1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

نماز میں ہاتھ باندھنے کا سنت طریقہ کیا ہے؟

'منہج' میں موضوعات آغاز کردہ از جی مرشد جی, ‏اکتوبر 12، 2017۔

  1. ‏نومبر 11، 2017 #11
    جی مرشد جی

    جی مرشد جی رکن
    شمولیت:
    ‏ستمبر 21، 2017
    پیغامات:
    551
    موصول شکریہ جات:
    14
    تمغے کے پوائنٹ:
    61

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ
    مصنف ابن ابی شیبہ: نسخۃ الشیخ محمد عابد السندی: حدیث نمبر 3959

    حدثنا وکیع عن موسیٰ بن عمیر عن علقمہ بن وائل بن حجر عن ابیہ قال رأیت النبی صلی اللہ علیہ وسلم وضع یمینہ علیٰ شمالہ فی الصلاۃ تحت السرۃ۔
    رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نماز میں دایاں ہاتھ بائیں پر ناف کے نیچے رکھتے۔​
    الآثار لمحمد ابن الحسن - (ج 1 / ص 158)
    قال محمد : ويضع بطن كفه الأيمن على رسغه الأيسر تحت السرة فيكون الرسغ في وسط الكف

    محمد ابن الحسن (ابو حنیفہ رحمہ اللہ کے شاگرد) فرماتے ہیں کہ دائیں ہاتھ کی ہتھیلی کے اندر کا حصہ بائیں گٹ کے اوپر ناف کے نیچے رکھے اس طرح کہ گٹ ہتھیلی کے درمیان ہو۔
    یہ سنت طریقہ ہے نماز میں ہاتھ باندھنے کا۔
     
  2. ‏جنوری 11، 2018 #12
    جی مرشد جی

    جی مرشد جی رکن
    شمولیت:
    ‏ستمبر 21، 2017
    پیغامات:
    551
    موصول شکریہ جات:
    14
    تمغے کے پوائنٹ:
    61

    مصنف ابن ابی شیبہ رحمہ اللہ کے دو قلمی نسخوں میں نماز میں ہاتھوں کو ناف کے نیچے باندھنے کا ذکر ہے۔
    لطف کی بات یہ ہے کہ سنن الترمذی رحمہ اللہ نے صرف دو طریقے لکھے جو چاروں آئمہ کے مطابق ہیں اور سلفیوں کے مطابق نہیں۔
    اور نووی رحمہ اللہ نے مسلم کے باب میں اس بات کی وضاحت کردی کہ ہتھ سینہ سے نیچے باندھنے چاہیئیں۔
     
  3. ‏جنوری 10، 2019 #13
    محمد طلحہ سلفی

    محمد طلحہ سلفی مبتدی
    شمولیت:
    ‏جولائی 31، 2018
    پیغامات:
    49
    موصول شکریہ جات:
    2
    تمغے کے پوائنٹ:
    13

    پہلی بات یہ کتاب الآثار محمد بن حسن شیبانی سے ثابت کریں
    دوسرا جن کو آپ رحمہ اللہ کہہ رہے ہو ان پر سخت اور شدید جرح ہے

    امام اسماء الرجال ابن معین رحمہ اللہ نے انہیں کذاب کہا ہے


    اور پھر نماز کا اتنا اہم مسئلہ ہے اور آپ کے پاس کوئی دلیل نہیں ہے حدیث سے

    بلکہ محمد بن حسن شیبانی کا قول پیش کرتے ہو

    عجیب بات ہے
     
  4. ‏جنوری 12، 2019 #14
    محمد طلحہ سلفی

    محمد طلحہ سلفی مبتدی
    شمولیت:
    ‏جولائی 31، 2018
    پیغامات:
    49
    موصول شکریہ جات:
    2
    تمغے کے پوائنٹ:
    13


    وہ نسخیں دکھائیں ذرا
    جزاک اللہ خیراً
     
  5. ‏جنوری 12، 2019 #15
    محمد طلحہ سلفی

    محمد طلحہ سلفی مبتدی
    شمولیت:
    ‏جولائی 31، 2018
    پیغامات:
    49
    موصول شکریہ جات:
    2
    تمغے کے پوائنٹ:
    13

    اگر آپ اس عبارت کو پوری طرح پڑھ لیتے اور سمجھ لیتے تو اس طرح کے خیالات آپ کے زہن میں نا آتے وہاں امام ترمذی نے صرف اتنی بات کی ہے کہ کہ" ناف کے نیچے ہاتھ رکھے جائیں یا ناف کے اوپر ان سب میں کوئی حرج نہیں"

    تو ان کی اس بات سے تو یہ چیز پتا لگتی ہے کہ اس سے نماز باطل نہیں ہوتی وہ تو ہم بھی مانتے ہیں کہ نماز باطل نہیں ہوتی

    اور ساتھ ساتھ ہم یہ بھی کہتے ہیں کہ نماز سنت کے مطابق نہیں ہوتی۔ لیکن باطل نہیں ہے
     
  6. ‏جنوری 13، 2019 #16
    جی مرشد جی

    جی مرشد جی رکن
    شمولیت:
    ‏ستمبر 21، 2017
    پیغامات:
    551
    موصول شکریہ جات:
    14
    تمغے کے پوائنٹ:
    61

    upload_2019-1-13_23-19-22.png
    [​IMG]
     
  7. ‏جنوری 13، 2019 #17
    جی مرشد جی

    جی مرشد جی رکن
    شمولیت:
    ‏ستمبر 21، 2017
    پیغامات:
    551
    موصول شکریہ جات:
    14
    تمغے کے پوائنٹ:
    61

    آپ کا مفہوم اس میں کہاں ہے؟
    سنن الترمذي
    حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ قَالَ: حَدَّثَنَا أَبُو الأَحْوَصِ، عَنْ سِمَاكِ بْنِ حَرْبٍ، عَنْ قَبِيصَةَ بْنِ هُلْبٍ، عَنْ أَبِيهِ، قَالَ: «كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَؤُمُّنَا، فَيَأْخُذُ شِمَالَهُ بِيَمِينِهِ» . وَفِي البَابِ عَنْ وَائِلِ بْنِ حُجْرٍ، وَغُطَيْفِ بْنِ الحَارِثِ، وَابْنِ عَبَّاسٍ، وَابْنِ مَسْعُودٍ، وَسَهْلِ بْنِ سَعْدٍ. حَدِيثُ هُلْبٍ حَدِيثٌ حَسَنٌ، [ص:33] وَالعَمَلُ عَلَى هَذَا عِنْدَ أَهْلِ العِلْمِ مِنْ أَصْحَابِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، وَالتَّابِعِينَ، وَمَنْ بَعْدَهُمْ، يَرَوْنَ أَنْ يَضَعَ الرَّجُلُ يَمِينَهُ عَلَى شِمَالِهِ فِي الصَّلَاةِ، وَرَأَى بَعْضُهُمْ أَنْ يَضَعَهُمَا فَوْقَ السُّرَّةِ، وَرَأَى بَعْضُهُمْ: أَنْ يَضَعَهُمَا تَحْتَ السُّرَّةِ، وَكُلُّ ذَلِكَ وَاسِعٌ عِنْدَهُمْ. وَاسْمُ هُلْبٍ: يَزِيدُ بْنُ قُنَافَةَ الطَّائِيُّ
    [حكم الألباني] : حسن صحيح
     
  8. ‏جنوری 14، 2019 #18
    محمد طلحہ سلفی

    محمد طلحہ سلفی مبتدی
    شمولیت:
    ‏جولائی 31، 2018
    پیغامات:
    49
    موصول شکریہ جات:
    2
    تمغے کے پوائنٹ:
    13


    برائے مہربانی ان دونوں نسخوں کے ناسخ کا نام بتا دیجیے پھر اسی پر اپنی گفتگو کرتے ہیں اور ان نسخوں کے مستند یا غیر مستند ہونے کا فیصلہ کرتے ہیں۔
     
  9. ‏جنوری 14، 2019 #19
    محمد طلحہ سلفی

    محمد طلحہ سلفی مبتدی
    شمولیت:
    ‏جولائی 31، 2018
    پیغامات:
    49
    موصول شکریہ جات:
    2
    تمغے کے پوائنٹ:
    13


    یہ والی جو عبارت ہے ہے اس میں امام ترمزی نے صرف اتنی بات کی ہے کہ بعض کا عمل ناف کے نیچے رکھنے کا ہے اور بعض کاناف کے اوپر رکھنے کا

    لیکن اس بات کی سند انہوں نے پیش نہیں کی کیونکہ تابعین صحابہ سے ان کی ملاقات ثابت نہیں لہذا یہ بات جب تک ثابت نہیں ہوتی تب تک قابل حجت نہیں
     
  10. ‏جنوری 15، 2019 #20
    جی مرشد جی

    جی مرشد جی رکن
    شمولیت:
    ‏ستمبر 21، 2017
    پیغامات:
    551
    موصول شکریہ جات:
    14
    تمغے کے پوائنٹ:
    61

    امام ترمذی قابل اعتبار محدثہے کہ نہیں؟
    جن بعض کا عمل انہوں نے لکھا یہ کون تھے؟
    مسلم یا کوئی اور؟
    سینہ پر ہاتھ باندھنے والوں کا ذکر کیوں نا کیا امام ترمذی رحمہ اللہ نے؟
    صاف ظاہر ہے کہ اس زمانہ میں انہیں سینہ پر ہاتھ باندھنے والا کوئی نظر ہی نا آیا۔
     
لوڈ کرتے ہوئے...
متعلقہ مضامین
  1. محمد طلحہ اہل حدیث
    جوابات:
    7
    مناظر:
    138
  2. محمد طلحہ اہل حدیث
    جوابات:
    66
    مناظر:
    694
  3. محمد طلحہ سلفی
    جوابات:
    1
    مناظر:
    462
  4. محمد طلحہ سلفی
    جوابات:
    0
    مناظر:
    527
  5. محمد طلحہ سلفی
    جوابات:
    4
    مناظر:
    885

اس صفحے کو مشتہر کریں