1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

شادی سے پہلے بیوی کو کس طرح پہچانے گا کہ وہ محبت کرنے والی اور بچے پیدا کرنے والی ہے؟

'نکاح' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد عامر یونس, ‏جون 06، 2014۔

  1. ‏جون 10، 2014 #41
    مشکٰوۃ

    مشکٰوۃ سینئر رکن
    جگہ:
    اللہ کی رحمتوں کے زیر سائے ان شاء اللہ
    شمولیت:
    ‏ستمبر 23، 2013
    پیغامات:
    1,466
    موصول شکریہ جات:
    926
    تمغے کے پوائنٹ:
    237

    محترم آصف بھائی !
    مجھے آپ کی کسی بات پر اب غصہ آیا ہے نہ پہلے۔اصلاح فرما لیجئے۔۔۔ابتسامہ
    باور کروانے کا شکریہ کہ میں ان میں سے نہیں جن کی بات چل رہی ہے ،آئندہ احتیاط برتوں گی ،،ان شاء اللہ
     
    • پسند پسند x 2
    • زبردست زبردست x 1
    • لسٹ
  2. ‏جون 10، 2014 #42
    مشکٰوۃ

    مشکٰوۃ سینئر رکن
    جگہ:
    اللہ کی رحمتوں کے زیر سائے ان شاء اللہ
    شمولیت:
    ‏ستمبر 23، 2013
    پیغامات:
    1,466
    موصول شکریہ جات:
    926
    تمغے کے پوائنٹ:
    237

    بارک اللہ فیک بھائی ۔۔اسے آج کل کی لڑکیوں کی ترجمانی نہ کہیں کیونکہ ان کے اور میرے نظریات میں زمین ،آسمان کا فرق ہے ۔ویسے بھی آج کل کی پڑھی لکھی لڑکیوں میں کوئی بھی مجھے اپنا ترجمان بنانا پسند کرے گی نہ ہی میں ان کی ترجمان بننا پسند کروں گی۔۔
    آپ کی تمام باتوں سےمجھے مکمل اتفاق ہے بہت اچھے طریقے سے سمجھایا آپ نے،بلکہ اس سے مزید اور بھی بہت سی باتیں سیکھنے کو ملی ہیں امید ہے اسی طرح اصلاح کرتے رہیں گے ۔۔اللہ تعالٰی آپ کو بہترین جزا عطا فرمائیں۔۔آمین یا رب العالمین
     
    • پسند پسند x 2
    • شکریہ شکریہ x 1
    • زبردست زبردست x 1
    • لسٹ
  3. ‏جون 10، 2014 #43
    محمد آصف مغل

    محمد آصف مغل سینئر رکن
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏اپریل 29، 2013
    پیغامات:
    2,677
    موصول شکریہ جات:
    3,881
    تمغے کے پوائنٹ:
    436

    بہت خوب۔ اسلام کے محاسن پر ہم اللہ تعالیٰ کا جتنا بھی شکر ادا کریں کم ہے۔
    نظر انداز کرنا اور بات ہے
    جبکہ
    حدیث میں فوقیت کی بات کی گئی ہے۔
    بقول آپ کے مسلمانوں کا یہ طرزِ عمل ٹھیک نہیں۔ یعنی بظاہر بات تو آپ مسلمانوں کی کر رہے ہیں لیکن یہ تو سوچئے کہ آپ کے اس طرزِ عمل سے کس پر تنقید ہو رہی ہے۔
    اگر سمجھ نہیں آئی تو میں بتا دیتا ہوں
    آپ کے اس طرز عمل سے حدیث رسول ﷺ پر انگلی اٹھ رہی ہے۔
    اسی لئے
    محترم محمدیونس بھائی نے جب آپ سےچند سوال پوچھے تو آپ نے ان کا جواب مرحمت نہیں فرمایا۔ جس سے صاف عیاں ہو جاتا ہے کہ آپ اس حدیث کی مخالفت کر کے کم ازکم منکرین حدیث کی صف میں شامل ہو رہے ہیں۔
    یہ بات اس لئے لکھی ہے کیونکہ آپ نے ایک ہی حدیث کو تختہ مشق بنانے کی کوشش کی ہے جبکہ باقی احادیث کی طرف آپ نے التفات نہیں فرمایا۔ جناب۔
    ان شاء اللہ العزیز آپ مجبور ہوں جائیں گے کہ اس حدیث میں موجود پیارے پیغمبر ﷺ کی فقاہت کو سمجھیں۔
    صرف اور صرف اولاد ہی کا حصول آپ کی اپنی اختراع ہے۔ جبکہ حدیث میں صرف اور صرف کسی لفظ کا ترجمہ و مفہوم نہیں ہے۔
    تنقید کرنے سے پہلے سمجھ ضروری ہے۔
    اس حدیث میں فوقیت کی بات کی گئی ہے جبکہ دیگر احادیث مبارکہ میں رسول اللہ ﷺ سے دیگر اُمور کے لئے نکاح کرنا بھی ثابت ہے۔ لیکن آپ کو ایک حدیث ہضم نہیں ہو رہی باقی احادیث کو تو وہی دیکھے گا جسے احادیث رسول ﷺ سے پیار ہو گا۔ ان پر عمل کرنا چاہے گا۔ اور منکرین حدیث کے حصے میں صرف تنقید ہی آئے گی۔ الا ما شاء اللہ۔

    اسلام میں کوئی قباحت نہیں۔
    ہاں
    مسلمانوں کے طرز عمل کو بنیاد پر حدیث پر تنقید کرنا بہت بڑی قباحت ہے۔
    اچھوت اور چھوت چھات جیسے الفاظ سے وہی لوگ واقف ہیں جن کی تعلیم میں ہندوانہ ذات پات کا علم اور عمل شامل ہے۔
    بخاری و مسلم میں موجود ایک حدیث کا مفہوم یہ ہے کہ مسلمانوں کے لئے کوئی چیز ا‘‘چھوت’’ نہیں ہے۔
    پنجابی کی مثال ہے
    ڈگیا کھوتے توں غصہ کمہار اُتے
    غصہ آپ کو متن اور مفہوم حدیث نبوی ﷺ پر ہے جبکہ پیش کر رہے ہیں جناب مسلمانوں کا طرز عمل۔
    کیا مسلمانوں کے غلط طرز عمل کی وجہ سے دین پر عمل کرنا بند کر دیا جائے؟

    راقم الحروف نے چند مثالیں قرآن مجید سے پیش کی تھیں۔ اور منکرین حدیث کے لئے صرف قرآن ہی حجت ہے۔
    جناب عالی
    مذکورہ بالا دھاگوں میں قرآنی امثال بھی پڑھ لیجیے پھر پوچھئے گا کہ
     
  4. ‏جون 10، 2014 #44
    محمد آصف مغل

    محمد آصف مغل سینئر رکن
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏اپریل 29، 2013
    پیغامات:
    2,677
    موصول شکریہ جات:
    3,881
    تمغے کے پوائنٹ:
    436

    مشکوٰۃ سسٹر۔
    واللہ میرا ارادہ ایسا کچھ بھی نہیں تھا۔ اگر کوئی خلافِ مزاج ہو تو اللہ کے لئے معاف فرما دیجیے گا۔
     
    • شکریہ شکریہ x 1
    • متفق متفق x 1
    • لسٹ
  5. ‏جون 10، 2014 #45
    مشکٰوۃ

    مشکٰوۃ سینئر رکن
    جگہ:
    اللہ کی رحمتوں کے زیر سائے ان شاء اللہ
    شمولیت:
    ‏ستمبر 23، 2013
    پیغامات:
    1,466
    موصول شکریہ جات:
    926
    تمغے کے پوائنٹ:
    237

    ایسی کوئی بات نہیں بھائی۔۔!بارک اللہ فیک
    اللہ تعالٰی ہم سب کو معاف فرمائیں۔۔آمین یا رب العالمین
     
    • شکریہ شکریہ x 1
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
  6. ‏جون 11، 2014 #46
    عبداللہ عزام

    عبداللہ عزام مبتدی
    شمولیت:
    ‏مئی 01، 2014
    پیغامات:
    60
    موصول شکریہ جات:
    36
    تمغے کے پوائنٹ:
    22

    جناب جہاں آپ کی مراد نہ سمجھا اس کے متعلق اوپر میں معذرت کرچکا ہوں۔ ایک مرتبہ پھر معذرت چاہوں گا ۔

    شاید یہ آپ ہی کے الفاظ ہیں
    جی معذرت معلوم نہیں تھا کہ آپ مجتہد بھی ہیں۔

    پھر تو آپ کو یہ سوال کرنا چاہیے تھا کہ کیا مذکورہ حدیث کی درایت پر سلف صالحین میں سے کسی نے اعتراض کیا ہے ؟

    اللہ نہ کرے کہ میں ان کے بارے میں ایسی بات کہوں۔ البتہ ان کے معاصر اور نزدیک کے زمانے کے علما نے ان کے لیے متشدد وغیرہ جیسے الفاظ استعمال کیئے ہیں۔

    اس بات کا ہماری بھث سے کوئی تعلق نہیں

    درج بالا آیت مبارکہ سے جو مطلب آپ نے قوسین میں اخذ کیا ہے وہ مجھے سرسری تلاش میں کسی تفسیر میں نہیں ملا۔ براہِ کرم اگر یہ جناب کی خود ساختہ تفسیر نہیں ہے تو حوالہ عنایت فرمادیں۔
    مولانا محمد جونا گڑھی صاحب نے ترجمہ کیا ہے ۔
    اور وہ کہ جب انکو پروردگار کی باتیں سمجھائی جاتی ہیں تو ان پر اندھے اور بہرے ہو کر نہیں گرتے (بلکہ غورو فکر سے سنتے ہیں )
    مولانا فتح محمد جالندھری نے ترجمہ کیا ہے۔
    اور وہ کہ جب انکو انکے پروردگار کی باتیں سمجھائی جاتی ہیں تو ان پر اندھے اور بہرے ہو کر نہیں گرتے (بلکہ غورو فکر سے سنتے ہیں )
    تفسیر احسن البیان (تفسیرِمکی) میں مولانا صلاح الدین یوسف نے اس آیت کے حواشی میں لکھا ہے۔
    یعنی وہ ان سے اعراض اور غفلت نہیں برتتے۔ جیسے وہ بہرے ہوں کہ سنیں ہی نہیں اور اندھے ہوں کہ دیکھیں ہی نہیں بلکہ وہ غور اور توجہ سے سنتے اور انہیں آویزہ گوش اور حرزِ جان بناتے ہیں۔
    معارف القران میں مفتی محمد شفیع صاحب لکھتے ہیں۔
    اور وہ ایسے ہیں جس وقت ان کو اللہ کے احکام کے ذریعے نصیحت کی جاتی ہے تو ان (احکام) پر بہرے اندھے ہو کر نہیں گرتے (جس طرح کافر قرآن پر ایک نئی بات سمجھ کر تماشے کے طور پر اور نیز اسمیں اعتراضات پیدا کرنے کے لیئے اس کے حقائق و معاف سے اندھے بہرے ہوکر اندھا دھند ہجوم کرلیتے تھے۔
    تفسیرِ عثمانی میں لکھا ہے ۔
    بلکہ نہایت فکر وتدبر سے سنیں اور سن کر متاثر ہوں۔ مشرکین کی طرح پتھر کی مورتیں نہ بن جائیں۔

    فی الحال دستیب تفاسیر میں سے کسی میں بھی آپ کی پیش کردہ (تحقیق اور تقلید والی) منطق نہیں ملی۔
    اگر جناب قرآن اور حدیث کے علاوہ کسی تیسری چیز کو دلیل نہیں مانتے تو پھر یہ مطلب قرآن و حدیث سے پیش کردیں ۔
    اگر علمائے حق کی پیش کردہ تشریحات کی تقلید کرتے ہیں تو وہ تشریح پیش کر دیں جو آپ کے بیان کردہ منطق کے مطابق ہو۔
    بصورتِ دیگر ہمیں اپنی اور اپنے خیالات کی تقلید پر قائل نہ کریں۔ چاہے خود آپ اپنے خیالات کی تقلید کرتے رہیں ۔
     
  7. ‏جون 11، 2014 #47
    T.K.H

    T.K.H مشہور رکن
    جگہ:
    یہی دنیا اور بھلا کہاں سے ؟
    شمولیت:
    ‏مارچ 05، 2013
    پیغامات:
    1,097
    موصول شکریہ جات:
    318
    تمغے کے پوائنٹ:
    156

    اوپر ہائی لائٹ کی گئی بات آپ نے مان لی بات ختم ہوئی۔ باقی آپ کا مجھ کو ” منکرِ حدیث “ کی صف میں شامل کرنا آپ کی ” تنگ نظری یا جہالت “ ہے اور دوسری غیر متعلقہ باتوں کو میں جان بوجھ کر نظرانداز کر رہا ہوں کیونکہ میں نے سوال ” الف “ کیا تھا لیکن آپ نے جواب ” ب “ دیا۔
     
  8. ‏جون 11، 2014 #48
    محمد آصف مغل

    محمد آصف مغل سینئر رکن
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏اپریل 29، 2013
    پیغامات:
    2,677
    موصول شکریہ جات:
    3,881
    تمغے کے پوائنٹ:
    436

    تنگ نظری یا جہالت سے مجھے میرے رب نے دُور رکھا ہے الحمد للہ۔

    باقی
    آپ واقعی منکرین حدیث نہیں ہیں تو نعیم یونس صاحب کے سوالات کا جواب کیوں نہیں دے دیتے۔
    اگر آپ واقعی منکرین حدیث میں سے نہیں ہیں تو پھر حدیث پر طعن کیوں کر رہے ہیں؟؟؟۔
    یہ بھی ممکن ہے کہ آپ کا تعلق قادیانت سے ہو
    یہ بھی ممکن ہے کہ آپ شیعہ ہوں
    اگر آپ ان سب سے اپنے دامن کو بچاتے ہیں یا بچانا چاہتے ہیں تو حدیث پر طعن کرنے سے توبہ کرتے ہوئے اپنے رب کے سامنے کھڑے ہونے سے ڈر جائیے اور حدیث کے متعلق لوگوں کے ذہنوں کو آلودہ مت کریں۔
    میں نے آپ کی تمام تحریر کا احاطہ کیا اور آپ کے اعتراضات ہی کا جواب دیا جسے آپ نے الف ب بنا دیا۔ آپ کا انصاف پسند اصول اپنے متعلق کتنی انگلیاں اٹھائے گا
    اگر آپ خود اپنے اوپر انگلیاں نہیں اٹھائیں گے تو پھر اپنے اوپر انگلیاں اٹھائے جانے سے کیوں گھبراتے ہیں؟؟؟؟
    مبارک ہے ہر وہ انگلی جو آپ کی تحریر پر اس لئے اٹھائی جا رہی ہے کہ آپ نے حدیث رسول ﷺ کو تختہ مشق بنا یا ہے۔
     
    • زبردست زبردست x 2
    • پسند پسند x 1
    • متفق متفق x 1
    • لسٹ
  9. ‏جون 12، 2014 #49
    T.K.H

    T.K.H مشہور رکن
    جگہ:
    یہی دنیا اور بھلا کہاں سے ؟
    شمولیت:
    ‏مارچ 05، 2013
    پیغامات:
    1,097
    موصول شکریہ جات:
    318
    تمغے کے پوائنٹ:
    156

    میرے متعلق ” حدیثِ رسولﷺ “ کو تختہ مشق اور طعن کا افسانہ تو آپ نے گھڑا ہے۔ میں نہ تو ” قادیانیت “ کا قائل ہوں نہ ” شیعت “ کا شیدائی۔
     
  10. ‏جون 18، 2014 #50
    محمد علی جواد

    محمد علی جواد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 18، 2012
    پیغامات:
    1,986
    موصول شکریہ جات:
    1,495
    تمغے کے پوائنٹ:
    304

    السلام علیکم -

    محترم- آپ کے بیان کردہ تفاسیر میں الفاظ "غورو فکر سے سنتے ہیں " غور اور توجہ سے سنتے- فکر وتدبر سے سنیں اور سن کر متاثر ہوں وغیرہ - کیے گئے ہیں -

    جب کہ میں نے "تحقیق" کا لفظ بیان کیا ہے - کیا غورو فکر کرنے اور تحقیق کرنے میں کوئی فرق ہے؟؟ - اگر ایسا ہے تو میں اپنے الفاظ واپس لیتا ہوں -

    اسی طرح "اندھا دھند ہجوم" کرنے اور میرے بیان کردہ لفظ "تقلید" میں اگر کوئی فرق ہے تو میں اپنے الفاظ واپس لیتا ہوں -

    باقی ابن جوزی رح کو ان کے ہم عصروں نے متشدد ضرور کہا ہے لیکن ان پر "مرض لاحق " ہونے کا الزام نہیں لگایا - جیسا کہ آپ نے مجھ پر لگایا تھا -
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں