1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

يزيد بن رُومان کے حالات چاہیے.

'اسماء ورجال' میں موضوعات آغاز کردہ از شانف بیگ, ‏جون 24، 2017۔

  1. ‏جون 24، 2017 #1
    شانف بیگ

    شانف بیگ رکن
    جگہ:
    انڈیا
    شمولیت:
    ‏مئی 28، 2016
    پیغامات:
    201
    موصول شکریہ جات:
    52
    تمغے کے پوائنٹ:
    35

    السلام علیکم و رحمة اللہ وبرکاتہ!!!!!
    مجھے يزيد بن رُومان کے حالات چاہیے یہ وہی ہے جو موطا مالک میں حضرت عمر رضی اللہ عنہ سے بیس رکات تراویح بیان کرتے ہیں. مجھے بھی انکے بارے ميں کچھ ملا ہیں تاریخ وفات مل گئی لیکن تاریخ پیدائش نہیں ملی. میں اسے یہاں ارسال کر رہا ہوں.

    كتب السيرة والمغازي
    مغازي يزيد بن رومان الأسدي المدني
    (ت 130 هـ / 748 م)

    يزيد بن رومان المدني، أبو روح القارئ، مولى آل الزبير بن العوام، قرأ القرآن على عبدالله بن عياش بن أبي ربيعة، وسمع من عروة بن الزبير وصالح بن خوات، وقيل: إنه روى عن أبي هريرة وقرأ على ابن عباس وليس بشيء، وهو ثقة ثبت، حديثه في الكتب الستة، وهو أحد شيوخ نافع في القراءة، وثَّقة ابن معين وغيره، وكان فقيهًا قارئًا محدثًا، قال ابن سعد: كان عالِمًا ثقة كثير الحديث، قلت: حدث عنه أبو حازم الأعرج، وعبيدالله بن عمر، ومحمد بن إسحاق، وجرير بن حازم، ومالك بن أنس وجماعة، قال وهب بن جرير: حدثنا أبي، قال: رأيت محمد بن سيرين ويزيد بن رومان يعقدان الآي في الصلاة، وروى مطرف عن مالك عن يزيد بن رومان أنه قال: كان الناس يقومون في زمان عمر بن الخطاب رضي الله عنه بثلاث وعشرين ركعة في رمضان.

    الكتاب:
    كتاب المغازي، منه قطع في طبقات ابن سعد، وجل اعتماده على عروة والزهري، وروى عنه ابن إسحاق.

    یہ پتا نہیں کس کتاب میں ہیں.
    پہلے تو اسکا ترجمہ کیجئے پھر جو میں نے یہ ارسال کیا ہے اسکا حوالہ بتایئے. اور اس راوی کے بارے ميں مزید تحقیق چاہیے.
    یہ میں نے اسے اس ویب سائٹ سے لیا ہیں.

    http://www.alukah.net/culture/0/81106/


    محترم شیخ @اسحاق سلفی صاحب
    محترم شیخ @خضر حیات صاحبے اس
     
    Last edited: ‏جون 24، 2017
  2. ‏جون 24، 2017 #2
    شانف بیگ

    شانف بیگ رکن
    جگہ:
    انڈیا
    شمولیت:
    ‏مئی 28، 2016
    پیغامات:
    201
    موصول شکریہ جات:
    52
    تمغے کے پوائنٹ:
    35

    Last edited: ‏جون 24، 2017
  3. ‏جون 28، 2017 #3
    شانف بیگ

    شانف بیگ رکن
    جگہ:
    انڈیا
    شمولیت:
    ‏مئی 28، 2016
    پیغامات:
    201
    موصول شکریہ جات:
    52
    تمغے کے پوائنٹ:
    35

    شیخ اس راوی کے تعلق سے کچھ ملا
     
  4. ‏جولائی 01، 2017 #4
    شانف بیگ

    شانف بیگ رکن
    جگہ:
    انڈیا
    شمولیت:
    ‏مئی 28، 2016
    پیغامات:
    201
    موصول شکریہ جات:
    52
    تمغے کے پوائنٹ:
    35

    محترم شیخ @اسحاق سلفی صاحب

    میرے لئے اس راوی کی تاریخ پیدائش ہی کافی ہوگی شیخ آپ مجھے اس راوی کی تاریخ پیدائش بتا دے.
     
  5. ‏جولائی 01، 2017 #5
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    5,246
    موصول شکریہ جات:
    2,164
    تمغے کے پوائنٹ:
    701

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ
    محترم بھائی !
    مجھے اس راوی کی تاریخ پیدائش نہ مل سکی ۔ اس کیلئے معذرت ۔۔۔۔
     
  6. ‏جولائی 01، 2017 #6
    شانف بیگ

    شانف بیگ رکن
    جگہ:
    انڈیا
    شمولیت:
    ‏مئی 28، 2016
    پیغامات:
    201
    موصول شکریہ جات:
    52
    تمغے کے پوائنٹ:
    35

    کوئی مسئلہ نہیں شیخ بس اتنا بتا دے کہ ہمارے پاس نصیب الرایة کے علاوہ کیا کیا دلائل ہیں کہ اس راوی نے حضرت عمر رضی اللہ عنہ کا زمانہ نہیں پایا.

    محترم شیخ @اسحاق سلفی صاحب
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں