1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

ناقہ کی کونچیں کاٹنے والا

'حدیث وعلومہ' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد نعیم یونس, ‏اپریل 12، 2017۔

  1. ‏اپریل 12، 2017 #1
    محمد نعیم یونس

    محمد نعیم یونس خاص رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 27، 2013
    پیغامات:
    26,376
    موصول شکریہ جات:
    6,595
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,207

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!
    محترم شیخ @اسحاق سلفی صاحب!
    ایک بھائی نے اس روایت کی صحت و تخریج دریافت کی ہے۔

    خطیب بغدادی نے بیان کیا ہے کہ علی بن القاسم البصری نے مجھے بتایا کہ علی بن اسحاق الماردانی نے ہم سے بیان کیا کہ محمد بن اسحاق الصنعانی نے ہمیں بتایا کہ اسماعیل بن ابان الوراق نے ہم سے بیان کیا کہ ناصح بن عبداللہ المحلمی نے سماک سے بحوالہ جابر بن سمرۃ ہم سے بیان کیا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے حضرت علی رضی اللہ عنہ سے فرمایا: اولین کا بدبخت ترین آدمی کون ہے؟ حضرت علی رضی اللہ عنہ نے کہا: ناقہ کی کونچیں کاٹنے والا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: آخرین کا بدبخت ترین آدمی کون ہے؟ حضرت علی رضی اللہ نے کہا اللہ اور اس کا رسول ہی بہتر جانتے ہیں، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تیرا قاتل۔
    ae1f4bdd-ead8-42f2-91c3-ced307a84544.jpg
     
    • معلوماتی معلوماتی x 2
    • مفید مفید x 1
    • لسٹ
  2. ‏اپریل 12، 2017 #2
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    6,226
    موصول شکریہ جات:
    2,369
    تمغے کے پوائنٹ:
    791


    وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

    متعلقہ مواد دیکھ لیا ہے ، لیکن بجلی بار بار بند ہونے کے سبب جواب لکھنے کا موقع نہیں مل رہا ،
    ان شاء اللہ جیسے ہی ممکن ہوتا ہے جواب پیش کرتا ہوں۔
     
    • شکریہ شکریہ x 2
    • پسند پسند x 2
    • معلوماتی معلوماتی x 1
    • لسٹ
  3. ‏اپریل 14، 2017 #3
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    6,226
    موصول شکریہ جات:
    2,369
    تمغے کے پوائنٹ:
    791

    بسم اللہ الرحمن الرحیم
    اس حدیث کے کئی طرق ہیں ، اور کوئی بھی طریق علت سے محفوظ نہیں ، لیکن شواہد کی بنا پر یہ حدیث حسن لغیرہ کے درجہ پر ہے ؛

    (1)الحدیث الاول
    [ أشقى الأولين عاقر الناقة وأشقى الآخرين الذي يطعنك يا علي . وأشار حيث يطعن ]
    السلسلة الصحيحة المؤلف : محمد ناصر الدين الألباني [ جزء 3 - صفحة 78 ] ح 1088 ( صحيح )
    جناب علی رضی اللہ عنہ سے منقول فرماتے ہیں کہ رسول کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا : گذشتہ لوگوں میں سب سے زیادہ شقی آدمی قوم ثمود کا وہ آدمی جس نے ناقتہ اللہ کی کونچیں کاٹی تھیں ، اور آخرین میں سب سے بڑا بدبخت وہ ہوگا جو تجھے ضرب لگا کر ( قتل کرے گا ) ۔


    أخرجه ابن سعد في " الطبقات " (3 / 35) عن موسى بن عبيدة عن أبي بكر بن عبيد
    الله بن أنس أو أيوب بن خالد أو كليهما: أخبرنا عبيد الله أن النبي صلى
    الله عليه وسلم قال لعلي: " يا علي من أشقى الأولين والآخرين؟ قال: الله
    ورسوله أعلم، قال ". فذكره.
    قلت: وهذا إسناد مرسل ضعيف، أبو بكر بن عبيد الله بن أنس مجهول. ونحوه
    أبوه عبيد الله بن أنس، فلم يوثقه أحد ولا عرف إلا من رواية ابنه أبي بكر.
    لكن الحديث صحيح، فقد جاءت له شواهد كثيرة عن جمع من الصحابة منهم علي نفسه
    وعمار بن ياسر وصهيب الرومي.
    (2) الحدیث الثانی
    أخرجه الطحاوي في " مشكل الآثار " (1 / 351 - 352) والنسائي في " الخصائص "
    (ص 28) والحاكم (3 / 140 - 141) وأحمد (4 / 263) من طريق محمد بن إسحاق
    حدثني يزيد بن محمد بن خيثم المحاربي عن محمد بن كعب القرظي عن محمد بن خيثم عن
    عمار بن ياسر رضي الله عنه قال: " كنت أنا وعلي رفيقين في غزوة ذي
    العشيرة، فلما نزلها رسول الله صلى الله عليه وسلم وأقام بها، رأينا ناسا من
    بني مدلج يعملون في عين لهم في نخل، فقال لي علي: يا أبا اليقظان: هل لك أن
    نأتي هؤلاء فننظر كيف يعملون؟ فجئناهم فنظرنا إلى عملهم ساعة، ثم غشينا النوم
    ، فانطلقت أنا وعلي، فاضطجعنا في صور من النخل، في دقعاء من التراب فنمنا،
    فوالله ما أيقظنا إلا رسول الله صلى الله عليه وسلم يحركنا برجله، وقد تتربنا
    من تلك الدقعاء، فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم: يا أبا تراب! لما يرى
    عليه من التراب، فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم: ألا
    [ يا أبا تراب ! ألا أحدثكما بأشقى الناس رجلين ؟ قلنا : بلى يا رسول الله ! قال : أحيمر ثمود الذي عقر الناقة والذي يضربك على هذه ( يعني قرن علي ) حتى تبتل هذه من الدم يعني لحيته ]
    والسياق للحاكم وقال:
    " صحيح على شرط مسلم ". ووافقه الذهبي.
    وهو وهم فاحش منهما، فإن محمد بن خيثم ويزيد بن محمد بن خيثم لم يخرج لهما
    مسلم شيئا بل ولا أحد من بقية الستة إلا النسائي في الكتاب السابق " الخصائص "
    وفيهما جهالة، فإن الأول منهما لم يرو عنه غير القرظي، والآخر غير ابن
    إسحاق. والحديث قال الهيثمي (9 / 136) : " رواه أحمد والطبراني والبزار
    باختصار، ورجال الجميع موثوقون إلا أن التابعي لم يسمع من عمار ". لكن
    للحديث شواهد من حديث صهيب وجابر بن سمرة وعلي بأسانيد فيها ضعف غير حديث علي
    فإسناده حسن كما قال الهيثمي وقد خرجها كلها فراجعه إن شئت (9 / 136 - 137)
    (صور من النخل) أي جماعة من النخل، ولا واحد له من لفظه، ويجمع على
    (صيران) . (دقعاء) هو هنا التراب الدقيق على وجه الأرض.

    السلسلة الصحيحة [ جزء 4 - صفحة 324 ] ح 1743 ( صحيح )
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    (3) الحدیث الثالث
    ( ألا أحدثكم بأشقى الناس رجلين ؟ أحيمر ثمود الذي عقر الناقة و الذي يضربك يا علي على هذه حتى يبل منها هذه( طب ك ) عن عمار بن ياسر . قال الشيخ الألباني : ( صحيح ) انظر حديث رقم : 2589 في صحيح الجامع
    صحيح وضعيف الجامع الصغير وزيادته المؤلف : محمد ناصر الدين الألباني جزء 1 - صفحة 436 ] ح 4354

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    (4) الحدیث الرابع
    ( فقال رسول الله صلى الله عليه و سلم : يا أبا تراب لما يرى عليه من التراب فقال رسول الله صلى الله عليه و سلم ألا أحدثكما بأشقى الناس رجلين قلنا بلى يا رسول الله قال : أحيمر ثمود الذي عقر الناقة و الذي يضر بك يا علي على هذه يعني قرنه حتى تبتل هذه من الدم يعني لحيته هذا حديث صحيح على شرط مسلم و لم يخرجاه بهذه الزيادة إنما اتفقا على حديث أبي حازم عن سهل بن سعد : قم أبا تراب تعليق الذهبي قي التلخيص : على شرط مسلم ).
    المستدرك على الصحيحين المؤلف : محمد بن عبد الله أبو عبد الله الحاكم النيسابوري الناشر : دار الكتب العلمية – بيروت الطبعة الأولى ، 1411 – 1990 تحقيق : مصطفى عبد القادر عطا عدد الأجزاء : 4 مع الكتاب : تعليقات الذهبي في التلخيص [ جزء 3 - صفحة 151 ] ح 4679

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    (5) الحدیث الخامس
    قال الامام أبو عبد الله محمد بن عبدا لله الحاكم النيسابوري فی المستدرك على الصحيحين ح 4590
    أخبرنا إبراهيم بن إسماعيل القارئ ، ثنا عثمان بن سعيد الدارمي ، ثنا عبد الله بن صالح ، حدثني الليث بن سعد ، أخبرني خالد بن يزيد ، عن سعيد بن أبي هلال ، عن زيد بن أسلم ، أن أبا سنان الدؤلي حدثه ، أنه عاد عليا رضي الله عنه في شكوى له أشكاها ، قال: فقلت له: لقد تخوفنا عليك يا أمير المؤمنين في شكواك هذه ، فقال: لكني والله ما تخوفت على نفسي منه ، لأني سمعت رسول الله صلى الله عليه وسلم الصادق المصدوق ، يقول: " إنك ستضرب ضربة ها هنا وضربة ها هنا - وأشار إلى صدغيه - فيسيل دمها حتى تختضب لحيتك ، ويكون صاحبها أشقاها ، كما كان عاقر الناقة أشقى ثمود "
    " هذا حديث صحيح على شرط البخاري ، ولم يخرجاه "

    دار الكتب العلمية – بيروت الطبعة الأولى ، 1411 – 1990 تحقيق : مصطفى عبد القادر عطا [ جزء 3 - صفحة 122 ]

    وقال الامام أبو الفداء إسماعيل بن عمر بن كثير القرشي فی البداية والنهاية ( مكتبة المعارف – بيروت )
    وقد رأيت من الطرق المتعددة خلاف ذلك وقال البيهقي بعد ذكره طرفا من هذه الطرق وقد رويناه في كتاب السنن بإسناد صحيح عن زيد بن أسلم عن أبي سنان الدؤلي عن علي في إخبار النبي صلى الله عليه وسلم بقتله حديث آخر في ذلك قال الخطيب البغدادي أخبرني علي بن القاسم البصري ثنا علي بن إسحاق المارداني أنا محمد ابن إسحاق الصنعاني ثنا إسماعيل بن أبان الوراق ثنا ناصح بن عبد الله المحلمي عن سماك عن جابر ابن سمرة قال قال رسول الله صلى الله عليه وسلم لعلي من أشقى الأولين قال عاقر الناقة قال فمن أشقى الآخرين قال الله ورسوله أعلم قال قاتلك ).
    [ جزء 7 - صفحة 326 ]
    علامہ ابن کثیر فرماتے ہیں :
    امام بیہقی نے اس روایت کے کئی طرق ذکر کرنے کے بعد فرمایا ہے کہ :
    کہ ہم نے کتاب السنن میں صحیح اسناد سے جناب علی کے قتل کے متعلق حدیث روایت کی ہے ، اس سلسلے میں دوسری حدیث امام خطیب بغدادی نے جابر بن سمرہ کے حوالہ سے یوں نقل فرمائی کہ :
    نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا : جانتے ہو گذشتہ لوگوں میں سب سے زیادہ شقی آدمی کون ؟ جناب علی نے عرض کیا قوم ثمود کا وہ آدمی جس نے ناقتہ اللہ کی کونچیں کاٹی تھیں ، نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا اور آخرین میں سب سے بڑا بدبخت کون ہے ، انہوں کہا : اللہ اور اس کا رسول بہتر جانتے ہیں ، آپ ﷺ نے فرمایا : جو اے علی ! تمہارا قاتل ۔


    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    كشف الأستار عن زوائد البزار على الكتب الستة تأليف الحافظ نور الدين بن أبي بكر الهيثمي ص 204 ح 2572 ) کے حاشیہ میں ہے :
    ( قال الهيثمي : رواه أحمد وأبو يعلى ورجاله رجال الصحيح ,غير عبد الله بن سبيع ,وهو ثقة , ورواه البزار بإسناد حسن ج9 ص 137 ).
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    وذكر النسائي من حديث عمار بن ياسر عن النبي صلى الله عليه وسلم أنه قال لعلي رضي الله عنه : " أشقى الناس الذي عقر الناقة والذي يضربك على هذا " ووضع يده على رأسه حتى يخضب هذه " يعني لحيته
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    مسند امام احمد بن حنبل ؒ میں ہے :
    حدثنا علي بن بحر، حدثنا عيسى بن يونس، حدثنا محمد بن إسحاق، حدثني يزيد بن محمد بن خثيم المحاربي، عن محمد بن كعب القرظي، عن محمد بن خثيم أبي يزيد، عن عمار بن ياسر، قال: كنت أنا وعلي رفيقين في غزوة ذات العشيرة، (1) فلما نزلها رسول الله صلى الله عليه وسلم، وأقام بها، رأينا أناسا من بني مدلج يعملون في عين لهم في نخل، فقال لي علي: يا أبا اليقظان، هل لك أن نأتي هؤلاء، فننظر كيف يعملون؟
    فجئناهم، فنظرنا إلى عملهم ساعة، ثم غشينا النوم، فانطلقت أنا وعلي فاضطجعنا في صور من النخل في دقعاء من التراب، فنمنا، فوالله ما أهبنا إلا رسول الله صلى الله عليه وسلم يحركنا برجله، وقد تتربنا من تلك الدقعاء، فيومئذ قال رسول الله صلى الله عليه وسلم لعلي: " يا أبا تراب " لما يرى عليه من التراب، قال: " ألا أحدثكما بأشقى الناس رجلين؟ " قلنا: بلى يا رسول الله، قال: " أحيمر ثمود الذي عقر الناقة، والذي يضربك يا علي على هذه، يعني قرنه، حتى تبل منه هذه، يعني لحيته، " (1)

    جناب عمار بن یاسر (رضی اللہ عنہ) سے مروی ہے کہ ایک مرتبہ غزوہ ذات العشیرہ میں میں اور حضرت علی (رضی اللہ عنہ) رفیق سفر تھے، جب نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے ایک مقام پر پڑاؤ ڈالا اور وہاں قیام فرمایا تو ہم نے بنی مدلج کے کچھ لوگوں کو دیکھا جو اپنے باغات کے چشموں میں کام کر رہے تھے سیدنا علی (رضی اللہ عنہ) مجھ سے کہنے لگے اے ابوالیقظان ! آؤ، ان لوگوں کے پاس چل کر دیکھتے ہیں کہ یہ کس طرح کام کرتے ہیں ؟ چنانچہ ہم ان کے قریب چلے گئے تھوڑی دیر تک ان کا کام دیکھا پھر ہمیں نیند کے جھونکے آنے لگے چنانچہ ہم واپس آگئے اور ایک باغ میں مٹی کے اوپر ہی لیٹ گئے۔ ہم اس طرح بے خبر ہو کر سوئے کہ پھر نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) ہی نے آکر اٹھایا نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) ہمیں اپنے پاؤں سے ہلا رہے تھے اور ہم اس مٹی میں لت پت ہوچکے تھے اس دن نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے سیدنا علی (رضی اللہ عنہ) سے فرمایا ابوتراب ! کیونکہ ان پر تراب (مٹی) زیادہ تھی ،
    پھر نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا کیا میں تمہیں تمام لوگوں میں سب سے زیادہ شقی دو آدمیوں کے متعلق نہ بتاؤں ؟ ہم نے عرض کیا کیوں نہیں یا رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) ! نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا ایک تو قوم ثمود کا وہ سرخ و سپید آدمی جس نے ناقتہ اللہ کی کونچیں کاٹی تھیں اور دوسرا وہ آدمی جو اے علی ! تمہارے سر پر وار کر کے تمہاری ڈاڑھی کو خون سے تر کردے گا۔


    __________

    علامہ شعیب الارناؤط لکھتے ہیں

    (1) حسن لغيره، دون قوله: "يا أبا تراب" فصحيح من قصة أخرى، كما سيرد، وهذا إسناد ضعيف، فيه ثلاث علل: الجهالة، والانقطاع، والتفرد. أما الجهالة. فجهالة محمد بن خثيم أبي يزيد، تفرد بالرواية عنه محمد بن كعب القرظي، ولم يؤثر توثيقه عن غير ابن حبان على عادته في توثيق المجاهيل، وقال الذهبي: لا يعرف، وأما الانقطاع فقد ذكر البخاري هذا الإسناد في "تاريخه الكبير" 1/71، وقال: وهذا إسناد لا يعرف سماع يزيد من محمد، ولا محمد بن كعب من ابن خثيم، ولا ابن خثيم من عمار. قلنا: قد تكلف الحافظ في إثبات الاتصال بين هؤلاء الرواة (في ترجمة محمد بن خثيم في "تهذيب التهذيب") لكنه لم يثبت الاتصال بين يزيد بن محمد بن خثيم، ومحمد بن كعب القرظي، فقد ساق الإسناد بالعنعنة بينهما، فتبقى علة الانقطاع قائمة.
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    سنن النسائي الكبرى المؤلف : أحمد بن شعيب أبو عبد الرحمن النسائي الناشر : دار الكتب العلمية - بيروت
    الطبعة الأولى ، 1411 – 1991 تحقيق : د.عبد الغفار سليمان البنداري , سيد كسروي حسن عدد الأجزاء : 6ذكر أشقى الناس [ جزء 5 - صفحة 153 ] ح 8538 قال رسول الله صلى الله عليه وسلم لعلي ما لك يا أبا تراب لما يرى مما عليه من التراب ثم قال ألا أحدثكما بأشقى الناس قلنا بلى يا رسول الله قال أحيمر ثمود الذي عقر الناقة والذي يضربك يا علي على هذه ووضع يده على قرنه حتى يبل منها هذه وأخذ بلحيته ).

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
     
    Last edited: ‏اپریل 14، 2017
    • علمی علمی x 6
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
  4. ‏اپریل 14، 2017 #4
    محمد نعیم یونس

    محمد نعیم یونس خاص رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 27، 2013
    پیغامات:
    26,376
    موصول شکریہ جات:
    6,595
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,207

    جزاکم اللہ خیرا یا شیخ!
     
  5. ‏ستمبر 02، 2018 #5
    عامر عدنان

    عامر عدنان مشہور رکن
    جگہ:
    انڈیا،بنارس
    شمولیت:
    ‏جون 22، 2015
    پیغامات:
    821
    موصول شکریہ جات:
    236
    تمغے کے پوائنٹ:
    118

    السلام علیکم ورحمتہ اللہ وبرکاتہ
    شیخ محترم اس روایت کے متعلق تفصیلی جواب اردو میں دے دیں تو بڑی مہربانی ہوگی ۔ مجھے عربی نہیں آتی اور ایک بھائی نے بھی اس روایت کے متعلق پوچھا ہے
    جزاک اللہ خیرا
     
  6. ‏ستمبر 05، 2018 #6
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    6,226
    موصول شکریہ جات:
    2,369
    تمغے کے پوائنٹ:
    791

    وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    سوال :
    ایک بھائی نے اس روایت کی صحت و تخریج دریافت کی ہے۔

    امام ابوبکرخطیب بغدادی نے بیان کیا ہے کہ علی بن القاسم البصری نے مجھے بتایا کہ علی بن اسحاق الماردانی نے ہم سے بیان کیا کہ محمد بن اسحاق الصنعانی نے ہمیں بتایا کہ اسماعیل بن ابان الوراق نے ہم سے بیان کیا کہ ناصح بن عبداللہ المحلمی نے سماک سے بحوالہ جابر بن سمرۃ ہم سے بیان کیا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے حضرت علی رضی اللہ عنہ سے فرمایا: اولین کا بدبخت ترین آدمی کون ہے؟ حضرت علی رضی اللہ عنہ نے کہا: ناقہ کی کونچیں کاٹنے والا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: آخرین کا بدبخت ترین آدمی کون ہے؟ حضرت علی رضی اللہ نے کہا اللہ اور اس کا رسول ہی بہتر جانتے ہیں، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تیرا قاتل۔
    ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
    جواب :
    بسم اللہ الرحمن الرحیم
    اس حدیث کے کئی طرق ہیں ، اور کوئی بھی طریق علت سے محفوظ نہیں ، لیکن شواہد کی بنا پر یہ حدیث حسن لغیرہ کے درجہ پر ہے ؛

    (1)الحدیث الاول
    [ أشقى الأولين عاقر الناقة وأشقى الآخرين الذي يطعنك يا علي. وأشار حيث يطعن ]
    السلسلة الصحيحة المؤلف : محمد ناصر الدين الألباني [ جزء 3 - صفحة 78 ] ح 1088

    جناب علی رضی اللہ عنہ سے منقول فرماتے ہیں کہ رسول کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا : گذشتہ لوگوں میں سب سے زیادہ شقی آدمی قوم ثمود کا وہ آدمی جس نے ناقۃ اللہ (معجزہ سے پیدا ہونے والی اونٹنی )کی کونچیں کاٹی تھیں ، اور آخرین میں سب سے بڑا بدبخت وہ ہوگا جو تجھے ضرب لگا کر ( قتل کرے گا ) اور اشارہ سے بتایا کہ وہ بدبخت کہاں ضرب لگائے گا۔

    أخرجه ابن سعد في " الطبقات " (3 / 35) عن موسى بن عبيدة عن أبي بكر بن عبيدالله بن أنس أو أيوب بن خالد أو كليهما: أخبرنا عبيد الله أن النبي صلى الله عليه وسلم قال لعلي: " يا علي من أشقى الأولين والآخرين؟ قال: الله ورسوله أعلم، قال ". فذكره.
    قلت: وهذا إسناد مرسل ضعيف، أبو بكر بن عبيد الله بن أنس مجهول. ونحوه أبوه عبيد الله بن أنس، فلم يوثقه أحد ولا عرف إلا من رواية ابنه أبي بكر.لكن الحديث صحيح، فقد جاءت له شواهد كثيرة عن جمع من الصحابة منهم علي نفسه وعمار بن ياسر وصهيب الرومي.

    علامہ ناصر الدین الالبانیؒ فرماتے ہیں :
    طبقات ابن سعد ؒ کی یہ اسناد تو مرسل ،ضعیف ہے ،اس میں ابوبکر بن عبید اللہ راوی مجہول ہے اور اس کے باپ عبیداللہ بن انس کی کسی نے توثیق نہیں کی ،
    لیکن یہ حدیث صحیح ہے کیونکہ اس کے کئی ایک شواہد ہیں ،جنہیں صحابہ کرام کی ایک جماعت نے بیان کیا ہے ،جن میں خود جناب علی رضی اللہ عنہ ،سیدنا عمار بن یاسر اور صہیب رومی رضی اللہ عنہما شامل ہیں ۔

    ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
    (2) الحدیث الثانی
    أخرجه الطحاوي في " مشكل الآثار " (1 / 351 - 352) والنسائي في " الخصائص "(ص 28) والحاكم (3 / 140 - 141) وأحمد (4 / 263)
    من طريق محمد بن إسحاق حدثني يزيد بن محمد بن خيثم المحاربي عن محمد بن كعب القرظي عن محمد بن خيثم عن عمار بن ياسر رضي الله عنه قال: " كنت أنا وعلي رفيقين في غزوة ذي العشيرة، فلما نزلها رسول الله صلى الله عليه وسلم وأقام بها، رأينا ناسا من بني مدلج يعملون في عين لهم في نخل، فقال لي علي: يا أبا اليقظان: هل لك أن نأتي هؤلاء فننظر كيف يعملون؟ فجئناهم فنظرنا إلى عملهم ساعة، ثم غشينا النوم، فانطلقت أنا وعلي، فاضطجعنا في صور من النخل، في دقعاء من التراب فنمنا،فوالله ما أيقظنا إلا رسول الله صلى الله عليه وسلم يحركنا برجله، وقد تتربنا من تلك الدقعاء، فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم: يا أبا تراب! لما يرى
    عليه من التراب، فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم: ألا[ يا أبا تراب ! ألا أحدثكما بأشقى الناس رجلين ؟ قلنا : بلى يا رسول الله ! قال : أحيمر ثمود الذي عقر الناقة والذي يضربك على هذه ( يعني قرن علي ) حتى تبتل هذه من الدم يعني لحيته ]

    ترجمہ : سیدنا عمار بن یاسر رضی اللہ عنہ کہتے ہیں: میں اور سیدنا علی رضی اللہ عنہ غزوہ ذی العشیرہ میں رفیق تھے، جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم وہاں اترے اور قیام کیا تو ہم نے بنو مدلج قبیلے کے کچھ لوگوں کو دیکھاکہ وہ کھجوروں میں اپنے ایک چشمے میں کام کر رہے تھے۔ سیدنا علی رضی اللہ عنہ نے مجھے کہا: ابوالیقظان! کیا خیال ے اگر ہم ان کے پاس چلے جائیں اور دیکھیں کہ یہ کیسے کام کرتے ہیں؟ سو ان کے پاس چلے گئے اور کچھ دیر تک ان کا کام دیکھتے رہے، پھر ہم پر نیند غالب آ گئی۔ میں اور سیدنا علی رضی اللہ عنہ کھجوروں کے ایک جھنڈ میں چلے گئے اور مٹی میں لیٹ کر سو گئے۔ اللہ کی قسم! رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں اپنے پاؤں کے ساتھ حرکت دے کر جگایا اور ہم مٹی میں غبار آلود ہو چکے تھے۔ جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے سیدنا علی رضی اللہ عنہ پر مٹی دیکھی تو فرمایا: ”ایے ابوتراب! (‏‏‏‏ ‏‏‏‏یعنی مٹی والے)“ پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”کیا میں تمہارے لیے دو بدبخت ترین مردوں کی نشاندہی نہ کروں؟“ ہم نے کہا: اے اللہ کے رسول! کیوں نہیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”احیمر ثمودی، جس نے اونٹنی کی کونچیں کاٹ دی تھیں اور وہ آدمی جو (‏‏‏‏اے علی!) تیرے سر پر مارے گا، حتیٰ کہ تیری (‏‏‏‏داڑھی) خون سے بھیگ جائے گی۔“
    والسياق للحاكم وقال:" صحيح على شرط مسلم ". ووافقه الذهبي.
    وهو وهم فاحش منهما، فإن محمد بن خيثم ويزيد بن محمد بن خيثم لم يخرج لهما مسلم شيئا بل ولا أحد من بقية الستة إلا النسائي في الكتاب السابق " الخصائص "وفيهما جهالة، فإن الأول منهما لم يرو عنه غير القرظي، والآخر غير ابن إسحاق. والحديث قال الهيثمي (9 / 136) : " رواه أحمد والطبراني والبزارباختصار، ورجال الجميع موثوقون إلا أن التابعي لم يسمع من عمار ". لكن للحديث شواهد من حديث صهيب وجابر بن سمرة وعلي بأسانيد فيها ضعف غير حديث علي فإسناده حسن كما قال الهيثمي وقد خرجها كلها فراجعه إن شئت (9 / 136 - 137)
    (صور من النخل) أي جماعة من النخل، ولا واحد له من لفظه، ويجمع على(صيران) . (دقعاء) هو هنا التراب الدقيق على وجه الأرض.
    السلسلة الصحيحة [ جزء 4 - صفحة 324 ] ح 1743 )

    ترجمہ :
    علامہ البانیؒ فرماتے ہیں : یہ الفاظِ متن امام حاکم نے بیان کئے ہیں ،اور حاکمؒ نے اسے مسلم کی شرط پر صحیح کہا ہے اور امام ذہبیؒ نے ان کی موافقت کی ہے " لیکن اسے مسلم کی شرط پر صحیح کہنے میں دونوں جلیل القدر محدثین سے کھلا وہم ہوا ہے ،کیونکہ اس کے راوی ۔۔ محمد بن خيثم ۔۔اور۔۔يزيد بن محمد بن خيثم سے امام مسلمؒ نے کوئی روایت نہیں لی ، بلکہ حقیقت یہ ہے کہ یہ دونوں مجہول ہیں ،
    امام نورالدین ھیثمیؒ نے "مجمع الزوائد میں اس روایت کو نقل کرکے لکھا ہے کہ اسے امام احمدؒ اور امام طبرانیؒ اور امام البزارؒنے مختصراً روایت کیا ہے ،اور سب کے راوی ثقہ ہیں ،سوائے اس کے کہ جناب عمار بن یاسر صحابی سے نقل کرنے والے تابعی نے سیدنا عمار سے کچھ نہیں سنا ،
    لیکن اس روایت کے کئی شواہد ہیں جو جناب صهيب اور سیدناجابر بن سمرة اور سیدناعلي رضی اللہ عنہم اجمعین سے مروی ہیں ،ان میں جناب علی رضی اللہ عنہ کی روایت حسن درجہ کی ہے ،جیسا علامہ ہیثمیؒ نے بتایا ہے ،جبکہ باقی روایات میں کچھ نہ کچھ ضعف پایا جاتا ہے ،
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    (3) الحدیث الثالث
    ( ألا أحدثكم بأشقى الناس رجلين ؟ أحيمر ثمود الذي عقر الناقة و الذي يضربك يا علي على هذه حتى يبل منها هذه( طب ك ) عن عمار بن ياسر .
    قال الشيخ الألباني : ( صحيح ) انظر حديث رقم : 2589 في صحيح الجامع
    صحيح وضعيف الجامع الصغير وزيادته المؤلف : محمد ناصر الدين الألباني جزء 1 - صفحة 436 ] ح 4354

    (3) تیسری روایت
    جناب عمار بن یاسر رضی اللہ عنہ سے مروی : فرماتے ہیں کہ رسول کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا : تمام لوگوں میں سب سے زیادہ شقی آدمی قوم ثمود کا وہ آدمی ہے جس نے ناقۃ اللہ (معجزہ سے پیدا ہونے والی اونٹنی )کی کونچیں کاٹی تھیں ، اور دوسرا سب سے بڑا بدبخت وہ ہوگا جو تجھے ضرب لگا کر ( قتل کرے گا ) اور اشارہ سے بتایا کہ وہ بدبخت کہاں ضرب لگائے گا۔
    علامہ ناصر الالبانیؒ نے صحیح الجامع الصغیر میں اسے صحیح قرار دیا ہے ۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    (4) الحدیث الرابع
    ( فقال رسول الله صلى الله عليه و سلم : يا أبا تراب لما يرى عليه من التراب فقال رسول الله صلى الله عليه و سلم ألا أحدثكما بأشقى الناس رجلين قلنا بلى يا رسول الله قال : أحيمر ثمود الذي عقر الناقة و الذي يضر بك يا علي على هذه يعني قرنه حتى تبتل هذه من الدم يعني لحيته هذا حديث صحيح على شرط مسلم و لم يخرجاه بهذه الزيادة إنما اتفقا على حديث أبي حازم عن سهل بن سعد : قم أبا تراب تعليق الذهبي قي التلخيص : على شرط مسلم ).
    المستدرك على الصحيحين المؤلف : محمد بن عبد الله أبو عبد الله الحاكم النيسابوري الناشر : دار الكتب العلمية – بيروت الطبعة الأولى ، 1411 – 1990 تحقيق : مصطفى عبد القادر عطا عدد الأجزاء : 4 مع الكتاب : تعليقات الذهبي في التلخيص [ جزء 3 - صفحة 151 ] ح 4679)

    ترجمہ : سیدنا عمار بن یاسر رضی اللہ عنہ کہتے ہیں: میں اور سیدنا علی رضی اللہ عنہ غزوہ ذی العشیرہ میں رفیق تھے، جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم وہاں اترے اور قیام کیا تو ہم نے بنو مدلج قبیلے کے کچھ لوگوں کو دیکھاکہ وہ کھجوروں میں اپنے ایک چشمے میں کام کر رہے تھے۔ سیدنا علی رضی اللہ عنہ نے مجھے کہا: ابوالیقظان! کیا خیال ے اگر ہم ان کے پاس چلے جائیں اور دیکھیں کہ یہ کیسے کام کرتے ہیں؟ سو ان کے پاس چلے گئے اور کچھ دیر تک ان کا کام دیکھتے رہے، پھر ہم پر نیند غالب آ گئی۔ میں اور سیدنا علی رضی اللہ عنہ کھجوروں کے ایک جھنڈ میں چلے گئے اور مٹی میں لیٹ کر سو گئے۔ اللہ کی قسم! رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں اپنے پاؤں کے ساتھ حرکت دے کر جگایا اور ہم مٹی میں غبار آلود ہو چکے تھے۔ جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے سیدنا علی رضی اللہ عنہ پر مٹی دیکھی تو فرمایا: ”ایے ابوتراب! (‏‏‏‏ ‏‏‏‏یعنی مٹی والے)“ پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”کیا میں تمہارے لیے دو بدبخت ترین مردوں کی نشاندہی نہ کروں؟“ ہم نے کہا: اے اللہ کے رسول! کیوں نہیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”احیمر ثمودی، جس نے اونٹنی کی کونچیں کاٹ دی تھیں اور وہ آدمی جو (‏‏‏‏اے علی!) تیرے سر پر مارے گا، حتیٰ کہ تیری (‏‏‏‏داڑھی) خون سے بھیگ جائے گی۔“
    والسياق للحاكم وقال:" صحيح على شرط مسلم ". ووافقه الذهبي.

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    (5) الحدیث الخامس
    قال الامام أبو عبد الله محمد بن عبدا لله الحاكم النيسابوري فی المستدرك على الصحيحين ح 4590
    أخبرنا إبراهيم بن إسماعيل القارئ ، ثنا عثمان بن سعيد الدارمي ، ثنا عبد الله بن صالح ، حدثني الليث بن سعد ، أخبرني خالد بن يزيد ، عن سعيد بن أبي هلال ، عن زيد بن أسلم ، أن أبا سنان الدؤلي حدثه ، أنه عاد عليا رضي الله عنه في شكوى له أشكاها ، قال: فقلت له: لقد تخوفنا عليك يا أمير المؤمنين في شكواك هذه ، فقال: لكني والله ما تخوفت على نفسي منه ، لأني سمعت رسول الله صلى الله عليه وسلم الصادق المصدوق ، يقول: " إنك ستضرب ضربة ها هنا وضربة ها هنا - وأشار إلى صدغيه - فيسيل دمها حتى تختضب لحيتك ، ويكون صاحبها أشقاها ، كما كان عاقر الناقة أشقى ثمود "
    " هذا حديث صحيح على شرط البخاري ، ولم يخرجاه "

    دار الكتب العلمية – بيروت الطبعة الأولى ، 1411 – 1990 تحقيق : مصطفى عبد القادر عطا [ جزء 3 - صفحة 122 ]
    ترجمہ :
    ابوسنان الدؤلی کا بیان ہے کہ جب حضرت علی زخمی تھے تو یہ ان کی عیادت کے لئے گئے (ابوسنان کہتے ہیں) میں نے عرض کی: اے امیر المومنین! آپ کی اس زخمی حالت پر ہمیں بہت تشویش ہورہی ہے۔ حضرت علی نے فرمایا لیکن خدا کی قسم مجھے اپنے اوپر کوئی تشویش نہیں ہے کیونکہ صادق ومصدوق رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھے بتادیا تھا کہ تمھیں اس اس مقام پر زخم آئیں گے ،(یہ کہتے ہوئے حضرت علی رضی اللہ عنہ نے اپنی کنپٹیوں کی جانب اشارہ کیا کہ پھر وہاں سے خون بہے گا ،حتٰی کہ تیری داڑھی رنگین ہوجائے گی ، اور مجھے شہید کرنے والا اس امت کا سب سے بڑا بدبخت ہوگا ،جیسا کہ (اللہ کی اونٹنی ) کی کونچیں کاٹنے والا قوم ِثمود کا سب سے بڑا بدبخت تھا۔
    اور امام ابن کثیرؒ نے ۔۔ البداية والنهاية ۔۔ میں یہی روایت نقل کی ہے ،
    وقال الامام أبو الفداء إسماعيل بن عمر بن كثير القرشي فی البداية والنهاية ( مكتبة المعارف – بيروت )
    وقد رأيت من الطرق المتعددة خلاف ذلك وقال البيهقي بعد ذكره طرفا من هذه الطرق وقد رويناه في كتاب السنن بإسناد صحيح عن زيد بن أسلم عن أبي سنان الدؤلي عن علي في إخبار النبي صلى الله عليه وسلم بقتله حديث آخر في ذلك قال الخطيب البغدادي أخبرني علي بن القاسم البصري ثنا علي بن إسحاق المارداني أنا محمد ابن إسحاق الصنعاني ثنا إسماعيل بن أبان الوراق ثنا ناصح بن عبد الله المحلمي عن سماك عن جابر ابن سمرة قال قال رسول الله صلى الله عليه وسلم لعلي من أشقى الأولين قال عاقر الناقة قال فمن أشقى الآخرين قال الله ورسوله أعلم قال قاتلك ).

    [ جزء 7 - صفحة 326 ]
    علامہ ابن کثیر فرماتے ہیں :
    امام بیہقی نے اس روایت کے کئی طرق ذکر کرنے کے بعد فرمایا ہے کہ :
    کہ ہم نے کتاب السنن میں صحیح اسناد سے جناب علی کے قتل کے متعلق حدیث روایت کی ہے ، اس سلسلے میں دوسری حدیث امام خطیب بغدادی نے جابر بن سمرہ کے حوالہ سے یوں نقل فرمائی کہ :
    نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا : جانتے ہو گذشتہ لوگوں میں سب سے زیادہ شقی آدمی کون ؟ جناب علی نے عرض کیا قوم ثمود کا وہ آدمی جس نے ناقتہ اللہ کی کونچیں کاٹی تھیں ، نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا اور آخرین میں سب سے بڑا بدبخت کون ہے ، انہوں کہا : اللہ اور اس کا رسول بہتر جانتے ہیں ، آپ ﷺ نے فرمایا : جو اے علی ! تمہارا قاتل ۔

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    كشف الأستار عن زوائد البزار على الكتب الستة تأليف الحافظ نور الدين بن أبي بكر الهيثمي ص 204 ح 2572 ) کے حاشیہ میں ہے :
    ( قال الهيثمي : رواه أحمد وأبو يعلى ورجاله رجال الصحيح ,غير عبد الله بن سبيع ,وهو ثقة , ورواه البزار بإسناد حسن ج9 ص 137 ).
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    مسند امام احمد بن حنبل ؒ میں ہے :
    حدثنا علي بن بحر، حدثنا عيسى بن يونس، حدثنا محمد بن إسحاق، حدثني يزيد بن محمد بن خثيم المحاربي، عن محمد بن كعب القرظي، عن محمد بن خثيم أبي يزيد، عن عمار بن ياسر، قال: كنت أنا وعلي رفيقين في غزوة ذات العشيرة، (1) فلما نزلها رسول الله صلى الله عليه وسلم، وأقام بها، رأينا أناسا من بني مدلج يعملون في عين لهم في نخل، فقال لي علي: يا أبا اليقظان، هل لك أن نأتي هؤلاء، فننظر كيف يعملون؟
    فجئناهم، فنظرنا إلى عملهم ساعة، ثم غشينا النوم، فانطلقت أنا وعلي فاضطجعنا في صور من النخل في دقعاء من التراب، فنمنا، فوالله ما أهبنا إلا رسول الله صلى الله عليه وسلم يحركنا برجله، وقد تتربنا من تلك الدقعاء، فيومئذ قال رسول الله صلى الله عليه وسلم لعلي: " يا أبا تراب " لما يرى عليه من التراب، قال: " ألا أحدثكما بأشقى الناس رجلين؟ " قلنا: بلى يا رسول الله، قال: " أحيمر ثمود الذي عقر الناقة، والذي يضربك يا علي على هذه، يعني قرنه، حتى تبل منه هذه، يعني لحيته، " (1)

    جناب عمار بن یاسر (رضی اللہ عنہ) سے مروی ہے کہ ایک مرتبہ غزوہ ذات العشیرہ میں میں اور حضرت علی (رضی اللہ عنہ) رفیق سفر تھے، جب نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے ایک مقام پر پڑاؤ ڈالا اور وہاں قیام فرمایا تو ہم نے بنی مدلج کے کچھ لوگوں کو دیکھا جو اپنے باغات کے چشموں میں کام کر رہے تھے سیدنا علی (رضی اللہ عنہ) مجھ سے کہنے لگے اے ابوالیقظان ! آؤ، ان لوگوں کے پاس چل کر دیکھتے ہیں کہ یہ کس طرح کام کرتے ہیں ؟ چنانچہ ہم ان کے قریب چلے گئے تھوڑی دیر تک ان کا کام دیکھا پھر ہمیں نیند کے جھونکے آنے لگے چنانچہ ہم واپس آگئے اور ایک باغ میں مٹی کے اوپر ہی لیٹ گئے۔ ہم اس طرح بے خبر ہو کر سوئے کہ پھر نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) ہی نے آکر اٹھایا نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) ہمیں اپنے پاؤں سے ہلا رہے تھے اور ہم اس مٹی میں لت پت ہوچکے تھے اس دن نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے سیدنا علی (رضی اللہ عنہ) سے فرمایا ابوتراب ! کیونکہ ان پر تراب (مٹی) زیادہ تھی ،
    پھر نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا کیا میں تمہیں تمام لوگوں میں سب سے زیادہ شقی دو آدمیوں کے متعلق نہ بتاؤں ؟ ہم نے عرض کیا کیوں نہیں یا رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) ! نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا ایک تو قوم ثمود کا وہ سرخ و سپید آدمی جس نے ناقتہ اللہ کی کونچیں کاٹی تھیں اور دوسرا وہ آدمی جو اے علی ! تمہارے سر پر وار کر کے تمہاری ڈاڑھی کو خون سے تر کردے گا۔

    __________
    علامہ شعیب الارناؤط لکھتے ہیں
    یہ روایت "حسن لغیرہ " ہے ،یعنی یہاں جس سند سے مروی ہے اس میں تو ضعف کی کئی علتیں ہیں ،
    حسن لغيره، دون قوله: "يا أبا تراب" فصحيح من قصة أخرى، كما سيرد، وهذا إسناد ضعيف، فيه ثلاث علل: الجهالة، والانقطاع، والتفرد. أما الجهالة. فجهالة محمد بن خثيم أبي يزيد، تفرد بالرواية عنه محمد بن كعب القرظي، ولم يؤثر توثيقه عن غير ابن حبان على عادته في توثيق المجاهيل، وقال الذهبي: لا يعرف، وأما الانقطاع فقد ذكر البخاري هذا الإسناد في "تاريخه الكبير" 1/71، وقال: وهذا إسناد لا يعرف سماع يزيد من محمد، ولا محمد بن كعب من ابن خثيم، ولا ابن خثيم من عمار. قلنا: قد تكلف الحافظ في إثبات الاتصال بين هؤلاء الرواة (في ترجمة محمد بن خثيم في "تهذيب التهذيب") لكنه لم يثبت الاتصال بين يزيد بن محمد بن خثيم، ومحمد بن كعب القرظي، فقد ساق الإسناد بالعنعنة بينهما، فتبقى علة الانقطاع قائمة.
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

     
    • زبردست زبردست x 1
    • معلوماتی معلوماتی x 1
    • لسٹ
  7. ‏ستمبر 05، 2018 #7
    محمد طارق عبداللہ

    محمد طارق عبداللہ سینئر رکن
    جگہ:
    ممبئی - مہاراشٹرا
    شمولیت:
    ‏ستمبر 21، 2015
    پیغامات:
    2,329
    موصول شکریہ جات:
    712
    تمغے کے پوائنٹ:
    224

    جزاک اللہ خیرا کثیرا
    اللہ آپکے علم و عمل میں برکتیں ہی برکتیں عطاء فرمائے ۔ آمین
     
  8. ‏ستمبر 05، 2018 #8
    عامر عدنان

    عامر عدنان مشہور رکن
    جگہ:
    انڈیا،بنارس
    شمولیت:
    ‏جون 22، 2015
    پیغامات:
    821
    موصول شکریہ جات:
    236
    تمغے کے پوائنٹ:
    118

    جزاک اللہ خیرا یا شیخ محترم
    اللہ آپ کے علم و عمل میں مزید اضافہ فرمائیں اور دین کی خوب خدمت لے آپ سے ۔ آمین
     
    • شکریہ شکریہ x 1
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ

اس صفحے کو مشتہر کریں