1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

کون کہتا ہے میرے دیس میں کاروبار مندے پڑ گے ہے

'معاشرت' میں موضوعات آغاز کردہ از فیاض ثاقب, ‏جنوری 27، 2017۔

  1. ‏جنوری 27، 2017 #1
    فیاض ثاقب

    فیاض ثاقب مبتدی
    شمولیت:
    ‏ستمبر 30، 2016
    پیغامات:
    80
    موصول شکریہ جات:
    10
    تمغے کے پوائنٹ:
    29

    ﮐﻮﻥ ﮐﮩﺘﺎ ﻣﯿﺮﮮ ﺩﯾﺲ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﺭﻭﺑﺎﺭ ﻣﻨﺪﮮ ﭘﮍ ﮔﺌﮯ ﮨﯿﮟ؟۔ ﻣﯿﮟ ﯾﮩﺎﮞ ﮔﺮﺩﮦ ﺑﯿﭻ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﮔﺮﺩﮦ ﺧﺮﯾﺪ
    ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ۔ ﻋﻮﺭﺕ ﺧﺮﯾﺪ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﻥ،ﻣﯿﮟ ﻭﻭﭦ ﺑﯿﭻ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﻭﻭﭦ ﺧﺮﯾﺪ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ، ﻣﯿﮟ ﺑﭽﮯ ﺑﯿﭻ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﺑﭽﮯ ﺧﺮﯾﺪ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ، ﻣﯿﮟ ﻓﺘﻮﯼٰ ﺑﯿﭻ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﻓﺘﻮﯼٰ ﺧﺮﯾﺪ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ۔ﺍﻧﺼﺎﻑ ﺧﺮﯾﺪ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﺍﻧﺼﺎﻑ ﺑﯿﭻ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ،
    ﯾﮩﺎﮞ ﺟﺞ ﺑﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ، ﻭﮐﯿﻞ ﺑﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ، ﯾﮩﺎﮞ ﻋﻠﻢ ﺑﮑﺘﺎ ﮨﮯ ﯾﮩﺎﮞ ﺩﯾﻦ ﺑﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔،
    ﮨﯿﮟ ﯾﮩﺎﮞ ﻧﻌﺘﯿﮟ ﺑﯿﭽﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﯾﮩﺎﮞ ﺷﺎﻋﺮ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﮏ ﻟﻔﻆ ﮐﺎ ﺑﮭﺎﺅ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ ﯾﮩﺎﮞ ﺍﺩﯾﺐ ﮐﮯ
    ﮬﺮ ﭘﯿﺮﮮ ﻓﻘﺮﮮ ﮐﯽ ﺍﻟﮓ ﺍﻟﮓ ﻗﯿﻤﺖ ﻟﮕﺘﯽ ﮨﮯ۔ﯾﮩﺎﮞ ﺧﻮﻥ ﺑﮑﺘﺎ ﮨﮯ ﯾﮩﺎﮞ ﺳﮑﻮﻥ ﺑﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﯾﮩﺎﮞ
    ﺟﮭﻮﭦ ﺑﻮﻟﻨﮯ ﮐﯽ ﻗﯿﻤﺖ ﻭﺻﻮﻝ ﮐﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﯾﮩﺎﮞ ﺳﭻ ﺑﮭﯽ ﺍﭼﮭﯽ ﻗﯿﻤﺖ ﭘﺮ ﻧﯿﻼﻡ ﮨﻮﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔
    ﯾﮩﺎﮞ ﺑﺎﭖ ﺑﯿﭩﮯ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﭘﺮﻭﺭﺵ ﮐﯽ ﻗﯿﻤﺖ ﻟﯿﺘﺎ ﮨﮯ ﯾﮩﺎﮞ ﺑﯿﭩﺎ ﺑﺎﭖ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺧﺪﻣﺘﻮﮞ ﮐﮯ
    ﺭﻭﭘﮯ ﮐﮭﺮﮮ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ،ﯾﮩﺎﮞ ﺷﺮﺍﻓﺖ ﺑﮭﯽ ﺁﭖ ﺧﺮﯾﺪ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﯾﮩﺎﮞ ﺭﺳﻮﺍﺋﯽ ﺑﺪﻧﺎﻣﯽ ﮐﯽ ﺑﮭﯽ ﻣﻨﮧ
    ﻣﺎﻧﮕﯽ ﺭﻗﻢ ﻣﺎﻧﮕﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﯾﮩﺎﮞ ﮬﺮ ﮐﺎﺭﻭﺑﺎﺭﯼ ﺟﻠﺪﯼ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺳﮯ ﺧﺮﯾﺪﻧﮯ ﮐﮯ ﻓﻮﺭﺍ " ﺑﻌﺪ
    ﮐﭽﮫ ﺑﯿﭽﻨﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺧﺮﯾﺪﺍﺭ ﺗﻮ ﺑﮭﯽ ﺧﺮﯾﺪﺍﺭ، ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﺗﻮ ﺑﮭﯽ ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ، ﮐﺎﺭﻭﺑﺎﺭ
    ﮐﺎ ﺍﯾﺴﺎ ﺟﻤﻌﮧ ﺑﺎﺯﺍﺭ ﺟﺲ ﮐﺎ ﮨﻔﺘﮧ ﺍﺗﻮﺍﺭ ﮐﺒﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﺎ۔ﯾﮩﺎﮞ ﻋﺒﺎﺩﺗﻮﮞ ﮐﺎ ﺑﮭﯽ ﭘﺮﻭﺭﺩﮔﺎﺭ ﺳﮯ ﺳﻮﺩﺍ
    ﻃﮯ ﮐﺮ ﻟﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺗﻨﺎ ﺩﮮ ﮔﺎ ﺗﻮ ﺍﺗﻨﮯ ﻧﻔﻞ ﭘﮍﮬﻮﮞ ﮔﺎ۔ ﺍﺗﻨﺎ ﻣﻨﺎﻓﻊ ﮨﻮﺍ ﺗﻮ ﺍﺗﻨﮯ ﺭﻭﺯﮮ ﺭﮐﮭﻮﮞ ﮔﺎ۔
    ﻣﺴﺠﺪ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﺩﮮ ﻣﻨﺪﺭ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﺩﮮ ﭼﺮﭺ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﺩﮮ ﺩﺭﺑﺎﺭﻭﮞ ﭘﺮ ﺳﻮﺩﮮ، ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
    ﭼﻠﻮ ﺁﺅ ﺁﺝ ﺍﯾﮏ ﻧﯿﺎ ﺳﻮﺩﺍ ﮐﺮﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﯿﮟ۔
    ﭼﻠﻮ ﭘﺴﯿﻨﮧ ﺩﮮ ﮐﺮ ﺁﻧﺴﻮ ﺧﺮﯾﺪﯾﮟ۔ ﭼﻠﻮ ﭘﮭﻮﻝ ﺳﮯ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﺧﺮﯾﺪ ﮐﺮ ﺑﻠﺒﻞ ﮐﮯ ﻧﻐﻤﮯ ﮐﮯ ﻋﻮﺽ ﺍﺳﮯ
    ﺑﯿﭻ ﺩﯾﮟ۔ ﭼﻠﻮ ﻧﯿﻨﺪ ﺑﯿﭻ ﮐﺮ ﺧﻮﺍﺏ ﺧﺮﯾﺪﯾﮟ۔ ﭼﻠﻮ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﺩﮮ ﮐﺮ ﺍﺱ ﺳﮯ ﻣﺤﺒﺖ ﻟﮯ ﻟﯿﮟ۔ ﭼﻠﻮ ﺩﮬﻮﭖ
    ﺑﺎﺭﺵ ﭼﺎﻧﺪﻧﯽ ﮨﻮﺍ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺷﮑﺮ ﮐﮯ ﺑﺪﻟﮯ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﯾﮟ۔ ﭼﻠﻮ ﻇﺎﻟﻢ ﺳﮯ ﻇﻠﻢ ﺧﺮﯾﺪ ﮐﺮ ﺍﺳﮯ
    ﺍﻧﺴﺎﻧﯿﺖ ﺩﮮ ﺩﯾﮟ۔ ﭼﻠﻮ ﮐﺴﯽ ﺳﮯ ﺩﺭﺩ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺍﺳﮯ ﺧﻮﺷﯽ ﺩﮮ ﺩﯾﮟ۔ ﭼﻠﻮ ﺑﮯ ﻭﻓﺎﺋﯽ ﺧﺮﯾﺪ ﮐﺮ ﻭﻓﺎ
    ﺩﮮ ﺩﯾﮟ۔ ﺁﺅ ﺍﯾﮏ ﻃﻮﺍﺋﻒ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻣﺠﺒﻮﺭﯼ ﺧﺮﯾﺪ ﮐﺮ ﺍﺳﮯ ﻋﺰﺕ ﺩﮮ ﺩﯾﮟ۔ ﺁﺅ ﺁﺅ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﺁﺅ
    ﻭﻗﺖ ﮐﻢ ﮨﮯ ﯾﮧ ﻧﮧ ﮨﻮ ﺩﮐﺎﻧﯿﮟ ﺟﻞ ﮐﺮ ﺧﺎﮐﺴﺘﺮ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﯾﮧ ﻧﮧ ﮨﻮ ﺯﻣﯿﻦ ﻗﺪﻣﻮﮞ ﮐﮯ ﻧﯿﭽﮯ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﺎ
    ﺩﺍﻣﻦ ﺳﻤﯿﭧ ﻟﮯ۔ —
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں