1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

عورتیں عید گاہ میں نہ جائیں تحقیق درکار ہے

'فقہ عام' میں موضوعات آغاز کردہ از ابن قدامہ, ‏جولائی 18، 2015۔

  1. ‏جولائی 18، 2015 #1
    ابن قدامہ

    ابن قدامہ مشہور رکن
    جگہ:
    درب التبانة
    شمولیت:
    ‏جنوری 25، 2014
    پیغامات:
    1,772
    موصول شکریہ جات:
    421
    تمغے کے پوائنٹ:
    198

    عورتیں عید گاہ میں نہ جائیں:
    دلیل نمبر 1 : حضرت عائشہ رض فرماتی ہیں کہ اگر آج رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم ان باتوں کو دیکھ لیتے جو عورتوں نے اختیار کر رکھی ہیں تو انھیں مسجد جانے سے روک دیتے جس طرح بنی اسرائیل کی عورتیں روک دی گئی تھیں.
    ( بخاری، ج 1 ص 120)
    اسی منشاء نبوت کی وجہ سے صحابہ و تابعین نے عورتوں کو روک دیا،
    تفصیل آنے والے دلائل میں
    عورتیں عید گاہ میں نہ جائیں
    دلیل نمبر2: حضرت عبد اللہ بن عمر رض کی بیویاں نماز عیدین کے لیے نہیں جاتی تھیں.
    (مصنف ابن ابی شیبۃ ج4 ص234 جدیث نمبر5845)
    عورتیں عید گاہ میں نہ جائیں:
    دلیل نمبر3:عروہ بن زبیر بن عوام رض اپنے گھر کی کسی عورت کو عید الفطر اور عید الاضحی کی نماز کے لیے نہیں جانے دیتے تھے
    (مصنف ابن ابی شیبۃ ج4 ص234 جدیث نمبر5846)
    عورتیں عید گاہ میں نہ جائیں:
    دلیل نمبر4: حضرت قاسم بن ابو بکر صدیق رح عورتوں کے بارے میں شدید پابندی فرماتے تھے، انھیں عید الفطر اور عید الاضحی کی نماز میں نہ جانے دیتے تھے.
    (مصنف ابن ابی شیبۃ ج4 ص 234 حدیث نمبر5847)
    عورتیں عید گاہ میں نہ جائیں:
    دلیل نمبر5: جلیل القدر تابعی ابراہیم نخعی رح فرماتے ہیں کہ عورتوں کو عیدین کی نماز کے لیے جانا مکروہ ہے.
    (مصنف ابن ابی شیبۃ ج 4 ص 234 حدیث نمبر 5844)
     
  2. ‏جولائی 18، 2015 #2
    ابن قدامہ

    ابن قدامہ مشہور رکن
    جگہ:
    درب التبانة
    شمولیت:
    ‏جنوری 25، 2014
    پیغامات:
    1,772
    موصول شکریہ جات:
    421
    تمغے کے پوائنٹ:
    198

    @خضر حیات
    @اسحاق سلفی
    @ابن داود
     
  3. ‏جولائی 18، 2015 #3
    ابن داود

    ابن داود فعال رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏نومبر 08، 2011
    پیغامات:
    3,152
    موصول شکریہ جات:
    2,636
    تمغے کے پوائنٹ:
    556

    السلام علیکم و رحمۃ اللہ وبرکاتہ!
    یہ تو تنبیہ بلیغ ہے عورتوں کے لئے وہ امور ترک کرنے کی ، وگرنہ عورتوں کو مسجد نہ جانے کا فتویٰ تو سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہ نے بھی نہیں فرمایا!
    اس کی سند سے قطع نظر ، اس کا جواب اسحاق سلفی بھائی نے بہت اچھے انداز میں دیا ہے،
    اس کاجواب بھی اسحاق سلفی بھائی نے بہت اچھے انداز میں دیا ہے:
    مزید یہ کہ:
     
    Last edited: ‏ستمبر 20، 2015
    • پسند پسند x 4
    • علمی علمی x 1
    • لسٹ
  4. ‏جولائی 18، 2015 #4
    ابن قدامہ

    ابن قدامہ مشہور رکن
    جگہ:
    درب التبانة
    شمولیت:
    ‏جنوری 25، 2014
    پیغامات:
    1,772
    موصول شکریہ جات:
    421
    تمغے کے پوائنٹ:
    198

    منسلک کردہ فائلیں:

    • 3.png
      3.png
      فائل سائز:
      203.3 KB
      مناظر:
      427
    Last edited by a moderator: ‏جولائی 19، 2015
  5. ‏جولائی 18، 2015 #5
    ابن داود

    ابن داود فعال رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏نومبر 08، 2011
    پیغامات:
    3,152
    موصول شکریہ جات:
    2,636
    تمغے کے پوائنٹ:
    556

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکا تہ!
    ان اٹکل پچوُّ کے پجاریوں کو کہنا کہ یہ بات روز محشر نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو کہیں!
    کیونکہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی حدیث ہے:
     
    Last edited: ‏جولائی 18، 2015
    • پسند پسند x 3
    • زبردست زبردست x 1
    • لسٹ
  6. ‏جولائی 18، 2015 #6
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    6,188
    موصول شکریہ جات:
    2,366
    تمغے کے پوائنٹ:
    777

    احناف کے بقول اسلام عورتوں کو گھروں میں نماز کی فضیلت بتا کر عزت اور تحفظ دیتا ہے ؛
    تو۔۔۔ہمارا جواب یہ ہے کہ :
    خود نبی اکرم ﷺ نے مردوں کو حکم دیا ہے کہ وہ اپنی عورتوں کو مسجد جانے کی اجازت دیا کریں ۔۔۔
    تو کیا ۔۔(معاذاللہ ) پیارے نبی ﷺ کا یہ حکم کی انکی عزت اور تحفظ کے خلاف ہے ؟؟
    ’’لا تمنعوا إماء الله مساجد الله"کہ اللہ کی بندیوں کو اللہ کی مسجدوں میں آنے سے مت روکو۔‘‘

    اور
    عروة بن الزبير عن عائشة رضي الله عنها قالت:‏‏‏‏ اعتم رسول الله صلى الله عليه وسلم بالعتمة حتى ناداه عمر نام النساء والصبيان فخرج النبي صلى الله عليه وسلم فقال:‏‏‏‏"ما ينتظرها احد غيركم من اهل الارض ولا يصلى يومئذ إلا بالمدينة وكانوا يصلون العتمة فيما بين ان يغيب الشفق إلى ثلث الليل الاول".
    (صحیح البخاری ، حدیث نمبر: 864؎ )

    جناب عروہ بن زبیر نے عائشہ رضی اللہ عنہا سے بیان کیا، آپ رضی اللہ عنہ نے فرمایا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک مرتبہ عشاء کی نماز میں اتنی دیر کی کہ عمر رضی اللہ عنہ کو کہنا پڑا کہ عورتیں اور بچے سو گئے۔ پھر نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم (حجرے سے) تشریف لائے اور فرمایا کہ دیکھو روئے زمین پر اس نماز کا (اس وقت) تمہارے سوا اور کوئی انتظار نہیں کر رہا ہے۔ ان دنوں مدینہ کے سوا اور کہیں نماز نہیں پڑھی جاتی تھی اور لوگ عشاء کی نماز شفق ڈوبنے کے بعد سے رات کی پہلی تہائی گزرنے تک پڑھا کرتے تھے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    اور جناب رسول اللہ ﷺ کے بعد اس امت میں عورتوں کی عصمت کا سب سے بڑا محافظ سیدنا عمر رضی اللہ عنہ بھی (العیاذ باللہ ) اسلام کے اس حکم کو نہ سمجھ سکے ؟؟

    عن نافع عن ابن عمر قال:‏‏‏‏"كانت امراة لعمر تشهد صلاة الصبح والعشاء في الجماعة في المسجد فقيل لها:‏‏‏‏ لم تخرجين وقد تعلمين ان عمر يكره ذلك ويغار قالت:‏‏‏‏ وما يمنعه ان ينهاني قال:‏‏‏‏ يمنعه قول رسول الله صلى الله عليه وسلم:‏‏‏‏ لا تمنعوا إماء الله مساجد الله".(صحیح البخاری ،حدیث نمبر: 900 )

    جناب عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما نے،فرمایا کہ سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کی ایک بیوی تھیں جو صبح اور عشاء کی نماز جماعت سے پڑھنے کے لیے مسجد میں آیا کرتی تھیں۔ ان سے کہا گیا کہ باوجود اس علم کے کہ عمر رضی اللہ عنہ اس بات کو پسند نہیں کرتے، اور وہ غیرت محسوس کرتے ہیں پھر آپ مسجد میں کیوں جاتی ہیں۔ اس پر انہوں نے جواب دیا کہ پھر وہ مجھے منع کیوں نہیں کر دیتے۔ لوگوں نے کہا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی اس حدیث کی وجہ سے کہ اللہ کی بندیوں کو اللہ کی مسجدوں میں آنے سے مت روکو۔‘‘


     
    • پسند پسند x 3
    • علمی علمی x 1
    • لسٹ
  7. ‏جولائی 18، 2015 #7
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    6,188
    موصول شکریہ جات:
    2,366
    تمغے کے پوائنٹ:
    777

    الحمد لله (رب العالمين و الصلاة والسلام على سيد المرسلين )

    الأفضل للمرأة أن تخرج لصلاة العيد ، وبهذا أمرها النبي صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ .

    روى البخاري (324) ومسلم (890) عَنْ أُمِّ عَطِيَّةَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْها قَالَتْ : أَمَرَنَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ نُخْرِجَهُنَّ فِي الْفِطْرِ وَالأَضْحَى الْعَوَاتِقَ وَالْحُيَّضَ وَذَوَاتِ الْخُدُورِ ، فَأَمَّا الْحُيَّضُ فَيَعْتَزِلْنَ الصَّلاةَ وَيَشْهَدْنَ الْخَيْرَ وَدَعْوَةَ الْمُسْلِمِينَ . قُلْتُ : يَا رَسُولَ اللَّهِ ، إِحْدَانَا لا يَكُونُ لَهَا جِلْبَابٌ . قَالَ : لِتُلْبِسْهَا أُخْتُهَا مِنْ جِلْبَابِهَا .‘‘

    (الْعَوَاتِق) جَمْع عَاتِق وَهِيَ مَنْ بَلَغَتْ الْحُلُم أَوْ قَارَبَتْ , أَوْ اِسْتَحَقَّتْ التَّزْوِيج .
    (وَذَوَات الْخُدُور) هن الأبكار .

    قال الحافظ :
    فِيهِ اِسْتِحْبَابُ خُرُوجِ النِّسَاءِ إِلَى شُهُودِ الْعِيدَيْنِ سَوَاءٌ كُنَّ شَوَابَّ أَمْ لا وَذَوَاتِ هَيْئَاتٍ أَمْ لا اهـ .

    وقال الشوكاني :
    وَالْحَدِيثُ وَمَا فِي مَعْنَاهُ مِنْ الأَحَادِيثِ قَاضِيَةٌ بِمَشْرُوعِيَّةِ خُرُوجِ النِّسَاءِ فِي الْعِيدَيْنِ إلَى الْمُصَلَّى مِنْ غَيْرِ فَرْقٍ بَيْنَ الْبِكْرِ وَالثَّيِّبِ وَالشَّابَّةِ وَالْعَجُوزِ وَالْحَائِضِ وَغَيْرِهَا مَا لَمْ تَكُنْ مُعْتَدَّةً أَوْ كَانَ خُرُوجُهَا فِتْنَةً أَوْ كَانَ لَهَا عُذْرٌ اهـ .

    وسئل الشيخ ابن عثيمين : أيهما أفضل للمرأة الخروج لصلاة العيد أم البقاء في البيت ؟

    فأجاب :

    " الأفضل خروجها إلى العيد ؛ لأن النبي صلى الله عليه وسلم أمر أن تخرج النساء لصلاة العيد ، حتى العواتق وذوات الخدور ـ يعني حتى النساء اللاتي ليس من عادتهن الخروج ـ أمرهن أن يخرجن إلا الحيض فقد أمرهن بالخروج واعتزال المصلى ـ مصلى العيد ـ فالحائض تخرج مع النساء إلى صلاة العيد ، لكن لا تدخل مصلى العيد ؛ لأن مصلى العيد مسجد ، والمسجد لا يجوز للحائض أن تمكث فيه ، فيجوز أن تمر فيه مثلاً ، أو أن تأخذ منه الحاجة، لكن لا تمكث فيه ، وعلى هذا فنقول : إن النساء في صلاة العيد مأمورات بالخروج ومشاركة الرجال في هذه الصلاة ، وفيما يحصل فيها من خير، وذكر ودعاء" اهـ .

    "مجموع فتاوى الشيخ ابن عثيمين" (16/210) .

    وقال أيضا :
    " لكن يجب عليهن أن يخرجن تفلات ، غير متبرجات ولا متطيبات ، فيجمعن بين فعل السنة ، واجتناب الفتنة .
    وما يحصل من بعض النساء من التبرج والتطيب ، فهو من جهلهن ، وتقصير ولاة أمورهن . وهذا لا يمنع الحكم الشرعي العام ، وهو أمر النساء بالخروج إلى صلاة العيد " اهـ .

    الإسلام سؤال وجواب (http://islamqa.info/ar/49011)
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ترجمہ :
    الحمد للہ:

    عورت كے ليے نماز عيد كے ليے جانا افضل ہے، كيونكہ نبى كريم صلى اللہ عليہ وسلم نے يہى حكم ديا ہے.

    بخارى اور مسلم رحمہما اللہ نے ام عطيہ رضى اللہ تعالى عنہا سے بيان كيا ہے وہ كہتى ہيں:
    " ہميں رسول كريم صلى اللہ عليہ وسلم نے عيد الفطر اور عيد الاضحى ميں نكلنے كا حكم ديا، نوجوان شادى كے قابل اور حيض والى اور كنوارى عورتيں نكليں، اور حيض والى عورتيں نماز سے عليحدہ رہيں، اور وہ خير اور مسلمانوں كى دعاء ميں شريك ہوں، ميں نے كہا: اے اللہ تعالى كے رسول صلى اللہ عليہ وسلم اگر ہم ميں سے كسى ايك كے پاس اوڑھنى نہ ہو تو رسول كريم صلى اللہ عليہ وسلم نے فرمايا:
    " اس كى بہن اسے اپنى اوڑھنى دے دے " (صحيح بخارى حديث نمبر ( 324 ) صحيح مسلم حديث نمبر ( 890 ).

    العواتق: عاتق كى جمع ہے، جو بالغ لڑكى يا قريب البلوغ يا شادى كے قابل لڑكى كو كہتے ہيں.
    ذوات الخدور: كنوارى لڑكياں.

    حافظ ابن حجر رحمہ اللہ تعالى كہتے ہيں:
    اس حدیث شریف ميں عورتوں كا نماز عيد كے ليے نكلنے كا استحباب ہے، چاہے وہ چاہے وہ نوجوان ہوں يا نہ، يا پھر شكل و صورت والى ہوں يا نہ. اھـ

    اور شوكانى رحمہ اللہ تعالى كہتے ہيں:
    يہ حديث اور اس كے معنى ميں جو دوسرى احاديث ہيں ، ان میں عيدين ميں عورتوں كے ليے عيدگاہ كى طرف نكلنے كى مشروعيت كى متقاضى ہيں، بغير كسى فرق كے كہ وہ كنوارى ہو يا شادى شدہ، يا جوان ہو يا بوڑھى، حائضہ ہو يا دوسرى، جبكہ وہ عدت والى نہ ہو اور اس كے نكلنے ميں عورت يا كسى دوسرے كے ليے فتنہ نہ ہو، يا پھر اسے كوئى عذر ہو. اھـ

    شيخ ابن عثيمين رحمہ اللہ تعالى سے دريافت كيا گيا:
    تو شيخ رحمہ اللہ تعالى كا جواب تھا:

    " عورت كا نماز عيد كے ليے جانا افضل اور بہتر ہے؛ كيونكہ رسول كريم صلى اللہ عليہ وسلم نے عورتوں كو نماز عيد كے ليے جانے كا حكم ديا ہے، حتى كہ قريب البلوغ اور كنوارى عورتوں كو بھى ـ يعنى ان عورتوں كو بھى نكلنے كا حكم ديا ہے جو عادتا باہر نہيں نكلتيں ـ چنانچہ حائضہ عورت بھى عورتوں كے ساتھ عيد گاہ جائيگى، ليكن وہ نماز والى جگہ ميں داخل نہيں ہو گى؛ كيونكہ عيد گاہ مسجد ہے، اور مسجد ميں حائضہ عورت كے ليے ٹھرنا جائز نہيں، ليكن وہ وہاں سے گزر سكتى ہے، يا پھر وہاں سے كوئى چيز پكڑ سكتى ہے، ليكن وہاں ٹھرے گى نہيں.

    تو اس بنا پر ہم يہ كہيں گے كہ: عورتوں كو نماز عيد كے ليے نكلنے اور مردوں كے ساتھ اس نماز ميں شريك ہونے كا حكم ہے، اس ميں شركت كا حكم ہے جس سے خير اور ذكر اور دعاء حاصل ہوتى ہے. اھـ

    ديكھيں: مجموع فتاوى الشيخ ابن عثيمين ( 16 / 210 ).

    اور شيخ رحمہ اللہ كا يہ بھى كہنا ہے:
    " ليكن عورتوں كو بے پرد اور بناؤ سنگھار كر كے نكلنے سے اجتناب كرنا چاہيے، اور نہ ہى وہ خوشبو اور عطر استعمال كر كے نكليں، كيونكہ اس طرح وہ سنت پر عمل اور فتنہ سے اجتناب دونوں كو جمع كرسكتى ہيں.
    اور آج كل جو كچھ عورتوں سے بے پردگى اور خوشبو كا استعمال ہو رہا ہے وہ ان كى جہالت اور ان كے ذمہ داران اولياء كى كوتاہى كى بنا پر ہے، اور يہ غلط رویہ بھی عمومى شرعى حكم كو نہيں روك سكتا، جو كہ عورتوں كو نماز عيد كے ليے نكلنے كا ہے، (" اھـ

    واللہ اعلم .
    الاسلام سوال وجواب
     
    • پسند پسند x 3
    • شکریہ شکریہ x 1
    • لسٹ
  8. ‏جولائی 20، 2015 #8
    جوش

    جوش مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏جون 17، 2014
    پیغامات:
    621
    موصول شکریہ جات:
    307
    تمغے کے پوائنٹ:
    127

    افسوس در افسوس کہ عورتوں کو عید گاہ سے روکتے ہیں جہاں صرف رب کی عبادت کی جاتی ہے اور عمدہ وعظ و نصیحت سنی جاتی ہے اسکے بر عکس درگاہوں اور مزاروں وعرسوں میں کھلے عام اجازت جہاں عیاشی کے سوا کچھ نہیں۔ عورتوں کو اللہ سے ڈرنا چاہئے ورنہ ایک دن آئےگا جہاں اللہ کے عذاب سے انہیں کوئی نہیں بچا سکے گا ۔
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں