1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔۔
  2. محدث ٹیم منہج سلف پر لکھی گئی کتبِ فتاویٰ کو یونیکوڈائز کروانے کا خیال رکھتی ہے، اور الحمدللہ اس پر کام شروع بھی کرایا جا چکا ہے۔ اور پھر ان تمام کتب فتاویٰ کو محدث فتویٰ سائٹ پہ اپلوڈ بھی کردیا جائے گا۔ اس صدقہ جاریہ میں محدث ٹیم کے ساتھ تعاون کیجیے! ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔ ۔

رجب کے کونڈے

'بدعت' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد عامر یونس, ‏اپریل 25، 2017۔

  1. ‏اپریل 25، 2017 #1
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,706
    موصول شکریہ جات:
    6,469
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,055

    رجب کے کونڈے


    بسم الله الرحمن الرحيم
    بعض لوگ 22 رجب کو حضرت امام جعفر رحمۃ ﷲعلیہ کے نام کی نذرونیاز پکاتے ہیں اور عرف عام میں امام جعفر رحمۃ ﷲعلیہ کے کونڈے یا رجب کے کونڈے کہا جاتا ہے یہ نو ایجاد کردہ رسم کئی وجوہ سے باطل،بدعت اور شرک ہے۔ جس سے بچنا ہرمسلمان کے لئے ضروری ہے۔ یہ ﷲ تعالیٰ کے سوا مخلوق کی نذر ہے۔

    شیخ قاسم حنفی درالبحار میں لکھتے ہیں :

    مخلوق کے لئے نذر کئی وجہ سے بالاجماع باطل ہے۔

    (1) یہ نذر مخلوق کے لئے ہے اور مخلوق کے لئے نذر جائزنہیں ہے کیوں کہ یہ عبادت ہے اور عبادت مخلوق کی نہیں ہوتی۔

    (2) جس کے لئے نذرمانی یا پکائی جاتی ہے وہ میت (مردہ) ہے اور میت کسی چیز کا مالک نہیں ہوتا۔

    (3) نذر ماننے والا گمان کرتا ہے کہ ﷲ تعالیٰ کے سوا میت کو بھی کاموں میں تصرف اور اختیار حاصل ہے اور اس کا یہ اعتقاد کفر ہے۔ (فتح المجیدصفحہ159طبع قاہرہ،رد المختار صفحہ139جلد2مصری۔)

    (4) ﷲ تعالیٰ کے غیر کے لئے جو نذر ہے اگرچہ اس پر ﷲ تعالیٰ کا نام لیا گیا ہو پھر بھی وہ حرام اور شرک ہے،تفسیر جامع البیان سورۂ مائدہ میں ہے

    ((فَحَرَّمَ اللّٰہُ اَکْلَ ھٰذَا اللَّحْمِ وَاِنْ ذُکِرَعَلَیْھَا اسْمُ اللّٰہِ لِمَا فِیْہٖ مِنَ الشِّرْکِ))

    یعنی ’’ﷲ تعالیٰ نے غیرﷲ کے نام کے دیئے اورمشہور کئے ہوئے جانوروں کا گوشت کھانا حرام قرار دیا ہے اگرچہ اس پر ﷲ تعالیٰ کا نام لیا گیا ہو،کیونکہ اس میں شرک ہے۔‘‘

    (5) اس کا آغاز ریاستِ رام پور سے 1906؁ء میں ہوا ہے اس سے پہلے اس کا نام ونشان نہیں ہے اورہندوپاک کے علاوہ دوسرے ملکوں میں بھی اس کا وجود نہیں ۔

    (6) حضرت امام جعفر رحمۃ ﷲعلیہ کی ولادت اور وفات یا ان کے کسی اور دن سے قطعًا کوئی مناسبت نہیں ہے ان کی ولادت 8 رمضان 80 ؁ھ یا 17 ربیع الاول 83 ؁ھ اور وفات بالاتفاق 15 شوال 148؁ھ میں ہوئی ہے۔

    (7) درحقیقت اس شرک کے آغاز کی وجہ یہ ہے دشمنانِ صحابہ کرام جیسے حضرت عمرفاروق رضى الله عنه کی شہادت کے دن ہر سال جشنِ مسرت اور عید مناتے ہیں اور فاروق اعظم رضى الله عنه کے قاتل فیروز کو بابا شجاع الدین کا لقب دیکر اپنی دلی عقیدت ومحبت کا اظہار کرکے فرحان وشادان ہوتے ہیں اسی طرح ان کو حضرت معاویہ رضى الله عنه سے خاص بغض وعناد اور دشمنی ہے اور 22رجب کو حضرت معاویہ رضى الله عنه کی وفات ہوئی ہے محض پردہ پوشی کے لئے اس رسم کو حضرت جعفر رحمۃ ﷲ علیہ کی طرف منسوب کیا گیا ہے۔ ورنہ درحقیقت یہ تقریب اور رسم حضرت معاویہ رضى الله عنه کی وفات کی خوشی میں منائی جاتی ہے۔

    غور کیجئے! کیسے کیسے طریقوں سے مسلمانوں کے عقائد کو بگاڑا جارہا ہے اور شیرینی میں لپیٹ کرزہر کھلایا جا رہا ہے۔ ہرمسلمان کو شرک اوربدعات کے کاموں سے بچنے کے لئے ہوشیار ہوجان چاہئے ورنہ ایمان اکارت ہوجائے گا۔

    حضرت معاویہ رضى الله عنه جلیل القدر صحابی اور امین وکاتب وحی ہیں ۔

    عبد ﷲ بن مبارک رحمۃ ﷲ علیہ سے سوال کیا گیا کہ عمر بن عبدالعزیز رحمۃ ﷲ علیہ افضل ہیں یا معاویہ رضى الله عنه تو انہوں نے جواب دیا رسول ﷲ ﷺ کی معیت میں کفار سے جہاد کرتے وقت حضرت معاویہ رضى الله عنه کے گھوڑے کے نتھنوں میں جو غبار داخل ہوا،وہ بھی عمر بن عبدالعزیز رحمۃ ﷲعلیہ سے (ہزارہا درجہ) افضل ہے (حضرت معاویہ رضى الله عنه کا مرتبہ توبہت بلند ہے)۔

    کتاب : بدعات مروجہ

    تحریر : شیخ الحدیث کرم الدین السلفی رحمہ اللہ

     
    • پسند پسند x 1
    • متفق متفق x 1
    • لسٹ
  2. ‏اپریل 25، 2017 #2
    T.K.H

    T.K.H مشہور رکن
    جگہ:
    یہی دنیا اور بھلا کہاں سے ؟
    شمولیت:
    ‏مارچ 05، 2013
    پیغامات:
    947
    موصول شکریہ جات:
    297
    تمغے کے پوائنٹ:
    123

    یہ بھی تقیہ کی ایک ”اعلٰی“ مثال ہے ۔بلکہ میں تو کہتا ہوں کہ یہ ” تقیہ“ کے پردے میں ہی اپنے آپ کو ”شیعہ“ کہتے ہیں لیکن حقیقت میں ”رافضی“ ہیں ۔
     
  3. ‏اپریل 25، 2017 #3
    سلفی حنفی حنیف

    سلفی حنفی حنیف رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 16، 2017
    پیغامات:
    290
    موصول شکریہ جات:
    10
    تمغے کے پوائنٹ:
    35

    اس دور میں رافضی ہی کو شیعہ کہتے ہیں۔
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں