1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

روزہ کی نیت (سلسلہ رمضانی دروس حدیث) {1}

'فضائل روزہ' میں موضوعات آغاز کردہ از کفایت اللہ, ‏جولائی 31، 2011۔

  1. ‏جولائی 31، 2011 #1
    کفایت اللہ

    کفایت اللہ عام رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 14، 2011
    پیغامات:
    4,914
    موصول شکریہ جات:
    9,778
    تمغے کے پوائنٹ:
    722

    روزہ کی نیت


    عن عُمَرَ بْنَ الخَطَّابِ رَضِیَ اللَّہُ عَنْہُ قَالَ:سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّہِ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ یَقُول: ِانَّمَا الأَعْمَالُ بِالنِّیَّاتِ(بخاری حدیث نمبر ا)۔
    صحابی رسول عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ سے روایت ہے وہ کہتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے سنا آپ صلی اللہ علیہ وسلم فرما رہے تھے کہ تمام اعمال کا دارومدار نیت پر ہے۔
    اس حدیث سے معلوم ہوا کہ ہرعمل کے لئے نیت ضروری ہے بغیر نیت کے کوئی بھی عمل قابل قبول نہیں ہے ، روزہ بھی ایک عمل ہے لہٰذا اس کے لئے بھی نیت ضروری ہے،لہٰذا روزہ کی نیت سے متعلق چندمسائل سمجھ لینا چاہئے۔
    پہلامسئلہ:(ہرروزہ کی علیحدہ نیت)
    بعض لوگ کہتے ہیں کہ پورے رمضان کے روزوں کے لئے ایک ہی نیت کافی ہے اورہرروزہ کے لئے الگ الگ نیت کرنے کی ضرورت نہیں ہے لیکن یہ بات درست نہیں ہے بلکہ صحیح یہ ہے کہ ہردن ہرروزہ کی الگ الگ نیت کرنی ضروری ہے،دلائل ملاحظہ ہوں:
    عَنْ عَبْدِ اللَّہِ بْنِ عُمَرَ أَنَّہُ کَانَ یَقُول لَا یَصُومُ ِلَّا مَنْ أَجْمَعَ الصِّیَامَ قَبْلَ الْفَجْرِ(موطأ مالک رقم ٦ واسنادہ صحیح)۔
    عبداللہ بن عمررضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ روزہ صرف وہی رکھے جوفجرسے پہلے اس کی نیت کرلے۔
    اماں حفصہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں:
    لَا صِیَامَ لِمَنْ لَمْ یُجْمِعْ قَبْلَ الْفَجْرِ(سنن النسائی رقم ٢٣٣٦واسنادہ صحیح )۔
    معلوم ہواکہ ہرروزے کے لئے الگ سے نیت ضروری ہے۔
    دوسرامسئلہ:(نیت کا وقت)
    ہرروزہ کی نیت کا جووقت ہے وہ مغرب بعدسے لیکرفجرتک ہے ،بہتریہ ہے کہ ہرآدمی شام کوسونے سے پہلے اپنے روزے کی نیت کرلے ، لیکن اگرشام کو نیت نہیں کرسکاتو صبح سحری کے وقت بہرحال نیت کرلینی چاہئے اورسحری کے فوائد میں سے ایک فائدہ یہ بھی ہے کہ جوشخص شام کی نیت کرنا بھول جاتاہے اسے سحری کے وقت نیت کا موقع مل جاتاہے ۔
    حافظ ابن حجررحمہ اللہ سحری کی برکت اوراس کے فوائدکا تذکرہ کرتے ہوئے لکھتے ہیں:
    وَتَدَارُکُ نِیَّةِ الصَّوْمِ لِمَنْ أَغْفَلَہَا قَبْلَ أَنْ یَنَامَ (فتح الباری لابن حجر:١٤٠٤تحت الرقم ١٩٢٣)۔
    یعنی سحری کی برکت اوراس کا ایک فائدہ یہ بھی ہے کہ جوشخص سونے سے قبل نیت کرنا بھول جاتاہے وہ سحری کے وقت روزہ کی نیت کرلیتاہے۔
    الغرض روزے کی نیت کا وقت یہ ہے کہ شام کو سونے سے پہلے نیت کرلی جائے لیکن اگرشام کو نیت نہ ہوسکے توصبح سحری کے وقت فجرسے پہلے ہرحال میں نیت لازمی ہے۔
    تیسرا مسئلہ : (نیت کا طریقہ)
    نیت کا مطلب دل سے کسی کام کے کرنے کا عزم وارادہ کرنا ہے،یعنی یہ دل کا کام ہے ، جیساکہ ہم ہرکام کے لئے دل میں پہلے عزم وارادہ کرتے ہیں پھر ہمارے ذریعہ وہ کام عمل میں آتاہے ۔
    عزم وارادہ ، یہ کام ''دل '' سے ہوتاہے ،لہٰذا یہ کام زبان سے نہیں ہوسکتا،جس طرح سننا یہ کام '' کان'' کا ہے اب کوئی زبان سے نہیں سن سکتا، سونگھنا یہ کام ''ناک '' کا ہے اب کوئی زبان سے نہیں سن سکتاہے،اسی طرح ارادہ نیت کرنا یہ کام بھی ''دل '' کا ہے زبان سے ارادہ ونیت بے معنی ہے ۔
    مزید یہ کہ زبان سے نیت کرنے سے متعلق کوئی موضوع اورمن گھڑت روایت تک نہیں ملتی اورلوگ''نویت بصوم غد من شھر رمضان'' یا اس جیسے جو الفاظ بطورنیت پڑھتے ہیں یہ لوگوں کی اپنی ایجاد ہے کسی صحیح تو درکنا ر ضعیف اورموضوع روایت میں بھی یہ الفاظ نہیں ملتے۔
    دراصل زبان سے چندالفاظ اداکرنے کا نیت سے کوئی تعلق ہی نہیں ہے ، غورکیجئے کہ جوشخص روزہ کا ارادہ نہ رکھے وہ بھی زبان سے یہ الفاظ ادا کرسکتاہے گرچہ اس کے دل کا ارادہ کچھ اورہی ہو، دریں صورت اس کاکوئی فائدہ ہی نہیں ہے بلکہ یہ ایک لغوچیزاوربدعت ضلالت ہے۔
    خلاصہ کلام:
    یہ کہ روزہ داروں کو چاہئے کہ ہرروزہ کی الگ الگ نیت کریں۔
    نیت ہررات شام ہی کو کرلیں اگربھول جائیں تو فجرسے قبل لازما نیت کرلیں۔
    نیت کامطلب دل میں روزہ رکھنے کا عزم وارادہ کرنا ہے۔جس طرح ہرکام کے لئے ہم دل سے عزم وارادہ کرتے ہیں۔
     
    Last edited: ‏جون 07، 2016
    • شکریہ شکریہ x 11
    • علمی علمی x 2
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
  2. ‏جولائی 31، 2011 #2
    شاکر

    شاکر تکنیکی ناظم رکن انتظامیہ
    جگہ:
    جدہ
    شمولیت:
    ‏جنوری 08، 2011
    پیغامات:
    6,595
    موصول شکریہ جات:
    21,360
    تمغے کے پوائنٹ:
    891

    جزاک اللہ خیرا و بارک فیکم۔
     
  3. ‏اگست 01، 2011 #3
    ناصر رانا

    ناصر رانا رکن مکتبہ محدث
    جگہ:
    Cape Town, Western Cape, South Africa
    شمولیت:
    ‏مئی 09، 2011
    پیغامات:
    1,171
    موصول شکریہ جات:
    5,448
    تمغے کے پوائنٹ:
    306

    بھائی آپ نے یہ دعا لکھی ہےیا وہ کوئی اور پڑھی جاتی ہے,
    جیسے
    وبصوم غد نویت من شھر رمضان
    یا اور ہے؟
    جزاک اللہ خیرا
     
  4. ‏اگست 01، 2011 #4
    ابن خلیل

    ابن خلیل سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 03، 2011
    پیغامات:
    1,383
    موصول شکریہ جات:
    6,746
    تمغے کے پوائنٹ:
    332

    جزاک اللہ خیرا
     
  5. ‏جولائی 10، 2013 #5
    شاکر

    شاکر تکنیکی ناظم رکن انتظامیہ
    جگہ:
    جدہ
    شمولیت:
    ‏جنوری 08، 2011
    پیغامات:
    6,595
    موصول شکریہ جات:
    21,360
    تمغے کے پوائنٹ:
    891

    ماشاءاللہ۔
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں