1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

مختلف ذہنی صلاحتیں اور حساب ایک جیسا؟

'متفرقات' میں موضوعات آغاز کردہ از نسیم احمد, ‏جنوری 09، 2017۔

  1. ‏جنوری 09، 2017 #1
    نسیم احمد

    نسیم احمد رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 27، 2016
    پیغامات:
    742
    موصول شکریہ جات:
    115
    تمغے کے پوائنٹ:
    90

    السلام علیکم

    اللہ رب العزت نے ہر انسان کو مختلف ذہنی صلاحیتوں سے نوازا ہے۔ آج کے جدید دور میں سائنس ہر انسان کی ذہنی استعداد کے بارے میں بالکل صحیح بتا سکتی ہے۔ کسی انسان میں کسی بات کو سمجھنے کی صلاحیت ایسی ہوتی ہے کہ حساب کے پیچدہ سے پیچدہ مسائل بھی ایک دفعہ میں سمجھ جا تا ہے اور کچھ اپنی زندگی بھی لگادیں تو ان مسائل کو حل نہیں کر سکتے ۔

    جب انسانوں کی ذہنی صلاحیتوں میں زمین آسمان کا فرق ہے تو پھر روز محشر سب کا حساب ایک جیسا کیوں ہے۔ اللہ رب العزت کا فرمان مفہوم"وہ کسی کو اس کی برداشت سے زیادہ مکلف نہیں کرتا "کی تشریح کیا ہوگی۔ کیا ایک جیسا حساب سنت اللہ کے خلاف نہیں ہوگا۔
     
  2. ‏جنوری 09، 2017 #2
    عبدالمنان

    عبدالمنان مشہور رکن
    جگہ:
    گلبرگہ، ہندوستان
    شمولیت:
    ‏اپریل 04، 2015
    پیغامات:
    735
    موصول شکریہ جات:
    164
    تمغے کے پوائنٹ:
    109

    و عليكم السلام و رحمة الله و بركاته

    بھائی کس نے کہا کہ اللّٰہ تعالٰی سب لوگوں کا حساب ایک جیسا لیگا؟ قرآن اور صحیح احادیث سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ سب کا حساب ایک جیسا نہیں ہوگا ۔ بلکہ بعض کا حساب اللّٰہ تعالٰی آسان اور نرمی سے لے گا اور بعض کا بڑی سختی سے، جیسا کہ عائشہ رضی اللّٰہ عنہا کی حدیث سے معلوم ہوتا ہے۔ جس کا حساب اللّٰہ تعالٰی سختی سے لےگا وہ ہلاک ہو جائیں گے ۔ اللہ ہمارا حساب آسان فرمائے ۔آمین
     
    • پسند پسند x 1
    • علمی علمی x 1
    • لسٹ
  3. ‏جنوری 09، 2017 #3
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    6,372
    موصول شکریہ جات:
    2,402
    تمغے کے پوائنٹ:
    791

    یہ بات آپ نے کس آیت یا حدیث شریف اخذ کی ؟
     
    • پسند پسند x 1
    • متفق متفق x 1
    • لسٹ
  4. ‏جنوری 09، 2017 #4
    عبدالمنان

    عبدالمنان مشہور رکن
    جگہ:
    گلبرگہ، ہندوستان
    شمولیت:
    ‏اپریل 04، 2015
    پیغامات:
    735
    موصول شکریہ جات:
    164
    تمغے کے پوائنٹ:
    109

    بلکہ ستر ہزار خوش نصیبوں کا تو حساب ہی نہیں لیا جائے گا اور ان ستر ہزار میں سے ہر ایک کے ساتھ اور ستر ہزار کا بھی حساب نہیں لیا جائے گا اس سے معلوم ہوا کہ سب کا حساب ایک جیسا نہیں ہوگا۔ اللّٰہ ہمیں ان لوگوں میں شامل کرے جو بغیر حساب کے جنت میں داخل ہوں گے ۔ آمین


    شیخ البانی رحمہ اللّٰہ نے صحیحہ میں ایک حدیث لائی ہیں:

    ١٤٨٤ - " أعطيت سبعين ألفا يدخلون الجنة بغير حساب وجوههم كالقمر ليلة البدر وقلوبهم على قلب رجل واحد، فاستزدت ربي عز وجل، فزادني مع كل واحد سبعين ألفا ".

    مسند احمد وغیرہ،
     
    • شکریہ شکریہ x 1
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
  5. ‏جنوری 09، 2017 #5
    نسیم احمد

    نسیم احمد رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 27، 2016
    پیغامات:
    742
    موصول شکریہ جات:
    115
    تمغے کے پوائنٹ:
    90

    محترم شیخ
    اس طرح کی روایت میں نے سنی ہے کہ جب تک کچھ سوالوں کے جواب نہیں دے سکا گا کوئی اپنے پیر نہ ہلاسکے گا۔
    عمر کیسے گذاری ، مال کیسے کمایا کہاں خرچ کیا ، جوانی کن کاموں میں گذاری۔
    اسکے علاوہ یہ احادیث
    ہم سے سعید بن ابی مریم نے بیان کیا ، انہیں نافع بن عمر نے خبر دی ، انہیں ابن ابی ملیکہ نے بتلایا کہ رسول اللہ ﷺ کی بیوی عائشہ ؓ جب کوئی ایسی باتیں سنتیں جس کو سمجھ نہ پاتیں تو دوبارہ اس کو معلوم کرتیں تاکہ سمجھ لیں ۔ چنانچہ (ایک مرتبہ) نبی کریم ﷺ نے فرمایا کہ جس سے حساب لیا گیا اسے عذاب کیا جائے گا ۔ عائشہ ؓ فرماتی ہیں کہ (یہ سن کر) میں نے کہا کہ کیا اللہ نے یہ نہیں فرمایا کہ عنقریب اس سے آسان حساب لیا جائے گا ؟ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا کہ یہ صرف (اللہ کے دربار میں) پیشی کا ذکر ہے ۔ لیکن جس کے حساب میں جانچ پڑتال کی گئی (سمجھو) وہ غارت ہو گیا ۔ ... حدیث متعلقہ ابواب: جس کے حساب کی جانچ کی گئی تو وہ ہلاک ہو گیا ۔
    بخاری کی ایک حدیث کا ٹکڑا
    علی ؓ نے کہا کہ دنیا پیٹھ پھیرنے والی ہے اور آخرت سامنے آ رہی ہے ۔ انسانوں میں دنیا و آخرت دونوں کے چاہنے والے ہیں ۔ پس تم آخرت کے چاہنے والے بنو ، دنیا کے چاہنے والے نہ بنو ، کیونکہ آج تو کام ہی کام ہے حساب نہیں ہے اور کل حساب ہی حساب ہو گا اور عمل کا وقت باقی نہیں رہے گا ۔ سورۃ البقرہ میں لفظ « بمزحزحہ » بمعنی « بمباعدہ » ہے اس کے معنی ٰ ہٹانے والا ۔
    [سنن ابن ماجہ]
    حدیث نمبر: 1426 --- حکم البانی: صحيح... تمیم داری ؓ کہتے ہیں کہ نبی اکرم ﷺ نے فرمایا : ” قیامت کے دن بندے سے جس چیز کا سب سے پہلے حساب لیا جائے گا وہ نماز ہو گی ، اگر اس نے نماز مکمل طریقے سے ادا کی ہو گی تو نفل نماز علیحدہ لکھی جائے گی ، اور اگر مکمل طریقے سے ادا نہ کی ہو گی تو اللہ تعالیٰ اپنے فرشتوں سے کہے گا : دیکھو ، کیا میرے بندے کے پاس نفل نمازیں ہیں ، تو ان سے فرض کی کمی کو پورا کرو ، پھر باقی اعمال کا بھی اسی طرح حساب ہو گا “ ۔ ...

    قران کی آیت کا مفہوم "جس نے ذرہ برابر بھی نیکی کی ہوگی اور جس نے ذرہ برابر بھی گناہ کیا ہوگا وہ دیکھ لے گا"۔ جب سب کے اعمال نامے کھلیں گے تو ہی ان کو دکھایا جائیگاکہ کس نے کیا کیا۔

    سیدنا ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے یہ آیت سن کر پوچھا: اے اللہ کے رسول! کیا مجھے اپنے سب اعمال دیکھنے پڑیں گے آپ نے فرمایا: ”ہاں“، پوچھا: بڑے بڑے، فرمایا: ”ہاں“، پوچھا: اور چھوٹے چھوٹے بھی، فرمایا: ”ہاں“، میں نے کہا، ہائے افسوس! آپ نے فرمایا: ”ابوسعید خوش ہو جاؤ، نیکی تو دس گنا سے لے کر سات سو گنا تک بلکہ اس سے بھی زیادہ تک اللہ جسے چاہے دے گا ہاں گناہ اسی کے مثل ہوں گے یا اللہ تعالیٰ اسے بھی بخش دے گا، سنو! کسی شخص کو صرف اس کے اعمال نجات نہ دے سکیں گے“، میں نے کہا: اے اللہ کے رسول! کیا آپ کو بھی نہیں؟ فرمایا: ”نہ مجھے ہی مگر یہ کہ اللہ تبارک و تعالیٰ اپنی رحمت سے مجھے ڈھانپ لے“ ۔ ( اسنادہ ضعیف: اس کی سند ابن لہیعہ کی وجہ سے ضعیف ہے ـ ) ا

    عدی بن حاتم ؓ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : ”
    تم میں سے کوئی ایسا نہیں ہے مگر اس کا رب اس سے قیامت کے روز کلام کرے گا اور دونوں کے درمیان کوئی ترجمان نہیں ہو گا ، وہ شخص اپنے دائیں طرف دیکھے گا تو اسے سوائے اپنے عمل کے کوئی چیز دکھائی نہ دے گی ، پھر بائیں جانب دیکھے گا تو اسے سوائے اپنے عمل کے کوئی چیز دکھائی نہ دے گی ، پھر سامنے دیکھے گا تو اسے جہنم نظر آئے گی “ ، رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : ” تم میں سے جو جہنم کی گرمی سے اپنے چہرے کو بچانا چاہے تو اسے ایسا کرنا چاہیئے ، اگرچہ کھجور کے ایک ٹکڑے ہی کے ذریعے کیوں نہ ہو “ ۔ امام ترمذی کہتے ہیں : یہ حدیث حسن صحیح ہے ۔
    ... (ص/ح)
     
  6. ‏جنوری 09، 2017 #6
    نسیم احمد

    نسیم احمد رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 27، 2016
    پیغامات:
    742
    موصول شکریہ جات:
    115
    تمغے کے پوائنٹ:
    90

    محترم عبدالمنان بھائی
    حساب سے مراد میری یہ ہے کہ ہر کسی کو اپنے اعمال پر جوابدہ تو ہونا پڑے گا ۔ چاہے سختی کے ساتھ ہو یا نرمی کے ساتھ جواب دہی توہے۔ اربوں کی امت میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے سترہزار افراد کی نشاندہی کی ہے ۔ غالب اکثریت کو تو حساب دینا ہے ۔یہ تعداد تو ایک فیصد سے بھی کم بنے گی جسے بغیر حساب کے جنت میں داخل کیا جائے گا۔
     
  7. ‏جنوری 09، 2017 #7
    ابن داود

    ابن داود فعال رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏نومبر 08، 2011
    پیغامات:
    3,313
    موصول شکریہ جات:
    2,651
    تمغے کے پوائنٹ:
    556

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!
    (لا يُكَلِّفُ اللَّهُ نَفْساً إِلَّا وُسْعَهَا لَهَا مَا كَسَبَتْ وَعَلَيْهَا مَا اكْتَسَبَتْ رَبَّنَا لا تُؤَاخِذْنَا إِنْ نَسِينَا أَوْ أَخْطَأْنَا رَبَّنَا وَلا تَحْمِلْ عَلَيْنَا إِصْراً كَمَا حَمَلْتَهُ عَلَى الَّذِينَ مِنْ قَبْلِنَا رَبَّنَا وَلا تُحَمِّلْنَا مَا لا طَاقَةَ لَنَا بِهِ وَاعْفُ عَنَّا وَاغْفِرْ لَنَا وَارْحَمْنَا أَنْتَ مَوْلانَا فَانْصُرْنَا عَلَى الْقَوْمِ الْكَافِرِينَ) (البقرة:286)
    حساب اسی کا ہوگا جس کا جس کو جتنا مکلف ٹھہرایا گیا ہے! فتدبر!
     
    • متفق متفق x 1
    • مفید مفید x 1
    • لسٹ
  8. ‏جنوری 10، 2017 #8
    نسیم احمد

    نسیم احمد رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 27، 2016
    پیغامات:
    742
    موصول شکریہ جات:
    115
    تمغے کے پوائنٹ:
    90

    محترم
    اس کا کیسا پتا چلے گا کہ کون کتنا مکلف ہے ۔ یعنی کس چیز کا حساب دینا کس کا نہیں ۔
    ایمان لانے کے بعد تو اسلام بدنی سارے اعمال کا مطالبہ کر تا ہے صرف مالی اعمال میں چھوٹ دیتا ہے ۔
     
  9. ‏جنوری 10، 2017 #9
    ابن داود

    ابن داود فعال رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏نومبر 08، 2011
    پیغامات:
    3,313
    موصول شکریہ جات:
    2,651
    تمغے کے پوائنٹ:
    556

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!
    إِنَّ اللَّهَ عَالِمُ غَيْبِ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ إِنَّهُ عَلِيمٌ بِذَاتِ الصُّدُورِ (سورة فاطر 38)
     
  10. ‏جنوری 10، 2017 #10
    عمر اثری

    عمر اثری سینئر رکن
    جگہ:
    نئی دھلی، انڈیا
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 29، 2015
    پیغامات:
    4,360
    موصول شکریہ جات:
    1,079
    تمغے کے پوائنٹ:
    398

    یقینا سب کا حساب کتاب ہوگا.
    اور جو روایت ہے کہ ستر ہزار لوگ بنا حساب کتاب جنت میں جائیں گے تو وہاں حساب سے مراد حساب یسیر ہے.
    واللہ اعلم بالصواب
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں