1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

سعودی عرب میں بھارت کے وزیراعظم مودی کا پرتپاک استقبال

'سیاسی نظام' میں موضوعات آغاز کردہ از بنیامین, ‏اپریل 06، 2016۔

  1. ‏اپریل 15، 2016 #191
    عمر اثری

    عمر اثری سینئر رکن
    جگہ:
    نئی دھلی، انڈیا
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 29، 2015
    پیغامات:
    4,231
    موصول شکریہ جات:
    1,060
    تمغے کے پوائنٹ:
    387

    جزاک اللہ خیرا.
    اللہ آپکے علم میں اضافہ عطا فرماۓ.
     
  2. ‏اپریل 15، 2016 #192
    عبداللہ ہندی

    عبداللہ ہندی مبتدی
    جگہ:
    امرتسر پنجاب ہندوستان
    شمولیت:
    ‏فروری 04، 2016
    پیغامات:
    203
    موصول شکریہ جات:
    13
    تمغے کے پوائنٹ:
    27

    پہلے تو آپ کا کہنا کچھ اور تھا اور آپ کے الفاظ یہ تھے۔ ’۔ ٹھیک ہے ، الدولۃ الاسلامیہ کے باشندے نہیں ، لیکن ایک غیر اسلامی ملک کی طرف نسبت کا اظہار کرنا کون سا دین اسلام سے محبت کا طریقہ ہے ؟!’
    لیکن اب آپ نے اپنی بات کو بدلا ہے۔ اچھی بات ہے۔
     
  3. ‏اپریل 15، 2016 #193
    عبداللہ ہندی

    عبداللہ ہندی مبتدی
    جگہ:
    امرتسر پنجاب ہندوستان
    شمولیت:
    ‏فروری 04، 2016
    پیغامات:
    203
    موصول شکریہ جات:
    13
    تمغے کے پوائنٹ:
    27

    نسبت غیر مسلم ملک کی طرف کی جا سکتی ہے۔ آپ کو صحابہ ؓ کی مثال بھی دی تھی۔ اور آپ مان بھی گئے ہیں۔ الحمدللہ۔
     
  4. ‏اپریل 15، 2016 #194
    عبداللہ ہندی

    عبداللہ ہندی مبتدی
    جگہ:
    امرتسر پنجاب ہندوستان
    شمولیت:
    ‏فروری 04، 2016
    پیغامات:
    203
    موصول شکریہ جات:
    13
    تمغے کے پوائنٹ:
    27

    جی دولۃ الاسلامیہ کی موجودگی میں بھی ہندوستان کی طرف نسبت ہو سکتی ہے۔ مثال دے دی تھی۔ اور دوسری بات کہ اگر ہندوستان غیر مسلم ملک ہے تو وہاں پر مسلمانوں کا رہنا درست نہیں اور اُن کو کسی قریب کے مسلمان ملک میں ہجرت کر لینی چاہیے لیکن وہ کہاں ہجرت کریں۔ قریب تو پاکستان ہے۔ ہم یہ بھی جانتے ہیں کہ پاکستان میں پہلے ہی بہت سے بنگالی اور برما کے لوگ رہتے ہیں۔ اور اُس کے ساتھ اچھا سلوک نہیں کیا جاتا ۔ تو اگر آپ یہ چاہتے ہیں کہ ہم بھی آپ کے اسلامی ملک میں آ جائیں تو آپ کہاں جائیں گے؟
     
  5. ‏اپریل 15، 2016 #195
    عبداللہ ہندی

    عبداللہ ہندی مبتدی
    جگہ:
    امرتسر پنجاب ہندوستان
    شمولیت:
    ‏فروری 04، 2016
    پیغامات:
    203
    موصول شکریہ جات:
    13
    تمغے کے پوائنٹ:
    27

    اِس کا عربی متن خود تلاش کر لیں۔

    رسول اللہ ﷺ کی ہر مہم ہر غزوہ میں حضرت بلال آپﷺ کے ساتھ رہے، آپ رضی اللہ ان سات صحابہ میں سے ہیں جنہوں نے اپنے اسلام کا اعلان کیا۔ حضرت بلال ہمیشہ بات کرتے ہوئے یہی کہتے کہ رسول اللہ ﷺ نے یہ فرمایا، رسول اللہ ﷺ نے وہ فرمایا، ان سے کوئی اور بات کی جاتی تو کچھ دیر وہ بات کرتے مگر پھر یہیں آجاتے کہ رسول اللہ ﷺ نے یہ فرمایا، رسول اللہ ﷺ نے وہ فرمایا۔ آپﷺ فرماتے تھے، بلال کوئی بھی بات مجھ سے منسوب کر کے کہیں تو اس کے بارے میں کسی شک میں مت پڑنا۔حضرت بلال ان اصحاب میں سے ہیں جن کو دنیا ہی میں جنت کی بشارت دے دی گئی تھی اور یہ ایک وجہ ہی کافی تھی کہ لوگ ان کی بے پناہ عزت کرتے، ان کی تعریف کرتے اور جب ایسا ہوتا، حضرت بلال اپنے سر کو جھکا لیتے، جاننے والے جانتے تھے کہ ان کی تعریف کی جارہی ہے لیکن سر جھکا کر حضرت بلال کی آنکھوں سے اشک جاری ہوتے تھے۔ وہ کہتے تھے میں تمہیں بتاؤں میں کیا ہوں؟ میں ایک حبشی ہوں اور میں ایک غلام تھا اور ایک غلام ہوں، اللہ کا غلام۔
     
    • پسند پسند x 1
    • مفید مفید x 1
    • لسٹ
  6. ‏اپریل 15، 2016 #196
    محمد طارق عبداللہ

    محمد طارق عبداللہ سینئر رکن
    جگہ:
    ممبئی - مہاراشٹرا
    شمولیت:
    ‏ستمبر 21، 2015
    پیغامات:
    2,271
    موصول شکریہ جات:
    694
    تمغے کے پوائنٹ:
    213

    بهائی عبداللہ
    ایک مشورہ دیا گیا خلوص سے ۔ اسکا جواب بهی عمدہ ہو ۔
    فی الحال اس مسئلہ پر نہیں ، شام کے پناہ گزینوں کا مسئلہ اہم ہے ۔
     
  7. ‏اپریل 15، 2016 #197
    عبداللہ ہندی

    عبداللہ ہندی مبتدی
    جگہ:
    امرتسر پنجاب ہندوستان
    شمولیت:
    ‏فروری 04، 2016
    پیغامات:
    203
    موصول شکریہ جات:
    13
    تمغے کے پوائنٹ:
    27

    اور یہ آپ کیا کر رہے ہیں کبھی ایک موضوع پر بات کر رہے ہیں اور کبھی دوسرے پر ۔ پہلے جو آپ سے سوالات کیے گے تھے اُن کے تو جوابات دے دیجیے۔

    آپ نے کہا تھا کہ شاہ سعود نے حجاز کی اسلامی حکومت کے خلاف صرف اِس لیے قتال کیا تھا کہ شریفِ مکہ امریکہ کے دوست تھے۔ تو کیا ہم یہ مان لیں کہ آج کل کسی اسلامی ملک کا حکمران امریکہ یا برطانیہ کا دوست ہو تو اُس کے خلاف قتال جائز ہے؟
    اور دوسری سوال یہ تھا کہ کیا کہ شاہ سعود نے حجاز پر حملہ کیا تھا اور آپ نے کہا تھا کہ اُنھوں نے حملہ اِس لیے کیا تھا کہ وہ اسلامی حکومت نہیں تھی ۔ اور آپ نے مجھے یہ بھی کہا تھا کہ کیا آپ اُس حکومت کو اسلامی حکومت سمجھتے ہیں۔ توآپ یہ بھی بتا دیں کہ کیا اُس وقت مکہ اور مدینہ دارالکفر تھا ؟ کیوں کہ جہاں اسلامی حکومت نہ ہو وہ دارالکفر ہوتا ہے۔
     
  8. ‏اپریل 15، 2016 #198
    عبداللہ ہندی

    عبداللہ ہندی مبتدی
    جگہ:
    امرتسر پنجاب ہندوستان
    شمولیت:
    ‏فروری 04، 2016
    پیغامات:
    203
    موصول شکریہ جات:
    13
    تمغے کے پوائنٹ:
    27

    پہلے جو مسلہ شروع ہوا ہوا ہے اُس کا تو حل نکل آئے۔ پھر ان شاء اللہ اِس مسلہ پر بھی کچھ کہیں گے۔
     
  9. ‏اپریل 15، 2016 #199
    خضر حیات

    خضر حیات علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    طابہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 14، 2011
    پیغامات:
    8,123
    موصول شکریہ جات:
    8,176
    تمغے کے پوائنٹ:
    964

    میں نے یہ بات آپ سے کہی تھی ، اور آپ کی شخصیت اور طرز استدلال کو مد نظر رکھتے ہوئے ۔
    جی میں تو مان گیا ، لیکن آپ بھی مان جائیں ، کہ پہچان کی خاطر کوئی بھی نسبت یا نام استعمال کیا جاسکتا ہے جو اسلام کی عمومی تعلیمات کے خلاف نہ ہو ۔
    پہچان کے لیے آپ کی نسبت ایک غیر اسلامی ملک کی طرف بھی ہو تو جائز ہے ، لیکن اسی پہچان کے لیے اگر کوئی اپنے ملک کا نام اپنے یا اپنے کسی بڑے کے نام پر رکھ لے تو آپ ’’ الدولۃ الاسلامیۃ ‘‘ رکھنے کا مشورہ دیتے ہیں ، یہ تضاد کیوں ؟ حالانکہ آپ کی نسبت تو آپ کا شخصی معاملہ ہے ، جبکہ ایک پورے ملک کا نام رکھنے میں بہت ساری چیزیں مد نظر رکھنا پڑتی ہیں ۔
    اگر یہ بات ان سے ثابت ہے تو اس میں نسبت نہیں ، بلکہ زیادہ سے زیادہ اپنے بارے میں حقیقت حال سے آگاہ کیا ہے ، کہ میں حبشی ہوا کرتا تھا ، لیکن پھر الدولۃ الاسلامیہ کی طرف ہجرت کرکے اللہ کا غلام بن گیا ، آپ کم از کم اس پر ہی عمل کر لیں ، الدولۃ الاسلامیہ میں چلے جائیں ، وہاں جاکر لوگوں کو بتائیں کہ میں اصلا ہندی ہوں ، لیکن اللہ کا احسان ہوا کہ الدولۃ الاسلامیہ میں شامل ہوا ۔ یوں ایک غیر اسلامی نسبت کو لاحقہ بنا کر الدولۃ الاسلامیہ والی باتیں کرنا ، آپ کے کردار و گفتار میں تضاد کا پتہ دیتا ہے ۔
    آپ الدولۃ الاسلامیہ میں جائیں ۔ اور ساتھ اہل بنگال اور برما کو بھی لے جائیں ۔
     
  10. ‏اپریل 15، 2016 #200
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    5,537
    موصول شکریہ جات:
    2,211
    تمغے کے پوائنٹ:
    701

    پیارے بھائی :
    بنگلہ دیش بھی تو قریب ہے ، اور بنگالی حکومت ہندوستانیوں سے قربت کا رشتہ بھی استوار رکھتی ہے ۔
    پھر افغانستان بھی کوئی اتنا دور نہیں ،وہاں کی حکومت بھی اہل ہندوستان سے محبت کا رشتہ رکھتے ہیں ۔
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں