1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

مکمل صحیح بخاری اردو ترجمہ و تشریح جلد ٢ - حدیث نمبر٨١٤ تا ١٦٥٤

'کتب احادیث' میں موضوعات آغاز کردہ از Aamir, ‏جولائی 19، 2012۔

  1. ‏دسمبر 13، 2012 #521
    Aamir

    Aamir خاص رکن
    جگہ:
    احمدآباد، انڈیا
    شمولیت:
    ‏مارچ 16، 2011
    پیغامات:
    13,384
    موصول شکریہ جات:
    16,871
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,033

    صحیح بخاری -> کتاب الحج
    باب : حیض والی عورت بیت اللہ کے طواف کے سوا تمام ارکان بجالائے

    وإذا سعى على غير وضوء بين الصفا والمروة‏.
    اور اگر کسی نے صفا اور مروہ کی سعی بغیر وضو کرلی تو کیا حکم ہے؟

    تشریح : باب کی حدیثوں سے پہلا حکم تو ثابت ہوتاہے لیکن دوسرے حکم کاان میں ذکر نہیں ہے اور شاید یہ امام بخاری رحمہ اللہ نے اس حدیث کے دوسرے طریق کی طرف اشارہ کیاہے جس میں امام مالک رحمہ اللہ سے اتنا زیادہ منقول ہے کہ صفا مروہ کا طواف بھی نہ کرے۔ ابن عبد البر نے کہااس زیادت کو صرف یحییٰ بن یحییٰ نیسا پوری نے نقل کیا ہے۔ اورابن ابی شیبہ نے باسناد صحیح ابن عمر رضی اللہ عنہ سے نقل کیا کہ حیض والی عورت سب کا م کرے مگر بیت اللہ اور صفا مروہ کا طواف نے کرے۔ ابن بطال نے کہا کہ امام بخاری رحمہ اللہ نے دوسرا مطلب باب کی حدیث سے یوں نکالا کہ اس میں یوں ہے سب کام کرے جیسے حاجی کرتے ہیں صرف بیت اللہ کاطواف نہ کرے، تو معلوم ہوا کہ صفا مروہ کا طواف بے وضو اور بے طہارت درست ہے۔ اور ابن ابی شیبہ نے ابن عمر رضی اللہ عنہ سے نکالا کہ اگر طواف کے بعد عورت کو حیض آجائے صفا مروہ کی سعی سے پہلے تو صفا مروہ کی سعی کرے۔ وحیدی )

    حدیث نمبر : 1650
    حدثنا عبد الله بن يوسف، أخبرنا مالك، عن عبد الرحمن بن القاسم، عن أبيه، عن عائشة ـ رضى الله عنها ـ أنها قالت قدمت مكة وأنا حائض، ولم أطف بالبيت، ولا بين الصفا والمروة، قالت فشكوت ذلك إلى رسول الله صلى الله عليه وسلم قال ‏"‏افعلي كما يفعل الحاج غير أن لا تطوفي بالبيت حتى تطهري‏"‏‏. ‏
    ہم سے عبداللہ بن یوسف نے بیان کیا، انہوں نے کہا کہ ہمیں امام مالک رحمہ اللہ نے خبر دی، انہیں عبدالرحمن بن قاسم نے، انہیں ان کے باپ نے او رانہیں ام المومنین حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا نے انہوں نے نے فرمایا کہ میں مکہ آئی تو اس وقت میں حائضہ تھی۔ اس لئے بیت اللہ کا طواف نہ کرسکی اور نہ صفا مروہ کی سعی۔ انہوں نے بیان کیا کہ میں نے اس کی شکایت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے کی تو آپ نے فرمایا کہ جس طرح دوسرے حاجی کرتے ہیں تم بھی اسی طرح ( ارکان حج ) ادا کرلوہاں بیت اللہ کا طواف پاک ہونے سے پہلے نہ کرنا۔

    حدیث نمبر : 1651
    حدثنا محمد بن المثنى، حدثنا عبد الوهاب،‏.‏ قال وقال لي خليفة حدثنا عبد الوهاب، حدثنا حبيب المعلم، عن عطاء، عن جابر بن عبد الله ـ رضى الله عنهما ـ قال أهل النبي صلى الله عليه وسلم هو وأصحابه بالحج، وليس مع أحد منهم هدى، غير النبي صلى الله عليه وسلم وطلحة، وقدم علي من اليمن، ومعه هدى فقال أهللت بما أهل به النبي صلى الله عليه وسلم‏.‏ فأمر النبي صلى الله عليه وسلم أصحابه أن يجعلوها عمرة، ويطوفوا، ثم يقصروا ويحلوا، إلا من كان معه الهدى، فقالوا ننطلق إلى منى، وذكر أحدنا يقطر، فبلغ النبي صلى الله عليه وسلم فقال ‏"‏لو استقبلت من أمري ما استدبرت ما أهديت، ولولا أن معي الهدى لأحللت‏"‏‏. ‏ وحاضت عائشة ـ رضى الله عنها ـ فنسكت المناسك كلها، غير أنها لم تطف بالبيت، فلما طهرت طافت بالبيت‏.‏ قالت يا رسول الله تنطلقون بحجة وعمرة، وأنطلق بحج فأمر عبد الرحمن بن أبي بكر أن يخرج معها إلى التنعيم، فاعتمرت بعد الحج‏.‏
    ہم سے محمد بن مثنیٰ نے بیان کیا، کہا کہ ہم سے عبدالوہاب ثقفی نے بیان کیا۔ ( دوسری سند ) اور مجھ سے خلیفہ بن خیاط نے بیان کیا کہ ہم سے عبدالوہاب ثقفی نے بیان کیا، کہا کہ ہم سے حبیب معلم نے بیان کیا، ان سے عطاءبن ابی رباح نے او ر ان سے جابر بن عبداللہ رضی اللہ عنہما نے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اور آپ کے اصحاب نے حج کا احرام باندھا۔ آنحضور رضی اللہ عنہ او رطلحہ کے سوا اور کسی کے ساتھ قربانی نہیں تھی، حضرت علی رضی اللہ عنہ یمن سے آئے تھے او ران کے ساتھ بھی قربانی تھی۔ اس لئے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے حکم دیا کہ ( سب لوگ اپنے حج کے احرام کو ) عمرہ کا کرلیں۔ پھر طواف اور سعی کے بعد بال ترشوا لیں اور احرام کھول ڈالیں لیکن وہ لوگ اس حکم سے مستثنیٰ ہیں جن کے ساتھ قربانی ہو۔ اس پر صحابہ نے کہا کہ ہم منیٰ میں اس طرح جائیں گے کہ ہمارے ذکر سے منی ٹپک رہی ہو۔ یہ بات جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو معلوم ہوئی تو آپ نے فرمایا، اگر مجھے پہلے معلوم ہوتا تومیں قربانی کا جانور ساتھ نہ لاتااو ر جب قربانی کا جانور ساتھ نہ ہوتا تو میں بھی ( عمرہ او رحج کے درمیان ) احرام کھول ڈالتا او رعائشہ رضی اللہ عنہ ( اس حج میں ) حائضہ ہوگئی تھیں۔ اس لئے انہوں نے بیت اللہ کہ طواف کے سوا اور دوسرے ارکان حج ادا کئے۔ پھر پاک ہولیں تو طواف بھی کیا۔ انہوںنے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے شکایت کی کہ آپ سب لوگ تو حج اور عمرہ دونوں کر کے جارہے ہیں لیکن میں نے صرف حج ہی کیا ہے۔ چنانچہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے عبدالرحمن بن ابی بکر کو حکم دیا کہ انہیں تنعیم لئے جائیں ( اور وہاں سے عمرہ کا احرام باندھیں ) اس طرح عائشہ رضی اللہ عنہ نے حج کے بعد عمرہ کیا۔

    حدیث نمبر : 1652
    حدثنا مؤمل بن هشام، حدثنا إسماعيل، عن أيوب، عن حفصة، قالت كنا نمنع عواتقنا أن يخرجن، فقدمت امرأة فنزلت قصر بني خلف، فحدثت أن أختها كانت تحت رجل من أصحاب رسول الله صلى الله عليه وسلم قد غزا مع رسول الله صلى الله عليه وسلم ثنتى عشرة غزوة، وكانت أختي معه في ست غزوات، قالت كنا نداوي الكلمى ونقوم على المرضى‏.‏ فسألت أختي رسول الله صلى الله عليه وسلم فقالت هل على إحدانا بأس إن لم يكن لها جلباب أن لا تخرج قال ‏"‏لتلبسها صاحبتها من جلبابها، ولتشهد الخير، ودعوة المؤمنين‏"‏‏. ‏ فلما قدمت أم عطية ـ رضى الله عنها ـ سألنها ـ أو قالت سألناها ـ فقالت وكانت لا تذكر رسول الله صلى الله عليه وسلم إلا قالت بأبي‏.‏ فقلنا أسمعت رسول الله صلى الله عليه وسلم يقول كذا وكذا قالت نعم بأبي‏.‏ فقال ‏"‏لتخرج العواتق ذوات الخدور ـ أو العواتق وذوات الخدور ـ والحيض، فيشهدن الخير، ودعوة المسلمين، ويعتزل الحيض المصلى‏"‏‏. ‏ فقلت الحائض‏.‏ فقالت أو ليس تشهد عرفة، وتشهد كذا وتشهد كذا
    ہم سے مومل بن ہشام نے بیان کیا، کہا کہ ہم سے اسماعیل بن علیہ نے بیان کیا، ان سے ایوب سختیانی نے اور ان سے حفصہ بنت سیرین نے بیان کیا کہ ہم اپنی کنواری لڑکیوں کو باہر نکلنے سے روکتے تھے۔ پھر اسیک خاتون آئیں او ربنی خلف کے محل میں ( جو بصرے میں تھا ) ٹھہریں۔ انہوں نے بیان کیا کہ ان کی بہن ( ام عطیہ رضی اللہ عنہ ) نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے ایک صحابی کے گھرمیں تھیں۔ ان کے شوہر نے آنحضور صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ بارہ جہاد کئے تھے او رمیری بہن چھ جہادوں میں ان کے ساتھ رہی تھیں۔ وہ بیان کرتی تھیں کہ ہم ( میدان جنگ میں ) زخمیوں کی مرہم پٹی کرتی تھیںاور مریضوں کی تیمارداری کرتی تھی۔ میری بہن نے رسول صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا کہ اگر ہمارے پاس چادر نہ ہو تو کیا کوئی حرج ہے اگر ہم عید گاہ جانے کے لیے باہر نہ نکلیں؟ آنحضور صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا، اس کی سہیلی کو اپنی چادر اسے اڑھا دینی چاہئے اور پھر مسلمانوں کی دعا اور نیک کاموں میں شرکت کرنا چاہئے۔ پھر جب امام عطیہ رضی اللہ عنہ خود بصرہ آئیں تو میں نے ان سے بھی یہی پوچھا یا یہ کہا کہ ہم نے ان سے پوچھا انہو ںنے بیان کیا ام عطیہ رضی اللہ عنہ جب بھی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا ذکر کرتیں تو کہتیں میرے باپ آپ پر فدا ہوں۔ ہاں تو میں نے ان سے پوچھا، کیا آپ نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے اس طرح سنا ہے؟ انہوں نے فرمایا کہ ہاں میرے باپ آپ پر فدا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ کنواری لڑکیاں اور پردہ والیاں بھی باہر نکلیں یا یہ فرمایا کہ پردہ والی دوشیزائیں او رحائضہ عورتیں سب باہر نکلیں اور مسلمانوں کی دعا اور خیر کے کاموں میں شرکت کریں۔ لیکن حائضہ عورتیں نماز کی جگہ سے الگ رہیں۔ میں نے کہا اور حائضہ بھی نکلیں؟ انہو ںنے فرمایا کہ کیا حائضہ عورت عرفات اور فلاں فلاں جگہ نہیں جاتی ہیں؟ ( پھر عید گاہ ہی جانے میں کیا حرج ہے )

    اس حدیث سے امام بخاری رحمہ اللہ نے یہ نکالا کہ حیض والی طواف نہ کرے جو ترجمہ باب کا ایک مطلب تھاکیونکہ حیض والی عورت کو جب نماز کے مقام سے الگ رہنے کا حکم ہوا تو کعبہ کے پاس جانا بھی اس کو جائز نہ ہوگا۔ بعضوں نے کہا باب کا دوسرا مطلب بھی اس سے نکلتا ہے۔ یعنی صفا مروہ کی سعی حائضہ کرسکتی ہے کیونکہ حائضہ عرفات کا وقوف کرسکتی ہے اور صفا مروہ عرفات کی طرح ہے ( وحیدی )

    ترجمہ میں کھلی ہوئی تحریف:

    کسی بھی مسلمان کا کسی بھی مسئلہ کے متعلق مسلک کچھ بھی ہو مگر جہاں قرآن مجید و احادیث نبوی کا کھلا ہوا متن آجائے، دیانتداری کا تقاضا یہ ہے کہ اس کا ترجمہ بلا کم وکیف بالکل صحیح کیا جائے۔ خواہ اس سے ہمارے مزعومہ مسلک پر کیسی ہی چوٹ کیوں نہ لگتی ہو۔ اس لئے کہ اللہ اور اس کے حبیب صلی اللہ علیہ وسلم کا کلام بڑی اہمیت رکھتا ہے اور اس میں ایک ذرہ برابر بھی ترجمہ وتشریح کے نام پر کمی بیشی کرنا وہ بدہ ترین جر م ہے جس کی وجہ سے یہودی تباہ وبرباد ہوگئے۔ اللہ پاک نے صاف لفظوں میں اس کی اس حرکت کا نوٹس لیاہے۔ جیسا کہ ارشادِہے یحرفون الکلم عن مواضعہ ( المائدہ:13 ) یعنی اپنے مقام سے آیات الٰہی کی تحریف کرنا علماءیہود کا بدن ترین شیوہ تھا۔ مگر صد افسوس کہ یہی شیوہ کچھ علماءاسلام کی تحریرات میں نظر آتا ہے۔ جس سے اس کلام نبوی کی تصدیق ہوتی ہے جو آپ نے فرمایا کہ تم پہلے یہود ونصاریٰ کے قدم برقدم چلنے کی راہ اختیار کر کے گمراہ ہوجاؤ گے۔

    اصل مسئلہ!
    عورتوں کا عیدگاہ میں جانا حتی کہ کنواری لڑکیوں اور حیض والی عورتوں کا نکلنا اور عید کی دعاؤں میں شریک ہونا ایسا مسئلہ ہے جو متعدد احادیث نبوی سے ثابت ہے اور یہ مسلمہ امر ہے کہ عہدرسالت میں سختی کے ساتھ اس پر عمل درآمد تھا اور جملہ خواتین اسلام عیدگاہ جایا کرتی تھیں۔ بعد میں مختلف فقہی خیالات وجود پذیر ہوئے اور محترم علماءاحناف نے عورتوں کا میدان عیدگاہ جانا مطلقاً نا جائز قرار دیا۔ بہرحال اپنے خیالات کے وہ خود ذمہ دار ہیں مگر جن احادیث میں عہد نبوی میں عورتوں کا عید گاہ جانا مذکور ہے ان کے ترجمہ میں ردو بدل کرنا انتہائی غیر ذمہ داری ہے۔
    اور صد افسوس کہ ہم موجودہ تراجم بخاری شریف میں جو علماء دیوبند کے قلم سے نکل رہے ہیں ایسی غیر ذمہ داریوں کی بکثرت مثالیں دیکھتے ہیں۔ ” تفہیم البخاری“ ہمارے سامنے ہے۔ جس کا ترجمہ وتشریحات بہت محتاط اندازے پر لکھا گیا ہے۔ مگر مسلکی تعصب نے بعض جگہ ہمارے محترم فاضل مترجم تفہیم البخاری کو بھی جادہ اعتدال سے دورکردیا ہے۔
    یہاں حدیث حفصہ کے سیاق وسباق سے صاف ظاہر ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے ایسی عورت کے عیدگاہ جانے نہ جانے کے بارے میں پوچھا جارہا ہے کہ جس کے پاس اوڑھنے کے لئے چادرنہیں ہے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے جواب دیا کہ اس کی سہیلی کو چاہئے کہ اپنی چادر اس کو عاریتاً اوڑھا دے تاکہ وہ اس خیر اور دعائے مسلمین کے موقع پر ( عیدگاہ میں ) مسلمانوں کے ساتھ شریک ہوسکے۔اس کا ترجمہ مترجم موصوف نے یوں کیا ہے ” اگر ہمارے پاس چادر ( برقعہ ) نہ ہو تو کیا کوئی حرج ہے اگر ہم ( مسلمانوں کے دینی اجتماعات میں شریک ہونے کے لئے باہر نہ نکلیں؟“ ایک بادی النظر سے بخاری شریف کا مطالعہ کرنے والا اس ترجمہ کو پڑھ کر یہ سوچ بھی نہیں سکتاکہ یہاں عیدگاہ جانے نہ جانے کے متعلق پوچھا جارہا ہے۔ دینی اجتماعات سے وعظ ونصیحت کی مجالس مراد ہوسکتی ہیں۔ اور ان سب میں عورتوں کا شریک ہونا بلا اختلاف جائز ہے اور عہد نبوی میں بھی عورتیں ایسے اجتماعات میں برابر شرکت کرتی تھیں۔ پھر بھلا اس سوال کا مطلب کیا ہوسکتا ہے؟
    بہرحال یہ ترجمہ بالکل غلط ہے۔ اللہ توفیق دے کہ علماءکرام اپنے مزعومہ مسالک سے بلند ہو کر احتیاط سے قرآن وحدیث کا ترجمہ کیا کریں۔ وبا للہ التوفیق۔
     
  2. ‏دسمبر 13، 2012 #522
    Aamir

    Aamir خاص رکن
    جگہ:
    احمدآباد، انڈیا
    شمولیت:
    ‏مارچ 16، 2011
    پیغامات:
    13,384
    موصول شکریہ جات:
    16,871
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,033

    صحیح بخاری -> کتاب الحج
    باب : جو شخص مکہ میں رہتا ہو وہ منیٰ کو جاتے وقت بطحاءوغیرہ مقاموں سے احرام باندھے

    وغيرها للمكي وللحاج إذا خرج إلى منى00وسئل عطاء عن المجاور يلبي بالحج، قال وكان ابن عمر ـ رضى الله عنهما ـ يلبي يوم التروية إذا صلى الظهر، واستوى على راحلته‏.‏ وقال عبد الملك عن عطاء عن جابر ـ رضى الله عنه ـ قدمنا مع النبي صلى الله عليه وسلم فأحللنا حتى يوم التروية وجعلنا مكة بظهر لبينا بالحج‏.‏ وقال أبو الزبير عن جابر أهللنا من البطحاء‏.‏ وقال عبيد بن جريج لابن عمر ـ رضى الله عنهما ـ رأيتك إذا كنت بمكة أهل الناس إذا رأوا الهلال ولم تهل أنت حتى يوم التروية‏.‏ فقال لم أر النبي صلى الله عليه وسلم يهل حتى تنبعث به راحلته‏.
    اور اسی طرح ہر ملک والا حاجی جو عمرہ کر کے مکہ رہ گیاہو۔ اور عطاءبن ابی رباح سے پوچھاگیا جو شحص مکہ ہی میں رہتا ہو وہ حج کے لئے لبیک کہے تو انہو ں نے کہا کہ ابن عمر رضی اللہ عنہ آٹھویں ذی الحجہ میں نماز ظہر پڑھنے کے بعد جب سواری پر اچھی طرح بیٹھ جاتے تو لبیک کہتے۔ عبدالملک بن ابی سلیمان نے عطاءسے، انہوں نے جابر رضی اللہ عنہ سے بیان کیا کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ ہم حجتہ الوداع میں مکہ آئے۔ پھر آٹھویں ذی الحجہ تک کے لئے ہم حلال ہوگئے۔ اور ( اس دن مکہ سے نکلتے ہوئے ) جب ہم نے مکہ کو اپنی پشت پر چھوڑا تو حج کا تلبیہ کہہ رہے تھے۔ ابوالزبیر نے جابر رضی اللہ عنہ سے یوں بیان کیا کہ ہم نے بطحاءسے احرام باندھا تھا۔ اور عبید بن جریج نے ابن عمر رضی اللہ عنہ سے کہا کہ جب آپ مکہ میں تھے تومیں نے دیکھا او رتمام لوگوں نے احرام چاند دیکھتے ہی باندھ لیا تھا لیکن آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے آٹھویں ذی الحجہ سے پہلے احرام نہیں باندھا۔ آپ نے فرمایا کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو دیکھا۔ جب تک آپ منیٰ جانے کو اونٹنی پر سوار نہ ہوجاتے احرام نہ باندھتے۔


    تشریح : یہاں یہ اشکال پیدا ہوتا ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم تو ذوالحلیفہ ہی سے احرام باندھ کر آئے تھے اور مکہ میں حج سے فارغ ہونے تک آپ نے احرام کھولا ہی تھا تو ابن عمر رضی اللہ عنہ نے کیسے دلیل لی؟ اس کا جواب یہ ہے کہ ابن عمر رضی اللہ عنہ کا مطلب یہ ہے کہ آپ نے احرام باندھتے ہی حج یا عمرے کے اعمال شروع کردیئے اور احرام میں اور حج کے کاموں میں فاصلہ نہیں کیا۔ پس اس سے یہ نکل آیا کہ مکہ کا رہنے والا یا متمتع آٹھویں تاریخ سے احرام باندھے کیونکہ اسی تاریخ کو لوگ منیٰ روانہ ہوتے ہیں اور حج کے کام شروع ہوتے ہیں۔ ابن عمر رضی اللہ عنہ کے اثر کو سعید بن منصور نے وصل کیا ہے۔ مطلب یہ ہے کہ مکہ کا رہنے والا تمتع کرنے والا حج کااحرام مکہ ہی سے باندھے اور کوئی خاص جگہ کی تعیین نہیں ہے کہ بس ہر مقام سے احرام باندھ سکتا ہے اور افضل یہ ہے کہ اپنے گھر کے دروازے سے احرام باندھے۔
     
  3. ‏دسمبر 13، 2012 #523
    Aamir

    Aamir خاص رکن
    جگہ:
    احمدآباد، انڈیا
    شمولیت:
    ‏مارچ 16، 2011
    پیغامات:
    13,384
    موصول شکریہ جات:
    16,871
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,033

    صحیح بخاری -> کتاب الحج
    باب : آٹھویں ذی الحجہ کو نماز ظہر کہاں پڑھی جائے

    حدیث نمبر : 1653
    حدثني عبد الله بن محمد، حدثنا إسحاق الأزرق، حدثنا سفيان، عن عبد العزيز بن رفيع، قال سألت أنس بن مالك ـ رضى الله عنه ـ قلت أخبرني بشىء، عقلته عن النبي صلى الله عليه وسلم أين صلى الظهر والعصر يوم التروية قال بمنى‏.‏ قلت فأين صلى العصر يوم النفر قال بالأبطح‏.‏ ثم قال افعل كما يفعل أمراؤك‏.‏
    ہم سے عبداللہ بن محمدنے بیان کیا، کہا کہ ہم سے اسحاق ازرق نے بیان کیا، کہا کہ ہم سے سفیان ثوری نے عبدالعزیز بن رفیع کے واسطے سے بیان کیا، کہا کہ میں نے انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے پوچھا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ظہر اور عصر کی نماز آٹھویں ذی الحجہ میں کہاں پڑھی تھی؟ اگر آپ کو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم سے یاد ہے تومجھے بتائےے۔ انھوں نے جواب دیا کہ منیٰ میں۔ میں نے پوچھا کہ بارہویں تاریخ کوعصر کہاں پڑھی تھی؟ فرمایا کہ محصب میں۔ پھر انھوں نے فرمایا کہ جس طرح تمہارے حکام کرتے ہیں اسی طرح تم بھی کرو۔

    حدیث نمبر : 1654
    حدثنا علي، سمع أبا بكر بن عياش، حدثنا عبد العزيز، لقيت أنسا‏.‏ وحدثني إسماعيل بن أبان، حدثنا أبو بكر، عن عبد العزيز، قال خرجت إلى منى يوم التروية فلقيت أنسا ـ رضى الله عنه ـ ذاهبا على حمار فقلت أين صلى النبي صلى الله عليه وسلم هذا اليوم الظهر فقال انظر حيث يصلي أمراؤك فصل‏.‏
    ہم سے علی بن عبداللہ مدینی نے بیان کیا، انھوں نے ابوبکر بن عیاش سے سنا کہ ہم سے عبدالعزیز بن رفیع نے بیان کیا، کہا کہ میں انس رضی اللہ عنہ سے ملا ( دوسری سند ) امام بخاری رحمہ اللہ نے کہا اورمجھ سے اسماعیل بن ابان نے بیان کیا، کہا کہ ہم سے ابوبکر بن عیاش نے بیان کیا، ان سے عبدالعزیز نے کہا کہ میں آٹھویں تاریخ کو منیٰ گیا تو وہاں انس رضی اللہ عنہ سے ملا۔ وہ گدھی پر سوار ہوکر جا رہے تھے۔ میں نے پوچھا نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے اس دن ظہر کی نماز کہاں پڑھی تھی؟ انھوں نے فرمایا دیکھو جہاں تمہارے حاکم لوگ نماز پڑھیں وہیں تم بھی پڑھو۔

    تشریح : معلوم ہوا کہ حاکم اور شاہ اسلام کی اطاعت واجب ہے۔ جب اس کاحکم خلاف شرع نہ ہو اورجماعت کے ساتھ رہنا ضروری ہے۔ اس میں شک نہیں کہ مستحب وہی ہے جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے کیا۔ مگر مستحب امر کے لیے حاکم یا جماعت کی مخالفت کرنا بہتر نہیں۔ ابن منذر نے کہا سنت یہ ہے کہ امام ظہراورعصر اورمغرب اورعشاءاورصبح کی نمازیں منیٰ ہی میں پڑھے اور منیٰ کی طرف ہر وقت نکلنا درست ہے لیکن سنت یہی ہے کہ آٹھویں تاریخ کو نکلے اور ظہر کی نماز منیٰ میں جاکر ادا کرے۔ ( وحیدی )

    چھٹا پارہ پورا ہوا اوراس کے بعدساتواں پارہ شروع ہے ان شاءاللہ تعالیٰ۔
     
  4. ‏دسمبر 13، 2012 #524
    Aamir

    Aamir خاص رکن
    جگہ:
    احمدآباد، انڈیا
    شمولیت:
    ‏مارچ 16، 2011
    پیغامات:
    13,384
    موصول شکریہ جات:
    16,871
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,033

    ----------------------------------------------------------------------------------------
    ----------------------------------------------------------------------------------------
    الحمدللہ دوسری جلد پر کام پورا ہوا.
    ----------------------------------------------------------------------------------------
    ----------------------------------------------------------------------------------------


    اگلی جلدیں دیکھئے :

    مکمل صحیح بخاری اردو ترجمہ و تشریح جلد ١ - حدیث نمبر ١ تا ٨١٣
    مکمل صحیح بخاری اردو ترجمہ و تشریح جلد ٢ - حدیث نمبر٨١٤ تا ١٦٥٤
    مکمل صحیح بخاری اردو ترجمہ و تشریح جلد ٣ - حدیث نمبر١٦٥٥ تا ٢٤٩٠
    مکمل صحیح بخاری اردو ترجمہ و تشریح جلد٤- حدیث نمبر٢٤٩١ تا ٣٤٦٤
    مکمل صحیح بخاری اردو ترجمہ و تشریح جلد٥- حدیث نمبر٣٤٦٥ تا ٤٣٩٤
    مکمل صحیح بخاری اردو ترجمہ و تشریح جلد ٦- حدیث نمبر٤٣٩٥ تا ٥٢٤٤
    مکمل صحیح بخاری اردو ترجمہ و تشریح جلد٧ - حدیث نمبر٥٢٤٥ تا ٦٥١٦

    مکمل صحیح بخاری اردو ترجمہ و تشریح جلد٨ - حدیث نمبر٦٥١٧ تا ٧٥٨٣
     
  5. ‏نومبر 28، 2014 #525
    ذاکر ملک

    ذاکر ملک رکن
    شمولیت:
    ‏نومبر 18، 2014
    پیغامات:
    19
    موصول شکریہ جات:
    8
    تمغے کے پوائنٹ:
    54

    ما شاءالله الله آپ کو اس کی جزاءدے میری دعا ہے آپ کے لیے آپ کی ہی بہت بڑی محنت ہے اس طرح لیکهنے کی ۔۔۔۔۔۔
     
  6. ‏نومبر 28، 2014 #526
    ذاکر ملک

    ذاکر ملک رکن
    شمولیت:
    ‏نومبر 18، 2014
    پیغامات:
    19
    موصول شکریہ جات:
    8
    تمغے کے پوائنٹ:
    54

    عامر صاحب باقی کی جو جلد ہیں ۔۔5۔۔۔6۔۔7۔ ۔۔8 ۔۔۔اس پر کب تک کام مکمل ہو جاے گا یہ وقعہ ہی بہت اچها کام ہے ۔۔۔۔۔
     
  7. ‏نومبر 28، 2014 #527
    Aamir

    Aamir خاص رکن
    جگہ:
    احمدآباد، انڈیا
    شمولیت:
    ‏مارچ 16، 2011
    پیغامات:
    13,384
    موصول شکریہ جات:
    16,871
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,033

    شکریہ بھائی،
    صحیح بخاری کی اس تشریح پر کام جان بوجھ کر روکا گیا ہے میری طرف سے، اس کا کام ان شاء الله صحیح وقت پر ہوگا، تب تک آپ اس کا ترجمہ یہاں سے ڈاونلوڈ کر سکتے ہے،
    http://momeen.blogspot.in/2014/06/sahih-bukhari-arabicurdu-translation.html
    تشریح پر کام بعد میں ہوگا پہلے ہی کافی کام رکے ہوئے ہیں، الله سے دعا کیجئے کہ وہ آسانیاں کرے، ابھی تو ذرا بھی فرصت نہیں ہے۔
     
  8. ‏نومبر 29، 2014 #528
    ذاکر ملک

    ذاکر ملک رکن
    شمولیت:
    ‏نومبر 18، 2014
    پیغامات:
    19
    موصول شکریہ جات:
    8
    تمغے کے پوائنٹ:
    54

    سہی ہے پر آپ سب کام چهوڑ کر یہ کام کر دیں بس الله کی رضا کی خاطر اس کا اجر آپکو الله دے گا ۔۔۔۔اور اس کے بعد اسی طرح سہی مسلم بهہ انشا ءالله ۔۔۔۔
     
  9. ‏نومبر 29، 2014 #529
    ذاکر ملک

    ذاکر ملک رکن
    شمولیت:
    ‏نومبر 18، 2014
    پیغامات:
    19
    موصول شکریہ جات:
    8
    تمغے کے پوائنٹ:
    54

    نی تو یہاں اپلوڈنئگ کا کیا طریقہ ہے مجهے سمجها دیں سہی مسلم پر کام ماین کر دوں گا انشا ءالله اور جہاں سے نہ سمجه آی آپ سے راهنمائ لے لوں گا
     
  10. ‏نومبر 29، 2014 #530
    Aamir

    Aamir خاص رکن
    جگہ:
    احمدآباد، انڈیا
    شمولیت:
    ‏مارچ 16، 2011
    پیغامات:
    13,384
    موصول شکریہ جات:
    16,871
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,033

    بھائی اس پر کام بعد میں ہوگا، پہلے ہم اس کا سوفٹویر بنانے کا سوچ رہے ہیں، بعد میں پی ڈی ایف اور یونیکوڈ اپلوڈ ہوگی یا نہیں اس پر فیصلہ نہیں لیا گیا ہے، حالانکہ ہمارے پاس اس کی سبھی جلدوں کا یونیکوڈ موجود ہے۔

    کیا آپ کے پاس صحیح مسلم کا یونیکوڈ موجود ہے؟؟؟ اگر ہے تو اس بارے میں بتائے کہ کس کا ترجمہ ہے وغیرہ،،،، آپ کو صحیح مسلم پوسٹ کرنے کا طریقہ میں سمجھا دوں گا ۔
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں