1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

سرکاری تعاون حاصل کرنے کے لیے ذرائع آمدن مخفی رکھنا

'ہبہ اور عطیہ' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد عامر یونس, ‏نومبر 07، 2016۔

  1. ‏نومبر 07، 2016 #1
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,923
    موصول شکریہ جات:
    6,495
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    سرکاری تعاون حاصل کرنے کے لیے ذرائع آمدن مخفی رکھنا

    مجھے حکومت کی جانب سے مالی اعانت حاصل ہوتی ہے ، توکیا میرے لیے جائز ہے کہ میں اپنے ذرا‏ئع آمدن مخفی رکھوں ؟

    Published Date: 2004-09-10

    اگر مالی اعانت میں ان کی شرط ہوکہ انہیں آپ کے ذرا‏ئع آمدن کا علم ہونا چاہیے یا پھر یہ علم ہوکہ کمائي کتنی ہے ، توآپ کے لیے جائز نہیں کہ آپ ذریعہ آمدن ان سے مخفی رکھیں ۔

    اوراسی طرح اگر یہ معلوم ہوجائے کہ وہ صرف محتاج اورضرورتمند کی اعانت کرتے ہیں اوروہ شخص محتاج اورضرورتمند نہ ہو تواس کے لیے یہ مالی اعانت حاصل کرنا جائز نہیں ۔

    واللہ اعلم .

    الشیخ محمد صالح المنجد

    https://islamqa.info/ur/6357
     
  2. ‏نومبر 07، 2016 #2
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,923
    موصول شکریہ جات:
    6,495
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    حکومت کی طرف سے ملنے والے راشن کارڈ کی رقم سے قربانی خرید سکتا ہے؟

    سوال: امریکی حکومت محدود آمدن والے افراد کو ایک کارڈ فراہم کرتی ہے جس کے ذریعے کھانے پینے کی اشیا حکومتی خزانے سے خریدی جا سکتی ہیں، تو کیا اس کارڈ کو قربانی کی خریداری کیلئے استعمال کیا جا سکتا ہے؟

    Published Date: 2015-09-16

    الحمد للہ:

    اول:

    سوال میں مذکور پروگرام کا مختصر تعارف یہ ہے:

    1- اس کارڈ کو امریکہ میں "راشن کارڈ" کہا جاتا ہے، یہ پروگرام دوسری عالمی جنگ کے بعد شروع کیا گیا تھا۔

    2- اس پروجیکٹ کو وہاں پر " Food Assistance Program " کہا جاتا ہے۔

    3- اس پروجیکٹ کو امریکہ میں وزارت زراعت چلا رہی ہے۔

    4- آج کل یہ راشن کارڈ الیکٹرانک کارڈ کی شکل میں ہیں جن میں ماہانہ تقریباً 100 ڈالر مہیا کیے جاتے ہیں۔

    5- یہ پروگرام صرف ان لوگوں کیلئے مختص ہے جنہیں کھانے پینے کیلئے کچھ بھی میسر نہیں آتا یا ان کی آمدن انتہائی محدود ہے جس سے ان کی ضروریات پوری نہیں ہوتیں۔

    6- اس پروگرام سے مستفید ہونے والوں کی تعداد تقریباً 36 ملین امریکی ہیں۔

    دوم:

    کسی بھی مسلمان کو اس کارڈ سے قربانی خریدنے کی اجازت نہیں ہے، کیونکہ یہ کارڈ صرف غریب لوگوں کو دیا جاتا ہے، اور غریب لوگوں کیلئے قربانی کرنا شرعی عمل نہیں ہے۔

    چنانچہ اگر کوئی شخص مالدار ہے تو اس کیلئے اس پروگرام میں شمولیت اختیار کرنا ہی جائز نہیں ہے؛ کیونکہ اس طرح وہ ناجائز مال حاصل کر رہا ہے۔

    مزید کیلئے سوال نمبر: (6357) کا جواب ملاحظہ کریں۔

    واللہ اعلم.

    اسلام سوال و جواب

    https://islamqa.info/ur/144986
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں