1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

شیعہ دنیا کا بدترین کافر و مشرک کیوں؟؟ للہ ثم للتاریخ۔ سابق شیعہ مجتہد کے قلم سے

'سلفیت' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد آصف مغل, ‏مارچ 07، 2014۔

  1. ‏جولائی 04، 2015 #21
    عکرمہ

    عکرمہ مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 27، 2012
    پیغامات:
    658
    موصول شکریہ جات:
    1,835
    تمغے کے پوائنٹ:
    157

    رافضی عوام کا حکم۔


    سوال:اثنا عشریہ کے رافضی عوام کا کیا حکم ہے؟کیا کسی گمراہ فرقے کے علماء اور عوام کے متعلق کفر یا فسق کا حکم لگانے میں فرق ہوتا ہے؟

    جواب:الحمد للہ وحدہ والصلوۃ والسلام علی رسولہ وآلہ وصحبہ وبعد۔
    عوام میں سے جو شخص کفر وضلالت کے کسی پیشوا کا ساتھ دے،زیادتی اور سرکشی کرتے ہوئے ان کے بڑوں اور سرداروں کی حمایت کرے،اس پر انہی کی طرح کفر یا فسق کا حکم لگایا جائے گا۔ارشاد باری تعالیٰ ہے۔
    يَسْـَٔلُكَ النَّاسُ عَنِ السَّاعَةِقُلْ اِنَّمَا عِلْمُهَا عِنْدَ اللّٰهِ وَ مَا يُدْرِيْكَ لَعَلَّ السَّاعَةَ تَكُوْنُ قَرِيْبًا۔ اِنَّ اللّٰهَ لَعَنَ الْكٰفِرِيْنَ وَ اَعَدَّ لَهُمْ سَعِيْرًا۔ خٰلِدِيْنَ فِيْهَاۤ اَبَدًالَا يَجِدُوْنَ وَلِيًّا وَّ لَا نَصِيْرًا۔ يَوْمَ تُقَلَّبُ وُجُوْهُهُمْ فِي النَّارِ يَقُوْلُوْنَ يٰلَيْتَنَاۤ اَطَعْنَا اللّٰهَ وَ اَطَعْنَا الرَّسُوْلَا۔ وَ قَالُوْا رَبَّنَاۤ اِنَّاۤ اَطَعْنَا سَادَتَنَا وَ كُبَرَآءَنَا فَاَضَلُّوْنَا السَّبِيْلَا۔ رَبَّنَاۤ اٰتِهِمْ ضِعْفَيْنِ مِنَ الْعَذَابِ وَ الْعَنْهُمْ لَعْنًا كَبِيْرًا۔


    ’’لوگ آپ سے قیامت کے بارے میں سوال کرتے ہیں آپ کہہ دیجئے! کہ اس کا علم تو اللہ ہی کو ہے، آپ کو کیا خبر ممکن ہے قیامت بالکل ہی قریب ہو ۔اللہ نے کافروں پر لعنت کی ہے اور ان کے لئے بھڑکتی ہوئی آگ تیار کر رکھی ہے۔ جس میں وہ ہمیشہ رہیں گے۔ وہ کوئی حامی و مددگار نہ پائیں گے۔ اس دن ان کے چہرے آگ میں الٹ پلٹ کئے جائیں گے (حسرت اور افسوس سے) کہیں گے کاش ہم اللہ تعالیٰ کی اطاعت کرتے اور کہیں گے کہ اے ہمارے رب! ہم نے اپنے سرداروں اور اپنے بڑوں کی مانی جنہوں نے ہمیں راہ راست سے بھٹکا دیا پروردگار تو انھیں دگنا عذاب دے اور ان پر بہت بڑی لعنت نازل فرما‘‘

    ((سورۃ الاحزاب))

    اس کے علاوہ مندرجہ ذیل آیات پڑھیے(سورۃ بقرہ:165،166،167۔سورۂ الاعراف:37،38،39۔سورۂ ابراہیم:21،22۔سورۃ الفرقان:28،29۔سورہ قصص:62،63،64۔سورہ سبا:31،32،33۔سورۃ الصافات:20تا36۔سورۃ مومن:47تا50))

    اس کے علاوہ بھی اس مفہوم کی بہت سی آیات اوراحادیث ہیں۔نبی کریمﷺنے مشرکین کے سرداروں سے بھی جنگ کی اورعام مشرکوں سے بھی۔صحابہ کرام کا عمل بھی یہی رہا۔انہوں نے سرداروں اور پیرو کاروں میں کوئی فرق نہیں کیا۔


    و باللہ التوفیق وصلی اللہ علی نبینا محمد والہ صحبہ وسلم۔

    اللجنۃ الدائمۃ

    رکن:عبداللہ بن قعود،عبداللہ بن غدیان۔نائب صدر:عبدالرزاق عفیفی۔صدر:ابن باز رحمہ اللہ
     
    • شکریہ شکریہ x 1
    • مفید مفید x 1
    • لسٹ
  2. ‏جولائی 05، 2015 #22
    خضر حیات

    خضر حیات علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    طابہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 14، 2011
    پیغامات:
    8,658
    موصول شکریہ جات:
    8,296
    تمغے کے پوائنٹ:
    964

    جس طرح اہل حدیث ، دیوبندی ، بریلوی عوام کو بہت سارے ان عقائد کا پتہ نہیں ہوتا جن کی بنیاد پر ان کے علماء کی تکفیر کی جاتی ہے ، اسی طرح شیعہ و روافض کے عوام اور علماء میں فرق کرنا چاہیے ۔
     
    • متفق متفق x 2
    • ناپسند ناپسند x 1
    • معلوماتی معلوماتی x 1
    • لسٹ
  3. ‏جولائی 25، 2015 #23
    ابن قدامہ

    ابن قدامہ مشہور رکن
    جگہ:
    درب التبانة
    شمولیت:
    ‏جنوری 25، 2014
    پیغامات:
    1,772
    موصول شکریہ جات:
    421
    تمغے کے پوائنٹ:
    198

    ان تینوں کے علماء کی تکفیر تشدد پر مبنی ہے جبکہ ان کے علماء کی تکفیر حقیقت پر مبنی ہے
    وضاحت

    مطلب واقعی کفریہ باتیں ہیں جن کے کفریہ ہونے پر سب کا اتفاق ہے اور اس کی تاویل بھی نہیں مانی جاتی جبکہ دوسرے علماء کی تکفیر حقیقت پر مبنی نہیں ہے کیونکہ ان کی بات موول ہوتی ہے اس میں صحیح بات کی گنجائش نکلتی ہے
     
  4. ‏جولائی 25، 2015 #24
    ابن داود

    ابن داود فعال رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏نومبر 08، 2011
    پیغامات:
    3,138
    موصول شکریہ جات:
    2,633
    تمغے کے پوائنٹ:
    556

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!
    بیان میں تساہل نظر آرہا ہے!! اس سے یہ تاثر ملتا ہے کہ اہل حدیث ، دیوبندی اور بریلوی علماء کی تکفیر بھی درست ہے! اس کی تصحیح کر لیں!
    دوم کہ جن عوام کو ان عقائد کا معلوم ہی نہیں جس بنیاد پر رافضی علماء کی تکفیر کی جاتی ہے، انہیں رافضی کہنے کے بجائے شعیہ کہنا مناسب ہو گا!!
     
  5. ‏جولائی 25، 2015 #25
    ابن قدامہ

    ابن قدامہ مشہور رکن
    جگہ:
    درب التبانة
    شمولیت:
    ‏جنوری 25، 2014
    پیغامات:
    1,772
    موصول شکریہ جات:
    421
    تمغے کے پوائنٹ:
    198

    جبکہ ان کے علماء کی تکفیر حقیقت پر مبنی ہے
     
  6. ‏جولائی 26، 2015 #26
    قاھر الارجاء و الخوارج

    قاھر الارجاء و الخوارج رکن
    شمولیت:
    ‏ستمبر 13، 2014
    پیغامات:
    393
    موصول شکریہ جات:
    235
    تمغے کے پوائنٹ:
    71

    طاھر بھائی علماء کا ایک گروہ تو سب کو ایک ہی قرار دے رہا ہے اور بظاھر انہی کے اقوال اقرب الی الصواب لگتے ہیں
     
  7. ‏جولائی 27، 2015 #27
    ابو حمزہ

    ابو حمزہ رکن
    شمولیت:
    ‏دسمبر 10، 2013
    پیغامات:
    380
    موصول شکریہ جات:
    139
    تمغے کے پوائنٹ:
    91

    یہ حوالہ سابق شیعہ حسین موسوی کی کتاب کا ہے جو کہ کشف االاسرار نام کی ہے

    یہاں پر موجود ہے

    لیکن شیعہ اس کو سابق شیعہ ماننے کو تیار نہیں ، اسی کتاب میں لکھا ہے کہ خمینی نے عراق میں 5 سالہ بچی سے متعہ کیا ۔۔ جیسی تجلی کے مصنف ڈاکٹر تیجانی سماوی کو سابق سنی نہیں مانتے ویسے ہی شیعہ حسین موسوی کو سابق شیعہ نہیں مانتے ۔۔
     
  8. ‏جولائی 31، 2015 #28
    قاھر الارجاء و الخوارج

    قاھر الارجاء و الخوارج رکن
    شمولیت:
    ‏ستمبر 13، 2014
    پیغامات:
    393
    موصول شکریہ جات:
    235
    تمغے کے پوائنٹ:
    71

    خمینی نے اپنے فتاوی میں بھی شیر خوار بچی سے متعہ کے جواز کا فتوی دیا ہے کچھ قیود کے ساتھ
     
  9. ‏اپریل 22، 2017 #29
    umaribnalkhitab

    umaribnalkhitab مبتدی
    شمولیت:
    ‏مارچ 26، 2017
    پیغامات:
    75
    موصول شکریہ جات:
    4
    تمغے کے پوائنٹ:
    18

    جزاکم اللہ خیرا احسن الجزاء

    Sent from my SM-J500F using Tapatalk
     
  10. ‏جولائی 02، 2017 #30
    Ghulam hussain

    Ghulam hussain مبتدی
    جگہ:
    ملتان
    شمولیت:
    ‏جولائی 02، 2017
    پیغامات:
    1
    موصول شکریہ جات:
    0
    تمغے کے پوائنٹ:
    2

    السلام علیکم بھائیو!!!
    سب سے پہلے عرض ہے کہ جس کتاب کا اور مولف کا حوالہ دیا گیا اس میں خود بتا دیا گیا ہے کہ سابق شیعہ حالانکہ وہ شیعہ ہی نہیں تھے بلکہ کچھ عرصہ کےلیے شیعہ میں رہا حتی کچھ اس کے وجود کے قائل بھی نہیں کہ ایسا شخص موجود بھی ہے یا نہیں تو ایسے شخص کی بات کو آپ دلیل بنا کر شیعہ کو کافر کہیں یہ ظلم ہے ۔
    شیعہ امہات المومنین اور حضرت عائشہ رض کا احترام کرتے ہیں البتہ ایک تاریخی حقیقت ہے کہ حضرت عائشہ رض جنگ جمل میں امیرالمومنین حضرت علی علیہ السلام کے مقابلے میں جنگ میں آئی تھی اور جس روایت اور بات کا تذکرہ کیا گیا ہے کوئی بھی سادہ لوح اور عام شیعہ بھی اس بات کو ماننے کےلیے تیار نہیں ۔
    باقی مسئلہ تحریف قرآن کا وہ بھی کوئی شیعہ عالم و عام آدمی اس بات کو نہیں مانتا سب اسی قرآن کو پڑھتے ہیں حفظ کرتے ہیں بہت سے حافظ قرآن شیعہ ہیں البتہ جس طرح اہل سنت میں حافظ ہیں شاید اسی تعداد میں نہ ہوں لیکن شیعہ حافظ قرآن پاکستان ایران میں موجود ہیں اسی قرآن کی تلاوت کرتے ہیں اسی موجودہ قرآن کے قائل ہیں باقی مفسرین میں اختلاف ہے خود اہل سنت مفسرین نے بھی اس بات کو ذکر کیا ہے کہ قرآن ترتیب سے جمع نہیں کیا گیا جس ترتیب سے نازل کیا گیا تھا تو یہ بھی ایک قسم کی تحریف ہے لیکن سب علماء شیعہ کا اتفاق ہے یہی قرآن حجت ہے دلیل ہے کوئی تبدیلی حذف نہیں ہوئی کیونکہ اس کی حفاظت کا ذمہ دار خود خدا ہے ۔
    بہرحال تکفیر اور کافر کا فتوا لگانے سے پہلے سوچ لیا جائے ایسے آسانی سے فتوے لگانا درست نہیں شیعہ مسلمان ہیں اللہ تعالی کی وحدانیت الوہیت کے قائل ہیں پیامبرکی رسالت کے قائل ہیں قیامت کے قائل ہیں امامت و خلافت کے بھی قائل ہیں جو بھی ان کا صریح انکار کرے وہ کافر ہے یہ اصول اسلام و دین ہیں سب مسلمان اس کے پابند ہیں اختلاف سب فرقوں میں موجود ہیں خود اہل سنت کے علماء کے درمیان اپنے فقہی آراء میں اختلاف ہے روایات میں اختلاف ہیں شیعہ علماء میں بھی اختلاف پایا جاتا ہے اختلاف کی بنیاد پر کسی کو کافر نہیں کہا سکتا مگر کوئی اصول اسلام کا منکر ہوجائے ۔
    کچھ اختلافات تاریخی ہیں کچھ اختلافات فقہی ہیں کچھ اختلافات روایات کی ہیں یہ اول سے آج تک موجود ہیں اور رہیں گے کوئی اس کو ختم نہیں کرسکتے مگر علمی تحقیق اور تعصب کی عینک اتاری جائے تب حقائق سامنے آئیں گے جب ایک دوسرے کو کافر کہیں گے تو اس کا مذہب کیسے سمجھ آئے گا ۔
    خدا را کچھ سوچیں قیامت کے دن ہر الفاظ کا جواب دینا ہوگا وہ پر اعمال کام آئیں گے اخلاق حسنہ کام آئے گا نہ یہ اختلاف اور نہ یہ ایک دوسرے پر تہمتیں اور تکفیری فتوے بلکہ اس کا جواب دینا پڑے گا ۔
    اللہ تعالی ہم سب کو ہدایت دے اور صراط مستقیم پر قائم رکھے ۔
    وماعلینا الاالبلاغ المبین
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں