1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

طارق بن زیادؒ کی وفات کیسے ہوئی ؟

'تاریخ عرب' میں موضوعات آغاز کردہ از Rashid Yaqoob Salafi, ‏فروری 19، 2017۔

  1. ‏فروری 19، 2017 #1
    Rashid Yaqoob Salafi

    Rashid Yaqoob Salafi مشہور رکن
    جگہ:
    Rawalpindi
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 12، 2011
    پیغامات:
    139
    موصول شکریہ جات:
    507
    تمغے کے پوائنٹ:
    114

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ
    میں جاننا چاہتا ہوں کہ طارق بن زیادؒ کی وفات کیسے ہوئی ، کوئی ساتھی اس بارے میں تاریخی روایات سے آگاہ کرے۔
    جزاکم اللہ خیرا
     
  2. ‏فروری 19، 2017 #2
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    6,372
    موصول شکریہ جات:
    2,398
    تمغے کے پوائنٹ:
    791

  3. ‏فروری 20، 2017 #3
    محمد فیض الابرار

    محمد فیض الابرار سینئر رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏جنوری 25، 2012
    پیغامات:
    3,039
    موصول شکریہ جات:
    1,194
    تمغے کے پوائنٹ:
    402

    طارق بن زیاد رحمہ اللہ کی موت کے بارے میں صحیح روایت تو نہیں ملتی البتہ کچھ قرائن و شواہد ہیں جن سے کچھ اندازہ لگایا جا سکتا ہے
    جن کے مطابق طارق بن زیاد کی موت 102 ھجری میں دمشق میں ہوئی اور ایک روایت کے مطابق 98 ھجری میں ہوئی لیکن معروف 102 ھجری ہی ہے
    اور ایک قول کے مطابق اموی خلیفہ سلیمان بن عبد الملک کے انتقام کا شکار جو معروف قائدین ہوئے ان میں ایک معرو ف نام طارق بن زیاد رحمہ اللہ کا بھی ہے لیکن یہ صرف ایک گمان ہے گو اس گمان کو تقویت اس طرح ملتی ہے کہ سلیمان کے دور حکومت کے بعد طارق بن زیاد رحمہ اللہ کا کوئی ذکر کہیں ملتا اور یہ اپنے اقا موسی بن نصیر رحمہ اللہ کے ساتھ ہی خلیفہ سلیمان کے انتقام کا نشانہ بنتے ہیں
    البتہ ایک غیر معروف روایت کے مطابق ان کی موت مصر میں ہوئی
    لیکن یہ سب گمان ہی گمان ہیں
     
    • علمی علمی x 5
    • مفید مفید x 1
    • لسٹ
  4. ‏اکتوبر 30، 2017 #4
    محمد المالكي

    محمد المالكي رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 01، 2017
    پیغامات:
    401
    موصول شکریہ جات:
    153
    تمغے کے پوائنٹ:
    47

    جزاک اللہ خیر محترم جناب
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں