1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

نکاح میں لڑکی والوں کی طرف سے دعوت کا حکم

'رسوم ورواج' میں موضوعات آغاز کردہ از عمر اثری, ‏جولائی 27، 2016۔

  1. ‏جولائی 29، 2016 #11
    ابن عثمان

    ابن عثمان رکن
    شمولیت:
    ‏نومبر 27، 2014
    پیغامات:
    221
    موصول شکریہ جات:
    59
    تمغے کے پوائنٹ:
    49

    ہندو مذہب تو ہے ہی رسومات کا مجموعہ ۔ عملی طور پہ یہ کہاں ویدوں پر عمل کرتے ہیں ۔ بس پنڈت کا مذہب ہی ان کا مذہب بن گیا۔ اگرچہ ان کی کتابوں کا مجھے نہیں معلوم لیکن آپ دو حوالے دیکھیں ۔
    مسلمانوں میں ہندوانہ رسوم و رواج ۔۔۔ حافظ عبدالسلام بن محمد۔
    نکاح سے پہلے روٹی اور نیوندرا:
    سب سے پہلے تو یہ کہ مسلمانوں میں دعوت ولیمہ لڑکے کی طرف سے ہوتی ہے اور خاوند اور بیوی کی آپس میں ملاقات کی بعد ہوتی ہے- یہاں لڑکی والوں کی طرف سے دعوت طعام کا ذکر کہیں نہیں ملے گا کہ بہت سے لوگ جمع کر کے بارات منا کر لڑکی والوں کے گھر ضیافت اڑائی جائے- ہمارے ہاں نکاح سے پہلے کھانا پکتا ہے- لڑکے والوں کے ہاں بھی اور لڑکی والوں کے ہاں بھی اور اس میں لوگوں کو بلایا جاتا ہے- اسے روٹی کہتے ہیں- یہ روٹی رسول اللہﷺ کا طریقہ نہیں- ہندوؤں کا طریقہ ہے- جب ہندوؤں کا ایک طریقہ اختیار کیا تو اس کے ساتھ ان کے دوسرے طریقے بھی اختیار کرنے پڑتے ہیں- چلئیے کھانا آپ نے کھلا دیا- اب رجسٹر رکھ کر بیٹھ گئے- کہتے ہیں:” پیسے لاؤ”- اس کا نویتہ (نیوندوا) رکھا ہوا ہے-
    صفحہ 31
    اس میں بھی رسم کے طور پر انہوں نے ذکر کیا ہے ۔
    دوسرا حوالہ بڑا اہم ہے ۔ یہ مشہور کتاب تحفۃ الہند۔ جو کہ نو مسلم (غالباََ پنڈت بھی تھے) بعد میں اسلام کے عالم بھی ہوئے مولانا عبیداللہؒ کا ہے ۔
    انہوں نے خوب پنڈتوں کے ساتھ اٹھ بیٹھ کے ہندو مذہب کو قریب سے دیکھ کر ان کی باتوں کو بیان کیا ہے ۔اور یہ رسومات انہوں نے بطور ہندو مذہب ہی بیان کی ہیں ۔ اور آپ کے علم میں ہی ہوگا کہ مرنے پر تیجہ دسواں وغیرہ کے بارے میں بھی علماءیہیں سے بھی دلیل دیتے ہیں کہ یہ ہندووں سے رسمیں آئی ہیں۔
    [​IMG]
    انہوں نے اپنا کچھ تعارف یوں کروایا ہے ۔۔۔۔۔
    [​IMG]

    [​IMG]
    [​IMG]
    [​IMG]

    یہ انہوں نے کافی تفصیل سے بیان کی ہیں ۔ اور ان کے گھر کے آدمی بھی رہے ہیں ۔
    اس لئے پہلے جو میں نے ہندو رائٹرز کی تحریر پیش کی اس کو بھی تائید ملتی ہے ۔
     
  2. ‏جولائی 29، 2016 #12
    عمر اثری

    عمر اثری سینئر رکن
    جگہ:
    نئی دھلی، انڈیا
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 29، 2015
    پیغامات:
    4,340
    موصول شکریہ جات:
    1,076
    تمغے کے پوائنٹ:
    398

    بات دراصل یہ ہیکہ میں نے اب تک اس کا مشاہدہ نہیں کیا.
    خیر ہندؤوں کی شادی میں ایک ہی بار جانے کا اتفاق ہوا ہے. لیکن ایسا کچھ ضروری ہے میں نے نہیں دیکھا. وہ صرف ضیافت کرتے ہوۓ انکو کھانا کھلاتے ہیں. اپنی مرضی سے. اور اپنی استطاعت کے بقدر. کچھ ہندو ساتھیوں سے بھی ایسا تذکرہ نہ سن سکا کہ یہ انکی مذہبی تہذیب وغیرہ ہے. بہرکیف جیسا کہ میں نے بتایا کہ میرا مشاہدہ کم رہا ہے اس سلسلے میں اور دنیا بہت بڑی ہے.
     
  3. ‏جولائی 29، 2016 #13
    ابن عثمان

    ابن عثمان رکن
    شمولیت:
    ‏نومبر 27، 2014
    پیغامات:
    221
    موصول شکریہ جات:
    59
    تمغے کے پوائنٹ:
    49

    یہ کتاب ۸۰ ، ۹۰ سال پرانی ہے ۔ بعض رسومات میں تغیر تو آتا ہی ہے ۔ میرا نقل کرنے کا مقصد تو صرف مذکورہ بات ہی تھی یعنی لڑکی والوں کی ضیافت ۔ ۔ لیکن دیکھنا یہ ہے کہ ان کا ماخذ کیا ہے ۔ اور اگر اس کے تارک ہوں بھی تو کوئی بات نہیں ۔ چاہے سارے ہندو بھی چھوڑ دیں ۔ لیکن ماخذ تو وہی ہے ۔ جیسے ہم مسلمان کتنے دین سے دور ہیں ۔زیادہ مسلمان نماز نہیں پڑھتے ۔ ہمارے لئے یہ نقصان کی بات ہے ۔
    جیسے علما میں یہ بحث ہوتی ہے کہ شیعہ کافر ہیں کہ نہیں ۔ تو اس کا جواب یہ ہے کہ ہر شیعہ کافر نہیں ۔ بلکہ جو جو فلاں فلاں ان کی کتاب میں لکھا ہوا عقیدہ (مثلاََ قرآن میں تحریف ، بدا ، ائمہ انبیاء سے افضل۔وغیرہ)کو جانتا مانتا ہو وہ کافر ہے ۔
    اور عام شیعہ کہاں یہ سب جانتے ہیں ۔ میرے ارد گرد بھی جاننے والے شیعہ موجود ہیں ان سے سرسری بات سے معلوم ہوا ۔ ان کو اپنی کتابوں کا معلوم نہیں ۔ ان کی شیعیت بس حضرت علی ؓ کا نام لینے تک ہی ہے ۔
    تو یہ ان کے لئے فائدہ کا باعث ہی ہے ۔
    اسی طرح ہندو اگر عامل ہو تو وہ تو کچھ بھی نہیں چھوڑے گا ۔ لیکن عام ہندو بھی جن کا آپ ذکر کر رہے ہیں بہت اہم چیزیں تو نہیں چھوڑتے ہوں گے ۔۔۔جیسے پھیرے۔۔۔
    اسی طرح کیا کوئی ایسی شادی کسی نے دیکھی جس میں لڑکی والوں کی ضیافت بھی نہ ہوئی ہو ۔۔ایسا دیکھا کہیں ۔۔یہ انڈیا میں رہنے والے بھائی زیادہ بہتر بتا سکتے ہیں ؟
    اور جیسا کہ میں نے سب سے پہلی پوسٹ جو کی وہ نئی کتاب ہے ۔ اور ہے بھی ہندو رائٹرز کی ۔اس کے ضمن میں میں نے یہ بھی کہا کہ انہوں نے رسومات کم بیان کیں ۔ شاید اہم والی بیان کیں ۔
    واللہ اعلم
     
    Last edited: ‏جولائی 29، 2016
  4. ‏اگست 04، 2016 #14
    محمد نعیم یونس

    محمد نعیم یونس خاص رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 27، 2013
    پیغامات:
    26,363
    موصول شکریہ جات:
    6,591
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,207

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!
    فتوی میں موجود ملون جملے کی دلیل درکار ہے..
    محترم شیخ @اسحاق سلفی صاحب!


    کیا برات کی دعوت کرنا مسنون ہے؟

    السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

    جس طرح دعوت ولیمہ سنت ہے۔ کیا برات کی دعوت جو بیٹی والا کرتا ہے۔ وہ مسنونہ ہے۔ اگر کوئی قوم برات کی دعوت کو بوجہ گرانی اور اقتصادی حالات کے پیش نظر بند کردے۔ تو کوئی شرع حرج نہیں ہوگا۔ (عبد الستار دہلی)

    الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

    وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاتهالحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

    ناکح کے ساتھ چند آدمیوں کا آنا اور کھانا بھی کھانا ثابت ہے۔ مگر ایسا نہ ہونا چاہیے۔ کہ لڑکی والے پردباؤ ڈال کر دعوت لی جائے۔ جیسا کہ آج کل رواج ہو رہا ہے۔ یہ شریعت کے علاوہ اخلاق کے بھی خلاف ہے۔ قرآن مجید میں کل نفقات ناکح پر ڈالے گئے ہیں۔ جیسا کہ ارشاد ہے۔ وبما انفقوا من اموالھم لڑکی والا ناکح کے ہمراہیوں کو بطور خاطر تواضع شربت دودھ وغیرہ پیش کرے۔ تو جائز ہے۔ مگر اتنا نہ ہو جس سے اس پر بوجھ پڑے۔ (اخبار اہلحدیث امرتسر 24 زیقعدہ 1361ء)

    فتاویٰ ثنائیہ
    جلد 2 ص 291
    محدث فتویٰ
     
  5. ‏اگست 04، 2016 #15
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    6,195
    موصول شکریہ جات:
    2,368
    تمغے کے پوائنٹ:
    791

    وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
    اسکی تلاش میں ہوں ، جیسے ہی سراغ ملتا ہے پیش کرتا ہوں ،
    ان شاء اللہ تعالی
     
  6. ‏اگست 05، 2016 #16
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    6,195
    موصول شکریہ جات:
    2,368
    تمغے کے پوائنٹ:
    791

    اس کی دلیل یا ثبوت ’’ فتاوی ثنائیہ ‘‘ ہی میں ایک اور فتوی کے ضمن میں موجود ہے ،جس کا اقتباس درج ذیل ہے ،
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ’’ ابن ثیرا سدا لغا بہ لکھتے ہیں۔ کہ ام حبیبہ بنت ابی سفیا ن کا نجا شی نے حبشہ میں رسول اللہ ﷺ کے سا تھ عقد کیا تو عثما ن بن عفا ن رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے ام المو منین ام حبیبہ کی طرف سے گو شت کا ولیمہ کیا اور ابن حجر عقلانی اصا بہ میں لکھتے ہیں کہ ابن سعد نے اسمعیل بن عمر د بن سعید الا مو ی کے وا سطے سے ام المو منین ام حبیبہ کے عقد کا قصہ نقل کیا ہے اس میں ہے
    وعمل لھم النجاشی طعاما فاکلوا

    یعنی نجاشی نے صحا بہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے لئے کھانا تیا ر کیا اور صحابہ نے کھا یا موا ہب دنیا میں ہے کہ جب نجا شی نے مہر کے دینار حضرت خا لدبن سعید کے سپرد کئے اور حضرت خا لد نے قبضہ کر لیا تو سب نے اٹھنے کا ارادہ کیا تو نجا شی نے کہا
    فقال اجلسوا فان سنة الانبياء اذا تزوجوا ان يوكل طعام علي التزويج فدعا بطعام فاكلوا ثم تفرقوا

    مو لا نا عبدالحیی صا حب مر حو م مجمو عہ فتا وی میں بعض اس تفتا کے جواب میں لکھتے ہیں کہ با را ت کے لو گوں کو کھا نا کھلا نا دلین والوں کی طرفسے درست ہے بلکہ یہی طریقہ ما ثو رہ حضرا ت انبیا ء رحمۃ اللہ علیہ سے ہے مدارج التبو ۃ وغیرہ میں اس کی تصر یح مو جو د ہے الغر ض لڑ کی والے کھا نا کھلا ئیں لیکن پہلے دعوت دے دیں تو دعوت کا قبو ل کر نا علی اختلاف الا قوال واجب فر ض یا سنت ہو گا وقت کی تعبین دعوت دینے والے کے اختیا ر میں ہے ۔۔۔۔۔۔ (اس اقتباس کا لنک )
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    اب اس بات کی تحقیق ضروری ہے کہ ’’ لڑکی والوں کے ہاں کھانا کھانے ‘‘ کی دلیل جو دلیل دی گئی ہے کیا وہ سنداً صحیح ہے یا نہیں ۔
    آج تو چونکہ جمعہ ہے ، اسلئے شاید وقت نہ مل سکے ،ان اگلے ایک دو دنوں میں کوشش کروں گا اس پر کچھ کہہ سکوں ۔ ان شاء اللہ
     
  7. ‏اگست 07، 2016 #17
    محمد نعیم یونس

    محمد نعیم یونس خاص رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 27، 2013
    پیغامات:
    26,363
    موصول شکریہ جات:
    6,591
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,207

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!
    یادھانی!!
     
  8. ‏اگست 07، 2016 #18
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    6,195
    موصول شکریہ جات:
    2,368
    تمغے کے پوائنٹ:
    791

    وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
    ام المومنین سیدہ ام حبیبہ رضی اللہ عنہا کے نکاح اور اس ضمن میں نکاح کے بعد نجاشی کے ہاں اجتماعی کھا نے کی طویل روایت
    علامہ ابن سعد
    نے ’’ الطبقات ‘‘ میں سیدہ ام حبیبہ ؓ کے ترجمہ میں روایت فرمائی ہے ، اور طبقات ابن سعد سے علامہ ابن حجر عسقلانی نے ’’ الاصابۃ فی تمییز الصحابہ ‘‘
    میں نقل کی ہے ، اس کی سند درج ذیل ہے :
    أخبرنا محمد بن عمر. حدثنا عبد الله بن جعفر عن عثمان بن محمد الأخنسي أن أم حبيبة بنت أبي سفيان ولدت حبيبة ابنتها من عبيد الله بن جحش بمكة قبل أن تهاجر إلى أرض الحبشة. قال عبد الله بن جعفر: وسمعت إسماعيل بن محمد بن سعد يقول:
    ولدتها بأرض الحبشة.
    قال محمد بن عمر: فأخبرني أبو بكر بن إسماعيل بن محمد بن سعد عن أبيه قال: خرجت من مكة وهي حامل بها فولدتها بأرض الحبشة.
    أخبرنا محمد بن عمر. حدثنا عبد الله بن عمرو بن زهير عن إسماعيل بن عمرو بن سعيد بن العاص قال: قالت أم حبيبة: رأيت في النوم عبيد الله بن جحش زوجي بأسوأ صورة وأشوهه ففزعت. فقلت: تغيرت والله حاله. فإذا هو يقول حيث أصبح: يا أم حبيبة إني نظرت في الدين فلم أر دينا خيرا من النصرانية وكنت قد دنت بها. ثم دخلت في دين محمد ثم قد رجعت إلى النصرانية. فقلت: والله ما خير ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فقال: اجلسوا فإن سنة الأنبياء إذا تزوجوا أن يؤكل طعام على التزويج. فدعا بطعام فأكلوا ثم تفرقوا.۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔الخ

    یہ سند ناکارہ ہے ، کیونکہ اس کے راوی محمد بن عمر الواقدی کو محدثین نے نہ صرف ضعیف بلکہ کذاب کہا ہے،
    علامہ الذہبی میزان الاعتدال میں لکھتے ہیں :
    وقال ابن معين: ليس بثقة.
    وقال - مرة: لا يكتب حديثه / وقال البخاري وأبو حاتم: متروك.
    وقال أبو حاتم أيضا والنسائي: يضع الحديث.
    وقال الدارقطني: فيه ضعف.
    وقال ابن عدي: أحاديثه غير محفوظة والبلاء منه.

    اور امام حاکم نے مستدرک میں واقدی ہی کی سند اس روایت کو نقل کیا ہے ،
    ـــــــــــــــــــــــــــــ۔
    اور فتاوی ثنائیہ کی عبارت :
    (ناکح کے ساتھ چند آدمیوں کا آنا ،اور کھانا بھی ثابت ہے )
    کی دلیل کوئی اور روایت ہے تو میرے علم میں نہیں ،
     
    • علمی علمی x 1
    • مفید مفید x 1
    • لسٹ
  9. ‏اگست 07، 2016 #19
    محمد نعیم یونس

    محمد نعیم یونس خاص رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 27، 2013
    پیغامات:
    26,363
    موصول شکریہ جات:
    6,591
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,207

    جزاک اللہ خیرا یا شیخ!
     
  10. ‏اگست 28، 2016 #20
    حافظ راشد

    حافظ راشد رکن
    شمولیت:
    ‏جولائی 20، 2016
    پیغامات:
    116
    موصول شکریہ جات:
    27
    تمغے کے پوائنٹ:
    56

    اس سلسلے میں یہ مضمون بھی قابل مفید ہوگا انشاء اللہ
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں