1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

موت سے پہلے سیدنا عمرو بن عاص رضی الله عنہ کی وصیت پر اہل ایمان موقف

'تحقیق حدیث' میں موضوعات آغاز کردہ از lovelyalltime, ‏اکتوبر 30، 2014۔

  1. ‏نومبر 04، 2014 #61
    کنعان

    کنعان فعال رکن
    جگہ:
    برسٹل، انگلینڈ
    شمولیت:
    ‏جون 29، 2011
    پیغامات:
    3,564
    موصول شکریہ جات:
    4,376
    تمغے کے پوائنٹ:
    521

    السلام علیکم

    اسے کیا کہیں گے؟

    جواد سے کچھ ٹائپنگ ایرر ہیں، لیکن یہ کوئی بڑی ڈیل نہیں، مثال سے! قرآن مجید عربی میں پڑھنے والا اگر عربی لکھ نہیں سکتا تو اس کے پڑھنے میں شک نہیں کیا جا سکتا۔ جواد سے ٹائپنگ ایرر کی ایک وجہ اور بھی ہو سکتی ھے جسے آگے پیش کرتے ہیں۔

    یہاں ایک ممبر جس کے انٹرویو سے شائد 3 ماسٹر کئے ہوئے ہیں مگر وہ پڑھنا کو پڈنا اور ایسے چھوٹے ٹائپنگ ایرر ہوتے ہیں اس کی پوسٹ میں اکثر، ہو سکتا ھے ڑ ٹائپنگ میں نہ معلوم ہو کہ کونسی فنگر کے نیچے آتا ھے یا جیسے مختلف شہروں میں روزمرہ بولی جانے والی باتیں میں اکثر تھوڑی بہت تبدیلیاں ہیں اور کوئی کتنا بھی پڑھا لکھا ہو وہ اپنی شہر یا گاؤں کی بولی بولنا ہی پسند کرتا ھے، اس لئے اگر بات واضع ہو جاتی ھے تو اسے اگنور کرنا ہی درست ھے۔ جزاک اللہ خیر!

    والسلام
     
  2. ‏نومبر 05، 2014 #62
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    6,372
    موصول شکریہ جات:
    2,398
    تمغے کے پوائنٹ:
    791

    ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
    آپ کا یہ ساراجواب صرف جواب ہی ہے اور کچھ نہیں۔۔۔
    سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ کی حدیث کو آپ نے بلاوجہ جان چھڑانے کےلئے ۔منکر ۔کہہ دیا ۔
    کیا آپ کو علم بھی ہے کہ ۔منکر ۔کس روایت کو کہا جاتا ہے اور کیوں کہا جاتا ہے ۔اس لئے اس پر کسی عالم کو سامنے لائیں حقیقت سامنےآجائے گی۔ ان شاء اللہ
    آپ چونکہ اس حدیث کے منکر ہیں اس لئے بے دریغ حدیث کو ہی منکر کہہ دیا ۔استغفر اللہ ومعاذاللہ
    یہ آپ کا میدان نہیں کہ اسنادحدیث پر ’‘ حکم ’‘ لگائیں،یہ زبردستی نہیں چل سکتی کہ آپ جب چاہیں کسی حدیث کو غلط وغیرہ ڈکلیئر کردیں
    یہ ان کا میدان ہے جن کی عمریں اس دشت کی سیاحی میں کھپ گئیں ۔اس میدان کے ایک ماہر کی کاوش دیکھئے
    علامہ ناصر الدین الالبانی لکھتے ہیں ؛
    التثبيت 2.jpg
    اس حدیث کو چار ائمہ حدیث صحیح کہہ رہے ہیں ۔جو آپ کی نظر میں منکر ہے ۔
     
    • پسند پسند x 1
    • زبردست زبردست x 1
    • معلوماتی معلوماتی x 1
    • لسٹ
  3. ‏نومبر 05، 2014 #63
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    6,372
    موصول شکریہ جات:
    2,398
    تمغے کے پوائنٹ:
    791

    صحیح مسلم کے راوی ابو عاصم پر بھی آپ کو عثمانی کی تقلید میں بڑا غصہ ہے ۔آپ کا غصہ الفاظ کی ٹوٹ پھوٹ سے عیاں ہے
    آپ لکھتے ہیں :
    آپ کا یہ بیان سراسر غلط ہے ۔اور صحیح بات مندرجہ ذیل ہے ثبوت کے ساتھ
    علامہ ذہبی میزان الاعتدال میں فیصلہ کن الفاظ میں لکھتے ہیں کہ ابوعاصم کے ثقہ ہونے پر اجماع ہے ، یہ تو بےمثال محدث تھے
    أبو.jpg
     
  4. ‏نومبر 05، 2014 #64
    lovelyalltime

    lovelyalltime سینئر رکن
    جگہ:
    سعودی عرب
    شمولیت:
    ‏مارچ 28، 2012
    پیغامات:
    3,735
    موصول شکریہ جات:
    2,842
    تمغے کے پوائنٹ:
    436

    @اسحاق سلفی بھائی بتائیں گے کہ یہاں کون سچا ہے - اور کس پر فتویٰ لگتا ہے گمراہی کا -


    taweed kay masail.jpg


    حَدثنَا قَالَ رَأَيْت ابي يكْتب التعاويذ للَّذي يقرع وللحمى لاهله وقراباته وَيكْتب للمراة اذا عسر عَلَيْهَا الْولادَة فِي جَام اَوْ شَيْء لطيف وَيكْتب حَدِيث ابْن عَبَّاس إِلَّا انه كَانَ يفعل ذَلِك عِنْد وُقُوع الْبلَاء وَلم اره يفعل هَذَا قبل وُقُوع الْبلَاء ورأيته يعوذ فِي المَاء ويشربه الْمَرِيض وَيصب على رَأسه مِنْهُ


    ترجمہ : عبد الله بن احمد نے کہا میں نے اپنے والد کو تعویذ لکھتے دیکھا ، اس کے لئے جو گنجا ہوتا ، بخار کے لئے ، اپنے گھر والوں اور قرابت داروں کے لئے آوٹ تعویذ لکھتے خاتون کے لئے پیالہ میں عسرت ولادت کے لئے یا کسی دوسری شئے لطیف پر اور وہ .... لکھتے ابن عباس رضی الله عنھ کی حدیث سوائے اس کے کہ وہ مصیبت کے واقع ہونے کے قریب ایسا کرتے تھے ، اور میں نے ان کو مصیبت کے وقوع ہونے سے قبل ایسا کرتے ہوۓ نہ دیکھا - میں نے دیکھا کہ وہ پانی میں تعوذ کرتے تھے اور اس کو مریض پی لیتا تھا اور اس میں کچھ سر پر ڈال لیتا تھا -

    حَدثنَا قَالَ فرات على ابي رَحمَه الله يعلى بن عُبَيْدَة قَالَ حَدثنَا سُفْيَان عَن مُحَمَّد بن ابي ليلى عَن الحكم عَن سعيد بن جُبَير عَن ابْن عَبَّاس اذا عسر على المراة وِلَادَتهَا فلتكتب بِسم الله الَّذِي لَا إِلَه إِلَّا هُوَ الْحَلِيم الْكَرِيم سُبْحَانَ الله رب الْعَرْش الْعَظِيم الْحَمد الله رب الْعَالمين {كَأَنَّهُمْ يَوْم يرَوْنَ مَا يوعدون لم يَلْبَثُوا إِلَّا سَاعَة من نَهَار بَلَاغ فَهَل يهْلك إِلَّا الْقَوْم الْفَاسِقُونَ} قَالَ ابي وَزَاد فِيهِ وَكِيع وينضح مَا دون سرتها


    ترجمہ : عبد الله بن احمد نے کہا ، میں نے اپنے والد کے سامنے پڑھا .... ابن عباس سے روایت ہے ، فرمایا کہ جب عورت کو ولادت کے وقت دشواری ہو تو یہ لکھو:
    بِسم الله الَّذِي لَا إِلَه إِلَّا هُوَ الْحَلِيم الْكَرِيم سُبْحَانَ الله رب الْعَرْش الْعَظِيم الْحَمد الله رب الْعَالمين {كَأَنَّهُمْ يَوْم يرَوْنَ مَا يوعدون لم يَلْبَثُوا إِلَّا سَاعَة من نَهَار بَلَاغ فَهَل يهْلك إِلَّا الْقَوْم الْفَاسِقُونَ}
    میرے والد نے کہا: اور وکیع نے یہ اضافہ کیا کہ پھر ولادت ہو جاتی ہے -



    احمد بن حنبل رحم الله خود ہی اپنی "مسند" میں تعویذ کے رد میں حدیث لائے-



    taweed shirk-1.jpg taweez shrik -2.jpg

     
    • زبردست زبردست x 1
    • غیرمتعلق غیرمتعلق x 1
    • لسٹ
  5. ‏نومبر 05، 2014 #65
    lovelyalltime

    lovelyalltime سینئر رکن
    جگہ:
    سعودی عرب
    شمولیت:
    ‏مارچ 28، 2012
    پیغامات:
    3,735
    موصول شکریہ جات:
    2,842
    تمغے کے پوائنٹ:
    436


    مولانا عبد الرحمان کیلانی اور محمد بن صالح بن محمد العثيمين کے عمرو بن العاص رضی الله عنہ کی وصیت سے متعلق روایت سے متعلق نظریات پر ابھی تک آپ کے جوابات کا انتظار ہے


    لگتا ہے کہ @اسحاق سلفی بھائی یہاں جواب دینے سے بھاگ رہے ہیں - اور تو اور ان پر فتویٰ دینے سے بھی گریز کر رہے ہیں - کیا یہ کھلم کھلا تضاد نہیں -
     
    • ناپسند ناپسند x 1
    • غیرمتفق غیرمتفق x 1
    • لسٹ
  6. ‏نومبر 05، 2014 #66
    lovelyalltime

    lovelyalltime سینئر رکن
    جگہ:
    سعودی عرب
    شمولیت:
    ‏مارچ 28، 2012
    پیغامات:
    3,735
    موصول شکریہ جات:
    2,842
    تمغے کے پوائنٹ:
    436

    یہاں کون سے سند دی آپ نے -

    یہاں آپ نے علامہ ذہبی رحم الله کی بات کو کس سند سے مانا - میٹھا میٹھا حپ حپ کوڑا کوڑا تھو تھو - ذرا علامہ ذہبی رحم الله کی اس بات کی سند یہاں لکھ دیں تا کہ ہمارے علم میں اضافہ ہو - شکریہ -

    علامہ ذہبی ؒ نے صاف لکھا ہے کہ (( قلت: أجمعوا على توثيق أبي عاصم، وقد قال عمر بن شبة: والله ما رأيت مثله. ))
    کہ ابن عاصم کے ثقہ ہونے پر اجماع ہے ۔
     
  7. ‏نومبر 05، 2014 #67
    lovelyalltime

    lovelyalltime سینئر رکن
    جگہ:
    سعودی عرب
    شمولیت:
    ‏مارچ 28، 2012
    پیغامات:
    3,735
    موصول شکریہ جات:
    2,842
    تمغے کے پوائنٹ:
    436

    میں @محمد علی جواد بھائی کے ان الفاظ کے ساتھ یہاں بات کو ختم کروں گا -



     
  8. ‏نومبر 05، 2014 #68
    lovelyalltime

    lovelyalltime سینئر رکن
    جگہ:
    سعودی عرب
    شمولیت:
    ‏مارچ 28، 2012
    پیغامات:
    3,735
    موصول شکریہ جات:
    2,842
    تمغے کے پوائنٹ:
    436


    مولانا عبد الرحمان کیلانی اور محمد بن صالح بن محمد العثيمين کے عمرو بن العاص رضی الله عنہ کی وصیت سے متعلق روایت سے متعلق نظریات پر ابھی تک آپ کے جوابات کا انتظار ہے



    لگتا ہے کہ @اسحاق سلفی بھائی یہاں جواب دینے سے بھاگ رہے ہیں - اور تو اور ان پر فتویٰ دینے سے بھی گریز کر رہے ہیں - کیا یہ کھلم کھلا تضاد نہیں -
     
    • پسند پسند x 1
    • ناپسند ناپسند x 1
    • لسٹ
  9. ‏نومبر 06، 2014 #69
    ابوالحسن علوی

    ابوالحسن علوی علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏مارچ 08، 2011
    پیغامات:
    2,524
    موصول شکریہ جات:
    11,484
    تمغے کے پوائنٹ:
    641

    وعلیکم السلام

    اہل حدیث علماء کا جو اختلاف ہے، وہ ان کا باہمی اختلاف ہے اور یہ اختلاف کرنے سے ان میں سے کوئی بھی اہل حدیثیت سے خارج نہیں ہو جاتا کیونکہ ان کا منہج ایک ہی ہے۔ آپ جب اسی طرح کے معروف اہل حدیث عالم دین یا اس کی کسی جماعت کے سربراہ بن جائیں گے تو پھر آپ یہ بات کہتے اچھے لگیں گے بشرطیکہ آپ کے اہل حدیثیت سے خارج ہونے پراس وقت تک کوئی اجتماعی فتوی نہ جاری ہو جائے جیسا کہ مولانا اسحاق صاحب کے بارے جاری ہوا تھا۔

    ہمارا غامدی صاحب سے ایک بات پر مکالمہ ہوا تو غامدی صاحب نے کہا کہ مجھ پر تنقید کرنے والے کون سے آپس میں متفق ہیں تو ان کے شاگرد ہی نہ جواب دیا کہ آپس میں نہ سہی کم از کم اس بات پر تو متفق ہیں ناں کہ آپ کے افکار غلط ہیں۔

    تو اہل حدیث کا باہمی اختلاف سہی لیکن اس بات پر تو اتفاق ہے کہ جن افکار کے حامل آپ ہیں، ان کے حاملین گمراہ اور بدعتی لوگ ہیں اور اہل سنت یا اہل حدیث کہلوانے کے حقدار نہیں ہیں۔ تو جن کا اہل حدیث ہونا وقت کے ساتھ طے ہو چکا ہے وہ سب آپ کے غیر اہل حدیث ہونے اور آپ کے افکار کے گمراہ ہونے پر متفق ہیں۔ باقی رہے، ان کے آپس کے اختلافات تو انہیں اس کے حل کے لیے کسی باہر کے مشیر یا علمی اختلاف کو فساد بنانے کے لیے کسی فتنہ گر طعن وتشنیع کی ضرورت نہیں ہے۔
     
    • پسند پسند x 3
    • متفق متفق x 2
    • لسٹ
  10. ‏نومبر 06، 2014 #70
    محمد علی جواد

    محمد علی جواد سینئر رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 18، 2012
    پیغامات:
    1,987
    موصول شکریہ جات:
    1,495
    تمغے کے پوائنٹ:
    304

    محترم -

    علوی صاحب - آپ ایک علمی شخصیت ہیں -معاف کیجئے گا اس طرح کا جواز پیش کرنا آپ کی علمی قابلیت کو مشکوک بنا رہا ہے -

    اگر کوئی عذاب قبر و ثواب میں اجتہادی اختلاف کرتا ہے تو اس کو آپ اہل حدیث کے منہج سے ہی فارغ کردیتے ہیں - اور اس پر گمراہ اور بدعتی ہونے کا الزام عائد کردیتے ہیں -

    اور جو اہل حدیث "جمہوریت" کو جائز قرار دیتے ہیں-ان کی جان آپ صرف یہ که کر چھڑا دیتے ہیں کہ یہ "ان اہل حدیث علماء کا جو اختلاف ہے، وہ ان کا باہمی اختلاف ہے اور یہ اختلاف کرنے سے ان میں سے کوئی بھی اہل حدیثیت سے خارج نہیں ہو جاتا کیونکہ ان کا منہج ایک ہی ہے" - آپ شاید بھول رہے ہیں کہ ہمارا دین ایک مکمل دین ہے- اور طرز حکمرانی کا قانون اور طریقہ کار بھی دین اسلام کے احکامات میں شامل ہے - جب کہ جمہوریت تو یہود و نصاریٰ کا بنایا گیا طرز حکمرانی ہے- قرآن میں الله واضح طور پر فرماتا ہیں کہ :

    ومَنْ لَمْ يَحْكُمْ بِمَا أَنْزَلَ اللَّهُ فَأُولَٰئِكَ هُمُ الْفَاسِقُونَ سوره المائدہ ٤٧
    اور جو چیز الله نے اتاری ہے تو جو اس کے موافق فیصلہ نہ کرے سو وہی لوگ (فاسق) نافرمان ہیں-


    ﻭَﺇِﻥ ﺗُﻄِﻊْ ﺃَﻛْﺜَﺮَ ﻣَﻦ ﻓِﻲ ﺍﻟْﺄَﺭْﺽِ ﻳُﻀِﻠُّﻮﻙَ ﻋَﻦ ﺳَﺒِﻴﻞِ ﺍﻟﻠَّـﻪِ ۚ ﺇِﻥ ﻳَﺘَّﺒِﻌُﻮﻥَ ﺇِﻟَّﺎﺍﻟﻈَّﻦَّ ﻭَﺇِﻥْ ﻫُﻢْ ﺇِﻟَّﺎ ﻳَﺨْﺮُﺻُﻮﻥَ ( ﺍﻻﻧﻌﺎﻡ : ﺁﯾﺖ 116 ) ۔
    ﺍﻭﺭ ﺍﮔﺮ(اے نبی) ﺁﭖ ﺯﻣﯿﻦ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﯽ ﺍﮐﺜﺮﯾﺖ ﮐﯽ ﺍﻃﺎﻋﺖ ﮐﺮﯾﮟ ﮔﮯ۔ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟٰﯽ ﮐﮯ ﺭﺍﺳﺘﮯ ﺳﮯ ﮔﻤﺮﺍﮦ ﮐﺮﺩﯾﮟ ﮔﮯ-

    یہ آیات جمہوریت کے کفر ہونے پر واضح طور پر دلالت کرتی ہیں -

    اب اگر کوئی صاحب علم سب کچھ جاننے کے باوجود- کہ یہ نظام کفر کا نظام ہے - اس نظام حکمرانی کو جائز قرار دیتا ہے- پھر بھی اس کی باطل تاویلات کر کے صرف اتنا که دیا جائے کہ یہ تو علماء کا باہمی اختلاف ہے - تو کیا اس کو انصاف کہا جا سکتا ہے - ؟؟؟

    اگرچہ جمہوریت فلحال ہمارا موضوع نہیں - لیکن محترم درخواست ہے کہ اگر آپ اہل حدیث منہج کی بات کرتے ہیں تو سب کو ایک ترازو میں تولیں - یہ نہ کریں کہ اپنے نام نہاد علماء کو دودھ میں سے مکھی کی طرح نکال کر کہیں کہ یہ تو ان کا صرف باہمی اختلاف ہے- حیرت ہے کہ اس صریح گمراہی پر بھی ان کے ایمان پر کوئی چوٹ نہیں پڑتی - اور قبر کے عذاب و ثواب سے متعلق اگر بالفرض کسی سے اجھادی غلطی ہوتی ہے یا وہ کسی اہل حدیث امام کی بات کو رد کرتا ہے قرآن و حدیث کے تناظر میں- تو وہ اس اہل حدیث منہج سے فارغ کردیا جاتا ہے اور بدعتی و گمراہ کا لیبل اس پر لگا دیا جاتا ہے -

    الله ہم کو اپنی سیدھی راہ کی طرف گامزن کرے اور شخصیت پرستی کے فتنے سے بچاے (آمین)-
     
    Last edited: ‏نومبر 06، 2014
    • پسند پسند x 1
    • غیرمتفق غیرمتفق x 1
    • معلوماتی معلوماتی x 1
    • لسٹ
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں