1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

فقہ اسلامی از ابوہشام (کینیڈا)

'فقہ عام' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد آصف مغل, ‏اپریل 29، 2013۔

  1. ‏اپریل 29، 2013 #1
    محمد آصف مغل

    محمد آصف مغل سینئر رکن
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏اپریل 29، 2013
    پیغامات:
    2,677
    موصول شکریہ جات:
    3,881
    تمغے کے پوائنٹ:
    436


    فقہ اسلامی


    ایک تعارف ، ایک تجزیہ

    ڈاکٹر محمد إدریس زبیر

    نام کتاب : فقہ اسلامی
    مؤلف : ڈاکٹر محمد ادریس زبیر
    ناشر : الہدی پبلی کیشنز۔
    طابع : شاکرین۔ لاہور۔ 042-37237184
    تاریخ طبع : 16 رمضان المبارک 1432ھ
    17 اگست 2011ء

    ملنے کا پتہ
    ۱۔ ہیڈ آفس: الہدی انٹرنیشنل۔ H-I/11اے کے بروہی روڈ۔ اسلام آباد
    ۲۔ الہدی انٹرنیشنل کی تمام برانچیں۔​
     
  2. ‏اپریل 29، 2013 #2
    محمد آصف مغل

    محمد آصف مغل سینئر رکن
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏اپریل 29، 2013
    پیغامات:
    2,677
    موصول شکریہ جات:
    3,881
    تمغے کے پوائنٹ:
    436

    فہرست مضامین​

    پیش لفظ
    پہلا باب تعارف فقہ اسلامی
    علم اور اس کی برکات۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۷
    فقہ اسلامی: خصوصیات اور محاسن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۱
    فقہ اسلامی کی اہمیت وضرورت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۶
    فقہ اسلامی کی روح۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۸
    موضوع فقہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۲۲
    لفظ فقہ کا معنی ومفہوم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۲۲
    مذہب اور دین: فرق۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۳۴
    فقہ، شریعہ اورقانون۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۳۵
    فقہ اور اصول فقہ میں فرق۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۴۸
    انتباہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۴۸
    مقام عبرت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۴۹
    لفظ سیاست کا معنی ومفہوم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۴۹
    فقہ اسلامی کے چند مسائل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۵۰
    فقہ اسلامی میں اہم چیز کون سی ہے؟۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۵۲
    فقیہ کسے کہتے ہیں؟۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۵۷
    فقہاء کے درجات۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۵۷
    غلط فہمیاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۵۹
    یاد رکھنے کی بات۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۶۰
    فقہ اسلامی میں مصالح عامہ کا خیال۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۶۱
    دوسرا باب تاریخ ومصادر
    تاریخ تدوین فقہ اور اس کے مراحل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۶۵
    فقہ اسلامی کے مصادر: قرآن وسنت، اجماع ، قیاس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۷۴
    اجتہاد۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۰۵
    اختلاف ہو تو حق ایک کے ساتھ ہوگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۱۷
    خیر القرون کا علم اور فقہی آزادی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۲۰
    تیسرا باب فقہاء اربعہ
    امام ابوحنیفہ رحمہ اللہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۲۸
    اساتذہ وتلامذہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۲۸
    فقہ حنفی کے اصول: کتابب اللہ ، سنت، اجماع اور قیاس۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۳۰
    فقہ حنفی کی مشہور کتب: اقسام وتعارف۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۳۱
    نمایاں خدو خال: علما ء احناف کی آرائ۔۔ضابطے۔۔تلفیق۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۳۲
    فقہ حنفی کی چند اصطلاحات۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۳۶
    مفتیٰ بہا،ظاہر الروایۃ، الروایۃ، الإمام، الشیخان، الطرفان،صاحبان، أصحابنا، مشایخ۔
    ائمہ اربعہ کے درمیان اختلاف کی صورتیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۳۷
    وفات۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۳۸
    ایک تحقیق طلب معاملہ: مجلس علمی، بعض دعووں کا ضعف۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۳۹
    امام مالک رحمہ اللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۴۲
    اساتذہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۴۲
    تدریس وعلمی وقار۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۴۳
    فقہ مالکی کی اہم کتب: موطأ اور المُدَوَّنۃ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۴۴
    امام مالکؒ کے شاگرد۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۴۵
    فقہ مالکی کے اصول۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۴۶
    چند مالکی اصطلاحات:ائمہ، الأخوان، شیخ، شیخان، قرینان، مفتی۔۔۔۔۔۔۱۴۷
    موازنہ بین مالکی وحنفی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۴۸
    وفات۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۴۹
    امام شافعیؒرحمہ اللہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۵۰
    بچپن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۵۰
    اساتذہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۵۰
    رحلہ برائے علم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۵۰
    فکر میں تبدیلی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۵۱
    فقہ شافعی کے اصول۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۵۲
    مشہور شافعی کتب۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۵۴
    بعض مشہور فقہی اصطلاحات۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۵۵
    اختلافی اصطلاحات۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۵۷
    تقابلی جائزہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۵۷
    وفات۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۵۸
    امام احمد بن حنبل رحمہ اللہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۵۹
    تعلیم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۶۰
    فتنہ خلق قرآن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۶۱
    عقیدہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۶۴
    وفات۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۶۴
    فقہ حنبلی کے اصول۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۶۵
    معتمد کتب حنابلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۶۶
    حنبلی اصطلاحات۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۶۷
    ائمہ اربعہ کے فقہی مناہج پرتبصرہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۶۹
    چوتھا باب فقہی تقسیم اور تناؤ
    فقہی مذاہب کا آغاز۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۷۳
    تقسیم کی وجہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۷۴
    مذہبی شدت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۷۶
    مسلکی فقہ کی اشاعت کے اسباب: قاضیوں کا کردار، فقہاء کے میلانات، غلو، ایک اور نمونہ، تلخ یادیں، تقلید، گروہ بندیاں، جماعت سازی اور امارت، فروعی مسائل، ذاتی رائے اور فرعی مسئلہ، نتائج۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۷۹
    تدوین نو کی ضرورت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۹۵
    عجیب رویے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۹۶
    قبولیت کی شرائط۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۲۰۰
    اطاعت واتباع :ترک تقلید۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۲۰۱
    صحیح احادیث۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۲۰۲
    غیر واقع مسائل سے اجتناب۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۲۰۳
    فقہ اسلامی کے پرکھنے کے معیارات:فقہی کتب اور ان کا انتخاب : مسلکی وغیر مسلکی کتب۔ مجتہدانہ کتب۔ فقہی مسائل کی جانچ اور طریقہ کار۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۲۰۴
    فقہ اسلامی کے چند مطالبات۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۲۱۱
    فقہ سے استفادہ ۔ تعصب سے اجتناب۔ولی اللہی تجویز۔ اختلاف کے باوجود رواداری۔ فقہاء ہمارا عظیم سرمایہ۔ اجتہاد کی ضرورت۔ استنباط۔جرح وتعدیل۔ تخریج سے اجتناب
    فتوی اور مفتی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۲۲۲
    آخری گذارش۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۲۳۵
     
  3. ‏اپریل 29، 2013 #3
    محمد آصف مغل

    محمد آصف مغل سینئر رکن
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏اپریل 29، 2013
    پیغامات:
    2,677
    موصول شکریہ جات:
    3,881
    تمغے کے پوائنٹ:
    436



    قال ابن سیرین رحمہ اللہ:

    إِنَّ ہٰذَا الْعِلْمَ دِیْنٌ فَانْظُرُوْا عَمَّنْ تَأْخُذُوْنَ دِیْنَکُمْ۔

    امام ابن سیرینؒ فرماتے ہیں:

    بلاشبہ یہ علم ، دین ہے پس دیکھا کرو کہ دین تم کس سے لے رہے ہو۔
     
  4. ‏اپریل 29، 2013 #4
    محمد آصف مغل

    محمد آصف مغل سینئر رکن
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏اپریل 29، 2013
    پیغامات:
    2,677
    موصول شکریہ جات:
    3,881
    تمغے کے پوائنٹ:
    436

    پیش لفظ​


    فقہ اسلامی۔ فرقہ واریت سے پاک ایک ایسی فکر سلیم کا نام ہے جو قرآن وسنت رسول کی خالص تعلیمات میں سینچی گئی ۔ جس نے زندہ مسائل کے استدلال ، استنباط اور اجتہاد میں قرآن وسنت رسول کو اپنایا اور شرعی احکام کی تشریح وتعبیر میں ان دونوں کوہی ہر حال میں ترجیح دی ۔ یہ تعلیمات اللہ تعالی کا ایساعطیہ ہیں جو اپنے لطف وکرم سے کسی بھی بندے کو خیر کثیر کے طور پروہ عطا کر دیتا ہے۔

    فقہ اسلامی۔ اس علم کا نام ہے جو کتاب وسنت رسول سے سچی وابستگی کے بعد تقرب الٰہی کی صورت میںحاصل ہوتا ہے۔یہ علم دھول وغبار کو اڑا کر ماحول کو صاف وشفاف بناتا ہے۔ اور بعض ایسے مبہم خیالات کا صفایا کرتا ہے جہاں بظاہر کچھ ہوتا ہے اور اندرون خانہ کچھ۔ روشنی کے ایسے دروبام کھولتا ہے جن میں ظلمت چھٹ جاتی ہے۔ جس کے ادراک کے بعد ضلالت یا نزاع کی کوئی شکل باقی نہیں رہتی۔

    فقہ اسلامی مختلف شعبہ ہائے زندگی کے مباحث پر مشتمل ہے۔ اس کے فہم کے بعض نابغہ روزگار متخصصین ایسے بھی ہیںجن کے علم وفضل اور اجتہادات سے ایک دنیا مستفید ہوئی اور ہورہی ہے۔ فقہ اسلامی ایک ایسا بہاؤ ہے جو زمان ومکان کی علمی وشرعی ضرورتوں کوپورا کرتا اور ذہنی تشویش کو دھوتا اور پاکیزہ کرتا چلا جاتا ہے۔ اس کے بہاؤ میں ٹھہراؤ نہیں اس لئے کہ ٹھہراؤ میں زندگی ہے نہ تازگی۔ یہ ایسا باغ ہے جو ہر موسم میں اپنے اشجار کو اگاتا اور اپنے لذیذ پھلوں سے اپنے چاہنے والوں کو لذت سے آشنا کرتا ہے۔ ؎عجب چیز ہے لذت آشنائی ۔ہمارے ان فقہاء پر اللہ تعالی اپنی خیر وبرکت نازل فرمائے جنہوں نے امت کو اس خیر سے آشنا کرایا اور خود بہت کچھ نوازا۔

    مذہبی وفرقہ وارانہ رجحانات زندگی کے ہر سٹیج پر نمایاں ہیں۔بلا شبہ ان میں تعصب و تشدد کے عناصر ہیں مگر اس میں بھی کچھ شک نہیں کہ ان بندگان خدا میں کچھ ایسے بھی ہیںجو اپنی کی گئی مخلصانہ کوششوں پر سوال کناں ہیں کہ یہ سب محنت، تحریک، دعوت وتحریر اور تعلیم وتدریس کے زاویے وحلقے کس مقصد کے لئے چلائے اور منعقدکئے جارہے ہیں؟ کیا اپنی جماعت،اپنے گروہ یا شخصیت کے لئے؟ یا اللہ کے لئے؟ منصف ضمیر کے اس سوال پر جہاںیہ لوگ لڑکھڑاتے ہیں وہاں ان کے پاس ان سوالوں کا جواب سوائے اس کے اور کچھ نہیں ہوتا کہ خاموشی اختیار کی جائے یا اپنی ذہنی اڑان پر مزید پابندی لگا دی جائے۔
     
    • شکریہ شکریہ x 4
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
  5. ‏اپریل 29، 2013 #5
    محمد آصف مغل

    محمد آصف مغل سینئر رکن
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏اپریل 29، 2013
    پیغامات:
    2,677
    موصول شکریہ جات:
    3,881
    تمغے کے پوائنٹ:
    436

    ہماری فقہی تاریخ میں سمرقندو بخارا اور بغدادکی خونیں تاریخ بھی ہے۔ کچھ تلخ حقائق بھی اپنے اندر یہ سموئے ہوئے ہے اور جس کی کڑواہٹ ابھی تک بانٹی جاتی ہے۔ گو ان کی بنیادیں صدیوں پرانی ہیں مگرماضی کی اٹھان نے اسے اب ایسا درخت بنا دیا ہے جو سوائے کڑوے کسیلے پھل دینے کے یا اپنے سائے سے دوسروں کو محروم کرنے کے یا اپنے بیج سے اپنی نسل کو باقی رکھنے کے کچھ نہیں کر پارہا۔ یہ ایسی فضا ہے جس میں اپنوں کو ہی مخصوص تربیت دی جاتی ہے اور مخصوص سوچ کے ساتھ انہیں مارکیٹ کے حوالے کردیا جاتا ہے۔اسی طرح علمی بحث وتحقیق غیر جانب داری اور حقیقت پسندی کی متقاضی ہوتی ہے لیکن اس موضوع میں بے شمار مثالیں ایسی موجود ہیں کہ علم وتحقیق کا قلم پاکیزگی سے ہٹ کر کسی اور جانب مڑ جاتا ہے جس میں معروضی شکل سے کم اور خاص غرض کے ساتھ وابستگی زیادہ نظر آتی ہے ۔ اس تاریخ کو پڑھ کر ہم اپنے پیداشدہ حالات کا مخلصانہ جائزہ لے سکتے ہیں۔جو متقاضی ہیں کہ مسلکی تعصبات کوخیر باد کہا جائے۔ امت مسلمہ بہت زخمی ہوچکی اپنے ہی اس پر کرم کر لیں تو اس پر بڑا احسان ہوگا۔ ہم اس دور کے تقاضوںکو سمجھیں۔ ہم اگر اپنے علمی سوتوں کو بند کریں گے تو ماضی پر رشک کرنا بے وقوفی ہوگا۔اس لئے کہ حال، ماضی سے جڑ کر مستقبل بناتا ہے اگر حال ہی بدحال ہو تو ماضی پر فخر کاہے کا؟

    رائج تاریخ فقہ کو اس کتاب میں بیان کرنے سے گریز کیا گیا ہے۔ اس لئے کہ آ ج کے معروضی حالات میں طالب علم کوجس فقہی منہج کی ضرورت ہے وہ وہی ہے جو جناب رسالت مآب ﷺنے چھوڑا اورجس کے وارثوں نے اس منہج کوبحفاظت سنبھالا اور اس کی آبیاری کی۔ وہ منہج کیا تھا؟ سب جانتے ہیں آپ ﷺ کا چھوڑا ہوا منہج :

    تَرَکْتُ فِیْکُمْ أَمَرَیْنِ لَنْ تَضِلُّوا مَا إِنْ تَمَسَّکْتُمْ بِہِمَا: کِتَابُ اللہِ وَسُنَّتِی۔الحدیث میں تم میں دو چیزیں چھوڑے جارہا ہوں۔ جب تک تم نے ان دونوں کو تھا مے رکھا کبھی گمراہ نہیں ہوگے: ایک اللہ کی کتاب اور دوسری میری سنت۔

    کتاب ہذا میں کوشش کی گئی ہے کہ رائج معنی سے ہٹ کرفقہ وتاریخ فقہ کا صحیح معنی ومفہوم متعین کیا جائے۔اور وہ اثرات زائل کئے جائیں جو کسی بھی صورت میں فقہ کے معنی کو محدود کرتے یا مبالغہ آمیزی سے کام لیتے ہیں۔

    اس میدان کے شہسوار کون ہیں؟ ان کی خصوصیات کیا ہیں؟ زبان رسالت نے علم اور اس کے درجات جس طرح واضح کئے ہیں ان کے بعد مزید کچھ کہنے کی ضرورت باقی نہیں رہتی۔

    یہی وہ اسلامی فقہ ہے جس کی تلاش آج ہمارے لئے بھول بھلیوں کی حیثیت اختیار کر گئی ہے۔اس کے برعکس رواجی فقہ اور اس کی تاریخ بظاہر واضح اور روشن ہے مگر اس کے حقائق دبیز پردوں میں مستور ۔ جنہیں بغور پڑھنے سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ یہ تاریخ در اصل مسالک ومذاہب کی تاریخ ہے اپنے فضائل اور ترجیحات کی تاریخ ہے۔ مسلک کی خدمت و محنت تو اس تاریخ میں نظر آتی ہے مگردین کی خدمت کہاں؟ لگتا یہی ہے کہ چوتھی صدی کے وقوف کے بعد ہم سعی نہیں کر سکے بلکہ جہاں کھڑے تھے آج بھی وہیں کھڑے ہیں۔ ہاں ان حضرات میں جو مخلص تھے ان کا تحریری وعملی سرمایہ ہمارے لئے نعمت عظمیٰ سے کم نہیں۔اللہ ان پر اپنی رحمتوں کی برکھا برسائے۔آمین۔

    فقہ اسلامی کے اصل مصادر کون سے ہیں ؟ اور ان کے تابع کون کون سے؟ ان کا مختصر تعارف بعض ضمنی مباحث کے ساتھ پیش کیا گیا ہے۔
     
    • شکریہ شکریہ x 3
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
  6. ‏اپریل 29، 2013 #6
    محمد آصف مغل

    محمد آصف مغل سینئر رکن
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏اپریل 29، 2013
    پیغامات:
    2,677
    موصول شکریہ جات:
    3,881
    تمغے کے پوائنٹ:
    436

    فقہ اسلامی کی تدوین عمومی انداز میں ہوئی اور اسے ہی پسند کیا گیا۔ یعنی مختلف فقہاء کی کاوشوں میں جہاں مخصوص ذہن کار فرما نظر نہ آیا اسے فقہ اسلامی نے اپنے اندر سمولیا مگر جہاں یہ رنگ غالب نظر آیا وہاں فقہ اسلامی نے اپنا ہاتھ کھینچ لیا۔ اس لئے کہ فقہ اسلامی وسعت کے اعتبار سے اپنا اونچا مقام رکھتی ہے وہ اپنے آپ کو محدود رکھنا توکیا دیکھنا بھی نہیںچاہتی۔ اس لئے اس میں ہر وہ مثبت کاوش شامل ہوئی جو فقہ اسلامی کو ذاتی سوچ اور مذہبی رجحانات سے پاک نظر آئی۔ فقیہ محترم کی ہر وہ رائے، اجتہاد یا استنباط وقیع حیثیت اختیار کر گیا جو کتاب وسنت اور مقاصد شریعت سے مطابقت رکھتا تھا۔ اس لئے کسی مجتہد کو عقل کل کا دعوی تھا نہ علم کلی کا۔ اور نہ ہی کسی کے بارے میں ایسی مبالغہ آرائی کا جواز ہے۔ فقہاء صحابہ ہوں یا فقہاء سبعہ، اسی طرح فقہاء اربعہ ہوں یا دیگر فقہاء ان سب نے بہ اخلاص اپنی اجتہادی کوششوں کو جاری وساری رکھا اس ضمن میں اگر کہیں علمی سہو، لا علمی یا خطا کا علم ہوا بھی تو انہوں نے خود اصلاح کرلی یا ان کی جب اصلاح کی گئی تو ان کی متواضع طبیعت نے اپنی اس اصلاح کو رب ذوالجلال کے حضور شکرانہ ادا کرکے قبول کیا۔ اورامت کو ایک خاموش سبق بھی دے دیا کہ اس راہ کے مسافروں کا یہی چلن ہوا کرتا ہے: کہ

    {وفوق کل ذی علم علیم}۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ دین میں ہر عالم سے بڑھ کر ایک عالم ہوا کرتا ہے۔

    فتویٰ وافتاء بھی ایک موثر معاشرتی قوت وضرورت بن کر ابھرے جو سائل کی دینی تشفی کا سامان تھے اور عامۃ الناس کی شعوری بیداری کا ایک ذریعہ بھی۔ یہ منصب جلیلہ جسے حاصل ہوتا وہ طویل عرصہ کی مطالعاتی وتدریسی محنت ومشقت کا ذہنی ثمرہ ہوتا۔ اس میں ہر نووارد کی مفتی کی گنجائش نہ ہوتی اور نہ ہی اپنی فقہ پڑھنے کے بعد اسے اس کا اہل سمجھا جاتا تھا۔ علم ودلائل سے پختہ ان کے فتاوی جہاں جان رکھتے وہاں علماء وخواص بھی ان کے قدر دان ہوتے۔ ان پر عمل ہوتا اور عمل کروایاجاتا۔ جس کی وجہ افتاء وفتوی کی دینی، علمی وفقہی پختگی تھی۔

    شریعت اور فقہ اسلامی کی تعریف ووضاحت کے لئے یہ چند صفحات طلبہ کی ذہنی بالیدگی کے لئے لکھے گئے ہیں تاکہ ان میں اپنی تاریخ اور فقہ اسلامی کی ہر دور میں ضرورت کا احساس جاگ سکے اور اصول فقہ کو بھی ضمناً سمجھ سکیں۔ کوشش ہماری یہی رہی ہے کہ اس موضوع کو قرآن وسنت کے ساتھ ہی منسلک رکھا جائے اور اسلامی فقہ کا وہ خالص انداز طلبہ کے سامنے لایا جائے جس پر چل کر امت مسلمہ خالص دین پر قائم ہوسکے اور تفرقہ وتعصب سے پرے بھی۔اس منہج کو سنبھالا دینے کے لئے اس ارشاد رسول کو حرز جان بنانا ہوگا: کہ

    إِنَّہُ مَنْ یَعِشْ مِنْ بَعْدِیْ۔۔۔۔۔ میرے بعد جو جئے گا وہ بہت سے اختلافات دیکھے گا۔ ایسی صورت میں میری جانی بوجھی سنت کو تھام لینا۔

    ایسے حالات میں فقہ اسلامی کیا تقاضا کرتی ہے اور ایک بندہ خدا کو حد اعتدال پر لانے کے لئے کیا لائحہ عمل دیتی ہے۔ کچھ ایسے امکانات ابھی تک باقی ہیں جو مایوسی سے نکال کر امید کی روشن کرن فروزاں کرتے ہیں۔ کتاب کا آخری باب ان سوالوں کا جواب ہے۔
    اس کتاب میں فقہی اصطلاحات ، اور فقہی مواد کی ترتیب وتنظیم کو سہل انداز سے قابل فہم بنانے کی بھی کوشش کی گئی ہے اور استدلال میں قرآنی آیات وصحیح وحسن احادیث کو یا صحابہ کرام کے موثوق آثار کو بنیاد بنایا گیا ہے۔ یہ بھی امید کرتے ہیںکہ طلبہ دین اپنی علمی اور فنی نصیحتوں کو بھی پیش کرنے میں بخل سے کام نہیں لیں گے۔ اللہ تعالی ہمیں خیر کے تمام کاموں کو کرنے کی توفیق عطا فرمائے اور اپنی رضا سے ہرطالب حق کو سرفراز فرمائے۔ آمین۔

    کتاب کی تصنیف میں جن مصادر ومآخذ سے مدد لی گئی ہے ان کا چونکہ کتاب میں جابجا حوالہ دے دیا گیا ہے اس لئے الگ کتابی فہرست بنانے کی ضرورت محسوس نہیں کی گئی۔

    وآخر دعوانا أن الحمد للہ رب العالمین۔​
     
    • شکریہ شکریہ x 3
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
  7. ‏اپریل 29، 2013 #7
    محمد آصف مغل

    محمد آصف مغل سینئر رکن
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏اپریل 29، 2013
    پیغامات:
    2,677
    موصول شکریہ جات:
    3,881
    تمغے کے پوائنٹ:
    436



    انتساب

    اپنی شریک حیات کے نام

    جنہوں نے اپنے فہم دین کی روش کو بغیر کسی تعصب یا تعلّی کے

    قرآن اور سنت رسول ﷺکے ساتھ وابستہ کرلیا۔
     
  8. ‏اپریل 29، 2013 #8
    محمد آصف مغل

    محمد آصف مغل سینئر رکن
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏اپریل 29، 2013
    پیغامات:
    2,677
    موصول شکریہ جات:
    3,881
    تمغے کے پوائنٹ:
    436

    عَنِ الْعِرْبَاضِ بْنِ سَارِیَۃَ رَضِیَ اللہَ عَنْہُ قَالَ:
    وَعَظَنَا رَسُولُ اللہِ ﷺ مَوْعِظَۃً ذَرَفَتْ مِنْہَا الْعُیُونُ، وَوَجِلَتْ مِنْہَا الْقُلُوبُ، قُلْنَا: یَا رَسُولَ اللہِ ﷺ، إِنَّ ہٰذِہِ مَوْعِظَۃً مُوَدِّعٍ فَمَا تَعْہَدُ إِلَینَا؟ فَقَالَ: قَدْ تَرَکْتُکُمْ عَلَی الْبَیْضَائِ، لَیْلُہَا کَنَہَارِہَا، لاَ یَزِیْغُ عَنْہَا بَعْدِیْ إِلَّا ہَالِکٌ، وَمَنْ یَعِشْ مِنْکُمْ بَعْدِیْ فَسَیَرَی اخْتِلاَفًا کَثِیْرًا، فَعَلَیْکُمْ بِمَا عَرَفْتُمْ مِنْ سُنَّتِیْ، وَسُنَّۃِ الْخُلَفَائِ الرَّاشِدِیْنَ الْمَہْدِیِّیْنَ، وَعَلَیْکُمْ بِالطَّاعَۃِ وَإِنَّ عَبْدًا حَبَشِیًّا، وَعَضُّوا عَلَیْہَا بِالنَّوَاجِذِ، وَإِیَّاکُمْ وَمُحْدَثَاتِ الأُمُورِ فَإِنَّ کُلَّ بِدْعَۃٍ ضَلاَلَۃٍ۔ أخرجہ أحمد:۴؍۱۲۶
    سیدنا عرباض بن ساریہؓ سے روایت ہے: جناب رسالت مآب ﷺ نے ہمیں ایک ایسا وعظ ارشاد فرمایا کہ ہماری آنکھیں نم ہوگئیں اور دل پسیج سے گئے۔ ہم نے عرض کی: اللہ کے رسول! آپﷺ کا یہ وعظ الوداعی ساوعظ لگتا ہے۔ آپ ہم سے کیا توقع کرسکتے ہیں؟ آپﷺ نے فرمایا: میں نے تمہیں روشن شاہراہ پہ چلا دیا ہے جس کی تاریکی بھی اس کی روشنی کی مانند ہے۔ میرے بعد اگر کوئی اس راہ سے بھٹکا تو وہ خود ہی تباہ ہوگا۔ سنو! میرے بعد جو زندہ رہا وہ بہت سے اختلافات کو اپنے درمیان دیکھے گا ۔ اس وقت تم لوگ میری اور ہدایت یافتہ خلفاء راشدین کی معروف سنت کو تھام لینا۔ اپنے آپ کو اطاعت امیر کا خوگر بنانا خواہ تمہارا وہ امیر حبشی غلام ہی کیوں نہ ہو۔ اطاعت کو اپنی ڈاڑھوں سے پکڑ لینا۔ اور ہاں اپنے آپ کو نئی نئی گھڑی نیکیوں سے بھی باز رکھنا اس لئے کہ ہر بدعت گمراہی ہوتی ہے۔
     
    • شکریہ شکریہ x 3
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
  9. ‏اپریل 30، 2013 #9
    محمد آصف مغل

    محمد آصف مغل سینئر رکن
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏اپریل 29، 2013
    پیغامات:
    2,677
    موصول شکریہ جات:
    3,881
    تمغے کے پوائنٹ:
    436

    بسم اللہ الرحمن الرحیم​


    باب اول

    تعارف فقہ اسلامی​


    نحمدہ ونصلی علی رسولہ الکریم۔۔۔۔۔۔۔۔

    علوم بے شمار ہیں۔ یہ سبھی اللہ تعالی کے ہاں عمدہ ومبارک ہوسکتے ہیں جب انسان ان سے خود فائدہ اٹھائے اور دوسروں کی دنیا وآخرت مفید بناسکے۔اس لئے بنیادی طور پرعلم کی دو اقسام ہیں۔ علم دنیوی و علم شرعی ۔

    ۱۔ علم دنیوی: وہ علم جس کی ضرورت انسان کو اس دنیا میں پڑتی ہے جیسے علم ریاضیات، علم فلک، اور فزکس وغیرہ۔ اس کی اہمیت دنیا میں ہے۔ دین وایمان متزلزل نہ ہو تو اسے سیکھنے کی ضرورت بھی ہے۔ صرف نیت کی درستگی ضرور ہونی چاہئے۔ اور بنیادی عقائد واعمال پر قائم رہتے ہوئے اس علم کا فائدہ آگے پہنچانا چاہئے۔ ایسا عمل باعث اجر وثواب ہے۔ مگر جو اپنی ذات کے لئے اسے سیکھے وہ بھی گناہ گار نہیں ۔

    ۲۔ علم شرعی: یہ علم کتاب وسنت ہے جو بلاشبہ انتہائی اہمیت کا حامل ہے۔آپ ﷺ کے ارشاد کا بھی یہی مقصود ہے۔

    طَلَبُ الْعِلْمِ فَرِیْضَۃٌ عَلَی کُلِّ مُسْلِمٍ۔علم کا حصول ہر مسلمان پر فرض ہے۔

    یہی انبیاء کی میراث ہے حدیث میں آپﷺ کاارشاد ہے:

    إِنَّ الأَنْبِیَاءَ لَمْ یُوَرِّثُوا دِیْنَارًا وَلاَ دِرْہَمًا وَإِنَّمَا وَرَّثُوا الْعِلْمَ، فَمَنْ أَخَذَہُ أَخَذَ بِحَظٍّ وَافِرٍ۔انبیاء کرام دینا ودرہم نہیں چھوڑا کرتے بلکہ وہ علم چھوڑ جاتے ہیں۔ جو بھی اسے حاصل کرتا ہے وہ بڑے نصیبے کو حاصل کرتا ہے ۔

    یہی توفیق ہی کافی ہے کہ آدمی اس راہ پر چل نکلے۔جی ہاں جو اس راہ پر چلا وہ خوش قسمت ٹھہرا اور رب ذو الجلال کی رضا بھی اسے حاصل ہوئی۔ اپنی نیت کو خالص لوجہ اللہ کرتے ہوئے عمل بھی بجالائے اور اس پر قائم رہے تو یہی {فقد أوتی خیرا کثیرا} ہے۔ طالب علم کے لئے اس سے بڑھ کر اور کوئی شے باعث عزت نہیں۔کیونکہ وہ ایسی راہ پر چل نکلاہے جوصرف جنت کی طرف ہی جاتی ہے۔ آپ ﷺ ارشاد فرماتے ہیں:

    مَنْ سَلَکَ طَرِیْقاً یَلْتَمِسُ فِیْہِ عِلْماً سَہَّلَ اللہُ لَہُ طَرِیْقاً إِلَی الْجَنَّۃِ۔ جو ایسے راستے پر چلا جس سے وہ علم حاصل کرنا چاہتا ہے تو اللہ بھی اس کے لئے جنت کی طرف جانے والا راستہ آسان کردیتا ہے۔

    یہ فرق بھی ملحوظ رہے کہ جو اپنے آپ کو اس راہ میں کھپاتا ہے وہ اور جاہل برابر نہیں ہوسکتے۔

    {قل ہل یستوی الذین یعلمون والذین لا یعلمون} ان سے کہئے کیا جو علم رکھتے ہیں اور جو نہیں رکھتے دونوں برابر ہوسکتے ہیں؟۔

    استفہام انکاری ہے جس کا مطلب ہے کہ بالکل نہیں ۔جیسے زندہ ومردہ برابر نہیںہوسکتے یا سننے والا اور بہرا اور بینا ونابینا پرابر نہیں ہوسکتے۔اسی لئے اہل علم کا مقام اللہ عزوجل کے نزدیک بہت اونچا ہے:

    {یرفع اللہ الذین آمنوا منکم والذین أوتوا العلم درجات} اللہ تعالی تم میں اہل ایمان کے اور جو علم دئے گئے ہیں ان کے درجات بلند کردیتا ہے۔

    ویسے بھی ہم غور کریں تو دنیا میں اہل علم ہی کی تعریف کی جاتی ہے۔ان کی چھوڑی میراث کا ذکرخیر لوگ ان کی زندگی میں اور ان کی وفات کے بعد کرتے رہتے ہیں۔اور اس میں کوئی شک نہیں کہ روز قیامت ان کے درجات دعوت الی اللہ اور صحیح علم کو پھیلانے میں اپنی اپنی کوشش کے مطابق جنت میں بھی بہت بلند ہوں گے۔

    علم شرعی کے حصول کی چند شرائط:

    اخلاص نیت: چونکہ علم تقرب الٰہی کا ذریعہ ہے اس لئے متعلم کے لئے اخلاص نیت حصول علم کا پہلا زینہ ہے۔ خود راستی پر قائم ر ہے۔ مرغوبات دنیا اسے کھینچ نہ سکیں۔اگر کوئی یہ بھی نیت کرلے کہ میں ڈگری پانے کے بعد اس سے اپنی آمدنی بھی حاصل کرنا چاہتا ہوں تو یہ معیوب بات نہیں۔بلکہ اس کا حال اس حاجی کی طرح ہے جو فریضہ حج کی ادائیگی کے لئے مکہ مکرمہ جارہا ہو اور اثناء سفر میں تجارت کرلے جو بالاتفاق جائز ہے۔

    {لیس علیکم جناح أن تبتغوا فضلاً } تم پر کوئی گناہ نہیں اگر تم فضل تلاش کرو۔

    وہ جب بھی شرعی علم کے دروس میں شریک ہو۔یہ حدیث پیش نظر رکھے:

    مَنْ تَعَلَّمَ عِلْمًا یُبْتَغٰی بِہِ وَجْہَ اللہِ ، لَا یَتَعَلَّمُہُ إِلاَّ لِیُصِیْبَ مِنَ الدُّنْیَا، لَمْ یَجِدْ عَرْفَ الْجَنَّۃِ یَوْمَ الْقِیَامَۃِ۔جو اس علم کو سیکھتا ہے جس سے صرف اللہ کی رضا ہی حاصل کی جاسکے مگر یہ اسے اس لئے سیکھتا ہے تاکہ اس کے ذریعے سے دنیا بنائے ایسا شخص روز قیامت جنت کی خوشبو تک نہ پا سکے گا۔

    علم کے ساتھ عمل: طالب علم کو چاہئے کہ وہ جو جانے یا سیکھے اس پر عمل بھی کرے۔کیونکہ یہی علم کا ثمرہ ہے اور یہی تقرب الٰہی ہے۔ ورنہ سب بیکار ہے۔آپ ﷺ کا ارشاد ہے:

    القُرْآنُ حُجَّۃٌ لَکَ أَوْ عَلَیْکَ۔ قرآن اگر اس کے مطابق عمل کیا یا تو تمہارے حق میں حجت ہے یا پھر عمل نہ کرنے کی صورت میں تمہارے خلاف حجت ہوگا۔
     
    • شکریہ شکریہ x 2
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
  10. ‏اپریل 30، 2013 #10
    محمد آصف مغل

    محمد آصف مغل سینئر رکن
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏اپریل 29، 2013
    پیغامات:
    2,677
    موصول شکریہ جات:
    3,881
    تمغے کے پوائنٹ:
    436

    علم سیکھنے کا شوق اور دعائیں: طالب علم اپنے بھرپور شوق اور جستجو کا مظاہرہ کرے۔ اگر کہیں کوئی بھی رکاوٹ پیش آئے تو اس کا حل تلاش کرے یا پھر رب کی بارگاہ میں دعا کرے۔امام شافعیؒ فرماتے ہیں:

    شَکَوتُ إِلٰی وَکِیْعٍ سُوئَ حِفْظِیْ فَأَوْصَانِیْ إِلَی تَرْکِ الْمَعَاصِیْ
    میں نے وکیع سے اپنے برے حافظے کی شکایت کی تو انہوں نے مجھے معاصی ترک کرنے کی نصیحت فرمائی

    فَقَالَ الْعِلْمُ نُورٌ مِنْ إِلٰہٍ وَنُورُ اللہِ لاَ یُہْ دٰی لِعَاصِیْ
    انہوں نے فرمایا کہ علم ایک خداداد نور ہوتا ہے اور یہ نور اللہ کے نافرمانوں کو نصیب نہیں ہوا کرتا۔

    سیدنا معاذ بن جبل رضی اللہ عنہ جو بارشاد رسول ﷺ حرام وحلال کے سب سے بڑے عالم ہیں اور روز قیامت امام و سیدا لفقہاء ہوں گے ۔ ان سے آخری وقت کہا گیا : آپ تو صحابی رسول ہیں اور آگے کی منزلیں بھی آپ کی آسان ہیں۔ تو رونے لگ گئے۔ کسی نے پوچھا : کیوں رو رہے ہیں؟ فرمانے لگے: میںآگے کی کامیابی پر نہیں بلکہ اس پر رو رہا ہوں کہ اب عمل کا موقع جارہا ہے روزے ، قیام اللیل اور مَزَاحَمَۃُ الْعُلَمَائِ بِالرُّکَبِ سواریوں پر علماء کے ہاں ازدحام کرنے کے سب مواقع ختم ہورہے ہیں۔

    امام ابن المبارک رحمہ اللہ کا آخری وقت جب آیا تو شاگردوں نے عرض کی کہ اگر آپ کو دوبارہ زندگی دے دی جائے توآپ دنیا میں آکر کیا کریں گے؟ فرمانے لگے : ایسا اگر ہوا تو صرف دین سیکھنے ہی آؤں گا۔

    امام ابن القیمؒ فرماتے ہیں کہ امام احمد بن حنبلؒ فرمایا کرتے:

    فَہْمُ الْعِلْمِ أَحَبُّ إِلَیْنَا مِنْ حِفْظِہِ۔ علم کا سمجھنا ہمیں زیادہ پسندیدہ ہے بہ نسبت اس کے یاد کرنے کے۔

    یہی علم حکمت وخیر کثیر بھی کہلایا۔{ ومن یؤت الحکمۃ فقد أوتی خیرا کثیرا}۔ جسے حکمت عطا کی گئی وہ بلاشبہ خیر کثیر دے دیا گیا۔اس فقہ کا عطا ہونا بہت بڑی خیر و نعمت ہے :

    آپ ﷺ سے بھی فرمایا گیا: {وقل رب زدنی علما} اور آپ یہ دعا کیجئے : میرے مولا! میرا علم بڑھا۔

    علی بن خشرم نے اپنے شیخ وکیع بن الجراح سے عرض کی کہ ذہن وحافظہ کی تیزی کا کوئی نسخہ بتائیے تاکہ میں اپنے حافظے کواس طرح قوی کرسکوں جس طرح اللہ تعالی نے آپ کو عطا کیا ہوا ہے کہ سولہ سال تک آپ نے کوئی کتا ب ہی نہیں دیکھی۔ فرمانے لگے: واقعی ! اگر بتادوں تو وہ نسخہ استعمال کروگے؟ عرض کی : ضرور۔ فرمایا:گناہ ترک کردو۔امام بخاری رحمہ اللہ ہر روز دس اجزاء تہجد میں پڑھتے اور آخر میں ان کی دعا یہی ہوتی:میرے مولا! میرا علم بڑھا۔

    شیخ الاسلام امام ابن تیمیہؒ عمر بھر یہ دعا کرتے رہے: یَا مُعَلِّمَ إِبْرَاہِیمَ ! عَلِّمْنِیْ اے ابراہیم کے معلم! مجھے بھی علم عطا فرما۔ وَیَا مُفَہِّمَ سُلَیْمَانَ ! فَہِّمْنِیْ اور اے سلیمان کو فہم عطا کرنے والے! مجھے بھی دین کا فہم عطا فرما۔
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں