1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

حکم بغیر ما اَنزل اللہ اگر ’کفر‘ ہی نہیں تو یہ نظام بھی پھر ’طاغوتی‘ کیسے؟؟

'توحید حاکمیت' میں موضوعات آغاز کردہ از باربروسا, ‏جنوری 23، 2012۔

  1. ‏فروری 07، 2012 #31
    باربروسا

    باربروسا مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 15، 2011
    پیغامات:
    311
    موصول شکریہ جات:
    1,016
    تمغے کے پوائنٹ:
    106

    بلا تبصرہ

    :)
     
  2. ‏فروری 08، 2012 #32
    عبداللہ عبدل

    عبداللہ عبدل مبتدی
    شمولیت:
    ‏نومبر 23، 2011
    پیغامات:
    493
    موصول شکریہ جات:
    2,196
    تمغے کے پوائنٹ:
    26

    واہ جی کیا انٹری ہے ابو عیینہ صاحب کی!
    دلچسپ۔۔۔
    :)
     
  3. ‏فروری 08، 2012 #33
    عبداللہ عبدل

    عبداللہ عبدل مبتدی
    شمولیت:
    ‏نومبر 23، 2011
    پیغامات:
    493
    موصول شکریہ جات:
    2,196
    تمغے کے پوائنٹ:
    26

    السلام علیکم
    ماشاء اللہ آپ بہت سمجھدار ہیں، اس سے آگے میں کچھ عرض نہیں کہوں گا اس طعن کے بارے!

    ٢:::: جانب میں میٹھے کا بہت شوقین ہوں، آپ جتنی بھی جلیبیاں بنائیں گے جتنے بھی ڈیزائن کی بنائیں گے، میں کھا پی جاؤں گا۔۔۔ :)

    ٣::::::میرا خیال ہے کہ ہم اس وقت کاپی پیسٹ کی ترغیب دینے سے بہتر ہے بات کو انجام کی طرف لے کر جائیں،،،،
    آپ سے وضاحت ہے اس سوال بارےکہ آپ سمجھتے ہیں کہ کیا ابن تیمیہ رح اور امام احمد بن حنبل رح اور محمد بن عبد الوھاب کے ادوار میں مسلمانوں نے مکمل شریعت نافذ کر رکھی تھی؟؟؟
    ہاں رہی بات محمد بن عبد الوھاب رح کا تو انکے دورمیں خلافت عثمانیہ میں اور امام احمد رح کے دور میں غیر شرعی قوانین نافز تھے۔اس سے کوئی ناواقیت ؟؟؟۔

    جناب ! فیصلہ تو پہلے بھی ایسے قوانین کے تحت ہوتے آئے ہیں، مسئلہ فیصلہ کرنے والے کا ہے۔١!!
    پاکستان کے آئین میں مطلق قرآن و سنت کو بالا دستی حاصل ہے، اب اگر کوئی شخص ، مولوی ، الشیخ الحدیث یا حکمران خرابی کرے اسکا عتاب اس پراور وہ کفر اصغر بھی ہو سکتا ہے اور اکبر بھی!
    اور کئی ایسی مثالیں ہیں کہ اگر ایک حکمران نے قرآن و سنت خلاف کوئی قانون یا ایکٹ پاس کروایا تو دوسرے کسی حکمران کے دور میں اس منسوخ کر دیا گیا ، قرآن سنت کے منافی ہونے کی وجہ سے!

    جناب معذرت کے ساتھ، وفاقی شرعی عدالت کئی ایسے قوانین کو منسوض کر کے شرعی حکم جاری کر چکی ہے جو قرآن سنت کے خلاف تھے، جن میں سب سے موٹی مثال مشرف کا "حدود آرڈینینس" تھا،،، (اور یہ بھی یاد رہے کہ وفاقی شرعی عدالت کا فیصلہ کسی بھی عدالت میں چیلنج نہیں ہوسکتا)۔۔۔۔
    (میرا مقصد یہاں کسی نظام کا دفاع یا توصیف نہیں بلکہ اس نظام سے متعلق انصاف پر مبنی درست بات پیش کرنا ہے)
    لہذا جو آپ نے سٹارت میں کہا، میرا آپ سے بھی پھر کہتا ہوں!

    چلو جی اپ نے اب قسم کھائی ہوئی ہے تو یہی سہی.

    امید ہے آپ اپنے سوال کی تھوڑی سی وضاحت فرما دیں گے کہ ابن تیمیہ اور امام احمد کے دور مکلمل شریعت نافذ تھی؟؟

    جزاک اللہ خیرا۔۔۔
     
  4. ‏فروری 08، 2012 #34
    باربروسا

    باربروسا مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 15، 2011
    پیغامات:
    311
    موصول شکریہ جات:
    1,016
    تمغے کے پوائنٹ:
    106

    گڈ ۔ ۔ ۔ ۔ یعنی کہ لگے رہو۔ ۔ ۔ ۔

    میرے تین سوال تھے۔ ۔ ۔ ۔ ان کے جواب ندارد۔ ۔ ۔ اک ہور سوال۔ ۔ ۔ ۔

    پہلے ان تینوں نکات کی وضاحت فرمائیں، اور ہینکی پینکی سے گریز کرنے کا مشورہ حسب سابق ایک بار پھر۔ ۔ ۔

    اس کے بعد میں اپ کو یہ بتانے کی پوزیشن میں ہو سکوں گا کہ شریعت نافذ تھی یا نہ تھی یا کیا تھا۔ ۔ ۔

    ہیو اے نائس ڈے
     
  5. ‏فروری 10، 2012 #35
    عبداللہ عبدل

    عبداللہ عبدل مبتدی
    شمولیت:
    ‏نومبر 23، 2011
    پیغامات:
    493
    موصول شکریہ جات:
    2,196
    تمغے کے پوائنٹ:
    26

    میرا بھی ایک ننھا سا چھوٹا سا منا سا سوال تھا؟؟

    آپ چاہتے ہیں کہ جس طرح آپ چاہیں ،اس ہی طرح ہی بات ہو۔۔۔ تو یہ فارمولا قابل عمل نہیں۔۔۔
    اور آپ کے ان تین نکات کی وضاحت میں نے کی مگر "میں نہ مانوں" کی کوئی دوا نہیں۔۔۔
    اور جناب آپ نے میری طلب کردہ وضاحت سے بچنے کے لئے صحیح طریقہ ڈھونڈا۔۔۔
    آپ پہلے میری طلب کردہ وضاحت پیش کردیں تو میں اس حالت میں ہوں گا کہ آپ کی طلب کردہ وضاحت پیش کر سکوں!

    آپ بحمداللہ اس قابل نہیں ہو سکیں گے۔ کیونکہ اگر اس قابل ہو گئے تو آپ خود وہ لکھ رہے ہوں گے جو مجھے لکھنا پڑنا تھا۔

    اگر تو ابھی بھی جلیبی پرودکشن جاری رکھنی ہے تو ٹھیک ہے آپ بناؤ جلیبیاں اور کھاتا جاتا ہوں ۔۔۔ میٹھے کا شوقین جو ہوں نا۔۔۔ :)

    ولسلام
     
  6. ‏اگست 02، 2012 #36
    ابن الاسلام

    ابن الاسلام رکن
    جگہ:
    پاکستان
    شمولیت:
    ‏نومبر 24، 2011
    پیغامات:
    43
    موصول شکریہ جات:
    59
    تمغے کے پوائنٹ:
    38

    عبداللہ عبدل ایک بات تو کلئیر کر لو کہ آئین پاکستان کے تحت نام نہاد شرعی عدالت کے فیصلے کو سپریم کورٹ میں چیلنج کیا جاسکتا ہے اور کیا جا چکا ہے سود والے معاملے میں۔
    قرآن و سنت کی حکمرانی والی شک آئین کا حصہ نہیں ہے بس ایک راہ نما قرار داد ہے اور وہ بہت مبہم انداز میں جو کہ بالکل ہی نا قابل عمل ہے۔
    حدود والے مسئلے میں شرعی عدالت نے مہلت دی تھی اور وہ مہلت پوری ہوئی اور عدالت کا فیصلہ تسلیم نہیں کیا گیا اور حقوق نسواں ایکٹ آج بھی آئین کا حصہ ہے۔
    مزید کے لئے
    All stories / articles Anjum Rasheed
    Sapeeda-e-Sahar Aur Timtimata Charagh, Copy.pdf - 4shared.com - document sharing - download - Abu Hamza
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں