1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

شریعت ،طریقت،معرفت کی حقیقت

'عملی تصوف' میں موضوعات آغاز کردہ از عابدالرحمٰن, ‏جنوری 05، 2013۔

  1. ‏مارچ 23، 2013 #161
    عمران اسلم

    عمران اسلم مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 02، 2011
    پیغامات:
    318
    موصول شکریہ جات:
    1,604
    تمغے کے پوائنٹ:
    150

    پاکستان میں لوڈ شیڈنگ کا بہت مسئلہ ہے لاہور میں اس وقت ١٢ گھنٹے سے زیادہ کی لوڈ شیڈنگ ہو رہی ہے اس وجہ سے بعض دفعہ جواب دینے میں تاخیر ہو جاتی ہے ورنہ آپ سے دوری ہمیں کب برداشت ہے۔
     
  2. ‏مارچ 23، 2013 #162
    عابدالرحمٰن

    عابدالرحمٰن سینئر رکن
    جگہ:
    BIJNOR U.P. INDIA
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 18، 2012
    پیغامات:
    1,124
    موصول شکریہ جات:
    3,229
    تمغے کے پوائنٹ:
    240

    السلام علیکم
    اس اعتبار سے تو کچھ بھی ثابت نہیں ہوا
    اتنا ضرور معلوم ہوتا ہے کہ وہ علم شریعت نہیں تھا،وہ علم لدنی تھا جس کو علماء نے اَسرار و معارف کا اِلہامی علم قرار دیا ہے اس کے علاوہ اور کچھ ہے تو برائے مہربانی مطلع فرمادیں
     
  3. ‏مارچ 23، 2013 #163
    حرب بن شداد

    حرب بن شداد سینئر رکن
    جگہ:
    اُم القرٰی
    شمولیت:
    ‏مئی 13، 2012
    پیغامات:
    2,149
    موصول شکریہ جات:
    6,249
    تمغے کے پوائنٹ:
    437

    (إِنَّكَ لَا تَهْدِي مَنْ أَحْبَبْتَ وَلَكِنَّ اللَّهَ يَهْدِي مَنْ يَشَاءُ وَهُوَ أَعْلَمُ بِالْمُهْتَدِينَ (سورة القصص٢٨: ٥٦)“(اے محمد صلی اللہ علیہ وسلم !) بلاشبہ آپ، جسے چاہیں ہدایت نہیں دے سکتے، لیکن اللہ جسے چاہے ہدایت دیتا ہے۔ اور وہ ہدایت قبول کرنے والوں کو خوب جانتا ہے۔”(صحیح بخاری، التفسیر، باب تفسیر قولہ تعالی (إِنَّكَ لَا تَهْدِي مَنْ أَحْبَبْتَ)،حدیث ٤٧٧٢ و صحیح مسلم، الایمان، باب الدلیل علی صحۃ اسلام من حضرہ الموت.....الخ، حدیث ٢٤)"
     
  4. ‏مارچ 23، 2013 #164
    عابدالرحمٰن

    عابدالرحمٰن سینئر رکن
    جگہ:
    BIJNOR U.P. INDIA
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 18، 2012
    پیغامات:
    1,124
    موصول شکریہ جات:
    3,229
    تمغے کے پوائنٹ:
    240

    السلام علیکم
    بھائی میں بات کو جتنا سمیٹنا چاہ رہا ہوں احباب اتنا ہی پھیلاتے جارہے ہیں
    مولانا صاحب اب کسی طرح کا جواب عنایت نہ فرمائیں
    جزاک اللہ خیراً
     
  5. ‏مارچ 23، 2013 #165
    عمران اسلم

    عمران اسلم مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 02، 2011
    پیغامات:
    318
    موصول شکریہ جات:
    1,604
    تمغے کے پوائنٹ:
    150

    ٹھیک ہے بھائی علم لدنی تھا علم لدنی تھا لیکن اب کیا کیا جائے۔ آپ نے اس ایک موضوع پر اتنی ساری پوسٹیں کی ہیں تو کسی چیز کا اثبات تو کیجئے۔ مان لیا حضرت خضرؑ کے پاس علم لدنی تھا تو.......
     
  6. ‏مارچ 24، 2013 #166
    عابدالرحمٰن

    عابدالرحمٰن سینئر رکن
    جگہ:
    BIJNOR U.P. INDIA
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 18، 2012
    پیغامات:
    1,124
    موصول شکریہ جات:
    3,229
    تمغے کے پوائنٹ:
    240

    السلام علیکم
    عزیز محترم
    آج میں نے یہ طے کرلیا تھا کہ اس تھریڈکی تمام ابحاث کا خلاصہ پیش کردوں لیکن اندازہ ہوا کہ ایک طویل عمل ہے اور یہ بھی ہوسکتا تھا کہ آپ پھر دوبارہ سے الفاظ کے گورک دھندے میں الجھا لیتے اس لیے عرض ہے
    میں باربار علم لدنی اور عجائبات پر اس لیے زور دے رہا تھا کہ آپ نے (اغلب) یا کسی اور صاحب نے علم لدنی سے ہی انکار کردیا تھا
    اعتراض یہ تھا من لدنا قرآن پاک بہت جگہ استعمال ہوا ہے اس سے علم لدنی کہاں ثابت ہوا تو عزیز گرامی
    یہ تو اتفاق ہوچکا کہ علم لدنی ہی تھا
    اب اس میں جو احتمالات یا خفیہ اعتراضات یہ ہو سکتے ہیں ان میں سے ایک یہ بھی ہو سکتا ہے کہ اس سے یہ کہاں ثابت ہوا کہ صوفیاء کو علم لدنی عطا ہوتا ہے ؟
    تو محترم میں اس کا جواب دے چکا ہوں
    جیسا کہ آپ نے فرمایا تھا:
    اس کو جواب میں نے یہ دیا تھا:
    مجھے یا د نہیں پڑتا کہ میں نے کہیں یہ لکھا ہو کہ صوفیاء کو علم لدنی عطا کیا جاتا ہے ابھی تو یہ بھی طے نہیں ہے کہ علم لدنی ہے کیا اور اس کا دائرہ کار کیا ہے
    میں نے یہ نہیں لکھا کہ صوفیاء کو علم لدنی عطا ہوتا ہے
    میں نے لکھا ہے:
    جب کسی کو اپنا امام استاذ ،پیر یا رہبر مان لیا تو من مانی چھوڑ دینی چاہیے( بشرطیکہ ان کی باتیں شریعت سے متعارض نہ ہوں )اس سے اکتساب فیض رک جاتا ہے اور علم کی برکت ختم ہوجاتی ہے ، اگرچہ علم توہوتا ہے مگر علم لدنی ختم ہوجاتا ہے علم کی باریکیاں اور آمد بند ہوجاتی ہے جتنا انسان مؤدب اور منکسر المزاج ہوگا اتنی ہی زیادہ بصیرت قلبی حاصل ہوگی
    محترم آپ معلم ہیں اس بات کوآپ اچھی طرح جانتے ہیں کہ اگر کوئی شاگرد استاذ کی نافرمانی کرے تو اس شاگرد پر علم کا فیض بند ہوجاتا ہے اور علم کی برکتیں ختم ہوجاتی ہیں یعنی منجانب اللہ قلب پر علم کا ورود رک جاتا ہے اس ورود علم کو علم لدنی کہا ہے

    دوسرا اعتراض تھا آپ کا عجائبات سے متعلق تو اس کا جواب میں نے یہ دیا تھا:
    فرمایا نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے:
    (رحم الله أخي موسى، لو صبر لأرانا من عجائب علم الله عند الخضر عليه السلام)

    اب رہی آپ کی یہ بات :
    تو بات ختم آپ اپنے گھر خوش میں اپنے گھر خوش
    اور بھائی جان حرب بھائی کا یہ حوالہ کافی ہے:
    (إِنَّكَ لَا تَهْدِي مَنْ أَحْبَبْتَ وَلَكِنَّ اللَّهَ يَهْدِي مَنْ يَشَاءُ وَهُوَ أَعْلَمُ بِالْمُهْتَدِينَ (سورة القصص٢٨: ٥٦)“(اے محمد صلی اللہ علیہ وسلم !) بلاشبہ آپ، جسے چاہیں ہدایت نہیں دے سکتے، لیکن اللہ جسے چاہے ہدایت دیتا ہے۔ اور وہ ہدایت قبول کرنے والوں کو خوب جانتا ہے۔”(صحیح بخاری، التفسیر، باب تفسیر قولہ تعالی (إِنَّكَ لَا تَهْدِي مَنْ أَحْبَبْتَ)،حدیث ٤٧٧٢ و صحیح مسلم، الایمان، باب الدلیل علی صحۃ اسلام من حضرہ الموت.....الخ، حدیث ٢٤)"
    اس لیے میری گزارش ہے کہ بات کو الجھانے اور بڑھانے سے کوئی فائدہ نہیں میں بار بار مراسلت کے اختتام کی گزارش کررہا ہوں
    اور بھائی’’فوق کل ذی علم علیم،دست بالای دست بسیار است‘‘
    اگر آپ یہی کہلوانا چاہ رہے ہیں تو بھائی میں تسلیم کرتا ہوں کہ آپ’’ اعلم‘‘ہیں جب موسیٰ علیہ السلام اور خضر علیہ السلام میں علم کا فرق ہوسکتا ہے تو میری کیا بساط
    فقط واللہ اعلم بالصوب
     
  7. ‏مارچ 25، 2013 #167
    حرب بن شداد

    حرب بن شداد سینئر رکن
    جگہ:
    اُم القرٰی
    شمولیت:
    ‏مئی 13، 2012
    پیغامات:
    2,149
    موصول شکریہ جات:
    6,249
    تمغے کے پوائنٹ:
    437

    پروفیسر نظامی اپنی کتاب کے دیباچہ میں لکھتے ہیں۔


     
  8. ‏مارچ 25، 2013 #168
    عابدالرحمٰن

    عابدالرحمٰن سینئر رکن
    جگہ:
    BIJNOR U.P. INDIA
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 18، 2012
    پیغامات:
    1,124
    موصول شکریہ جات:
    3,229
    تمغے کے پوائنٹ:
    240

    السلام علیکم
    میں آپ کی بات سے متفق ہوں
    جزاک اللہ خیراً
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں