1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔۔
  2. محدث ٹیم منہج سلف پر لکھی گئی کتبِ فتاویٰ کو یونیکوڈائز کروانے کا خیال رکھتی ہے، اور الحمدللہ اس پر کام شروع بھی کرایا جا چکا ہے۔ اور پھر ان تمام کتب فتاویٰ کو محدث فتویٰ سائٹ پہ اپلوڈ بھی کردیا جائے گا۔ اس صدقہ جاریہ میں محدث ٹیم کے ساتھ تعاون کیجیے! ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔ ۔

قرآن خوانی کی شرعی حیثیت

'بدعت' میں موضوعات آغاز کردہ از مظاہر امیر, ‏جنوری 22، 2017۔

  1. ‏فروری 04، 2017 #51
    ابن داود

    ابن داود سینئر رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏نومبر 08، 2011
    پیغامات:
    2,540
    موصول شکریہ جات:
    2,412
    تمغے کے پوائنٹ:
    489

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!
    اب آپ ایسی باتیں کریں گے تو یہ باتیں ہیں ہی بھاڑ میں پھنکنے کے قابل؛
    نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی احادیث دیکھیں:
    جس طرح نمازِ وتر، جس کا تعلق قیام الیل سے ہے، اور اسے اللہ کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے اول وقت میں پڑھنے کی رخصت دی، اسی رخصت میں تراویح کو بھی اول وقت میں ادا کرنا شامل ہے!!
    حدیث ملاحظہ فرمائیں:

    حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا حَفْصٌ ، وَأَبُو مُعَاوِيَةَ ، عَنِ الأَعْمَشِ ، عَنْ أَبِي سُفْيَانَ ، عَنْ جَابِرٍ ، قَالَ : قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : " مَنْ خَافَ أَنْ لَا يَقُومَ مِنْ آخِرِ اللَّيْلِ ، فَلْيُوتِرْ أَوَّلَهُ ، وَمَنْ طَمِعَ أَنْ يَقُومَ آخِرَهُ ، فَلْيُوتِرْ آخِرَ اللَّيْلِ ، فَإِنَّ صَلَاةَ آخِرِ اللَّيْلِ مَشْهُودَةٌ ، وَذَلِكَ أَفْضَلُ "
    حضرت جابر بن عبداللہ رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺنے فرمایا کہ جس آدمی کو یہ ڈر ہو کہ وہ رات کے آخری حصہ میں نہیں اٹھ سکے گا تو اسے چاہیے کہ وہ شروع رات ہی میں وتر پڑھ لے اور جس آدمی کو اس بات کی تمنا ہو کہ رات کے آخری حصہ میں قیام کرے تو اسے چاہیے کہ وہ رات کے آخری حصہ میں وتر پڑھے کیونکہ رات کے آخری حصہ کی نماز میں فرشتے حاضر ہوتے ہیں اور یہ اس کے لئے افضل ہے
    صحيح مسلم» كِتَاب صَلَاةِ الْمُسَافِرِينَ وَقَصْرِهَا» بَاب مَنْ خَافَ أَنْ لَا يَقُومَ مِنْ آخِرِ اللَّيْلِ فَلْيُوتِرْ أَوَّلَهُ

    وحَدَّثَنِي سَلَمَةُ بْنُ شَبِيبٍ ، حَدَّثَنَا الْحَسَنُ بْنُ أَعْيَنَ ، حَدَّثَنَا مَعْقِلٌ وَهُوَ ابْنُ عُبَيْدِ اللَّهِ ، عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ ، عَنْ جَابِرٍ ، قَالَ : سَمِعْتُ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، يَقُولُ : " أَيُّكُمْ خَافَ أَنْ لَا يَقُومَ مِنْ آخِرِ اللَّيْلِ فَلْيُوتِرْ ، ثُمَّ لِيَرْقُدْ ، وَمَنْ وَثِقَ بِقِيَامٍ مِنَ اللَّيْلِ فَلْيُوتِرْ مِنْ آخِرِهِ ، فَإِنَّ قِرَاءَةَ آخِرِ اللَّيْلِ مَحْضُورَةٌ ، وَذَلِكَ أَفْضَلُ "
    حضرت جابر رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ میں نے نبی ﷺکو فرماتے ہوئے سنا کہ تم میں سے جس آدمی کو اس بات کا ڈر ہو کہ وہ رات کے آخری حصہ میں نہ اٹھ سکے گا تو اسے چاہیے کہ وتر پڑھ لے پھر سو جائے اور جس آدمی کو رات کو اٹھنے کا یقین ہو تو اسے چاہیے کہ وہ وتر رات کے آخری حصہ میں پڑھے کیونکہ رات کے آخری حصہ میں قرات کرنا ایسا ہے کہ اس میں فرشتے حاضر ہوتے ہیں اور یہ افضل ہے۔
    صحيح مسلم» كِتَاب صَلَاةِ الْمُسَافِرِينَ وَقَصْرِهَا» بَاب مَنْ خَافَ أَنْ لَا يَقُومَ مِنْ آخِرِ اللَّيْلِ فَلْيُوتِرْ أَوَّلَهُ

    تراویح قیام الیل کو ہی کہتے ہیں!
     
    Last edited: ‏فروری 04، 2017
    • پسند پسند x 1
    • متفق متفق x 1
    • لسٹ
  2. ‏فروری 04، 2017 #52
    nasim

    nasim رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 27، 2016
    پیغامات:
    455
    موصول شکریہ جات:
    77
    تمغے کے پوائنٹ:
    47

    آپ یہ کہنا چاہ رہے ہیں کہ وتر ہی قیام الیل ہے۔
     
  3. ‏فروری 04، 2017 #53
    ابن داود

    ابن داود سینئر رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏نومبر 08، 2011
    پیغامات:
    2,540
    موصول شکریہ جات:
    2,412
    تمغے کے پوائنٹ:
    489

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!
    میں جو کہنا چاہ رہا ہوں، اور کہا ہے وہ یہ ہے:
     
  4. ‏فروری 04، 2017 #54
    nasim

    nasim رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 27، 2016
    پیغامات:
    455
    موصول شکریہ جات:
    77
    تمغے کے پوائنٹ:
    47

    محترم
    میں نے بار بار مروجہ طریقہ کے الفاظوں کا استعمال کیا ہے۔ آپ کے علم میں یقینا ہوگا کہ فقہ حنفی کے مطابق تروایح سنت مؤکدہ ہے ۔ جب یہ قیام الیل ہے اور تہجدکی نماز ہے جو نفل ہے تو سنت مؤکدہ کیسے اور اس کا چھوڑنے والا گناہ گار کیوں۔

    آپ سے یہ سوال پوچھتا ہوں کہ اگر میں رمضان میں تروایح کی نماز اب وہ 8 ہوں یا بیس نہ پڑھوں تو کیا گناہ گار ہوں گا۔
     
  5. ‏فروری 04، 2017 #55
    nasim

    nasim رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 27، 2016
    پیغامات:
    455
    موصول شکریہ جات:
    77
    تمغے کے پوائنٹ:
    47

    میں نے آپ سے ذکر کیا تھا انسانی ذہن میں سوال آنے ایک فطری عمل ہے اور صاحب علم لوگوں کی ذمہ داری ہے وہ عامیوں کو ہر طرح سے مطمئن کریں
     
  6. ‏فروری 04، 2017 #56
    nasim

    nasim رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 27، 2016
    پیغامات:
    455
    موصول شکریہ جات:
    77
    تمغے کے پوائنٹ:
    47

    ہم سے یحییٰ بن بکیر نے بیان کیا ، انہوں نے کہا کہ ہم سے لیث بن سعد نے بیان کیا ، انہوں نے عقیل بن خالد سے بیان کیا ، انہوں نے ابن شہاب سے ، انہوں نے کہا کہ مجھے انس بن مالک ؓ نے خبر دی کہ (نبی کریم ﷺ کے مرض وفات میں) مسلمان فجر کی نماز پڑھ رہے تھے ، اچانک رسول اللہ ﷺ نے عائشہ ؓ کے حجرہ سے پردہ ہٹایا ۔ آپ ﷺ نے صحابہ کو دیکھا ۔ سب لوگ صفیں باندھے ہوئے تھے ۔ آپ ﷺ (خوشی سے) خوب کھل کر مسکرائے اور ابوبکر ؓ نے (آپ ﷺ کو دیکھ کر) پیچھے ہٹنا چاہا تاکہ صف میں مل جائیں ۔ آپ نے سمجھا کہ نبی کریم ﷺ تشریف لا رہے ہیں ۔ صحابہ (آپ ﷺ کو دیکھ کر خوشی سے اس قدر بےقرار ہوئے کہ گویا) نماز ہی چھوڑ دیں گے ۔ لیکن نبی کریم ﷺ نے اشارہ کیا کہ اپنی نماز پوری کر لو اور پردہ ڈال لیا ۔ اسی دن چاشت کو آپ ﷺ نے وفات پائی ۔

    اب اس حدیث کو پڑھ کر ایک کر سوال ذہن میں آتا ہے کہ نماز میں کسی کی طرف دیکھا جاسکتا ہے اور اس سے نماز نہیں ٹوٹتی لیکن علماء نماز کسی طرف دیکھنے کو نماز کا ٹوٹنا قرار دیتے ہیں۔
     
  7. ‏فروری 04، 2017 #57
    ابن داود

    ابن داود سینئر رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏نومبر 08، 2011
    پیغامات:
    2,540
    موصول شکریہ جات:
    2,412
    تمغے کے پوائنٹ:
    489

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!
    یہ سوال تو آپ حنفیوں سے پوچھیں!
    نہیں گنہگار نہیں ہوں گے!
    بس اس کا خیال رکھیئے گا کہ کہیں اس حدیث کے مصداق نہ ہو جائیں؛
    حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ أَبِي مَرْيَمَ أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ أَخْبَرَنَا حُمَيْدُ بْنُ أَبِي حُمَيْدٍ الطَّوِيلُ أَنَّهُ سَمِعَ أَنَسَ بْنَ مَالِكٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ يَقُولُ جَاءَ ثَلَاثَةُ رَهْطٍ إِلَى بُيُوتِ أَزْوَاجِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَسْأَلُونَ عَنْ عِبَادَةِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَلَمَّا أُخْبِرُوا كَأَنَّهُمْ تَقَالُّوهَا فَقَالُوا وَأَيْنَ نَحْنُ مِنْ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَدْ غُفِرَ لَهُ مَا تَقَدَّمَ مِنْ ذَنْبِهِ وَمَا تَأَخَّرَ قَالَ أَحَدُهُمْ أَمَّا أَنَا فَإِنِّي أُصَلِّي اللَّيْلَ أَبَدًا وَقَالَ آخَرُ أَنَا أَصُومُ الدَّهْرَ وَلَا أُفْطِرُ وَقَالَ آخَرُ أَنَا أَعْتَزِلُ النِّسَاءَ فَلَا أَتَزَوَّجُ أَبَدًا فَجَاءَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِلَيْهِمْ فَقَالَ أَنْتُمْ الَّذِينَ قُلْتُمْ كَذَا وَكَذَا أَمَا وَاللَّهِ إِنِّي لَأَخْشَاكُمْ لِلَّهِ وَأَتْقَاكُمْ لَهُ لَكِنِّي أَصُومُ وَأُفْطِرُ وَأُصَلِّي وَأَرْقُدُ وَأَتَزَوَّجُ النِّسَاءَ فَمَنْ رَغِبَ عَنْ سُنَّتِي فَلَيْسَ مِنِّي.
    ہم سے سعید بن ابی مریم نے بیان کیا ، کہا ہم کو محمد بن جعفر نے خبر دی ، کہا ہم کو حمید بن ابی حمید طویل نے خبر دی ، انہوں نے حضرت انس بن مالک سے سنا ، انہوں نے بیان کیا کہ تین حضرات ( علی بن ابی طالب ، عبد اللہ بن عمرو بن العاص اور عثمان بن مظعون رضی ا للہ عنہم ) نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی ازواج مطہرات کے گھروں کی طرف آپ کی عبادت کے متعلق پوچھنے آئے ، جب انہیں حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا عمل بتایا گیاتو جیسے انہوں نے اسے کم سمجھا اور کہا کہ ہمارا آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم سے کیامقابلہ ! آپ کی تو تمام اگلی پچھلی لغزشیں معاف کردی گئی ہیں ۔ ان میں سے ایک نے کہا کہ آج سے میں ہمیشہ رات پھر نماز پڑھا کروںگا ۔ دوسرے نے کہا کہ میں ہمیشہ روزے سے رہوںگا اور کبھی ناغہ نہیں ہونے دوںگا ۔ تیسرے نے کہا کہ میں عورتوں سے جدائی اختیار کر لوں گا اور کبھی نکاح نہیں کروںگا ۔ پھر آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم تشریف لائے اور ان سے پوچھا کیا تم نے ہی یہ باتیں کہی ہیں ؟ سن لو ! اللہ تعالیٰ کی قسم ! اللہ رب العالمین سے میں تم سب سے زیادہ ڈرنے والا ہوں ۔ میں تم میں سب سے زیادہ پرہیز گا ر ہوں لیکن میں اگر روزے رکھتا ہوں تو افطار بھی کرتا ہوں ۔ نماز پڑھتا ہوں ( رات میں ) اور سوتا بھی ہوں اور میںعورتوں سے نکاح کر تا ہوں ۔ میرے طریقے سے جس نے بے رغبتی کی وہ مجھ میں سے نہیں ہے ۔
    صحيح البخاري»» كِتَابُ النِّكَاحِ»» بَابُ التَّرْغِيبِ فِي النِّكَاحِ
     
  8. ‏فروری 04، 2017 #58
    nasim

    nasim رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 27، 2016
    پیغامات:
    455
    موصول شکریہ جات:
    77
    تمغے کے پوائنٹ:
    47

    جب یہ احادیث عام آدمی کی سمجھ کیلئے نہیں ہیں تو ان کا ترجمہ کرنے اور ان کے سوفٹ وئیر بنانے کی ضرورت کیا ہے ِ
    معذرت سوالات کی لسٹ طویل ہوگئ۔
     
  9. ‏فروری 04، 2017 #59
    nasim

    nasim رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 27، 2016
    پیغامات:
    455
    موصول شکریہ جات:
    77
    تمغے کے پوائنٹ:
    47

    عمر کا بڑا حصہ حنفی مسلک کے تحت گزرا ہے اس لئے یہ کہا۔
     
  10. ‏فروری 04، 2017 #60
    ابن داود

    ابن داود سینئر رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏نومبر 08، 2011
    پیغامات:
    2,540
    موصول شکریہ جات:
    2,412
    تمغے کے پوائنٹ:
    489

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!
    اس کی تھوڑی تفصیل بیان کر دیتا ہوں،(فقہ حنفی اور حنفیوں کے مؤقف سے قطع نظر)
    نماز کی اصل میں دو اقسام ہیں، ایک صلاة مکتوبہ یعنی فرض نمازیں، دوسری صلاة غیر مكتوبہ یعنی وہ نمازیں کو فرض نہیں، یہ تمام نمازیں نفل ہی ہیں، اب ان میں جس نماز کے بارے میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے تاکید ثابت ہوتی ہے، وہ سنت مؤکدہ کہلاتی ہیں، اور جن کے بارے میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے ثابت ہوتی ہیں، لیکن ان کی ایسی تاکید نہیں ہوتی، وہ سنت غیر مؤکدہ کہلاتی ہیں، اور ان کے علاوہ اگر کوئی شخص مزید بھی صلاة پڑھتا ہے تو انہیں نوافل سے تعبیر کیا جاتا ہے۔ یہ فقہ کی اصطلاحیں ہیں،
    وگرنہ یہ تمام نمازیں نوافل یعنی صلاة غیر مكتوبہ میں شامل ہیں!
     
    • متفق متفق x 1
    • مفید مفید x 1
    • لسٹ
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں