا من شرِّ كل ذي شرٍّ يا رب العالمين، إنك على كل شيء قدير.
    اللهم آمِنَّا في أوطاننا، اللهم أصلِح ولاةَ أمورنا، واجعل بلادَنا آمنةً مُطمئنَّة، وسائرَ بلاد المُسلمين يا رب العالمين.
    اللهم وفِّق خادمَ الحرمين الشريفين لما تحبُّ وترضى، اللهم وفِّقه لهُداك، واجعل عملَه في رِضاك، اللهم أعِنه على كل خيرٍ لشعبه ولوطنه وللمُسلمين يا رب العالمين.
    اللهم اغفر لنا ما قدَّمنا وما أخَّرنا، وما أسرَرنا وما أعلنَّا، وما أنت أعلمُ به منَّا، أنت المُقدِّم وأنت المُؤخِّرُ، لا إله إلا أنت.
    اللهم أغِثنا، اللهم أغِثنا، اللهم أغِثنا يا رب العالمين، اللهم أنت أرحم الراحمين، اللهم إنا نسألُك بقُدرتك على كل شيء، وبرحمتك التي وسِعَت كلَّ شيء، وبعلمِك الذي أحاطَ بكل شيء، نسألُك اللهم أن ترحمَنا، اللهم أنزِل علينا اليثَ ولا تجعلنا من القانِطين.
    اللهم اغفِر لموتانا وموتى المُسلمين يا رب العالمين، اللهم اغفِر لموتانا وموتى المُسلمين إنك على كل شيء قدير.
    اللهم إنا نعوذُ بك من زوال نعمتك، وفُجاءة نقمتِك، وتحوُّل عافيتك، وجميع سخطِك.
    اللهم إنا نعوذُ بك من سوء القضلاء، وشماتة الأعداء، ومن درَك الشقاء، ومن جهد البلاء.
    نسألُك اللهم الجنةَ وما قرَّبَ إليها من قولٍ وعملٍ، ونعوذُ بك من النار وما قرَّب إليها من قولٍ أو عملٍ.
    اللهم أعِذنا وذريَّاتنا من إبليس وذريَّته وجنوده يا رب العالمين، اللهم أعِذ المُسلمين وذريَّاتهم من الشيطان لرجيم وذريَّته.
    عباد الله:
    إِنَّ اللَّهَ يَأْمُرُ بِالْعَدْلِ وَالْإِحْسَانِ وَإِيتَاءِ ذِي الْقُرْبَى وَيَنْهَى عَنِ الْفَحْشَاءِ وَالْمُنْكَرِ وَالْبَغْيِ يَعِظُكُمْ لَعَلَّكُمْ تَذَكَّرُونَ (90) وَأَوْفُوا بِعَهْدِ اللَّهِ إِذَا عَاهَدْتُمْ وَلَا تَنْقُضُوا الْأَيْمَانَ بَعْدَ تَوْكِيدِهَا وَقَدْ جَعَلْتُمُ اللَّهَ عَلَيْكُمْ كَفِيلًا إِنَّ اللَّهَ يَعْلَمُ مَا تَفْعَلُونَ [النحل: 90، 91].
    واذكروا الله العظيم الجليل يذكركم، واشكروه على نعمه يزِدكم، ولذكر الله أكبر، والله يعلم ما تصنعون.


    لنک
     
  2. ‏جنوری 06، 2013 #2
    انس

    انس منتظم اعلیٰ رکن انتظامیہ
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏مارچ 03، 2011
    پیغامات:
    4,177
    موصول شکریہ جات:
    15,224
    تمغے کے پوائنٹ:
    800

  3. ‏جنوری 06، 2013 #3
    عمران اسلم

    عمران اسلم مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 02، 2011
    پیغامات:
    318
    موصول شکریہ جات:
    1,604
    تمغے کے پوائنٹ:
    150

لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں