1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

شیطان کے پھندے

'اصلاح خواتین' میں موضوعات آغاز کردہ از نسرین فاطمہ, ‏اپریل 23، 2016۔

  1. ‏اپریل 23، 2016 #1
    نسرین فاطمہ

    نسرین فاطمہ سینئر رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    حیدرآباد سندھ
    شمولیت:
    ‏فروری 21، 2012
    پیغامات:
    1,278
    موصول شکریہ جات:
    3,218
    تمغے کے پوائنٹ:
    396

    کہتے ہیں کہ ایک دن شیطان بیٹھا رسیوں کے پھندے تیار کر رہا تھا.. کچھ موٹی موٹی رسیوں کے پھندے تھے' کچھ باریک اور کمزور رسیوں کے پھندے تھے.. وہاں سے ایک علم والے کا گذر ہوا تو اس نے شیطان سے پوچھا.. "ارے او دشمن انساں ! یہ کیا کر رے ہو..؟"
    شیطان نے سر اٹھا کر دیکھا اور اپنا کام جاری رکھتے ہوئے بولا.. "دیکھتے نھیں حضرت انسانوں کو قابو کرنے کے لیے پھندے تیار کر رہاہوں.."
    ان حضرت نے پوچھا.. "یہ کیسے پھندے ہیں کچھ موٹے کچھ ہلکے..؟"
    شیطان نے جواب دیا.. "پھندے ان لوگوں کے لیے ہیں جو شیطان کی باتوں میں نہیں آتے.. لہذامختلف قسم کے پھندے تیار کرنے پڑتے ہیں.. کچھ خوشنما' کچھ موٹے' کچھ باریک.."
    ان حضرت کے دل میں تجسس پیدا ہوا.. پوچھا.. "کیا میرے لیے بھی کوئی پھندا ہے..؟"
    شیطان نے سر اٹھا کر مسکراتے ہوئے کہا.. "آپ علم والوں کے لیے مجھے پھندے تیار نہیں کرنے پڑتے.. آپ لوگوں کو تو میں چٹکیوں میں گھیر لیتا ہوں.. علم کا تکبر ہی کافی ہے آپ لوگوں کو پھانسے کے لیے.."
    ان حضرت نے حیران ہو کر پوچھا.. "پھر یہ موٹے پھندے کس کے لیے ہیں..؟"
    شیطان نے کہا.. "موٹے پھندے اخلاق والوں کے لیے ہیں جنکے اخلاق اچھے ہیں.. ان پر قابو پانا مشکل ہوتا ہے..
    اسی لیے حدیث شریف میں ہے کہ اعمال میں سب سے زیادہ وزنی چیز اخلاق ہوگا.." الله ہم سب کو بہترین اخلاق والا بنا دے. —
    آمین یا رب العالمین
     
    • زبردست زبردست x 3
    • پسند پسند x 1
    • معلوماتی معلوماتی x 1
    • لسٹ
  2. ‏اپریل 24، 2016 #2
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    6,186
    موصول شکریہ جات:
    2,366
    تمغے کے پوائنٹ:
    777

    کسی مستند و معتبر عالم کی ’’ العلم ‘‘ پر احادیث صحیحہ پر مشتمل کتاب پڑھیں
    ہو سکتا ہے ،اس کے مطالعہ سے معاملہ برعکس نکلے
    مثلاً امام ابن عبد البر ؒ کی :’’ جامع بيان العلم وفضله ‘‘
    یا
    شیخ ابن عثیمین کی
    ۔۔کتاب العلم ۔۔،
    لیکن : یہ معلوم ہونا ضروری ہے کہ علم کیا ہے،
    اور یہ حقیقت محتاج بیان نہیں کہ :
    انسانوں میں شیطان کے ہتھکنڈوں سے سب زیادہ واقف اہل علم ہی ہیں ،
     
  3. ‏اپریل 24، 2016 #3
    عمر اثری

    عمر اثری سینئر رکن
    جگہ:
    نئی دھلی، انڈیا
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 29، 2015
    پیغامات:
    4,333
    موصول شکریہ جات:
    1,074
    تمغے کے پوائنٹ:
    398

    کہیں ہم بھی اُس کا شکار تو نہیں؟

    شیطان کے ہتھیاروں میں سے ایک بہت بڑا ہتھیار جس کے ساتھ وہ لوگوں پر حملہ آور ہوتا ہے یہ ہے کہ وہ یہ خیال دل میں ڈالتا ہے کہ کوئی بات نہیں ، گناہ کرلو پھر توبہ کرلینا ، ابھی بڑی لمبی عمر باقی ہے ، اس طرح وہ نافرمان لوگوں کے دلوں میں توبہ سے غفلت ڈال دیتا ہے اور کہتا ہے کہ اگر تو نے اب توبہ کرلی اور پھر کوئی گناہ کا ارتکاب کیا تو تیری توبہ ہرگز قبول نہ ہوگی اور تو جہنمی بن جائے گا ، دل میں مزید وسوسہ یہ ڈال دے گا کہ جب تیری عمر پچاس یا ساٹھ سال ہوجائے گی تو پھر توبہ کرکے مسجد میں بیٹھ جانا اور کثرت سے عبادت کرنا ، ابھی تو جوانی کی عمر ہے اور اسی عمر میں دنیا کی رنگینیاں اور بہاریں دیکھی جاتی ہیں ، اپنے نفس کو خوب من مانی کرنے دے اور عبادت و ریاضت کر کے ابھی سے اس پر سختی نہ کر ، انسان کو توبہ سے محروم رکھنے کے لئے اس طرح کے کئی اور بھی شیطانی مکر و فریب ہوتے ہیں ، کہیں ہم ان شیطانی حربوں اور ہتھکنڈوں کا شکار تو نہیں ؟
     
    • شکریہ شکریہ x 1
    • پسند پسند x 1
    • متفق متفق x 1
    • لسٹ
  4. ‏مئی 16، 2016 #4
    صنم بنت نبی

    صنم بنت نبی مبتدی
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏مئی 13، 2016
    پیغامات:
    33
    موصول شکریہ جات:
    13
    تمغے کے پوائنٹ:
    13

    جزاک اللہ
     
  5. ‏مئی 18، 2016 #5
    محمد علی جواد

    محمد علی جواد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 18، 2012
    پیغامات:
    1,977
    موصول شکریہ جات:
    1,494
    تمغے کے پوائنٹ:
    304

    آپ کی بات صد فیصد صحیح ہے - لیکن میرے خیال میں شیطان کا سب بڑا ہتھیار جس کے ساتھ وہ لوگوں پر حملہ آور ہوتا ہے وہ ہے ایمان والے لوگوں کو بدعات کی ترغیب دلانا اور ان میں ملوث کردینا - کیوں کہ عام کبیرہ گناہوں میں لوگوں کے ملوث ہونے کے باوجود شیطان کو یہ خطرہ لاحق رہتا ہے کہ کہیں ندامت یا پھر کسی کی تبلیغ سے متاثر ہوکر یہ الله کا بندہ سچی توبہ نہ کرلے- لیکن بدعات میں ملوث انسانوں کی طرف سے شیطان عموماً بے فکر ہو جاتا ہے- کیوں کہ اسے پتا ہوتا ہے کہ یہ شخص جو بھی کوئی عمل کررہا تو وہ اس کو نیکی اور شریعت کا حصّہ سمجھ کر کررہا ہے اور اس بنا پر یہ انسان ساری عمر توبہ سے باز رہے گا-

    قرآن میں ایسے لوگوں کہ بارے میں الله رب العزت کا فرمان ہے کہ :

    قُلْ هَلْ نُنَبِّئُكُمْ بِالْأَخْسَرِينَ أَعْمَالًا -الَّذِينَ ضَلَّ سَعْيُهُمْ فِي الْحَيَاةِ الدُّنْيَا وَهُمْ يَحْسَبُونَ أَنَّهُمْ يُحْسِنُونَ صُنْعًا سوره الکھف ١٠٣-١٠٤
    کہہ دو (اے نبی) کیا میں تمہیں بتاؤں کہ کون اعمال کے لحاظ سے بلکل ہی نقصان میں ہیں- وہ لوگ کہ جن کی ساری کوششیں دنیا کی زندگی میں برباد ہوگئیں اور وہ یہ خیال کرتے رہے کہ وہ بہت اچھے کام کر رہے ہیں-
     
  6. ‏مئی 18، 2016 #6
    محمد طارق عبداللہ

    محمد طارق عبداللہ سینئر رکن
    جگہ:
    ممبئی - مہاراشٹرا
    شمولیت:
    ‏ستمبر 21، 2015
    پیغامات:
    2,319
    موصول شکریہ جات:
    708
    تمغے کے پوائنٹ:
    224

    IMG-20150213-WA0001-1.jpg
     

    منسلک کردہ فائلیں:

لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں