1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

کیا جھینگے حلال ہیں؟

'جدید فقہی مسائل' میں موضوعات آغاز کردہ از فاطمہ بتول, ‏اپریل 28، 2016۔

  1. ‏اپریل 28، 2016 #1
    فاطمہ بتول

    فاطمہ بتول مبتدی
    شمولیت:
    ‏اپریل 21، 2016
    پیغامات:
    5
    موصول شکریہ جات:
    6
    تمغے کے پوائنٹ:
    4

    السلام علیکم ورحمہ اللہ وبرکاتہ​
    احناف کے نزدیک جھینگے مکروہ ہیں جبکہ علمائے سلف انہیں مچھلی کی قسم پر محمول کرتے ہوئے حلال قرار دیتے ہیں۔جھینگے کے حلال ہونے کے بارے میں تفصیلی جواب چاہیے۔جزاکم اللہ خیرا
    @اسحاق سلفی
    @محمد عامر یونس
     
  2. ‏اپریل 28، 2016 #2
    ابن قدامہ

    ابن قدامہ مشہور رکن
    جگہ:
    درب التبانة
    شمولیت:
    ‏جنوری 25، 2014
    پیغامات:
    1,772
    موصول شکریہ جات:
    421
    تمغے کے پوائنٹ:
    198

    السلام علیکم شیچ

    مچھلیوں میں کون کونسی مچھلی حلال ہے‌؟ کؤی خاص پہچان ہے اُس کی ؟

    جیسے کجھ حضرات بغیر سِننے ( چھال ) والی مچھلی کو حرام کہتے ہیں ؟

    نیز جھینگے کے بارے میں بتائیں کہ حلال ہے یا حرام ؟

    سمندری جانوروں میں کیا کیا حلال ہے ؟


    ۔ ہمہ قسم مچھلی حلال ہے !
    ۲۔ جھینگا بھی مچھلی ہی ہے ۔
    ۳۔ جو جانور " مائی " ہیں یعنی پانی کے بغیر زندہ نہیں رہ سکتے سب حلال ہیں
    أُحِلَّ لَكُمْ صَيْدُ الْبَحْرِ وَطَعَامُهُ مَتَاعاً لَّكُمْ وَلِلسَّيَّارَةِ وَحُرِّمَ عَلَيْكُمْ صَيْدُ الْبَرِّ مَا دُمْتُمْ حُرُماً وَاتَّقُواْ اللّهَ الَّذِيَ إِلَيْهِ تُحْشَرُونَ [المائدة : 96]

    لنک
     
    • شکریہ شکریہ x 2
    • مفید مفید x 1
    • لسٹ
  3. ‏اپریل 29، 2016 #3
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    6,362
    موصول شکریہ جات:
    2,395
    تمغے کے پوائنٹ:
    791

    وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
    اولاً :
    معروف دینی سوال وجواب کی سائیٹ (الاسلام سوال و جواب ) کا ایک فتوی ملاحظہ فرمائیں :

    پانی میں رہنے والے جانور انڈے دینے والے ہوں یا بچے دینے والے سب حلال ہیں۔
    سوال: میں یہ جانتا ہوں کہ تمام پانی کے جانور حلال ہیں، لیکن ایک شخص کا کہنا ہے کہ "حوت" [وہیل یا ویل مچھلی] کھانا جائز نہیں ہے، کیونکہ یہ بچے دیتی ہے، دیگر مچھلیوں کی طرح انڈے نہیں دیتی، اپنے اس دعوے کیلئے اس نے دلیل یہ دی کہ جیسے دریائی بچھڑا [Seal]، کچھوا، اور سمندری ہاتھی ۔۔۔ الخ کو کھانا جائز نہیں ہے؛ کیونکہ یہ بھی بچے دیتے ہیں، انڈے نہیں دیتے۔
    تو کیا یہ بات ٹھیک ہے کہ ان جانوروں کو کھانا جائز نہیں ہے؟ اور کیا اس بارے میں قرآن مجید یا صحیح احادیث میں کچھ بیان ہوا ہے؟
    ایک اور بات یہ ہے کہ ہم سمندری مخلوقات میں حلال اور حرام میں فرق کیسے کریں گے؟ مثلا : شارک سمندر میں رہتی ہے، اس اعتبار سے یہ حلال ہے، لیکن یہ مچھلی خونخوار اور درندہ صفت بھی ہے، اس اعتبار سے اس جانور کو کھانا حرام ہوگا، کیونکہ خونخوار ، درندہ صفت جانوروں کو کھانا جائز نہیں ہے، مجھے تفصیل کیساتھ آگاہ کردیں۔
    ـــــــــــــــــــــــــــــــــــ۔
    جواب :
    الحمد للہ:
    اول:
    پہلے یہ بات گزر چکی ہے کہ جو جانور صرف پانی ہی میں رہتے ہیں، انہیں زندہ مردہ، ہر حالت میں کھانا حلال ہے، کیونکہ فرمانِ الہی عام ہے:
    ( أُحِلَّ لَكُمْ صَيْدُ الْبَحْرِ وَطَعَامُهُ ) تمہارے لئے سمندر کا شکار اوراسکا کھانا حلال قرار دیا گیا ہے[المائدة: 96]
    اور ابو داود (83) میں ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے سمندر کے بارے میں فرمایا: (سمندر [کا پانی] پاک کرنیوالا ہے، اور اسکا مردار حلال ہے) البانی نے "صحیح ابو داود " میں اسے صحیح کہا ہے۔

    دائمی فتوی کمیٹی کے علمائے کرام کا کہنا ہے کہ:
    "سمندر کے ایسے جانور جو فطرتاً پانی ہی میں رہتے ہیں، اصولی طور پر حلال ہیں"انتہی
    "فتاوى اللجنة الدائمة" (22 /313)

    چنانچہ سمندری جانوروں کے بارے میں قاعدہ کلیہ یہ ہے کہ کوئی بھی جانور جو پانی کے بغیر نہیں رہتا، اسے کھانا حرام نہیں ہے۔
    جبکہ برمائی جانور[جو خشکی اور پانی دونوں جگہ رہنے کی صلاحیت رکھتے ہوں] وہ سب کے سب حلال نہیں ہیں۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    دوم:
    "حوت" [وہیل یا ویل مچھلی] کھانا حلال ہے، کیونکہ یہ بھی مچھلی کی ہی ایک قسم ہے۔
    چنانچہ لسان العرب (2/26)میں ہے کہ:
    "حوت مچھلی کو کہتے ہیں، اور یہ بھی کہا گیا ہے کہ بہت بڑی مچھلی کو حوت کہتے ہیں"انتہی
    سنن ابن ماجہ: (3218) میں عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: (ہمارے لئے دو مردار حلال کر دئیے گئے ہیں: مچھلی اور ٹڈی)اس حدیث کو البانی رحمہ اللہ نے "صحیح ابن ماجہ " میں صحیح کہا ہے۔
    اور یہ بات پہلے ہی گزر چکی ہے کہ سمندر کے تمام [پانی والے]جانور حلال ہیں۔
    اور صحیح بخاری : (4362) اور مسلم: (1935) میں ہے کہ سیدناجابر رضی اللہ عنہ کہتے ہیں : ہم نے "جیش الخبط" کیلئے تیاری کی، اور ابو عبیدہ رضی اللہ عنہ کو ہمارا امیر مقرر کیا گیا، ہمیں اس دوران شدید بھوک کا سامنا کرنا پڑا، تو سمندر نے بہت بڑی مچھلی کنارے لگا دی، ہم نے اتنی بڑی مچھلی کبھی نہیں دیکھی تھی، اسے "عنبر" کہا جاتا تھا، ہم نے آدھا مہینہ اسکا گوشت کھایا، اور ابو عبیدہ رضی اللہ عنہ نے اسکا ایک کانٹا پکڑ کر [کھڑا کروایا] تو ایک سوار آدمی اسکے نیچے سے گزر گیا، [راوی کہتا ہے کہ ]مجھے ابو زبیر نے کہا: میں نے جابر رضی اللہ عنہ کو کہتے ہوئے سنا کہ ابو عبیدہ نے ہمیں کہا: "مچھلی کو کھاؤ" جب ہم مدینہ آئے تو ہم نے یہ سارا ماجرا آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو بھی بیان کیا، تو آپ نے فرمایا: (اسے کھاؤ، یہ اللہ کی طرف سے تمہارئے لئے رزق ہے، اور اگر اس میں سے کچھ بچا ہوا ہو تو ہمیں بھی کھلاؤ) تو صحابہ کرام نے اپنے پاس بچا ہوا گوشت پیش کیا، اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے تناول فرمایا۔

    مچھلی کے انڈے یا بچے دینے کا شرعی حکم کے ساتھ کوئی تعلق نہیں ہے، اور نہ ہی اس سے شرعی حکم متاثر ہوگا، کیونکہ شریعت میں ایسی کوئی قید نہیں ہے کہ پانی کا جو بھی جانور بچے جنے اور انڈے نہ دے اسے کھانا حرام ہے، بلکہ شرعی دلائل کا عموم مطلق طور پر انہیں کھانے کی اجازت دیتا ہے، اور یہ دلائل سے واضح ہے، اس میں کسی قسم کا اشکال نہیں ہے۔

    سوم:

    شارک مچھلی بھی مندرجہ بالا دلائل کی وجہ سے حلال ہے، اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا عام فرمان ہے کہ: (تمہارے لئے دو مردار، اور دو خون حلال قراد دئیے گئے ہیں، مردار سے مچھلی ، اور ٹڈی مراد ہے، جبکہ خون سے جگر اور تلی مراد ہیں)ابن ماجہ: (3314) البانی نے اسے صحیح کہا ہے۔
    اس مچھلی کے خونخوار ہونے کی وجہ سے یہ حرام نہیں ہوگی، کیونکہ کچلی والے جانوروں کی حرمت خشکی کے جانوروں کیلئے مختص ہے، چنانچہ پانی کے جانوروں پر یہ حکم لاگو نہیں ہوگا۔

    شیخ ابن عثیمین رحمہ اللہ کہتے ہیں:
    "یہ بات درست نہیں ہے کہ جو کچھ خشکی میں حرام ہے اسی طرح کا جانور سمندر میں ہو تو وہ بھی حرام ہوگا، کیونکہ سمندر کے احکامات بالکل الگ ہیں، حتی کہ کچھ ایسے جانور بھی ہیں جو کہ کچلی والے اور چیر پھاڑ کرنے والے ہیں، مثلا: شارک مچھلی۔۔۔، خلاصہ کلام یہ ہے کہ کہ کچھ چیزیں سمندر میں ایسی ہیں جو قتل کی حد تک خونخوار ہیں، لیکن اسکے باوجود وہ حلال ہیں"انتہی مختصراً
    "الشرح الممتع" (15 /34)

    دائمی فتوی کمیٹی کے علمائے کرام سے پوچھا گیا:
    "شارک مچھلی حلال ہے یا حرام؟"
    تو انہوں نے جواب دیا:
    "مچھلی کی تمام اقسام حلال ہیں، حتی کہ شارک وغیرہ سب حلال ہیں، کیونکہ اللہ تعالی کا فرمان عام ہے: ( أُحِلَّ لَكُمْ صَيْدُ الْبَحْرِ وَطَعَامُهُ ) تمہارے لئے سمندر کا شکار اوراسکا کھانا حلال قرار دیا گیا ہے[المائدة: 96] اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان ہے کہ: (سمندر [کا پانی] پاک کرنیوالا ہے، اور اسکا مردار حلال ہے)"انتہی
    "فتاوى اللجنة الدائمة" (22 /320)
    ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
    دارالعلوم دیوبند کا فتوی درج ذیل ہے

    سوال # 1705
    کیا کیکڑا ور جھینگا کھانا حلال ہے؟ براہ کرم ، قرآن کے حوالے سے جواب دیں۔ (۲) اگر الکوحل کو شوگر اسکریپ (گنے کے رس کا فضلہ) سے بنا یا جائے تو کیا اس الکوحل کو پر فیوم میں استعمال کرنا حلال ہے؟
    Published on: Nov 3, 2007 جواب # 1705

    بسم الله الرحمن الرحيم
    فتوی: 619/ م= 614/ م
    (۱) دریائی جانوروں میں صرف مچھلی حلال ہے اور کیکڑا مچھلی میں داخل نہیں، لہٰذا کیکڑا حلال نہیں، در مختار میں ہے: فلا یجوز اتفاقًا کحیات وضبّ و ما في بحرٍ کسرطان إلا السمک۔ جھینگے کے بارے میں اختلاف ہے کہ وہ مچھلی ہے یا نہیں؟ جن حضرات کے نزدیک اس کا مچھلی ہونا محقق ہے وہ جائز کہتے ہیں۔ اور جن کے نزدیک مچھلی کی تعریف اس پر صادق نہیں آتی وہ اسے ناجائز کہتے ہیں، بہرحال یہ ایک اجتہادی مسئلہ ہے کسی جانب تشدد اختیار کرنا ٹھیک نہیں، اورجھینگا کھانے سے اجتناب کرنا زیادہ مناسب اور احوط ہے:
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    لیکن جامعہ اشرفیہ لاہور کا فتوی مندرج ذیل ہے
    سوال :
    سمندری جانوروں میں سے کون کون سے جانور حلال ہیں اور کون سے حرام ہیں نیز جھینگے کا کیا حکم ہے؟
    ــــــــــــــــــــــــــــــ
    جواب:

    سمندری جانوروں میں سے صرف مچھلی حلال ہے اس کے سوا تمام جانور حرام ہیں جھینگا کو بھی چونکہ عرف میں مچھلی ہی کہا جاتا ہے اس لیے یہ حلال ہے۔ (ردالمحتار ۵/۲۰۶، ۳۱۶)"
    http://ashrafulfatawa.com/bookdetail.php?bid=1&t=12&ln=ur&type=c&ct=2&qid=408
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    اور جامعہ بنوریہ سے بھی اس کے حلال ہونے کا فتوی دیا گیا ہے
    دیکھئے :(http://www.banuri.edu.pk/readquestion/jheengay-ka-hukum/-0001-11-30 )
    ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
    اور مشہور عربی سائیٹ اسلام ویب پر بھی اس کی حلت کا فتوی صادر کیا ہے
    حكم أكل الجمبري

    رقم الفتوى: 78187
    السؤال
    أريد أن أعرف مدى مشروعية أكل الجمبري لأني قد سمعت أن أكل الجمبري مكروه؟ جزاكم الله خيراً.
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    الإجابــة
    الحمد لله والصلاة والسلام على رسول الله وعلى آله وصحبه، أما بعـد:

    فإن جميع ما يخرج من البحر يعتبر مباح الأكل عند جمهور أهل العلم، لقول الله عز وجل: أُحِلَّ لَكُمْ صَيْدُ الْبَحْرِ وَطَعَامُهُ مَتَاعًا لَّكُمْ وَلِلسَّيَّارَةِ... {المائدة:96}، وقول النبي صلى الله عليه وسلم في البحر: هو الطهور ماؤه الحل ميتته. رواه أصحاب السنن.
    وقال مالك في المدونة: يوكل كل ما في البحر الطافي وغير الطافي من صيد البحر كله...
    ولذلك فأكل الجمبري يعتبر مباحاً لأنه داخل في عموم النصوص المذكورة، وللمزيد من الفائدة نرجو أن تطلع على الفتوى رقم: 5215، والفتوى رقم: 46453.

    والله أعلم.

    اور اوپر ابن قدامہ بھائی نے علامہ رفیق طاہر حفظہ اللہ کا فتوی نقل کیا ہے ،
    انہوں سورہ المائدہ آیت (۹۶ ) کا حوالہ دے کر جھینگے کی حلت بیان کی ہے ،اس آیت کا ترجمہ و تفسیر پیش خدمت ہے :
    ترجمہ :
    ’’ تمہارے لیے سمندر کا شکار اور اس کا کھانا حلال کیا گیا ہے۔ تم بھی اس سے فائدہ اٹھا سکتے ہو اور قافلہ والے زاد راہ بھی بنا سکتے ہیں۔ ‘‘
    اس کی تفسیر علامہ عبد الرحمن کیلانی رحمہ اللہ لکھتے ہیں :
    ہر طرح کا سمندری جانور حلال ہے :۔
    اس آیت کی رو سے تمام سمندری جانور حلال ہیں۔ البتہ مینڈک اور مگر مچھ یا اسی قبیل کا کوئی اور جانور جو پانی اور خشکی دونوں جگہ زندہ رہ سکتا ہو ان کی حلت میں اختلاف ہے۔ مزید یہ کہ ان سمندری جانوروں کو ذبح کرنے کی بھی ضرورت پیش نہیں آتی۔ کیونکہ وہ پانی سے جدا ہوتے ہی مر جاتے ہیں اور اگر چند لمحے زندہ بھی رہیں تو بھی انہیں ذبح کرنے کی ضرورت نہیں جیسے مچھلی خواہ وہ زندہ ہو یا مر چکی ہو ہر حال میں حلال ہے۔ اور اگر زندہ مچھلی کو پانی سے نکال لیا جائے تو وہ چند ساعت بعد خودبخود مر جاتی ہے۔
    [١٤٤] سمندری وہیل مچھلی اور غزوہ سیف البحر :۔ سیدنا جابر بن عبداللہ (رض) فرماتے ہیں کہ ''رسول اللہ نے (٨ ھ میں) سمندر کے کنارے ایک لشکر بھیجا اور سیدنا ابو عبیدہ بن الجراح ص کو اس کا سردار مقرر کیا۔ یہ تین سو آدمی تھے اور میں بھی ان میں شامل تھا۔ راستہ میں ہمارا زاد راہ ختم ہوگیا۔ ابو عبیدہ نے حکم دیا کہ سب لوگ اپنا اپنا توشہ لا کر اکٹھا کریں۔ ایسا کیا گیا تو کل زاد راہ کھجور کے دو تھیلے جمع ہوئے۔ ابو عبیدہ ان میں سے ہم کو تھوڑا تھوڑا دیا کرتے۔ حتیٰ کہ وہ بھی ختم ہونے کو آئے تو فی کس ایک کھجور یومیہ دینے لگے۔ وہب کہتے ہیں کہ میں نے (رض) سے پوچھا کہ ایک کھجور سے تمہارا کیا بنتا ہوگا۔ انہوں نے کہا جب وہ بھی نہ رہی تب ہمیں معلوم ہوا کہ وہ ایک کھجور بھی غنیمت تھی۔ پھر جب ہم سمندر پر پہنچے تو دیکھا کہ پہاڑ کی طرح ایک بہت بڑی مچھلی پڑی ہے۔ لشکر کے لوگ اٹھارہ دن تک اسی میں سے کھاتے رہے۔ پھر ابو عبیدہ نے حکم دیا۔ اس کی دو پسلیاں کھڑی کی گئیں تو اونٹ ان کے نیچے سے نکل گیا اور پسلیوں کی بلندی تک نہ پہنچا۔'' (بخاری۔ باب الشرکۃ فی الطعام وغیرہ)
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    اور حافظ عبد السلام بھٹوی لکھتے ہیں :
    اُحِلَّ لَكُمْ صَيْدُ الْبَحْرِ۔۔ :
    ” الْبَحْرِ“ سے مراد پانی ہے، اس میں سمندر اور غیر سمندر سب پانی برابر ہیں اور اس میں وہ تمام جانور شامل ہیں جو پانی سے باہر زندہ نہیں رہ سکتے، وہ مچھلی ہو یا کوئی اور جانور۔ زندہ بھی پکڑے جائیں تو ذبح کی ضرورت ہی نہیں۔ قرآن و حدیث میں پانی کے شکار کو حلال کہا گیا ہے اور کسی صحیح حدیث میں یہ نہیں کہ مچھلی کے سوا سب حرام ہیں۔ ” صَيْدُ الْبَحْرِ“ سے مراد پانی کا ہر وہ جانور ہے جو زندہ پکڑا جائے اور ” طَعَام“ سے مراد پانی کا وہ جانور ہے جو وہیں مر جائے اور سمندر یا دریا اسے باہر پھینک دے، یا مر کر پانی کے اوپر آ جائے۔ نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) سے بھی یہ تفسیر آئی ہے۔ ابن جریر (رض) نے آپ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کا یہ فرمان نقل کیا ہے : ( طَعَامُہُ مَا لَفِظَہُ الْبَحْرُ مَیْتًا) یعنی اس آیت میں ” طَعَام“ سے مراد وہ جانور ہے جسے سمندر مردہ حالت میں کنارے پر پھینک دے۔ ” ہدایۃ المستنیر“ کے مصنف نے اسے حسن قرار دیا ہے۔ ابن جریر نے بہت سے صحابہ سے یہی معنی نقل فرمایا ہے۔ بعض لوگوں نے صرف مچھلی کو حلال اور پانی کے دوسرے تمام جانوروں کو حرام کہہ دیا ہے اور وہ بھی صرف وہ جو زندہ پکڑی جائے، اگر مر کر پانی کے اوپر آجائے تو اسے حرام کہتے ہیں۔ یہ دونوں باتیں درست نہیں، کیونکہ وہ اس آیت کے خلاف ہیں۔

    صحابہ کرام (رض) نے نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) سے سمندر کے پانی کے متعلق پوچھا تو آپ نے فرمایا : ( ھُوَ الطَّھُوْرُ مَاؤُہُ، الْحِلُّ مَیْتَتُہُ) ” سمندر کا پانی پاک ہے اور اس کا مردہ حلال ہے۔“ [ الموطأ، الطہارۃ، باب الطھور للوضوء : ١٢۔ أبوداوٗد : ٨٣۔ ترمذی : ٦٩، صححہ الألبانی ] اسی طرح کچھ صحابہ کرام (رض) کو نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے ایک جنگی مہم پر بھیجا، ان کے پاس کھانے کی چیزیں ختم ہوگئیں تو انھوں نے ٹیلے جیسی ایک بہت بڑی مچھلی دیکھی، جسے سمندر کا پانی کنارے پر چھوڑ کر ہٹ چکا تھا۔ ابو عبیدہ (رض) امیر تھے، انھوں نے اسے کھانے کی اجازت دے دی، ایک ماہ تک تین سو آدمی اسے کھاتے رہے اور خشک کر کے ساتھ بھی لے آئے، رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا : ” تمھارے پاس اس کا کچھ گوشت ہے تو ہمیں بھی دو۔“ چنانچہ صحابہ نے کچھ گوشت آپ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی طرف بھیجا تو آپ نے تناول فرمایا۔ [ مسلم، الصید والذبائح،
    باب إباحۃ میتات البحر : ١٩٣٥ ]
     
    Last edited: ‏جولائی 16، 2018
    • علمی علمی x 5
    • پسند پسند x 1
    • زبردست زبردست x 1
    • مفید مفید x 1
    • لسٹ
  4. ‏مئی 01، 2016 #4
    فاطمہ بتول

    فاطمہ بتول مبتدی
    شمولیت:
    ‏اپریل 21، 2016
    پیغامات:
    5
    موصول شکریہ جات:
    6
    تمغے کے پوائنٹ:
    4

    جزاکما اللہ خیرا
     
  5. ‏اگست 18، 2016 #5
    مقبول احمد سلفی

    مقبول احمد سلفی سینئر رکن
    جگہ:
    اسلامی سنٹر،طائف، سعودی عرب
    شمولیت:
    ‏نومبر 30، 2013
    پیغامات:
    1,241
    موصول شکریہ جات:
    353
    تمغے کے پوائنٹ:
    209

    بلاشبہ جھینگا مچھلی حلال ہے
    مضمون نگار: مقبول احمد سلفی

    جھینگا مچھلی کے متعلق عوام میں غلط فہمیاں پھیلی ہوئی ہیں ، اس کی وجہ علماء کے درمیان مختلف قسم کے فتاوے ہیں ، کسی نے جھینگا کو مچھلی کہا، کسی نے مچھلی نہیں مانا۔ کسی نے اس کا کھانا جائزکہا، کسی نے ناجائزکہاتوکسی نے مکروہ تحریمی کہا۔یہ مختلف قسم کے فتاوے لوگوں کے لئے الجھن کا سبب بنے ہوئے ہیں، میں نے اس الجھن کو دور کرنے کی ایک چھوٹی کوشش کی ہے ۔
    اس مسئلہ کو سلجھانے کے لئے سب سے پہلے دریائی حیوانوں اور مچھلیوں کے متعلق شریعت کا حکم دیکھنا پڑے گا۔ قرآن کریم میں اللہ تعالی کا فرمان ہے :
    أُحِلَّ لَكُمْ صَيْدُ الْبَحْرِ وَطَعَامُهُ مَتَاعاً لَّكُمْ وَلِلسَّيَّارَةِ وَحُرِّمَ عَلَيْكُمْ صَيْدُ الْبَرِّ مَا دُمْتُمْ حُرُماً وَاتَّقُواْ اللّهَ الَّذِيَ إِلَيْهِ تُحْشَرُونَ [المائدة : 96]
    ترجمہ: ترجمہ: تمہارے لئے دریا کا شکار پکڑنا اور اس کا کھانا حلال کیا گیا ہے، تمہارے فائدے کے واسطے اور مسافروں کے واسطے اور خشکی کا شکار پکڑنا تمہارے لئے حرام کیا گیا جب تک تم حالت احرام میں رہواور اللہ تعالی سے ڈرو جس کے پاس جمع کئے جاؤگے ۔
    اس آیت میں محرم(جوحالت احرام میں ہو) کا حکم بتایاجارہے کہ وہ احرام میں صرف دریا کا شکار کرسکتا ہے ، جب تک احرام میں ہےوہ خشکی کا شکار نہیں کرسکتا ۔
    آیت کا لفظ "صید "عام ہے جو دریا کی مچھلیوں سمیت تمام قسم کے حیوانوں کو شامل ہے ۔اور "البحر" سے مراد ہرقسم کے پانی کا اسٹور خواہ تالاب ہو، ندی ہو،نالہ ہو، دریاہو،سمندرہو۔اس آیت کا مفہوم یہ ہوا کہ وہ حیوان خواہ جانور ہویامچھلی جو پانی میں ہی زندگی بسر کرتاہو ، پانی کے بغیر وہ زندہ نہیں رہ سکتا وہ سب شکار میں داخل ہے اوراس کا کھاناہمارے لئے حلال ہے ۔
    اسی طرح حدیث میں ہے جابر بن عبداللہ رضی اللہ سے روایت ہےکہ نبی ﷺ سے سمندر کے پانی کے بارے میں سوال کیا گیا تو آپ نے فرمایا:
    هوَ الطَّهورُ ماؤُهُ الحلُّ ميتتُهُ( صحيح ابن ماجه:316)
    ترجمہ: سمندر کا پانی پاک ہے اور اس کا مردہ حلال ہے۔
    اس حدیث میں دوباتوں کا ذکر ہے ۔ پہلی بات یہ ہے کہ سمندر کا پانی پاک ہے ۔ دوسری بات یہ ہے کہ سمندر کا میتہ (مردار) حلال ہے ۔ یہ میتہ کیا ہے ؟ اس سے کیا مراد ہے اس کی وضاحت دوسری حدیث رسول ﷺ سے ہوجاتی ہے ۔
    نبی ﷺ کا فرمان ہے :
    أحلَّت لَكُم ميتتانِ ودَمانِ ، فأمَّا الميتَتانِ ، فالحوتُ والجرادُ ، وأمَّا الدَّمانِ ، فالكبِدُ والطِّحالُ(صحيح ابن ماجه:2695)
    ترجمہ:تمہارے لئے دو مردار اور دو خون حلال قراد دئیے گئے ہیں۔ مردار سے مچھلی اور ٹڈی مراد ہیں جبکہ خون سے جگر اور تلی مراد ہیں۔
    اب بات واضح ہوگئی کہ سمندر کی مری ہوئی مچھلی ہمارے لئے حلال ہے ۔ اس حدیث سے ایک مسئلہ اور بھی واضح ہوگیا کہ جب مردار مچھلی جائز ہے تو زندہ مچھلی خواہ کسی قسم کی ہو بدرجہ اولی جائز ہے۔
    قرآن وحدیث کی روشنی میں یہ بات واضح ہوگئی کہ سمندر میں پائی جانے والی ہرقسم کی مچھلی کا شکار کرنا اور اس کا کھانا ہمارے لئے جائز ہے ۔

    کیا جھینگا مچھلی نہیں ہے ؟
    اب ہم یہ جانتے کی کوشش کرتے ہیں کہ حنفیہ نے شک کی وجہ سے جھینگا نہ کھانا احوط کہااور اس کا کھانا مکروہ تحریمی لکھاہے ۔ اس کی وجہ کیا ہے ؟تلاش کرنے سے معلوم ہوتاہےکہ بعض حنفیہ کے یہاں جھینگا مچھلی میں شمار نہیں ہوتی ، یہ ایک جانور ہے اور حنفیہ کے یہاں مچھلی کے علاوہ سمندر کا کچھ بھی حلال نہیں جیساکہ البدائع، فتاوی ہندیہ اور درمختار میں لکھاہے۔ حالانکہ ائمہ ثلاثہ کے یہاں جھینگا پہ کوئی کلام نہیں۔
    جھینگا کو عربی میں جمبري ، إرْبِيَان ، رُوبِيَان ،قُرَيْدِس ،قَمرون اور بُرْغوث البحروغیرہ ۔ انگریزی میں Prawns اور Shrimp، اٹلی میں Gambero، رومی میں Cammarus, اسبانی میں Camaron, ترکی میں Karides، فرنسی میں Crevettes کہتے ہیں ۔ اس کی تقریبا دو ہزار اقسام پائی جاتی ہیں ۔
    لغت کی کتاب ، طب کی کتاب اور علم الحیوان کی کتاب دیکھنے سے علم ہوتا ہے کہ ان ساری جگہوں میں جھینگا کو مچھلی کی ہی قسم لکھا ہے ۔ قدیم وجدیدکتب لغت وطب میں بھی جھینگا مچھلی کے طور پہ ملتی ہے ۔ ابن بیطار نے اسے اربیان وروبیان لکھاہے ۔ صاحب بن عباد نے اس کا وصف بتلایاہے کہ یہ تیڑھی انگلی کی طرح لال مچھلی ہے ۔ جوہری اور فیروزآبادی نے سفید کیڑے کی طرح بتلایاہے ۔دمیری نے چھوٹے قسم کا لال رنگ والا کہاہے ۔ داؤد انطاکی نے بہت پیروالا لال رنگ کا کیکڑے کی طرح مگر اکثر گوشت والا کہا ہے ۔ ان ساری کتب میں مچھلی کی حیثیت سے اس کا وصف بتلایاہے ۔
    تکملۃ المعاجم العربیۃ از مستشرق رینہارت آن دوزی (8/221) میں قریدس کا وصف مصر کے روبیان سے ذکر کیاہے ۔ محیط المحیط از پطرس بستانی (متوفی:1300ھ) صفحہ 725 پر قریدس کے متعلق لکھا ہے :
    القريدس: سمكة صغيرة بقدر الجرادة أو أكبر قليلا وتشبهها.یعنی قریدس(جھینگا) ایک چھوٹی مچھلی ہے جو ٹڈی کے مثل یا اس سے تھوڑی بڑی اوراس کے مشابہ ہوتی ہے ۔
    معجم الالفاظ الزراعیۃ از مطففی شہابی (مکتبہ لبنان) صفحہ 197 پر یہ عبارت ہے ۔ الاربیان: ضرب من السمک وھوالقریدس فی الشام والجمبری فی مصر۔ یعنی اربیان(جھینگا) ایک قسم کی مچھلی ہے ، ملک شام میں اسے قریدس اور مصر میں جمبری کہتے ہیں۔
    ابوبکر بن درید(متوفی:321 ھ)نے جمھرۃ اللغۃ (3/1236) میں لکھا ہے : الاربیان:ضرب من الحیتان یعنی اربیان (جھینگا) مچھلی کی ایک قسم ہے ۔زبیدی نے تاج العروس میں سفید کیڑے کی طرح مچھلی بتایاہے ۔
    جوہری (متوفی : 393ھ)نے الصحاح (6/2351) میں لکھا ہے : الاربیان بکسر الھمزہ ،ضرب من السمک بیض کالدود( اربیان ،ہمزہ کے کسرہ کے ساتھ ، ایک قسم کی مچھلی جو سفید کیڑا کی طرح ہے )
    کمال کی بات ہے علامہ مجد فیروزآبادی(متوفی :817ھ) جوکہ حنفی المسلک ہیں انہوں نے القاموس المحیط کے اندر لکھاہے : الاربیان بالکسر:سمک۔ یعنی اربیان(جھینگا) مچھلی ہے ۔
    اس طرح بے شمار لغت کی کتابوں سے حوالہ دیا جاسکتا ہے ۔کتب لغت کے علاوہ مختلف علوم وفون کی کتابوں میں بھی اسے ایک مچھلی ہی مانا گیاہے ۔
    ابوہلال عسکری (متوفی :395ھ) نے " التلخیص فی معرفۃ اسماء الاشیاء میں اربیان (جھینگا) کو ایک چھوٹی مچھلی کہاہے ۔ ابوالعلاءمعری (متوفی: 449ھ) نے "رسالۃ الملائکۃ" میں <وھوضرب من السمک> کے ذریعہ اسے مچھلی قرار دیاہے ۔
    یاقوت الحموی (متوفی: 626ھ) نے معجم البلدان میں بھی مچھلی کی قسم کہاہے ٍٍ۔
    مذکورہ بالا مختصرحوالوں سے پتہ چلتاہے کہ قدیم وجدید لغت اور مختلف علوم کی کتاب میں جھینگا مچھلی ہی مانی جاتی ہے ۔ ساتھ ہی یہ عرف عام میں بھی مچھلی سے ہی متعارف ہے ۔ اس لئے ہم دیکھتےہیں کہ جھینگا مچھلی مارکیٹ میں ملتی ہے نہ کہ گوشت کی دوکان پہ اور ہوٹلوں میں بھی مچھلی کی فہرست میں شامل ہے ۔
    حنفیہ کے یہاں سمندر کی ساری مچھلیاں حلال ہیں ۔ امام سرخسی نے "المبسوط " میں لکھا ہے :جمیع انواک السمک حلال یعنی ہرقسم کی مچھلی حلال ہے ۔گویا حنفی فقہ کی روشنی میں بھی جھینگا حلال ہے ۔چنانچہ حنفی عالم ظفر احمد عثمانی تھانوی رحمہ اللہ نے اعلاء السنن جلد 17 صفحہ 199 پر لکھا ہے : وبالجملة فكل ما كان من جنس السمك لغة وعرفا فهو حلال بلا خلاف كالسقنقور والروبيان ونحوهما .( منجملہ جو لغت اور عرف میں مچھلی ہو وہ بغیر اختلاف کے حلال ہے جیسے کوتری, جھینگا اور ان جیسی ۔ )
    لغت کی کتاب، کتب طب وحیوان،عرف عام میں جھینگا مچھلی ہے یہ ثابت ہوگیا، اسی طرح حنفی اہل لغت نے بھی اسے مچھلی لکھاہے اور ساتھ ہی مشہور حنفی عالم نے بصراحت جھینگا حلال لکھاہے ۔ نیز قرآن وحدیث کی روشنی میں جھینگا حلال ہے وہ پہلے ہی ثابت کیاگیاہے بلکہ یہاں تک قرآن سے ثابت ہے کہ مچھلی کے علاوہ پانی پہ منحصر سارے حیوان حلال ہیں۔ ساتھ ہی کھانے پینے کی چیزمیں اصل حلت ہی ہے سوائے اس کے جس کو نام لیکر حرام کہاگیاہو۔ جھینگا ان حیوان میں سے نہیں جن کی ممانعت آئی ہے گویاقاعدے کی رو سے بھی اس کا حلال ہونا ثابت ہے ۔


    لہذا ایک ثابت شدہ چیز کو مکروہ اور ناجائز کہنا اللہ کے حدود سے تجاوز ہے ۔
     
    • پسند پسند x 4
    • معلوماتی معلوماتی x 1
    • علمی علمی x 1
    • لسٹ
  6. ‏اگست 19، 2016 #6
    ابن داود

    ابن داود فعال رکن رکن انتظامیہ
    شمولیت:
    ‏نومبر 08، 2011
    پیغامات:
    3,313
    موصول شکریہ جات:
    2,649
    تمغے کے پوائنٹ:
    556

لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں