1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

نماز جنازہ کا مفصل طریقہ

'احکام ومسائل' میں موضوعات آغاز کردہ از islamkingdom_urdu, ‏ستمبر 18، 2018۔

  1. ‏ستمبر 18، 2018 #1
    islamkingdom_urdu

    islamkingdom_urdu مبتدی
    شمولیت:
    ‏ستمبر 06، 2018
    پیغامات:
    17
    موصول شکریہ جات:
    1
    تمغے کے پوائنٹ:
    7

    نماز جنازہ کے ارکان


    1۔ قدرت کے ہوتے ہوئے قیام۔

    2۔ چار تکبیریں۔

    3۔ فاتحہ کی قراءت

    4۔ نبی ﷺ پر درود بھیجنا

    5۔ میّت کے لیے دعا۔

    6۔ ترتیب قائم رکھنا۔

    7۔ سلام پھیرنا

    نماز جنازہ کی سنتیں۔

    1۔ قراءت سے پہلے استغفار کرنا۔

    2۔ اپنے لیے اور مسلمانوں کے لیے دعا مانگنا۔

    3۔ آہستہ قراءت کرنا۔

    4۔ زیادہ صفیں بنانا، تین یا اس سے زیادہ۔

    نماز جنازہ کا طریقہ


    اگر میّت مرد ہو تو امام میّت کے سر کے پاس کھڑا ہو اور اگر میّت عورت ہو تو میّت کے درمیان میں کھڑا ہو اور مقتدی امام کے پیچھے باقی نمازوں کی طرح کھڑے ہوں، پھر چار تکبیریں کہیں انکی تفصیل آنیوالی ہے۔ :

    1۔ پہلے تکبیر تحریمہ کہے اور اعوذ باللہ اور بسم اللہ پڑھے۔ اور دعا استفتاح نہ پڑھے پھر فاتحہ کی قراءت کرے۔

    2۔ دوسری تکبیر کہے اور نبی ﷺ پر درود بھیجے جیسے آخری تشھد میں پڑھا جاتا ہے۔

    3۔ تیسری تکبیر کہے اور اپنے لیے میّت کیلئے اور تمام مسلمانوں کے لیے دعا کرے اور دعا یہ ہے
    "اللَّهُمَّ اغْفِرْ لَهُ وَارْحَمْهُ، وَعَافِهِ وَاعْفُ عَنْهُ، وَأَكْرِمْ نُزُلَهُ، وَوَسِّعْ مُدْخَلَهُ، وَاغْسِلْهُ بالْمَاءِ وَالثَّلْجِ وَالْبَرَدِ، وَنَقِّهِ مِنَ الْخَطَايَا كَمَا نَقَّيْتَ الثَّوْبَ الْأَبْيضَ مِنَ الدَّنَسِ، وَأَبْدِلْهُ دَارًا خَيْرًا مِنْ دَارِهِ، وَأَهْلًا خَيْرًا مِنْ أَهْلِهِ، وَزَوْجًا خَيْرًا مِنْ زَوْجِهِ، وَأَدْخِلْهُ الْجَنَّةَ وَأَعِذْهُ مِنْ عَذَابِ الْقَبْرِ، أَوْ مِنْ عَذَابِ النَّارِ"[اس حدیث کو امام مسلم نے روایت کیا ہے]


    اور اگر میّت عورت ہو تو ضمیر مؤنث کو دعا میں لائے اور اگر میّت بچہ ہو یا سقط (پورا ہونے سے پہلے گر گیا) تو یہ دعا پڑھے
    " اللهم اجعله ذخرًا لوالديه، وفَرَطًا [الفرط: پہلا اور آگے] ، وأجرًا، وشفيعًا مجابًا "[اس حدیث کو امام بخاری نے روایت کیا ہے]


    4۔ چوتھی تکبیر کے بعد تھوڑا خاموش رہے پھراپنے دائیں جانب ایک سلام پھیر دے یا دو سلام۔


    میّت کو اُٹھانا، اسکے ساتھ چلنا اور اس کو دفن کرنا۔
    جب نماز جنازہ ختم ہو جائے تو سنت یہ ہے کہ جلدی سے میّت کو اسکی قبر کی طرف اٹھایا جائے۔اور پیچھے چلنے والوں کے لیے مستحب یہ ہے کہ وہ بھی جنازہ اٹھانے میں شریک ہوں۔

    اور میّت کو قبر میں اتارنے والے کے لیے مسنون ہے کہ یہ پڑھے
    " بسم الله، وعلى ملة رسول الله "[اس حدیث کو امام ترمذی نے روایت کیا ہے]


    اور اسکو لحد میں دائیں پہلو پر لٹائے اور اسکا چہرہ قبلہ رخ کر دے پھر کفن کی گرہ کھول دے۔پھر مٹی کے ساتھ قبر کے سوراخ بند کردے۔

    اور دفن میں حاضر ہونے والے کے لیے مسنون یہ ہے کہ وہ اپنے ہاتھوں میں تین دفعہ مٹی لے اور قبر پر ڈال دے پھر قبر کو مٹی کے ساتھ ڈھانپ دیا جائے اور قبر کو زمین سے ایک بالشت کی مقداربلند کیا جائے اور اس پر کنکریاں اور پتھر رکھ دیے جائیں اور پانی چھڑک دیا جائے اور قبر کے کسی ایک طرف پتھر رکھنے میں بھی کوئی حرج نہیں ہے یا دونوں طرف تاکہ قبر کا پتہ چل سکے۔

    جنازہ اٹھانےمیں شرکت کرنا۔لحداپنی ہتھیلیوں کو مٹی سے بھرے اور قبر پر ڈال دے۔قبر پر نشانی لگانا۔
    تعزیّت کرنا۔
    میت کے اہل و عیال چونکہ غم زدہ ہوتے ہیں انکے پاس تعزیت کے لیے جانا مستحب ہے تاکہ ان کے غم میں شریک ہو کر ان کے غم کو ہلکا کیا جاسکے اور انکو صبر کی تلقین کی جائے۔

    اور تعزیت کسی بھی کلمات سے کی جا سکتی ہے جیسا کہ وہ یہ کہے کہ اللہ ہی کا تھا جو اس نے لے لیا اور اللہ ہی کے لیےہے جو وہ عنایت کرتا ہے۔
    " اسکے ہاں ہر چیز کے لیے ایک وقت مقرر ہے۔ پس آپ صبر کریں اور اپنا احتساب کریں "۔ [اس حدیث کو امام بخاری نے روایت کیا ہے]


    اور اگر کہے " أعظم الله أجرك، وأحسن عزاءك وغفر لميتك "وغیرہ۔

    جنازوں کے ساتھ عورتوں کا نکلنا

    جنازوں کےساتھ عورتوں کا نکلنا غیر شرعی امر ہے کیونکہ أُمِّ عَطِيَّةَ -رضي الله عنها سے مروی ہے فرماتی ہیں " ہمیں جنازوں کے پیچھے چلنے سے منع کیا گیا ہے "[ اس حدیث کو امام ابن ماجہ نے روایت کیا ہے]
     
  2. ‏جون 17، 2019 #2
    حبیب اللہ

    حبیب اللہ مبتدی
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏مارچ 28، 2017
    پیغامات:
    7
    موصول شکریہ جات:
    3
    تمغے کے پوائنٹ:
    18

    ۴۔آہستہ آواز سے جنازہ پڑھنا
    آپ نے 4 نمبر پر آہستہ آواز میں جنازہ کا تو لکھ دیا مگر یہ نہیں بتایا کہ جہراً بھی پڑھ سکتے ہیں کہ نہیں کیونکہ نبی کریم ﷺ سے جہراً بھی نماز جنازہ ثابت ہے۔
    جیسا کہ حدیث مبارکہ میں آیا ہے کہ
    پہلی دلیل:
    أَخْبَرَنَا الْهَيْثَمُ بْنُ أَيُّوبَ، قَالَ: حَدَّثَنَا إِبْرَاهِيمُ وَهُوَ ابْنُ سَعْدٍ، قَالَ: حَدَّثَنَا أَبِي، عَنْ طَلْحَةَ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَوْفٍ، قَالَ: صَلَّيْتُ خَلْفَ ابْنِ عَبَّاسٍ عَلَى جَنَازَةٍ، فَقَرَأَ بِفَاتِحَةِ الْكِتَابِ، وَسُورَةٍ وَجَهَرَ حَتَّى أَسْمَعَنَا، فَلَمَّا فَرَغَ أَخَذْتُ بِيَدِهِ، فَسَأَلْتُهُ فَقَالَ: «سُنَّةٌ وَحَقٌّ»

    حضرت طلحہ بن عبداللہ بن عوف بیان کرتے ہیں کہ میں نے حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہما کے پیچھے ایک میت کا جنازہ پڑھا۔ انھوں نے سورۂ فاتحہ اور ایک اور سورت پڑھی اور (دونوں) بلند آواز سے پڑھیں حتی کہ ہمیں سنائی دیں۔ جب وہ فارغ ہوئے تو میں نے ان کا ہاتھ پکڑا اور ان سے اس بارے میں پوچھا تو انھوں نے فرمایا: یہ سنت اور حق ہے۔
    سنن نسائی حدیث نمبر: 1989
    دوسری دلیل:

    عن عوف بن مالک قال سمعت النبی​
    ﷺ​
    علی جنازه یقول اللهم اغفرله وارحمه و عافه واعف عنه واکرم نذله ووسع مدخله واغسله بماء و ثلج و برد و نقه من الخطایا کما ینقی الثوب الابیض من الدنس وابدله دارا خیر من داره و اهلا خیر من اهله و زوجا خیر من زوجه وقه فتنة القبر و عذاب النار قال عوف فتمنیت ان لو کنت انا المیت لدعاء رسول اللہ​
    ﷺ​
    لذالک المیت۔ (مختصر صحیح مسلم للالبانی رقم الحدیث ​
    ۴۷۷​
    )​


    حضرت عوفؓ بن مالک سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺ کو میں نے ایک میت پر جنازہ کے دوران یہ دعا پڑھتے ہوئے سنا۔ ‘‘ اے اللہ ! بخش دے۔
    اس پر رحم فرما۔ اسے معاف کردے اور اسے عافیت سے۔ اس کی مہمان نوازی فرما اور اسے وسیع ٹھکانہ
    عطا فرما اور اسے گناہوں سے پانی کی مختلف شکلو ں (ماء ’ثلج ’برد وغیرہ) سے دھو دے اور اس کے گناہوں کو اس طرح صاف کردے
    جس طرح سفید کپڑے کو میل سے صاف کیا جاتاہے۔اسے آخرت میں ایسا گھر نصیب فرماجو دنیا کے گھر سے بہتر ہو۔
    ا سے دنیا سے بہتر اہل خانہ عطافرما اور دنیا سے بہتر جوڑا عطاکر۔ اسے قبر اور جہنم کے عذاب سے بچا
    حضرت عوف کہتےہیں کہ کہ یہ پیاری دعائیں سن کرمجھے رشک آیا کہ کاش آج میں اس کی میت کی جگہ ہوتا اورمجھ پر حضورﷺ یہ دعائیں پڑھتے۔

    میں اسی پر اکتفا کرتا ہوں حالانکہ اس پر اور بھی دلائل ہیں۔
     
  3. ‏جون 21، 2019 #3
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    6,362
    موصول شکریہ جات:
    2,395
    تمغے کے پوائنٹ:
    791

    جنازہ کے آگے یا پیچھے بلند آواز سے ذکر وغیرہ کرنا

    تحریر: غلام مصطفےٰ ظہیر امن پوری
    جنازہ کے آگے یا پیچھے بآوازِ بلند ذکر وغیرہ کرنا “قبیح بدعت” ہے ،قرآن و حدیث میں اس کی کوئی اصل نہیں ہے ، یہ رسول اللہ ﷺ ، خلفائے راشدین ، صحابہ کرام ، تابعینِ عظام ، ائمہ دین اور سلف صالحین سے ثابت نہیں ہے ۔
    اس کے باوجود “قبوری فرقہ” اس کو جائز سمجھتا ہے ، جنازہ کے آگے یا پیچھے بآوازِ بلند ذکر یا قرآن خوانی کرنا نیکی کا کام ہوتا یا شریعت کی روسے میت کو کوئی فائدہ پہنچتا تو صحابہ کرام اور سلف صالحین جو سب سے بڑھ کر قرآن و حدیث کے معانی ، مفاہیم و مطالب اور تقاضوں کو سمجھنے والے اوران کے مطابق زندگیوں کو ڈھالنے والے تھے، وہ ضرور اس کا اہتمام کرتے۔
    چاروں اماموں سے بھی اس کا جواز یا استحباب منقول نہیں ہے ، احمد یار خان نعیمی گجراتی لکھتے ہیں:
    “ہم مسائلِ شرعیہ میں امام صاحب (ابوحنیفہ) کا قول و فعل اپنے لیے دلیل سمجھتے ہیں اور دلائلِ شرعیہ پر نظر نہیں کرتے ۔” (جاء الحق از احمد یار خان بریلوی : ۱۵/۱)
    اب بریلویوں پر لازم ہے کہ وہ اپنے امام ابوحنیفہ سے باسندِ صحیح اس کا استحباب ثابت کریں ، ورنہ ماننا پڑے گا کہ اس فرقہ کا امام ابوحنیفہ سے کوئی تعلق نہیں اور “اجلی الاعلام بان الفتویٰ مطلقا علی قول الامام” کے نام سے رسالے لکھنے والوں کو شعرانی جو انتہائی گمراہ کن انسا ن تھا ، اس کے خلافِ شرع اقوال پیش کرنے سے اجتناب کرنا چاہیے۔
    واضح رہے کہ بعض حنفیوں اماموں نے جنازہ کے ساتھ بآوازِ بلند ذکر کے عدمِ جواز اور بدعتِ قبیحہ ہونے کی صراحت بیان کی ہے :
    ۱٭ طحطاوی حنفی لکھتے ہیں: ولا یرفع صوتہ بالقرائۃ ولا بالذّکر، ولا یغتر بکثرۃ من یفعل ذلک، وامّا ما یفعلہ الجھّال فی القرائۃ علی الجنازۃ من رفع الصّوت و التّمطیط فیہ فلا یجوز بالاجماع، ولا یسع أحدا یقدر علی انکارہ أن یسکت عنہ ولا ینکر علیہ، وعلیھم الصّمت و نحو ذلک کالأذکار المتعارفۃ بدعۃ قبیحۃ.
    “جنازہ کے ساتھ قراءت اور ذکر کے وقت آواز بلند نہ کرے ، جو لوگ یہ بلند آواز سے ذکر کرتے ہیں، ان کی کثرت دیکھ کر دھوکے میں نہ آجائے ، جنازہ کے ساتھ جاہل لوگ اونچی آواز سے اور کھینچ کھینچ کر کرتے ہیں ، یہ بالاجماع جائز نہیں ہے ، کسی انسان کے لیے جائز نہیں کہ اس کے انکار پر قدرت و طاقت رکھتا ہو ، پھر خاموش رہے اور اس پر انکار نہ کرے ، لوگوں پر خاموشی لازم ہے ، اسی طرح جنازہ کے ساتھ اذکارِ متعارفہ بدعتِ قبیحہ ہیں۔” (حاشیۃ الطحطاوی ::۳۳۲)
    ۲٭ ترکمانی حنفی لکھتے ہیں: ومن البدع ما یفعل بین یدی المیّت من قرائۃ و ذکر و حمل خبز و خرفان، الکلّ لا یرضی الواحد الدّیّان.
    “میت کے آگے قراءت و ذکر کرنا، روٹیاں اور بکری کا بچہ اٹھانا، بدعت کے کاموں میں سے ہے، ان ساری چیزوں پر کوئی ایک بھی دیندار انسان راضی نہیں ہوسکتا ۔” (کتاب اللمع فی الحوادث و البدع از ترکمانی” ۲۳۲)
    نیز لکھتے ہیں: وکذلک الذّکر جھرا یکرہ فعلہ خلف الجنازۃ ، ولیس فیہ أجر للذّاکر ولا للمیّت.
    “اسی طرح جنازہ کے پیچھے اونچی آواز سے ذکر کرنا مکروہ ہے ، اس میں ذاکر (ذکر کرنے والے) اور میت کے لئے کوئی اجر نہیں ہے ۔” (کتاب اللمع: ۲۱۶)
    ۳٭ حنفی مذہب کی معتبر ترین کتابوں میں لکھا ہے:
    “جنازے کے ساتھ جانے والوں کو خاموش رہنا واجب ہے اور بلند آواز ذکر کرنا اور قرآن پڑھنا مکروہ ہے ،اگر اللہ کا ذکر کرنا چاہیں تو اپنے دل میں کریں۔” (فتاویٰ عالمگیری: ۱۶۲/۱ ، فتاویٰ قاضی خان : ۹۲/۱، بحوالہ جاء الحق از نعیمی: ۴۰۸/۱)
    ایک حنفی امام لکھتے ہیں: رفع الصّوت بالذّکر وقرائۃ القرآن وقولھم کلّ حیّ یموت و نحو ذلک خلف الجنازۃ بدعۃ.
    “جنازہ کےساتھ بآوازِ بلند ذکر اور قراءتِ قرآن اور لوگوں کا یہ کہنا کہ ہر زندہ مرے گا، اور اس طرح کی باتیں بدعت ہیں۔” (فتاویٰ سراجیہ: ۲۳)
    محمد رکن دین بریلوی لکھتے ہیں:
    “سوال : جولوگ جنازہ کے ہمراہ ہوں ان کوکلمہ طیبہ راستہ میں پڑھنا کیسا ہے ؟
    جواب: پکار کر پڑھنا تو مکروہ ہے ، دل میں اگر پڑھیں تو مضائقہ نہیں ، بہتر خاموشی ہے ۔(عالمگیری)” (رکن دین : ۲۰۶)
    ایک شبہ اور اس کا ازالہ:

    احمد یار نعیمی گجراتی صاحب لکھتے ہیں:
    “جن فقہاء نے میت کے ساتھ ذکر بالجہر کو مکروہ فرمایا، ان کی مراد مکروہ تنزیہی ہے ۔” (جاء الحق ؛ ۴۱۰/۱)
    جناب بریلوی صاحب دھینگا مشتی کرتے ہوئے اپنے “فقہاء ” کی عبارت کا مفہوم بگاڑنے میں سرگرداں ہیں کہ مکروہ سے مراد مکروہِ تنزیہی ہے ، جبکہ بعض”فقہاء” نے اس کو بدعتِ قبیحہ کہا ہے، ابن نجیم حنفی ج کو ابوحنیفہ ثانی کے لقب سے ملقب کیا گیا ہے ، وہ لکھتے ہیں:
    وینبغی لمن تبع الجنازۃ أن یطیل الصّمت ویکرہ رفع الصّوت بالذّکر وقرائۃ القرآن وغیرھما فی الجنازۃ و الکراھۃ فیھا کراھۃ تحریم.
    “جنازہ کے پیچھے چلنے والوں کے لئے مناسب یہ ہے کہ لمبی خاموشی اختیار کریں ، جنازہ کے ساتھ اونچی آواز سے ذکر اور قراءتِ قرآن وغیرہ مکروہ ہے ، اس میں کراہت تحریمی ہے ۔” (البحر الرائق : ۱۹۹/۲)
    ثابت ہوا کہ “مفتی ” صاحب کی توجیہ باطل ہے اور محض بدعت کو کمزور سہارا دینے والی بات ہے۔
    حافظ نووی رحمہ اللہ لکھتے ہیں: “جان لو ! درست اور مختار مذہب یہ ہے کہ جس پرسلف رضی اللہ عنہم کا عمل رہا ہے کہ جنازہ کے ساتھ چلتے وقت سکوت اختیار کیا جائے ، قرآءت اور ذکر وغیرہ میں آواز بلند نہ کی جائے ، اس میں حکمت ظاہر ہے کہ خاموشی انسان کے دل کو مطمئن اور جنازے کے متعلق چیزوں کے بارے میں اس کی فکر کو جمع کردیتی ہے ، اس حالت سے یہی مطلوب ہے اور یہی حق بھی ہے ، اس کی مخالفت کرنے والوں کی کثرت دیکھ کر دھوکہ مت کھا۔” (الاذکار از نووی : ۱۳۶)
    اسی طرح جب حافظ نووی سے سوال کیا گیا کہ دمشق میں بعض جاہل جنازے پر بری طرح کھینچ کھینچ کر ، حد سے زیادہ سر اور کلمات سے زائد حروف داخل کرکے قراءت کرتے ہیں، کیا ایساکرنا مذموم چیز ہے یا نہیں ؟
    حافظ نووی جواب دیتے ہیں: “یہ واضح برائی اور انتہائی قابلِ مذمت چیز ہے ، اس کے حرام ہونے پر علماء کا اجماع ہے ، ماوردی اور دوسرے کئی ایک اماموں نے اس کے حرام ہونے پر اجماع نقل کیا ہے ، حاکمِ وقت اس فعل پر ان کو ڈانٹے اور تعزیرقائم کرے اور اس فعل سے توبہ کرائے ، ہر مکلّف جو اس کے انکار پر قدرت و طاقت رکھتا ہے ، اس پر انکار لازم ہے ۔” (فتاویٰ النووی : ۳۶)
    ۵٭ حافظ ابن تیمیہ رحمہ اللہ لکھتے ہیں: “جنازے کے ساتھ بآوازِ بلند ذکروغیرہ کرنا، یہ اہل کتاب اور عجمیوں کی عادت تھی ،لیکن اس امت کے بہت سارے لوگ بھی اس میں مبتلا ہوگئے ہیں۔” (اقتضاء الصراط المستقیم : ۳۱۶/۱)
    نیز فرماتے ہیں: “جنازے کے ساتھ آواز بلند کرنا بالاتفاق مکروہ ہے ، خواہ قراءت ہی ہو۔” (الاختیارات الفقھیہ:۸۸)
    ۶٭ ابن النحاس (م ۸۱۴ ھ ) لکھتے ہیں: “اگر قراءت میں کھینچاؤ اور الحان نہ بھی ہو ، پھر بھی یہ مکروہ بدعت ہے ،کیونکہ نبیٔ کریم ﷺ اور سلف میں سے کسی انسان سے ایسا کرنا ثابت نہیں ہے ، اسی طرح جنازے کے ساتھ ذکر بھی مکروہ بدعت ہے ۔” (تنبیہ الغافلین عن اعمال الجاھلین و تحذیر السالکین من افعال الھالکین: ۴۸۱)
    اہل بدعت کے دلائل

    ۱٭ اہل بدعت کا عمومی دلائل سے اس کا ثبوت پیش کرنا صحیح نہیں ہے ، کیونکہ بدعات یا تو عمومی دلائل کے تحت آتی ہی نہیں یا ان سے مستثنیٰ ہوتی ہے ۔
    ۲٭ سیدنا ابن عمر رضی اللہ عنہما سے روایت ہے ، کہتے ہیں:
    لم یکن یسمع من رسول اللہ ﷺ وھو یمشی خلف الجنازۃ الا قول لا الہ الا اللہ مبدیا وراجعا.
    “جب رسول اللہ ﷺ جنازے کے پیچھے چلنا شروع کرتے اور جب واپس لوٹتے تو ابن عمر رضی اللہ عنہما آپ سے لا الہ الا اللہ کے سوا کچھ بھی نہیں سنتے تھے۔” (الکامل لابن عدی : ۲۶۹/۱ ، ۱۶۰۸/۴)
    تبصرہ:
    یہ روایت موضوع (من گھڑت) ہے ، اس کے راوی ابراہیم بن احمد الحرانی کے بارے میں امام ابوعروبہ فرماتے ہیں: کان یضع الحدیث. “یہ حدیثیں گھڑتا تھا ۔” (الکامل لابن عدی : ۲۶۹/۱)
    اس کے بارے میں تعدیل ثابت نہیں ہے لہٰذا ایسی موضوع (من گھڑت) روایت بدعت کے ثبوت میں پیش کرنا سراسر دھوکہ اور ظلم ہے ۔
    احمد یار نعیمی لکھتے ہیں: “اگر یہ حدیث ضعیف بھی ہو ، پھر بھی فضائلِ اعمال میں معتبر ہے ۔” (جاء الحق: ۴۰۴/۱)
    اولاً : یہ روایت من گھڑت ہے۔ ثانیاً: اس میں جنازے کے ساتھ بآوازِ بلند اجتماعی ذکر کا وجود نہیں ملتا ۔ ثالثاً: اس مسئلہ کا تعلق احکام کے ساتھ ہے نہ کہ فضائل کے ساتھ، چونکہ اختلاف اس بارے میں ہے کہ جنازے کے آگے یا پیچھے ذکر کرنا جائز ہے یا ناجائز ، نہ کہ اس کی فضیلت کے بارے میں۔
    ۳٭ عن عبداللہ بن محمد بن وھب، حدّثنی یحیی بن محمد بن صالح ، حدّثنا خالد بن مسلم القرشی ، حدّثنا یحیی بن أیوب عن یزید بن أبی حبیب عن سنان بن سعد عن أنس ، قال ؛ قال رسول اللہ ﷺ ؛ أکثروا فی الجنازۃ قول لا الہ اّلا اللہ.
    “سیدنا انس عنہ سے روایت ہے کہ رسولِ کریم ﷺ نے فرمایا، جنازے کے ساتھ کثرت سے لاالہ الا اللہ پڑھو۔” (مسند الدیلمی : رضی اللہ۳۲/۱/۱، بحوالہ سلسلۃ الاحادیث الضعیفۃ: ۲۸۸/۱)
    تبصرہ:
    یہ روایت “ضعیف” ہے ، اس کے بعض راوی نامعلوم و مجہول ہیں ، محدث البانی رحمہ اللہ لکھتے ہیں کہ یحییٰ بن ایوب سے نیچے راویوں کا مجھے ذکر نہیں مل سکا۔
    مجہول اور نامعلوم راویوں کی روایت سے استدلال اہل حق کو زیب نہیں دیتا ، دوسری بات یہ ہے کہ اس روایت میں ذکر بالجہر کا وجود تک نہیں ملتا۔
    تنبیہ:
    جناب اشرف علی تھانوی دیوبندی کہتے ہیں:
    “ہمارے حضرت حاجی (امداد اللہ) صاحب قبلہ نے انتقال کے وقت مولوی اسماعیل صاحب سے فرمایا تھا کہ میرا جی چاہتا ہے کہ میرے جنازے کے ساتھ ذکر بالجہر کیا جائے ، انہوں نے کہا ، حضرت یہ تو نامناسب معلوم ہوتا ہے ، ایک نئی بات ہے ، جس کو فقہاء نے اس خیال سے کہ عوام سنت نہ سمجھ لیں ، پسند نہیں فرمایا ، فرمایا بہت اچھا ، جو مرضی ہو ، خیر بات آئی گئی ہو ئی اور کسی کو اس کی خبر بھی نہیں ہوئی ، کیونکہ خلوت میں گفتگو ہوئی تھی، مگر جب جنازہ اٹھا تو ایک عرب کی زبان سے نکلا، اذکروا اللہ بس پھر کیا تھا، سب لوگ باساختہ ذکر کرنے لگے اور لا الہ الا اللہ کی صدائیں برابر قبرستان میں بلند رہیں ، بعد میں مولوی اسماعیل صاحب اس گفتگو کو نقل کرکے کہتے ہیں کہ ہم نے حضرت (امداد اللہ) کو تو منوا دیا ، مگر اللہ تعالیٰ کو کیونکر منوائیں، اللہ تعالیٰ نے حضرت کی تمنا پوری کردی ۔” (قصص الاکابراز تھانوی : ۱۱۹، الافاضات الیومیۃ از تھانوی : ۲۷۷/۳، امداد المشتاق از تھانوی : ۲۰۴)
    اس واقعہ سے مندرجہ ذیل باتیں ثابت ہوئیں:
    ۱٭ دیوبندیوں کے عقیدہ وحدت الوجود کے امام اور ان کے پیرو مرشد حاجی امداداللہ کے نزدیک بدعت اور بےاصل کام کی خواہش کرنا بھی صحیح ہے اور خلافِ شرع کام کی وصیت بھی۔
    ۲٭ جنازے کے آگے یا پیچھے بآوازِ بلند ذکر وغیرہ کی بدعت پر عمل کرنے میں تمام تقلید پرست متفق ہیں ، حالانکہ میت کے ساتھ اونچی آواز سے پڑھنا ہندؤوں کی رسمِ بد ہے ۔
    ۳٭ یہ لوگ اللہ تعالیٰ کی ذات پر بھی جھوٹ بولنے سے باز نہیں آتے ۔
    الحاصل:
    جناز ےکے آگے یا پیچھے بآوازِ بلند ذکر اور نعت خوانی وغیرہ بدعتِ قبیحہ، سیئہ اور مذمومہ ہے۔
    ٭٭٭٭٭٭
    شکریہ
    سیدنا نعمان بن بشیر رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا :
    من لم یشکر القلیل لم یشکر الکثیر ، ومن لم یشکر الناس لم یشکر اللہ عزوجل، والتحدیث بنعمۃ اللہ شکر ، وترکھا کفر، والجماعۃ رحمۃ ، والفرقۃ عذاب.
    “جو تھوڑی نعمت کا شکریہ ادانہیں کرتا، وہ زیادہ کابھی شکریہ ادا نہیں کرتا، جو لوگوں کا شکریہ ادا نہیں کرتا، وہ اللہ تعالیٰ کا بھی شکریہ ادا نہیں کرتا، اللہ کی نعمت دوسرے سے بیان کرنا شکریہ ہے اور ایسانہ کرنا کفرانِ نعمت ہے ، جماعت رحمت ہے اور تفرقہ بازی عذاب ہے ۔” (مسند الامام احمد : ۲۸۷/۴، ۳۷۵، زوائد مسند الامام احمد : ۳۷۵/۴ ، السنۃ لا بن ابی عاصم : ۹۳، الشکر لا بن ابی الدنیا: ۶۴، وسندہ حسن)
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں