1. آئیے اہم اسلامی کتب کو یونیکوڈ میں انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے لئے مل جل کر آن لائن ٹائپنگ کریں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ کے ذریعے آپ روزانہ فقط دس پندرہ منٹ ٹائپنگ کر کے ہزاروں صفحات پر مشتمل اہم ترین کتب کو ٹائپ کرنے میں اہم کردار ادا کرکے صدقہ جاریہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ محدث ٹائپنگ پراجیکٹ میں شمولیت کے لئے یہاں کلک کریں۔
  2. آئیے! مجلس التحقیق الاسلامی کے زیر اہتمام جاری عظیم الشان دعوتی واصلاحی ویب سائٹس کے ساتھ ماہانہ تعاون کریں اور انٹر نیٹ کے میدان میں اسلام کے عالمگیر پیغام کو عام کرنے میں محدث ٹیم کے دست وبازو بنیں ۔تفصیلات جاننے کے لئے یہاں کلک کریں۔

کیا صحیح البخاری کی قسطنطنیہ کی حدیث ضعیف ہیے

'تاریخ اسلام' میں موضوعات آغاز کردہ از Rahil, ‏جنوری 26، 2018۔

  1. ‏جنوری 26، 2018 #1
    Rahil

    Rahil مبتدی
    جگہ:
    انڈیا
    شمولیت:
    ‏جنوری 26، 2018
    پیغامات:
    14
    موصول شکریہ جات:
    1
    تمغے کے پوائنٹ:
    12

    1---تمام راویوں کا شامی ہونا اور یہاں کے لوگ سخت مخالفین اہلبیت تھے اور بنی امیہ کی شان میں احادیث گھڑنے میں مشہور تھے----وَالْإِسْنَادُ كُلُّهُ شَامِيُّونَ

    اس روایت کی سند میں تمام راویان شامی ہیں

    حوالہ: فتح الباري شرح صحيح البخاري، جلد 6، صفحہ 102، الناشر: دار المعرفة - بيروت، 1379

    یہی بات علامہ بدر الدین عینی الحنفی نے اپنی کتاب میں بایں فرمایا:

    أَن الْإِسْنَاد كُله شَامِيُّونَ

    اس روایت کی سند میں تمام راویان شامی ہیں

    حوالہ: عمدة القاري شرح صحيح البخاري، جلد 14، صفحہ 198، الناشر: دار إحياء التراث العربي - بيروت----------وَقَدْ عَاكَسَ الرَّافِضَةَ وَالشِّيعَةَ يَوْمَ عَاشُورَاءَ النَّوَاصِبُ مِنْ أَهْلِ الشَّامِ فَكَانُوا فِي يَوْمِ عَاشُورَاءَ يَطْبُخُونَ الْحُبُوبَ وَيَغْتَسِلُونَ وَيَتَطَيَّبُونَ وَيَلْبَسُونَ أَفْخَرَ ثِيَابِهِمْ، وَيَتَّخِذُونَ ذَلِكَ الْيَوْمَ عِيدًا، يَصْنَعُونَ فِيهِ أَنْوَاعَ الْأَطْعِمَةِ،
    وَيُظْهِرُونَ السُّرُورَ وَالْفَرَحَ ; يُرِيدُونَ بِذَلِكَ عِنَادَ الرَّوَافِضِ وَمُعَاكَسَتَهُمْ.

    روافض یعنی شیعہ حضرات جس حزن وغیرہ کا اہتمام یوم عاشورہ کرتے، اس کے برعکس نواصبین اہل شام اس دن یعنی یوم عاشورا میں:
    ۱، اناج پکاتے۲، غسل کرتے۳، پاک و صاف ہوتے۴، طیب و طاہر ہوتے یعنی خوشبو وغیرہ لگاتے۵، سب سے اعلی لباس کو زیب تن کرتے۶، اس دن کو عید کا دن قرار دیتے۷، انواع و اقسام کے کھانے بناتے۸،
    اس دن میں خوشی کا اظہار کرتے اس سے ان کا مقصد شیعوں کے بغض میں ان کے اطوار کا الٹ کرنا ہوتا تھا-

    البداية والنهاية، جلد 11، صفحہ 577، الناشر: دار هجر للطباعة-------------------راوي-------1 - أبو عبد الرحمن يحيى بن حمزة بن واقد الحضرمي الدمشقي.
    وكان قدريا وقاضيا في دمشق. (تهذيب الكمال ج20 ص64، تهذيب التهذيب ج11 ص176، تاريخ الإسلام ج12 ص446)
    وكان مالك إمام المذهب يرى أنه لا يصلى على القدرية ولا يحمل عنهم الحديث (مغني المحتاج ج10 ص67، التعديل والتجريح لسليمان ين خلف التاجي ج1 ص263)-----------------


    2 - أبو خالد ثور بن يزيد بن زياد الكلاعي الحمصي----روایت کے دوسرے راوی ثور بن يزيد ---
    یحیی ابن معین (جن کے فن رجال کو تمام علماء مانتے ہیں) اس ثور کے متعلق لکھتے ہیں کہ یہ ثور اس جماعت میں شامل تھا جو علی ابن ابی طالب پر سب کرتے تھے (سب کا مطلب ہے برا کہنا اور گالیاں وغیرہ دینا) --------------------------------------------اس کے بارے میں 'محمد بن سعد صاحب طبقات'

    وكان جد ثور بن يزيد قد شهد صفين مع معاوية وقتل يومئذ فكان ثور إذا ذكر عليا. ع. قال: لا أحب رجلًا قتل جدي.

    ثور بن یزید کے جد صفین کے معرکے میں معاویہ کی طرف سے لڑے اور اثنائے جنگ میں قتل کئے گئے لہذاء جب بھی ثور کے سامنے علی رض کا ذکر ہوتا تو ثور یوں گویا ہوتا:

    میں ایسے شخص کو پسند نہیں کرتا اور محبت نہیں رکھتا جس نے میرے جد کو قتل کیا-

    الطبقات الكبرى ج 7 ص 324 الناشر: دار الكتب العلمية - بيروت.................................وقال دحيم: ما رأيت أحدا يشك أنه كان قدريا.
    وقد لقي ثور الأوزاعي فمدّ إليه ثور يده، فأبى الأوزاعي أن يمدّ يده إليه، وقال: يا ثور لو كانت الدنيا كانت المقاربة، ولكنه الدين! يقول: لأنه كان قدريا.
    وقال أبو مسهر: حدثنا أبو مسلم الفزاري قال: ما سمعت الأوزاعي يقول في أحد من الناس إلا في ثور بن يزيد، قال: فغضب عليّ غضبة ما رأيت مثلها، --------


    اسکا جواب چھاہیے

    مجھے ایک رافجی نے دیا ہیے
     
  2. ‏جنوری 27، 2018 #2
    Rahil

    Rahil مبتدی
    جگہ:
    انڈیا
    شمولیت:
    ‏جنوری 26، 2018
    پیغامات:
    14
    موصول شکریہ جات:
    1
    تمغے کے پوائنٹ:
    12

    کیا ہوا ابھی تک کوی جواب نہیں آیا
     
  3. ‏جنوری 27، 2018 #3
    difa-e- hadis

    difa-e- hadis رکن
    شمولیت:
    ‏جنوری 20، 2017
    پیغامات:
    287
    موصول شکریہ جات:
    25
    تمغے کے پوائنٹ:
    60

    یہ روایت مغفرت کے الفاظ کے ساتھ شاذ صحیح ہے ان الفاظ کے ساتھ صرف ثور بن یزید نے روایت کیا ہے
     
  4. ‏جنوری 28، 2018 #4
    خضر حیات

    خضر حیات علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    طابہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 14، 2011
    پیغامات:
    8,769
    موصول شکریہ جات:
    8,335
    تمغے کے پوائنٹ:
    964

    یہ حدیث صحیح ہے ، صحیح بخاری میں اس کا نقل ہونا ہی ، اس کی صحت کی دلیل ہے ۔
    اوپر تحریر میں حدیث پر جتنے اعتراض کیے گئے ہیں ، ان میں کوئی بھی حدیث کی تضعیف کے لیے کافی نہیں ۔
    اس حوالے سے کچھ تفصیل اس تھریڈ میں موجود ہے ، ملاحظہ کیجیے :
    سیدنا امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کے فضائل
     
    • پسند پسند x 2
    • شکریہ شکریہ x 1
    • متفق متفق x 1
    • لسٹ
  5. ‏جنوری 28، 2018 #5
    خضر حیات

    خضر حیات علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    طابہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 14، 2011
    پیغامات:
    8,769
    موصول شکریہ جات:
    8,335
    تمغے کے پوائنٹ:
    964

    ثور بن یزید روایت حدیث میں ’ ثبت ‘ ہے ۔ ائمہ ستہ نے ان کی روایات کو بطور حجت ذکر کیا ہے ۔
     
  6. ‏جنوری 29، 2018 #6
    difa-e- hadis

    difa-e- hadis رکن
    شمولیت:
    ‏جنوری 20، 2017
    پیغامات:
    287
    موصول شکریہ جات:
    25
    تمغے کے پوائنٹ:
    60

    محترم،
    میں بھی اس کو شاذ صحیح کہہ رہا ہوں شاذ مردود نہیں
     
  7. ‏جنوری 29، 2018 #7
    خضر حیات

    خضر حیات علمی نگران رکن انتظامیہ
    جگہ:
    طابہ
    شمولیت:
    ‏اپریل 14، 2011
    پیغامات:
    8,769
    موصول شکریہ جات:
    8,335
    تمغے کے پوائنٹ:
    964

    مرضی کے مالک ہیں ۔ اصطلاح بنانے کے لیے کون سا حکومت سے منظوری چاہیے ہوتی ہے ۔
    شاذ صحیح کے ساتھ مکروہ کا بھی اضافہ کردیں اس طرح ’ شاذ صحیح مکروہ ‘ کیونکہ اس قسم کی احادیث سے بعض لوگوں کو کراہت ہوتی ہے ۔
     
    • پسند پسند x 3
    • متفق متفق x 2
    • زبردست زبردست x 1
    • لسٹ
  8. ‏جنوری 29، 2018 #8
    کفایت اللہ

    کفایت اللہ عام رکن
    شمولیت:
    ‏مارچ 14، 2011
    پیغامات:
    4,770
    موصول شکریہ جات:
    9,777
    تمغے کے پوائنٹ:
    722

    ثوربن یزید کے بارے میں دیکھئے :
    انوار البدر فی وضع الیدین علی الصدر( آخری اڈیشن) ص 209 تا 214۔
     
    • پسند پسند x 5
    • متفق متفق x 1
    • لسٹ
  9. ‏جنوری 29، 2018 #9
    ابوطلحہ بابر

    ابوطلحہ بابر مشہور رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    راولپنڈی
    شمولیت:
    ‏فروری 03، 2013
    پیغامات:
    663
    موصول شکریہ جات:
    835
    تمغے کے پوائنٹ:
    195

  10. ‏جنوری 29، 2018 #10
    اسحاق سلفی

    اسحاق سلفی فعال رکن رکن انتظامیہ
    جگہ:
    اٹک ، پاکستان
    شمولیت:
    ‏اگست 25، 2014
    پیغامات:
    6,372
    موصول شکریہ جات:
    2,398
    تمغے کے پوائنٹ:
    791

    اس حدیث کو " شاذ صحیح " کس محدث نے کہا ہے ؟
     
    • متفق متفق x 3
    • شکریہ شکریہ x 1
    • پسند پسند x 1
    • لسٹ
لوڈ کرتے ہوئے...

اس صفحے کو مشتہر کریں