1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

پینٹ شرٹ یا اسلامی لباس مگر کونسا؟

'جدید فقہی مسائل' میں موضوعات آغاز کردہ از غلام نبی خان, ‏دسمبر 13، 2012۔

  1. ‏دسمبر 17، 2012 #11
    ابوالحسن علوی

    ابوالحسن علوی علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏مارچ 08، 2011
    پیغامات:
    2,524
    موصول شکریہ جات:
    11,484
    تمغے کے پوائنٹ:
    641

    یہ جسے آپ دلیل کہہ رہے ہیں، پچھلی اقوام کے واقعات ہیں جسے ہم شرائع من قبلنا کہتے ہیں یعنی سابقہ شریعتوں کا بیان۔ بلکہ میں تو اسے شریعت بھی نہ کہوں گا بلکہ سابقہ قوموں کے تمدن کا بیان جو دین کے علاوہ ہے۔ بہرحال اگر یہ قمیص والی آیات شرعی یا دینی حکم بھی ہوں تو سابقہ شریعت ہے اور سابقہ شریعت پر عمل ہمارے لیے حجت نہیں ہے جب تک کہ ہماری شریعت سے ثابت نہ ہو جائے۔
    جبکہ امر واقعہ یہ ہے کہ یہ سابقہ شریعت بھی نہیں ہے بلکہ سابقہ تمدن کا بیان ہے۔ پھر اس دور میں جو قمیص ہوتی تھی کیا وہ ایسی ہی تھی جیسی کہ ہمارے ہاں پہنی جاتی ہے کف اور بین یا کالر کے ساتھ یا بٹن اور گول یا چوکور گھیرے کے ساتھ۔ یا صرف قمیص کے نام کا اشتراک ہے۔
     
  2. ‏دسمبر 17، 2012 #12
    عابدالرحمٰن

    عابدالرحمٰن سینئر رکن
    جگہ:
    BIJNOR U.P. INDIA
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 18، 2012
    پیغامات:
    1,124
    موصول شکریہ جات:
    3,229
    تمغے کے پوائنٹ:
    240

    السلام علیکم
    چلئے حضرت اگر میں وقتی طور سے میں آپ کی بات تسلیم کربھی لوں تو بات بنتی نظر نہیں آرہی ہے۔ اس کو آپ ہلکے میں نہ لیں غور فرمالیں کہ آپ کا ارشاد مبارک کن کے بارے میں ہے، انبیاءؑ کے عمل کو امم سابقہ کا عمل کہہ کر نظر انداز کرنا مناسب نہیں ،اگر ان کی شریعت کو الگ اور شریعت محمدیہ ﷺ کوالگ کہیں گےتو بہت سے سوال قائم ہوجایئں گے۔ جبکہ شریعت محمدیہﷺ کے بارے میں قرآن شاہد ہے کہ یہ کوئی نیا دین نہیں بلکہ یہ وہی دین ہے جو سابقہ انبیاءؑ کا تھا ۔اور ان سابقہ شریعتوں میں جو تبدیلی ہوسکتی تھی وہ آپ ﷺ کے زمانہ رسالت میں ہوگئی تھی ۔ اگر اولین سابقین انبیاء علیہم الصلوٰۃ والسلام کے عمل کو امم سابقہ کے عمل پر محمول کیا جائے تو حج کے ارکان کو کیا فرمائیں گے ،قربانی کرنا ،طواف کرنا ، سعی کرنا، رمی جمار کرنا ،روزہ رکھنا وغیر ذالک یہ سارے اعمال ان برگزیدہ ہستوں کے ہی تو ہیں جن پر عمل کرنا قیامت تک لئے سعادت مندی اور نجات کا ذریعہ قرار دیدیا گیا ہے۔ بہر حال پینٹ شرٹ کی نسبت انگریزوں سے کسی نبی یا صحابی سے نہیں ہے انبیاء کرام علیہم السلام کے عمل پر عمل کرنا جب کہ وہ شریعت محمدیہ ﷺ سے متضاد نہ ہوں اغیا ر کی نقل کرنے سے اولیٰ اور افضل ہے اور اگر یہی سوچ کر کرلیا جائے کہ فلاں نبی ؑ کاعمل تھا تو کوئی گناہ نہیں ہوگا، بس ابھی تو میں اتنا ہی عرض کروں گا ۔ اس بارے میں ہماری شریعت( شریعت محمدیہﷺ) کیا کہتی ہے ابن تیمیہؒ سے ہی پیش کروں گا تاکہ کوئی اعتراض ہی نہ رہے تھوڑا توقف فرمائیں فقط والسلام
    عابدالرحمٰن بجنوری
     
  3. ‏دسمبر 17، 2012 #13
    عبدالعلام

    عبدالعلام رکن
    جگہ:
    Aurangabad
    شمولیت:
    ‏مارچ 15، 2012
    پیغامات:
    153
    موصول شکریہ جات:
    478
    تمغے کے پوائنٹ:
    95

    عرف صرف شرفا کا معتبر ہے اور شرفا سے مراد علما ہیں اس کی دلیل کیا ہے -دوسری بات صحابہ میں بھی علما اور غیر علما تھے تو کیا علما کاکوی مخصوص یونیفارم تھا-عرب کے علما جبہ پہنتے ہیں کچھ شیروانی(ندوی حضرات) دیوبندیوں کا لباس کچھ اور ہوتا ہے -بریلویوں کا کچھ اور-تو کس کا اعتبار کریں-
     
  4. ‏دسمبر 17، 2012 #14
    ابوالحسن علوی

    ابوالحسن علوی علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏مارچ 08، 2011
    پیغامات:
    2,524
    موصول شکریہ جات:
    11,484
    تمغے کے پوائنٹ:
    641

    ان سوالات کے جوابات کے لیے اصول فقہ کی کسی کتاب میں شرائع من قبلنا کا باب پڑھ لیں۔


    شریعت محمدی صلی اللہ علیہ وسلم سے سابقہ شرائع منسوخ ہو گئی ہیں اور یہ تمام اعمال شریعت محمدی صلی اللہ علیہ وسلم سے ثابت ہیں۔


    پہلی بات درست نہیں ہے۔ اس کے موجد مسلمان ہیں۔ انگریز پینٹ شرٹ کے موجد ہیں، اسے دلیل سے ثابت کریں۔ لہذا اس لباس کی ابتدا کرنے والے مسلمان تھے۔


    جملہ درست ہے لیکن تطبیق یعنی ایپلیکیشن درست جگہ نہیں کی ہے۔ پینٹ شرٹ جب مسلمانوں کا عرف بن جائے تو اغیار کی نقالی نہیں کہلائے گی بلکہ مسلمانوں کی نقالی کہلائے گی۔ باقی یہ کہنا کہ پینٹ شرٹ فاسق لوگوں کا عرف ہے، امر واقعہ کے خلاف ہے۔ بڑی تعداد میں متقی حضرات بھی پینٹ شرٹ پہنتے ہیں۔


    گناہ ہونے اور نہ ہونے کا تعلق کسی نبی کے فعل سے نہیں ہے بلکہ اللہ کے حکم سے ہے۔ حضرت یعقوب نے اپنے بیٹے حضرت یوسف کو سجدہ کیا، اسے قرآن نے بیان کیا، یہ نبی کا عمل تھا۔ حضرت موسی نے ایک قطبی کو قتل کیا، اسے قرآن نے بیان کیا، یہ نبی کا عمل تھا۔ حضرت خضر نے ایک بچے کو قتل کیا، اسے قرآن نے بیان کیا، یہ بعض لوگوں کے قول کے مطابق نبی کا عمل تھا۔ حضرت آدم نے شجر ممنوعہ کا پھل کھایا، اسے قرآن نے بیان کیا، یہ نبی کا عمل تھا۔ اور بھی مثالیں دی جا سکتی ہیں۔ مقصود کلام یہ ہے کہ نہ قرآن میں کسی چیز کا نقل ہونا دلیل ہے اور نہ ہی کسی نبی کا اسے کرنا دلیل ہے۔ دلیل اس کا شرعی حکم ہونا ہے یعنی
    اس مسئلہ کے بارے شارع کا خطاب مکلفین کی طرف بطریق تکلیف یا بطریق وضع متوجہ ہو۔


    میرے خیال میں کتاب وسنت کا بیان ہی کافی ہے۔
     
  5. ‏دسمبر 17، 2012 #15
    جمشید

    جمشید مشہور رکن
    شمولیت:
    ‏جون 09، 2011
    پیغامات:
    873
    موصول شکریہ جات:
    2,325
    تمغے کے پوائنٹ:
    180

    آیت کریم سے آپ کا مدعاقطعاثابت نہیں ہوتا۔کیونکہ سترڈھانکے اوربدن کو زینت دینے کی جہاں تک بات ہے وہ شرٹ پینٹ میں بھی حاصل ہے۔اب یہ فرق بہرحال ضروری ہے کہ کچھ لوگ اتناتنگ سلواتے ہیں کہ بدن کے نشیب وفراز ،فرازونشیب میں تبدیل ہوجاتے ہیں ۔جب کہ بہت سے لوگ اس کے برعکس ڈھیلاڈھالاآرام دہ لباس جیساکہ دیگرلباس ہے سلواتے ہیں۔
    آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے غیروں کی مخالفت بھی کی ہے۔لیکن موافقت بھی کی ہے۔آپ اگرحجۃ اللہ البالغہ کی ابتداء کا مطالعہ کریں تویہ بات واضح ہوجائے گی کہ قریش کے رسوم ورواج جب تک وہ صریح دین کی مخالفت میں نہ ہوتے ان کو برقراررکھاہے۔کیاآپ صلی اللہ علیہ وسلم کا لباس قریش کے اوراس زمانہ کے عربوں کے لباس سے کچھ مختلف تھا؟یاایک ہی ایسالباس دونوں پہنتے تھے؟
    یہ شق کہیں بھی مذکور نہیں ہے۔ عرف میں اسی عرف کا اعتبار کیاجاتاہے جوعوام کے اندر رائج ہو اورجس میں عوام سے لے کر خواص تک سبھی مبتلاہوں۔ اردو لسانیات میں نہ غلط العوام کا اعتبار ہے اورنہ غلط الخواص کا بلکہ اعتبار غلط العام کاہے۔اسی طرح عرف وعادت میں اسی عرف وعادت کا اعتبار کیاجاتاہے جس میں عوام خاص سبھی مبتلاہوں۔
    دوسرے کسی خاص جماعت کا کوئی الگ لباس متعین ہوجانااس کی سند نہیں بن جاتاکہ دیگر سبھی لوگ ایساہی لباس پہناکریں اوریہ کہ ایسے لباس کو پہننا"اسلامی"ہونے کی سندعطاکرتاہے۔
    یہ دعویٰ بہت بڑاہے اوراگرناگوارخاطر نہ ہوعرض کردیں کہ یہ دعویٰ ہی غلط ہے۔ کوئی لباس اسلامی لباس نہیں ہے۔ حضورپاک ،صحابہ کرام سے کہیں منقول نہیں کہ اس طول وعرض کالباس پہناجائے۔اگرآپ تاریخ اٹھاکر دیکھیں تومعلوم ہوگاکہ علماء کا الگ لباس متعین کرنایہ بہت بعد میں جاکر ہواہے۔ پہلے عوام خواص علماء جہلاء،شرفاء اوررذلاء (ابتسامہ)ایک ہی قسم کا لباس پہناکرتے تھے۔عرب میں لوگ جبہ پہنتے ہیں توکیاوہ اسلامی لباس ہے۔ ہندوپاک میں کرتاپائجامہ توکیاوہ اسلامی لباس ہے۔مصر وغیرہ میں علماء بھی دھڑلے سے شرٹ پینٹ اورکوٹ وغیرہ پہنتے ہیں توکیاوہ اسلامی لباس ہے؟۔

    ویسے قمیص کا ترجمہ کرتاہی ہوگااس کی دلیل کیاہے۔ شاید محترم عابدالرحمن کاخیال اس جانب گیاہے کہ بعض تفسیری روایا ت مین دامن پکڑ کر کھینچنے کا ذکر ہے لیکن وہ تفسیری روایات ہیں۔ ان سے قطع نظرقرآن کی آیت پر غورکریں توصرف پیچھے سے کھینچنے کا ذکر ملتاہےاس میں پیٹھ کے پاس سے بھی کرتاپھٹ سکتاہے۔ نیچے والاحصہ بھی پھٹ سکتاہے۔بہرحال قمیص کا ترجمہ کرتاکرناذراعجیب سالگتاہے۔برصغیر ہندوپاک میں رائج بول چال پر غورکریں توقمیص کااطلاق شرٹ پربھی کیاجاتاہے۔
    آپ نے کرتاسے پگڑی اورڈاڑھی پر چھلانگ لگادی ہے اوروہ بھی سکھوں کے حوالہ کے ساتھ لہذا اب اس باب میں کچھ کہناکاربے کاراں ہے؟
    سنتیں دوقسم کی ہیں۔ ایک کو سنن ہدی کہاجاتاہے اوردوسرے کو سنن زوائد کہاجاتاہے۔ سنن ہدی ایسے اعمال وافعال کوکہاجاتاہے جس کی جانب حضورپاک نے توجہ دلائی اوراس کے فضائل بیان فرمائے۔اورسنن زوائد جس کو حضورپاک نے بطورعادت یامباح انجام دیاہے۔
    مثلاپانی پینے سے پہلے بسم اللہ کہناچاہئے یہ سنن ہدی ہے لیکن پانی پینے کا برتن اس زمانے میں مٹی اورلکڑی کاہواکرتاتھااسی برتن کو استعمال کرنایہ سنن زوائد ہے۔ ہم آج کےدور مین اسٹیل کا گلاس استعمال کرتے ہیں۔اس میں کوئی حرج نہیں۔حضورپاک کو ٹھنڈاپانی مرغوب تھایہ بھی سنن زوائد ہے۔ ٹھنڈے پانی کیلئے اس زمانہ میں مٹی کے آبخورے استعمال کئے جاتے تھے یہ بھی سنن زوائد میں ہے۔
    حضورپاک کیسابستراستعمال کرتے تھے یہ سبھی سنن زوائد میں ہے۔ حضورپاک فرش پرسوتے تھے یہ سنن زوائد میں ہے۔ ہم لوگ پلنگ اورمسہری پر سوتے ہیں اس طرح اگرسنن زوائد کو ضروری قراردیاجانے لگے توشاید ہم مین سے بہت سارے لوگوں کو اپناطرززندگی بالکل بدل لیناہوگا۔
    سنن زوائد پر اگرکوئی اس نیت سے عمل کرتاہے کہ حضورنے کیاہے ہم ان کی متابعت کررہے ہیں تویہ بہترخیال ہے اوراس کا ثواب انشاء اللہ متابعت کی نیت سے ملے گالیکن ایسانہ کرنے والےپر نکیر کرنابجائے خود ایک مکر فعل ہے جس پر انکار کیاجاناچاہئے۔

    آپ نے قمیص کا ترجمہ کرتاکیاہے پہلے اس کے اثبات کی ضرورت ہے!دوسری چیز اس کو اس دور کا لباس اورتہذیب وتمدن کے آثار کیوں نہ سمجھے جائیں۔ پھرجب حضورپاک کی سیرت میں سنن ہدی اورسنن زوائد کی تفریق موجود ہے توپھرگزشتہ انبیاء کی زندگی میں یہ تفریق کیوں نہیں۔ پھراس کے علاوہ یہ واقعہ جوآپ پیش کررہے ہیں وہ ان کے نبوت سے پہلے کا واقعہ ہے اورنبوت سے پہلے کا کوئی واقعہ کسی نبی کا بھی حجت نہیں ہواکرتا۔
    یہ کچھ گزارشات ہیں ہماری آپ کی اس تحریر پر ۔سنجیدگی سے اپنے موقف پر غورکریں اوربالخصوص کسی لباس کواسلامی لباس قراردینے کاموقف پر مزید نظرثانی کریں۔ والسلام
     
  6. ‏دسمبر 17، 2012 #16
    عابدالرحمٰن

    عابدالرحمٰن سینئر رکن
    جگہ:
    BIJNOR U.P. INDIA
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 18، 2012
    پیغامات:
    1,124
    موصول شکریہ جات:
    3,229
    تمغے کے پوائنٹ:
    240

    السلام علیکم
    بھائی جان پہلے تو آپ یہ فرمادیں کہ صحابہؓ کا لباس کیا تھا اور کیا نبی اکرم ﷺ کا لباس تھا اگر نہیں معلوم تو انتظار فرمائیں۔ دیگر آپ مجھے صرف بتادیں یہ پینٹ شرٹ کہاں سے لی گئی کون اس کے بانی مبانی اور موجدہیں ، اب رہا سوال دیوبندی کٹ بریلوی کٹ ، ندوی کٹ ، اہل حدیث کٹ ، یہ جتنے بھی کٹ ہیں کہلاتے تو عالموں کے ہی ہیں، ایک غیر مسلم دیکھ کر یہی کہے گا کہ یہ مسلمان ہے عالم وغیرہ تو مسلمان ہی سمجھ پائیں گے کہ یہ عالم ہے یا غیر عالم ۔ اب مجھے آپ اتنا اور بتادیں کہ ایک مسلمان ہے اس کے داڑھی بھی نہیں سر پر ٹوپی بھی نہیں پینٹ شرٹ اس نے پہن رکھی ہے تو اس کو’’ سلام ‘‘ کس طریقہ سے کیا جا ئے(کیسے معلوم ہو کہ یہ مسلمان ہے اس کو سلام کیا جائے) یا اس کہیں دیار غیر میں اس کا انتقال ہوجائے تو اس کا مسلمان ہونا کیسے ثابت ہوگا۔ کیوں کہ شباہت غیر مسلموں کی اختیار کئے ہوئے ہے تو اس کے ساتھ غیر مسلموں والا ہی برتاؤ کیا جائے گا وہ بات الگ ہے کہ اس کو بے پردا کیا جائے گا۔ ایک مسئلہ اور سمجھ لیں ایسے آدمی کوجس کی کوئی مسلمانوں والی شناخت نہ ہو اور کوئی مسلم اس کو سلام نہ کرے تو وہ سلام نہ کرنے والا معتوب نہ ہوگا یعنی اس پر کوئی گناہ لازم نہیں آئے گا یہیں سے سمجھ لیں
    من تشبہ بقوم
    کا مسئلہ اس موضوع پر میں ان شاءللہ تفصیل سے لکھوں گا اگرچہ میرا کتنا ہی وقت خراب ہو
     
  7. ‏دسمبر 17، 2012 #17
    عابدالرحمٰن

    عابدالرحمٰن سینئر رکن
    جگہ:
    BIJNOR U.P. INDIA
    شمولیت:
    ‏اکتوبر 18، 2012
    پیغامات:
    1,124
    موصول شکریہ جات:
    3,229
    تمغے کے پوائنٹ:
    240

    السلام علیکم
    محترم جناب ابو الحسن علوی صاحب ،عبد العلام صاحب اور جناب جشید صاحب ۔ آپ تینوں حضرات کو الگ الگ طور پر مطمئن کرنا میرے لئے مشکل کھڑی کردیگا اس لئے تینوں کو ایک ہی مان کر چل رہا ہوں ، وباللہ التوفیق وہی نصرت اور مدد کرنے والا ہے۔
    محترم جمشید صاحب کچھ عجیب سا معلوم ہوا:
    (۱)
    یہاں آپ نے ابوالحسن صاحب کے قول کی نفی کردی ’’کہ امم سابقہ (شرائع من قبلنا)بلکہ میں تو اس کو شریعت بھی نہ کہوںگا‘‘جمشید صاحب آپ ﷺ نے یہودو نصاریٰ بہت سے طریقوں میں مخالفت کی ہے آپ سب صاحب علم ہیں طول دینے سے کوئی فائدہ نہیں ۔
    پہلی شریعتیں منسوخ نہیں بلکہ ان میں تجدید ہوئی ۔جب کے جمشید صاحب فرمارہے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے قریش کے کچھ رسم و رواج کو باقی رکھا ہے یہ دونوں کے بیان میں تضاد ہے۔ اور میں واضح کرچکا ہوں کہ اگر ہماری شریعت سے تضاد نہ ہو۔
    پہلے تو مجھے معلوم نہیں کہ کوئی مسلم پنیٹ شرٹ کا موجد ہے اگر تاریخ بیان کردی جاتی تو مناسب تھا اس کے با وجود اگر مسلمان درزی کا کام کرتا ہو اس سے یہ کہاں ثابت ہوجا تا ہے کہ یہ اسلامی لباس ہوگیا مسلمانوں نے تو مندر بھی بنائے شراب بھی بناتے ہیں قتل بھی کرتے ہیں اور کیا کیا کرتے ہیں۔اور پھر یہ بھی تو ثابت نہیں کہ مغل دور میں مسلمان پینٹ شرٹ پہنتے تھے یا نہیں ہمیں تو اتنا معلوم ہے کہ اس وقت انگریزوں خلاف محاذ آرائی تھی اور مسلمان ان کا بایئکاٹ کرتے تھے حتیٰ کہ انگریزی تعلیم کی بھی مخالفت بھی کی جاتی تھی جب اسکول میں پڑھتا تھا تو میں نے ہسٹری پڑھی تھی لیکن میری نالج میں نہیں کہ مسلمان پینٹ شرٹ کے موجد تھے، مسلمان تو آج کل لڑکیوں کے بھی لباس سیتے ہیں تو کیا یہ آج کل لڑکیاں جو لباس پہنتی ہیں وہ آپ کے بقول جائز ہوگیا۔
    یہ آپ کی غلط تطبیق ہے میں کہہ چکا ہوں کہ اگر ہماری شریعت سے کوئی تضاد نہ ہو تو کسی نبی کسی فعل عمل کرنے میں کوئی قباحت نہیں جیسا کہ جمشید صاحب فرماچکےہیں قریش کےبارے میں، اور ہماری شریعت قتل وغیرہ حرام ہے تو پھر یہ بات کیسے مناسب ہوگی۔
    ابن تیمیہ ؒ آپ کے یہاں ثقہ ہیں اور ان کی بات کتاب وسنت سے ہی ہوتی ہے۔
    بیشک دبر سے مراد آپ پشت لے سکتے ہیں لیکن واضح رہے اگر شرٹ کو پیچھے سے پکڑ کھینچا جائے تو اس کا پھٹنا مشکل ہے ادھڑ تو سکتی ہے پھٹے گی تبھی جب وہ بڑی ہو، اوراگر قمیص چھوٹی ہوتی تو زلیخا ان کی کولی بھر لیتی ۔ اس سے معلوم ہوا کرتا بڑا تھا اس کو کھینچا تو پھٹ گیا اور پھر دامن کا ذکر جو خود بڑا ہنے پر دال ہے،جیسا کہ ہارون علیہ السلام کی ڈاڑھی پکڑی تو اس مراد قبضہ بھر لی جاتی ہے۔
    اور جمشید صاحب رہا عرف وغیرہ کا معاملہ تو عرض خدمت عالیہ میں ہے
    آج کل مسلمانوں کا عرف بہت وسیع ہوگیاہے، اگر سرسری طور پر بھی دیکھا جائے تو آج کل ولیمہ کی شکل کیا ہے یہ بارات کی کیا شکل ہے جہیز کا کیا معاملہ ہے منگنی کا رواج ہے اور آم کی فصل پھل آنے سے پہلے ہی خرید کی جاتی ہے یہ سب آج عرف میں ہی داخل ہےتو کون کون سے عرف کو جائز کہو گے اور کس عرف کو جائز۔
    اور جمشید صاحب رہا سنت ھدیٰ اور سنت زوائد کا معاملہ اس بارے میں یہی کہہ سکتا ہوں کہ آپ پینٹ شرٹ کو اسلامی لباس قرار دینا چاہ رہے ہیں جو سنت رسول ﷺ اور صحابہ کرام کے خلاف ہے، یہ تو آپ کا بھینس کو سفید بتانا جیسا ہےمعاملہ لگ رہا ہے۔ لیکن میں یہ کہنا چاہ رہا ہوں لباس ایک علامت ہوتی ایک شعار جیسا ہے تاریخ دان جب تاریخ بیان کرتا ہے اس قوم کا تہذیب تمدن رہن سہن لباس وغیرہ سبھی بیان کرتا ہے اور لباس ہی اندازہ لگا یا جا تا ہے کہ وہ قوم مہذب تھی یا غیر مہذب، ایک وکیل کا لباس لگ ہوتا ہے جج کا الگ ہوتا ہے پولس کی وردی الگ ہوتی ہے فوجی کی وردی الگ ہوتی چور کا لباس الگ ہوتا ہے ڈاکٹروں کا لباس الگ ہوتا ہے ایک پولس والا لباس سے ہی اندازہ لگا لیتا ہے کہ یہ آدمی شریف ہے یا بدمعاش۔ یہی لباس لڑکا اور لڑکی میں تمیز کرتا تھا آج کوئی پتہ ہی نہیإ چلتا لڑکا کون ہے لڑکی کون ہے جب کہ اسلام میں ایک دوسرے مشابہت اختیار کرنے کی مما نعت آئی ہے ۔
    اس میں بھی مسلمانوں کا قصور ہے کہ آج جو لڑکے لڑکیوں کی حالت اور شکل بگڑی ہے اس کا سہرا مسلمان کے سر ہی جائے گا کیون کہ یہ لباس مسلمان نے ہی بنایا تھا اس لیے لڑکا اور لڑکی کے اس طرح کا لباس پہننا اور یک دوسرےکی مشابہت اختیار کرنا یہ مسلمانوں کی ہی دین ہے اس بارے میں انگریز بے قصور ہے اس کو غلط الزام دیا جاتا ہے۔ سارے اچھے کام انگریز کرتا ہے اور تہذیب و تمدن مسلمان بگاڑتا ہے کیوں کہ یہ لباس مسلمانوں ہی کی دین ہے
    فقط والسلام عابدالرحمٰن بجنوری
     
  8. ‏دسمبر 17، 2012 #18
    ابوالحسن علوی

    ابوالحسن علوی علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏مارچ 08، 2011
    پیغامات:
    2,524
    موصول شکریہ جات:
    11,484
    تمغے کے پوائنٹ:
    641

    المجلد الرابع والعشرون (كتاب الجامع 1) > كتاب الجامع > اللباس والزينة > لبس البنطلون الضيق
    الفتوى رقم ( 4257 )
    س : ما حكم لبس البنطلون إذا كان يلتصق بالجسم ، وإذا كان واسعا ، إذا كان محاكاة لما يرتديه الغربيون ، إذا كان يخالفهم في شكل البنطلون (التفصيلة) ما حكم لبس البدلة ، وحكم ما يسمونه رباط العنق (الكرفته) وغيرها من ملابسي الكفار ، هل يغير من حكمها أنها أصبحت من عادات المسلمين ، بحيث لا يظن عامتهم أن فيهما تشبها بالكفار ؟ وأخيرا ما اللباس الذي يمكن أن يرتديه المسلم في هذا الزمان ، فما حكم الله في هذه الأشياء كلها رحمكم الله ؟

    ج : الأصل في الملابس أنها جـائزة ، إلا ما استثناه الشرع مطلقا ؛ كالذهب للرجال ، وكالحرير لهم ، إلا لجرب أو نحوه ، ولبس البنطلون ليس خاصا بالكفار ، لكن لبس الضيق منه الذي يحدد أعضاء الجسم حتى العورة لا يجوز ، أمـا الواسع فيجوز ، إلا إذا قصد بلبسه التشبه بمن يلبسه من الكفار ، وكذا لبس البدلة وربـاط العنق (الكرفتة) ليس من اللباس الخاص بالكفار ، فيجوز ، إلا إذا قصد لا بسه التشبه بهم . وبالجملة فالأصل في اللباس الجـواز إلا مـا دل الدليل الشرعي على منعه كما تقدم . وبالله التوفيق ، وصلى الله على نبينا محمد وآله وصحبه وسلم .

    اللجنة الدائمة للبحوث العلمية والإفتاء
    عضو عضو نائب الرئيس الرئيس
    عبد الله بن قعود عبد الله بن غديان عبد الرزاق عفيفي عبد العزيز بن عبد الله بن باز
     
  9. ‏دسمبر 17، 2012 #19
    ابوالحسن علوی

    ابوالحسن علوی علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏مارچ 08، 2011
    پیغامات:
    2,524
    موصول شکریہ جات:
    11,484
    تمغے کے پوائنٹ:
    641

    وفي فتاوى نور على الدرب للعثيمين 1052

    السؤال : جزاكم الله خيرا تقول يا فضيلة الشيخ يقول النبي صلى الله عليه وسلم في الحديث الذي ما معناه من تشبه بقوم فهو منهم السؤال يا فضيلة الشيخ بأن الأمر قد بلغ حدا كبيرا فألبستنا من الكفار غالبا ومتاع البيت أيضا فما العمل في هذا مأجورين؟

    الجواب :
    الشيخ: المراد بالتشبه أن يفعل الإنسان شيئا خاصا بالكفار بمعنى أن من رآه ظن أنه كافر لأن حليته ولباسه حلية الكافر ولباسه وليس كلما فعل الكفار يكون تشبها إذا فعلناه وليس كل الأطعمة التي يصنعها الكفار يكون تشبها إذا أكلناها المراد بالتشبه أن يفعل ما يختص به الكافر فمن تشبه بقوم فهو منهم ولهذا لما كان لبس الرجل للبنطلون تشبها بالكفار لأن المسلمين ما كانوا يلبسونه ثم شاع وأنتشر وصار غير خاص بالكفار صار لبسه جائزا للرجال وأما النساء فمعلوم أنه لا يجوز لهن لبس البنطلون ولو عند الزوج لأن ذلك من باب التشبه بالرجال نعم.
     
  10. ‏دسمبر 17، 2012 #20
    ابوالحسن علوی

    ابوالحسن علوی علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    لاہور
    شمولیت:
    ‏مارچ 08، 2011
    پیغامات:
    2,524
    موصول شکریہ جات:
    11,484
    تمغے کے پوائنٹ:
    641

    فتاوى أبو إسحاق الحويني (1 / 11) المكتبة الشاملة
    29- هل يجوز للرجل لبس القميص والبنطلون أحيانا أم يجب لبس الجلباب دائما وهل هو حرام أم تشبه ؟
    ج 29 - أما لبس البنطلون فلست أراه من التشبه لأنه زي غلب على ديار المسلمين وكما في القاعدة الفقهية إذا ضاق الأمر اتسع ومع ذلك ففيه حرج من جهة الصلاة فيه ولذلك أرى ألا يلبسه المسلم اذا لم يكن هناك داع اليه.
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں