1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔۔
  2. محدث ٹیم منہج سلف پر لکھی گئی کتبِ فتاویٰ کو یونیکوڈائز کروانے کا خیال رکھتی ہے، اور الحمدللہ اس پر کام شروع بھی کرایا جا چکا ہے۔ اور پھر ان تمام کتب فتاویٰ کو محدث فتویٰ سائٹ پہ اپلوڈ بھی کردیا جائے گا۔ اس صدقہ جاریہ میں محدث ٹیم کے ساتھ تعاون کیجیے! ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔ ۔

::: صحابہ رضی اللہ عنہم اجمعین کے فہم کی حجیت :::

'قرآن وعلومہ' میں موضوعات آغاز کردہ از عادل سہیل, ‏ستمبر 02، 2011۔

  1. ‏ستمبر 02، 2011 #1
    عادل سہیل

    عادل سہیل مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏اگست 26، 2011
    پیغامات:
    351
    موصول شکریہ جات:
    939
    تمغے کے پوائنٹ:
    120

    ::: صحابہ رضی اللہ عنہم اجمعین کے فہم کی حجیت :::
    السلام علیکم و رحمۃ اللہ و برکاتہ ، مندرجہ ذیل آیات کو غور سے پڑہیے ، حدیث قول ، فعلی اور تقریری ، کی حجت اور حیثیت اور حفاظت ، اور ، صحابہ رضی اللہ عنہم اجمعین کے فہم کی حجت و حیثیت اور صحیح حدیث میں کسی بات کی وضاحت نہ ملنے کی صورت میں ان کی اجتماعی بلا خلاف بات کی حجت کی دلیل ہیں ، اور وہ یوں کہ اللہ تعالی نے جو حکمت قران کے ساتھ نازل فرمائی ، وہ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم نے ان کو سکھائی ، ان کے نفوس کی صفائی فرمائی ، اور یہ چیز کسی بھی غیر صحابی کو میسر نہیں ، اور اللہ کے رسول رسول صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم سے اللہ کی نازل کردہ حکمت سیکھے ہوئے ، اللہ کے رسول رسول صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کی تعلیم و تربیت پائے ہوئے سے بڑھ کر سوائے انبیا و رسل کے ، کوئی بھی اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کی بات کی مراد نہیں جان سکتا خواہ وہ پوی مخلوق میں سب سے زیادہ صاحب عقل ہو ، اور خواہ کسی بھی فہم کا دعوی دار ،
    اب آپ صاحبان مندرجہ بالا باتوں کی گواہی اللہ کے کلام میں پڑہیے ،
    ((( وَلَوْلاَ فَضْلُ اللّهِ عَلَيْكَ وَرَحْمَتُهُ لَهَمَّت طَّآئِفَةٌ مُّنْهُمْ أَن يُضِلُّوكَ وَمَا يُضِلُّونَ إِلاُّ أَنفُسَهُمْ وَمَا يَضُرُّونَكَ مِن شَيْءٍ وَأَنزَلَ اللّهُ عَلَيْكَ الْكِتَابَ وَالْحِكْمَةَ وَعَلَّمَكَ مَا لَمْ تَكُنْ تَعْلَمُ وَكَانَ فَضْلُ اللّهِ عَلَيْكَ عَظِيماً ::: اور (اے رسول ، صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم ) اگر آپ پر اللہ کا فضل اور اس کی رحمت نہ ہوتی تو ایک گروہ یہ ارادہ کر رہا تھا کہ آپ کو راہ (حق ) سے ہٹا دے اور وہ لوگ اپنے آپ کو ہی گمراہ کرتے ہیں ، اور وہ آپ کو کسی چیز میں سے نقصان نہ پہنچائیں گے (کیونکہ اللہ آپ کی حفاظت کرنے والا ہے ) اور اللہ نے آپ پر کتاب (قران ) نازل کی اور (اس کے ساتھ ) حکمت (نازل کی ) و آپ کو وہ کچھ سیکھایا جو آپ نہیں جانتے تھے اور اللہ کا فضل آپ پر بہت زیادہ ہے ))) سورت النساء ، آیت ۱۱۳
    اللہ تعالی نے خبر دی کہ اس نے اپنے رسول صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم پر قران کے ساتھ ساتھ حکمت بھی نازل فرمائی ،
    سوال ::: اللہ نے یہ حکمت کیوں نازل فرمائی ، اور رسول صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم نے کس کو براہ راست یہ حکمت سیکھائی ؟؟؟
    جواب ::: اللہ تعالی کا فرمان :::
    (((
    لَقَدْ مَنَّ اللَّهُ عَلَى الْمُؤمِنِينَ إِذْ بَعَثَ فِيهِمْ رَسُولاً مِّنْ أَنْفُسِهِمْ يَتْلُواْ عَلَيْهِمْ آيَاتِهِ وَيُزَكِّيهِمْ وَيُعَلِّمُهُمُ الْكِتَابَ وَالْحِكْمَةَ وَإِن كَانُواْ مِن قَبْلُ لَفِي ضَلالٍ مُّبِينٍ :::یقیناً اللہ نے ایمان والوں پر احسان کیا ہے کہ ان میں ان کی جانوں میں سے ہی رسول بھیجا جو ان پر اللہ کی آیات تلاوت کرتا ہے اور ان ( کے دل و دماغ و نفوس ) کی صفائی کو پاک کرتا ہے اور انہیں کتاب (قران ) اور حکمت سکھاتا ہے اور بے شک اِس سے پہلے وہ لوگ واضح گمراہی میں تھے ))) سورت آل عمران 164
    اور بتایا سبحانہ و تعالی نے ::: ((( هُوَ الَّذِي بَعَثَ فِي الأُمِّيِّينَ رَسُولاً مِّنْهُمْ يَتْلُو عَلَيْهِمْ آيَاتِهِ وَيُزَكِّيهِمْ وَيُعَلِّمُهُمُ الْكِتَابَ وَالْحِكْمَةَ وَإِن كَانُواْ مِن قَبْلُ لَفِي ضَلاَلٍ مُّبِينٍ ::: (اللہ ) وہ ہی ہے جس نے ان پڑھوں میں ان میں سے ہی رسول بھیجا (جو ) ان پر اللہ کی آیات تلاوت کرتا ہے اور ان ( کے دل و دماغ و نفوس ) کی صفائی کرتا ہے اور انہیں کتاب (قران ) اور حکمت سکھاتا ہے اور اس سے پہلے وہ لوگ واضح گمراہی میں تھے ))) سورت الجمعۃ ، آیت ۲ ،
    اللہ تعالی کے مندرجہ بالا فرامین سے یہ بہت واضح ہو گیا کہ اللہ تبارک و تعالی نے اپنے رسول صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم پر جو حکمت نازل فرمائی وہ انہوں نے اپنے صحابہ رضی اللہ عنہم اجمعین کو سکھائی ، اور یہ وہ چیز ہے جو کسی غیر صحابی کو میسر نہ تھی پس کوئی بھی دوسرا صحابہ رضی اللہ عنہم اجمعین سے بڑھ کر درست اور ٹھیک طور پر اللہ اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم کی بات کو نہیں سمجھ سکتا، لہذا صرف ترجموں ، لغت کے قوانین اور کسی ذہانت کی بنیاد پر قران و حدیث کا مفہوم سمجھ کر صحیح غلط ، موافق و مخالف کا فیصلہ کرنا درست نہیں ،
    اس مضمون کو پہلے سے ارسال کردہ مضون """ شریعت کے احکام جاننے کی کسوٹیاں """ کی کچھ مزید تفصیل جان کر اس مضمون کو بھی پڑھا جانا چاہیے ،
    و السلام علیکم۔
     
  2. ‏ستمبر 02، 2011 #2
    محمد ارسلان

    محمد ارسلان خاص رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 09، 2011
    پیغامات:
    17,865
    موصول شکریہ جات:
    40,794
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,155

    جزاک اللہ خیرا
     
  3. ‏ستمبر 03، 2011 #3
    عادل سہیل

    عادل سہیل مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏اگست 26، 2011
    پیغامات:
    351
    موصول شکریہ جات:
    939
    تمغے کے پوائنٹ:
    120

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ و برکاتہ ،
    و ایاک ، میرے پیارے بھائی ، والسلام علیکم ۔
     
  4. ‏ستمبر 20، 2011 #4
    sahj

    sahj مشہور رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏مئی 13، 2011
    پیغامات:
    458
    موصول شکریہ جات:
    655
    تمغے کے پوائنٹ:
    110

    السلام علیکم بھاءی عادل سہیل

    اللہ تعالی آپ کو جزاءے خیر عطا فرماءے، اتنی اچھی بات شءیر کی ہے آپ نے۔

    دعا میں ضرور یاد رکھءیے گا ۔

    والسلام

    حسین
     
  5. ‏ستمبر 20، 2011 #5
    کلیم حیدر

    کلیم حیدر رکن
    جگہ:
    لیہ
    شمولیت:
    ‏فروری 14، 2011
    پیغامات:
    9,392
    موصول شکریہ جات:
    25,966
    تمغے کے پوائنٹ:
    981

    جزاک اللہ عادل بھائی جان
     
  6. ‏ستمبر 20، 2011 #6
    makki pakistani

    makki pakistani سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏مئی 25، 2011
    پیغامات:
    1,322
    موصول شکریہ جات:
    3,028
    تمغے کے پوائنٹ:
    282

    MY DEAR SAHJالسلام علیکم
    THIS IS VERY CLEAR THAT COMPANIONS OF HOLY PROPHET DID NEVER GIVE HIS OPINION AGAINST THE OPINION OF HOLY PROPHET,IF ANY COMPANION KNEW THE OPINION OF HOLY PROPHET IN ANY ISSUE,HE DID NEVER PRESENT HIS OPINION,OPINION OF COMPANION IN THE PRESENCE OF HOLY PROPHET OPINION HAS NO VALUE.AFTER THE ERA OF HOLY PROPHET,WHEN ISLAM SPREAD ED MORE IN THE WORLD,THEN NEW ISSUES AROSE,AT THAT TIME ALSO,THE COMPANIONS USED THEIR OPINION AT THE LAST IF THEY DID NOT GET OR KNOW ABOUT THAT ISSUE.THERE ARE SO MANY EXAMPLES WHICH SHOWED THAT THEY REVERTED HIS OPINION AFTER HEARING THE OPINION OF HOLY PROPHET.AGAIN I WOULD LIKE TO SAY THAT TO FOLLOW AND RESPECT IS DIFFERENT THINGS.جزاک اللہ S
     
  7. ‏ستمبر 20، 2011 #7
    محمد ارسلان

    محمد ارسلان خاص رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 09، 2011
    پیغامات:
    17,865
    موصول شکریہ جات:
    40,794
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,155

    السلام علیکم
    سہج صاحب آپ کا نام "حسین" ہے آج پتہ لگا۔اچھا نام ہے ماشاءاللہ
    حسین بھائی شاید آپ کو (ء) اور (ی) کو اکھٹے لکھنے میں دشواری کا سامنا ہے۔اس کے لیے میرا یہ تھریڈ ملاحظہ کریں۔
    اردو لکھنے کی معلومات
     
  8. ‏مئی 17، 2017 #8
    خضر حیات

    خضر حیات علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    طابہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 14، 2011
    پیغامات:
    7,475
    موصول شکریہ جات:
    8,028
    تمغے کے پوائنٹ:
    921

    ’فہم سلف ‘ کے حوالے سے واٹس ایپ کے ایک علمی مجموعہ میں ہونے والا ایک مباحثہ

    ایک صاحب نے کسی کو کہا :
    ’ آپ کے کیا کہنے !آپ کے لیے تو فہمِ اسلاف ویسے ہی ایک دم چھلا بن چکا ہے ،معذرت کے ساتھ ‘ ۔
    ان کا آگے سے جواب :
    ’ جی اور جس سیاق میں فہم سلف کے دم چھلے کا تذکرہ کیا گیا اسے بھی یاد رکھیے ، کہکہنے والا کہتا ہے جو مسئلہ آپ نے کتاب وسنت سے استنباط کیا ہے ہم اسے اس وقت تک نہیں مانیں گے جب تک سلف میں سے کسی نے یہ مسئلہ اخذ نہ کیا ہو۔ اگر سلف نے کیا تو درست وگرنہ غلط ۔ایسے میں ہم ان تقلیدی سلفیوں کو منہج سلف کا غلط معنى سمجھنے پر یہ الفاظ کہتے ہیں۔
    اور اسی طرح کہنے والا کہتا ہے :قرآن حدیث میں تو یہ بات ہے چونکہ فلاں سلف نے اسکی مخالفت کی ہے لہذا قرآن وحدیث کے نص کے عموم یا اطلاق کو سلف کے طرز عمل کی وجہ سے مقید یا خاص مانا جائے۔ یا سلف کے عمل کو قرینہ صارفہ بنایا جائے۔ایسے میں اسے دم چھلا نہ کہیں تو کیا کہیں ۔‘
    ہشام صاحب نے کہا :
    ’ فہم سلف خلاف نص مقبول نا کبھی تھی نا ہی کبھی ہو گی ۔جمیع صحابہ کا فہم بھی حضرت ابوبکر نے ایک نص سے مسترد کر دیا تھا لشکر اسامہ روانگی والی باتیں شاید تقلیدی سلفیوں کے لیے قصہ پارینہ بن چکی ہیں ۔‘
    رفیق صاحب کہتے ہیں :
    ’ منکرین زکاۃ کے خلاف جہاد کی نص موجود تھی ( اس لیے حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ نے صحابہ کا فہم) رد کردیا ‘
    ہشام صاحب مزید کہتے ہیں :
    ’ یہ پتہ نہیں دین میں جبری طور پر ایک نیا ماخذ ایجاد کرنے پر کیوں زود دیا جا رہا ہے۔ ‘
    ’ دور حاضر سے پہلے آج تک کسی نے ہر عمل صحابی کو حجت نا کہا نا مانا یہ دور جدید ہی کا کوئی شاخسانہ ہے۔ ‘
    رفیق صاحب کہتے ہیں :
    ’ويسے فہم سلف یا منہج سلف کا رٹہ لگانے والے اصول فقہ کی کسی بھی کتاب سے مآخذ شریعت پڑھ لیں تو اپنا سا منہ لے کے رہ جائیں ۔‘
    ہشام صاحب :
    ’ اتبعوا ما انزل الیکم من ربکم میں فہم سلف کو جبری ڈالنے کا نقصان اور حمیازہ ایک دن بھگتنا پڑے گا عمل صحابی کو بھی وحی بنا دیا جائے یہ کہاں کا انصاف ہے۔ ‘
    رفیق صاحب :
    ’ ⁠⁠⁠ابن عباس رضی اللہ عنہ کا خوارج سے مناظرہ اور مسئلہ فہم صحابہ​
    کچھ لوگ سیدنا عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہ کے خوارج سے مناظرہ کو دلیل بناتے ہیں کہ انہوں نے خوارج سے کہا تھا:
    ’’میں مہاجرین وانصار اور دامادِ رسول کی طرف سے آیا ہوں اور تمہیں اصحاب رسول کے بارے میں بتانے آیا ہوں (کہ وہ کیسی عظیم ہستیاں ہیں کہ) ان کی موجودگی میں وحی نازل ہوئی ، انہی کے بارے میں ہوئی اور وہ اس کی تفسیر کو تم سے زیادہ جانتے ہیں۔ [تم میں ان میں سے کوئی نہیں ہے۔ میں تمہارے پاس اس لیے آیا ہوں تاکہ ان کا پیغام تم تک پہنچاؤں اور تمہارا پیغام ان تک پہنچاؤں۔] ‘‘
    اورچونکہ انہوں نے صحابہ کی انکے علاوہ پہ فوقیت بیان کی اس سے معلوم ہوتا ہے کہ صحابی کا فہم حجت و دلیل ہے۔
    جبکہ ایسا نہیں ! کیونکہ سیدنا عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہ نے خوارج کو صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین کی افضلیت و فوقیت ضرور بتائی لیکن یہ نہیں کہاچونکہ وہ تم سے افضل و اشرف ہیں لہذا انکی بات ماننا تم پہ واجب ہے۔ بلکہ خوارج کی تاویلات اور اشکالات کا جواب وحی الہی سے ہی دیا۔ ملاحظہ فرمائیں:
    میں نےپوچھا: ’’بتاؤ رسول اللہﷺ کے چچا زاد، داماد اور آپﷺ پر سب سے پہلے اسلام لانے والے پر تمہیں کیا اعتراض ہے؟ حالانکہ نبی کریمﷺ کے تمام صحابہ انہی کے ساتھ ہیں۔‘‘
    کہنے لگے: ’’ہم ان پر تین اعتراض ہیں۔‘‘
    میں نے کہا: ’’بتاؤ کون کون سے ہیں؟‘‘
    کہنے لگے:
    انہوں نے دین کے معاملہ میں انسانوں کو ثالث مانا حالانکہ اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں:
    إِنِ الْحُكْمُ إِلَّا لِلَّهِ
    حکم تو صرف اللہ ہی کا ہے۔ [الأنعام: 57]
    اللہ کے اس فرمان کے بعد لوگوں کا فیصلہ سے کیا تعلق؟!
    میں نے پوچھا: اور کیا بات ہے؟
    انہوں نے کہا: انہوں نے لڑائی کی اور قتل کیا لیکن نہ کسی کو قیدی بنایا، نہ مال غنیمت حاصل کیا۔ اگر مخالفین کفار تھے تو انہیں قید کرنا اور ان کا مال لوٹنا حلال تھا ۔ اور اگر وہ مؤمن تھے تو ان سے لڑنا ہی حرام تھا۔‘‘
    میں نے پوچھا: اور کیا بات ہے؟
    انہوں نے کہا: ’’اپنے آپ کو امیر المؤمنین کہلوانے سے روک دیا۔ اگر وہ مؤمنوں کے امیر نہیں ہیں تو پھر لا محالہ کافروں کے امیر ہیں۔ ‘‘
    میں نے کہا: ’’اچھا، یہ بتاؤ کہ اگر میں تمہارے سامنے قرآن کریم کی کوئی محکم آیت پڑھوں یا نبی کریمﷺ کی سنت تمہیں بتاؤں، جس کا تم انکار نہ کر سکو، تو اپنے موقف سے رجوع کرلو گے؟‘‘
    کہنے لگے: ’’کیوں نہیں! ‘‘
    میں نے کہا: ’’جہاں تک تمہارے پہلے اعتراض کا تعلق ہے کہ ’’دین کے معاملہ میں لوگوں کو ثالث مانا ‘‘ تو اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے:
    يٰٓاَيُّها الَّذِيْنَ اٰمَنُوْا لَا تَقْتُلُوا الصَّيْدَ وَاَنْتُمْ حُرُمٌ * وَمَنْ قَتَلَهُ مِنْكُمْ مُّتَعَمِّدًا فَجَــزَاۗءٌ مِّثْلُ مَا قَتَلَ مِنَ النَّعَمِ يَحْكُمُ بِهِ ذَوَا عَدْلٍ مِّنْكُمْ
    اے ایمان والو! تم حالت احرام میں شکار نہ مارو۔ اور جس نے جان بوجھ کر شکار مارا تو اس کا بدلہ مویشیوں میں سے اسی شکار کے ہم پلہ جانور ہے جس کا فیصلہ تم میں سے دو عادل آدمی کریں۔
    [المائدۃ: 95]
    اسی طرح اللہ تعالیٰ نے میاں بیوی کے بارے میں فرمایا:
    وَإِنْ خِفْتُمْ شِقَاقَ بَيْنِهِمَا فَابْعَثُوا حَكَمًا مِنْ أَهْلِهِ وَحَكَمًا مِنْ أَهْلِهَا
    اور اگر تمہیں زوجین کے باہمی تعلقات بگڑ جانے کا خدشہ ہو تو ایک ثالث مرد کے خاندان سے اور ایک عورت کے خاندان سے مقرر کر لو ۔ [النساء: 35]
    میں تمہیں اللہ کا واسطہ دے کر پوچھتا ہوں: بتاؤ! لوگوں کی جانیں بچانے اور ان کی آپس میں صلح کے وقت لوگوں کے فیصلے کی زیادہ ضرورت ہے یا چوتھائی درہم کی قیمت رکھنے والے خرگوش معاملہ میں ؟
    کہنے لگے: ’’یقیناً لوگوں کی جانوں کو بچانے اور آپس میں صلح کروانے میں (زیادہ ضرورت ) ہے۔‘‘
    میں نے پوچھا: ’’پہلے اعتراض کا تسلی بخش جواب مل گیا؟‘‘
    کہنے لگے: ’’بےشک۔‘‘
    میں نے کہا: ’’جہاں تک تمہارے دوسرے اعتراض کا تعلق ہے کہ ’’مخالفین سے لڑائی تو کی لیکن نہ قیدی بنایا، نہ مال غنیمت حاصل کیا۔‘‘ تو بتاؤ! کیا اپنی والدہ عائشہ کو قیدی بنانا پسند کرتے ہو؟ کیا اسے بھی ایسے ہی لونڈی بنا کر رکھنا جائز سمجھتے ہو جیسے دوسری لونڈیوں کو؟ اگر جواب ہاں میں ہے تو تم کافر ہو۔ اور اگر یہ سمجھتے ہو کہ وہ مؤمنوں کی ماں نہیں ہے تو تب بھی تم کافر ہو اور دائرہ اسلام سے خارج ہو کیونکہ اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے:
    النَّبِيُّ أَوْلَى بِالْمُؤْمِنِينَ مِنْ أَنْفُسِهِمْ وَأَزْوَاجُهُ أُمَّهَاتُهُمْ
    بلاشبہ نبی ﷺ مومنوں کے لئے ان کی اپنی ذات سے بھی مقدم ہیں اور آپﷺ کی بیویاں مؤمنوں کی مائیں ہیں ۔ [الأحزاب: 6]
    اب تم دو گمراہیوں کے درمیان لٹکے ہوئے ہو۔ جس کو چاہو، اختیار کرلو۔ تم لوگ گمراہی کے گہرے غار میں دھنس چکے ہو۔
    تمہارا یہ اعتراض بھی ختم ہوا؟‘‘
    وہ کہنے لگے: ’’جی ہاں!‘‘
    میں نے کہا: ’’جہاں تک تمہارے اس اعتراض کا تعلق ہے کہ ’’سیدنا علی نے اپنے نام کے ساتھ امیر المؤمنین نہیں لکھوایا‘‘ تو رسول اللہﷺ نے حدیبیہ کے موقع پر قریش سے اس بات پر صلح کی کہ ان کے درمیان ایک معاہدہ تحریر ہوجائے۔ رسول اللہﷺ نے فرمایا: لکھو: ’’یہ وہ معاہدہ ہے جو محمد رسول اللہﷺ نے کیا ہے۔‘‘ وہ کہنے لگے: ’’اگر ہم یہ مانتے کہ آپ اللہ کے رسول ہیں تو کبھی بھی آپ کو بیت اللہ سے روکتے، نہ آپ سے لڑائی کرتے۔ لہٰذا محمد بن عبد اللہ لکھوائیں۔‘‘ آپﷺ نے فرمایا: ’’اللہ کی قسم! یقیناً میں اللہ کا سچا رسول ہوں، اگرچہ تم مجھے جھٹلاتے ہو، لیکن خیر,علی! محمد بن عبد اللہ لکھو۔‘‘
    تو رسول اللہﷺ تو علی سے بدرجہا بہتر ہیں۔
    یہ اعتراض بھی ختم ہوا؟‘‘
    کہنے لگے: ’’جی ہاں۔‘‘
    یہ گفتگو سن کر بیس ہزار خارجیوں نے اپنے موقف سے رجوع کرلیا اور باقی چار ہزار رہ گئے جو قتل کر دیے گئے۔
    (مصنف عبد الرزاق: 18678)
    اس قصہ میں کتنا واضح ہے کہ سیدنا عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہ نے انکے ہر اعتراض کا جواب قرآن وسنت سے دیا۔ سیدنا رضی اللہ عنہ کے محض صحابی ہونے کی وجہ سے انکی حمایت نہیں کی بلکہ انکے موقف پہ دلیل ہونے کی وجہ سے انکا ساتھ دیا۔
    اسی طرح خوارج نے جب ان کو عمدہ لباس زیب تن کیے ہوئے دیکھا تو فوراً اعتراض جڑ دیا۔اس پر سیدنا عبد اللہ بن عباس نے انہیں دندان شکن جواب دیتے ہوئے فرمایا:
    ’’اس سوٹ کی وجہ سے مجھ پر اعتراض کررہے ہو؟ حالانکہ میں نے رسول اللہﷺ کو تو اس سے بھی اچھے سوٹ پہنے دیکھا ہے۔ اور قرآن مجید میں اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں:
    قُلْ مَنْ حَرَّمَ زِينَةَ اللَّهِ الَّتِي أَخْرَجَ لِعِبَادِهِ وَالطَّيِّبَاتِ مِنَ الرِّزْقِ
    آپﷺ ان سے پوچھئے کہ اللہ تعالیٰ نے اپنے بندوں کے لیے جو زینت اور کھانے کی پاکیزہ چیزیں پیدا کی ہیں، انہیں کس نے حرام کردیا ؟ [الأعراف: 32]
    (المستدرك على الصحيحين:7368)
    یعنی یہ آیت مباح زینت کی حِلَّت بتانے کےلیے نازل ہوئی ہے تو کیسے تم اس کی مخالفت کرتے ہو اور اسے حرام ٹھہراتے ہو؟
    الغرض مناظرہ ا بن عباس رضی اللہ عنہ سے فہم صحابہ کی حجیت پہ دلیل لینا بالکل غلط ہے۔ کیونکہ انہوں نے اپنے اس مناظرہ میں صرف اور صرف وحی الہی کو ہی حجت و دلیل بنایا ہے۔‘
    ہشام صاحب :
    ’ پھر کئی مرتبہ یہ بات سمجھانے کی کوشش کی گئ ہے ہر باطل کا بھی سلف ہوتا ہے۔ ‘
    رفیق صاحب :
    ’ غیر وحی کو وحی کے برابر قرار دینا فتنہ عظیمہ ہے۔ ‘
    ہشام صاحب :
    ’ ہم کن دلائل کی بنیاد پر انہے قائل کریں نہیں تم اپنا سلف چھوڑو ہمارے سلف کو پکڑو۔ ‘
    ’ جب انہیں یہ کہا جاتا کہ تم ڈیڑھ دوسو سال بعد والا سلف پکڑو تو با آسانی کہ سکتے ہیں کہ ہمارے لیے ابو حنیفہ (رحمہ اللہ) ٹھیک ہیں اگر سلف ہی پکڑنا سیدھی دعوت ہونی چاہیے قرآن اور سنت دین مکمل دین اکمل کامل حیات نبی میں ہیں ۔ ‘
    مطیع صاحب :
    ’اہل حدیث بھی تقلید کی طرف لڑھک رہے ۔۔دیکھیے کتنے سال لگتے ۔ ‘
    ہشام صاحب :
    ’ دوسرا ہم یہ دلیل دیتے ہیں کہ یارو تیرہ سو سال پہلے والے۔کی بجائے چودہ سو سال پہلے والے کی مان لو۔ ‘
    رفیق صاحب :
    ’ نبی محترم صلى اللہ علیہ وسلم سب سے بہتر سلف ہیں
    نعم السلف أنا لک ،انکے بعد کسی اور کی طرف دیکھنے کو جی کرتا ہی نہیں !
    بس اک نگاہ پہ ٹھہرا ہے فیصلہ دل کا
    پھر جو اٹھ گئی سو اٹھ گئی جو رہ گئی سو رہ گئی ‘
    ہشام صاحب :
    ’ عجیب ترین بات ہے 1300 سال 1200 سال پرانے سلف کی مانو۔ کیوں بھائی چودہ سو سال پہلے والے میں نعوذ باللہ کوئی عیب تھا جو اسکی نا مانیں نبی کی بات سلف سے کہیں زیادہ آسان سیدھی سادھی ہے اور یہ دین مبہم نہیں کہ چل سو چل سلسلہ ہی ہے۔ ‘
    ’ سلف سے پہلے والے صحابہ اور تابعین بے چارے تو بلا سلف ہی دنیا سے چلے اللہ ہی خیر کرے۔ ‘
    رفیق صاحب ’ فہم سلف ‘ کے متعلق لکھتے ہیں :
    ’ یہ تقلید کی تمہید ہے۔ جس میں سادہ لوح نوجوان پھنس چکے ہیں۔ ‘
    ہشام صاحب :
    ’ مکمل پھنسا لیا گیا اور بعض شیوخ سادگی میں انکے ہمنوا ہیں۔ ‘
    ’ تقلید کا دیباچہ ہی یہ ہے نبی کی آراء میرے سلف کی عینک سے پڑھو ۔اس کے علاوہ تقلید کچھ نہیں۔ ‘
    مطیع صاحب :
    ’ حیرت ہوتی ۔۔ اور جو منہج اہل حدیث کی بات کرے اس کو اسلاف کا دشمن سمجھ رہے ۔۔ آئمہ اربعہ کے اقوال پیش کرتے ھم کہ وہ نص کے آ جانے پر اپنی بات کو ترک کرنے کی تلقیں کرتے تھے مگر خود چند عرب علماء کے لئے تاویلیں تراشتے۔ ‘
    ’اور ایک منظم سازش لگتی کہ اہل حدیث کی اولاد کو دفاع نبی سے ہٹا کر دفاع سلف پر لگا دو۔ ‘
    ہشام صاحب :
    ’رافضیوں بے چارے ویسے ہی بدنام ہوگئے عبد اللہ بن سبا انکا بھی سلف تو تھا ہی ہر باطل کا پاک پوتر سلف موجود ہے اسکی نظر میں یہ کونسی دعوت ہے سلف کی پیروی کرو کیوں بھائی تیرے سلف کی کیوں کروں میرا سلف تجھ سے اعلی اور پرانا ہے۔ ‘
     
  9. ‏مئی 17، 2017 #9
    خضر حیات

    خضر حیات علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    طابہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 14، 2011
    پیغامات:
    7,475
    موصول شکریہ جات:
    8,028
    تمغے کے پوائنٹ:
    921

    مصطفی ظہیر صاحب نے ایک آڈیو کلپ بھیجا ، جس میں انہوں نے قرآن وسنت سے فہم سلف کی حجیت کو بیان کیا ، ائمہ کے اقوال نقل کیے ، اور یہ کہا کہ بہت سارے لوگوں گمراہی کا سبب ، ان کا فہم سلف کو چھوڑ کر قرآن وسنت کی نصوص کی من مانی تاویلات ہی تھا ۔
    رفیق صاحب :
    ’ جو آیات آپ نے حجیت فہم سلف کے لیے پیش کیں ان آیات کے نزول کے وقت کون سلف تھا اور کس کو آیات میں خطاب کیا جا رہا ہے۔ اور اس وقت یعنی نزول وحی کے زمانہ میں اولین مخاطبین وحی یعنی صحابہ کرام کا کیا عمل و منہج تھا۔ اسی پہ غور کر لیں ساری عمارت گر جائے گی۔ ‘
    ’ باقی رہے اقوال تو وہ خود حجت نہیں ہیں ان سے کسی چیز کی حجیت کیونکر ثابت ہوگی۔ ‘
    ’ رہی گمراہ فرقوں کے رد کی بات تو وہ خالص قرآن وحدیث سے بھی ہو جاتا ہے۔ بشرطیکہ رد کرنا آتا ہو۔ ‘
    ’ محدثین نے قرآن کی آیات اور احادیث مرفوعہ پیش کرکے ہی ہر فرقہ کا رد کیا ہے۔ ‘
    صارم صاحب :
    ’ صحابہ رضی اللہ عنہم کے اجتہادات کو فہم و تعبیر دین کہنا بھی درست نہیں ۔اقوال صحابہ رضی اللہ عنہم کی دو اقسام کی ہیں :
    1⃣مرفوع حکمی۔۔۔اس کا تعلق فہم دین سے ہے
    2⃣اجتہاد صحابی رضی اللہ عنہ۔۔۔اس کا تعلق ذاتی اجتہاد سے ہوتا ہے۔۔۔فہم دین سے نہیں۔ ‘
    فراز صاحب :
    ’ بعض الناس كا پسندیدہ مسأله شروع ہے ۔جو حضرات فهم سلف كى آڑ میں اس سے زیادہ واضح ترين أمر: اجماع أمت كا مذاق اڑائیں۔
    وہ مرزے اور غامدى اور تمام منحرفين كو سب سے پہلے تہپکی دینے والے ہیں کہ جو چاہے اجتهاد لے آو، من پسندانہ دليل دے دو بس۔
    وکما قيل: قولكم بإنكار حجية الإجماع باطل بالإجماع! ‘
     
  10. ‏مئی 17، 2017 #10
    خضر حیات

    خضر حیات علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    طابہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 14، 2011
    پیغامات:
    7,475
    موصول شکریہ جات:
    8,028
    تمغے کے پوائنٹ:
    921

    فراز صاحب :
    ’ سبحان الله.
    كتنى تعداد میں اقوال صحابہ وتابعين درکار ہیں کتب السلف میں؟!
    السنة للبربهاري
    الشريعة للآجري
    شرع الاعتقاد للالكائي
    أصول السنة
    ان تمام كتب ميں علماء تابعين كے صرف قصے کہانیاں ذكر هيں یا دین کی صحيح ترين فهم ركهنے والوں کی سبیل المؤمنين کا ذكر هے جس سے ہٹنا عين انحراف ہے۔ ‘
    ’ بخارى ومسلم كى تمام احاديث پر اعتماد كرنے کا قول کون سى آیت یا حديث ميں ہے ؟! ‘
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں