1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

مومن و کافر کا کفر کرناَ

'الولا والبرا' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد آصف مغل, ‏اگست 13، 2013۔

  1. ‏اگست 13، 2013 #1
    محمد آصف مغل

    محمد آصف مغل سینئر رکن
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏اپریل 29، 2013
    پیغامات:
    2,677
    موصول شکریہ جات:
    3,881
    تمغے کے پوائنٹ:
    436


    بات بڑی عجیب سی لگتی ہے کہ مومن بھی ہو اور وہ کفر بھی کرے۔ کافر کا کفر کرنا تو سمجھ میں آتا ہے لیکن مومن کفر کیسے کر سکتا ہے؟
    اس تھریڈ میں اس بات کی کوشش کی جائے گی کہ قرآن مجید سے راہنمائی لی جائے۔ چنانچہ اللہ تعالی کا ارشاد گرامی ہے:

    اَلَمْ تَرَ اِلَى الَّذِيْنَ يَزْعُمُوْنَ اَنَّھُمْ اٰمَنُوْا بِمَآ اُنْزِلَ اِلَيْكَ وَمَآ اُنْزِلَ مِنْ قَبْلِكَ يُرِيْدُوْنَ اَنْ يَّتَحَاكَمُوْٓا اِلَى الطَّاغُوْتِ وَقَدْ اُمِرُوْٓا اَنْ يَّكْفُرُوْا بِہ
    کیا آپ نے اِن لوگوں کو نہیں دیکھا جو دعوٰی تو کرتے ہیں کہ وہ اس (چیز یعنی قرآن و سنت) پر ایمان لائے جوآپ کی طرف اتارا گیا اور ان (آسمانی کتابوں) پر بھی جو آپ سے پہلے اتاری گئیں (مگر) چاہتے یہ ہیں کہ اپنے مقدمات (فیصلے کے لئے) طاغوت کی طرف لے جائیں حالانکہ انہیں حکم دیا جا چکا ہے کہ اس سے کھلا کفر کریں۔

    لَآ اِكْرَاہَ فِي الدِّيْنِ۝۰ۣۙ قَدْ تَّبَيَّنَ الرُّشْدُ مِنَ الْغَيِّ۝۰ۚ فَمَنْ يَّكْفُرْ بِالطَّاغُوْتِ وَيُؤْمِنْۢ بِاللہِ فَقَدِ اسْتَمْسَكَ بِالْعُرْوَۃِ الْوُثْقٰى لَاانْفِصَامَ لَہَا
    دین میں کوئی زبردستی نہیں، بیشک ہدایت گمراہی سے واضح طور پر ممتاز ہو چکی ہے، سو جو کوئی طاغوت سے کفر کرے اور اﷲ پر ایمان لے آئے تو اس نے ایک ایسا مضبوط حلقہ تھام لیا جس کا ٹوٹنا (ممکن ہی) نہیں۔

    مندرجہ بالا پہلی آیت میں جملہ اقسامِ طاغوت کے ساتھ ''کفر'' کرنا فرض کر دیاگیا ہے۔

    جبکہ دوسری آیت میں ہر قسم کے طاغوت سے ''کفر'' کرنے کے بعد اللہ تعالی کے ساتھ ایمان لانے پر کامیابی کا دارومدار رکھا گیا ہے۔

    قابل غور بات یہ ہے کہ مندرجہ بالا دونوں آیات میں لفظ کفر کا ترجمہ ہم نے کفر ہی کیا ہے۔
    آخر کیوں۔
    جبکہ قرآن مجید کے عام تراجم میں مذکورہ جگہوں پر کفر کا ترجمہ انکار کیا ہے۔

    اس کی وجہ یہ ہے کہ
    لفظ انکار میں وہ شدت نہیں پائی جاتی جو لفظ ''کفر''میں ہے۔
    اور
    کفروشرک کے حاملین سے یہی ''کفر'' مطلوب ہے، صرف انکار نہیں۔

    اور یہی محل نزاع ہے

    کیا اس طرح کی سوچ رکھنے والے اور اس پر عمل کرنے والے لوگ اس دنیامیں موجود تھے؟

    قرآن مجید میں اللہ تعالی راہنمائی فرماتاہے:
    قَدْ كَانَتْ لَكُمْ اُسْوَۃٌ حَسَـنَۃٌ فِيْٓ اِبْرٰہِيْمَ وَالَّذِيْنَ مَعَہٗ۝۰ۚ اِذْ قَالُوْا لِقَوْمِہِمْ اِنَّا بُرَءٰۗؤُا مِنْكُمْ وَمِمَّا تَعْبُدُوْنَ مِنْ دُوْنِ اللہِ۝۰ۡكَفَرْنَا بِكُمْ وَبَدَا بَيْنَنَا وَبَيْنَكُمُ الْعَدَاوَۃُ وَالْبَغْضَاۗءُ اَبَدًا حَتّٰى تُؤْمِنُوْا بِاللہِ وَحْدَہٗٓ
    بیشک تمہارے لئے ابراہیم (علیہ السلام) میں اور اُن کے ساتھیوں میں بہترین نمونۂ (اقتداء) ہے، جب انہوں نے اپنی قوم سے کہا: ہم تم سے اور اُن سب سے جن کی تم اللہ کے سوا پوجا کرتے ہو کلیتہً بیزار (اور لاتعلق) ہیں، ہم نے تمہارے ساتھ کھلا کفر کیا ہمارے اور تمہارے درمیان دشمنی اور نفرت و عناد ہمیشہ کے لئے ظاہر ہوچکا، یہاں تک کہ تم ایک اللہ پر ایمان لے آؤ۔

    اس آیت میں ایک بات انتہائی قابل غور ہے کہ ابراہیم علیہ السلام نے کفر و شرک کرنے والوں سے اظہارِ برأت کے بعد جو لفظ استعمال کیا وہ كَفَرْنَا ہے۔

    دوسری بات یہ کہ آیت کے شروع میں خطاب محمد رسول اللہ ﷺ اور آپ کے متبعین کو ہے اور آیت میں موجود لفظ ''ابدا'' اس بات کی غمازی کر رہا ہے کہ قیامت تک یہ معاملہ چلتا رہے گا تیسرا یہ کہ رسول اکرم ﷺ کی اُمت میں سے جو بھی شخص اس آیت پر عمل کرے گا، وہ اس لفظ ''ابدا'' کی وجہ سے اس حکم میں داخل ہو گا۔

    اب اس تصویر کا دوسرا رُخ دیکھتے ہیں:

    وَيَقُوْلُوْنَ نُؤْمِنُ بِبَعْضٍ وَّنَكْفُرُ بِبَعْضٍ وَّيُرِيْدُوْنَ اَنْ يَّتَّخِذُوْا بَيْنَ ذٰلِكَ سَبِيْلًا [٤:١٥٠]
    اور کہتے ہیں کہ بعض پر تو ہم ایمان لائے اور بعض کے ساتھ کفر کیا ۔ اور چاہتے ہیں کہ اس (ایمان و کفر) کے درمیان کوئی راہ نکال لیں

    اُولٰۗىِٕكَ ہُمُ الْكٰفِرُوْنَ حَقًّا وَاَعْتَدْنَا لِلْكٰفِرِيْنَ عَذَابًا مُّہِيْنًا [٤:١٥١]
    ایسے ہی لوگ درحقیقت کافر ہیں، اور ہم نے کافروں کے لئے رُسوا کن عذاب تیار کر رکھا ہے،
     
    • شکریہ شکریہ x 1
    • پسند پسند x 1
    • علمی علمی x 1
    • لسٹ
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں