1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

لفظ "انشاءاللہ اور ان شاءاللہ" میں فرق

'عربی زبان وادب' میں موضوعات آغاز کردہ از طلحہ غازی, ‏نومبر 02، 2015۔

  1. ‏جون 09، 2016 #21
    عمر اثری

    عمر اثری سینئر رکن
    جگہ:
    نئی دھلی، انڈیا
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 29، 2015
    پیغامات:
    4,350
    موصول شکریہ جات:
    1,077
    تمغے کے پوائنٹ:
    398

    ماشاء اللہ علم میں اضافہ ہوا.
    بہت ہی عمدہ تھریڈ.
    جزاکم اللہ خیر
     
  2. ‏اگست 04، 2016 #22
    Afsar

    Afsar مبتدی
    شمولیت:
    ‏ستمبر 04، 2013
    پیغامات:
    7
    موصول شکریہ جات:
    7
    تمغے کے پوائنٹ:
    29

    السلام عليكم و رحمۃ اللہ وبرکاتهُ

    کسی صاحب نے مجھے جواب دیا ہے


    ﺍﻟﺤﻤﺪ ﻟﻠﻪ ﻭﺍﻟﺼﻼﺓ ﻭﺍﻟﺴﻼﻡ ﻋﻠﻰ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﻪ ﻭﻋﻠﻰ
    ﺁﻟﻪ ﻭﺻﺤﺒﻪ ﺃﻣﺎ ﺑﻌﺪ :
    ﻓﺈﻥ ﻟﻔﻆ : ‏( ﺇﻥ ﺷﺎﺀ ‏) ﻓﻲ ﺍﻻﺳﺘﺜﻨﺎﺀ ﺑﻜﻠﻤﺔ : ‏( ﺇﻥ ﺷﺎﺀ
    ﺍﻟﻠﻪ ‏) ﻳﺨﺘﻠﻒ ﻋﻦ ﻟﻔﻆ ‏( ﺇﻧﺸﺎﺀ ‏) ﻓﻲ ﺍﻟﺼﻮﺭﺓ ﻭﺍﻟﻤﻌﻨﻰ .
    ﺃﻣﺎ ﺍﻟﺼﻮﺭﺓ، ﻓﺈﻥ ﺍﻷﻭﻝ ﻣﻨﻬﻤﺎ ﻋﺒﺎﺭﺓ ﻋﻦ ﻛﻠﻤﺘﻴﻦ : ﺃﺩﺍﺓ
    ﺍﻟﺸﺮﻁ ‏( ﺇﻥ ‏) ، ﻭﻓﻌﻞ ﺍﻟﺸﺮﻁ ‏(ﺷﺎﺀ ‏) . ﻭﺍﻟﺜﺎﻧﻲ ﻣﻨﻬﻤﺎ
    ﻛﻠﻤﺔ ﻭﺍﺣﺪﺓ .
    ﺃﻣﺎ ﺍﻟﻤﻌﻨﻰ، ﻓﺈﻥ ﺍﻷﻭﻝ ﻣﻨﻬﻤﺎ ﻳﺆﺗﻰ ﺑﻪ ﻟﺘﻌﻠﻴﻖ ﺃﻣﺮ ﻣﺎ
    ﻋﻠﻰ ﻣﺸﻴﺌﺔ ﺍﻟﻠﻪ ﺗﻌﺎﻟﻰ، ﻭﺍﻟﺜﺎﻧﻲ ﻣﻨﻬﻤﺎ ﻣﻌﻨﺎﻩ ﺍﻟﺨﻠﻖ
    ﻛﻤﺎ ﺫﻛﺮ ﺍﻟﺴﺎﺋﻞ، ﻓﺘﺒﻴﻦ ﺑﻬﺬﺍ ﺃﻥ ﺍﻟﺼﺤﻴﺢ ﻛﺘﺎﺑﺘﻬﺎ ‏( ﺇﻥ
    ﺷﺎﺀ ﺍﻟﻠﻪ ‏) ، ﻭﺃﻧﻪ ﻣﻦ ﺍﻟﺨﻄﺄ ﺍﻟﻔﺎﺩﺡ ﻛﺘﺎﺑﺘﻬﺎ ﻛﻠﻤﺔ
    ﻭﺍﺣﺪﺓ ‏(ﺇﻧﺸﺎﺀ ﺍﻟﻠﻪ ‏) ﻓﻠﻴﺘﻨﺒﻪ .
    ﻭﻟﻌﻞ ﻣﻦ ﺍﻟﻤﻨﺎﺳﺐ ﺃﻥ ﻧﺬﻛﺮ ﺑﻌﻀﺎً ﻣﻤﺎ ﻭﺭﺩ ﺑﺸﺄﻥ ﻫﺬﻩ
    ﺍﻟﻜﻠﻤﺔ، ﻭﻣﻦ ﺫﻟﻚ :
    ﺃﻭﻻً : ﺗﻮﺟﻴﻪ ﺍﻟﻠﻪ ﺗﻌﺎﻟﻰ ﻟﻨﺒﻴﻪ ﺻﻠﻰ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ
    ﺇﻟﻰ ﻫﺬﺍ ﺍﻟﻨﻮﻉ ﻣﻦ ﺍﻷﺩﺏ، ﻭﺫﻟﻚ ﻓﻲ ﻗﻮﻟﻪ ﺳﺒﺤﺎﻧﻪ :
    ﻭَﻻ ﺗَﻘُﻮﻟَﻦَّ ﻟِﺸَﻲْﺀٍ ﺇِﻧِّﻲ ﻓَﺎﻋِﻞٌ ﺫَﻟِﻚَ ﻏَﺪﺍً ﺇِﻟَّﺎ ﺃَﻥْ ﻳَﺸَﺎﺀَ
    ﺍﻟﻠَّﻪُ ‏[ ﺍﻟﻜﻬﻒ 24-23: ‏] .
    ﻗﺎﻝ ﺍﻟﺠﺼﺎﺹ ﻓﻲ ﻛﺘﺎﺑﻪ ﺃﺣﻜﺎﻡ ﺍﻟﻘﺮﺁﻥ ﻋﻦ ﻫﺬﺍ
    ﺍﻻﺳﺘﺜﻨﺎﺀ : ﻓﺄﻋﻠﻤﻨﺎ ﺍﻟﻠﻪ ﺫﻟﻚ ﻟﻨﻄﻠﺐ ﻧﺠﺎﺡ ﺍﻷﻣﻮﺭ ﻋﻨﺪ
    ﺍﻹﺧﺒﺎﺭ ﻋﻨﻬﺎ ﻓﻲ ﺍﻟﻤﺴﺘﻘﺒﻞ ﺑﺬﻛﺮ ﺍﻻﺳﺘﺜﻨﺎﺀ ﺍﻟﺬﻱ ﻫﻮ
    ﻣﺸﻴﺌﺔ ﺍﻟﻠﻪ .
    ﺍﻟﺜﺎﻧﻲ : ﻣﺎ ﺭﻭﺍﻩ ﺍﻟﺒﺨﺎﺭﻱ ﻭﻣﺴﻠﻢ ﻋﻦ ﺃﺑﻲ ﻫﺮﻳﺮﺓ
    ﺭﺿﻲ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻨﻪ : ﻋﻦ ﺍﻟﻨﺒﻲ ﺻﻠﻰ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ ﻗﺎﻝ :
    ﻗﺎﻝ ﺳﻠﻴﻤﺎﻥ ﺑﻦ ﺩﺍﻭﺩ ﻧﺒﻲ ﺍﻟﻠﻪ : ﻷﻃﻮﻓﻦّ ﺍﻟﻠﻴﻠﺔ ﻋﻠﻰ
    ﺳﺒﻌﻴﻦ ﺍﻣﺮﺃﺓ ﻛﻠﻬﻦ ﺗﺄﺗﻲ ﺑﻐﻼﻡ ﻳﻘﺎﺗﻞ ﻓﻲ ﺳﺒﻴﻞ ﺍﻟﻠﻪ،
    ﻓﻘﺎﻝ ﺻﺎﺣﺒﻪ، ﺃﻭ ﺍﻟﻤﻠﻚ : ﻗﻞ ﺇﻥ ﺷﺎﺀ ﺍﻟﻠﻪ، ﻓﻠﻢ ﻳﻘﻞ
    ﻭﻧﺴﻲ، ﻓﻠﻢ ﺗﺄﺕ ﻭﺍﺣﺪﺓ ﻣﻦ ﻧﺴﺎﺋﻪ، ﺇﻻ ﻭﺍﺣﺪﺓ،
    ﺟﺎﺀﺕ ﺑﺸﻖ ﻏﻼﻡ، ﻓﻘﺎﻝ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﻪ ﺻﻠﻰ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ
    ﻭﺳﻠﻢ : ﻭﻟﻮ ﻗﺎﻝ : ﺇﻥ ﺷﺎﺀ ﺍﻟﻠﻪ ﻟﻢ ﻳﺤﻨﺚ، ﻭﻛﺎﻥ ﺩﺭﻛﺎً
    ﻟﻪ ﻓﻲ ﺣﺎﺟﺘﻪ .
    ﺃﻱ ﻟﺤﺎﻗﺎً ﻭﺗﺤﻘﻴﻘﺎً ﻟﺤﺎﺟﺘﻪ ﻭﻣﺒﺘﻐﺎﻩ .
    ﻗﺎﻝ ﺍﻟﺤﺎﻓﻆ ﻓﻲ ﺍﻟﻔﺘﺢ : ﻗﺎﻝ ﺑﻌﺾ ﺍﻟﺴﻠﻒ : ﻧﺒﻪ ﺻﻠﻰ
    ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ ﻓﻲ ﻫﺬﺍ ﺍﻟﺤﺪﻳﺚ ﻋﻠﻰ ﺁﻓﺔ ﺍﻟﺘﻤﻨﻲ،
    ﻭﺍﻹﻋﺮﺍﺽ ﻋﻦ ﺍﻟﺘﻔﻮﻳﺾ، ﻗﺎﻝ : ﻭﻟﺬﻟﻚ ﻧﺴﻲ
    ﺍﻻﺳﺘﺜﻨﺎﺀ ﻟﻴﻤﻀﻲ ﻓﻴﻪ ﺍﻟﻘﺪﺭ . ﺍﻧﺘﻬﻰ
    ﻭﺍﻟﻠﻪ ﺃﻋﻠﻢ
     
  3. ‏اگست 06، 2016 #23
    خضر حیات

    خضر حیات علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    طابہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 14، 2011
    پیغامات:
    8,756
    موصول شکریہ جات:
    8,332
    تمغے کے پوائنٹ:
    964

    تقریبا وہی باتیں ہیں ، جو اردو میں کئی بات دوہرائی جا چکی ہیں ۔
     
  4. ‏اگست 06، 2016 #24
    Afsar

    Afsar مبتدی
    شمولیت:
    ‏ستمبر 04، 2013
    پیغامات:
    7
    موصول شکریہ جات:
    7
    تمغے کے پوائنٹ:
    29

    جزاک اللہ خیرا شیخ
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں