1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

کیا انبیاء علیہ السلام اور اولیاء اللہ کا وسیلہ جائز ہے ؟؟؟؟

'وسیلہ' میں موضوعات آغاز کردہ از محمد عامر یونس, ‏نومبر 23، 2014۔

  1. ‏نومبر 23، 2014 #1
    محمد عامر یونس

    محمد عامر یونس خاص رکن
    جگہ:
    karachi
    شمولیت:
    ‏اگست 11، 2013
    پیغامات:
    16,968
    موصول شکریہ جات:
    6,506
    تمغے کے پوائنٹ:
    1,069

    کیا انبیاء علیہ السلام اور اولیاء اللہ کا وسیلہ جائز ہے ؟؟؟؟

    1622805_1449311461966513_1616247994_n.jpg
     
  2. ‏جولائی 09، 2019 #2
    afroz.saddam

    afroz.saddam مبتدی
    شمولیت:
    ‏جون 26، 2019
    پیغامات:
    13
    موصول شکریہ جات:
    3
    تمغے کے پوائنٹ:
    7

    السلام وعلیکم ورحمتہ اللہ وبرکاتہ کیا یہ حدیث صحیح ہے کیا اس طرح وسیلہ لینا جائز ہے برائے مہربانی اس کا جواب دے آپ کابھائی افروز صدام [​IMG]

    Sent from my SM-J250F using Tapatalk
     
  3. ‏جولائی 09، 2019 #3
    جلال Salafi

    جلال Salafi مبتدی
    شمولیت:
    ‏اپریل 13، 2019
    پیغامات:
    28
    موصول شکریہ جات:
    3
    تمغے کے پوائنٹ:
    13

    دعائے غیر اللہ کے بارے میں حنفی علما کے اقوال
    ۱۔جس شخص نے مشائخ و اولیا کی روحوں کے حاضر ہونے کا دعوی کیا وہ کافر ہے۔(فتح القدیر۴۰۹:۴)
    ۲۔جو شخص میت کے بارے میں کائنات کے تصرف و تدبر کا عقیدہ رکھے وہ کافر ہے۔(رد المختار۴۳۹:۲)
    ۳۔یا شیخ عبدالقادر شیا اللہ(شیخ عبدلقادر:اللہ کے لیے کچھ کیجیے)یہ جملہ کفر ہے۔(الفتاوی الخیریہ۱۸۲:۱)
    ۴۔شاہ ولی اللہ دہلوی رحہ شرک کی مختلف اقسام زکر کرنے کے بعد لکھتے ہیں:یہ بھی شرک ہے کہ غیر اللہ سے حاجت براری،مشکل کشائی اور مرض سے شفا کا سوال کیا جائے یا اپنے مقاسد کی تکمیل کے لیے غیر اللہ کے لیے نزذ نیاذ دی جائے یا ان کے ناموں کا وظیفہ کیا جائے۔جبکہ اللہ نے ہمیں نماز میں یہی حکم دیا ہے۔
    اِيَّاكَ نَعْبُدُ وَاِيَّاكَ نَسْتَعِيْنُ ہم صرف تیری ہی عبادت کرتے ہیں اور تجھ سے ہی مدد چاہتے ہیں۔ نیز اللہ کے سوا کسی کو مت پکارو۔(حجۃ اللہ البالغہ۶۲:۱)
     
  4. ‏جولائی 09، 2019 #4
    عدیل سلفی

    عدیل سلفی مشہور رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏اپریل 21، 2014
    پیغامات:
    1,565
    موصول شکریہ جات:
    412
    تمغے کے پوائنٹ:
    197


    وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ وبرکاتہ

    وسیلے سے متعلق ایک حدیث کی صحت

     
    • پسند پسند x 1
    • زبردست زبردست x 1
    • لسٹ
  5. ‏جولائی 09، 2019 #5
    afroz.saddam

    afroz.saddam مبتدی
    شمولیت:
    ‏جون 26، 2019
    پیغامات:
    13
    موصول شکریہ جات:
    3
    تمغے کے پوائنٹ:
    7

    جزاکم اللہ خیر

    Sent from my SM-J250F using Tapatalk
     
  6. ‏جولائی 10، 2019 #6
    afroz.saddam

    afroz.saddam مبتدی
    شمولیت:
    ‏جون 26، 2019
    پیغامات:
    13
    موصول شکریہ جات:
    3
    تمغے کے پوائنٹ:
    7

    Musnad Ahmed Hadees # 5678

    ۔ (۵۶۷۸۔) عَنْ عُثْمَانَ بْنِ حُنَیْفٍ أَنَّ رَجُلًا ضَرِیرًا أَتَی النَّبِیَّ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم فَقَالَ: یَا نَبِیَّ اللّٰہِ! ادْعُ اللّٰہَ أَنْ یُعَافِیَنِی، فَقَالَ: ((إِنْ شِئْتَ أَخَّرْتُ ذٰلِکَ فَہُوَ أَفْضَلُ لِآخِرَتِکَ، وَإِنْ شِئْتَ دَعَوْتُ لَکَ۔)) قَالَ: لَا، بَلِ ادْعُ اللّٰہَ لِی فَأَمَرَہُ أَنْ یَتَوَضَّأَ وَأَنْ یُصَلِّیَ رَکْعَتَیْنِ، وَأَنْ یَدْعُوَ بِہٰذَا الدُّعَائِ، ((اَللّٰھُمَّ إِنِّی أَسْأَلُکَ وَأَتَوَجَّہُ إِلَیْکَ بِنَبِیِّکَ مُحَمَّدٍ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نَبِیِّ الرَّحْمَۃِ، یَا مُحَمَّدُ! إِنِّی أَتَوَجَّہُ بِکَ إِلٰی رَبِّی فِی حَاجَتِی ہٰذِہِ فَتَقْضِی وَتُشَفِّعُنِی فِیہِ وَتُشَفِّعُہُ فِیَّ)) (مسند أحمد: ۱۷۳۷۳)

    ۔ سیدنا عثمان بن حنیف ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ سے مروی ہے کہ ایک نابینا آدمی، نبی کریم ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم کے پاس آیا اور اس نے کہا: اے اللہ کے نبی! آپ اللہ تعالیٰ سے دعا کریں کہ وہ مجھے عافیت دے، آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے فرمایا: اگر تو چاہتا ہے تو میں اس دعا کو مؤخر کر دیتا ہوں، یہ تیری آخرت کے لیے افضل ہو گا، اور اگر تو چاہتا ہے تو میں تیرے لیے دعا کر دیتا ہوں۔ اس نے کہا: نہیں، بس آپ اللہ تعالیٰ سے میرے لیے دعا ہی کر دیں، پس آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے اس کو حکم دیا کہ وہ وضو کر کے دو رکعتیں ادا کرے اور یہ دعا پڑھے: اَللّٰھُمَّ إِنِّی أَسْأَلُکَ وَأَتَوَجَّہُ إِلَیْکَ بِنَبِیِّکَ مُحَمَّدٍ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نَبِیِّ الرَّحْمَۃِ، یَا مُحَمَّدُ! إِنِّی أَتَوَجَّہُ بِکَ إِلٰی رَبِّی فِی حَاجَتِی ہٰذِہِ فَتَقْضِی وَتُشَفِّعُنِی فِیہِ وَتُشَفِّعُہُ فِیَّ۔ (اے اللہ! بیشک میں تجھ سے سوال کرتا ہوں اور تیرے نبی محمد ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم کے ساتھ تیری طرف متوجہ ہوتاہے،جو کہ رحمت والے نبی ہیں، اے محمد! میں اپنی ضرورت پورا کروانے کے لیے آپ کے ساتھ اپنے ربّ کی طرف متوجہ ہوتا ہوں، پس (اے اللہ!) تو میری حاجت پوری کر دے اور آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم کی سفارش میرے حق میں قبول فرما)۔ اور آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے فرمایا: اس کے حق میں میرے سفارش قبول فرما۔
    Sahih Hadees



    Sent from my SM-J250F using Tapatalk
     
  7. ‏جولائی 10، 2019 #7
    عدیل سلفی

    عدیل سلفی مشہور رکن
    جگہ:
    کراچی
    شمولیت:
    ‏اپریل 21، 2014
    پیغامات:
    1,565
    موصول شکریہ جات:
    412
    تمغے کے پوائنٹ:
    197

    السلام علیکم ورحمتہ اللہ وبرکاتہ

    اس حدیث کا ہر ٹکڑا دعُا کو ثابت کر رہا ہے!

    نابینا شخص کا دعُا کا درخواست کرنا۔
    آپ ﷺ کی طرف سے دعُا اور صبر میں سے کسی ایک کو اختیار کرنے کی تلقین فرمانا۔
    لیکن نابینا شخص کا دعُا پر اصرار کرنا۔
    آپﷺ کا نابینا شخص کو دعُا سکھانا اور خود بھی دعُا فرمانا۔
    نابینا شخص کی دعُا کی قبولیت کے لیے دعُا کرنا۔

    یہ سب باتیں اس بات کا واضح ثبوت ہیں کہ اس حدیث میں حضورﷺ کی ذاتِ مبارک کا وسیلہ لینا کا کوئی تصور ہی نہیں، بلکہ صرف دعُا کے وسیلہ کی تکرار ہے اور دعُا کا وسیلہ مشروع ہے، آپﷺ نے بھی دعُا فرمائی اور اس نابینا شخص نے بھی، اللہ نے دعُا قبول فرمائی اور نابینا شخص بینا ہوگیا، اور اگر آپﷺ کے جاہ، حق اور ذات کا وسیلہ مقصود ہوتا تو اس نابینا شخص کو تکلیف اُٹھا کر حضورﷺ کی مجلس میں آنے کی ضرورت ہی نہیں تھی۔ وہ اپنے گھر میں بیٹھے بیٹھے یہ دعُا کرلیتا کہ اے اللہ، اپنے نبی کے جاہ و مرتبہ کے وسیلے سےمیری روشنی لوٹا دے، لیکن ایسا نہ وہ سمجھتا تھا، نہ صحابہ کرامؓ ہی اس قسم کے وسیلے سے واقف تھے، نہ آنحضورﷺ اُس کو اِس کی اجازت دیتے، نیز صحابہ کرامؓ، محدثین و آئمہ کرام میں سے کسی نے اس واقعہ سے شخصیت اور ذاتِ نبویﷺ کے وسیلے کو نہیں سمجھا، سب نے دعُا کا وسیلہ سمجھا۔

    اب جو لوگ اس حدیث کو اپنے مطلب کے مطابق استعمال کرنا چاہتے ہیں تو کسی کے چاہنے سے حدیث کا مفہوم کیسے بدل سکتا ہے؟

    اللہ تعالی ہمیں فہمِ صحیح عطا فرمائے اور احادیث کو اسی طرح سمجھنے کی توفیق بخشے جس طرح صحابہ کرامؓ اور ہمارے سلف صالحین سمجھتے تھے۔
     
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں