1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

رعایتی کارڈوں کا حکم

'انشورنس' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد عامر یونس, ‏نومبر 07، 2016۔

  1. ‏نومبر 07، 2016 #1
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,985
    موصول شکریہ جات:
    6,510
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    رعایتی کارڈوں کا حکم


    بعض کمپنیاں یا کلینک رعایتی کارڈ جاری کرتی ہيں جوایک کارڈ کی شکل میں سالانہ فیس کی ادائيگي کرنے پر ملتا ہے جس کی بنا پراسے سال بھر خریداری اورطبی معاینہ میں کچھ رعایت دی جاتی ہے ، لیکن اگرسال میں اس سے کچھ بھی استفادہ نہ کیا جائے توادا کردہ فیس واپس نہيں ہوتی ؟

    Published Date: 2004-01-01

    الحمد للہ :

    شیخ ابن باز رحمہ اللہ تعالی سے ان کارڈوں اوراسے استعمال کرنے کے حکم کے بارہ میں سوال کیا گيا ۔

    توشیخ رحمہ اللہ تعالی کا جواب تھا :

    یہ عمل جائز نہيں اس لیے کہ اس میں دھوکہ وفراڈ اورجہالت اور جوابازی بہت زيادہ شامل ہے اس لیے اسے ترک کرنا واجب ہے ۔

    اللہ تعالی ہی توفیق بخشنے والا ہے ۔ اھـ .

    دیکھیں : فتاوی ابن باز ( 19 / 58 ) ۔

    https://islamqa.info/ur/13743
     

اس صفحے کو مشتہر کریں